Sunday, 17 June 2012

بشارتِ مقامِ امام ابوحنیفہؒ قرآن, حدیث اور علماءِ سلف سے


حافظ ابن کثیر شافعیؒ نے امام اعظم ابوحنیفہؒ کے بارے میں فرمایا ہے : وہ امام ابوحنیفہ نعمان بن ثابت کوفی ہیں ، عراق کے فقیہ ، ائمہ اسلام میں سے ایک ہیں ، عظیم سرداروں میں سے ایک ہیں ، ارکان علماء میں سے ہیں ، صاحب مذاہب متبوعہ کے چار اماموں میں سے ایک ہیں ، طویل حیات پائے ، اس لیے انہوں نے صحابہ کا زمانہ پایا اور حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ کو دیکها اور حضرات نے ذکر کیا ہے کہ انہوں نے(امام صاحب نے) سات صحابہ سے روایت کی ہے. ۔۔۔ 
امام صاحب کی وفات 150 ھجری میں ہوئی۔ [البدایہ والنہایہ ج10 ص 123]

قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ" تُرْفَعُ زِينَةُ الدُّنْيَا سَنَةَ خَمْسٍ وَعِشْرِينَ وَمِائَةٍ " .
رسول اللہ ﷺ نے ارشاد فرمایا: اٹھ جائے گی زینت دنیا کی 150 سال میں۔
[مسند البزار:1027، مسند أبي يعلى:851، جامع المسانيد والسُّنَن، لابن کثیر:7069، مجمع الزوائد:12091، إتحاف الخيرة المهرة:414+7439، المطالب العالية، لابن حجر العسقلانی:4481]





القرآن: (1) ... اور اگر تم منہ پھیرو گے تو وہ تمہاری جگہ اور لوگوں کو لے آئے گا اور وہ تمہاری طرح کے نہیں ہوں گے.[سوره محمّد:٣٨]

حدیث میں ہے صحابہ رضوان اللہ علیہم اجمعین نے عرض کیا یا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم! وہ دوسری قوم کون ہے جس کی طرف اشارہ ہوا ہے۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے حضرت سلیمان فارسی رضی اللہ عنہ پرہاتھ رکھ کر فرمایا "اس کی قوم "اور فرمایا" خدا کی قسم اگر ایمان ثریا پر جا پہنچے تو فارس کے لوگ وہاں سے بھی اس کو اتار لائیں گے۔ [جامع ترمذی:جلد دوم:حدیث نمبر 1208+1209, قرآن کی تفسیر کا بیان: سورت محمد کی تفسیر]

"الحمد للہ صحابہ رضوان اللہ عنہم نے اس بینظیر ایثار اور جوش ایمانی کا ثبوت دیا کہ ان کی جگہ دوسری قوم کو لانے کی نوبت نہ آئی۔ تاہم فارس والوں نے اسلام میں داخل ہو کر علم اور ایمان کا وہ شاندار مظاہرہ کیا اور ایسی زبردست دینی خدمات انجام دیں جنہیں دیکھ کر ہر شخص کو ناچار اقرار کرنا پڑتا ہے کہ بیشک حضور صلی اللہ علیہ وسلم کی پیشین گوئی کے موافق یہ ہی قوم تھی جو بوقت ضرورت عرب کی جگہ پر کر سکتی تھی۔ ہزارہا علماء و آئمہ سے قطع نظر کر کے تنہا امام اعظم ابو حنیفہؒ کا وجود ہی اس پیشین گوئی کے صدق پر کافی شہادت ہے۔ بلکہ اس بشارت عظمیٰ کا کامل اور اولین مصداق امام صاحب ہی ہیں۔

(2) اور (اس رسول کی بعثت) دوسرے لوگوں کے لئے بھی ہے جو ابھی ان (مسلمانوں سے) نہیں ملے...[الجمعہ:٣]

یعنی یہ ہی رسول دوسرے آنے والے لوگوں کے واسطے بھی ہے جن کو مبدأ و معاد اور شرائع سماویہ کا پورا اور صحیح علم نہ رکھنے کی وجہ سے ان پڑھ ہی کہنا چاہیے۔ مثلاً فارس، روم، چین اور ہندوستان وغیرہ کی قومیں جو بعد کو امیین کے دین اور اسلامی برادری میں شامل ہو کر ان ہی میں سے ہوگئیں۔ حضرت شاہ صاحب لکھتے ہیں۔ "حق تعالیٰ نے اول عرب پیدا کیے اس دین کے تھامنے والے، پیچھے عجم میں ایسے کامل لوگ اٹھے۔" حدیث میں ہے کہ جب آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے (وَّاٰخَرِيْنَ مِنْهُمْ لَمَّا يَلْحَقُوْا بِهِمْ ۭ وَهُوَ الْعَزِيْزُ الْحَكِيْمُ) 63۔ الجمعہ:3) کی نسبت سوال کیا گیا تو سلمان فارسی کے شانہ پر ہاتھ رکھ کر فرمایا کہ اگر "علم یا دین" ثریا پر جا پہنچے گا تو (اس کی قوم فارس کا مرد وہاں سے بھی لے آئے گا)[صحیح بخاری:جلد دوم:حدیث نمبر 2040, تفاسیر کا بیان : تفسیر سورت جمعہ;صحیح مسلم:جلد سوم:حدیث نمبر 1997, فضائل کا بیان: فارس والوں کی فضلیت کے بیان میں]

حَدَّثَنِي مُحَمَّدُ بْنُ رَافِعٍ ، وَعَبْدُ بْنُ حميد ، قَالَ عَبْدٌ : أَخْبَرَنَا ، وقَالَ ابْنُ رَافِعٍ حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّزَّاقِ ، أَخْبَرَنَا مَعْمَرٌ ، عَنْ جَعْفَرٍ الْجَزَرِيِّ، عَنْ يَزِيدَ بْنِ الْأَصَمِّ ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ ، قَالَ : قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ : " لَوْ كَانَ الدِّينُ عِنْدَ الثُّرَيَّا لَذَهَبَ بِهِ رَجُلٌ مِنْ فَارِسَ ، أَوَ قَالَ : مِنْ أَبْنَاءِ فَارِسَ حَتَّى يَتَنَاوَلَهُ " .
[صحيح مسلم » كِتَاب فَضَائِلِ الصَّحَابَةِ » بَاب فَضْلِ فَارِسَ ... رقم الحديث: 4624]
[مسند أحمد بن حنبل » مُسْنَدُ الْعَشَرَةِ الْمُبَشَّرِينَ بِالْجَنَّةِ ... » بَاقِي مُسْنَد المُكْثِرِينَ مِنَ الصَّحَابَةِ » مُسْنَدُ أَبِي هُرَيْرَةَ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ ... رقم الحديث: 7882]
[دلائل النبوة للبيهقي » الْمَدْخَلُ إِلَى دَلائِلِ النُّبُوَّةِ وَمَعْرِفَةِ ... » جُمَّاعُ أَبْوَابِ غَزْوَةِ تَبُوكَ » بَابُ : قَوْلِ اللَّهِ عَزَّ وَجَلَّ : /30 وَعَدَ ... (3/216) رقم الحديث: 2608]
الشواهد
 م طرف الحديثالصحابياسم الكتابأفقالعزوالمصنفسنة الوفاة
1لو كان الإيمان عند الثريا لناله رجال من هؤلاءعبد الرحمن بن صخرصحيح البخاري45434898محمد بن إسماعيل البخاري256
2لو كان الدين عند الثريا لذهب به رجل من فارس حتى يتناولهعبد الرحمن بن صخرصحيح مسلم46242548مسلم بن الحجاج261
3لو كان الإيمان عند الثريا لناله رجال من هؤلاءعبد الرحمن بن صخرصحيح مسلم46252548مسلم بن الحجاج261
4وإن تتولوا يستبدل قوما غيركم ثم لا يكونوا أمثالكمعبد الرحمن بن صخرجامع الترمذي32023260محمد بن عيسى الترمذي256
5لو كان الإيمان منوطا بالثريا لتناوله رجال من فارسعبد الرحمن بن صخرجامع الترمذي32033261محمد بن عيسى الترمذي256
6لو كان الإيمان بالثريا لتناوله رجال من هؤلاءعبد الرحمن بن صخرجامع الترمذي32513310محمد بن عيسى الترمذي256
7لو كان الإيمان بالثريا لتناوله رجال من هؤلاءعبد الرحمن بن صخرجامع الترمذي38983933محمد بن عيسى الترمذي256
8لو كان العلم بالثريا لتناوله أناس من أبناء فارسعبد الرحمن بن صخرمسند أحمد بن حنبل77517890أحمد بن حنبل241
9لو كان الدين عند الثريا لذهب رجل من فارس حتى يتناولهعبد الرحمن بن صخرمسند أحمد بن حنبل78828020أحمد بن حنبل241
10لو كان الإيمان عند الثريا لناله رجال من هؤلاءعبد الرحمن بن صخرمسند أحمد بن حنبل92019134أحمد بن حنبل241
11لو كان العلم بالثريا لتناوله ناس من أبناء فارسعبد الرحمن بن صخرمسند أحمد بن حنبل92359153أحمد بن حنبل241
12لو كان العلم بالثريا لتناوله ناس من أبناء فارسعبد الرحمن بن صخرمسند أحمد بن حنبل98489715أحمد بن حنبل241
13وإن تتولوا يستبدل قوما غيركم ثم لا يكونوا أمثالكم قالوا يا رسول الله من هؤلاء الذين إن تولينا استبدلوا بنا ثم لا يكونوا أمثالنا فضرب على فخذ سلمان الفارسي ثم قال هذا وقومه لو كان الدين عند الثريا لتناوله رجال من فارسعبد الرحمن بن صخرصحيح ابن حبان727816 : 62أبو حاتم بن حبان354
14لو كان الإيمان معلقا بالثريا لتناوله رجال من قوم هذاعبد الرحمن بن صخرصحيح ابن حبان74677308أبو حاتم بن حبان354
15لو كان العلم بالثريا لتناوله ناس من أبناء فارسعبد الرحمن بن صخرصحيح ابن حبان746816 : 299أبو حاتم بن حبان354
16وإن تتولوا يستبدل قوما غيركمعبد الرحمن بن صخرالمستدرك على الصحيحين36392 : 458الحاكم النيسابوري405
17لو كان الإيمان عند الثريا لناله رجال من هؤلاءعبد الرحمن بن صخرالسنن الكبرى للنسائي79578217النسائي303
18نزلت سورة الجمعة فلما قرأ وآخرين منهم لما يلحقوا بهم قال من هؤلاء يا رسول الله فلم يراجعه النبي حتى سأله مرة أو مرتين أو ثلاثا قال وفينا سلمان الفارسي قال فوضع النبي يده على سلمان ثم قال لو كان الإيمان عند الثريا لناله رجال من هؤلاءعبد الرحمن بن صخرالسنن الكبرى للنسائي1107411524النسائي303
19لو كان الدين بالثريا لذهب رجال من فارس أو أبناء فارس حتى يتناولهعبد الرحمن بن صخرمسند إسحاق بن راهويه407468إسحاق بن راهويه238
20لو أن الإيمان معلق بالثريا لتناوله ناس من أبناء فارس وربما قال من بني الحمراء من بني المواليقيس بن سعدالبحر الزخار بمسند البزار31843741أبو بكر البزار292
21لو كان الإيمان معلقا بالثريا لناله رجال من أبناء فارسقيس بن سعدمسند أبي يعلى الموصلي14321438أبو يعلى الموصلي307
22لو كان العلم بالثريا لتناوله رجال من أبناء فارسعبد الرحمن بن صخربغية الباحث عن زوائد مسند الحارث10401044الهيثمي807
23لو كان الإيمان معلقا بالثريا لناله رجال من أبناء فارسقيس بن سعدالمقصد العلي في زوائد أبي يعلى الموصلي جزء13331493الهيثمي807
24لو أن الإيمان معلق بالثريا لتناوله ناس من أبناء فارس وربما قال من بني الحمراء بني المواليقيس بن سعدكشف الأستار26672832نور الدين الهيثمي807
25لو كان الدين معلقا بالثريا لتناوله ناس من أبناء فارسعبد الرحمن بن صخرمصنف ابن أبي شيبة3183433056ابن ابي شيبة235
26لو كان الدين عند الثريا لذهب إليه رجال من أبناء فارس حتى يتناولوهعبد الرحمن بن صخرالجامع لمعمر بن راشد52019923معمر بن راشد الأزدي154
27وإن تتولوا يستبدل قوما غيركم ثم لا يكونوا أمثالكمعبد الرحمن بن صخرالمعجم الأوسط للطبراني90708838سليمان بن أحمد الطبراني360
28لو كان الدين معلقا بالثريا لتناوله ناس من أبناء فارسعبد الله بن مسعودالمعجم الكبير للطبراني1032310470سليمان بن أحمد الطبراني360
29لو كان الإيمان معلقا بالثريا لناله رجال من فارسقيس بن سعدالمعجم الكبير للطبراني15314900سليمان بن أحمد الطبراني360
30لو كان الدين معلقا بالثريا لتناوله قوم من أبناء فارسمندوسمعجم الصحابة لابن قانع17581991ابن قانع البغدادي351
31لو كان الإيمان منوطا بالثريا لتناوله رجال من فارسعبد الرحمن بن صخرحديث إسماعيل بن جعفر257257إسماعيل بن جعفر180
32لو كان العلم معلقا بالثريا لتناوله قوم من أبناء فارسعبد الرحمن بن صخرجزء ابن الغطريف5757ابن الغطريف الجرجاني377
33لو كان الدين معلقا بالثريا لناله رجال من بني فارسعبد الرحمن بن صخرفوائد تمام الرازي460498تمام بن محمد الرازي414
34لو أن العلم معلق بالثريا لتناوله رجال من أبناء فارسعبد الرحمن بن صخرأحاديث الشاموخي عن شيوخه33الشاموخي443
35لو كان الدين معلقا بالثريا لناله رجل أو رجال من أبناء فارسعبد الرحمن بن صخرجزء من حديث أبي بكر بن المقرئ50---محمد بن عبد الرحمن المقرئ618
36لو كان الدين معلقا بالثريا لناله رجل أو رجال من أبناء فارسعبد الرحمن بن صخرالثالث عشر من فوائد ابن المقرئ51---أبو بكر بن المقرئ381
37لو كان العلم معلقا بالثريا لتناولته أناس من أبناء فارسعبد الرحمن بن صخرالطيوريات4713 : 1173أبو الحسن الطيوري500
38لو كان الإيمان بالثرياعبد الرحمن بن صخرالاختلاف بين رواة البخاري76---يوسف بن عبد الهادي909
39لو كان العلم بالثريا لتناوله ناس من أبناء فارسعبد الرحمن بن صخرجزء أبي عبد الله العطار26---محمد بن مخلد بن حفص العطار331
40لو كان العلم معلقا بالثريا لتناوله قوم من أبناء فارسعبد الرحمن بن صخرالأمالي الخميسية للشجري250---يحيى بن الحسين الشجري الجرجاني499
41لو أن الدين بالثريا لتناوله رجال من الفرسعبد الرحمن بن صخرالسنن الواردة في الفتن للداني368366عثمان بن سعيد الداني444
42لو كان الإيمان عند الثريا لناله رجال من هؤلاءعبد الرحمن بن صخرشرح السنة39063998الحسين بن مسعود البغوي516
43لو كان الدين عند الثريا لذهب إليه رجال من أبناء فارس حتى يتناولوهعبد الرحمن بن صخرشرح السنة39073999الحسين بن مسعود البغوي516
44وإن تتولوا يستبدل قوما غيركم ثم لا يكونوا أمثالكمعبد الرحمن بن صخرشرح السنة39084000الحسين بن مسعود البغوي516
45هذا وقومه ولو كان الدين عند الثريا لتناوله رجال من الفرسعبد الرحمن بن صخرمشكل الآثار للطحاوي17932134الطحاوي321
46لو كان الإيمان بالثريا لناله رجال من فارسعبد الرحمن بن صخرمشكل الآثار للطحاوي1795---الطحاوي321
47لو كان الإيمان بالثريا لناله ناس من أهل فارسقيس بن سعدمشكل الآثار للطحاوي19122295الطحاوي321
48لو كان الدين بالثريا لناله رجال من هؤلاءعبد الرحمن بن صخرمشكل الآثار للطحاوي19132296الطحاوي321
49لو كان الإيمان بالثريا لناله رجال من هؤلاءعبد الرحمن بن صخرمشكل الآثار للطحاوي19142297الطحاوي321
50لو كان الدين بالثريا لناله رجال من الفرسعبد الرحمن بن صخرمشكل الآثار للطحاوي19152298الطحاوي321
51لو أن العلم بالثريا لتناوله رجال من أبناء فارسعبد الرحمن بن صخرمشكل الآثار للطحاوي19172300الطحاوي321
52وإن تتولوا يستبدل قوما غيركم ثم لا يكونوا أمثالكمعبد الرحمن بن صخرجامع البيان عن تأويل آي القرآن2906821 : 233ابن جرير الطبري310
53وإن تتولوا يستبدل قوما غيركم ثم لا يكونوا أمثالكمعبد الرحمن بن صخرجامع البيان عن تأويل آي القرآن2906921 : 234ابن جرير الطبري310
54وإن تتولوا يستبدل قوما غيركم ثم لا يكونوا أمثالكمعبد الرحمن بن صخرجامع البيان عن تأويل آي القرآن2907021 : 234ابن جرير الطبري310
55لو كان الإيمان عند الثريا لناله رجال من هؤلاءعبد الرحمن بن صخرجامع البيان عن تأويل آي القرآن3166622 : 630ابن جرير الطبري310
56لو كان الإيمان عند الثريا لناله رجال من هؤلاءعبد الرحمن بن صخرتفسير ابن أبي حاتم1705018890ابن أبي حاتم الرازي327
57وإن تتولوا يستبدل قوما غيركم ثم لا يكونوا أمثالكمعبد الرحمن بن صخرمعالم التنزيل تفسير البغوي11081102الحسين بن مسعود البغوي516
58لو كان الإيمان عند الثريا لناله رجال من هؤلاءعبد الرحمن بن صخرمعالم التنزيل تفسير البغوي12561246الحسين بن مسعود البغوي516
59لو كان الدين عند الثريا لذهب إليه رجال من أبناء فارس حتى يتناولوهعبد الرحمن بن صخرمعالم التنزيل تفسير البغوي12571247الحسين بن مسعود البغوي516
60لو كان الدين عند الثريا لتناوله رجال من فارسعبد الرحمن بن صخرالجامع في تفسير القرآن40145عبد الله بن وهب197
61وآخرين منهم لما يلحقوا بهم فقال رجل منهم من هؤلاء يا رسول الله فلم يجبه حتى سأله ثلاث مرات وفينا سلمان الفارسي فوضع رسول الله يده على سلمان فقال لو كان الإيمان عند الثريا لناله رجال من هؤلاءعبد الرحمن بن صخرالجامع في تفسير القرآن15480عبد الله بن وهب197
62لو كان الإيمان منوطا بالثريا لتناوله رجال من أهل فارسعبد الرحمن بن صخرالوسيط في تفسير القرآن المجيد8424 : 130الواحدي468
63لو كان العلم منوطا بالثريا لتناوله رجال من أبناء فارسعبد الرحمن بن صخرحلية الأولياء لأبي نعيم79187925أبو نعيم الأصبهاني430
64لو كان الإيمان عند الثريا لناله رجال من هؤلاءعبد الرحمن بن صخردلائل النبوة للبيهقي2608---البيهقي458
65لو كان الإيمان مناطا بالثريا لتناوله رجال من فارسعبد الرحمن بن صخردلائل النبوة للبيهقي2609---البيهقي458
66لو كان الدين معلقا بالثريا لتناوله قوم من أبناء فارسعبد الله بن مسعودتاريخ واسط لأسلم بن سهل الرزاز6461 : 220أسلم بن سهل الرزاز292
67لو كان الإيمان عند الثريا لناله رجال من هؤلاءعبد الرحمن بن صخرأخبار أصبهان لأبي نعيم11 : 20أبو نعيم الأصبهاني430
68لو كان الإيمان بالثريا لناله رجال من هؤلاءعبد الرحمن بن صخرأخبار أصبهان لأبي نعيم21 : 21أبو نعيم الأصبهاني430
69إن تتولوا يستبدل قوما غيركم ثم لا يكونوا أمثالكمعبد الرحمن بن صخرأخبار أصبهان لأبي نعيم31 : 21أبو نعيم الأصبهاني430
70وإن تتولوا يستبدل قوما غيركمعبد الرحمن بن صخرأخبار أصبهان لأبي نعيم41 : 21أبو نعيم الأصبهاني430
71وإن تتولوا يستبدل قوما غيركمعبد الرحمن بن صخرأخبار أصبهان لأبي نعيم51 : 22أبو نعيم الأصبهاني430
72اقتربوا يا بني فروخ إلى الذكر والله إن منكم لرجالا لو أن العلم معلق بالثريا لتناولوهعبد الرحمن بن صخرأخبار أصبهان لأبي نعيم61 : 22أبو نعيم الأصبهاني430
73لو كان الدين عند الثريا لذهب رجال من أبناء فارس حتى يتناولوهعبد الرحمن بن صخرأخبار أصبهان لأبي نعيم71 : 22أبو نعيم الأصبهاني430
74لو كان العلم بالثريا لتناوله رجال من أبناء فارسعبد الرحمن بن صخرأخبار أصبهان لأبي نعيم81 : 23أبو نعيم الأصبهاني430
75أعظم الناس نصيبا في الإسلام أهل فارس لو كان الإسلام في الثريا لتناوله رجال من أهل فارسعبد الرحمن بن صخرأخبار أصبهان لأبي نعيم91 : 23أبو نعيم الأصبهاني430
76لو كان الدين معلقا بالثريا لتناوله ناس من فارسعبد الرحمن بن صخرأخبار أصبهان لأبي نعيم101 : 23أبو نعيم الأصبهاني430
77لو أن الدين معلق بالثريا لناله رجال من فارسعبد الرحمن بن صخرأخبار أصبهان لأبي نعيم111 : 23أبو نعيم الأصبهاني430
78وإن تتولوا يستبدل قوما غيركم ثم لا يكونوا أمثالكمعبد الرحمن بن صخرأخبار أصبهان لأبي نعيم121 : 23أبو نعيم الأصبهاني430
79لو كان العلم معلقا بالثريا لتناوله ناس من أبناء فارسعبد الرحمن بن صخرأخبار أصبهان لأبي نعيم131 : 23أبو نعيم الأصبهاني430
80لو كان العلم معلقا بالثريا لتناوله ناس من أبناء فارسعبد الرحمن بن صخرأخبار أصبهان لأبي نعيم141 : 24أبو نعيم الأصبهاني430
81لو كان هذا العلم بالثريا لناله قوم من أهل فارسعبد الرحمن بن صخرأخبار أصبهان لأبي نعيم171 : 24أبو نعيم الأصبهاني430
82لو أن الإيمان معلق بالثريا لتناوله رجال من فارسعبد الرحمن بن صخرأخبار أصبهان لأبي نعيم181 : 24أبو نعيم الأصبهاني430
83لو كان الدين معلقا بالثريا لتناوله ناس من أبناء فارسعبد الله بن مسعودأخبار أصبهان لأبي نعيم201 : 24أبو نعيم الأصبهاني430
84لو كان الدين معلقا بالثريا لنالته رجال من أبناء فارسعبد الرحمن بن صخرأخبار أصبهان لأبي نعيم221 : 25أبو نعيم الأصبهاني430
85وإن تتولوا يستبدل قوما غيركمجابر بن عبد اللهأخبار أصبهان لأبي نعيم231 : 25أبو نعيم الأصبهاني430
86لو كان هذا الدين معلقا بالنجم لتمسك به قوم من أهل فارس لرقة قلوبهمسلمان بن الإسلامأخبار أصبهان لأبي نعيم241 : 25أبو نعيم الأصبهاني430
87لو كان الدين معلقا بالثريا لتناوله ناس من أهل فارس يتبعون سنتي ويتبعون آثاري ويكثرون الصلاة علي يا سلمان أحب المجاهدين وأحب المرابطين وأحب الغزاةسلمان بن الإسلامأخبار أصبهان لأبي نعيم251 : 25أبو نعيم الأصبهاني430
88لو كان العلم معلقا بالثريا لناله ناس من أبناء فارسعائشة بنت عبد اللهأخبار أصبهان لأبي نعيم261 : 26أبو نعيم الأصبهاني430
89لو كان الإيمان معلقا بالثريا لناله رجال من فارسعلي بن أبي طالبأخبار أصبهان لأبي نعيم271 : 26أبو نعيم الأصبهاني430
90لو كان الدين معلقا بالثريا لناله ناس من أبناء فارسعبد الرحمن بن صخرأخبار أصبهان لأبي نعيم301 : 26أبو نعيم الأصبهاني430
91لو كان الإيمان معلقا بالثريا لا تناله العرب لناله رجال من فارسقيس بن سعدأخبار أصبهان لأبي نعيم311 : 26أبو نعيم الأصبهاني430
92لو أن الدين معلق بالثريا لتناوله رجال من الفرسعبد الرحمن بن صخرتاريخ بغداد للخطيب البغدادي345911 : 613الخطيب البغدادي463
93وإن تتولوا يستبدل قوما غيركم ثم لا يكونوا أمثالكمعبد الرحمن بن صخرتاريخ دمشق لابن عساكر2071321 : 416ابن عساكر الدمشقي571
94لو كان الإيمان منوطا بالثريا لتناوله رجال من فارسعبد الرحمن بن صخرتاريخ دمشق لابن عساكر2071421 : 416ابن عساكر الدمشقي571
95لو كان العلم معلقا بالثريا لتناوله قوم من أبناء فارسعبد الرحمن بن صخرتاريخ دمشق لابن عساكر2276923 : 218ابن عساكر الدمشقي571
96لو كان الدين بالثريا لناله رجال من أبناء فارسعبد الرحمن بن صخرتاريخ دمشق لابن عساكر54593---ابن عساكر الدمشقي571
97لو كان العلم معلقا بالثريا لتناوله قوم من أبناء فارسعبد الرحمن بن صخرسير أعلام النبلاء الذهبي652---الذهبي748
98لو كان العلم معلقا بالثريا لتناوله قوم من أبناء فارسعبد الرحمن بن صخرسير أعلام النبلاء الذهبي1020---الذهبي748
99لو كان الإيمان معلقا بالثريا لتناوله رجال من أهل فارسقيس بن سعدالسفر الثاني من تاريخ ابن أبي خيثمة1097---ابن أبي خيثمة279
100لو كان الدين معلقا بالثريا لتناوله رجال من أهل فارسقيس بن سعدالسفر الثاني من تاريخ ابن أبي خيثمة1822---ابن أبي خيثمة279
===========================
حضرت امام اعظم رحمہ اللہ کی تابعیت:
ائمہ دین کی گواہیاں:
١) محمد بن اسحاق (المعروف بابن ندیم المتوفی:380ھ) لکھتے ہیں

وكان تابعين لقي عدة من الصحابة وكان من الورعين الزاهدين.
[الفهرست ، لابن نديم: ص # 342]

ترجمہ : وہ تابعین میں سے تھے اور متعدد صحابہ کرام سے ملاقات کی اور آپ تھے متقین (سچے، راسخ العقیدہ) زاہدین (دنیا اور دنیاداروں سے بےرغبت ہوکر الله ہی پر توکل کرنے والوں) میں سے تھے.



٢) امام ابن عبد البر المالکیؒ (المتوفی:463ھہ) لکھتے ہیں:

قال أبو عمر : ذكر محمد بن سعد كاتب الوقدى أن أبا حنيفة رأي أنس بن مالك و عبدالله بن الحارث بن جزء.[جامع بيان العلم وفضله : ص # 54]

ترجمہ : ابو عمر کہتے ہیں : محمد بن سعد کاتب الواقدی فرماتے ہیں کہ : امام ابو حنیفہ نے دیکھا ہے حضرت انس بن مالک اور حضرت عبدالله بن حارث بن جزء (رضی الله عنھما) کو.

٣) شمس الدین ذہبیؒ الشافعی (المتوفی:748 ھہ) اپنی كتاب[تذکرۃ الحفاظ: ١/١٦٨] میں پانچویں طبقہ کے حفاظِ حدیث میں امام صاحب کا ذکر "ابو حنيفة الإمام الأعظم"  کے عنوان سے کرتے ہیں:
"مولده سنة ثمانين رأي مالك بن أنس غير مرة لما قدم عليهم الكوفة"۔
[تذكرة الحفاظ : 1/126 ، الكاشف في معرفة من له رواية في الكتب الستة : 3/191]
ترجمہ: حضرت امامؒ کی پیدائش سنہ ٨٠ھ میں ہوئی، آپؒ نے حضرت انس بن مالکؓ (٩٣ھ) کوجب وہ کوفہ گئے توکئی دفعہ دیکھا۔ 
آگے لکھتے ہیں:
"وحدث عن عطاء ونافع وعبد الرحمن بن هرمز الاعرج وعدى بن ثابت وسلمة بن كهيل وابي جعفر محمد بن علي وقتادة وعمرو بن دينار وابي اسحاق وخلق كثير..... وحدث عنه وكيع ويزيد بن هارون وسعد بن الصلت وابوعاصم وعبد الرزاق وعبيد الله بن موسى وابو نعيم وابو عبد الرحمن المقرى وبشر كثير، وكان اماما ورعا عالماً عاملاً متعبدا کبیرالشان"۔
ترجمہ: امام ابوحنیفہؒ نے عطاء، نافع، عبدالرحمن بن ہرمز الاعرج، سلمہ بن کہیل، ابی جعفر، محمدبن علی، قتادہ، عمرو بن دینار، ابی اسحاق اور بہت سے لوگوں سے حدیث روایت کی ہے اور ابوحنیفہؒ سے وکیع، یزید بن ہارون، سعد بن صلت، ابوعاصم، عبدالرزاق، عبیداللہ بن موسیٰ، ابونعیم، ابوعبدالرحمن المقری اور خلق کثیر نے روایت لی ہے اور ابوحنیفہؒ امام تھے اور زاہد پرہیزگار عالم، عامل، متقی اور بڑی شان والے تھے۔

قرآن و حدیث کی فقہ (سمجھ) میں امام صاحب کی عظمت:
حضرت ضرار بن صرد نے کہا، مجھ سے حضرت یزید بن ہارون نے پوچھا کہ سب سے زیادہ فقہ (سمجھ) والا امام ثوریؒ ہیں یا امام ابوحنیفہؒ ؟ تو انہوں نے کہا کہ: ابوحنیفہؒ (حدیث میں) افقه (سب سے زیادہ فقیہ) ہیں اور سفیانؒ (ثوری) تو سب سے زیادہ حافظ ہیں حدیث میں.

حضرت عبدللہ بن مبارکؒ نے فرمایا : امام ابو حنیفہؒ لوگوں میں سب سے زیادہ فقہ (سمجھ) رکھنے والے تھے.

حضرت امام شافعیؒ فرماتے ہیں : ”جو شخص فقہ حاصل کرنا چاہتا ہے وہ امام ابوحنیفہؒ اور ان کے اصحاب کو لازم پکڑے کیونکہ تمام لوگ فقہ میں امام ابوحنیفہؒ کے عیال (محتاج) ہیں۔“

محدثین کے ذکر میں اسی کتاب میں آگے امام ابوداؤدؒ فرماتے ہیں : "ان ابا حنیفۃ کان اماما"۔
ترجمہ: بے شک ابوحنیفہؒ (حديث میں) امام تھے۔




علماءِ حدیث، حدیث کے راویوں/محدثین کے حالات کی تحقیق میں ان سے مروی خبروں (حدیثوں) میں ان کے ثقہ (قابل اعتماد) ہونے یا ضعیف (اعتماد میں کمزور) ہونے یا کذاب و دجال (جھوٹا اور فریبی) ہونے کا حکم دینے میں ان دو اماموں (امام ذہبیؒ اور امام ابن حجرؒ عسقلانی) کی تحقیق کو حجت مانتے ہیں. اور یہ دونوں امام ابو حنیفہؒ کی علم میں امامت، عمل میں زہد و تقویٰ پر علماء سلف کے اقوال کو شھادتاً پیش کرتے ان کی تعدیل کے و ثقاہت ثابت کرتے ہیں.

یہ اور ان جیسے مزید ائمہ کے اقوال امام ابو حنیفہؒ کی علم، عمل اور تقویٰ میں الامام الحافظ الحجة شهاب الدين أبي فضل أحمد بن علي بن الحجر العسقلانيؒ الشافعی (المتوفی ٨٥٢ھ) کی اسماء الرجال پر لکھی مشہور کتاب [تہذیب التهذیب : ١٠ / ٤٤٩-٤٥١] میں بھی مذکور ہیں

٤) امام يافعي محدث شافعيؒ (المتوفی: 767 ھہ) لکھتے ہیں :
رأي أنسا. [مرآة الجنان وعبرة اليقظان في معرفة ما يعتبر من حوادث الزمان : 4/310]
ترجمہ : انہوں نے دیکھا حضرت انس (بن مالک رضی الله عنہ) کو.

٥) مفسر قرآن ، حافظ الحدیث امام ابن کثیر الشافعیؒ (المتوفی: 774ھہ) لکھتے ہیں : لانه أدرك عصر الصحابة و رأي أنس بن مالك.
[البداية والنهاية ، لابن كثير : ص # 527]
ترجمہ : آپ نے صحابہ کا زمانہ پایا اور حضرت انس بن مالک (رضی الله عنہ) کو دیکھا.


٦) شارح صحیح بخاری، حافظ الحدیث امام ابن حجر العسقلانی الشافعیؒ (المتوفی: 852 ھہ) فرماتے ہیں : رأي أنسا. [تھذیب التھذیب : 6/55]
ترجمہ : انہوں نے دیکھا حضرت انس (بن مالک رضی الله عنہ) کو.
نوٹ : حافظ ابن حجرؒ لا امام ابو حنیفہؒ کو طبقہ سادسہ میں شمار کرنا، یہ آپ کا سہو ہے کیونکہ یہاں آپ خود ہی اپنے اس نظریہ کی تردید فرمادی. اگر امام ابو حنیفہؒ چھٹے طبقہ میں ہوتے تو حضرت انس بن مالک رضی الله عنہ کو کیسے دیکھ سکتے تھے ، لہذا آج کسی کا حافظ ابن حجرؒ کے اس سہو کو لے کر امام ابو حنیفہؒ کو شرف تابعیت سے محروم قرار دینا ، یہ امام صاحب سے بغض و عداوت ہی کا نتیجہ ہی ہو سکتا ہے.

٧) شارح صحیح بخاری، حافظ الحدیث علامہ بدر الدین عینی حنفیؒ (المتوفی: 855ھہ) لکھتے ہیں :
ابن أبي أوفى أسمه عبدالله ... وهو أحد من رأه أبوحنيفة من الصحابة [عمدة القاري شرح صحيح البخاري : 2/505]

ترجمہ : (صحابی رسول حضرت) ابن ابی اوفیٰ بنام عبدالله  ... اور وہ ان صحابہ میں سے ایک ہیں جنہیں امام ابوحنیفہ نے دیکھا.

٨) امام ابن العماد حنبلیؒ (المتوفی: 1089ھہ) لکھتے ہیں :
رأي أنسا وغيرة [شذرات الذهب في أخبار من ذهب :1/372]

ترجمہ : آپ نے دیکھا حضرت انس کو اور ان کے علاوہ (صحابہ) کو بھی.


٩) حافظ المذيؒ نے بیان فرمایا ہے: کہ امام ابوحنیفہؒ کی ملاقات بہتر (٧٢) صحابہِ کرام سے ہوئی ہے . [معجم المصنفین : ٢/٢٣]


١٠) اہلِ حدیث کے نزدیک بھی امام ابو حنیفہؒ کے امام اور ماننے تابعی ہونے کا ثبوت یہ ہے کہ ان کے کتابتِ حدیث کے استدلال کو انہوں نے "تابعین کا عمل" کے فصل میں جلی حرف سے ذکر کیا ہے، دیکھئے :
[فتاویٰ علماۓ حدیث : ج # ١٢/ ص # ٢٤١ - ٢٤٢؛ دوسرا باب : کتابت احادیث و جمع روایات، فصل سوم: تابعین کا عمل]

القرآن : تِلكَ عَشَرَةٌ كامِلَةٌ {2:196} یہ پورے دس ہوئے۔










امامِ اعظم ابو حنیفہؒ کی تابعیت اور وحدانی روایت:
وحدانی روایت یعنی وہ حدیث جس میں نبی ﷺ تک امام صاحب کے درمیان "ایک راوی" ہو، یہ مرتبہ ان کے بعد کسی اور محدث کو حاصل نہیں.


1) (أبو حنيفة قال) وُلِدْتُ سَنَةَ ثَمَانِينَ ، وَحَجَجْتُ مَعَ أَبِي سَنَةَ سِتٍّ وَتِسْعِينَ ، وَأَنَا ابْنُ سِتَّ عَشْرَةَ سَنَةً ، فَلَمَّا دَخَلْتُ الْمَسْجِدَ الْحَرَامَ ، وَرَأَيْتُ حَلَقَةً ، فَقُلْتُ لِأَبِي : حَلَقَةُ مَنْ هَذِهِ ؟ فَقَالَ : حَلَقَةُ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ الْحَرْثِ بْنِ جَزْءٍ صَاحِبِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، فَتَقَدَّمْتُ فَسَمِعْتُهُ يَقُولُ : سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، يَقُولُ : " مَنْ تَفَقَّهَ فِي دِينِ اللَّهِ كَفَاهُ اللَّهُ مَهَمَّهُ وَرَزَقَهُ مِنْ حَيْثُ لَا يَحْتَسِبُ " .
ترجمہ : امام ابو حنیفہؒ فرماتے ہیں کہ میری پیدائش سن 80 ہجری میں ہوئی ، میں نے 96 ہجری میں جبکہ میری عمر 16 سال تھی ، اپنے والد صاحب کے ساتھ حج کی سعادت حاصل کی ، جب میں مسجد حرام میں داخل ہوا تو وہاں میں نے ایک بہت بڑا حلقہ دیکھا ، میں نے اپنے والد صاحب سے پوچھا کہ یہ کس کا حلقہ ہے ؟ انہوں نے بتایا کہ یہ صحابی رسول حضرت عبداللہ بن حارث بن جزء الزبیدی رضی الله عنہ کا حلقہ ہے ، چنانچہ میں آگے بڑھ کر ان کے حلقہ میں شریک ہوگیا ، میں نے انھیں یہ فرماتے ہوۓ سنا کہ رسول الله صلی الله علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا : جو شخص الله کے دین میں فقہ (سمجھ بوجھ) حاصل کرنے کی راہ پر چل پڑتا ہے ، الله اس کے کاموں میں اس کی کفایت فرماتا ہے ، اور اسے ایسی جگہوں سے رزق عطا فرماتا ہے جہاں اس کا وہم و گمان بھی نہ گیا ہو.
تخريج الحديث
 م طرف الحديثالصحابياسم الكتابأفقالعزوالمصنفسنة الوفاة
1من تفقه في دين الله كفاه الله مهمه ورزقه من حيث لا يحتسبعبد الله بن الحارثمسند أبي حنيفة رواية الحصكفي303أبو حنيفة150
2من تفقه في دين الله كفاه الله ورزقه من حيث لا يحتسبعبد الله بن الحارثمسند أبي حنيفة رواية أبي نعيم4---أبو حنيفة150
3من تفقه في دين الله رزقه الله من حيث لا يحتسب وكفاه همهعبد الله بن الحارثتاريخ بغداد للخطيب البغدادي8324 : 50الخطيب البغدادي463
4من تفقه في دين الله كفاه الله همه ورزقه من حيث لا يحتسبعبد الله بن الحارثجامع بيان العلم وفضله لابن عبد البر172216ابن عبد البر القرطبي463

2) (أبو حنيفة) قَالَ : سَمِعْتُ عَبْدَ اللَّهِ بْنَ أَبِي أَوْفَى ، يَقُولُ : سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، يَقُولُ : " مَنْ بَنَى لِلَّهِ مَسْجِدًا وَلَوْ كَمِفْحَصِ قَطَاةٍ بَنَى اللَّهُ لَهُ بَيْتًا فِي الْجَنَّةِ " .
ترجمہ : امام ابو حنیفہؒ فرماتے ہیں کہ میں نے حضرت عبداللہ بن ابی اوفیٰ رضی الله عنہ کو فرماتے ہوۓ سنا کہ میں نے رسول الله صلی الله علیہ وسلم کو یہ فرمات ہوۓ سنا کہ : جو شخص تعمیر مسجد میں حصہ لے ، اگرچہ قطاة (بھڑ تیتر) پرندے کے گھونسلے کے برابر ہی ہو ، الله تعالیٰ اس کے لئے جنّت میں گھر بنائیں گے.
تخريج الحديث
 م طرف الحديثالصحابياسم الكتابأفقالعزوالمصنفسنة الوفاة
1من بنى لله مسجدا ولو كمفحص قطاة بنى الله له بيتا في الجنةعبد الله بن علقمةمسند أبي حنيفة رواية الحصكفي9013أبو حنيفة150
2من بنى مسجدا ولو كمفحص قطاة بنى الله له بيتا في الجنةعبد الله بن علقمةالتدوين في أخبار قزوين للرافعي305---عبد الكريم الرافعي623

3) (أبو حنيفة) قَالَ : سَمِعْتُ عَائِشَةَ بِنْتَ عَجْرَدٍ ، تَقُولُ : قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ " أَكْثَرُ جُنْدِ اللَّهِ فِي الْأَرْضِ الْجَرَادُ ، لَا آكُلُهُ وَلَا أُحَرِّمُهُ ".
ترجمہ : امام ابو حنیفہؒ فرماتے ہیں کہ میں نے سنا حضرت عائشہ بنت عجرد رضی الله عنہا سے یہ فرماتے کہ فرمایا رسول الله صلی الله علیہ وسلم نے : الله کا سب سے بڑا لشکر زمین میں " ٹڈی دل " ہے ، میں اسے کھاتا ہوں اور نہ حرام قرار دیتا ہوں.
تخريج الحديث
 م طرف الحديثالصحابياسم الكتابأفقالعزوالمصنفسنة الوفاة
1أكثر جند الله في الأرض الجراد لا آكله ولا أحرمهموضع إرسالمسند أبي حنيفة رواية الحصكفي3949أبو حنيفة150
2أكثر جنود الله لا آكله ولا أنهى عنهموضع إرسالمصنف ابن أبي شيبة2398024949ابن ابي شيبة235
3أكثر جنود الله في الأرض الجراد لا آكله ولا أحرمهموضع إرسالجزء محمد بن عبد الله الأنصاري77محمد بن عبد الله الأنصاري215
4أكثر جنود الله في الأرض الجراد لا أحله ولا أنهى عنهموضع إرسالجزء محمد بن عبد الله الأنصاري8890محمد بن عبد الله الأنصاري215



4) (أبو حنيفة) عَنْ جَابِرِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ ، قَالَ : جَاءَ رَجُلٌ مِنَ الْأَنْصَارِ إِلَى النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، فَقَالَ : يَا رَسُولَ اللَّهِ ، مَا رُزِقْتُ وَلَدًا قَطُّ وَلَا وُلِدَ لِي ، قَالَ : " فَأَيْنَ أَنْتَ مِنْ كَثْرَةِ الِاسْتِغْفَارِ ، وَكَثْرَةِ الصَّدَقَةِ تُرْزَقُ بِهَا ، قَالَ : فَكَانَ الرَّجُلُ يُكْثِرُ الصَّدَقَةَ وَيُكْثِرُ الِاسْتِغْفَارَ ، قَالَ جَابِرٌ : فَوُلِدَ لَهُ تِسْعَةُ ذُكُورٍ " .[مسند أبي حنيفة رواية الحصكفي » كِتَابُ الطَّب وَفَضْلِ الْمَرَضِ وَالرُّقَى وَالدَّعَوَاتِ ... رقم الحديث: 440]
ترجمہ : حضرت ابو حنیفہؒ حضرت جابر رضی الله عنہ سے مروی ہے کہ ایک انصاری آدمی نبی (صلی الله علیہ وسلم) کی خدمات میں آکر کہنے لگا کہ اے الله کے رسول! میرے یہاں ابھی تک کوئی اولاد نہیں ہوئی، نبی (صلی الله علیہ وسلم) نے فرمایا : (تو) تم کثرت استغفار اور صدقہ (و خیرات کرنے) سے کہاں غفلت میں رہے ؟ اس کی برکت سے تمہیں اولاد نصیب ہوگی . اس آدمی نے کثرت سے صدقہ دینا اور استغفار کرنا شروع کردیا. حضرت جابر (رضی الله عنہ) کہتے ہیں کہ اس کی برکت سے اس کے ہاں نو (٩) لڑکے پیدا ہوۓ.
تخريج الحديث:
المحدث: ابن عراق الكناني المصدر: تنزيه الشريعة - الصفحة أو الرقم: 2/143
خلاصة حكم : يدل عليه الآيات [النوح : 10-12] والآثار ، وأما بهذا السياق فلم أجده ، وهو من الوحدانيات لابي حنيفة الإمام


5) (أبو حنيفةعَنْ أَنَسِ بْنِ مَالِكٍ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ ، قَالَ : قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ : " الدَّالُّ عَلَى الْخَيْرِ كَفَاعِلِهِ " .

[مسند أبي حنيفة رواية الحصكفي » كِتَابُ الْأَدَبِ ... رقم الحديث: 463]
ترجمہ : امام ابو حنیفہؒ حضرت انس بن مالک رضی الله عنہ سے مروی ہیں کہ فرمایا رسول الله صلی الله علیہ وسلم نے : نیکی کے کام پر راہنمائی کرنے والا بھی ایسے ہی ہے جیسے نیکی کرنے والا.
الراوي: عبدالله بن أنيس و أبو الدرداء و أبو برزة المحدث: السيوطي المصدر: الجامع الصغير - الصفحة أو الرقم: 3674
خلاصة حكم المحدث: حسن


الراوي: عبدالله بن أنيس المحدث: السفاريني الحنبلي المصدر: شرح كتاب الشهاب - الصفحة أو الرقم: 305

خلاصة حكم المحدث: إسناده حسن
تخريج الحديث
 م طرف الحديثالصحابياسم الكتابأفقالعزوالمصنفسنة الوفاة
1الدال على الخير كفاعلهأنس بن مالكجامع الترمذي26132670محمد بن عيسى الترمذي256
2الدال على الخير كفاعلهأنس بن مالكالأحاديث المختارة1983---الضياء المقدسي643
3الدال على الخير كفاعله الله يحب إغاثة اللهفانأنس بن مالكمسند أبي يعلى الموصلي42344296أبو يعلى الموصلي307
4الدال على الخير كفاعله الله يحب إغاثة اللهفانأنس بن مالكالمطالب العالية بزوائد المسانيد الثمانية لابن حجر1022981ابن حجر العسقلاني852
5الدال على الخير كفاعله الله يحب إغاثة اللهفانأنس بن مالكإتحاف الخيرة المهرة بزوائد المسانيد العشرة46316968البوصيري840
6الدال على الخير كفاعلهأنس بن مالكمسند أبي حنيفة رواية الحصكفي46322أبو حنيفة150
7الدال على الخير كفاعله الله يحب إعانة اللهفانأنس بن مالكالمقصد العلي في زوائد أبي يعلى الموصلي جزء9261041الهيثمي807
8الدال على الخير كفاعله والله يحب إغاثة اللهفانأنس بن مالككشف الأستار18321949نور الدين الهيثمي807
9الدال على الخير كفاعله الدال على الشر كفاعلهأنس بن مالكمعجم أسامي شيوخ أبي بكر الإسماعيلي1231 : 465أبو بكر الإسماعيلي371
10الدال على الخير كفاعلهأنس بن مالكمشيخة أبي بكر بن أحمد المقدسي3031أحمد بن عبد الدائم المقدسي718
11الدال على الخير كفاعلهأنس بن مالكمشيخة ابن جماعة2062 : 481ابن جماعة739
12الدال على الخير كفاعلهأنس بن مالكمعجم الشيوخ لتاج الدين السبكي236---السبكي771
13الدال على الخير كفاعلهأنس بن مالكحديث أبي الفضل الزهري383411الحسن بن علي الجوهري381
14الدال على الخير كفاعلهأنس بن مالكالسداسيات والخماسيات15---الحسن بن مسعود الوزير543
15الدال على الخير كفاعلهأنس بن مالكجزء ابن فيل113---الحسن بن أحمد بن إبراهيم بن فيل البالسي309
16الدال على الخير كفاعله الله يحب إغاثة اللهفانأنس بن مالكقضاء الحوائج لابن أبي الدنيا2727ابن أبي الدنيا281
17الدال على الخير كفاعله الله يحب إغاثة اللهفانأنس بن مالكالترغيب في فضائل الأعمال لابن شاهين508508ابن شاهين385
18الدال على الخير كفاعلهأنس بن مالكجامع بيان العلم وفضله لابن عبد البر4460ابن عبد البر القرطبي463
19الدال على الخير كفاعله الله يحب إغاثة اللهفانأنس بن مالكالبر والصلة لابن الجوزي340438أبو الفرج ابن الجوزي597
20الدال على الخير كفاعلهأنس بن مالككتاب العلم46---أبو طاهر السلفي576
21الدال على الخير كفاعله الله يحب إغاثة اللهفانأنس بن مالكاصطناع المعروف7479ابن أبي الدنيا281




6) (أبو حنيفة) عَنْ أَنَسٍ ، قَالَ : سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، يَقُولُ : " إِنَّ اللَّهَ يُحِبُّ إِغَاثَةَ اللَّهْفَانِ " .

ترجمہ : امام ابو حنیفہؒ حضرت انس رضی الله عنہ سے رسول الله صلی الله علیہ وسلم کا یہ ارشاد سننا نقل فرماتے ہیں کہ الله مظلوموں کی مدد کرنے کو پسند کرتا ہے.
تخريج الحديث
 م طرف الحديثالصحابياسم الكتابأفقالعزوالمصنفسنة الوفاة
1الله يحب إغاثة اللهفانأنس بن مالكمسند أبي حنيفة رواية الحصكفي47029أبو حنيفة150
2إن الله يحب إغاثة اللهفانأنس بن مالكمعجم شيوخ الابرقوهى64---أحمد بن إسحاق بن محمد الأبرقوهي701
3الله يحب إغاثة اللهفانأنس بن مالكمكارم الأخلاق للطبراني9595سليمان بن أحمد الطبراني360


7) (أبو حنيفة) قَالَ : وُلِدْتُ سَنَةَ ثَمَانِينَ ، وَقَدِمَ عَبْدُ اللَّهِ بْنُ أُنَيْسٍ صَاحِبُ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ الْكُوفَةَ سَنَةَ أَرْبَعٍ وَتِسْعِينَ ، وَرَأَيْتُهُ ، وَسَمِعْتُ مِنْهُ ، وَأَنَا ابْنُ أَرْبَعَ عَشْرَةَ سَنَةً ، سَمِعْتُهُ يَقُولُ : سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، يَقُولُ : " حُبُّكَ الشَّيْءَ يُعْمِي وَيُصِمُّ " .[مسند أبي حنيفة رواية الحصكفي » كِتَابُ الْأَدَبِ ... رقم الحديث: 472]
ترجمہ : امام ابو حنیفہؒ فرماتے ہیں کہ میری پیدائش 80 ہجری میں ہوئی اور حضرت عبدالله بن انیس رضی الله عنہ جو صحابی رسول ہیں 94 ہجری میں کوفہ تشریف لاۓ طے میں نے اس کی زیارت بھی کی اور ان سے حدیث کی سماعت (سننا) بھی کی ہے ، اور اس وقت میری عمر 14 سال تھی ، انہوں سنا رسول الله صلی الله علیہ وسلم کو یہ فرماتے کہ : کسی چیز کی محبت تمہیں اندھا بھرا کر سکتی ہے.
تخريج الحديث
م طرف الحديثالصحابياسم الكتابأفقالعزوالمصنفسنة الوفاة
1حبك الشيء يعمي ويصمعويمر بن مالكسنن أبي داود44675130أبو داود السجستاني275
2حبك الشيء يعمي ويصمعويمر بن مالكمسند أحمد بن حنبل2115221185أحمد بن حنبل241
3حبك الشيء يعمي ويصمعويمر بن مالكمسند ابن أبي شيبة4949ابن ابي شيبة235
4حبك الشيء يعمي ويصمعويمر بن مالكالبحر الزخار بمسند البزار 10-13474125أبو بكر البزار292
5حبك الشيء يعمي ويصمعويمر بن مالكمسند الشاميين للطبراني14351454سليمان بن أحمد الطبراني360
6حبك الشيء يعمي ويصمعويمر بن أشقرمسند الشاميين للطبراني14491468سليمان بن أحمد الطبراني360
7حبك الشيء يعمي ويصمعبد الله بن أنيسمسند أبي حنيفة رواية الحصكفي47231أبو حنيفة150
8حبك الشيء يعمي ويصمعويمر بن مالكمسند الشهاب207219الشهاب القضاعي454
9حبك الشيء يعمي ويصمعويمر بن مالكالمعجم الأوسط للطبراني44924359سليمان بن أحمد الطبراني360
10حبك الشيء يعمي ويصمعثمان بن عفانإسلام زيد بن حارثة وغيره من أحاديث الشيوخ261 : 180تمام بن محمد الرازي414
11حبك الشيء يعمي ويصمعويمر بن مالكأمالي ابن بشران5291 : 228أبو القاسم بن بشران430
12حبك الشيء يعمي ويصمعويمر بن مالكثلاثة مجالس من أمالي أبي عبد الله الروذباري13---أحمد بن عطا الروذباري369
13حبك الشيء يعمي ويصمعويمر بن مالكأمالي ابن بشران ( مجالس أخرى )5111 : 228عبد الملك بن بشران431
14حبك الشيء يعمي ويصمنفير بن مالكأمثال الحديث لأبي الشيخ الأصبهاني101115أبو الشيخ الأصبهاني369
15حبك الشيء يعمي ويصمعويمر بن مالكشعب الإيمان للبيهقي392411البيهقي458
16حبك الشيء يعمي ويصمموضع إرسالالمعرفة والتاريخ ليعقوب بن سفيان8442 : 189يعقوب بن سفيان277
17حبك الشيء يعمي ويصمعويمر بن مالكالكني والأسماء للدولابي716546أبو بشر الدولابي310
18حبك الشيء يعمي ويصمعويمر بن مالكتاريخ دمشق لابن عساكر9020---ابن عساكر الدمشقي571
19حبك الشيء يعمي ويصمعبد الله بن أنيستاريخ دمشق لابن عساكر12001---ابن عساكر الدمشقي571
20حبك الشيء يعمي ويصمعويمر بن مالكتاريخ دمشق لابن عساكر13795---ابن عساكر الدمشقي571
21حبك الشيء يعمي ويصمعويمر بن مالكتاريخ دمشق لابن عساكر1449716 : 186ابن عساكر الدمشقي571
22حبك الشيء يعمي ويصمعويمر بن مالكتاريخ دمشق لابن عساكر1449816 : 186ابن عساكر الدمشقي571
23حبك الشيء يعمي ويصمعويمر بن مالكتاريخ دمشق لابن عساكر1449916 : 187ابن عساكر الدمشقي571
24حبك الشيء يعمي ويصمعويمر بن مالكتاريخ دمشق لابن عساكر14503---ابن عساكر الدمشقي571
25حبك الشيء يعمي ويصمعويمر بن مالكتاريخ دمشق لابن عساكر66582---ابن عساكر الدمشقي571
26حبك الشيء يعمي ويصمعويمر بن مالكتهذيب الكمال للمزي235---يوسف المزي742
27حبك الشيء يعمي ويصمنضلة بن عبيداعتلال القلوب للخرائطي350369محمد بن جعفر بن سهل الخرائطي327
28حبك الشيء يعمي ويصمنضلة بن عبيداعتلال القلوب للخرائطي782820محمد بن جعفر بن سهل الخرائطي327
29حبك الشيء يعمي ويصمعويمر بن مالكذم الهوى لابن الجوزي1436أبو الفرج ابن الجوزي597
30حبك الشيء يعمي ويصمعويمر بن مالكالآداب للبيهقي164229البيهقي458



8) (أبو حنيفة) قَالَ : سَمِعْتُ وَاثِلَةَ بْنَ الْأَسْقَعِ ، قَالَ : سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، يَقُولُ : " لَا تُظْهِرَنَّ شَمَاتَةً لِأَخِيكَ فَيُعَافِيَهُ اللَّهُ وَيَبْتَلِيَكَ ".[مسند أبي حنيفة رواية الحصكفي » كِتَابُ الْأَدَبِ ... رقم الحديث: 473]
ترجمہ : امام ابو حنیفہؒ فرماتے ہیں کہ میں نے حضرت واثلہ بن اسقع رضی الله عنہ کو یہ فرماتے ہوۓ سنا ہے کہ میں نے رسول الله صلی الله علیہ  وسلم کو یہ فرماتے ہوۓ سنا ہے کہ : اپنے بھائی کی مصیبت پر خوشی کا اظہار کبھی نہ کرنا ، ہو سکتا ہے الله تعالیٰ اسے عافیت دیدے اور تمہیں اس (مصیبت) میں مبتلا کردے.
تخريج الحديث
 م طرف الحديثالصحابياسم الكتابأفقالعزوالمصنفسنة الوفاة
1لا تظهر الشماتة لأخيك فيرحمه الله ويبتليكواثلة بن الأسقعجامع الترمذي24432506محمد بن عيسى الترمذي256
2لا تظهر الشماتة لأخيك فيعافيه الله ويبتليكواثلة بن الأسقعمسند الشاميين للطبراني378384سليمان بن أحمد الطبراني360
3لا تظهر الشماتة لأخيك فيعافيه الله ويبتليكواثلة بن الأسقعمسند الشاميين للطبراني33173379سليمان بن أحمد الطبراني360
4لا تظهرن شماتة لأخيك فيعافيه الله ويبتليكواثلة بن الأسقعمسند أبي حنيفة رواية الحصكفي47332أبو حنيفة150
5لا تظهر الشماتة لأخيك فيعافيه الله ويبتليكواثلة بن الأسقعمسند الشهاب857917الشهاب القضاعي454
6لا تظهر الشماتة لأخيك فيرحمه الله ويبتليكواثلة بن الأسقعمسند الشهاب858919الشهاب القضاعي454
7لا تظهر الشماتة لأخيك فيعافيه الله ويبتليكواثلة بن الأسقعالمعجم الأوسط للطبراني38653739سليمان بن أحمد الطبراني360
8لا تظهر الشماتة لأخيك فيعافيه الله ويبتليكواثلة بن الأسقعالمعجم الكبير للطبراني17623127سليمان بن أحمد الطبراني360
9لا تظهر الشماتة لأخيك فيعافيه الله ويبتليكواثلة بن الأسقعمعجم ابن الأعرابي15851612ابن الأعرابي340
10لا تظهر الشماتة لأخيك فيعافيه الله ويبتليكواثلة بن الأسقعمشيخة أبي عبد الله الإربلي14---محمد بن إبراهيم بن مسلم الإربلي633
11إذا أصيب أخوك بمصيبة فلا تظهر له الشماتة فيرحمه الله ويبتليك بأشد منهواثلة بن الأسقعحديث أبي الفضل الزهري569602الحسن بن علي الجوهري381
12لا تظهر الشماتة لأخيك فيرحمه الله ويبتليكواثلة بن الأسقعالأربعون في شيوخ الصوفية للماليني931 : 182أحمد بن محمد الماليني412
13لا تظهر الشماتة بأخيك فيعافيه الله ويبتليكواثلة بن الأسقعجزء القاسم بن موسى الأشيب54---القاسم بن موسى الأشيب209
14لا تظهر الشماتة بأخيك يرحمه الله ويبتليكواثلة بن الأسقعالجزء السابع من الفوائد المنتقاة168---أبو الفتح بن أبي الفوارس412
15لا تظهر الشماتة بأخيك فيعافيه ربه ويبتليكواثلة بن الأسقعحديث أبي علي الشعراني82---الحسن بن علي الشعراني330
16لا تظهر الشماتة بأخيك فيعافيه الله ويبتليكواثلة بن الأسقعأمالي ابن بشران ( مجالس أخرى )9861 : 417عبد الملك بن بشران431
17لا تظهرن الشماتة لأخيك فيعافيه الله ويبتليكواثلة بن الأسقعأمثال الحديث لأبي الشيخ الأصبهاني175202أبو الشيخ الأصبهاني369
18لا تظهر الشماتة لأخيك فيرحمه الله ويبتليكواثلة بن الأسقعموضح أوهام الجمع والتفريق للخطيب6531 : 517الخطيب البغدادي463
19لا تظهر الشماتة بأخيك فيرحمه الله ويبتليكواثلة بن الأسقعشعب الإيمان للبيهقي62716777البيهقي458
20لا تظهر الشماتة في لأخيك فيعافيه الله ويبتليكواثلة بن الأسقعحلية الأولياء لأبي نعيم69766982أبو نعيم الأصبهاني430
21لا تظهر الشماتة لأخيك فيرحمه الله ويبتليكواثلة بن الأسقعتاريخ بغداد للخطيب البغدادي298910 : 135الخطيب البغدادي463
22لا تكثر الشماتة بأخيك فيرحمه الله ويبتليكواثلة بن الأسقعالديباج للختلي611 : 105إسحاق بن إبراهيم الختلي283
23لا تظهر الشماتة بأخيك فيعافيه الله ويبتليكواثلة بن الأسقعاعتلال القلوب للخرائطي777813محمد بن جعفر بن سهل الخرائطي327



فضیلت_صحابہ و تابعین

٣) وَ السّٰبِقُوۡنَ الۡاَوَّلُوۡنَ مِنَ الۡمُہٰجِرِیۡنَ وَ الۡاَنۡصَارِ وَ الَّذِیۡنَ اتَّبَعُوۡہُمۡ بِاِحۡسَانٍ ۙ رَّضِیَ اللّٰہُ عَنۡہُمۡ وَ رَضُوۡا عَنۡہُ وَ اَعَدَّ لَہُمۡ جَنّٰتٍ تَجۡرِیۡ تَحۡتَہَا الۡاَنۡہٰرُ خٰلِدِیۡنَ فِیۡہَاۤ اَبَدًا ؕ ذٰلِکَ الۡفَوۡزُ الۡعَظِیۡمُ ﴿٩:١٠٠)؛


جن لوگوں نے سبقت کی یعنی سب سے پہلے ایمان لائے مہاجرین میں سے بھی اور انصار میں سے بھی اور جنہوں نے نیکوکاری کے ساتھ انکی پیروی کی اللہ ان سے خوش ہے اور وہ اللہ سے خوش ہیں اور اس نے انکے لئے باغات تیار کئے ہیں جنکے نیچے نہریں بہ رہی ہیں وہ ہمیشہ ان میں رہیں گے۔ یہی بڑی کامیابی ہے۔

 سَمِعْتُ جَابِرَ بْنَ عَبْدِ اللَّهِ ، يَقُولُ : سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يَقُولُ : " لَا تَمَسُّ النَّارُ مُسْلِمًا رَآنِي , أَوْ رَأَى مَنْ رَآنِي "




ایمان کی حالت میں نبیؐ کو دیکھنے والے کو "صحابی" کہتے ہیں، اور ایمان کی حالت میں صحابی کو دیکھنے والے کو "تابعی" کہتے ہیں.





شیخ جلال الدین سیوطیؒ الشافعی وغیرہ نے [ابو حنیفہؒ کے فضائل-و مناقب پر اپنی"التبييض الصحيفه في مناقب الإمام أبي حنيفه"میں] تسلیم کیا ہے کہ اس پیشین گوئی کے بڑے مصداق حضرت امام اعظم ابو حنیفہؒ النعمان ہیں۔یہ کتاب اردو میں بنام "امام ابوحنیفہؒ کے حالات، کمالات اور ملفوظات" فری ڈاؤن لوڈ کریں یا آن لائن پڑھیں:

حضرت امام ابوحنیفہؒ امامِ اعظم کیوں؟
حنفی، مالکی، شافعی، حنبلی سب بالاتفاق حضرت امام ابوحنیفہؒ کو امام_اعظم کہتے ہیں. اس کی اصل وجہ تو یہ ہے کہ امام صاحب کے بارے میں جن احادیث میں پیش گویاں ہیں، ان میں اعظم کا لفظ آیا ہے.

(١) حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ مُحَمَّدِ بْنِ جَعْفَرٍ ، ثنا جَعْفَرٌ الْفِرْيَابِيُّ ، ثنا أَبُو كُرَيْبٍ ، ثنا خَالِدُ بْنُ مَخْلَدٍ ، ثنا عَبْدُ الْعَزِيزِ بْنُ الْحُصَيْنِ ، عَنِ الْعَلاءِ ، عَنْ أَبِيهِ ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ ، عَنْ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، قَالَ : " أَعْظَمُ النَّاسِ نَصِيبًا فِي الإِسْلامِ أَهْلُ فَارِسَ ، لَوْ كَانَ الإِسْلامُ فِي الثُّرَيَّا لَتَنَاوَلَهُ رِجَالٌ مِنْ أَهْلِ فَارِسَ " . ( الثريا : مجموعة من نجوم السماء)؛
ترجمہ: اسلام میں بڑا حصہ (نصیب) فارس والوں کا ہے، اگر دین ثریا ستارے پر بھی ہوگا تو فارس-والے اسے لے آئیں گے. (ثریا یعنی آسمان کے ستاروں کا مجموعہ)؛


فائدہ: ظاہر ہے کہ جن کا اسلام میں نصیب "اعظم"(بڑا) ہو، ان کا امام بھی اعظم ہے، صحابہ (رضی الله عنھم) کے بعد سب نے اپ کو اعظم مانا اور دنیا میں "سواد_اعظم" آج تک آپکے مقلدین کا ہے."السواد الاعظم" عربی زبان میں "عظیم-ترین(سب سے بڑی)جماعت" کو کہتے ہیں.[الصحاح للجوهري:١/٤٨٩]؛


چونکہ قرآن پاک میں اسلا مکا دوسرا نام ((دین حنیف)) ہے جس کی تکمیل آنحضرت پر ، تمکین صحابہ کے ذریعہ ہوئی اور تدوین میں اولیت کا شرف امام صاحب کو نصیب ہوا، اسی لئے پوری امت بالاتفاق آپ کی "وصفی کنیت" ابوحنیفہؒ قرار پائی یعنی دین حنیف کے پہلے مدون


اختلاف کا حل حدیث سے : سوادِ اعظم
حضرت انس رضی الله عنہ، رسول الله صلے الله علیہ وسلم سے مروی ہیں کہ"میری امت کسی گمراہی پر"جمع" (متفق) نہیں ہوگی بس جب تم (لوگوں میں) اختلاف دیکھو تو سواد_اعظم (بڑی-جماعت) کو لازم پکڑلو(یعنی اس کی اتباع کرو)"[سنن ابن_ماجہ: کتاب الفتن، باب السواد الاعظم]دوسری روایت میں حضرت ابن_عمر(رضی الله عنہ) سے حدیث میں ہے = کہ...بس تم"سواد_اعظم" کا اتباع کرو، کیونکہ جو شخص الگ راستہ اختیار کریگا جہنم میں جا رہیگا.[مستدرک حاکم: کتاب العلم، ١/١١٥] 
امام حاکمؒ نے ابنِ عمر رض کی یہ روایت دو طرق (طریقوں) سے نقل کی ہے اور دونوں کے بارے میں صحتِ سند کا رجحان تو ظاہر کیا ہے، فیصلہ نہیں کیا. اور حافظ ذہبیؒ نے سکوت (خاموشی-جو نیم-رضامندگی ہے)کیا ہے.

===========

حضرت امام ابوحنیفہؒ وہ جلیل القدر اورعظیم المرتبت ہستی ہیں،جن کی جلالت شان، امامت وفقاہت، اور فضل وکمال کو بڑے بڑے اساطین علم وفضل اور کبار فقہاء ومحدثین نے تسلیم کیا ہے۔ ہم تبرکا چند اکابر ائمہ کے اقول ذکر کرتے ہیں تاکہ قارئین کرام کو اندازہ ہو سکے کہ اکابر علماءامت جس ہستی کے بارے میں يہ رائے رکھتے ہیں اس ہستی کے ساتھ لا مذہب غیر مقلدین کا کیا رويہ ہے۔

امام شافعی فرماتے ہیں، الله ان سے راضی ہو : امام مالک رحمہ الله سے پوچھا گیا : کیا آپ نے امام ابوحنیفہؒ کو دیکھا ہے؟ تو فرمایا : ہاں ، (اور ایک ستون کی جانب اشارہ کرتے ہوئے فرمایا کہ) میں نے انہیں ایسا شخص پایا کہ اگر وہ اس ستون کو سونے کا ثابت کرنا چاہتے تو اپنے علم کے زور پر وہ ایسا کر سکتے تھے ۔“
حضرت امام شافعی رحمہ الله فرماتے ہیں: ”جو شخص فقہ حاصل کرنا چاہتا ہے وہ فقہ میں امام ابوحنیفہؒ کے خوشہ چین ہیں۔“
امام یحییٰ بن معین رحمہ الله نے فرمایا : قرأت میرے نزدیک حمزہ کی قرأت ہے، اور فقیہ (میرے نزدیک) امام ابوحنیفہؒ کی فقہ ہے. [وفیات الاعیان لابن خلکان : ٥/٤٠٩]




حضرت عبد الله بن مبارک رحمہ الله فرماتے ہیں کہ میں حضرت امام مالک رحمہ الله کی خدمت میں حاضر تھا کہ ايک بزرگ آئے،جب وہ اٹھ کر چلے گئے تو حضرت امام مالک رحمہ الله نے فرمایا جاتنے ہو يہ کون تھے؟ حاضرین نے عرض کیا کہ نہیں (اور میں انہیں پہچان چکا تھا) فرمانے لگے۔”يہ ابوحنیفہؒ ہیں عراق کے رہنے والے، اگر يہ کہہ دیں کہ یہ ستون سونے کا ہے تو ویسا ہی نکل آئے انہیں فقہ میں ایسی توفیق دی گئی ہے کہ اس فن میں انہیں ذرا مشقت نہیں ہوتی“(حسین بن علی الصیمری: المحدث ۔ اخبار ابی حنیفة و اصحاب ص74) امام عبداللہ بن مبارک فرمایا کرتے تھے: "ولا تقولو رأیُ ابی حنیفة رحمہ اللّٰہ تعالیٰ ولکن قولوا انہ تفسیر الحدیث“ (ذیل الجواہر المضیة، ج: 2،ص: 460 ؛ مناقب موفق ابن احمد مکی ج2 ص 51 ) یعنی لوگو یہ نہ کہا کرو کہ یہ ابوحنیفہ رحمة الله عليه کی رائے ہے بلکہ یوں کہو کہ یہ حدیث کی تفسیر وبیان ہے ایک دوسرے موقع پر انہی امام المحدثین عبداللہ بن مبارک رحمة الله عليه نے امام صاحب رحمة الله عليه کی اصابت رائے اوراس کی ضرورت واہمیت کا اظہار ان الفاظ میں کیا ہے: "”ان کان الاثر قد عرف واحتیج الی الرأی، فرأی مالک، وسفیان، وابی حنیفة، وابوحنیفة احسنہم وادقہم فطنة واغوصہم علی الفقہ، وہو افقہ الثلاثة“ (تاریخ بغداد للخطیب، ج:۱۳،ص:۳۴۳) یعنی اگر حدیث معلوم ومعروف ہو اور (اس کی مراد کی تعیین میں) رائے کی ضرورت ہوتو امام مالک، امام سفیان ثوری اور امام ابوحنیفہؒ کی رائے (ملحوظ رکھنی چاہیے) اور امام ابوحنیفہ رحمة الله عليه ان تینوں میں فہم وادراک میں زیادہ بہتر اور فقہ کی تہہ تک زیادہ پہنچنے والے تھے۔

حضرت امام شافعی رحمہ الله فرماتے ہیں ”جو شخص فقہ حاصل کرنا چاہتا ہے وہ امام ابو حنیفہ رحمہ الله اور ان کے اصحاب کو لازم پکڑے کیونکہ تمام لوگ فقہ میں امام ابو حنیفہ رحمہ الله کے خوشہ چین ہیں۔“حضرت امام شافعی رحمہ الله يہ بھی فرماتے ہیں ”میں نے ابو حنیفہ رحمہ الله سے بڑھ کر کوئی فقیہ نہیں دیکھا

دین کی پہچان اور امام ابوحنیفہؒ

حضرت عطاء بن ابی رباحؒ کے ساتھ امام ابوحنیفہؒ کا واقعہ:
اور حکایت نقل کی ہے علامہ ابن بطالؒ نے ((شرح بخاری)) میں امام ابوحنیفہؒ سے : انہوں نے فرمایا : "میں نے ملاقات کی حضرت عطاء بن ابی رباحؒ سے مکہ میں ، پس میں نے سولہ کیا ان سے کسی شیء کے بارے میں؟ تو انہوں نے فرمایا : تو کہاں سے ہے؟ میں نے کہا : کوفہ والوں سے. فرمایا : تم اس شہر سے ہو جنہوں نے علیحدگی اختیار کی اپنے دین سے اور ہوگۓ شیعہ (فرقہ/الگ جماعت)؟ میں نے کہا : جی ہاں. آپ نے فرمایا : تو تم کس قسم کے لوگوں میں سے ہو؟ میں نے کہا : ان لوگوں میں سے جو نہیں برا کہتے سلف (گزرے ہوۓ نیک بزرگوں: صحابہ کو)، اور جو ایمان رکھتے ہیں تقدیر پر، اور جو نہیں کافر کہتے کسی ایک کو بھی اس کے گناہ کے سبب. تو فرمایا حضرت عطاء (بن ابی رباحؒ) نے : تو نے خوب پہچان لیا (دین کو) پس اب اسے لازم پکڑنا". (یعنی اسی پر قائم رہنا)[الاعتصام للإمام الشاطبي : ١/٨٢]
تخریج :
١) حلية الأولياء ، لابي نعيم : ٣/٣١٤؛
٢) مناقب الإمام أبي حنيفة ، لامام ألكردري : ٧٦؛
٣) العقد الثمين ، للفاسي : ٦/٩١.




حضرت ابوبکر مروزی رحمہ الله فرماتے ہیں ، میں نے حضرت امام احمد بن حنبل رحمہ الله کو يہ فرماتے ہوئے سنا: ”ہمارے نزديک يہ بات ثابت نہیں کہ ابو حنیفہ رحمہ الله نے قرآن کو مخلوق کہا ہے۔“ میں نے عرض کیا کہ الحمد لله، اے عبدالله (یہ امام احمد بن حنبل کی کنیت ہے) ان کا علم تو بڑا مقام ہے ، فرمانے لگے:”سبحان الله وہ تو علم، ورع، زہد، اور عالم آخرت کو اختیار کرنے میں اس مقام پر ہیںجہاں کسی کی رسائی نہیں“(مناقب الامام ابوحنیفہؒ ص27 )؛

حارث بن عبدالرحمن سے روایت ہے کہ ہم حضرت عطاءؒ کے پاس بیٹھے ہوتے تھے، جب امام ابوحنیفہؒ آتے توان کے لیے حضرت عطاءؒ جگہ بناتے اور اپنے قریب بٹھاتے، ابوالقاسمؒ نے ایک مرتبہ حضرت عطاءؒ سے عرض کیا کہ آپ کے نزدیک امام ابوحنیفہؒ بڑے ہیں یاسفیان ثوریؒ؟ توانھوں نے فرمایا کہ امام ابوحنیفہؒ میرے نزدیک ابنِ جریجؒ سے بھی زیادہ فقیہ ہیں، اُن سے زیادہ فقہ پر قادر شخص میری آنکھوں نے نہیں دیکھا۔(تذکرہ النعمان:۱۷۱)؛

حضرت سفیان بن عینیہ رحمہ الله فرماتے ہیں: ”میری آنکھ نے ابو حنیفہ رحمہ الله کی مثل نہیں ديکھا“(مناقب الامام ابوحنیفہؒ ص19) آپ يہ بھی فرماتے تھے:علماء تو يہ تھے ابن عباس رضی الله عنہ اپنے زمانے میں، امام شعبی رحمہ الله اپنے زمانے میں، ابو حنیفہ رحمہ الله اپنے زمانے میں، اور سفیان ثوری رحمہ الله اپنے زمانے میں۔(اخبار ابی حنیفة واصحابہ ص76) 


اقوالِ امام ابوحنیفہؒ احادیث کے مطابق ہوتے:

مشہور ثقہ محدث علی بن خشرم کا بیان ہے کہ ہم امام سفیان بن عیینہ کی مجلس میں تھے تو انھوں نے کہا: اے حدیث سے اشتغال رکھنے والو، حدیث میں تفقہ حاصل کرو ایسا نہ ہو کہ تم پر اصحاب فقہ غالب ہوجائیں، امام ابوحنیفہ رحمة الله عليه نے کوئی بات ایسی نہیں بیان کی ہے کہ ہم اس سے متعلق ایک، دو حدیثیں روایت نہ کرتے ہوں۔ [معرفة علوم الحدیث للحاکم، ص:66]
(تشریح: امام سفیان بن عیینہ نے اپنے اس ارشاد میں حاضرین مجلس کو دو باتوں کی طرف متوجہ کیا ہے ایک یہ کہ وہ الفاظ حدیث کی تحصیل و تصحیح کے ساتھ حدیث کے معنی وفقہ کے حاصل کرنے کی بھی سعی کریں دوسرے امام صاحب کی اصابت رائے اور بصیرت فقہ کی تعریف میں فرمایاکہ ان کی رائے وفقہ حدیث کے مطابق ہے کیوں کہ وہ جو کچھ بھی کہتے ہیں اس کی تائید وتوثیق کسی نہ کسی حدیث سے ہوجاتی ہے۔ )



حافظ أبو نعيم أصفهانيؒ نے "مسند ابوحنیفہؒ" میں بسند_متصل یحییٰ بن نصر صہب کی زبانی نقل کیا ہے کہ :

"دخلت على أبي حنيفة في بيت مملؤ كتابا، فقلت : ما هذه ؟ قال : هذه أحاديث كلها وما حدثت به إلا اليسير الذي ينتفع به". [مناقب الامام الاعظم : ١/٩٥]؛
ترجمہ: میں امام ابوحنیفہؒ کے ہاں ایسے مکان میں داخل ہوا جو کتابوں سے بھرا ہوا تھا. میں نے ان کے بارے میں دریافت کیا تو فرمایا کہ یہ سب کتابیں حدیث کی ہیں اور (کمال_احتیاط کے سبب) میں نے ان میں سے تھوڑی سی حدیثیں بیان کی ہیں جن سے نفع اٹھایا جاۓ.





شیخ الاسلام والمسلمین حضرت یزید بن ہارون رحمہ الله فرماتے ہیں ”ابوحنیفہ رحمہ الله میں پرہیز گار، پاکیزہ صفات، زاہد، عالم، زبان کے سچے، اور اپنے اہل زمانہ میں سب سے بڑے حافظ حدیث تھے۔ میں نے ان کے معاصرین میں سے جتنے لوگوں کو پایا سب کو یہی کہتے سنا کہاس نے ابو حنیفہ رحمہ الله سے بڑھ کر کوئی فقیہ نہیں دیکھا“ (اخبار ابی حنیفة واصحابہ ص36)


حافظ حدیث ابوعمر ابن عبدالبر مالکی اندلسی (المتوفی ۴۶۳ھ) اپنی کتاب ”جامع بیان العلم“ میں فرماتے ہیں کہ امام حدیث اعمش (سلیمان بن مہران) کی مجلس میں ایک شخص آیا اور اعمش سے کوئی مسئلہ دریافت کیا، آپ کوئی جواب نہ دے سکے ،دیکھا کہ امام ابوحنیفہؒ تشریف رکھتے ہیں، فرمایا کہ: کہئے نعمان! کیا ہے ،جواب؟ امام ابو حنیفہؒ نے فوراً جواب دے دیا ۔ امام اعمش نے پوچھا : ابوحنیفہ! تم نے کہاں سے یہ جواب دیا؟ ابو حنیفہؒ نے فرمایا : آپ ہی نے تو مجھے فلاں حدیث اپنی سند سے بیان کی تھی، اسی سے یہ مسئلہ اس طرح نکلتاہے الخ۔ امام اعمش یہ دیکھ کر بے ساختہ فرمانے لگے: " نَحْنُ الصَّيَادِلَةُ وَأَنْتُمُ الأَطِبَّاءُ ".[جامع بيان العلم وفضله لابن عبد البر (368-463هـ) » بَابُ ذِكْرِ مَنْ ذَمَّ الإِكْثَارَ مِنَ الْحَدِيثِ ...، رقم الحديث: 1195]
ترجمہ: آپ طبیب ہیں اور ہم لوگ عطار ہیں. (جامع بيان العلم : صفحہ # ٣٢١) 
(شرف اصحاب الحدیث ونصیحۃ اہل الحدیث ص261) [الثقات لابن حبان:8/467]



امام سیوطیؒ نے لکھا ہے کہ متقدمین نے فرمایا ہے: ﻗﺎﻟﺖ اﻷﻗﺪﻣﻮن: اﻟﻤﺤﺪث ﺑﻼ ﻓﻘﮫ ﻛﻌﻄﺎر ﻏﯿﺮ طﺒﯿﺐ ﻓﺎﻷدوﯾﺔ ﺣﺎﺻﻠﺔ ﻓﻲ دﻛﺎﻧﮫ وﻻ ﯾﺪري ﻟﻤﺎذا ﺗﺼﻠﺢ, واﻟﻔﻘﯿﮫ ﺑﻼ ﺣﺪﯾﺚ ﻛﻄﺒﯿﺐ ﻟﯿﺲ ﺑﻌﻄﺎر ﯾﻌﺮف ﻣﺎ ﺗﺼﻠﺢ ﻟﮫ اﻷدوﯾﺔ إﻻ أﻧﮭﺎ ﻟﯿﺴﺖ ﻋﻨﺪه.[أثر الحديث الشريف في إختلاف الأئمة الفقهاء: 108 بحواله الحاوي للفتاوى: 2/398]
یعنی محدث بغیر فقہ کے ایسا "دوا فروش" ہے جو طبیب نہیں، اس کی دکان میں دوائیں ہیں لیکن وہ یہ نہیں جانتا کہ یہ کس مرض کا علاج ہے اور بغیر حدیث کے فقیہ کی مثال جس کو یہ تو علم ہے کہ فلاں مرض کی دوا فلاں ہے لیکن اس کے پاس دوائیں نہیں تو وہ علاج (مریض کو مطمئن) کیسے کرے؟
[اختلاف_ائمہ اور حدیث_ نبوی:١٣٦ بحوالہ الحاوي للفتاوى: 2/398]


یعنی ہمارا (محدث کا) کام عطار کا ہے، جڑی بوٹی لانا، پتیوں پودوں کو جمع کرنا، اور انھیں مرتبان میں رکھ کر دکان سجانا. ہمارا کام یہ نہیں کہ ہم یہ بتائیں کہ بکھر میں کونسا جوشاندہ استعمال کیا جاۓ، ہمارا کام تو یہ ہے کہ ہم دوائیں اکٹھا کردیں اس کے بعد آپ ڈاکٹر و حکیم (فقہاء) سے نسخہ لائیں، ہم اس نسخہ کے مطابق آپ کو دوا دیں گے یعنی فقیہ جب کوئی مسئلہ بتاۓ گا تو اس مسئلے کے مستدلات آپ کے سامنے پیش کر سکتے ہیں، اجتہاد و گہری و گیرائی ہمارے بس کی بات نہیں، فقہاء و محدثین میں یہ فرق ہے. 


فقيه الحديث امامِ اعظم ابوحنیفہؒ
عبيدالله بن عمرو نے مروی ہے کہ [میں امام اعمش کی مجلس میں ایک شخص آیا اور ان سے کوئی مسئلہ دریافت کیا، آپ کوئی جواب نہ دے سکے، دیکھا کہ امام ابوحنیفہ تشریف رکھتے ہیں تو(جامع بيان العلم : صفحہ # ٣٢١)] ... امام اعمش نے کہا امام ابو حنیفہؒ کو : اے نعمان ! تمہارا کیا کہنا ہے اس پر اور اس پر ؟؟؟ آپ نے کہا : یہ اور یہ . انہوں نے پوچھا : کہاں سے تم یہ کہتے ہو ؟ کہا : آپ ہی نے تو مجھے فلاں حدیث اپنی سند سے بیان کی تھی، اسی سے یہ مسئلہ اس طرح نکلتاہے الخ۔ امام اعمش یہ دیکھ کر بے ساختہ فرمانے لگے: " أنتم يا معشر الفقهاء الأطباء ونحن الصيادلة ". ترجمہ: آپ  اے گروہ فقہاء! طبیب ہیں اور ہم لوگ عطار ہیں.[الثقات لابن حبان:8/467]
امام سیوطیؒ نے لکھا ہے کہ متقدمین نے فرمایا ہے: کہ محدث بغیر فقہ کے ایسا "دوا فروش" ہے جو طبیب نہیں، اس کی دکان میں دوائیں ہیں لیکن وہ یہ نہیں جانتا کہ یہ کس مرض کا علاج ہے اور بغیر حدیث کے فقیہ کی مثال جس کو یہ تو علم ہے کہ فلاں مرض کی دوا فلاں ہے لیکن اس کے پاس دوائیں نہیں تو وہ علاج (مریض کو مطمئن) کیسے کرے؟[اختلاف_ائمہ اور حدیث_ نبوی:١٣٦ بحوالہ الحاوي للفتاوى: 2/398]




امام الجرح والتعدیل حضرت یحییٰ بن سعید القطان رحمہ الله فرماتے ہیں:”والله، ابو حنیفہ رحمہ الله اس امت میں خدا اور اس کے رسول سے جو کچھ وارد ہوا ہے اس کے سب سے بڑے عالم ہیں“(مقدمہ کتاب التعلیم ص134)



سید الحفاظ حضرت یحییٰ بن معین رحمہ الله سے ايک باران کے شاگرد احمد بن محمد بغدادی نے حضرت امام ابو حنیفہ رحمہ الله کے متعلق ان کی رائے دریافت کی تو آپ نے فرمایا:”سراپا عدالت ہیں، ثقہ ہیں ایسے شخص کے بارے میں تمہارا کیا گمان ہے جس کی ابن مبارک رحمہ الله اور وکیع رحمہ الله توثیق کی ہے“(مناقب ابی حنیفہ ص101)

علمِ حدیث کے ایسے بالغ نظر علماء کا امام ابوحنیفہؒ سے حدیث سننا اور پھراِن کے اس قدر گرویدہ ہوجانا کہ انہی کے قول پر فتوےٰ دینا حضرت امام کی علمی منزلت کی ناقابلِ انکار تاریخی شہادت ہے، حافظ ابنِ عبدالبر مالکیؒ امام الجرح والتعدیل یحییٰ بن معین سے نقل کرتے ہیں:

"وکان (وکیع) یفتی برأی أبی حنیفۃ وکان یحفظ حدیثہ کلہ وکان قد سمع من ابی حنیفۃ حدیثاً کثیراً"۔                         

  (کتاب الانتقاء:۲/۱۵۰۔ جامع بیان العلم:۲/۱۴۹)

ترجمہ:حضرت وکیع حضرت امام ابوحنیفہؒ کی فقہ کے مطابق فتوےٰ دیتے تھے اور آپ کی روایت کردہ تمام احادیث یاد رکھتے تھے اور انہوں نے آپ سے بہت سی احادیث سنی تھیں۔

حافظ شمس الدین الذہبیؒ (۷۴۸ھ) بھی وکیع کے ترجمہ میں لکھتے ہیں:

"وقال يحيى: مارأيت افضل منه يقوم الليل ويسرد الصوم ويفتى بقول ابي حنيفة"۔

(تذکرۃ الحفاظ:۲۸۲)

وکیع جیسے حافظ الحدیث اور عظیم محدث کا آپ کی تقلید کرنا اور فقہ حنفی پر فتوےٰ دینا حضرت امام کے مقام حدیث کی ایک کھلی شہادت ہے؛ پھرچند نہیں آپ نے ان سے کثیراحادیث سنیں،


امام اہل بلخ حضرت خلف بن ایوب رحمہ الله فرماتے ہیں:”الله تعالی سے علم حضرت محمد صلی الله علیہ وسلم کو پہنچا،آپ بعد آپ کے صحابہ کو، صحابہ کے بعد تابعین کو،پھر تابعین سے امام ابو حنیفہ رحمہ الله اور ان کے اصحاب کو ملا، اس پر چاہے کوئی خوش ہو یا ناراض“(تاریخ بغداد ۔ج13ص336)


محدث عبدالله بن داود الخریبی فرماتے ہیں:”حضرت امام ابو حنیفہ رحمہ الله کی عیب گوئی دو آدمیوں میں سے ايک کے سوا کوئی نہیں کرتا، یا جاہل شخص جو آپ کے قول کا درجہ نہیں جانتا یا حاسد جو آپ کے علم سے واقف نہ ہونے کی وجہ سے حسد کرتا ہے“(اخبار ابی حنیفہ و اصحابہ ص79) نیز فرماتے ہیں:”مسلمانو ں پر واجب ہے کہ وہ اپنی نماز میں ابو حنیفہ رحمہ الله کے لئے دعا کیا کریں۔ کیونکہ انہوں نے حدیث وفقہ کو ان کے لئے محفوظ کیا ہے “(تاریخ بغداد ۔ج13ص344) حضرت عبدالله بن مبارک رحمہ الله فرماتے ہیں:”اگر الله تعالی نے مجھے ابو حنیفہ رحمہ اور سفیان ثوری رحمہ الله سے نہ ملایا ہوتا تو میں بدعتی ہوتا“( مناقب الامام ابی حنیفہ ص18)


بغض_امام ابو حنیفہؒ میں جھوٹی احادیث گھڑنے کا ثبوت
مشہور شارح بخاری حافظ ابن حجر عسقلانیؒ نے اسماء الرجال کے موضوع پر اپنی کتاب "تهذيب التهذيب" میں امام نسائی کا یہ قول نقل کیا ہے:
[تهذيب التهذيب: 4/235 (10/462)، الميزان: 267 /4]
ترجمہ : نعیم بن حماد سنت کی تقویت کے لئے حدیثیں گھڑا کرتے تھے اور (امام) ابو حنیفہؒ کی تنقیض میں حکایتیں گھڑا کرتے تھے اور وہ سب جھوٹی ہوتی تھیں.
هامش التاريخ الكبير، للبخاري: 81 / 8 ، الكامل في ضعفاء الرجال (7/16) رقم 1959 ، سير أعلام النبلاء:10/595


یہ امام بخاریؒ کے شیوخ میں سے رہے ہیں لیکن پھر بھی نعیم بن حماد کو خود امام بخاریؒ نے (کتاب الضعفاء الصغیر صفحہ 29) میں ضعیف لکھا ہے

مشہور محدث علامہ ابن عدیؒ (277 - 365 ھہ) کے استاد ابّان بن جعفر امام ابو حنیفہؒ کے خلاف روایت گھڑا کرتے تھے جو سب کے سب کذب (جھوٹ) ہیں، انہوں نے ایک دو نہیں بلکہ 300 سے زیادہ روایت ، امام ابو حنیفہؒ کے خلاف گھڑ رکھی تھیں، گمان غالب یہی ہے کہ علامہ خطیب بغدادیؒ نے اپنی "تاریخ بغداد" میں نقل کیا ہے.[ميزان الاعتدال]

ترجمہ : حضرت قاسم بن عباد نے (امام بخاریؒ اور امام ابو داودؒ کے استاد اور حدیث کے بہت بڑے حافظ) امام علی بن جعد جوھری سے روایت کی ہے کہ "امام ابو حنیفہؒ جب حدیث بیان کرتے ہیں موتی کی طرح آبدار ہوتی ہے".



علامہ ذہبی رحمہ الله ”تذکرة الحفاظ“ میں حضرت امام ابو حنیفہ رحمہ الله کا تدکرہ ان القابات کے ساتھ کرتے ہیں:” ابو حنیفہ رحمہ الله امام اعظم اور عراق کے فقیہ ہیں........ وہ امام، پرہیز گار، عالم باعمل، انتہائی عبادت گزار اور بڑی شان والے تھے“(تدکرة الحفاظ ج1ص168)

حافظ عماد الدین بن کثیر رحمہ الله حضرت امام ابو حنیفہ رحمہ الله کا تذکرہ ان الفاظ سے کرتے ہیں:”وہ امام ہیں، عراق کے فقیہ ہیں، ائمہ اسلام اور بڑی شخصیات میں سے ايک شخصیت ہیں ، ارکان علماءمیں سے ايک ہیں،ائمہ اربعہ جن کے مذاہب کی پیروی کی جاتی ہے ان میں سے ايک امام ہیں“(البدایة والنہایة ج10ص107)

خطیب بغدادی (۴۶۳ھ) لکھتے ہیں:

"علمِ عقائد اور علمِ کلام میں لوگ ابوحنیفہؒ کے عیال اور خوشہ چیں ہیں"۔   (تاریخ بغدادی:۱۳/۱۶۱)


مشھور محدث ابو مقاتل حفص بن سلمؒ امام ابو حنیفہؒ کی فقہ و حدیث میں امامت کا اعتراف ان الفاظ میں کرتے ہیں :
وكان أبو حنيفة إمام الدنيا في زمانه فقها و علما و ورعا، قال : وكان أبو حنيفة محنة يعرف به أهل البدع من الجماعة ولقد ضرب بالسياط على الدخول في الدنيا لهم فابى".
ترجمہ : امام ابو حنیفہؒ اپنے زمانہ میں (حدیث، فقہ و تقویٰ میں) دنیا کے امام تھے، ان کی ذات آزمائش تھی جس سے اہل السنّت والجماعت اور اہل البدعت میں فرق و امتیاز ہوتا تھا، انھیں کوڑوں سے مارا گیا تاکہ وہ دنیاداروں کے ساتھ دنیا میں داخل ہوجائیں (کوڑوں کی ضرب برداشت کرلی) مگر دخول_دنیا قبول نہ کیا.


امام عبد العزیز بن ابی داودؒ فرماتے ہیں : "أبو حنيفة المحنة من أحب أبا حنيفة فهو سنيي ومن أبغض فهو مبتدع" [أخبار أبي حنيفة و أصحابه لامام صميري : ص ٧٩]؛

امام ابو حنیفہؒ آزمائش ہیں، جو ان سے محبت رکھتا ہے وہ سنی ہے اور جو ان سے بغض رکھتا ہے وہ بدعتی ہے.



حضرت امام ابو حنفیہ رحمہ الله کے متعلق مذکورہ چند اکابر اعلام کے چیدہ چیدہ اقوال نقل کئے گئے ہیں ، ان کے علاوہ اور بہت سے بزرگوں کے اقوال، کتب، تاریخ وتذکرہ میں موجود ہیں۔ جن سے حضرت امام صاحب کی فضلیت و منقبت، عظمت و بزرگی ظاہر ہوتی ہے۔ حضرت امام صاحب کے بارے میں ان اقوال کے موجود ہوتے ہوئے غیر مقلدین کا ان پر طعن و تشنیع کرنا، ان کی عیب جوئی اور عیب گوئی کرنا اپنی عاقبت خراب کرنے کے سوا کچھ نہیں ۔یحییٰ بن معین رحمہ الله سے پوچھا گیا کیا امام صاحب رحمہ الله ثقہ ہیں آپ نے دوبار فرمایا ثقہ ہیں ، ثقہ ہیںمورخ ابن خلکان رحمہ الله لکھتے ہیں کی آپ پر قلت عربیت کے سوا کوئی نقطہ چینی نہیں کی گئ (سبحان الله ) حافظ ابن ابی داؤد رحمہ الله فرماتے ہیں امام ابو حنیفہ رحمہ الله کے متعلق چہ میگوئیاں کرنے والے دو طرح کے لوگ ہیں ان کی شان سے ناواقف یا ان کے حاسدابن مبارک نے سفیان ثوری معین رحمہ الله سے پوچھا ابو حنیفہ معین رحمہ الله غیبت کرنے سے بہت دور رہتے ہیں دشمن ہی کیوں نہ ہو فرمایا ابو حنیفہ رحمہ الله اس سے بالاتر ہیں کہ اپنی نیکیوں پر دشمن کو مسلط کریں –یہ ایک حقیقت ہے کہ امام صاحب کے شاگردوں کی ان سے روایات کرنے والوں کی اور انہیں ثقہ و معتبر کہنے والوں کی تعداد بہت زیادہ ہے بہ نسبت نکتہ چینی کرنے والوں کےامام اعظم رحمہ الله کا علمی پایہ:شداد بن حکم رحمہ الله فرماتے ہے کہ " ابو حنیفہؒ سے بڑھ کر میں نے کوئی عالم نہیں دیکھا "مکی بن ابراہیم رحمہ الله فرماتے ہیں " ابو حنیفہؒ اپنے زمانے کے سب سے بڑھے عالم تھےامام وکیع رحمہ الله فرماتے ہے " میں کسی عالم سے نہیں ملا جو ابو حنیفہؒ سے زیادہ فقیہ ہو اور ان سے بہتر نماز پڑھتا ہو "نذر بن شامل فرماتے " لوگ علم فقہ سے بے خبر پڑے تھے ابو حنیفہؒ نے انہیں بیدار کیا "محدث یحیٰ بن سعید القطان رحمہ الله فرماتے ہیں " ہم الله پاک کے سامنے جھوٹ نہیں بول سکتے واقعی ابو حنیفہ رحمہ الله سے بڑھ کر ہم نے فقہ میں کسی کی بات نہیں سنی اس لئے اکثر اقوال ہم نے ان کے اختیار کر لئے "امام شافعی رحمہ الله فرماتے ہیں تمام لوگ فقہ میں ابو حنیفہ رحمہ الله کے محتاج ہیں "محدث یحییٰ بن معین رحمہ الله فرماتے ہیں " فقہ تو بس ابو حنیفہ رحمہ الله ہی کی ہے"جعفربن ربیع رحمہ الله فرماتے ہے " میں پانچ سال امام صاحب کی خدمت میں رہا میں نے ان جیسا خموش انسان نہیں دیکھا جب فقہ کا مسئلہ پوچھا جاتا تو کھل جاتے اور علم کا دریا لگتے تھے "عبد الله بن ابی داؤد رحمہ الله فرماتے ہیں " اہل اسلام پر فرض ہے کہ وہ اپنی نمازوں میں کے بعد امام ابو حنیفہ رحمہ الله کیلئے دعا کریںشافعی المذہب محدث خطیب تبریزی رحمہ الله 743ھ ) نے مشکو'تہ شریف جمع کی پھر الاکمال کے نام سے رجل پر کتاب لکھی انہوں نے مشکو'تہ میں اگرچہ امام صاحب سے کوئی حدیث نقل نہیں کی مگر برکت کے لئے آپ کا تذکرہ کیا فرماتے ہیں " امام ابو حنیفہ رحمہ الله بڑھے عالم تھے صاحب عمل پریز گر تھے دنیا سے بے رغبت اور عبادت گزار تھے علوم شریعت میں امام تھے اگرچہ مشکو'تہ میں ہم نے ان سے کوئی روایت نہیں لی یھاں ذکر کرنے سے ہمی غرض ان سے برکت حاصل کرنا ہے " امام صاحب رحمہ الله علو مرتبت اور اونچے علم کی اور کیا نشانی ہو سکتی ہے 


فن جرح و تعدیل اور امام ابو حنیفہؒ




 قَالَ أَبُو يُوسُفَ ، قَالَ أَبُو حَنِيفَةَ " لا يَنْبَغِي لِلرَّجُلِ أَنْ يُحَدِّثَ مِنَ الْحَدِيثِ ، إِلا مَا يَحْفَظُهُ مِنْ وَقْتِ مَا سَمِعَهُ " .
[مناقب الإمام أبي حنيفة وصاحبيه » لا ينبغي للرجل أن يحدث من الحديث ، إلا ما يحفظه ...، رقم الحديث: 84]
الجواهر المضية


ألإمام الأعظم أبي حنيفة النعمان رحمه الله كا عظيم اجتہادى أصول
الإمام الأعظم أبو حنيفة النعمان رحمه الله تعالى فرماتے ہیں
آخذ بكتاب الله ، فما لم أجد فبسنة رسول الله صلى الله عليه وسلم، فإن لم أجد في كتاب الله ولا سنة رسول الله صلى الله عليه وسلم، أخذت بقول أصحابه، آخذ بقول من شئت منهم، وأدع من شئت منهم ولا أخرج من قولهم إلى قول غيرهم وأما اذا انتهى الأمر الى إبراهيم والشعبي وإبن سيرين والحسن وعطا وسعيد ابن المُسيب وعد د رجالا فقوم اجتهدوا فأجتهدُ كما اجتهدوا ۔
میں سب سے پہلے کتاب الله سے۔ .. ( . مسئلہ وحکم . ) . لیتا ہوں ، اگرکتاب الله میں نہ ملے تو پهر سنة رسول الله صلى الله عليه وسلم اور احادیث کی طرف رجوع کرتا ہوں ، اور اگر كتاب الله وسنة اور احادیث رسول الله صلى الله عليه وسلم میں بهی نہ ملے تو پهر میں اقوال صحابہ کرام کی طرف رجوع کرتا ہوں اور میں صحابہ کرام کے اقوال سے باہر نہیں نکلتا ، اور جب معاملہ إبراہيم، والشعبي والحسن وابن سيرين وسعيد بن المسيب تک پہنچ جائے تو پهر میں بهی اجتهاد کرتا ہوں جیسا کہ انهوں نے اجتهاد کیا ۔
(.تاريخ بغداد. (368./13.).
(الانتقاء للامام الحافظ ابن عبدالبر مع تعلیق الشیخ عبدالفتاح ابوغدہ رحمة الله عليه، ص: ۲۶۴-۲۶۵)




حافظ ابن القیم رحمہ الله اپنی کتاب ‘‘إعلام الموقعين ’’ فرماتے هیں کہ
وأصحاب أبي حنيفة رحمه الله مجمعون على أن مذهب أبي حنيفة أن ضعيف الحديث عنده أولى من القياس والرأي ، وعلى ذلك بنى مذهبه كما قدّم حديث القهقهة مع ضعفه على القياس والرأي ، وقدّم حديث الوضوء بنبيذ التمر في السفر مع ضعفه على الرأي والقياس .... فتقديم الحديث الضعيف وآثار الصحابةعلى القياس والرأي قوله وقول الإمام أحمد "
امام أبي حنيفة رحمه الله کے اصحاب کا اس بات پراجماع ہے کہ امام أبي حنيفة رحمه الله کا مذہب یہ ہے کہ ان کے نزدیک ضعیف حدیث بهی رائے و قیاس سےأولى وبہتر .( .ومقدم. ) .ہے ، اور اسی اصول پر امام أبي حنيفة رحمه الله کے مذهب کی بنیاد واساس رکهی گئی ، جیسا قهقهة والی حدیث کو باوجود ضعیف ہونے کے امام أبي حنيفة رحمه الله نے قیاس ورائے پرمقدم کیا ، اور سفر میں نَبيذُ التمَر کے ساتهہ وضو والی حدیث کو باوجود ضعیف ہونے کے امام أبي حنيفة رحمه الله نے قیاس ورائے پرمقدم کیا ، پس حديث ضعيف وآثارُ الصحابة کو رائے وقیاس پرمقدم کرنا یہ الإمام أبي حنيفة رحمه الله اور الإمام أحمد رحمه الله کا قول .(.وعمل وفیصلہ .). ہے ۔

.(.(. إعلام الموقعين عن رب العالمين 77/.1 .).) .





علامہ ابن حزم ظاہری بهی یہی فرماتے ہیں کہ
‘‘جميع أصحاب أبي حنيفة مجمعون على أن مذهب أبي حنيفة أن ضعيف الحديث أولى عنده من القياس والرأي’’
.(.(.إحكام الإحكام في أصول الأحكام 54/7 .).).



یہ ہے الإمام الأعظم أبي حنيفة رحمه الله اورآپ کے اصحاب وتلامذه کا سنہری وزریں اصول جس کے اوپرمذہب حنفی بنیاد ہے ، الإمام الأعظم رحمه الله کا یہ اصول اہل علم کے یہاں معروف ہے ، اب جس امام کا حدیث کے باب میں اتنا عظیم اصول ہو اوراس درجہ تعلق ہو حدیث کے ساتھ کہ ضعیف حدیث پربهی عمل کرنا ہے ، اس امام کواور اس کے اصحاب وپیروکاروں کو حدیث کا مخالف بتلایا جائے اورجاہل عوام کو گمراه کیا جائے،تو اس طرز کو ہم کیا کہیں جہالت وحماقت یاعداوت ومنافقت ؟؟

شيخ الإسلام إبن تيمية رحمه الله كا فتوى
‘‘ومن ظنّ بأبي حنيفة أوغيره من أئمة المسلمين أنهم يتعمدون مخالفة الحديث الصحيح لقياس أو غيره فقد أخطأ عليهم ، وتكلّم إما بظنّ وإما بهوى ، فهذا أبو حنيفة يعمل بحديث التوضى بالنبيذ في السفر مع مخالفته للقياس ، وبحديث القهقهة في الصلاة مع مخالفته للقياس لاعتقاده صحتهما وإن كان أئمة الحديث لم يصححوهما’’
اورجس نے بهی امام أبي حنيفة یا ان کے علاوه دیگر أئمة ُالمسلمين کے متعلق یہ گمان کیا کہ وه قياس یا ( رائے ) وغیره کی وجہ سے حديث صحيح کی مُخالفت کرتے ہیں تو اس نے ان ائمہ پر غلط. ( .وجهوٹ .) .بات بولی ، اور محض اپنے گمان وخیال سے یا خواہش وہوئی سے بات کی ، اور امام أبي حنيفة تو نَبيذُ التمَر کے ساتهہ وضو والی حدیث پر باوجود ضعیف ہونے کے اور مُخالف قیاس ہونے کے عمل کرتے ہیں الخ
.(.(. مجموع الفتاوي لابن تيمية 304/20، 305.).).



شيخ الإسلام إبن تيمية رحمه الله کا فتوی بالکل واضح ہے یعنی امام اعظم کے مُتعلق اگرکوئی یہ گمان وخیال بهی کرے کہ وه صحیح حدیث کی مخالفت کرتے ہیں اپنی رائے وقیاس سے تو ایسا شخص شيخ الإسلام إبن تيمية رحمه الله کے نزدیک خیالات وخواہشات کا پیروکار ہے اور ائمہ مُسلمین پرجهوٹ وغلط بولنے والا ہے ۔کیا شيخ الإسلام إبن تيمية کے اس فتوی کا مصداق آج کل کا جدید فرقہ اہل حدیث نہیں ہے جو رات دن کا مشغلہ ہی یہی بنائے ہوئے ہیں ؟؟؟
میں نے حافظ ابن القیم رحمہ الله اور ان کے شیخ شيخ الإسلام إبن تيمية رحمہ الله کی تصریحات نقل کیں ، عجب نہیں کہ حافظ ابن القیم رحمہ الله شيخ الإسلام إبن تيمية رحمہ الله کا یہ اعلان فرقہ جدید اہل حدیث میں شامل جُہلاء کے لیئے باعث ہدایت بن جائے ۔اور یہ بهی یاد رہے کہ فرقہ جدید اہل حدیث میں شامل جاہل نام نہاد شیوخ عوام کو گمراه کرنے کے لیئے یہ وسوسہ پهیلاتے ہیں کہ فقہ حنفی‘‘ حدیث ’’کے بالکل مخالف ہے ، گذشتہ سطور میں آپ نے ملاحظہ کرلیا کہ امام اعظم اورآپ کے اصحاب بالاتفاق ضعیف حدیث پرعمل نہیں چهوڑتے چہ جائیکہ صحیح حدیث کو چهوڑ دیں ، اس سلسلہ میں ایک اور مثال عرض کرتا ہوں۔
دیگرمُحدثین کے یہاں اور خود فرقہ جدید اہل حدیث کے یہاں بهی ‘‘ مُرسَل حدیث’’ ضعیف اور ناقابل احتجاج ہے ، جب کہ امام اعظم اور آپ کے اصحاب ‘‘ مُرسَل حدیث ’’ کو بهی قبول کرتے ہیں ، اور قابل احتجاج سمجهتے ہیں بشرطیکہ ‘‘ مُرسِل’’ ثقہ وعادل ہو۔

یہاں سے آپ اندازه لگا لیں کہ امام اعظم اور آپ کے اصحاب ‘‘ حدیث ’’کو کتنی اہمیت دیتے ہیں ، اور حدیث رسول کے ساتھ کس درجہ شدید و قوی تعلق رکهتے ہیں ، لیکن پهر بهی عوام کو بے راه کرنے کے لئے یہ جهوٹ و وسوسہ پهیلاتے ہیں کہ فقہ حنفی حدیث کے بالکل مخالف ہے۔





امام المسلمین ابو حنیفہؒ

از:۔ حضرت امام عبد اللہ بن مبارک رضی اللہ تعالیٰ عنہ 


لقد زان البلاد و من علیہا ٭ امام المسلمین ابو حنیفہؒ 

با حکام وآ ثار و فقہ ٭ کا یات الزبور علی صحیفہ 

فما فی المشرقین لہ نظیر ٭ ولا فی المغربین ولا بکوفہ 

یبیت مشمرا سہر اللیالی ٭ وصام نہارہ للہ خیفہ 

وصان لسانہ عن کل افک ٭ وما زانت جوارحہ عفیفہ 

یعف عن المحارم والملاہی ٭ ومرضاۃ الا لہ لہ وظیفہ 

رأیت العاتبین لہ سفاہا ٭ خلاف الحق مع حجج ضعیفہ 

و کیف یحل ان یوذی فقیہ ٭ لہ فی الارض آثار شریفہ 

وقد قال بن ادریس مقالا ٭ صحیح ا لنقل فی حکم لطیفہ 

بان الناس فی فقہ عیال ٭ علی فقہ الامام ابی حنیفہ 

فلعنۃ ربنا اعداد رمل ٭ علی من رد قول ابی حنیفہ 

ترجمہ:
٭ امام المسلمین ابو حنیفہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے شہروں اور شہریوں کو زینت بخشی، 

٭ احکام قرآن، آثار حدیث اور فقہ سے ، جیسے صحیفہ میں زبور کی آیات نے۔ 

٭ کوفہ بلکہ مشرق و مغرب میں ان کی نظیر نہیں ملتی، یعنی روئے زمین میں ان جیسا کوئی نہیں۔ 

٭ آپ عبادت کے لئے مستعد ہو کر بیداری میں راتیں بسر کرتے اور خوف خدا کی وجہ سے دن کو روزہ رکھتے ،۔ 

٭ انہوں نے اپنی زبان ہر بہتان طرازی سے محفوظ رکھی، اور انکے اعضا ہر گناہ سے پاک رہے۔ 

٭ آپ لہو و لعب اور حرا م کاموں سے بچے رہے ، رضائے الہی کا حصول آ پ کا ووظیفہ تھا۔ 

٭ امام اعظم کے نکتہ چیں بے وقوف، مخالف حق اور کمزور دلائل والے ہیں ۔ 

٭ ایسے فقیہ کو کسی بھی وجہ سے تکلیف دینا کیونکر جائز ہے ، جسکے علمی فیوض تمام دنیا میں پھیلے ہوئے ہیں۔ 

٭ حالانکہ صحیح روایت میں لطیف حکمتوں کے ضمن میں امام شافعی نے فرمایا : کہ 

٭ تمام لوگ فقہ میں امام ابو حنیفہ کی فقہ کے محتاج ہیں۔ 

٭ ریت کے ذروں کے برابر اس شخص پر اللہ تعالی ٰ کی لعنت ہو جو امام ابو حنیفہ کے قول کو مردود قرار دے۔ 

[التبييض الصحيفه في مناقب الإمام أبي حنيفه: شیخ جلال الدین سیوطی رحمہ الله(شافعی-مقلد) (849-911ھ)






اب میں چند نام کتب کے ناظرین کے سامنے پیش کرتا ہوں جن میں امام صاحب رحمه الله کے مناقب موجود ہیں جن کے مؤلفین شافعی ، مالکی ، حنبلی ،حنفی ہیں

نمبر [01] عقود المرجان

نمبر [02] قلائد عقود اور الدرر والعقیان
یہ دونوں کتابیں امام صاحب رحمه الله کے مناقب میں حافظ ابو جعفر طحاوی نے تالیف کی ہیں


نمبر [03] البستان فی مناقب النعمان

علامہ محی الدین بن عبد القادر بن ابو الوفا قرشی نے تالیف کی


نمبر [04] شقالق النعمان
علامہ جار الله زمحشری کی


نمبر [05] کشف الآثار
علامہ عبد الله بن محمد حارثی کی

نمبر [06] الانتصار لامام ائمۃ الامصار
علامہ یوسف سبط ابن جوزی کی

نمبر [07] تبییض الصحیفہ
امام جلال الدین سیوطی نے تالیف کی ہے ، محرر سطور نے اس کا مطالعہ کیا ہے

نمبر [08] تحفۃ السلطان
علامہ ابن کاس نے تالیف کی

نمبر [09] عقود الجمان
علامہ محمد بن یوسف دمشقی نے تالیف کی

نمبر [10] ابانہ
احمد بن عبد الله شیر آبادی کی

نمبر [11] تنویر الصحیفہ
علامہ یوسف بن عبد الہادی کی تصنیف ہے

نمبر [12] خیرات حسان
حافط ابن حجر مکی شافعی نے امام صاحب رحمه الله کے مناقب میں تصنیف کی ہے

نمبر [13] قلائد العقیان
یہ بھی حافظ ابن حجر مکی شافعی نے امام صاحب رحمه الله کے مناقب میں تصنیف کی ہے

نمبر [14] الفوائد المہمہ
علامہ عمر بن عبدالوہاب عرضی شافعی کی

نمبر [15] مرآۃ الجنان
امام یافعی کی

نمبر [16] تذکرۃ الحفاظ
امام ذہبی کی ، محرر سطور نے اس کا بھی مطالعہ کیا ہے

نمبر [17] تہذیب التہذیب

نمبر [18] الکاشف
یہ دونوں بھی حافظ ذہبی شافعی کی ہیں

نمبر [19] تہذیب الکمال
حافظ ابو الحجاج مزی کی

نمبر [20] جامع الاصول
علامہ ابن اثیر جزری کی

نمبر [21] احیاء العلوم
امام غزالی کی ، محرر سطور نے اس کا بھی مطالعہ کیا ہے

نمبر [22] تہذیب الاسماء واللغات
امام نووی کی

نمبر [23] تاریخ ابن خلدون

نمبر [24] تاریخ ابن خلکان

نمبر [25] الاکمال فی اسماء الرجال
لصاحب المشکوۃ ، محرر سطور نے اس کا بھی مطالعہ کیا ہے

نمبر [26] میزان کبری
شیخ عبدالوہاب شعرانی کی ، محرر سطور نے اس کا بھی مطالعہ کیا ہے

نمبر [27] الیواقیت والجواہر
یہ بھی شیخ عبدالوہاب شعرانی کی ہے

نمبر [28] طبقاب شافعیہ
ابو اسحاق شیرازی کی

نمبر [29] اول کتاب مسند
ابو عبد الله بن خسرو بلخی نے امام صاحب رحمه الله کے مناقب بیان کئے ہیں، محرر سطور نے اس کا مطالعہ کیا ہے

نمبر [30] الایضاح
عثمان بن علی بن محمد شیرازی کی

نمبر [31] جامع الانوار
محمد بن عبد الرحمن غزنوی کی

نمبر [32] مرقات شرح مشکوۃ
علامہ ملا علی قاری کی ، محرر سطور نے اس کا بھی مطالعہ کیا ہے

نمبر [33] تنسیق النظام
فاضل سنبھلی کی ، اس کا بھی مطالعہ کیا ہے - مسند امام اعظم کا احناف کےواسطے میرے خیال میں اس سے اچھا کوئی حاشیہ نہیں ، بلکہ یہ مستقل شرح ہے

نمبر [34] النافع الکبیر

نمبر [35] مقدمہ تعلیق ممجد

نمبر [36] مقدمہ ہدایہ

نمبر [37] مقدمہ شرح وقایہ

نمبر [38] مقدمہ سعایہ

نمبر [39] اقامۃ الحجہ

نمبر [40] الرفع والتکمیل

نمبر [41] تذکرۃ الراشد
مولانا عبد الحئی لکھنوی کی ہیں - یہ آٹھوں کتابیں محرر سطور کے مطالعہ سے گزری ہیں

نمبر [42] آثار السنن

نمبر [43] اوشحۃ الجید
علامہ شوق نیموی کی ، ان دونوں کتابوں کا بھی مطالعہ کیا ہے - خصوصآ آثارالسنن بہت نایاب کتاب ہے ، خدا ان کو جزائے خیر دے ، آمین

نمبر [44] خلاصہ تہذیب الکمال
علامہ صفی الدین خزرجی کی یہ کتاب بھی مطالعہ سے گزری ہے

نمبر [45] عمدۃ القاری شرح بخاری

نمبر [46] بنایہ شرح ہدایہ
یہ دونوں کتابیں بھی حافظ وقت عینی کی ہیں اور دونوں محرر سطور کے مطالعہ میں رہ چکی ہیں

نمبر [47] شرح عین العلم
ابن حجر مکی شافعی کی

نمبر [48] حاشیہ محمد بن یوسف دمشقی علی المواہب

نمبر [49] عین العلم
محمد بن عثمان بلخی کی ، اس کا بھی محرر سطور نے مطالعہ کیا ہے

نمبر [50] انتصار الحق جواب معیار الحق
فاضل رام پور کی ، یہ بھی مطالعہ سے گزری ہے ، اچھی کتاب ہے

نمبر [51] شرح مسلم الثبوت
علامہ بحر العلوم لکھنوی کی

نمبر [52] غیث الغمام
فاضل لکھنوی کی ، اس کو بھی دیکھا ہے

نمبر [53] تمہید
حافظ ابن عبدالبر کی

نمبر [54] استذکار
حافظ ابن عبدالبر

نمبر [55] کتاب جامع العلم
حافظ ابن عبدالبر ، اس کا ایک مختصر ہے ، احقر نے اس کا بھی مطالعہ کیا ہے ، بہت ہی عجیب کتاب ہے

نمبر [56] مجمع البحار
علامہ محمد طاہر پٹنی حنفی کی اس کا بھی مطالعہ کیا ہے ، ان کی ایک کتاب قانون رجال میں ہے جو قلمی ہے چھپی نہیں ہے ، اس کے خطبہ میں خود مؤلف نےاپنے آپ کو حنفی لکھا ہے ، احقر نے اس کا مطالعہ کیا ہے اچھی کتاب ہے

نمبر [57] طبقات کبری
تاج الدین سبکی کی

نمبر [58] لواقح الانوار
علامہ شعرانی شافعی کی

نمبر [59] تذکرۃ الاولیاء
عطار رحمه الله کی

نمبر [60] فیوض الحرمین
شاہ ولی الله محدث دہلوی رحمه الله کی

نمبر [61] عقود الجواہر المنیفہ
علامہ سید محمد مرتضی زبیدی کی ، اس کا بھی مطالعہ کیا ہے یہ دو جلدوں میں وہ کتاب ہے جس میں ان روایات حدیثیہ کو جمع کیا ہے جن کو امام ابوحنیفہ رحمه الله روایت کرتے ہیں ، بہت عجیب کتاب ہے ، ہر شخص کو جو حنفہ مذہب رکھتا ہو اس کا مطالعہ کرنا چاہیئے تاکہ اس کو معلوم ہو کہ امام ابوحنیفہ رحمه الله کو کتنی حدیثیں پہنچی تھیں اور دشمن کتنا جھوٹ بولتے ہیں کہ صرف سترہ حدیثیں یاد تھیں

نمبر [62] درمختار

نمبر [63] ردالمختار
دونوں کا مطالعہ کیا ہے

نمبر [64] مقدمہ فتح الباری
اس کا بھی مطالعہ کیا ہے

نمبر [65] تہذیب التہذیب

نمبر [66] تقریب التہذیب
یہ دونوں بھی حافظ ابن حجر عسقلانی کی ہیں ، احقر نے دونوں کا مطالعہ کیااور فائدہ حاصل کیا ہے

نمبر [67] روض الفائق
علامہ شعیب کی

نمبر [68] التاج المکلل

نمبر [69] حطہ فی اصول الصحاح ستہ

نمبر [70] اتحاف النبلاء

نمبر [71] کشف الالتباس
یہ چاروں کتابیں نواب صدیق حسن خاں قنوجی کی ہیں جو میرے مطالعہ سے گزری ہیں

نمبر [72] المقاثب المنفیہ

نمبر [73] کتاب الحنفاء
یہ دونوں مولوی عبد الاول جونپوری کی ہیں جو خاکسار نے دیکھی ہے

نمبر [74] کتاب المناقب
للموفق بن احمد مکی کی ، اس کا بھی مطالعہ کیا ہے

نمبر [75] مناقب کردری
اس کو بھی احقر نے دیکھا ہے ، یہ دونوں کتابیں دائرۃ المعارف سے چھپی ہیں جو حیدرآباد میں ہے

نمبر [76] الحیاض
علامہ شمس الدین سیوالسی کی

نمبر [77] المناقب
حافظ ذہبی مصنف کاشف کی ہے

نمبر [78] الطبقات السنیہ
علامہ تقی الدین ابن عبد القادر کی

نمبر [79] الصحیفہ فی مناقب ابو حنیفہؒ
حافظ ذہبی کی ہے ، یہ اناسی [79] نام ناظرین کے سامنے "مشتے نمونہ ازخروارے" پیش کئے ہیں جس میں بہت سی ایسی کتابیں ہیں جو خاص امام صاحب رحمه الله کے مناقب و محامد میں لکھی گئی ہیں جن کے دیکھنے سے معلوم ہوتا ہے کہ سوائے حاسدوں اور دشمنوں کے اور کوئی بھی امام صاحب رحمه الله کےفضائل کا انکار نہیں کرسکتا ، ان کے علاوہ اور بھی بہت سی کتابیں ہیں جن میں امام صاحب رحمه الله کے مناقب موجود ہیں جس کی ظاہری آنکھیں کھلی ہیں وہ دیکھ سکتا ہے ، مذکورہ کتب میں سے بیالیس [42] کتابیں میں نے دیکھی ہیں اور ان کا مطالعہ کیا ہے - ناظرین یہاں تک ان اقوال کے متعلق ذکر تھا جن کا نام مؤلف رسالہ [الجرح علی ابی حنیفه] نے گنائے تھے -تقریبآ نصف نام میں ان میں سے ذکر کئے ہیں ، انہیں پر اوروں کو قیاس کرلیجئے ، گو مضمون بہت طویل ہوگیا مگر فائدہ سے خالی نہیں ہے - اب آگےمؤلف رسالہ [الجرح علی ابی حنیفه] گل افشانی فرماتے ہیں

کشف الغمة بسراج الامة - ترجمہ [امام اعظم ابو حنیفہ رحمه الله اورمتعرضین] صفحہ نمبر 64 تا 67
====================================== 



امام اعظم ابى حنيفة النعمان رحمه الله ان مقدس ومحترم شخصيات ميں سے ہیں ، جن کے خلاف فرقہ جدید نام نہاد اهل حدیث کی طرف طعن وتشنیع وتنقید کا بازار گرم رہتا هے ، اس فرقہ جدید میں شامل تقریبا ہرچهوٹا بڑا امام عالی شان کی ذات میں توہین وتنقیص کا کچهہ نہ کچهہ اظہار کرتا رہتا ہے ، اور یہ صفت قبیحہ اس فرقہ جدید کے تمام ابناء میں سرایت کی ہوئ ہے ، الاماشاءالله من جملہ ان وساوس باطلہ کے ایک وسوسہ یہ امام اعظم ابى حنيفة النعمان رحمه الله کے خلاف پهیلایا جاتا هے کہ ان کو تو حدیث کا کچهہ بهی پتہ نہیں تها علم حدیث سے بالکل کورے تهے ( معاذالله ) ،اس باطل وسوسہ پرکچهہ بحث غالبا گذشتہ سطور میں گذرچکی ہے ،لیکن مزید اطمینان قلب کی خاطرمیں امام اعظم ابى حنيفة النعمان رحمه الله کی ان مسانید کا تذکره کروں گا ، جن کوکباراهل علم نے جمع کیا هے

تعريف المسانيد:
مسانيد جمع ہے مسند کی جوکہ ( سَنَدَ ) سے اسم مفعول ہے،

اهل لغت نے اس کی تعریف لغوی اس طرح پیش کی هے،

المسانيد أو المساند جمع : مسند ، وهو : اسم مفعول من الثلاثي : ( سَنَدَ ) ، قال ابن فارس ( ت 395 هـ ) : " السين والنون والدال أصل واحد يدل على انضمام الشيء إلى الشيء . وقد سُمِّي الدهر : مُسنَدًا ؛ لأن بعضه متضام " )

وقال الليث : " السند ما ارتفع عن الأرض " وقال الأزهري ( ت 370 هـ ) : " كل شيء أسندت إليه شيئًا فهو مُسنَد " وحكى أيضًا عن ابن بُزُرْج أن السَّنَد مثقل : ( ( سنود القوم في الجبل ) ) ، وقال الجوهري ( ت 393 هـ ) : " السَنَد : ما قابلك من الجبل وعلا عن السطح ، وفلان سَنَده أي : معتمد " وقال ابن منظور ( ت 711هـ ) : " ما يسند إليه يُسمى مسْنَدًا ومُسْنَدًا ، وجمعه : المَساند " (13) وزاد صاحب القاموس أنه يجمع أَيضًا بلفظ : ( مسانيد ) ، ويرى أبو عبد الله : محمد بن عبد الله الشافعي الزركشي ، ( ت 794 هـ ) ( أن الحذف أولى .

حاصل یہ کہ مسند کا معنی لغوی اعتبار سے یہ هے کہ جوکسی چیزکی طرف منسوب کیا جائے ، جوکسی چیزکی طرف ملایا جائے ، اس چیزکومضبوط کرنے کے لیئے٠

مسند کی اصطلاحى تعریف

اصطلاح میں مسند کا اطلاق حدیث پربهی ہوتا ہے اورحدیث کی کتاب پربهی ہوتا ہے، مسند اس حدیث مرفوع کو کہتے ہیں جس کی سند کا سلسلہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ واٰلہ وسلم تک پہنچتا ہو۔ یہ تو مسند حدیث کی تعریف ہے،

اور اسی طرح مسند کا اطلاق حدیث کی ان کتب پربهی ہوتا ہے، جن کو اس کے مؤلفین نے اسماء الصحابة کے مسانيد پرجمع کیا ہو یعنی مسند حدیث کی وه کتاب ہے جس میں ہرصحابی کے احادیث کو الگ الگ جمع کیا جائے،

پهر بعض محدثین نے اس بارے میں یہ ترتیب رکهی کہ پہلے سابقین فی الاسلام صحابہ کی احادیث ذکرکرتے ہیں جیسے عشره مبشره پهر اهل بدر وغیره ، اور بعض محدثین حروف المعجم کے اعتبار سے صحابہ کی احادیث ذکرکرتے ہیں وغيره . بغرض فائده یہ تومسند کی لغوی واصطلاحی تعریف کا مختصرتذکره تها ، اب میں ان کباراهل علم وعلماء امت کا تذکره کروں گا جنهوں نے امام اعظم ابى حنيفة النعمان رحمه الله کے ان مسانید کو جمع کیا .

یا درہے کہ امام محمد بن محمود الخوارزمی رحمه الله نے امام اعظم ابى حنيفة النعمان رحمه الله کی پندره (15) مسانید کو جامع مسانيد الإمام ابى حنيفة النعمان کے نام سے ایک مستقل کتاب میں جمع کیا هے ، اوران کے جمع کرنے کی وجہ یہ لکهی کہ میں نے شام میں بعض جہلاء سے سنا جوامام اعظم کی شان میں توہین وتنقیص کر رها تها اورامام اعظم پر رواية الحديث کی قلت کا الزام لگا رها تها ، اوراس بارے میں مسند الشافعي وموطا مالك وغیره سے استدلال کر رها تها اوریہ گمان کر رها تها کہ ابو حنیفہؒ کی تو کوئ مسند نہیں ہے ، لہذا مجهے دینی غیرت وحمیت لاحق ہوئ پس میں نے اراده کیا کہ میں امام اعظم رحمه الله کی ان پندره (15) مسانید کو جمع کروں جن کبار علماء الحديث نے جمع کیا هے .

ان کبار علماء الحديث کے اسماء درج ذیل ہیں جنهوں نے امام اعظم ابى حنيفة النعمان رحمه الله کے مسانید کوجمع کیا هے

1 = الإمام الحافظ ابو محمد : عبد الله بن محمد بن يعقوب الحارثي البخاري المعروف : بعبد الله

2 = الإمام الحافظ ابو القاسم : طلحة بن محمد بن جعفر الشاهد العدل

3 = الإمام الحافظ ابو الحسين : محمد بن المظفر بن موسى بن عيسى بن محمد

4 = الإمام الحافظ : ابو نعيم الأصفهاني

5 = الشيخ ابو بكر : محمد بن عبد الباقي بن محمد الأنصاري

6 = الإمام ابو احمد : عبد الله بن عدي الجرجاني

7 = الإمام الحافظ : عمر بن الحسن الأشناني

8 = الإمام ابو بكر : احمد بن محمد بن خالد الكلاعي

9 = الإمام ابو يوسف القاضي : يعقوب بن ابراهيم الأنصاري ، وما روي عنه يسمى : نسخة ابي يوسف

10 = الإمام : محمد بن الحسن الشيباني والمروي عنه يسمى : نسخة محمد

11 = ابن الإمام : حماد رواه عن ابي حنيفة

12 = الإمام : محمد ايضا ، وروى معظمه عن التابعين ، وما رواه عنه يسمى : الآثار

13 = الإمام الحافظ ابو القاسم : عبد الله بن محمد بن أبي العوام السعدي

14 = الإمام الحافظ ابو عبد الله : حسين بن محمد بن خسرو البلخي

15 = الإمام الماوردي ابو الحسن : علي بن محمد بن حبيب

یہ مسانید( ابواب الفقه ) کے مطابق جمع کیئے گئے ہیں ، پهر بعد میں بعض علماء امت نے ان مسانید کی اختصار اور شرح بهی لکهی ، مثلا
1 = الإمام شرف الدين : اسماعيل بن عيسى بن دولة الأوغاني المكي نے اس کا اختصار بنام اختيار اعتماد المسانيد في اختصار اسماء بعض رجال الأسانيد ) لكها ،

2 = الإمام ابو البقاء : احمد بن ابي الضياء ( محمد القرشي البدوي المكي ) نے اس کا اختصار بنام مختصر ( المستند مختصر المسند ) لكها ،

3 = الإمام محمد بن عباد الخلاطي نے اس کا اختصار بنام ( مقصد المسند ) لكها

4 = ابو عبد الله : محمد بن اسماعيل بن ابراهيم الحنفي ،نے اس کا اختصار لکها

5 = حافظ الدين : محمد بن محمد الكردري المعروف : بابن البزازي نے اس کے زوائد کو جمع کیا ،

6 = شيخ جلال الدين السيوطي نے اس کی شرح بنام ( التعليقة المنيفة على سند ابي حنيفة ) لکهی اس کے علاوه بهی بہت ساری کتب وشروحات امام اعظم ابى حنيفة النعمان رحمه الله کی مسانید پرلکهی گئ ہیں .

رحمهم الله جميعا وجزاهم الله تعالى خيرا في الدارين

یقینا اس ساری تفصیل کے بعد آپ نے ملاحظہ کرلیا کہ چند جہلاء زمانہ کی طرف سے امام اعظم کے خلاف جو باطل وکاذب وسوسہ پهیلایا جاتا هے یہ وسوسہ صرف جہلاء وسفہاء کی مجلس میں کارگر ہوتا هے ارباب علم واصحاب فکرونظر کی نگاه میں اس کی کوئ حیثیت نہیں ہے۔
************************************
امام ابو محمد عبداللہ بن محمد بن یعقوب الحارثی البخاری المعروف بہ :الاستاذ" المتوفی 340ھ)
امام حارثی ؒ وہ شخص ہیں جنہوں نے علم حدیث میں بلند پایہ مقام رکھنے کی وجہ سے محدثین سے "الاستاذ " کا ممتاز لقب حاصل کیا 
امام خلیلی ؒ المتوفی 446نے" کتاب الارشاد میں ان کے تذکرہ میں لکھتے ہیں 
یعرف بالاستاذ لہ معرفۃ بھذالشاں (لسان المیزان ج3ص 405٭ )
یہ الاستاذ کے لقب سے مشہور ہیں ان کو اس فن حدیث کی معرفت حاصل ہے 
حافث ذہبی ؒالمتوفی 748ھ ان کے متعلق ارقام فرماتے ہیں 
عرف بالاستاذ اکثر عنہ ابو عبداللہ بن مندۃ (لسان المیزان ج3ص 405) یہ الاستاذ سے مشہور ہیں امام ابوعبداللہ بن مندہ نے ان سے بکثرت احادیث روایت کی ہے 
امام ابن مندہ المتوفی 395 ھ مشہور اور بلند مرتبت محدث ہیں انہوں نے امام حارثی سے بکثرت روایت کرنے کے ساتھ ساتھ ان کی توثیق بھی کی ہے 
چنانچہ حافظ ذہبی " تاریخ کبیر میں امام حارثی کے ترجمہ لکھتے ہیں 
وکان ابن مندۃ حسن الرئی فیہ (تاریخ التراجم ص21) 
امام ابن مندہ ؒ ان کے حق میں اچھے رائے رکھتے تھے 
نیز لکھتے ہیں 
وکان ابن مندۃ یحسن القول فیہ )سیر علام النبلاء ت 340) 
امام ابن مندہ ان کی اچھائی بنیان کرتے تھے 
حافظ ذہیبی کا ان کے بارے خود اپنا بیان یہ ہے کہ 
وکان محدثا ضوالا راسا فی الفقہ ( العبر 
نیز ذہیبی ؒ ان کو درج ذیل القاب سے یاد فرماتے ہے 
الاستاذ الشیخ ن الاما الفقہ ، المحدث ، عالم ماوراء النھر ( سیراعلام النبلا ت 340 ، تذکرۃ الحفاظ ج3ص 49
علامہ ابوسعد سمعانی امتوفی 566ھ فرماتے ہیں 
وکان شیخا مکثرا من الحدیث ( کتاب النساب ج3ص 16)
امام حارثی ؒ شیخ اور کثیر الحدیث تھے 
انس بیان میں امام سمعانی ؒ نے امام حارثی کو کثیر الحدیث قرار دینے کے ساتھ ساتھ شیخ بھی قرار دیا جو بتصریح مولانا ارشادلحق اثری الفاظ توثیق میں سے ہے
نیز سمعانی ؒ فرماتے ہیں 
رجل الی خراسان والعراق والحجاز وادرک الشیوخ ( کتاب الانساب ج3س 16)
امام حارثی نے طلب حدیث میں خراسان ، عارق ، اور حجاز ( مکہ مکرمہ ، مدینہ منورہ ) کی طرف سفر کیا اور وہاں کے شیوخ حدیث سے ملاقات کی ،
حافظ ابن حجر عسقلانی ان کو حافث الحدیث قرار دیتے ہیں چنانچہ ان کے تعارف میں ارقام فرماتے ہیں 
ابو محمد الحارثی ۔ ھو عبداللہ بن یعقوب الحافظ الحنفی وھو الاستاذ وھو البخاری ( لسان المیزان ج7ص 124 باب الکنی)
اس طرح حافظ موصوف نے ان مولفہ " مسند ابی حنیفہ کے تعارف میں بھی ان کا حافظ الحدیث ہونا تسلیم کیا ہے چنانچہ وی رقمطراز ہیں 
وقد اعتنی الحافظ ابو محمد الحارثی وکان بعد الظلاچمائۃ بحدیث ابی حنیفہ فجمعہ فی مجلد ورتبہ علی شیوک ابی حنیفۃ ( تعجیل المنفعۃ ص19)
حافظ ابو محمد حارثی جو 300ھ کے بعد ہوئے ہیں انہوں نے امام ابوحنیفہ ؒ کی احادیث پر خصوصی توجہ دی اور ان کو ایک جلد میں جمع کیا اور اس مسند کو انہوں نے امام ابوحنیفہ کے شیوخ پر ترتیب دیا ہے 
حافظ ابو الموئد خوارزمی المتوفی 665ھ نے ان کی جمع کردہ " مسند ابی حنفہ کی تعریف میں لکھا ہے
من طالع مسدہ الذی جمعہ للامام ابی حنیفہ علم تبحرہ فی علم الحدیث واحاطتہ بمعرفۃ الطرق والمنوں ( جامع المسانید ج2ص 525)

جو شخص بھی امام حارثی کی جمع کردہ " مسند امام ابی حنیفہ " کا مطالعہ کرے گا وہ علم حدیث میں ان کے تبحر اور طرق و متون حدیث پر ان کے احاطہ علیمہ کو جان لے گا۔
=====================================
::: امام اعظم ابو حنیفہؒ علامہ اقبالؒ کی نظر میں :::
علامہ ڈاکٹر اقبال مرحوم نے فقہاء کرام اور مفسرین کی خدمات کا ذکر کرتے ہوئے امام اعظم ابو حنیفہؒ کے متعلق لکھا ہے۔
”تاہم جہاں تک میرا علم ہے شریعتِ اسلامی کی جو توضیح جناب ابو حنیفہ نے کی ہے ویسی کسی اسلامی مفسر نے آج تک نہیں کی، اگر مذہب اسلام کی رو سے مجسموں کے ذریعے بڑے بڑے حکماء اور علماء کی یادگاریں قائم رکھنے کا دستور جائز ہوتا تو یہ عظیم الشان فقیہہ اس عزت کا سب سے پہلا حقدار تھا، دینی خدمت کے اس حصے یعنی فلسفہء شریعت کی تفسیر و توضیح میں امیر المؤمنین جناب علیؓ کے بعد جو کچھ اس فلسفی امام نے سکھایا ہے قوم اسے کبھی فراموش نہیں کرے گی۔“ (ملت بیضاء پر ایک عمرانی نظر ص 41،42)
اسی لئے شافعی مسلک کے مایہ ناز امام حافظ جلال الدین سیوطیؒ نے اپنی کتاب ”تبییض الصحیفہ“ میں لکھا ہے کہ عبد العزیز بن روادؒ کہتے ہیں کہ امام ابو حنیفہؒ کے باب میں کلام کرنے والے دو طرح کے لوگ ہیں، ایک وہ جو ان کے حال سے نا واقف ہیں، دوسرے وہ جو حاسد ہیں۔
تندیء باد مخالف سے نہ گھبرا اے عقاب

یہ تو چلتی ہے تجھے اونچا اڑانے کے لئے



=====================================

امام الحافظ الذهبی رحمہ الله فرماتے ہیںقلتُ: الإرجاءُ مذهبٌ لعدةٍ من جِلَّة العلماء، ولا ينبغی التحاملُ على قائیله۔

(میزان،۳/۱۶۳ فی ترجمة   مِسْعَر بن كِدَام)

میں ( امام ذهبی ) کہتاہوں کہ   ارجاء   تو بڑے بڑے علماء کی ایک جماعت کا مذهب ہے اور اس مذهب کے قائیل پر کوئی مواخذه نہیں کرنا چائیے۔


امام ابو حنیفہؒ اور معترضین