Saturday, 16 July 2016

سورۃ النصر کی فضیلت چوتھائی قرآن کے برابر

حَدَّثَنَا عُقْبَةُ بْنُ مُكْرَمٍ الْعَمِّيُّ الْبَصْرِيُّ ، حَدَّثَنِي ابْنُ أَبِي فُدَيْكٍ ، أَخْبَرَنَا سَلَمَةُ بْنُ وَرْدَانَ ، عَنْ أَنَسِ بْنِ مَالِكٍ ، أَنّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، قَالَ لِرَجُلٍ مِنْ أَصْحَابِهِ : " هَلْ تَزَوَّجْتَ يَا فُلَانُ ؟ قَالَ : لَا وَاللَّهِ يَا رَسُولَ اللَّهِ ، وَلَا عِنْدِي مَا أَتَزَوَّجُ بِهِ ، قَالَ : أَلَيْسَ مَعَكَ " قُلْ هُوَ اللَّهُ أَحَدٌ " ؟ قَالَ : بَلَى ، قَالَ : ثُلُثُ الْقُرْآنِ ، قَالَ : أَلَيْسَ مَعَكَ " إِذَا جَاءَ نَصْرُ اللَّهِ وَالْفَتْحُ " ؟ قَالَ : بَلَى ، قَالَ : رُبُعُ الْقُرْآنِ ، قَالَ : أَلَيْسَ مَعَكَ " قُلْ يَأَيُّهَا الْكَافِرُونَ " ؟ قَالَ : بَلَى ، قَالَ : رُبُعُ الْقُرْآنِ ، قَالَ : أَلَيْسَ مَعَكَ " إِذَا زُلْزِلَتِ الْأَرْضُ " ؟ قَالَ : بَلَى ، قَالَ : رُبُعُ الْقُرْآنِ ، قَالَ : تَزَوَّجْ تَزَوَّجْ "، قَالَ أَبُو عِيسَى : هَذَا حَدِيثٌ حَسَنٌ .
حضرت انس بن مالکؓ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے اپنے ایک صحابی سے کہا: اے فلاں! کیا تم نے شادی کرلی؟ انہوں نے کہا: نہیں،قسم اللہ کی! اللہ کے رسول! نہیں کی ہے، اور نہ ہی میرے پاس ایسا کچھ ہے جس کے ذریعہ میں شادی کرسکوں۔ آپ نے فرمایا:' کیاتمہارے پاس سورہ 'قل هو الله أحد' نہیں ہے؟ انہوں نے کہا: کیوں نہیں، میرے پاس ہے۔ آپ نے فرمایا:سورہ' قل هو الله أحد' ثواب میں ایک تہائی قرآن کے برابرہے۔ آپ نے کہا: کیاتمہارے پاس سورہ 'إذا جاء نصر الله والفتح' نہیں ہے؟ انہوں نے کہا :کیوں نہیں، (ہے) آپ نے فرمایا:' یہ ایک چوتھائی قرآن ہے، آپ نے فرمایا:' کیا تمہارے پاس سورہ 'قل يا أيها الكافرون' نہیں ہے؟ انہوں نے کہا: کیوں نہیں۔ (ہے) آپ نے فرمایا:' (یہ) چوتھائی قرآن ہے ۔ آپ نے فرمایا:' کیا تمہارے پاس سورہ'إذا زلزلت الأرض' نہیں ہے؟ انہوں نے کہا:کیوں نہیں(ہے) آپ نے فرمایا: 'یہ ایک چوتھائی قرآن ہے، آپ نے فرمایا: تم شادی کرو '۔امام ترمذی کہتے ہیں: یہ حدیث حسن ہے۔
[مسند احمد:12488+13309، سنن ترمذیؒ:2895، مسند البزار:6247، معجم ابن الأعرابي:1648، شعب الإيمان للبيهقي:2300، جامع الأحاديث:15260، كنز العمال:2717]



المحدث : أحمد شاكر | المصدر : عمدة التفسير الصفحة أو الرقم: 1/308 | خلاصة حكم المحدث : [أشار في المقدمة إلى صحته]
تخريج الحديث
 م طرف الحديثالصحابياسم الكتابأفقالعزوالمصنفسنة الوفاة
1هل تزوجت يا فلان قال لا والله يا رسول الله ولا عندي ما أتزوج به قال أليس معك قل هو الله أحد قال بلى قال ثلث القرآن أليس معك إذا جاء نصر الله والفتح قال بلى قال ربع القرآن أليس معك قل يأيها الكافرون قال بلى قال ربع القرآن أليس معك إذا زلزلت الأرضأنس بن مالكجامع الترمذي28392895محمد بن عيسى الترمذي256
2هل تزوجت قال لا وليس عندي ما أتزوج به قال أليس معك قل هو الله أحدأنس بن مالكمسند أحمد بن حنبل1305812896أحمد بن حنبل241
3أليس معك قل هو الله أحد قال بلى قال ربع القرآن قال أليس معك إذا جاء نصر الله والفتح قال بلى قال ربع القرآن قال أليس معك قل يأيها الكافرون قال بلى قال ربع القرآن أليس معك الله لا إله إلا هو الحي القيوم قال بلى قال ربع القرآن قال تزوج تزوجأنس بن مالكالبحر الزخار بمسند البزار 10-1318126246أبو بكر البزار292
4هل تزوجت قال ليس عندي ما أتزوج قال أليس معك قل هو الله أحد قال بلى قال ربع القرآن قال أليس معك إذا جاء نصر الله والفتح قال بلى قال ربع القرآن قال أليس معك قل يأيها الكافرون قال بلى قال ربع القرآن قالأنس بن مالككشف الأستار2177---نور الدين الهيثمي807
5هل تزوجت قال لا وليس عندي ما أتزوج به قال أليس معك قل هو الله أحد قال بلى قال ربع القرآن أليس معك إذا جاء نصر الله قال بلى قال ربع القرآن أليس معك قل يا أيها الكافرون قال بلى قال ربع القرآن أليس معك إذا زلزلت قال بلى قال ربع القرآن أليس معك آأنس بن مالكمعجم السفر للسلفي139878أبو طاهر السلفي576
6آية الكرسي ربع القرآنأنس بن مالكمعجم مشايخ أبي علي الحداد12---الحسن بن أحمد بن الحسن الحداد515
7هل تزوجت قال لا وليس عندي ما أتزوج به قال أليس معك قل هو الله أحدأنس بن مالكالمجالس الخمسة السلماسية للسلفي2424أبو طاهر السلفي576
8هل تزوجت قال لا وليس عندي ما أتزوج به قال أليس معك قل هو الله أحد قال بلى قال ربع القرآن قال أليس معك إذا جاء نصر الله قال بلى قال ربع القرآن قال أليس معك قل يأيها الكافرون قال بلى قال ربع القرآن قال أليس معك إذا زلزلت قال بلى قال ربع القرآن قال أليس معكأنس بن مالكالأحاديث المائة للحافظ العلامة محمد بن علي بن طولون9---محمد بن علي بن طولون953
9هل تزوجت قال لا وليس عندي ما أتزوج قال أليس معك قل هو الله أحدأنس بن مالكشعب الإيمان للبيهقي2298---البيهقي458
10أليس معك قل هو الله أحد قال بلى قال ربع القرآن قال أليس معك قل يأيها الكافرون قال بلى قال ربع القرآن قال أليس معك إذا زلزلت قال بلى قال ربع القرآن ثم قال تزوج تزوج تزوجأنس بن مالكالوسيط في تفسير القرآن المجيد11704 : 541الواحدي468
11آية الكرسي ربع القرآنأنس بن مالكسير أعلام النبلاء الذهبي1242---الذهبي748
12هل تزوجت فقال لا وليس عندي ما أتزوج به فقال أليس معك قل هو الله أحد قال بلى قال ثلث القرآن أليس معك قل يا أيها الكافرون قال بلى قال ربع القرآن أليس معك إذا زلزلت الأرض زلزالها قال بلى قال ربع القرآن أليس معك آية الكرسي قال بلى قال ربع القرآن قالأنس بن مالكفضائل القرآن لابن الضريس287297محمد بن الضريس294

إِذا جاءَ نَصرُ اللَّهِ وَالفَتحُ {110:1}
جب خدا کی مدد آ پہنچی اور فتح (حاصل ہو گئی)
بڑی فیصلہ کن چیز یہ تھی کہ مکہ معظمہ ( جو گویا زمین پر اللہ کا دارالسلطنت ہے) فتح ہو جائے۔ اسی پر اکثر قبائل عرب کی نظریں لگی ہوئی تھیں۔ اس سے پہلے ایک ایک دو دو آدمی اسلام میں داخل ہوتے تھے۔ فتح مکہ کے بعد جوق در جوق داخل ہونے لگے۔ حتّٰی کہ سارا جزیرہ عرب اسلام کا کلمہ پڑھنے لگا۔ اور جو مقصد نبی کریم کی بعثت سے تھا پورا ہوا۔
وَرَأَيتَ النّاسَ يَدخُلونَ فى دينِ اللَّهِ أَفواجًا {110:2}
اور تم نے دیکھ لیا کہ لوگ غول کے غول خدا کے دین میں داخل ہو رہے ہیں
فَسَبِّح بِحَمدِ رَبِّكَ وَاستَغفِرهُ ۚ إِنَّهُ كانَ تَوّابًا {110:3}
تو اپنے پروردگار کی تعریف کے ساتھ تسبیح کرو اور اس سے مغفرت مانگو، بے شک وہ معاف کرنے والا ہے
یعنی اپنے لئے اور امت کے لئے استغفار کیجیے۔ (تنبیہ) نبی کریم کا اپنے لئے استغفار کرنا پہلے کئ جگہ بیان ہوچکا ہے، وہیں دیکھ لیا جائے۔ حضرت شاہ صاحبؒ لکھتے ہیں " یعنی قرآن میں ہر جگہ وعدہ ہے فیصلہ کا، اور کافر شتابی کرتے تھے۔ حضرت کی آخر عمر میں مکہ فتح ہوچکا، قبائل عرب دَل کے دَل مسلمان ہونے لگے۔ وعدہ سچا ہوا اب امت کے گناہ بخشوایا کر کہ درجہ شفاعت کا بھی ملے۔ یہ سورت اتری آخر عمر میں، حضرت نے جانا کہ میرا جو کام تھا دنیا میں کرچکا اب سفر ہے آخرت کا۔
یعنی سمجھ لیجیے کہ مقصود بعثت کا اور دنیا میں رہنے کا (جو تکمیل دین و تمہید خلافت کبریٰ ہے) پورا ہوا، اب سفر آخرت قریب ہے۔ لہٰذا ادھر سے فارغ ہو کر ہمہ تن ادھر ہی لگ جائیے۔ اور پہلے سے بھی زیادہ کثرت سے اللہ کی تسبیح و تحمید اور ان فتوحات اور کامیابیوں پر اس کا شکر ادا کیجیے۔



کیا تم یہ خیال کرتے ہو کہ (یوں ہی) جنت میں داخل ہوجاؤ گے اور ابھی تم کو پہلے لوگوں کی سی (مشکلیں) تو پیش آئی ہی نہیں۔ ان کو (بڑی بڑی) سختیاں اور تکلیفیں پہنچیں اور وہ (صعوبتوں میں) ہلا ہلا دیئے گئے۔ یہاں تک کہ پیغمبر اور مومن لوگ جو ان کے ساتھ تھے سب پکار اٹھے کہ کب خدا کی مدد آئے گی ۔ دیکھو خدا کی مدد (عن) قریب (آيا چاہتی) ہے۔

[قرآن، سورۃ البقرۃ:214]




تمہارے لیے دو گروہوں میں جو (جنگ بدر کے دن) آپس میں بھڑ گئے (قدرت خدا کی عظیم الشان) نشانی تھی ایک گروہ (مسلمانوں کا تھا وہ) خدا کی راہ میں لڑ رہا تھا اور دوسرا گروہ (کافروں کا تھا وہ) ان کو اپنی آنکھوں سے اپنے سے دگنا مشاہدہ کر رہا تھا اور خدا اپنی نصرت سے جس کو چاہتا ہے مدد دیتا ہے جو اہل بصارت ہیں ان کے لیے اس (واقعے) میں بڑی عبرت ہے۔
[آل عمران:13]


اور جب خدا نے پیغمبروں سے عہد لیا کہ جب میں تم کو کتاب اور دانائی عطا کروں پھر تمہارے پاس کوئی پیغمبر آئے جو تمہاری کتاب کی تصدیق کرے تو تمھیں ضرور اس پر ایمان لانا ہوگا اور ضرور اس کی مدد کرنی ہوگی اور (عہد لینے کے بعد) پوچھا کہ بھلا تم نے اقرار کیا اور اس اقرار پر میرا ذمہ لیا (یعنی مجھے ضامن ٹہرایا) انہوں نے کہا (ہاں) ہم نے اقرار کیا (خدا نے) فرمایا کہ تم (اس عہد وپیمان کے) گواہ رہو اور میں بھی تمہارے ساتھ گواہ ہوں۔
[آل عمران:81]


اور یہ تمہیں خفیف سی تکلیف کے سوا کچھ نقصان نہیں پہنچا سکیں گے اور اگر تم سے لڑیں گے تو پیٹھ پھیر کر بھاگ جائیں گے پھر ان کو مدد بھی (کہیں سے) نہیں ملے گی۔
[آل عمران:111]


اور خدا نے جنگِ بدر میں بھی تمہاری مدد کی تھی اور اس وقت بھی تم بے سرو وسامان تھے پس خدا سے ڈرو (اور ان احسانوں کو یاد کرو) تاکہ شکر کرو۔
[آل عمران:123]


اور اس مدد کو خدا نے تمھارے لیے (ذریعہٴ) بشارت بنایا یعنی اس لیے کہ تمہارے دلوں کو اس سے تسلی حاصل ہو ورنہ مدد تو خدا ہی کی ہے جو غالب (اور) حکمت والا ہے۔
[آل عمران:126]


اور خدا تمہارا مددگار ہے تو تم پر کوئی غالب نہیں آسکتا۔ اور اگر وہ تمہیں چھوڑ دے تو پھر کون ہے کہ تمہاری مدد کرے اور مومنوں کو چاہیئے کہ خدا ہی پر بھروسا رکھیں۔
[آل عمران:160]


اور خدا تمہارے دشمنوں سے خوب واقف ہے اور خدا ہی کافی کارساز ہے اور کافی مددگار ہے۔
[النساء:45]


(نجات) نہ تو تمہاری آرزوؤں پر ہے اور نہ اہل کتاب کی آرزوؤں پر۔ جو شخص برے عمل کرے گا اسے اسی (طرح) کا بدلا دیا جائے گا اور وہ خدا کے سوا نہ کسی کو حمایتی پائے گا اور نہ مددگار۔
[النساء:123]


اور اس مدد کو خدا نے محض بشارت بنایا تھا کہ تمہارے دل سے اطمینان حاصل کریں۔ اور مدد تو الله ہی کی طرف سے ہے۔ بےشک خدا غالب حکمت والا ہے۔
[الانفال:10]


اور اس وقت کو یاد کرو جب تم زمین (مکہ) میں قلیل اور ضعیف سمجھے جاتے تھے اور ڈرتے رہتے تھے کہ لوگ تمہیں اُڑا (نہ) لے جائیں (یعنی بےخان وماں نہ کردیں) تو اس نے تم کو جگہ دی اور اپنی مدد سے تم کو تقویت بخشی اور پاکیزہ چیزیں کھانے کو دیں تاکہ (اس کا) شکر کرو۔
[الانفال:26]


ان سے (خوب) لڑو۔ خدا ان کو تمہارے ہاتھوں سے عذاب میں ڈالے گا اور رسوا کرے گا اور تم کو ان پر غلبہ دے گا اور مومن لوگوں کے سینوں کو شفا بخشے گا۔
[التوبۃ:14]


خدا نے بہت سے موقعوں پر تم کو مدد دی ہے اور (جنگ) حنین کے دن۔ جب تم کو اپنی (جماعت کی) کثرت پر غرّہ تھا تو وہ تمہارے کچھ بھی کام نہ آئی۔ اور زمین باوجود (اتنی بڑی) فراخی کے تم پر تنگ ہوگئی پھر تم پیٹھ پھیر کر پھر گئے
[التوبۃ:24]


اگر تم پیغمبر کی مدد نہ کرو گے تو خدا اُن کا مددگار ہے (وہ وقت تم کو یاد ہوگا) جب ان کو کافروں نے گھر سے نکال دیا۔ (اس وقت) دو (ہی ایسے شخص تھے جن) میں (ایک ابوبکرؓ تھے) اور دوسرے (خود رسول الله) جب وہ دونوں غار (ثور) میں تھے اس وقت پیغمبر اپنے رفیق کو تسلی دیتے تھے کہ غم نہ کرو خدا ہمارے ساتھ ہے۔ تو خدا نے ان پر تسکین نازل فرمائی اور ان کو ایسے لشکروں سے مدد دی جو تم کو نظر نہیں آتے تھے اور کافروں کی بات کو پست کر دیا۔ اور بات تو خدا ہی کی بلند ہے۔ اور خدا زبردست (اور) حکمت والا ہے
[التوبۃ:40]


جو شخص یہ گمان کرتا ہے کہ خدا اس(نبی)کو دنیا اور آخرت میں مدد نہیں دے گا تو اس کو چاہیئے کہ اوپر کی طرف (یعنی اپنے گھر کی چھت میں) ایک رسی باندھے پھر (اس سے اپنا) گلا گھونٹ لے۔ پھر دیکھے کہ آیا یہ تدبیر اس کے غصے کو دور کردیتی ہے۔
[الحج:15]


جن مسلمانوں سے (خواہ مخواہ) لڑائی کی جاتی ہے ان کو اجازت ہے (کہ وہ بھی لڑیں) کیونکہ ان پر ظلم ہو رہا ہے۔ اور خدا (ان کی مدد کرے گا وہ) یقیناً ان کی مدد پر قادر ہے۔
[الحج:39]


یہ وہ لوگ ہیں کہ اپنے گھروں سے ناحق نکال دیئے گئے (انہوں نے کچھ قصور نہیں کیا) ہاں یہ کہتے ہیں کہ ہمارا پروردگار خدا ہے۔ اور اگر خدا لوگوں کو ایک دوسرے سے نہ ہٹاتا رہتا تو (راہبوں کے) صومعے اور (عیسائیوں کے) گرجے اور (یہودیوں کے) عبادت خانے اور (مسلمانوں کی) مسجدیں جن میں خدا کا بہت سا ذکر کیا جاتا ہے ویران ہوچکی ہوتیں۔ اور جو شخص خدا کی مدد کرتا ہے خدا اس کی ضرور مدد کرتا ہے۔ بےشک خدا توانا اور غالب ہے۔
[الحج:40]


پس ہم نے قارون کو اور اس کے گھر کو زمین میں دھنسا دیا تو خدا کے سوا کوئی جماعت اس کی مددگار نہ ہوسکی۔ اور نہ وہ بدلہ لے سکا۔
[القصص:18]


اور بعض لوگ ایسے ہیں جو کہتے ہیں کہ ہم خدا پر ایمان لائے جب اُن کو خدا (کے رستے) میں کوئی ایذا پہنچتی ہے تو لوگوں کی ایذا کو (یوں) سمجھتے ہیں جیسے خدا کا عذاب۔ اگر تمہارے پروردگار کی طرف سے مدد پہنچے تو کہتے ہیں کہ ہم تمہارے ساتھ تھے۔ کیا جو اہل عالم کے سینوں میں ہے خدا اس سے واقف نہیں؟۔
[العنکبوت:10]


جب تم کافروں سے بھڑ جاؤ تو ان کی گردنیں اُڑا دو۔ یہاں تک کہ جب ان کو خوب قتل کرچکو تو (جو زندہ پکڑے جائیں ان کو) مضبوطی سے قید کرلو۔ پھر اس کے بعد یا تو احسان رکھ کر چھوڑ دینا چاہیئے یا کچھ مال لے کر یہاں تک کہ (فریق مقابل) لڑائی (کے) ہتھیار (ہاتھ سے) رکھ دے۔ (یہ حکم یاد رکھو) اور اگر خدا چاہتا تو (اور طرح) ان سے انتقام لے لیتا۔ لیکن اس نے چاہا کہ تمہاری آزمائش ایک (کو) دوسرے سے (لڑوا کر) کرے۔ اور جو لوگ خدا کی راہ میں مارے گئے ان کے عملوں کو ہرگز ضائع نہ کرے گا۔
[محمد:4]


ہم نے اپنے پیغمبروں کو کھلی نشانیاں دے کر بھیجا۔ اور اُن پر کتابیں نازل کیں اور ترازو (یعنی قواعد عدل) تاکہ لوگ انصاف پر قائم رہیں۔ اور لوہا پیدا کیا اس میں (اسلحہٴ جنگ کے لحاظ سے) خطرہ بھی شدید ہے۔ اور لوگوں کے لئے فائدے بھی ہیں اور اس لئے کہ جو لوگ بن دیکھے خدا اور اس کے پیغمبروں کی مدد کرتے ہیں خدا ان کو معلوم کرے۔ بےشک خدا قوی (اور) غالب ہے۔
[الحدید:25]


اور ایک اور چیز جس کو تم بہت چاہتے ہو (یعنی تمہیں) خدا کی طرف سے مدد (نصیب ہوگی) اور فتح عنقریب ہوگی اور مومنوں کو (اس کی) خوشخبری سنا دو۔
[الصف:13]


بھلا ایسا کون ہے جو تمہاری فوج ہو کر خدا کے سوا تمہاری مدد کرسکے؟ کافر تو دھوکے میں ہیں۔
[الملک:20]


جب خدا کی مدد آ پہنچی اور فتح (حاصل ہو گئی) اور تم نے دیکھ لیا کہ لوگ غول کے غول خدا کے دین میں داخل ہو رہے ہیں۔ تو اپنے پروردگار کی تعریف کے ساتھ تسبیح کرو اور اس سے مغفرت مانگو، بے شک وہ معاف کرنے والا ہے۔[سورۃ النصر]







خلاصہ تفسیر

(اے محمد ﷺ ) جب خدا کی مدد اور (مکہ کی) فتح (ع اپنے آثار کے) آ پہنچے اور) اس فتح پر مرتب ہونے والے آثار یہ ہیں کہ) آپ لوگوں کو اللہ کے دین (اسلام) میں جوق جوق داخل ہوتا دیکھ لیں، تو (اس وقت سمجھئے کہ مقصود دنیا میں رہنے کا اور آپ کی بعثت کا جو تکمیل دین تھا وہ پورا ہو چکا اور اب سفر آخرت قریب ہے اس کے لئے تیاری کیجئے اور) اپنے رب کی تسبیح و تحمید کیجئے اور اس سے مغفرت کی درخواست کیجئے (یعنی ایسے امور جو خلاف اولیٰ واقع ہو گئے ان سے مغفرت مانگئے) وہ بڑا توبہ قبول کرنے والا ہے۔
معارف و مسائل یہ سورة با جماع مدنی ہے اور اس کا نام سورة التودیع بھی ہے، تو دیع کے معنی کسی کو رخصت کرنے کے ہیں اس سورة میں چونکہ رسول اللہ ﷺ کی وفات قریب ہونے کی طرف اشارہ ہے اس لئے اس کو سورة التودیع بھی کہا گیا ہے۔
حضرت ابن عمر نے فرمایا کہ یہ سورة حجتہ الوداع میں نازل ہوئی اس کے بعد آیت الیوم اکملت لکم دینکم نازل ہوئی، ان دونوں کے نزول کے بعد رسول اللہ ﷺ اس دنیا میں صرف اسی روز رہے (اسی روز کے بعد وفات ہو گئی) ان دونوں کے بعد آیت کلالہ نازل ہوئی جس کے بعد رسول اللہ ﷺ کی عمر شریف کے کل پچاس دن رہ گئے تھے اس کے بعد آیت لقد جآء کم رسول من انفسکم عزیز علیہ ماعنتم الآیہ نازل ہوئی جس کے بعد عمر شریف کے کل پینتیس روز باقی تھے اس کے بعد آیت اتقوایوماً ترجعون فیہ الی اللہ نازل ہوئی جس کے بعد صرف اکیس روز اور مقاتل کی روایت میں صرف سات روز کے بعد وفات ہو گئی۔ (قرطبی)
قرآن مجید کی آخری سورة اور آخری آیات:- صحیح مسلم میں حضرت ابن عباس سے منقول ہے کہ سورة نصر قرآن کی آخری سورة ہے (قرطبی) مطلب یہ ہے کہ اس کے بعد کوئی مکمل سورة نازل نہیں ہوئی بعض آیات کا نزول جو اس کے بعد ہونا بعض روایات میں ہے وہ اس کے منافی نہیں، جیسا کہ سورہ فاتحہ کو قرآن کی سب سے پہلی سورة اسی معنی میں کہا جاتا ہے کہ مکمل سورة سب سے پہلے فاتحہ نازل ہوئی ہے۔ سورة اقراءاور مدثر وغیرہ کی چند آیات کا اس سے پہلے نازل ہونا اس کے منافی نہیں ۔
اس پر سب کا اتفاق ہے کہ اس آیت اذا جاء نصر اللہ والفتح میں فتح سے فتح مکہ مراد ہے اور اس یں اختلاف ہے کہ یہ سورة فتح مکہ سے پہلے نازل ہوئی ہے یا بعد میں لفظ اذا جاء سے بظاہر قبل فتح نازل ہونا معلم ہوتا ہے اور روح المعانی میں بحر محیط سے ایک رویات بھی اس کے موافق نقل کی ہے جس میں اس سورة کا نزول غزوہ خیبر سے لوٹنے کے وقت بیان کیا گیا اور خیبر کی فتح فتح مکہ سے مقدم ہونا معلوم و معروف ہے اور روح المعانی میں بسند عبدابن حمید حضرت قتادہ کا یہ قول نقل کیا ہے کہ آنحضرت ﷺ اس سورة کے نزول کے بعد دو سال زندہ رہے اس کا حاصل بھی یہی ہے کہ اس کا نزول فتح مکہ سے پہلے ہوا کیونکہ فتح مکہ سے وفات تک دو سال سے کم مدت ہے۔ فتح مکہ رمضان 8ہجری میں ہوئی اور وفات ربیع الاول 11ہجری میں اور جن روایات میں اس کا نزول فتح مکہ یا حجتہ الوداع میں نازل ہونا بیان کیا گیا ہے ان کا مطلب یہ ہو سکتا ہے کہ اس موقع پر رسول اللہ ﷺ نے یہ سورة پڑھی ہوگی جس سے لوگوں کو یہ خیال ہو اکہ یہ ابھی نازل ہوئی ہے۔ مزید تحقیق اس کی بیان القرآن میں مذکورہ ہے۔

متعدد احادیث مرفوعہ اور آثار صحابہ میں ہے کہ اس سورة میں رسول اللہ ﷺ کی وفات کا وقت قریب آ جانے کی طرف اشارہ ہے کہ اب آپ کی بعثت اور دنیا میں قیام کا کام پورا ہو چکا اب تسبیح و استغفار میں لگ جایئے۔ مقاتل کی روایت میں ہے کہ جب یہ سورت نازل ہوئی تو آپ نے صحابہ کرام کے ممجع کے سامنے اس کی تلاوت فرمائی جن میں حضرت ابوبکر، عمر اور سعد بن ابی وقاص وغیرہ موجود تھے سب اس کو سنکر خوش ہوئے کہ اس میں فتح مکہ کی خوشخبری ہے مگر حضرت عباس رونے لگے۔ رسول اللہ ﷺ نے پوچھا کہ رونے کا کیا سبب ہے تو حضرت عباس نے عرض کیا کہ اس میں تو آپ کی وفات کی خبر مضمر ہے آنحضرت ﷺ نے اس کی تصدیق فرمائی۔ صحیح بخاری میں حضرت ابن عباس سے یہی مضمون روایت کیا ہے اور اس میں یہ بھی ہے کہ جب اس کو حضرت عمر نے سنا تو فرمایا کہ اس سورت کے مفہوم سے میں بھی یہی سمجھتا ہوں (رواہ الترمذی وقال حدیث حسن صحیح ، قرطبی)



ورایت الناس فتح مکہ سے پہلے بہت بڑی تعداد ایسے لوگوں کی بھی تھی جن کو رسول اللہ ﷺ کی رسالت اور اسلام کی حقانیت پر تقریباً یقین ہو چکا تھا مگر اسلام میں داخل ہونے سے ابھی تک قریش کی مخالفت کے خوف سے یا کسی تذبذب کی وجہ سے رکے ہوئے تھے۔ فتح مکہ نے وہ رکاوٹ دور کر دی تو فوج فوج ہو کر یہ لوگ اسلام میں داخل ہونے لگے۔ یمن سے سات سو نفر مسلمان ہو کر پہنچے جو راستہ میں اذانیں دیتے اور قرآن پڑھتے ہوئے آئے۔ اسی طرح عام عرب فوج فوج ہو کر داخل اسلام ہوئے۔

جب موت قریب محسوس ہو تو تسبیح و استغفار کی کثرت چاہئے:- فسبح بحمد ربک واستغفرہ حضرت صدیقہ ائشہ فرماتی ہیں کہ اس سورت کے نازل ہونے کے بعد رسول اللہ ﷺ جب کوئی نماز پڑھتے تو یہ دعا کرتے تھے سبحانک ربنا و بحمدک الھم اغفرلی (٤واہ البخاری) 
حضرت ام سلمہ فرماتی ہیں کہ اس سورت کے نزول کے بعد اٹھتے بیٹھتے اور جاتے آتے ہر وقت میں یہ دعا پڑھتے تھے، سبحان اللہ وبحمدہ استغفر اللہ واتوب الیہ اور فرماتے تھے کہ مجھے اس کا حکم کیا گیا اور دلیل میں اذا جاء نصر اللہ کی تلاوت فرماتے تھے۔
حضرت ابوہریرہ  ؓ فرماتے ہیں کہ اس سورت کے نزول کے بعد رسول اللہ ﷺ نے عبادت میں بڑا مجاہدہ فرمایا یہاں تک کہ آپ کے پاؤں ورم کر گئے۔ (قرطبی) 
تمت سورة النصر بحمد اللہ تعالیٰ


**********************************

اللہ تعالیٰ نے نبی کریم ﷺ کو مخاطب کر کے فرمایا کہ اے میرے نبی ! اب جبکہ آپ اپنے دشمنوں کے خلاف ہر معرکے میں غالب آنے لگے ہیں، مکہ کو فتح کر لیا ہے اور وہ دار الکفر سے دار الاسلام بن گیا ہے اور قبائل عرب گروہ درگروہ اللہ کے دین میں داخل ہو رہے ہیں، جب یہ سب نعمتیں حاصل ہو گئیں تو آپ اپنے رب کا شکر بجا لانے کے لیے اس کی پاکی اور اس کی حمد و ثنا بیان کیجیے اور اس سے مغفرت طلب کرتے رہیے۔ اللہ تعالیٰ توبہ کرنے والے بندوں کی توبہ کو بہت جلد قبول کرتا ہے، ان کے گناہوں کو معاف کر دیتا اور ان کے حال پر رحم کرتا ہے۔ 
اس سورت میں نبی کریم ﷺ کے لیے ایک خوشخبری ہے کہ اللہ اپنے رسول کی مدد کرے گا، مکہ مکرمہ فتح ہو گا اور لوگ جوق در جوق اسلام میں داخل ہوں گے۔ ایک تنبیہ بھی ہے کہ چونکہ دنیا سے آپ کے رخصت ہونے کا وقت قریب آ چکا ہے، اس لیے آپ کو چاہیے کہ اپنا زیادہ سے زیادہ وقت اس کی یاد میں لگائیں، تاکہ عمر کا آخری حصہ اس کی یاد میں گزرے۔ 
سیدنا عبداللہ بن عباس  ؓ بیان کرتے ہیں کہ سیدنا عمر فاروق  ؓ بڑی عمر والے بدری صحابہ کے ساتھ مجھے بھی (اپنی مجلس میں) شامل کر لیا کرتے تھے، تو اس پر بعض صحابہ (یعنی عبد الرحمن بن عوف  ؓ ) کو اعتراض ہوا، انھوں نے کہا، آپ اس نوجوان کو ہمارے ساتھ مجلس میں کیوں بٹھاتے ہیں ؟ اس کی عمر کے تو ہمارے بچے ہیں۔ فاروق اعظم  ؓ نے فرمایا، اس کی وجہ تم خوب جانتے ہو۔ پھر ایک دن عمر  ؓ نے انھیں بلایا اور مجھے بھی بلایا، میں سمجھ گیا کہ آج مجھے اس لیے بلایا، تاکہ آپ انھیں میرے بارے میں بتا سکیں، پھر امیر المومنین  ؓ نے ان سے پوچھا، سورۃ : (اِذَا جَاۗءَ نَصْرُ اللّٰهِ وَالْفَتْحُ ) کی نسبت تمھیں کیا علم ہے؟ بعض نے کہا، اس میں ہمیں حکم دیا گیا ہے کہ ہم اللہ کی حمد و ثنا بیان کریں اور اس سے استغفار کریں کہ اس نے ہماری مدد کی اور ہمیں فتح عنایت فرمائی اور بعض بالکل خاموش رہے، کچھ جواب نہ دیا تو آپ نے میری طرف توجہ فرمائی اور کہا، اے ابن عباس ! کیا تم بھی یہی کہتے ہو؟ میں نے کہا، نہیں۔ فرمایا، تم کیا کہتے ہو؟ میں نے کہا کہ اس میں رسول اللہ ﷺ کی وفات کی طرف اشارہ ہے کہ جب اللہ تعالیٰ کی مدد اور فتح حاصل ہو گئی یعنی فتح مکہ، تو یہ آپ کی وفات کی نشانی ہے۔ اس لیے آپ اپنے رب کی حمد اور تسبیح کریں اور اس کی مغفرت طلب کریں کہ وہ توبہ قبول کرنے والا ہے۔ عمر  ؓ نے کہا کہ جو کچھ تم نے کہا وہی میں سمجھتا ہوں۔ [ بخاری، کتاب التفسیر، باب ( فسبح بحمدک ربک ۔۔ الخ ) : ٤۹۷۰، ٤۲۹٤ ]
اِذَا جَاۗءَ نَصْرُ اللّٰهِ وَالْفَتْحُ : فتح سے مراد یہاں فتح مکہ ہے۔ سیدنا عبداللہ بن عباس  ؓ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ (مکہ فتح کرنے کے لیے) مدینہ منورہ سے نکلے، رمضان کا مہینا تھا۔ آپ ﷺ کے ہمراہ دس ہزار کا لشکر تھا اور آپ کو مدینہ میں تشریف لائے ہوئے ساڑھے آٹھ سال ہونے کو تھے۔ چنانچہ رسول اللہ ﷺ اور آپ کے ساتھ جو مسلمان تھے وہ مکہ کی طرف روانہ ہوئے، تو اس وقت آپ ﷺ بھی روزہ رکھے ہوئے تھے اور آپ کے ساتھ مسلمانوں نے بھی روزہ رکھا ہوا تھا۔ [ بخاری، کتاب المغازی، باب غزوۃ الفتح فی رمضان : ٤۲۷٦۔ مسلم، کتاب الصیام، باب جواز الصوم والفطر ۔۔ الخ : ۱۱۱۳ ]
سیدنا ابوہریرہ  ؓ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: ’’کل ان شاء اللہ ہمارا قیام مقام خیف بنی کنانہ میں ہو گا، جہاں قریش کے لوگوں نے کفر پر قسم کھائی تھی۔‘‘ [ بخاری، کتاب المغازی، باب أین رکز النبی ﷺ الرایۃ یوم الفتح ؟ : ٤۲۸۵ ]
سیدنا ابوہریرہ  ؓ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ چلتے رہے، یہاں تک کہ مکہ میں داخل ہوئے۔ آپ نے ایک جانب زبیر  ؓ کو بھیجا اور دوسری جانب خالد بن ولید  ؓ کو اور ابو عبیدہ بن الجراح  ؓ کو ان لوگوں کا سردار بنایا جن کے پاس زرہیں نہ تھیں۔ انھوں نے گھاٹی کے اندر سے راستہ اختیار کیا اور رسول اللہ ﷺ لشکر کے ایک حصے میں تشریف فرما تھے۔ آپ نے مجھے دیکھا تو فرمایا : ’’ ابوہریرہ!‘‘ میں نے کہا، اے اللہ کے رسول ! میں حاضر ہوں۔ آپ نے فرمایا: ’’صرف انصارکو بلاؤ کہ وہ میرے پاس آئیں۔‘‘ میں نے انھیں آواز دی اور وہ سب آپ کے اردگرد جمع ہو گئے۔ دوسری جانب (کفار) قریش کا منظر یہ تھا کہ انھوں نے ایک منصوبے کے تحت اپنے اوباش اور تابع دار اکٹھے کیے اور طے کیا کہ ہم مقابلے کے لیے ان کو مسلمانوں کے آگے کرتے ہیں۔ اگر کامیابی کے کوئی آثار پیدا ہوئے تو ہم بھی مدد کو ان کے ساتھ مل جائیں گے اور اگر کوئی آفت آئی (یعنی یہ مارے گئے) تو (مقابلہ کرنے کے جرم میں) جو ہم سے مانگا گیا وہ دے دیں گے۔ ( اس صورت حال کا آپ کو علم ہوا تو) آپ نے فرمایا : ’’تم دیکھتے ہو قریش کے اوباش چھوکروں اور ان کے تابع داروں کو؟‘‘ اور اس کے ساتھ ہی آپ نے اپنا دایاں ہاتھ بائیں ہاتھ پر مارا (یعنی مارو مکہ کے کافروں کو اور ان میں سے کسی کو نہ چھوڑو)۔ اور فرمایا : ’’(اس کے بعد) تم مجھے صفا پر ملو۔‘‘ ابوہریرہ  ؓ نے فرمایا، پھر ہم چل پڑے، ہم میں سے جس کا دل چاہتا کہ کسی(کافر) کو قتل کر دے تو وہ اسے قتل کر ڈالتا، کسی (کافر) میں ہمارا مقابلہ کرنے کی ہمت نہ تھی۔ [ مسلم، کتاب الجھاد، باب فتح مکۃ : ۱۷۸۰ ]
سیدنا انس  ؓ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ فتح مکہ کے دن مکہ میں داخل ہوئے تو اس وقت آپ کے سر پر خود تھا، جب آپ نے خود اتارا تو ایک شخص آیا اور کہنے لگا، یا رسول اللہ! عبداللہ بن خطل کعبے کے پردوں سے چمٹا ہوا ہے۔ آپ نے فرمایا: ’’اسے (وہیں) قتل کر دو۔‘‘ [ بخاری، کتاب المغازی، باب أین رکز النبی ﷺ الرایۃ یوم الفتح؟ : ٤۲۸٦ ]
سیدنا عبداللہ بن مسعود  ؓ بیان کرتے ہیں کہ جب رسول اللہ ﷺ فتح مکہ کے دن مکہ میں داخل ہوئے تو کعبہ کے گرد چاروں طرف تین سو ساٹھ بت رکھے ہوئے تھے۔ آپ کے ہاتھ میں ایک لکڑی تھی، آپ اس کے ساتھ بت کو کچوکا مارتے اور یہ آیت تلاوت فرماتے جاتے : (جَاۗءَ الْحَقُّ وَزَهَقَ الْبَاطِلُ ۭ اِنَّ الْبَاطِلَ كَانَ زَهُوْقًا) [ بنی إسرائیل : ۸۱ ] ’’حق آگیا اور باطل مٹ گیا، بے شک باطل مٹنے والا تھا۔‘‘ اور یہ آیت : (جَاۗءَ الْحَـقُّ وَمَا يُبْدِئُ الْبَاطِلُ وَمَا يُعِيْدُ) [ سبا : ٤۹ ] ’’حق آ گیا اور باطل نہ پہلی دفعہ کچھ کرتا ہے اور نہ دوبارہ کرتا ہے۔‘‘ [ بخاری، کتاب المغازی، باب أین رکز النبی ﷺ الرایۃ یوم الفتح ؟ : ٤۲۸۷، ٤۷۲۰۔ مسلم، کتاب الجہاد، باب إزالۃ الأصنام من حول الکعبۃ : ۱۷۸۱]
سیدنا عبداللہ بن عباس  ؓ بیان کرتے ہیں کہ جب رسول اللہ ﷺ فتح مکہ کے وقت مکہ پہنچے تو بتوں کی موجودگی میں بیت اللہ میں داخل ہونے سے انکار کر دیا۔ آپ نے ان سب کو نکالنے کا حکم دیا، چنانچہ انھیں باہر نکال دیا گیا، ان میں سے ایک تصویر ابراہیم علیہ السلام اور اسماعیل علیہ السلام کی بھی تھی، ان کے ہاتھوں میں فال کے تیر تھے۔ آپ نے فرمایا: ’’اللہ ان مشرکوں کو ہلاک کرے، ان مشرکوں کو اچھی طرح معلوم ہے کہ ابراہیم اور اسماعیل علیہ السلام نے کبھی ان تیروں کے ذریعے سے قسمت معلوم کرنے کے لیے فال نہیں نکالی۔‘‘ [ بخاری، کتاب المغازی، باب أین رکز النبی ﷺ الرایۃ یوم الفتح ؟ : ٤۲۸۸ ]

وَرَاَيْتَ النَّاسَ يَدْخُلُوْنَ فِيْ دِيْنِ اللّٰهِ اَفْوَاجًا: یعنی فتح مکہ کے بعد لوگ جوق در جوق اسلام قبول کرنے لگے، جیسا کہ سیدنا عمرو بن سلمہ  ؓ بیان کرتے ہیں کہ ہم ایسے چشمے کے پاس ر ہا کرتے تھے جو لوگوں کی عام گزر گاہ تھی، سوار ہمارے پاس سے گزرا کرتے تھے۔ ہم ان سے پوچھتے رہتے تھے، کہو ! لوگوں کا کیا حال ہے؟ اس شخص کی کیا کیفیت ہے؟ وہ کہتے، وہ شخص دعویٰ کرتا ہے کہ اللہ نے اس کو رسول بنا کر بھیجا ہے اور اللہ اس پر وحی نازل کرتا ہے، یا، اللہ نے ان پر وحی نازل کی ہے (اور وہ قرآن کی کوئی آیت سناتے) تو میں اس وحی کو یاد کر لیتا تھا۔ گویا وہ میرے سینے میں جم جاتی تھی۔ ادھر سارے عرب والے فتح مکہ پر اپنے اسلام کو موقوف کیے ہوئے تھے۔ وہ کہتے تھے، انھیں اور ان کی قوم کو چھوڑ دو، اگر وہ ان پر غالب آ گئے تو وہ سچے پیغمبر ہیں۔ پھر جب مکہ فتح ہو گیا تو ہر قوم نے اسلام لانے میں سبقت کی۔ میرے باپ نے بھی اسلام قبول کرنے میں میری قوم کے مقابلہ میں سبقت کی۔ جب وہ آئے تو کہنے لگے، اللہ کی قسم! میں سچے پیغمبر سے مل کر تمھارے پاس آ رہا ہوں، آپ نے فرمایا : ’’فلاں وقت فلاں نماز پڑھو، فلاں وقت فلاں نماز پڑھو اور جب نماز کا وقت آ جائے تو تم میں سے ایک آدمی اذان دے اور جس کو زیادہ قرآن یاد ہو وہ نماز پڑھائے۔‘‘ میری قوم کے لوگوں نے دیکھا تو مجھ سے زیادہ کسی کو قرآن یاد نہ تھا، کیونکہ میں مسافر سواروں سے سن سن کر قرآن یاد کر لیا کرتا تھا۔ انھوں نے مجھ ہی کو امام بنایا، حالانکہ اس وقت میری عمر چھ یا سات سال کی تھی۔ [ بخاری، کتاب المغازی، بابٌ : ٤۳۰۲ ]

فَسَبِّحْ بِحَمْدِ رَبِّكَ وَاسْتَغْفِرْهُ ڼ اِنَّهٗ كَانَ تَوَّابًا: سیدنا شداد بن اوس  ؓ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: ’’سید الاستغفار یہ ہے کہ بندہ یوں کہے : (( اَللّٰھُمَّ اَنْتَ رَبِّیْ، لَا اِلٰہَ اِلاَّ اَنْتَ خَلَقْتَنِیْ وَاَنَا عَبْدُکَ وَاَنَا عَلٰی عَھْدِکَ وَوَعْدِکَ مَا اسْتَطَعْتُ اَعُوْذُ بِکَ مِنْ شَرِّ مَا صَنَعْتُ، اَبُوْءُ لَکَ بِنِعْمَتِکَ عَلَیَّ، وَاَبُوْءُ بِذَنْبِیْ، فَاغْفِرْ لِیْ فَإِنَّہُ لَا یَغْفِرُ الذُّنُوْبَ اِلاَّ اَنْتَ ))’’اے اللہ! تو میرا رب ہے، تیرے سوا کوئی معبود نہیں، تو نے ہی مجھے پیدا کیا اور میں تیرا بندہ ہوں اور میں جہاں تک طاقت رکھتا ہوں تیرے عہد اور وعدے پر قائم ہوں۔ میں نے جو کچھ کیا اس کے شر سے تیری پناہ مانگتا ہوں، میں ان نعمتوں کا اقرار کرتا ہوں جو تونے مجھ پر کیں اور میں اپنے گناہوں کا اقرار کرتا ہوں ، پس تو مجھے معاف کر دے، کیونکہ تیرے سوا کوئی گناہوں کو معاف کرنے والا نہیں۔‘‘ آپ نے فرمایا : ’’جو شخص یہ کلمات استغفار دن میں یقین کے ساتھ پڑھے اور شام ہونے سے پہلے اسے موت آ جائے تو وہ جنتی ہے اور جو اسے یقین کے ساتھ رات کو پڑھے اور صبح ہونے سے پہلے اسے موت آ جائے تو وہ جنتی ہے۔‘‘ [ بخاری، کتاب الدعوات، باب أفضل الاستغفار ۔۔ الخ : ٦۳۰٦ ]
سیدہ عائشہ  ؓ بیان کرتی ہیں کہ رسول اللہ ﷺ اپنے رکوع اور سجدے میں یہ دعا کثرت سے پڑھا کرتے تھے : ((سُبْحَانَکَ اللّٰھُمَّ رَبَّنَا وَبِحَمْدِکَ اَللَّھُمَّ اغْفِرْ لِیْ ))’’پاک ہے تو اے اللہ! اے ہمارے رب ! اپنی تعریف کے ساتھ، اے ہمارے رب مجھے بخش دے۔‘‘ آپ قرآن ( میں جو حکم دیا گیا تھا اس) کی تعمیل کرتے تھے۔ [بخاری، کتاب التفسیر، بابٌ : ٤۹٦۸۔ مسلم، کتاب الصلوۃ، باب ما یقال فی الرکوع والسجود ؟: ٤۸٤ ]
سیدہ عائشہ  ؓ بیان کرتی ہیں کہ رسول اللہ ﷺ اکثر یہ دعا پڑھا کرتے تھے : (( سُبْحَانَ اللّٰہِ وَبِحَمْدِہٖ اَسْتَغْفِرُاللّٰہَ وَاَتُوْبُ اِلَیْہِ )) میں نے عرض کی، اے اللہ کے رسول! میں دیکھتی ہوں کہ آپ یہ دعا : (( سُبْحَانَ اللّٰہِ وَبِحَمْدِہٖ اَسْتَغْفِرُ اللّٰہَ وَاَتُوْبُ اِلَیْہِ )) بہت زیادہ پڑھتے ہیں۔ آپ نے فرمایا : ’’مجھ سے میرے رب نے بیان کیا کہ تم اپنی امت میں ایک نشانی دیکھو گے تو جب میں نے اس نشانی کو دیکھ لیا تو میں نے کثرت سے یہ تسبیح پڑھنا شروع کر دی : (( سُبْحَانَ اللّٰہِ وَبِحَمْدِہٖ اَسْتَغْفِرُاللّٰہَ وَاَتُوْبُ اِلَیْہِ )) یعنی وہ نشانی میں نے دیکھ لی (اور وہ یہ ہے) : (اِذَا جَاۗءَ نَصْرُ اللّٰهِ وَالْفَتْحُ)’’جب اللہ کی مدد اور فتح آ جائے۔‘‘ یعنی فتح مکہ اور : (ۙوَرَاَيْتَ النَّاسَ يَدْخُلُوْنَ فِيْ دِيْنِ اللّٰهِ اَفْوَاجًا Ą۝ۙفَسَبِّحْ بِحَمْدِ رَبِّكَ وَاسْتَغْفِرْهُ ڼ اِنَّهٗ كَانَ تَوَّابًا) ’’اور تو لوگوں کو دیکھے کہ وہ اللہ کے دین میں فوج در فوج داخل ہو رہے ہیں۔ تو اپنے رب کی حمد کے ساتھ تسبیح کر اور اس سے بخشش مانگ، یقیناًوہ ہمیشہ سے بہت توبہ قبول کرنے والا ہے۔‘‘ [ مسلم، کتاب الصلوۃ، باب ما یقال فی الرکوع والسجود؟ :۲۲۰؍٤۸٤ ]
سیدنا ابوہریرہ  ؓ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا : ’’جو شخص کسی مجلس میں بیٹھے اور اس میں اس کی غپ شب اور لغو باتیں زیادہ ہو جائیں اور وہ اس مجلس سے اٹھنے سے پہلے یہ دعا پڑھ لے : (( سُبْحَانَکَ اللّٰھُمَّ وَبِحَمْدِکَ اَشْھَدُ اَنْ لَّا اِلٰہَ اِلَّا اَنْتَ اَسْتَغْفِرُکَ وَاَتُوْبُ اِلَیْکَ ))’’اے اللہ ! تو پاک ہے اپنی حمد کے ساتھ، میں گواہی دیتا ہوں کہ تیرے علاوہ کوئی عبادت کے لائق نہیں، میں تجھ سے بخشش مانگتا ہوں اور تیری طرف توبہ کرتا ہوں۔‘‘ تو اس مجلس میں اس سے جو کچھ ہوا وہ معاف کر دیا جاتا ہے۔‘‘ [ ترمذی، کتاب الدعوات، باب ما یقول إذا قام من مجلسہ : ۳٤۳۳ ]