Monday, 15 July 2013

روضۃ الرسولؐ کا ٹکڑا دنیا کی ہر چیز سے افضل ہے


ظاہر ہے کہ آنحضرت افضل الخلق ہیں، کوئی مخلوق بھی آپ سے افضل نہیں اور ایک حدیث میں ہے کہ آدمی جس مٹی سے پیدا ہوتا ہے، اسی میں دفن کیا جاتا ہے، لہذا جس پاک مٹی میں آنحضرت کے جسد اطہر کی تدفین ہوئی اسی سے آپ کی تخلیق ہوئی، اور جب آپ افضل الخلق ہوئے،، تو وہ پاک مٹی بھی تمام مخلوق سے افضل ہوئی
علاوہ ازیں زمین کے جن اجزاء کو افضل الرسل، افضل البشر، افضل الخلق کے جسد اطہر سے مس ہونے کا شرف حاصل ہے، وہ باقی تمام مخلوقات سے اس لیے بھی افضل ہیں کہ یہ شرف عظیم ان کے سوا کسی مخلوق کو حاصل نہیں
آپ کا یہ ارشاد بالکل بجا اور بر حق ہے کہ (پہلے اللہ اور پھر حضور اکرم ہیں) مگر زیر بحث مسئلے میں خدا نخواستہ اللہ تعالی کے درمیان اور آنحضرت کے درمیان تقابل نہیں کیا جا رہا، بلکہ آنحضرت کے درمیان اور دوسری مخلوقات کے درمیان تقابل ہے، کعبہ ہو، عرش ہو، کرسی ہو، یہ سب مخلوق ہے، اور آنحضرت تمام مخلوق سے افضل ہیں، اور قبر مبارک کی جسد اطہر سے لگی ہوئی مٹی اس اعتبار سے اشرف و افضل ہے کہ جس اطہر سے ہم آغوش ہونے کی جو سعادت اسے حاصل ہے، وہ نہ کعبہ کو حاصل ہے، نہ عرش و کرسی کو۔
اور اگر یہ خیال ہو کہ ان چیزوں کی نسبت اللہ تعالی کی طرف ہے، اور روضہ مطہر کے مٹی کی نسبت آنحضرت کی طرف ہے، اس لیے یہ چیزیں اس مٹی سے افضل ہونی چاہئیں، تو اسکا جواب یہ ہے کہ اس پاک مٹی کو آنحضرت سے ملابست کی نسبت ہے، اور کعبہ اور عرش و کرسی کو حق تعالی شانہ سے مالبست کا تعلق نہیں، حق تعالی شانہ اس سے پاک ہے




عظمت مدینہ بذریعہ عظمت نبوی

عبد الرزاق عن بن جريج قال أخبرني عمر بن عطاء بن وراز عن عكرمة مولى بن عباس أنه قال يدفن كل إنسان في . التربة التي خلق منها. [مصنف عبد الرزاق : باب يدفن في التربة التي منها خلق ، 6531 ، 3/515]؛
ترجمہ : عبدالرزاق ابن جریج سے، وہ فرماتے ہیں کہ مجھے خبر دی عمر بن عطاء بن وراز نے، ان سے عکرمہ ابن عباس کے غلام نے کہ انہوں (حضرت ابن عباس) نے فرمایا:  دفن کیا جاتا ہے ہر انسان اسی مٹی میں جس سے وہ پیدا کیا گیا؛

یہ بات (مضمون و معنی) حدیث رسول سے بھی ظاہر ہے؛

أَخْبَرَنَا أَبُو النَّضْرِ الْفَقِيهُ ، وَأَحْمَدُ بْنُ مُحَمَّدٍ الْعَنَزِيُّ ، قَالا : ثنا عُثْمَانُ بْنُ سَعِيدٍ الدَّارِمِيُّ ، ثنا يَحْيَى بْنُ صَالِحٍ الْوُحَاظِيُّ ، ثنا عَبْدُ الْعَزِيرِ بْنُ مُحَمَّدٍ ، حَدَّثَنِي أَنَسُ بْنُ أَبِي يَحْيَى مَوْلَى الأَسْلَمِيِّينَ ، عَنْ أَبِيهِ ، عَنْ أَبِي سَعِيدٍ الْخُدْرِيِّ ، قَالَ : مَرَّ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بِجِنَازَةٍ عِنْدَ قَبْرٍ فَقَالَ : " قَبْرُ مَنْ هَذَا ؟ " , فَقَالُوا : فُلانٌ الْحَبَشِيُّ يَا رَسُولَ اللَّهِ ، فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ : " لا إِلَهَ إِلا اللَّهُ لا إِلَهَ إِلا اللَّهُ سِيقَ مِنْ أَرْضِهِ وَسَمَائِهِ إِلَى تُرْبَتِهِ الَّتِي مِنْهَا خُلِقَ " . هَذَا حَدِيثٌ صَحِيحُ الإِسْنَادِ. [المستدرك على الصحيحين، للحاکم :رقم الحديث: 1289 - 1/521 ، رقم 1356

اس صحیح حدیث سے مشابہ (ملتے جلتے) مضمون کی صحیح ، ضعیف اور موضوع احادیث کے شواہد سے حضرت ابن عباس کے قول و نظریۂ کی اصل (بنیاد) ہونے کو تقویت ملتی ہے.
 م طرف الحديثالصحابياسم الكتابأفقالعزوالمصنفسنة الوفاة
1كل مولود يولد يذر على سرته من تربته فإذا طال عمره رده الله إلى تربته التي خلقه منها وأنا وأبو بكر وعمر خلقنا من تربة واحدة وفيها ندفنلم يذكر المصنف اسمهتذكرة الموضوعات للفتني639---محمد بن طاهر الفتني986
2كل مولود يذر عن سرته من تربته فإذا طال عمره رده إلى تربته التي خلقه منها وأنا وأبو بكر وعمر خلقنا من تربة واحدة وفيها ندفنعبد الله بن مسعوداللآلئ المصنوعة فِي الأحاديث الموضوعة للسيوطي7171 : 309جلال الدين السيوطي911
3ما من مولود يولد إلا وفي سرته من تربته التي يولد منها فإذا رد إلى أرذل العمر رد إليه تربته التي خلق منها حتى يدفن فيها وأنا وأبو بكر وعمر خلقنا من تربة واحدة وفيها ندفنعبد الله بن مسعوداللآلئ المصنوعة فِي الأحاديث الموضوعة للسيوطي7181 : 309جلال الدين السيوطي911
4ما من آدمي إلا ومن تربته في سرته فإذا دنا أجله قبضه الله من التربة التي منها خلق وفيها يدفن وخلقت أنا وأبو بكر وعمر من طينة واحدة وندفن فيها في بقعة واحدةعبد الرحمن بن صخراللآلئ المصنوعة فِي الأحاديث الموضوعة للسيوطي7191 : 310جلال الدين السيوطي911
5دفن بالطينة التي خلق منهاعبد الله بن عمراللآلئ المصنوعة فِي الأحاديث الموضوعة للسيوطي7221 : 311جلال الدين السيوطي911
6سيق من أرضه وسمائه إلى التربة التي خلق منهاسعد بن مالكاللآلئ المصنوعة فِي الأحاديث الموضوعة للسيوطي7231 : 311جلال الدين السيوطي911
7خلقت أنا وأبو بكر وعمر من طينة واحدةعبد الله بن عباساللآلئ المصنوعة فِي الأحاديث الموضوعة للسيوطي7261 : 311جلال الدين السيوطي911
8مل من مولود يولد إلا في سرته من تربته التي خلق منها فإذا رد إلى أرذل العمر يرد إلى تربته التي خلق منها حتى يدفن فيها وأنا وأبو بكر وعمر خلقنا من تربة واحدة وفيها نعودأنس بن مالكاللآلئ المصنوعة فِي الأحاديث الموضوعة للسيوطي7271 : 312جلال الدين السيوطي911
9سيق من أرضه وسمائه إلى التربة التي خلق منهاموضع إرسالفضائل الصحابة لأحمد بن حنبل430528أحمد بن حنبل241
10كل مولود يذر على سرته من تربته فإذا طال عمره رده الله إلى تربته التي خلقه منها وأنا وأبو بكر وعمر خلقنا من تربة واحدة وفيها ندفنعبد الله بن مسعودتنزيه الشريعة المرفوعة6491:373ابن عراق الكناني963
11دفن في الطينة التي خلق منهاعبد الله بن عمرجزء ابن فيل134---الحسن بن أحمد بن إبراهيم بن فيل البالسي309
12سيق من أرضه إلى تربته التي منها خلقسعد بن مالكإتحاف المهرة5672---ابن حجر العسقلاني852
13ما من آدمي إلا وفي سرته من تربته التي خلق منها وإني أنا وأبو بكر وعمر خلقنا من تربة واحدة وفيها نعودعبد الله بن مسعودالحجة في بيان المحجة وشرح عقيدة أهل السنة 2450---قوام السنة الأصبهاني535
14ما من مولود يولد إلا وقد ثري عليه من تراب حفرتهعبد الرحمن بن صخرالحجة في بيان المحجة وشرح عقيدة أهل السنة 2451---قوام السنة الأصبهاني535
15لا إله إلا الله سيق من أرضه وسمائه إلى التربة التي خلق منهاسعد بن مالككشف الأستار789---نور الدين الهيثمي807
16سيق من أرضه وسمائه إلى التربة التي خلق منهاسعد بن مالكالشريعة للآجري1849---الآجري360
17جاءت به منيته إلى تربتهعويمر بن مالكالمعجم الأوسط للطبراني52685126سليمان بن أحمد الطبراني360
18دفن في طينته التي خلق منهاعبد الله بن عمرأخبار أصبهان لأبي نعيم22422 : 275أبو نعيم الأصبهاني430
19سيق من أرضه وسمائه إلى تربته التي خلق منهاسعد بن مالكشعب الإيمان للبيهقي9238---البيهقي458
20ما من مولود يولد إلا وفي سرته من تربته التي ولد منها فإذا رد إلى أرذل العمر رد إلى تربته التي خلق منها حتى يدفن فيها وأنا وأبو بكر وعمر خلقنا من تربة واحدة وفيها ندفنعبد الله بن مسعودتاريخ بغداد للخطيب البغدادي435115:32الخطيب البغدادي463
21دفن في الطينة التي خلق منهاعبد الله بن عمرموضح أوهام الجمع والتفريق للخطيب1153---الخطيب البغدادي463
22دفن في الطينة التي خلق منهاعبد الله بن عمرموضح أوهام الجمع والتفريق للخطيب1154---الخطيب البغدادي463
23ما من مولود إلا وفي سرته من تربته التي تولد منها فإذا رد إلى أرذل عمره رد إلى تربته التي خلق منها حتى يدفن فيها وإني وأبا بكر وعمر خلقنا من تربة واحدة وفيها ندفنعبد الله بن مسعودتاريخ بغداد للخطيب البغدادي7353:542الخطيب البغدادي463
24يدفن المرء في تربته التي خلق منها فلما دفن أبو بكر وعمر إلى جانب رسول الله صلى الله عليه وسلم علمنا أنهما خلقا من تربتهجابر بن عبد اللهتاريخ دمشق لابن عساكر1180930 : 213ابن عساكر الدمشقي571
25سيق من أرضه وسمائه إلى التربة التي خلق منهاسعد بن مالكتاريخ دمشق لابن عساكر1181030 : 213ابن عساكر الدمشقي571
26ما من مولود إلا وفي سرته من تربته التي ولد فإذا رد إلى أرذل العمر رد إلى تربته التي خلق منها حتى يدفن فيها وإني وأبو بكر وعمر خلقنا من تربة واحدة وفيها ندفنعبد الله بن مسعودتاريخ دمشق لابن عساكر1872744 : 120ابن عساكر الدمشقي571
27كل مولود يولد ففي سرته من تربته فإذا طال عمره رده الله إلى تربته التي خلقه الله منها وأنا وأبو بكر وعمر خلقنا من تربة واحدة وفيها ندفنعبد الله بن مسعودتاريخ دمشق لابن عساكر1872844 : 121ابن عساكر الدمشقي571
28ما من آدمي إلا ومن تربته في سرته فإذا دنا أجله قبضه الله من التربة التي منها خلق وفيها يدفن وخلقت أنا وأبو بكر وعمر من طينة واحدة وندفن جميعا في بقعة واحدةعبد الرحمن بن صخرتاريخ دمشق لابن عساكر1872944 : 121ابن عساكر الدمشقي571
29سيق من أرضه وسمائه إلى التربة التي خلق منهاسعد بن مالكتعزية المسلم عن أخيه لابن عساكر7590ابن عساكر الدمشقي571
30يدفن المؤمن في تربته التي خلق منهاجابر بن عبد اللهتعزية المسلم عن أخيه لابن عساكر7691ابن عساكر الدمشقي571
31ما من مولود إلا وفي سرته من تربته التي يولد منها فإذا رد إلى أرذل العمر رد إلى تربته التي خلق منها حتى يدفن فيها وإني وأبا بكر وعمر خلقنا من تربة واحدة وفيها ندفنعبد الله بن مسعودالعلل المتناهية لابن الجوزي301310أبو الفرج ابن الجوزي597
32كل مولود يولد يذر على سرته من تربة فإذا طال عمره رده الله إلى تربته التي خلقه الله منها وأنا وأبو بكر وعمر خلقنا من تربة واحدة وفيها ندفنعبد الله بن مسعودالموضوعات الكبرى لابن الجوزي5211 : 328أبو الفرج ابن الجوزي597

=========================================================================
عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ ، عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ , قَالَ : " مَا بَيْنَ بَيْتِي وَمِنْبَرِي رَوْضَةٌ مِنْ رِيَاضِ الْجَنَّةِ وَمِنْبَرِي عَلَى حَوْضِي " . رواه البخاري

ترجمہ : حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت کرتے ہیں انہوں نے بیان کیا کہ نبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا کہ میرے گھر اور میرے منبر کے درمیان جنت کے باغوں میں سے ایک باغ ہے اور میرا منبر میرے حوض پر ہے۔

م طرف الحديثالصحابياسم الكتابأفقالعزوالمصنفسنة الوفاة
1صلاة في مسجدي هذا أفضل من ألف صلاة فيما سواه إلا المسجد الحرام ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنةعبد الرحمن بن صخرمسند أبي يعلى الموصلي61246167أبو يعلى الموصلي307
2صلاة في مسجدي هذا خير من ألف صلاة فيما سواه إلا المسجد الحرام منبري هذا على ترعة من ترع الجنة ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنةعبد الرحمن بن صخرمجالس من أمالي أبي عبد الله بن منده283---أبو عبد الله بن منده395
3ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنةعبد الله بن زيدصحيح البخاري11261195محمد بن إسماعيل البخاري256
4ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنة منبري على حوضيعبد الرحمن بن صخرصحيح البخاري11271196محمد بن إسماعيل البخاري256
5ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنة منبري على حوضيعبد الرحمن بن صخرصحيح البخاري17641888محمد بن إسماعيل البخاري256
6ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنة منبري على حوضيعبد الرحمن بن صخرصحيح البخاري61286588محمد بن إسماعيل البخاري256
7ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنة منبري على حوضيعبد الرحمن بن صخرصحيح البخاري68167335محمد بن إسماعيل البخاري256
8ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنةعبد الله بن زيدصحيح مسلم24711392مسلم بن الحجاج261
9ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنة منبري على حوضيعبد الرحمن بن صخرصحيح مسلم24731393مسلم بن الحجاج261
10ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنةجامع الترمذي38793915محمد بن عيسى الترمذي256
11ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنةعبد الرحمن بن صخرجامع الترمذي38803916محمد بن عيسى الترمذي256
12ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنةعبد الله بن زيدسنن النسائى الصغرى688695النسائي303
13ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنة منبري على حوضيموطأ مالك رواية يحيى الليثي459462مالك بن أنس179
14ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنةعبد الله بن زيدموطأ مالك رواية يحيى الليثي460463مالك بن أنس179
15ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنة منبري على حوضيعبد الرحمن بن صخرمسند أحمد بن حنبل70497182أحمد بن حنبل241
16ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنة منبري على حوضيعبد الرحمن بن صخرمسند أحمد بن حنبل86868668أحمد بن حنبل241
17ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنة منبري على حوضيعبد الرحمن بن صخرمسند أحمد بن حنبل94279358أحمد بن حنبل241
18ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنة منبري على حوضيمسند أحمد بن حنبل97969679أحمد بن حنبل241
19ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنة منبري على حوضيمسند أحمد بن حنبل1067710516أحمد بن حنبل241
20منبري هذا على ترعة من ترع الجنة ما بين حجرتي ومنبري روضة من رياض الجنةعبد الرحمن بن صخرمسند أحمد بن حنبل1068810525أحمد بن حنبل241
21ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنة منبري على حوضيعبد الرحمن بن صخرمسند أحمد بن حنبل1079010620أحمد بن حنبل241
22ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنةعبد الله بن زيدمسند أحمد بن حنبل1608915998أحمد بن حنبل241
23ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنةعبد الله بن زيدمسند أحمد بن حنبل1610916018أحمد بن حنبل241
24ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنة منبري على حوضيعبد الرحمن بن صخرصحيح ابن حبان38333750أبو حاتم بن حبان354
25ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنةعبد الله بن زيدالمسند المستخرج على صحيح مسلم لأبي نعيم29623211أبو نعيم الأصبهاني430
26ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنة منبري على حوضيعبد الرحمن بن صخرالمسند المستخرج على صحيح مسلم لأبي نعيم29643213أبو نعيم الأصبهاني430
27ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنةعبد الله بن زيدالسنن الكبرى للنسائي765776النسائي303
28ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنةعبد الله بن زيدالسنن الكبرى للنسائي41744275النسائي303
29ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنةهند بنت حذيفةالسنن الكبرى للنسائي41754276النسائي303
30ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنةعبد الله بن زيدالسنن الكبرى للبيهقي95305 : 246البيهقي458
31ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنة قوائم منبري رواتب في الجنةسهل بن سعدالسنن الكبرى للبيهقي95365 : 247البيهقي458
32ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنة منبري على حوضيموطأ مالك برواية أبي مصعب الزهري342518مالك بن أنس179
33ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنةعبد الله بن زيدموطأ مالك برواية أبي مصعب الزهري343519مالك بن أنس179
34ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنة قوائم منبري رواتب في الجنةهند بنت حذيفةمسند الحميدي285292عبد الله بن الزبير الحميدي219
35ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنة منبري على ترعة من ترع الجنةعبد الله بن عثمانمسند أبي يعلى الموصلي112118أبو يعلى الموصلي307
36ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنةعبد الله بن زيدالمسند للشاشي10161090الهيثم بن كليب الشاشي335
37ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنة منبري على حوضيبغية الباحث عن زوائد مسند الحارث402397الهيثمي807
38ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنة منبري على حوضيمسند الموطأ للجوهري208324الحسن بن علي الجوهري381
39ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنةعبد الله بن زيدمسند الموطأ للجوهري359496الحسن بن علي الجوهري381
40ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنة منبري على ترعة من ترع الجنةعبد الله بن عثمانمسند أبي بكر الصديق للمروزي113118أحمد بن علي المروزي292
41ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنة منبري على ترعة من ترع الجنةعبد الله بن عثمانالمقصد العلي في زوائد أبي يعلى الموصلي جزء547616الهيثمي807
42ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنة منبري على ترعة من ترع الجنةعبد الرحمن بن صخرالمعجم الصغير للطبراني1107122سليمان بن أحمد الطبراني360
43ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنةعبد الرحمن بن صخرالمعجم الأوسط للطبراني9898سليمان بن أحمد الطبراني360
44ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنةهند بنت حذيفةالمعجم الكبير للطبراني19067526سليمان بن أحمد الطبراني360
45ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنة منبري على حوضيمعجم ابن الأعرابي684682ابن الأعرابي340
46ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنةعبد الرحمن بن صخرمشيخة ابن الجوزي55---ابن الجوزي597
47ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنةعبد الرحمن بن صخرمعجم الشيوخ الكبير للذهبي636---شمس الدين الذهبي748
48منبري على حوضي ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنة صلاة في مسجدي كألف صلاة فيما سواه من المساجد إلا المسجد الحرامعبد الرحمن بن صخرالجزء الحادي عشر من فوائد ابن البختري94594أبو جعفر بن البختري339
49ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنةعلي بن أبي طالبالجزء الرابع من حديث ابن البختري186434أبو جعفر بن البختري339
50منبري هذا على ترعة من ترع الجنة ما بين بيتي ومنبري روضة من رياض الجنةعمر بن الخطابالفوائد المنتقاة العوالي الحسان للسمرقندي6461أبو عمرو السمرقندي345



تشريح : یہ حصہ جنت ہی کا حصہ ہے اور دنیا کے فنا ہونے کے بعد جنت ہی کا ایک حصہ بن کر رہ جاۓ گا، اس لیے یہ کسی تاویل کے بغیر (دنیا میں موجود) جنّت کا ایک باغ ہے. اس حدیث میں ہے کہ "میرا منبر میرے حوض پر ہے" یعنی حوض یہیں پر ہوگا، منبر سے شام تک اس کی پہلائی ہوگی، اس لیے وہ منبر اب بھی حوض ہی پر ہے اور قیامت کے دن مشاہدہ میں آجاۓ گا. حافظ ابن حجر عسقلانیؒ نے ایک روایت کی تخریج کی ہے جس میں ((بیت)) یعنی گھر کے بجاۓ ((قبر)) ہی کا لفظ ہے، گویا عالم تقدیر میں جو کچھ تھا اس کی آپ نے پہلے ہی خبر دیدی تھی.

سیدناحضرت علی المرتضیٰ ؓ کا فرمان:

انہ لیس فی الارض بقعۃ اکرم علی اللہ من بقعۃ قبض فیھانفس نبیہٖ۔( ترجمہ: زمین میں کوئی خطہ ایسانہیں جواللہ تعالیٰ کے ہاں اس خطہ سے زیادہ معززہوجس میں اپنے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی روح قبض فرمائی۔

ان احادیث نبویہ صلی اللہ علیہ وسلم کی تشریح میں حضرات محدثین وفقہاء کرام نے بہت زیادہ تفصیل سے کلام فرمایاہے ۔

شارح مسلم‘محدث کبیر‘فقہ شافعی کے عظیم سرخیل ‘حضرت امام ابوزکریامحی الدین یحییٰ بن شرف المتوفی ٰ 676ھ۔

1): باب فضل مابین قبرہ ومنبرہ وفضل موضع منبرہ ۔ قولہ صلی اللہ علیہ وسلم ۔ مابین بیتی ومنبری روضۃ من ریاض الجنۃ ذکروافی معناہ قولین احدھماان ذلک الموضع بعینہ ینقل الی الجنۃ والثانی ان العبادۃ فیہ تؤدی الی الجنۃ قال الطبری فی المرادبیتی ھناقولان احدھماالقبرقالہ زیدبن اسلم کماروی مفسرابین قبری ومنبری والثانی المرادبیت سکناہ علی ظاہرہ وروی مابین حجرتی ومنبری قال الطبری والقولان متفقان لان قبرہ فی حجرتہ وھی بیتہ۔(

ترجمہ: آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی قبراورمنبرکے درمیانی حصہ کی فضیلت : نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے ارشادمابین بیتی ومنبری… الخ کے معنی میں دوقول ہیں۔

( 1)یہی جگہ بعینہ جنت سے آئی ہے۔ (2)اس میں عبادت کرناجنت لے جائے گا۔ امام طبری کہتے ہیں کہ یہاں’’بیت‘‘کے بارے میںدوقول ہیں۔(1)قبراورزیدبن ا سلم نے کہاہے ’’اورجیساکہ بین قبری ومنبری بھی واضح آیاہے۔( 2) رہائشی گھرمراد ہے اورحجرتی ومنبری کی روایت بھی آئی ہے۔ طبری کہتے ہیں کہ دونوںقول اتفاقی ہیں۔ کیونکہ آپ کی قبرآپ کے حجرے میں ہے اوروہی آپﷺ کاگھرہے۔

دوسرے مقام پرحضرت امام نووی ؒ استدلالاًفرماتے ہیں۔

2) اجمعواعلی ان موضع قبرہٖ ﷺ افضل بقاع الارض۔

ترجمہ: علماء کرام کااجماع ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی قبرمبارک کی جگہ روئے زمین کی سب جگہوں سے افضل ہے۔

3) محدث وقت‘فقہ مالکی کاعظیم فقیہ حضرت علامہ قاضی عیاض مالکی المتوفی544ھ فرماتے ہیں ’’ولاخلاف ان موضع قبرہٖ افضل بقاع الارض۔‘‘

ترجمہ : اس بات میں کسی کابھی اختلاف نہیں ہے کہ آپﷺ کی قبرمبارک کی جگہ روئے زمین کے سب مقامات سے افضل ہے۔

4) علمائے احناف کے سرتاج‘محدث جلیل‘امام وقت علامہ بدرالدین ابی محمدمحمودبن احمدالعینی (المتوفی 855ھ)اس حدیث کی تشریح کرتے ہوئے فرماتے ہیں۔

المطابقہ بین الترجمۃ والحدیث غیرتامۃٍ لانّ المذکورفی الترجمۃ القبروفی الحدیث البیت۔ واجیب بان القبرفی البیت لانّ المراد بیت سکناہ والنبی دفن فی بیت سکناہ وحمل کثیرمن العلماء الحدیث علی ظاہرہٖ۔

ترجمہ: ترجمہ الباب اورحدیث پاک میں مطابقت نہیں ہے کیونکہ عنوان میں قبراورحدیث پاک میں بیت(گھر)کاذکرہے (اس کایہ )جواب دیاگیاہے کہ آپ ﷺکی قبرمبارک گھرمیںہے اور اس بیت سے مرادآپ کارہائشی گھرہے اورنبی کریمﷺ کی وفات اپنے رہائشی گھرمیںہوئی۔ حضرات محدثین اس حدیث کوظاہرپرمحمول کرتے ہیں (گویاکہ آپﷺ کی قبرمبارک کوحقیقتاًجنت مانتے ہیں

5) قال العینی وحمل کثیرمن العلماء الحدیث علی ظاہرہٖ فقالواینتقل ذالک الموضع بعینہٖ الی الجنۃ۔

ترجمہ: اکثرمحدثین اس حدیث سے ظاہری مطلب مرادلیتے ہیں اورفرماتے ہیں کہ یہی جگہ بعینہ جنت کی طرف منتقل کی جائے گی۔

6) وکذاوقع فی حدیث سعدبن ابی وقاص اخرجہ البزاربسندصحیح‘علی ان المرادبقولہؐ: بیتی‘ احدبیوتہٖ لاکلھا‘وھوبیت عائشہؓ الذی دفن ﷺ فیہ فصارقبرہ‘ وقدوردفی حدیث:مابین المنبروبیت عائشہؓ روضۃ من ریاض الجنۃ‘ اخرجہ الطبرانی فی الاوسط۔

ترجمہ: اور اس طرح حضرت سعدبن ابی وقاص رضی اللہ عنہ کی روایت میںآتاہے جس کوامام بزارنے صحیح سندکے ساتھ نقل فرمایاہے کہ بیتی کے لفظ سے مرادنبی کریمﷺ کاایک ہی گھرمرادہے نہ کہ تمام گھراوروہ گھرحضرت عائشہؓ کاحجرہ مبارکہ ہے جس کے اندرآپﷺ اپنی قبرمیںآرام فرماہیں اورحدیث پاک میں آیاہے کہ میرے منبراوربیت عائشہؓ کادرمیانی مقام جنت کے باغوں میںسے ایک باغ ہے۔ امام طبرانی ؒ نے اس کواوسط میں روایت کیاہے۔

فقہ شافعی کے عظیم مفسر‘محدث‘فقیہ‘مورخ‘ جلال الدین سیوطیؒ (متوفی 911 ھ) فرماتے ہیں

7) اماھوفافضل البقاع بالاجماع نبہ علی ذالک القاضی عیاض وغیرہ بل ا فضل من الکعبۃ بل رائیت بخط القاضی تاج الدین السبکی عن ابن عقیل الحنبلی انہ افضل من العرش۔

ترجمہ: آپﷺ کی قبراطہرسب روئے زمین سے افضل ہے اوراس بات پرامت کااجماع ہے اس پرقاضی عیاضؒ وغیرہ نے تنبیہ فرمائی ہے بلکہ کعبہ سے بھی افضل ہے بلکہ میں نے قاضی تاج الدین سبکی کے ہاتھ کالکھاہوادیکھاہے کہ امام ابن عقیل حنبلیؒ فرماتے ہیں کہ قبراطہرعرش معلی سے بھی افضل ہے۔

عظیم مفسرقرآن ‘سرخیل احناف ‘ حضرت علامہ السیدمحمودآلوسی البغدادی المتوفی 1270ھ

8) ان الامکنۃ والازمنۃ کلہامتساویۃ فی حدذاتہالایفضل بعضہابعضاالاَّ بمایقع فیہامن الاعمال ونحوھاوزادبعضھم اویحل لتدخل البقعۃ التی ضمتہ ﷺ فانھاافضل البقاع الارضیۃ والسماویۃ حتی قیل وبہٖ اقول انھاافضل من العرش۔

ترجمہ: بے شک تمام زمانے اورمقامات برابرہیں ایک دوسرے پرفضیلت نہیں رکھتے مگروہ مقام الگ ہے جس میں اچھے اعمال وغیرہ کیے جائیں یازمین کی وہ جگہ جوآپﷺ کواپنے اندرلیے ہوئے ہے۔یہ قبراطہرزمین وآسمان کے سب خطوںسے افضل ہے یہاں تک بھی کہاگیاہے اورمیں(علامہ آلوسیؒ) بھی اسکاقائل ہوں کہ قبراطہرعرش معلی سے بھی افضل ہے۔

ملاعلی قاری رحمہ اللہ المتوفی ص1014 ھفرماتے ہیں :

9) فیہ تصریح بان مکۃ افضل من المدینۃ کماعلیہ الجمھورالاالبقعۃ التی ضمت اعضائہ علیہ الصلوۃ والسلام فانھاافضل من مکۃ بل من الکعبۃ بل من العرش اجماعاً۔

ترجمہ: اس حدیث شریف میں صراحت ہے کہ مکہ مکرمہ مدینہ طیبہ سے افضل ہے یہی جمہورامت کامسلک ہے مگروہ حصہ زمین جوآپﷺ کے اعضاء مبارکہ سے ملاہواہے وہ مکہ مکرمہ سے بلکہ کعبہ مشرفہ اورعرش معلی سے باجماع افضل ہے۔

ایک دوسرے مقام پرفرماتے ہیں:

10) ولیس فیہ دلالۃعلی افضلیۃ المدینہ بل لافضلیۃ البقعۃ المکینۃ وقدقام الاجماع علٰی انھاافضل من مکۃ بل من الکعبۃ بل من العرش العظیم۔

ترجمہ: اس بات میں اس چیزکی کوئی دلالت نہیں کہ مدینہ طیبہ (مکہ مکرمہ سے افضل ہو)بلکہ فضیلت تواس مبارک جگہ کی ہے جس جگہ آپﷺ آرام فرماہیں (قبرمبارک) اوریقینا امت کااجماع قائم ہوچکاہے کہ یہ جگہ(قبراطہر)مکہ مکرمہ‘کعبۃ اللہ بلکہ عرش عظیم سے بھی افضل واشرف ہے۔

فقہ حنفی کے عظیم فقیہ النفس‘ محدث وقت‘ اصولی دوراں‘علامہ محمدامین عمربن عبدالعزیز الشھیر ابن عابدین الشامی الدمشقی المتوفی 1252ھ فرماتے ہیں:

11) والخلاف فیماعداموضع القبرالمقدس‘فماضم اعضاء ہ الشریفۃ فھوافضل بقاع الارض بالاجماع ۔۔۔۔۔۔وقدنقل القاضی عیاضؒ وغیرہ الاجماع علی تفضیلہٖ حتی علی الکعبۃ‘وان الخلاف فیماعداہ ونقل عن ابن عقیل الحنبلی ان تلک البقعۃ افضل من العرش وقدوافقہ السادۃ البکریون علی ذلک وقدصرح التاج الفاکھی بتفضیل الارض علی السموات لحلولہٖ ﷺ بھا وحکاہ بعضھم علی الاکثرین لخلق الانبیاء منھا ودفنھم فیھا۔

ترجمہ: اس بات میںکسی کااختلاف نہیں کرقبرمقدس اوروہ جگہ جس سے آپ ﷺ کے اعضاء مبارکہ مس کیے ہوئے ہیں یہ روئے زمین کے سب مقامات سے افضل ہے اوراس پر امت مسلمہ کااجماع ہے۔ …حضرت قاضی عیاضؒ نے قبرمبارک کے کعبۃ اللہ پرافضل ہونے میں امت کااجماع نقل فرمایاہے۔ امام ابن عقیل حنبلیؒ سے نقل کیاگیاہے کہ یہ جگہ عرش معلی سے بھی افضل ہے اوررؤسأبکریون نے بھی اس بات پرامام ابن عقیلؒ کی موافقت کی ہے۔ امام تاج الفاکھی ؒ نے بھی اس بات کی تصریح کی ہے کہ قبرمبارک کی جگہ آسمان زمین کے سب مقامات سے زیادہ مقدس ومطہرہے کیونکہ یہ جگہ خودنبی کریمﷺ کومس کیے ہوئے ہے اس طرح علمائے کرام کی جماعت انبیاء کرام ؑ کے خمیرکی جگہ اورمدفن کواعلیٰ و اشرف بتاتی ہے۔

محدث وقت‘ شارح بخاری شریف ‘حضرت امام کرمانی ؒ اورصاحب مجمع البحار‘عظیم محدث علامہ محمدبن طاہرپٹنی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :

12) وقال (صاحب مجمع البحار)نقلاًعن الکرمانی ای کروضۃ فی نزول الرحمت اوہی منقولۃ من الجنۃ کالحجرالاسودوالبیت فسربالقبروقیل بیت سکناھاولا تنافی لانّ قبرہ فی حجرتہٖ ۔

ترجمہ: حضرت علامہ طاہرپٹنیؒ اپنی کتاب مجمع البحارمیں حضرت امام کرمانی ؒ سے نقل کرتے ہوئے فرماتے ہیں کہ یہ باغ ہے رحمت الہٰی کے نزول کایایہ جگہ واقعی جنت سے منتقل ہوکرآتی ہے حجراسودکی طرح اورحضرت کرمانی ؒنے بیت کی تفسیرقبرمبارک سے کی ہے اوریہ بھی کہاگیاہے کہ آپﷺ کارہائشی گھرمراد ہے اوردونوں معنوں میںکوئی منافات نہیں ہے کیونکہ آپﷺ کی قبرمبارک اپنے گھرمیںہی ہے۔

منبع العلوم والفیوض ‘محدث جلیل‘سرخیل احناف حضرت علامہ شیخ عبدالحق محدث دہلویؒالمتوفی 1642ء

13) وفی اللمعات قال اھل التحقیق ان الکلام محمول علی الحقیقۃ بان ینقل ھذاالمکان الٰی الجنۃ الفردوس الاعلیٰ لایستہلک مثل سائربقاع الارض۔

ترجمہ: محققین فرماتے ہیں کہ یہاں کلام کاحقیقی معنی مرادہے کہ یہی جگہ جنت الفردوس میں منتقل کی جائے گی اوریہ جگہ زمین کے باقی خطوں کی طرح ہلاک وبربادنہ ہوگی (کیونکہ جنت الفردوس کاٹکڑاہے اورجنت کوہلاکت وبربادی لازم نہیں ہے)

الشیخ ‘المحدث‘ محشی بخاری شریف‘استادحضرت نانوتویؒ حضرت مولانااحمدعلی سہارن پوری المتوفی 1297ھ فرماتے ہیں۔

14) روضۃ من ریاض الجنۃ حقیقۃ بان یکون مقتطعاًمنھاکما ان الحجرالاسودوالفرات والنیل منھا۔

ترجمہ: یہ جنت کے باغوں میں سے ایک باغ ہے یہ حقیقتاًبھی ممکن ہے کہ یہ جنت سے کاٹ کریہاں لایاگیاہوجیسے حجراسودیادریافرات ودریانیل ہیں۔

فقیہ النفس‘ابوحنیفہ وقت‘محدث العصر‘سرخیل علماء دیوبندحضرت مولانارشیداحمدگنگوہیؒ المتوفی 1323ھ 1905ء فرماتے ہیں۔

15):ان تلک الارض اخرجت من الجنۃ ثم تنتقل الیھاعلم منہ ان المختارعندالشیخ الجنجوہی ان الحدیث محمول علی ظاہرہ واختلف الشراح فی معناہ علی اقوال ذکرت فی الشروح وقولہﷺ منبری علی حوضی الی یکون یوم القیمۃ علی حوض۔

ترجمہ: یہ زمین جنت سے نکالی گئی ہے پھروہیں منتقل کی جائے گی۔ اس سے پتہ چلاکہ حضرت گنگوہیؒ کے نزدیک حدیث اپنے ظاہرپرمحمول ہے۔ شراح حدیث کے ہاں اس کے معنی میں کئی اقوال ہیں جوشروح میں مذکورہیں۔ اورمنبری علی حوضی کاارشادکامطلب یہ ہے کہ قیامت کے دن حوض پرہوگا۔

خاتم المحدثین ‘امام العصر‘نمونہ اسلاف ‘علمائے دیوبندکے عظیم مفسر‘محدث ‘اصولی ‘علامہ سیدانورشاہ کشمیری ؒ سابق صدرالمدرسین دارالعلوم دیوبند‘ شیخ الحدیث دارالعلوم ڈابھیل فرماتے ہیں:

16):قیل انہ ترجم بالقبرمع انہ اخرج فی الحدیث لفظ البیت……قلت واخرج الحافظ رحمہ اللہ تعالٰی فیہ لفظ القبرایضاً علی انّ بیتہ کان ھوقبرہ عالم التقدیرفصح کونہ بیتاًوقبراًوحینئذٍفیہ اخباربالغیب واصح الشروح عندی ان تلک القطعۃ من الجنۃ ثم ترفع الٰی الجنۃ کذلک فھی روضۃ من ریاض الجنۃ حقیقۃ بلاتاویل لاعلی نحوقولہﷺ اذامررتم بریاض الجنۃ فارتعوا……(

ترجمہ: عام طورپرکہاجاتاہے کہ امام بخاریؒ نے عنوان میں لفظ قبراوراورحدیث میں بیت کالفظ ذکرفرمایاہے میں(انورشاہ)کہتاہوںکہ حافظ ابن حجرؒ عسقلانی نے لفظ قبرکے ساتھ حدیث بھی ذکرکی ہے۔ نیزعالم تقدیرمیںانکی قبراپنے گھرمیں بننے والی تھی توانکاگھراوراورلفظ قبردونوں صحیح اوراس وقت اس میں عالم غیب کی خبریں ہیں(یعنی نبی علیہ السلام یہ پیشن گوئی فرمارہے ہیں کہ میراگھرمیری قبربنے گا…ازناقل)اورمیرے نزدیک سب سے زیادہ صحیح تشریح یہی ہے کہ یہ ٹکڑاجنت میں سے ہے اورپھرجنت کی طرف اٹھالیا جائے گابس یہ حقیقت میں بغیرتاویل کے جنت کے باغوں میںسے ایک باغ ہے اذاامررتم …الخ کی طرح نہیں ہے۔

الشیخ ‘المحدث ‘شارح ابی دائود‘مناظرعلمائے دیوبند‘حضرت مولاناعلامہ خلیل احمدؒسہارن پوری ‘ صدرالمدرسین مظاہرالعلوم سہارن پورالمتوفی 1346ھ

علمائے دیوبندکی پہلی اجماعی دستاویزالتصدیقات لدفع التلبیسات المعروف بہ المہندعلی المفندمیںہے جس پر اس وقت کے جیدعلمائے دیوبندحضرت شیخ الہندمولانامحمودحسن ؒ ‘مولانااشرف علی تھانویؒ ‘ مولانامفتی کفایت اللہ دہلویؒ ‘ مولانا شاہ عبدالرحیم رائے پوری ؒ ‘مولانامحمداحمدؒابن مولاناقاسم نانوتویؒ، مفتی اعظم دارالعلوم دیوبندمولانامفتی عزیزالرحمن ؒ کے تصدیقی دستخط ثبت ہیںمیںفرماتے ہیں۔

17):اوالبقاع ھوفضلھاالمختص بھاوھومع الذیادۃ موجودفی البقعۃ الشریفہ والرحبۃ المنیفۃ التی ضم اعضائہ صلی اللہ علیہ وسلم افضل مطلقاًحتی من الکعبۃ ومن العرش والکرسی کماصرح بہ فقھائنارضی اللہ عنھم…

ترجمہ اورقبرمبارک کی یہ جگہ زیادہ فضیلت وبزرگی رکھتی ہے اس لیے کہ یہ جناب نبی کریمﷺ کے اعضاء مبارکہ کومس کیے ہوئے ہے یہ مقام علی الاطلاق سب مقامات سے افضل ہے یہاں تک کہ کعبۃ اللہ اورعرش وکرسی پربھی اسکوفضیلت ودرجات حاصل ہیں چنانچہ ہمارے فقہاء کرام رحمھم اللہ نے اس بات کی تصریح فرمائی ہے۔

دنیائے اسلام میں سب سے پہلے شیخ الحدیث کالقب پانے والے‘ پڑوسی ٔ رسولﷺ‘مکین ِ جنت البقیع‘ مصنف کتب فضائل واوجزالمسالک ‘حضرت شیخ الحدیث مولانا محمدزکریاکاندھلوی مہاجرمدنی شیخ الحدیث جامعہ مظاہرالعلوم سہارن پوری فرماتے ہیں :

18):ایک چیزیہ بھی قابل غورہے کہ باجماع امت قبراطہرکاوہ حصہ جوجسداطہرسے متصل ہے۔ کعبہ شریف بلکہ عرش معلی سے بھی افضل ہے (کیونکہ یہ جنت کاوہ حصہ ہے جس میں نبی کریمﷺ خودتشریف فرماہیں۔ بخلاف غیرہا۔ازناقل)


توکیایہ فضیلت صرف اس جسداطہرکی ہے جس کیساتھ کبھی روح مبارک تھی۔ اب نہیں ہے؟ اگرایساہوتاتوموئے مبارک جوبدن اطہرسے جداہوچکے ہیں ان کابھی یہی حال (حکم) ہوتا بلکہ لباس مبارک جوکبھی جسداطہرپرپڑچکاہے اسکابھی یہی حکم ہوتاوغیرہ وغیرہ (تویعنی دوسری اشیاء کے ساتھ روح مبارک کاتعلق نہ تھا تو ان کا حکم بھی یہ نہیں ہے تومعلوم ہوا کہ جسم اطہرکے ساتھ روح مبارک کاتعلق ہے (اسی تعلق کی وجہ سے نبی علیہ السلام اپنی قبرمبارک میں زندہ ہیں اوراسی تعلق ہی کی بنیادپرروضہ اقدس پرحاضرہونے والوں کاصلوٰۃ سلام خودسنتے ہیں) اسی لیے اسکاحکم یہ ہے کہ سب مقامات سے افضل ہے۔ … ازناقل)


صاحب ِ تفسیرعثمانی ‘ علامہ شبیراحمدعثمانی ؒ المتوفی1949 ء

19):قولہ مابین بیتی الخ ووقع فی حدیث سعدبن ابی وقاص عندالبزاربسندرجالہ ثقات وعندالطبرانی من حدیث ابن عمربلفظ القبر‘ قال القرطبی وکانہ بالمعنیٰ لانہٗ دفن فی بیت سکناہٗ فعلی ھذاالمرادبالبیت فی قولہ بیتی احدبیوتہٖ لاکلھاوھوبیت عائشہؓ الذی صارفیہ قبرہ… وان المرادانہ روضۃ حقیقۃ بان ینتقل ذلک الموضع بعینہ فی الاخرۃ الٰی الجنۃ ھذامحصل مااولہ العلماء فی ھذاالحدیث وقال فی المواہب ویحتمل الحقیقۃ بان یکون مااخبرعنہ ﷺ بانہ من الجنۃ مقتطعاًمنھاکماجاء فی الحجرالاسود……قلت والحق ان کونہ روضہ حقیقۃ بحیث ینتقل ذلک الموضع بعینہ فی الاخرۃ الٰی الجنۃ لایستلزم ترتب احکام الجنۃ وآثارھاعلیہ فی الحالۃ الراھنہ ۔

ترجمہ: امام بزارؒ نے حضرت سعدبن ابی وقاص رضی اللہ عنہ سے ایک روایت جوقابل اعتماد رایوںسے مروی ہے نقل کی ہے جس میں لفظ بیت کی جگہ لفظ قبرموجودہے اور اس طرح امام طبرانی ؒنے حضرت عبداللہ بن عمررضی اللہ عنھماکی روایت ذکرکی ہے۔امام قرطبی ؒفرماتے ہیں لفظ بیت سے مرادنبی کریمﷺ کی وہ گھرہے جس میں آپ ﷺ دفن ہوتے ہیں نہ کہ ہرگھرمرادہے اوروہ بیت عائشہؓ ہے جس میں آپ ﷺ کی قبرمبارک بنی ہے۔ ……پس یہی مرادہے کہ یہ جگہ مبارک جنت ہی کاٹکڑاہے اورآخرت میں جنت ہی کی طرف دوبارہ منتقل کیاجائے گااوریہی بات حضرات محدثین کرام رحمھم اللہ کے اقوال کاخلاصہ ہے اورمواہب میںہے کہ یہ حدیث مبارک اس کااحتمال رکھتی ہے کہ یہ جنت کاٹکڑاہواجنت سے کٹاہواجس طرح حجراسودکے بارے میں آیاہے۔ …میں( شبیراحمدعثمانی ؒ) کہتا ہوںکہ یہی بات حق ہے کہ یہ ٹکڑاجنت کاہی ٹکڑاہے اورحقیقتاًقیامت میںجنت ہی کوجائے گااورفی الحال اس پرجنت کے احکام لاگونہیں ہوسکتے (کہ دخول کفارممکن نہ ہو…یہ اوربات ہے کہ وہاں کفارکاداخلہ ممنوع ہے اوریہی حق ہے …ازناقل )

محقق دوراں‘المحدث ‘الشیخ ‘العالم‘ حضرت مولاناحافظ احمدمکی ؒبن ضیاء الدین ؒفرماتے ہیں۔

20: عرش معلی‘مکہ مکرمہ سمیت روئے زمین کاکوئی حصہ آپﷺ کی تربت(روضہ مبارکہ)سے افضل نہیں ہے


حَدَّثَنَا أَبُو أُسَامَةَ ، وَابْنُ نُمَيْرٍ ، عَنْ عُبَيْدِ اللَّهِ بْنِ عُمَرَ ، عَنْ حَبِيبِ بْنِ عَبْدِ الرَّحْمَنِ ، عَنْ حَفْصِ بْنِ عَاصِمٍ ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ ، قَالَ : قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ : " مَا بَيْنَ قَبْرِي وَمِنْبَرِي رَوْضَةٌ مِنْ رِيَاضِ الْجَنَّةِ , وَمِنْبَرِي عَلَى حَوْضِي " .

ترجمہ : حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت کرتے ہیں انہوں نے بیان کیا کہ نبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا کہ میری قبر (روضہ) اور میرے منبر کے درمیان جنت کے باغوں میں سے ایک باغ ہے اور میرا منبر میرے حوض پر ہے۔

م طرف الحديثالصحابياسم الكتابأفقالعزوالمصنفسنة الوفاة
1ما بين قبري ومنبري روضة من رياض الجنةسعد بن مالكمسند أحمد بن حنبل1139711216أحمد بن حنبل241
2ما بين قبري ومنبريعبد الرحمن بن صخرالسنن الكبرى للبيهقي95295 : 246البيهقي458
3ما بين قبري ومنبري أو قال بيتي ومنبري روضة من رياض الجنةالبحر الزخار بمسند البزار493511أبو بكر البزار292
4ما بين بيتي ومنبري أو قبري ومنبري روضة من رياض الجنةسعد بن مالكالبحر الزخار بمسند البزار10991206أبو بكر البزار292
5ما بين قبري ومنبري روضة من رياض الجنةسعد بن مالكمسند أبي يعلى الموصلي13331341أبو يعلى الموصلي307
6ما بين قبري ومنبري روضة من رياض الجنةعبد الله بن زيدمسند الروياني10041007محمد بن هارون الروياني307
7ما بين قبري ومنبري روضة من رياض الجنةزبير بن العوامبغية الباحث عن زوائد مسند الحارث401396الهيثمي807
8ما بين قبري ومنبري روضة من رياض الجنةسعد بن مالكإتحاف المهرة5198---ابن حجر العسقلاني852
9ما بين قبري ومنبري روضة من رياض الجنة ومنبري على ترعة من ترع الجنةلم يذكر المصنف اسمهإتحاف المهرة6873---ابن حجر العسقلاني852
10ما بين قبري ومنبري روضة من رياض الجنةعبد الله بن عمرإتحاف المهرة10894---ابن حجر العسقلاني852
11ما بين قبري ومنبري روضة من رياض الجنةسعد بن مالكالمقصد العلي في زوائد أبي يعلى الموصلي جزء548617الهيثمي807
12ما بين قبري ومنبري روضة من رياض الجنةكشف الأستار411429نور الدين الهيثمي807
13ما بين بيتي ومنبري أو قبري ومنبري روضة من رياض الجنةسعد بن مالككشف الأستار11151192نور الدين الهيثمي807
14ما بين قبري ومنبري روضة من رياض الجنة منبري على الحوضعبد الرحمن بن صخرمصنف ابن أبي شيبة3097532191ابن ابي شيبة235
15ما بين قبري ومنبري روضة من رياض الجنةعبد الله بن عمرالمعجم الأوسط للطبراني626610سليمان بن أحمد الطبراني360
16ما بين قبري ومنبري روضة من رياض الجنة منبري على حوضيعبد الله بن عمرالمعجم الأوسط للطبراني749733سليمان بن أحمد الطبراني360
17ما بين قبري ومنبري روضة من رياض الجنة منبري على حوضيعبد الله بن عمرالمعجم الكبير للطبراني1298513156سليمان بن أحمد الطبراني360
18ما بين قبري ومنبري روضة من رياض الجنةعبد الله بن عثمانمعجم ابن الأعرابي350345ابن الأعرابي340
19ما بين قبري ومنبري روضة من رياض الجنةعمر بن الخطابمعجم ابن الأعرابي19391970ابن الأعرابي340
20ما بين قبري ومنبري روضة من رياض الجنةالمنتخب من معجم شيوخ ابن السمعاني34---ابن السمعاني562
21ما بين قبري ومنبري روضة من رياض الجنةأنس بن مالكجزء فيه ثلاثة مجالس من أمالي ابن البختري29230أبو جعفر بن البختري339
22ما بين قبري ومنبري روضة من رياض الجنةعبد الله بن عمرفوائد تمام الرازي167177تمام بن محمد الرازي414
23ما بين قبري ومنبري روضة من رياض الجنةعبد الله بن عمرالمهروانيات والفوائد المنتخبة الصحاح والغرائب ليوسف بن محمد104102يوسف بن محمد المهرواني468
24ما بين قبري ومنبري روضة من رياض الجنة منبري على حوضيعبد الله بن عمرالمنتخب من غرائب أحاديث مالك بن أنس19---أبو بكر بن المقرئ381
25ما بين قبري ومنبري روضة من رياض الجنةسعد بن مالكأمالي ابن بشران 2039---أبو القاسم بن بشران430
26ما بين قبري ومنبري روضة من رياض الجنةسعد بن مالكالمحدث الفاصل بين الرواي والواعي1551 : 298الرامهرمزي360
27ما بين قبري ومنبري روضة من رياض الجنةسعد بن مالكموضح أوهام الجمع والتفريق للخطيب5291 : 433الخطيب البغدادي463
28بين قبري ومنبري روضة من رياض الجنةعبد الله بن عمرموضح أوهام الجمع والتفريق للخطيب5551 : 449الخطيب البغدادي463
29ما بين قبري ومنبري روضة من رياض الجنة منبري على حوضيعبد الرحمن بن صخرالسنة لابن أبي عاصم594731ابن أبي عاصم287
30ما بين قبري ومنبري روضة من رياض الجنة قوائم منبري هذا رواتب في الجنةهند بنت حذيفةالشريعة للآجري1834---الآجري360
31ما بين قبري ومنبري روضة من رياض الجنةجابر بن عبد اللهشعب الإيمان للبيهقي38554163البيهقي458
32ما بين قبري ومنبري روضة من رياض الجنة قوائم منبري على رواتب في الجنةهند بنت حذيفةمشكل الآثار للطحاوي24212872الطحاوي321
33ما بين قبري ومنبري روضة من رياض الجنةعبد الله بن عمرمشكل الآثار للطحاوي24232874الطحاوي321
34ما بين قبري ومنبري روضة من رياض الجنةسعد بن مالكمشكل الآثار للطحاوي24262879الطحاوي321
35قوائم منبري رواتب في الجنة ما بين قبري ومنبري روضة من رياض الجنةهند بنت حذيفةحلية الأولياء لأبي نعيم1068910701أبو نعيم الأصبهاني430
36ما بين قبري ومنبري روضة من رياض الجنة منبري لعلى حوضيعبد الله بن عمرحلية الأولياء لأبي نعيم1459114624أبو نعيم الأصبهاني430
37ما بين قبري ومنبري روضة من رياض الجنةعلي بن أبي طالبعيون الأثر65---ابن سيد الناس734
38ما بين قبري ومنبري روضة من رياض الجنةسعد بن مالكالتاريخ الكبير للبخاري3541250محمد بن إسماعيل البخاري256
39ما بين قبري ومنبري ترعة من ترع الجنةعبد الله بن عمرالكني والأسماء للدولابي23301483أبو بشر الدولابي310
40ما بين قبري ومنبري روضة من رياض الجنةسعد بن مالكطبقات المحدثين بأصبهان والواردين عليها484487أبو الشيخ الأصبهاني369
41ما بين قبري ومنبري روضة من رياض الجنةسعد بن مالكطبقات المحدثين بأصبهان والواردين عليها647650أبو الشيخ الأصبهاني369
42ما بين قبري ومنبري روضة من رياض الجنةسعد بن مالكأخبار أصبهان لأبي نعيم2051 : 125أبو نعيم الأصبهاني430
43ما بين قبري ومنبري روضة من رياض الجنةسعد بن مالكتاريخ بغداد للخطيب البغدادي16446 : 77الخطيب البغدادي463
44ما بين قبري ومنبري روضة من رياض الجنةجابر بن عبد اللهتاريخ بغداد للخطيب البغدادي375513 : 77الخطيب البغدادي463
45ما بين قبري ومنبري روضة من رياض الجنةسعد بن مالكتاريخ بغداد للخطيب البغدادي380813 : 168الخطيب البغدادي463
46ما بين قبري ومنبري روضة من رياض الجنةجابر بن عبد اللهتاريخ دمشق لابن عساكر2137422 : 177ابن عساكر الدمشقي571
47ما بين قبري ومنبري روضة من رياض الجنةسعد بن مالكتاريخ دمشق لابن عساكر41029---ابن عساكر الدمشقي571
48ما بين قبري ومنبري روضة من رياض الجنةعبد الله بن عمرتاريخ دمشق لابن عساكر52716---ابن عساكر الدمشقي571
49ما بين قبري ومنبري روضة من رياض الجنة منبري لعلى حوضيعبد الله بن عمرتاريخ دمشق لابن عساكر5271749 : 118ابن عساكر الدمشقي571
50ما بين قبري ومنبري روضة من رياض الجنةجابر بن عبد اللهتاريخ دمشق لابن عساكر67260---ابن عساكر الدمشقي571

اہل السنت کا مذہب :۔
روضۂ اقدس میں جہاں آپ رونق افروز ہیں اور جو مٹی حضور صلی اللہ علیہ وسلم کے جسم اقدس کے نیچے ہے اس کی قدر اہل السنت کے مذہب میں عرش بریں سے بھی زیادہ ہے اس لئے کہ عرش خدا تعالیٰ کا مكان نہیں ہے کیونکہ وہ مكان سے وراء الوراء ہے اور جہاں حضور صلی اللہ علیہ وسلم سوئے ہوئے ہیں وہ حضور صلی اللہ علیہ وسلم کی آرام گاہ ہے وہی ریاض الجنۃ کہلاتا ہے اس لئے آپ صلی اللہ علیہ وسلم وہیں ہیں ،ورنہ اور مقامات کو بھی ایسا شرف حاصل ہونا چاہیئے 



الإجماع على أن مكان جسد النبي صلى الله عليه وسلم أفضل من الکونين

اکابرین کے نزدیک اس بات میں تو اختلاف ہے کہ مکہ زیادہ افضل ہے یا مدینہ کیونکہ دونوں کی فضیلت اپنی جگہ احادیث میں آئی ہے لیکن یہ اختلاف روضۃ الرسول کے ٹکڑے کو مستثنی کرکے ہے کیونکہ اجماع سے یہ بات ثابت ہے کہ یہ ٹکڑا دنیا کی ہر چیز سے افضل ہے حتی کہ عرش، کرسی، قلم، عرش تھامنے والے فرشتے اور کعبہ سے بھی اور اس پر کسی نے اختلاف نہیں کیا سوائے چند متاخرین کے۔ اور یہ مسئلہ جمہور میں متفق علیہ ہے۔ اسی طرح کی عبارات اکابرین اہلسنت سے منقول ہیں جو آپ عنقریب ملاحظہ کریں گے۔

امام سلفیت علامہ ابن القیم رحمت اللہ علیہ اور ابن عقیل حنبلی رحمت للہ علیہ کے نزدیک:
ابن القیم نے اپنی کتاب بدائع الفوائد میں لکھا

قال ابن عقيل: سألني سائل أيما أفضل حجرة النبي أم الكعبة؟ 

فقلت: إن أردت مجرد الحجرة فالكعبة أفضل ، 

وإن أردت وهو فيها فلا والله ولا العرش وحملته ولا جنه عدن ولا الأفلاك الدائرة 

لأن بالحجرة جسدا لو وزن بالكونين لرجح
ترجمہ:"ابن عقیل حنبلی رحمتللہعلیہ نے کہا کہ سائل نے پوچھا کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کا حجرہ افضل ہے یا کعبہ؟ جواب دیا اگر تمہارا ارادہ خالی حجرہ ہے تو تو پھر کعبہ افضل ہے اور اگر تمہاری مراد وہ ہے جو اس میں ہے [یعنی روضۃ الرسول صلی اللہ علیہ وسلم جہاں پر مدفون ہیں] تو پھر اللہ کی قسم نہ عرش افضل ہے نہ اس کے تھامنے والے فرشتے نہ جنت عدن اور نہ ہی پوری دنیا۔ اگر حجرے کا وزن جسد کے ساتھ کیا جائے تو وہ تمام کائنات اور جو کچھ اس میں ہے اس سے بھی افضل ہوگا۔[بدائع الفوائد ج3 ص655]



ابن القیم نے اس کو عنوان ھل حجرۃ النبی افضل ام کعبه کے عنوان کے تحت لکھا ہے جس سے معلوم ہوا کہ ابن القیم بھی اس کے قائل ہیں اور یہ لکھ کر رد نہ کرنا اس بات کی دلیل ہے کہ وہ اس کے منکر نہیں۔

قاضی عیاض ، علامہ خفاجی اور امام سبکی رحمتللہعلیہم کے نزدیک:
قاضی عیاض نے کتاب الشفا میں لکھا
ولا خلاف أن موضع قبره صلى الله عليه وسلم أفضل بقاع الأرض
فعلَّق عليه الشيخ الخفَّاجي
بل أفضل من السموات والعرش والكعبة كما نقله السبكي رحمة الله
ترجمہ: اور اس کے خلاف کوئی نہیں کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی قبر مبارک تمام زمین سے افضل ہے اس پرعلامہ خفاجی رحمتللہعلیہ نے تعلیق لکھی کہ بلکہ [آپ کی قبر مبارک کی جگہ یا مٹی] آسمان، عرش، کعبہ سے بھی افضل ہے اور اس کے مثل امام سبکی رحمتللہعلیہ نے بھی نقل کیا۔[كتاب الشفا ج 2 ص 76 اور نسیم الریاض ج3 صفحہ 531]



علامہ حصفکی حنفی رحمت اللہ علیہ کے نزدیک:
علامہ حصفکی حنفی رحمت اللہ علیہ فرماتے ہیں کہ

لا حرم للمدينة عندنا ومكة أفضل منها على الراجح

إلا ما ضم أعضاءه عليه الصلاة والسلام فإنه أفضل مطلقا حتى منالكعبة والعرش والكرسي .وزيارة قبره مندوبة , بل قيل واجبة لمن له سعة

ترجمہ: ہمارے نزدیک مدینہ سے بڑھ کر کوئی مقدس جگہ نہیں البتہ مکہ مدینے سے افضل ہے الا یہ کہ اگر نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے اعضاء[ اس مٹی سے] مس ہوں تو مدینہ [کی مٹی ] بلکل افضل ہے حتی کہ کعبہ، عرش اور کرسی سے بھی اور ہمارے نزدیک روضۃ الرسول صلی اللہ علیہ وسلم مندوب ہے۔ بلکہ واجب ہے جس کی استطاعت ہو ۔[الدر المختار ج2 ص 689]

علامہ سخاوی رحمت اللہ علیہ کے نزدیک:
علامہ سخاوی رحمت اللہ علیہ نے فرمایا:
مع الإجماع على أفضلية البقعة التي ضمته صلى الله عليه وسلم، حتى على الكعبة المفضلة على أصل المدينة، بل على العرش، فيما صرح به ابن عقيل من الحنابلةولا شك أن مواضع الأنبياء وأرواحهم أشرف مما سواها من الأرض والسماء، والقبر الشريف أفضلها،
وہ ٹکڑا جو نبی پاک صلی اللہ علیہ وسلم کے جسد اطہر کے ساتھ ضم ہے اس کی افضلیت پر اجماع ہے حتی کہ اس کعبہ سے بھی افضل ہے جو اصل شہر مدینہ [سوائے اس حصے کے جہاں آنحضرت صلیللہعلیہسلم مدفون ہیں اس ] سے فضیلت میں زیادہ ہے۔ بلکہ عرش سے بھی زیادہ۔ اس کی تصریح علمائے حنابلہ میں سے ابن عقیل نے کی۔ اس میں کوئی شک نہیں کہ انبیاء کی مقیم گاہیں اور روح اشرف ہیں زمین و آسمان کی تمام چیزوں سے۔اور ان کی قبریں بھی افضل ہیں ۔ [التحفة اللطيفة في تاريخ المدينة الشريفة السخاوي الصفحة : 12]

ملاعلی قاری رحمت اللہ علیہ کے نزدیک
ملا علی قاری رحمت اللہ علیہ نے کہا
أجمعوا على أنّ أفضل البلاد مكّة والمدينة زادهما الله شرفًا وتعظيمًا ، ثم اختلفوا بينهما أي في الفضل بينهما ، فقيل : مكة أفضل من المدينة ، وهو مذهب الأئمة الثلاثة وهو المرويُّ عن بعض الصحابة ، وقيل : المدينة أفضل من مكة ، وهو قول بعض المالكية ومن تبعهم من الشافعية ، وقيل بالتسوية بينهما۔۔۔
إلى أن قال والخلاف أي الاختلاف المذكور محصورٌ فيما عدا موضع القبر المقدس ، قال الجمهور : فما ضمّ أعضاءه الشريفة فهو أفضل بقاع الأرض بالإجماع حتى من الكعبة ومن العرش
اس بات پر تو اتفاق اور اجماع ہے کہ اللہ نے مکہ اور مدینہ کوافضل بنایا اور شرف و تعظیم سے مالا مال کیا ہے۔ لیکن پھر اس میں اختلاف ہے کہ ان دونوں میں زیادہ افضل کون ہے۔ بعض نے کہا مکہ مدینے سے افضل ہے اور یہ آئمہ ثلاثہ کا مذہب ہے اور بعض صحابہ سے مروی ہے۔ اور بعض نے کہا مدینہ مکے سے افضل ہے اور یہ قول ہے بعض مالکی اور شافعی علماء کا اور بعض نے کہا دونوں کے درمیان توازن ہے۔۔۔۔۔ پھر فرمایا لیکن یہ اختلاف قبر مبارک کو خارج بحث کرکے ہے کیونکہ جمہور نے فرمایا جہاں آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے اعضاء شریفہ ضم زمین ہیں وہ ٹکڑا اجماع کے مطابق تمام زمین سے افضل ہے حتی کہ کعبہ اور عرش سے بھی۔[المسلك المتقسط في المنسك المتوسط ص351 - ص352]



علامہ ابن عابدین حنفی، قاضی عیاض، ابن عقیل، علامہ تاج الدین فاکھی اور علامہ زکریا بن شرف نووی رحمت اللہ علیہم کے نزدیک:
ابن عابدین حنفی رحمت اللہ علیہ نے اس باب میں فرمایا کہ
والخلاف فيما عدا موضع القبر المقدس , فما ضم أعضاءه الشريفة فهو أفضل بقاع الأرض بالإجماع . قال شارحه : وكذا أي الخلاف في غير البيت : فإن الكعبة أفضل من المدينة ما عدا الضريح الأقدس وكذا الضريح أفضل من المسجد الحرام . وقد نقل القاضي عياضوغيره الإجماع على تفضيله حتى على الكعبة , وأن الخلاف فيما عداه . ونقل عن ابن عقيل الحنبلي أن تلك البقعة أفضل من العرش , وقد وافقه السادة البكريون على ذلك.وقد صرح التاج الفاكهي بتفضيل الأرض على السموات لحلوله صلى الله عليه وسلم بها , وحكاه بعضهم على الأكثرين لخلق الأنبياء منها ودفنهم فيها وقال النووي : الجمهور على تفضيل السماء على الأرض , فينبغي أن يستثنى منها مواضع ضم أعضاء الأنبياء للجمع بين أقوال العلماء



مکے اور مدینے میں افضلیت کی بحث قبر اقدس کو خارج از بحث رکھ کر ہے کیونکہ یہ اجماع سے ثابت ہے کہ جہاں آنحضرت کا جسد اطہر مس ہے وہ تمام زمین سے افضل ہے۔
شارح نے فرمایا کہ یہ اختلاف نبی کے آخری ٹھکانے کو چھوڑ کر ہے ۔ اسی لئے کعبہ مدینہ سے افضل ہے سوائے روضۃ الرسول صلیللہعلیہسلم کو چھوڑ کر اور اسی طرح روضۃ الرسول مسجد حرام سے زیادہ افضل ہے۔ تحقیق کہ قاضی عیاض مالکی نے اس کی افضلیت پر اجماع نقل کیا ہےحتی کہ کعبہ پر بھی اور جو اختلاف ہے وہ اس [ٹکڑائے زمین ] کو چھوڑ کر ہے ۔ اور انہوں نے ابن عقیل جنبلی رحمتللہعلیہ سے نقل کیا کہ وہ ٹکڑا [جہاں نبی صلیللہعلیہسلم مدفون ہیں ] عرش سے بھی افضل ہے اور جمہور اس پر متفق ہیں۔ اور علامہ تاج فاکھی نے تصریح کی کہ نبی پاک صلی اللہ علیہ وسلم کے زمین میں مدفون ہونے سے زمین آسمان سے افضل ہے۔ اور بعض نے کثیر تعداد سے روایت کیا کہ تمام انبیاءاسی سے ہیں [یعنی مٹی سے بنے ہیں] اور اسی میں مدفون ہیں [لہذا زمین افضل ہے آسمان سے] لیکن علامہ نووی رحمتللہعلیہ نے جمہور سے روایت کیا ہے کہ آسمان زمین سے افضل ہے البتہ اس میں نبی صلیللہعلیہسلم کے مدفن کی استثناء ضرور ہے جیسا کہ جاننے والوں کے اقوال اس پر متفق ہیں۔[رد المختار ج 2 ص 688]


علامہ ابن حجر ہیتمی رحمت اللہ علیہ کے نزدیک:
علامہ ابن حجر ہیتمی رحمت اللہ علیہ نے لکھا
وهي كبقية الحرم أفضل الأرض عندنا وعند جمهور العلماء للأخبار الصحيحةالمصرحة بذلك وما عارضها بعضه ضعيف وبعضه موضوع كما بينته في الحاشية ومنه خبر { إنها أي المدينة أحب البلاد إلى الله تعالى } فهو موضوع اتفاقا ، وإنما صح ذلك منغير نزاع فيه في مكة إلا التربة التي ضمت أعضاءه الكريمة صلى الله عليه وسلم فهيأفضل إجماعا حتى من العرش
اور یہ کہ حرم کعبہ میرے اور اخبار صحیحہ صریحہ سے جمہور کے نزدیک تمام زمین سے افضل ہے اور جو چند دلیلیں اس کے معارض ہیں ان میں سے بعض ضعیف ہیں اور بعض موضوع مثلا حاشیہ میں جو دلیل ہے کہ إنها أي المدينة أحب البلاد إلى الله تعالى یہ بالاتفاق موضوع ہے ۔ لیکن اس طرح کی خبریں مکہ [کی فضیلت] کے بارے میں بلااختلاف درست ہیں سوائے اس مٹی کی فضیلت کہ جو نبی کریم صلیللہعلیہسلم کے اعضائے مقدسہ کے ساتھ مس ہے حتی کہ عرش سے بھی ۔ یہ فضیلت اجماع سے ثابت ہے[تحفة المحتاج ج 5 ص 167]

امام سلفیت قاضی شوکانی رحمت اللہ علیہ کے نزدیک:
قاضی شوکانی نے نیل الاوطار میں نقل کیا ہے
قال القاضى عياض ، إن موضع قبره صلى الله عليه وسلم أفضل بقاع الأرض
قاضی عیاض نے فرمایا نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی قبر والا ٹکڑا تمام زمین سے افضل ہے۔[نيل الأوطار - الشوكاني ج 5 ص 99] اور اس پر رد بھی نہیں فرمایا جوکہ اس بات کی دلیل ہے کہ قاضی شوکانی رحمتللہعلیہ بھی اسی کے قائل ہیں۔
ان حوالوں سے یہ بات ثابت ہوگئی کہ وہ ٹکڑا جہاں نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم مدفون ہیں وہ تمام اشیاء سے افضل ہے حتی کہ عرش اور کعبہ سے بھی اور جمہور کا اس پر اجماع ہے۔ اور جمہور کے اجماء کے مقابلے میں کسی کا تفرد کوئی حیثیت نہیں رکھتا۔ ممکن ہے کہ کوئی بزرگ ایسا ہو جس کا عقیدہ اس کے برخلاف ہو لیکن اس مسئلے میں ہم اس بزرگ کو نہیں مانے گے کیونکہ جمہور کا اجماع ایک طرف ہے اور ان بزرگ کی شان میں گستاخی کئے بغیر یہ مانا جائے گا کہ ان سے اس مسئلے میں کوئی ذھول ہوگیا ہے اللہ ان کی خطا کو معاف فرمائے اور ان کو اچھی نیت کا ثواب عطا کرے۔

وهذه بعض أقوال علماء ديوبند في هذه المسألة


قال حكيم الأمة الإمام التهانوي في : (إمداد الفتاوى) له 


( لمّا كا جسده الأطهر –r- محفوظاً في قبره اتفاقاً بين الموافقين والمخالفين , وهو فيه مع روحه كما ذكر , فظاهر –وقد صرح بذلك العلماء أيضاً- أنّ البقعة التي اتصل بها خصوص جسمه المبارك أفضل من العرش . لأن العرش إن الله تعالى ليس بجالس عليه ونعوذ بالله من ذلك فلو كان تعالى جالساً عليه لكان هذا أفضل من كلّ شيء ) . انتهى

وقال المحدّث مولانا شبّير عثماني في فتح الملهم 
( نعم لو كان العرش مستوى الرحمن بمعنى أنّ ذاته قد حلّ به حلول المكين بالمكان تعالى الله عن ذلك وتقدّس , لقطعنا بأن العرش أفضل من سائر بقاع الأرض والسماء حتى ضريحه –r- , لظهور أن شرف المكان على قدر شرف المكين , ولكنّ الأمر ليس كذلك , والاستواء بالمعنى المذكور محال على الله تعالى) .انتهى

وقال الإمام أنور شاه الكشميري كما في معارف السنن لتلميذه البنّوري :
( اعلم أن تفضيل البقعة المباركة التي دفن فيها –r- فقد حكى القاضي عياض الإجماع على أنها أفضل بقاع الأرض كما هو في كتابه "الشفاء" في فصل فيما يلزم من دخل مسجد النبي –r- من الأدب , وحكاه قبله أبو الوليد الباجي وغيره , وبعده القرافي وغيره من المالكية , ثم حكاه ابن عساكر والسبكي الكبير والصغير والحافظ ابن حجر وغيرهم من الشافعية . ومثله ابن عقيل من قدماء الحنابلة , وحكاه ابن القيّم في الجزء الثالث من بدائع الفوائد ولم يردّه بل حكاه فائدة في كتابه . وكذلك يحكيه أرباب التأليف من الحنفية كالحافظ البدر العيني في العمدة في الجزء الثالث , وعلي القاري في "المرقاة" وصاحب "الدر المختار" وصاحب "رد المحتار" , وقال الخفاجي : وفي كلام شيخنا ابن القاسم ما يقتضي ما تقدّم أن البقعة التي ضمّت أعضاءه ثابت قبل دفنه فيها , وقبل موته , بل وقبل هجرته . نعم قد يقال : تفضيلها على الكعبة والعرش والكرسي إنما ثبت بعد دفنه فيها لشرفها به لا قبله ...) . باختصار .

وقال تلميذه العلامة المحدّث مولانا محمد يوسف البنوري في معارف السنن 
(وإن شئت أن تستأنس في ذلك بدليل من السنّة فلاحظ إلى حديث رسول الله –r- "أن كل نفس تدفن في التربة التي خلقت منها" رواه الحاكم في مستدركه ) .انتهى
=====================================
غیر مقلدین جو کہ احناف دشمنی کی وجہ سے ہر وقت اہلسنت والجماعت دیوبند سے ہر وقت نالاں رہتے ہیں اور پروبگنڈے کا ہتھیار استعمال کرتے ہوئے احناف کو بدنام کرنے کا کوئی موقعہ ہاتھ سے نہیں جانے دیتے۔ خاص کر ان کے کچھ شیوخ عرب میں جاکر احناف دشمنی میں ریال کے عوض زہر اگل رہے ہیں ان میں سب سے زیادہ سامنے آنے والا نام توصیف الرحمان راشدی کا ہے جو اپنی جماعت میں فضیلۃ الشیخ کے نام سے جانا جاتا ہے۔ اس کا آج تک کوئی علمی کام تو نظر سے نہیں گزرا البتہ کوئی عالم کسی بھی مسلک کا سوائے غیر مقلدین کے ایسا ہو جو اس کے وار سے بچ پایا ہو۔ ہمارے نزدیک توصیف صاحب یا تو خود کو سب سے بڑا عالم جانتے ہیں یا پھر شدید غلط فہمی پرہے۔ لہذا انہوں نے جس طرح دوسرے حضرات کو اپنی تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کافر کا فتوی لگایا انہی میں تبلیغی جماعت اور ان کے اکابرین بھی شامل ہیں۔ جن میں بالخصوص انہوں نے مولانا طارق جمیل صاحب حفظہللہ اور شیخ الحدیث مولانا زکریا کاندھلوی رحمۃ اللہ علیہ کا نام قابل ذکر ہے۔
جب اس ملعون نے مولانا زکریا رحمتللہعلیہ کے خلاف پروپگنڈہ کے لئے ویڈیو بنائی تو اس میں ایک اعتراض یہ بھی کیا کہ مولانا نے اپنی تحریروں میں بعض جگہ روضۃ الرسول صلیللہعلیہسلم کو عرش سے افضل لکھا ہے اور یہ شرک ہے گمراہی ہے بدعت ہے اور قبر پرستی ہے وغیرہ وغیرہ ۔ اسی لئے ذیل میں ہم نے چند حوالے اکابرین اہلسنت والجماعت احناف، شوافع، مالکیہ اور حنابلہ کے حوالے سے ثابت کیا ہے کہ روضۃ الرسول صلی اللہ علیہ وسلم کا ٹکڑا جہاں نبی صلی اللہ علیہ وسلم مدفون ہیں وہ تمام کائنات سے افضل ہے اور اس پر اجماع امت ہے۔ تاکہ توصیف صاحب کے اس پروپگنڈے کا الم نشرح ہو اور لوگ توصیف صاحب کے سلفیت کے ڈھونگ سے واقف ہوجائیں اور دیکھ لیں کہ اجماع کیا کہتا ہے اور توصیف صاحب کی رائے کیا ہے اور اگر توصیف صاحب کی رائے کو مانا جائے تو تمام اکابرین مذاہب آئمہ بشمول قاضی شوکانی اور ابن القیم رحمت اللہ علیہما کافر، مشرک اور قبر پرست ہوجائے گے۔


اس پوسٹ کا جواب دینے والوں کے نام : جو اہلحدیث حضرات اس پوسٹ کا جواب دینے کی کوشش کریں ان سے درخواست ہے کہ جیسا کہ ان کا دعوی ہے کہ وہ قرآن اور حدیث کے سوا کچھ نہیں مانتے تو جوابا وہ قرآن یا حدیث سے ہے اس ٹکڑے کا تمام جہاں سے افضل نہ ہونا ثابت کریں۔ اور یاد رہے اس ضمن میں وہ احادیث پیش نہیں کی جائیں گی جس میں مکے کی افضلیت کا ذکر ہے کیونکہ اکابرین مع محدثین مثلا علامہ نووی اور قاضی شوکانی رحمت اللہ علیہما نے کہہ دیا کہ اس حدیث میں روضۃ الرسول کو خارج از بحث رکھ کر فضیلت بیان کی گئی ہے لہذا از خود اس حدیث سے جواب دینے والوں کا رد محدثین کی جماعت سے ثابت ہوگیا۔ اور اس پوسٹ سے جناب توصیف الرحمان صاحب راشدی کے دجل و فریب اور تعصب پسندی کا پردہ بھی چاک ہوا کہ جمہور کے اجماع والا عقیدہ رکھنے والوں کو کافر، بدعتی اور قبر پرست کہہ سستی شہرت اور دولت کمائی جارہی ہے۔ اور اس ضمن میں بے علم عوام کو جذباتی تقریروں اور احادیث کی من مانی تشریح کرکے گمراہ کیا جارہاہے۔ اللهم اعوذبك من ذلك





فضائلِ مدینہ ، مسجدِ نبوی و زیارتِ مدینہ دورانِ حج:؛
مدینہ منورہ اور اہل مدینہ کی فضیلت کیا ہے؟
حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : ’’جو شخص مدینہ منورہ کی سختیوں اور مصیبتوں پر صبر کا دامن ہاتھ سے نہیں چھوڑے گا قیامت کے روز میں اس شخص کے حق میں گواہی دوں گا یا اس کی شفاعت کروں گا۔‘‘
(مسلم، الصحيح، کتاب الحج، باب الترغيب فی سکنی المدينة والصبر علی لاوائها، 2 : 1004، رقم : 1377)
اہل مدینہ سے برائی کرنا تو درکنار برائی کا ارادہ کرنے والے کو بھی جہنم کی وعید سنائی گئی ہے۔ حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا :
’’جو شخص اس شہر والوں (یعنی اہل مدینہ) کے ساتھ برائی کا ارادہ کرے گا ﷲ تعالیٰ اسے (دوزخ میں) اس طرح پگھلائے گا جیسا کہ نمک پانی میں گھل جاتا ہے۔‘‘
(مسلم، الصحيح، کتاب الحج، باب من أراد أهل المدينة بسوء أذا به اﷲ، 2 : 1007، رقم : 1386)
حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے شہر دلنواز مدینہ منورہ کے رہنے والوں کا ادب و احترام بھی آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی نسبت و تعلق کی وجہ سے لازم ہے جو ایسا نہیں کرے گا وہ جہنم کا ایندھن بنے گا۔
حضرت ابوہریرۃ رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : ایمان سمٹ کر مدینہ طیبه میں اس طرح داخل ہو جائے گا جس طرح سانپ اپنے بل میں داخل ہوتا ہے۔
(ابن ماجه، السنن، کتاب المناسک، باب فضل المدينة، 3 : 524، رقم : 3111)

عَنِ ابْنِ عُمَرَ ، قَالَ : قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ : " مَنِ اسْتَطَاعَ أَنْ يَمُوتَ بِالْمَدِينَةِ فَلْيَمُتْ بِهَا ، فَإِنِّي أَشْفَعُ لِمَنْ يَمُوتُ بِهَا "[جامع الترمذي » كِتَاب الدَّعَوَاتِ » أبوابُ الْمَنَاقِبِ » بَاب مَا جَاءَ فِي فَضْلِ الْمَدِينَةِ ... رقم الحديث: 3882]
حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ کا بیان ہے کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علی
 وآلہ وسلم نے فرمایا : جو شخص تم میں سے مدینہ میں مرنے کی طاقت رکھتا ہو وہ ایسا کرے کیونکہ جو مدینہ میں مرے گا میں ﷲ کے سامنے اس کی شہادت دوں گا۔
(ابن ماجه، السنن، کتاب المناسک، باب فضل المدينة، 3 : 524، رقم : 3112)
حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا :
(بخاری، الصحيح، کتاب التطوع، باب فضل الصلاة فی مسجد مکة والمدينة، 1 : 398، رقم : 21133
مسلم، الصحيح، کتاب الحج، باب فضل الصلاة بمسجد مکة والمدينة، 2 : 1012، رقم : 1394)
’’میری اس مسجد میں ایک نماز دوسری مساجد کی ہزار نمازوں سے بہتر ہے سوائے مسجد حرام کے۔‘‘
حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا :
صَلَاتُهُ فِيْ مَسْجِدِی بِخَمْسِيْنَ أَلْفِ صَلَاةً.
(ابن ماجه، السنن، کتاب إقامة الصلاة والسنة فيها، باب ماجاء فی الصلاة فی المسجد الجامع، 2 : 191، رقم : 1413)
’’جس نے میری مسجد (مسجد نبوی) میں ایک نماز پڑھی اسے پچاس ہزار نمازوں کا ثواب ملتا ہے۔‘‘


عَنْ أَنَسِ بْنِ مَالِكٍ عَنْ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَنَّهُ قَالَ مَنْ صَلَّى فِي مَسْجِدِي أَرْبَعِينَ صَلَاةً لَا يَفُوتُهُ صَلَاةٌ كُتِبَتْ لَهُ بَرَاءَةٌ مِنْ النَّارِ وَنَجَاةٌ مِنْ الْعَذَابِ وَبَرِئَ مِنْ النِّفَاقِ.(مسند احمد:12605)


حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا :
فَإِنِّی آخِرُ الْاَنْبِيَاءِ وَإِنَّ مَسْجِدِی آخِرُ الْمَسَاجِدِ.
(مسلم، الصحيح، کتاب الحج، باب فضل الصلاة بمسجدی مکة والمدينة، 2 : 1012، رقم : 1394)
’’بیشک میں آخر الانبیاء ہوں اور میری مسجد آخر المساجد۔‘‘
حضرت ام المومنین عائشہ صدیقہ رضی اﷲ عنہا سے مروی ہے کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا :
اَنَا خَاتِمُ الْاَنْبِياءِ وَمَسْجِدِي خَاتِمُ مَسَاجِدِ الْاَنْبِيَاءِ.
(ديلمی، الفردوس بماثور الخطاب، 1 : 45، رقم : 112)
’’میں خاتم الانبیاء ہوں اور میری مسجد انبیاء کرام کی مساجد کی خاتم ہے۔‘‘
حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا :
مَنْ صَلَّی فِی مَسْجِدِی أَرْبَعِيْنَ صَلٰوةً، لَا يَفُوْتُهُ صَلٰوةٌ کُتِبَتْ لَه بَرَاءَ ةٌ مِنَ النَّارِ، وَنَجَاةٌ مِنَ الْعَذَابِ وَبَرِيئَ مِنَ الْنَفَاقِ.
(احمد بن حنبل، المسند، 3 : 12590
سمهودی، وفاء الوفا، 1 : 77)
’’جس نے مسجد نبوی میں چالیس نمازیں متواتر ادا کیں اس کے لئے جہنم، عذاب اور نفاق سے نجات لکھ دی جاتی ہے۔‘‘
اگر کوئی حج کو جائے اور روضۂ اطہر کی زیارت کے بغیر واپس آجائے تو اس کا حج ہوگا یا نہیں؟
آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے روضہٴ اطہر کی زیارت کے بغیر جو شخص واپس آجائے، حج تو اس کا ادا ہوگیا، لیکن اس نے بے مروّتی سے کام لیا اور زیارت شریفہ کی برکت سے محروم رہا۔ یوں کہہ لیجئے کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے روضہٴ اطہر کی زیارت کے لئے جانا ایک مستقل عملِ مندوب ہے، جو حج کے اعمال میں تو داخل نہیں مگر جو شخص حج پر جائے اس کے لئے یہ سعادت حاصل کرنا آسان ہے، اس لئے حدیث میں فرمایا:"من حج البیت ولم یزرنی فقد جفانی۔جس شخص نے بیت اللہ شریف کا حج کیا اور میری زیارت کو نہ آیا، اس نے مجھ سے بے مروّتی کی"۔
(آپ کے مسائل اور اُن کا حل:۴/۱۵۱، کتب خانہ نعیمیہ، دیوبند)

قبرِ نبویؐ کے بت پرستی کا اندیشہ

وَحَدَّثَنِي ، عَنْ مَالِك ، عَنْ زَيْدِ بْنِ أَسْلَمَ ، عَنْ عَطَاءِ بْنِ يَسَارٍ ، أَنّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ : " اللَّهُمَّ لَا تَجْعَلْ قَبْرِي وَثَنًا يُعْبَدُ ، اشْتَدَّ غَضَبُ اللَّهِ عَلَى قَوْمٍ اتَّخَذُوا قُبُورَ أَنْبِيَائِهِمْ مَسَاجِدَ " .
 حضرت عطاء ابن یسار رضی اللہ تعالیٰ عنہ راوی ہیں کہ سرور کائنات صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا (یعنی یہ دعا فرمائی) اَللّٰھُمَّ لَا تَجْعَلْ قَبْرِی وَثَنًا یُعْبَدُ یعنی : اے اللہ ! میری قبر کو بت نہ بنا کہ لوگ اس کی عبادت کرنے لگیں۔ (اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا) جن لوگوں نے اپنے انبیاء کی قبروں کو سجدہ گاہ بنا لیا ان پر اللہ تعالیٰ کا شدید غضب (نازل) ہوا۔"
 م طرف الحديثالصحابياسم الكتابأفقالعزوالمصنفسنة الوفاة
1اللهم لا تجعل قبري وثنا يعبد اشتد غضب الله على قوم اتخذوا قبور أنبيائهم مساجدموضع إرسالموطأ مالك رواية يحيى الليثي414416مالك بن أنس179
2اللهم لا تجعل قبري وثنا لعن الله قوما اتخذوا قبور أنبيائهم مساجدعبد الرحمن بن صخرمسند أحمد بن حنبل71847311أحمد بن حنبل241
3اللهم لا تجعل قبري وثنا لعن الله قوما اتخذوا قبور أنبيائهم مساجدعبد الرحمن بن صخرمعرفة السنن والآثار للبيهقي19432207البيهقي458
4اللهم لا تجعل قبري وثنا يعبد اشتد غضب الله على قوم اتخذوا قبور أنبيائهم مساجدموضع إرسالموطأ مالك برواية أبي مصعب الزهري385570مالك بن أنس179
5اللهم لا تجعل قبري وثنا لعن الله قوما اتخذوا أو جعلوا قبور أنبيائهم مساجدعبد الرحمن بن صخرمسند الحميدي9901055عبد الله بن الزبير الحميدي219
6اللهم لا تجعل قبري وثنا يصلى إليه فإنه اشتد غضب الله على قوم اتخذوا قبور أنبيائهم مساجدموضع إرسالمصنف عبد الرزاق15301587عبد الرزاق الصنعاني211
7اللهم لا تجعل قبري وثنا يصلى له اشتد غضب الله على قوم اتخذوا قبور أنبيائهم مساجدموضع إرسالمصنف ابن أبي شيبة73747618ابن ابي شيبة235
8اللهم لا تجعل قبري وثنا يصلى له اشتد غضب الله على قوم اتخذوا قبور أنبيائهم مساجدموضع إرسالمصنف ابن أبي شيبة1158011930ابن ابي شيبة235
9اللهم لا تجعل قبري وثنا لعن الله قوما اتخذوا قبور أنبيائهم مساجدعبد الرحمن بن صخرالثامن عشر من المشيخة البغدادية لأبي طاهر السلفي3---أبو طاهر السلفي576
10اللهم لا تجعل قبري وثنا يعبد اشتد غضب الله على قوم اتخذوا قبور أنبيائهم مساجدسعد بن مالكالتمهيد لابن عبد البر7285 : 42ابن عبد البر القرطبي463
11اللهم لا تجعل قبري وثنا لعن الله قوما اتخذوا قبور أنبيائهم مساجدعبد الرحمن بن صخرالتمهيد لابن عبد البر7305 : 44ابن عبد البر القرطبي463
12اللهم لا تجعل قبري وثنا يعبد اشتد غضب الله على قوم اتخذوا قبور أنبيائهم مساجدموضع إرسالالطبقات الكبرى لابن سعد20542 : 369محمد بن سعد الزهري230
13اللهم لا تجعل قبري وثنا لعن الله قوما اتخذوا قبور أنبيائهم مساجدعبد الرحمن بن صخرالطبقات الكبرى لابن سعد20592 : 370محمد بن سعد الزهري230
14اللهم لا تجعل قبري وثنا لعن الله قوما جعلوا قبور أنبيائهم مساجدعبد الرحمن بن صخرفضائل المدينة للجندي4251الفضل بن محمد الجندي308

تشریح : آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی دعا کا مطلب یہ ہے کہ پروردگار ! تو میری قبر کو اس معاملے میں بتوں کی مانند نہ کر کہ میری امت کے لوگ میری قبر کی خلاف شرع تعطیم کرنے لگیں یا باربار زیارت کے لئے میلے کے طور آنے لگیں، یا میری قبر کو سجدہ گاہ قرار دے کر اپنی پیشانیوں کو جو صرف تیری ہی چوکھٹ پر جھکنے کی سزا وار ہے اس پر جھکانے لگیں اور سجدے کرنے لگیں۔
اس حدیث کو اور اس دعا کو بار بار پڑھیے اور ذرا آج کے حالات پر اس کو منطبق کیجئے پھر آپ کو معلوم ہوگا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی اس دعا کا تعلق آنے والے زمانے سے تھا چنانچہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی عرفانی نگاہوں نے اس وقت دیکھ لیا تھا کہ وہ وقت آنے والا ہے۔ کہ جب کہ میری قبر تو الگ رہی اولیاء اللہ کے مزارات پر سجدہ ریزی ہوگی مقبروں پر میلے لگیں گے وہاں عرس قوالیاں ہوں گی، قبروں پر چادریں اور پھولوں کا چڑھاوا چڑھے گا۔ غرض کہ جس طرح ایک بت پرست قوم اللہ کی عبادت و فرمانبرداری سے سرکشی اور تمرد اختیار کر کے بتوں کے ساتھ معاملہ کرتی ہے میری امت کے بد قسمت اور بد نصیب لوگ جو میرے نام کے شیدائی کہلائیں گے، میرے محبت سے سر شاری کا دعوی کریں گے۔ میری لائی ہوئی پاک و صاف شریعت کی آڑ میں میرے دین کے نام پر وہی معاملہ قبروں کے ساتھ کریں گے لہٰذا آپ نے دعا فرمائی کہ اے پروردگار ! تو میری امت کو ایسی گمراہی میں مبتلا نہ کیجئے کہ وہ میری قبر کو پوجنے لگیں۔
جملہ اشتد غضب الخ کا تعلق دعا سے نہیں ہے بلکہ یہ جملہ مستانفہ یعنی ایک الگ جملہ ہے گویا جب آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے یہ دعا کی تو لوگوں نے پوچھا کہ یہ دعا آپ صلی اللہ علیہ وسلم کیوں کر رہے ہیں تو اس کے جواب میں آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا اشتد الخ یعنی میں اپنی امت پر انتہائی شفقت و مہربانی کے لئے یہ دعا کر رہا ہوں کہ مبادا یہ بھی اس لعنت میں مبتلا نہ ہو جائیں جس طرح کہ یہود وغیرہ اس لعنت میں مبتلا ہو کر اللہ ذوالجلال کے غضب میں گرفتار ہوئے۔

حَدَّثَنَا أَحْمَدُ بْنُ صَالِحٍ ، قَرَأْتُ عَلَى عَبْدِ اللَّهِ بْنِ نَافِعٍ ، أَخْبَرَنِي ابْنُ أَبِي ذِئْبٍ ، عَنْ سَعِيدٍ الْمَقْبُرِيِّ ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ ، قَالَ : قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ : " لَا تَجْعَلُوا بُيُوتَكُمْ قُبُورًا ، وَلَا تَجْعَلُوا قَبْرِي عِيدًا ، وَصَلُّوا عَلَيَّ ، فَإِنَّ صَلَاتَكُمْ تَبْلُغُنِي حَيْثُ كُنْتُمْ " .
حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا اپنے گھروں کو قبریں اور میری قبر کو عید (میلہ وجشن منانے کی جگہ) مت بنانا بلکہ مجھ پر درود بھیجنا تم جہاں بھی ہو گے وہیں سے تمہارا درود مجھ تک پہنچا دیا جائے گا۔
[سنن ابوداؤد:جلد دوم:حدیث نمبر 277  (16895)- مناسک حج کا بیان : قبروں کی زیارت کا بیان]
 م طرف الحديثالصحابياسم الكتابأفقالعزوالمصنفسنة الوفاة
1لا تجعلوا بيوتكم قبورا ولا تجعلوا قبري عيدا وصلوا علي فإن صلاتكم تبلغني حيث كنتمعبد الرحمن بن صخرسنن أبي داود17482042أبو داود السجستاني275
2لا تجعلوا بيوتكم قبورا ولا تجعلوا قبري عيدا وصلوا علي فإن صلاتكم تبلغني حيث ما كنتمعبد الرحمن بن صخرالمعجم الأوسط للطبراني82458030سليمان بن أحمد الطبراني360
3لا تجعلوا بيوتكم قبورا ولا تجعلوا قبري عيدا وصلوا علي فإن صلاتكم تبلغني حيث كنتمعبد الرحمن بن صخرحياة الأنبياء في قبورهم للبيهقي1414البيهقي458
4لا تجعلوا بيوتكم قبورا ولا تجعلوا قبري عيدا وصلوا علي فإن صلاتكم تبلغني حيث كنتمعبد الرحمن بن صخرشعب الإيمان للبيهقي38544162البيهقي458
5لا تتخذوا قبري عيدا ولا تجعلوا بيوتكم قبورا وحيثما كنتم فصلوا علي فإن صلاتكم تبلغنيعبد الرحمن بن صخرمسند أحمد بن حنبل86058586أحمد بن حنبل241
6لا تتخذوا قبري عيدا ولا بيوتكم قبورا فإن تسليمكم يبلغني أينما كنتمعلي بن أبي طالبالأحاديث المختارة395---الضياء المقدسي643
7لا تجعلوا قبري عيدا ولا بيوتكم قبورا وصلوا علي وسلموا فإن صلاتكم تبلغنيعلي بن أبي طالبالبحر الزخار بمسند البزار491509أبو بكر البزار292
8لا تتخذوا قبري عيدا ولا بيوتكم قبورا فإن تسليمكم يبلغني أينما كنتمعلي بن أبي طالبمسند أبي يعلى الموصلي460469أبو يعلى الموصلي307
9لا تتخذوا قبري عيدا ولا بيوتكم قبورا وصلوا علي فإن صلاتكم وتسليمكم يبلغني حيث ما كنتمعلي بن أبي طالبالمطالب العالية بزوائد المسانيد الثمانية لابن حجر13681324ابن حجر العسقلاني852
10لا تتخذوا قبري عيدا ولا بيوتكم قبورا وصلوا علي فإن صلاتكم وتسليمكم يبلغني حيث ما كنتمعلي بن أبي طالبإتحاف الخيرة المهرة بزوائد المسانيد العشرة11841512البوصيري840
11لا تتخذوا قبري عيدا ولا بيوتكم قبورا فإن تسليمكم يبلغني أينما كنتمعلي بن أبي طالبالمقصد العلي في زوائد أبي يعلى الموصلي جزء545614الهيثمي807
12لا تجعلوا قبري عيدا ولا بيوتكم قبورا وصلوا علي وسلموا فإن صلاتكم تبلغنيعلي بن أبي طالبكشف الأستار662707نور الدين الهيثمي807
13لا تتخذوا قبري عيدا ولا تتخذوا بيوتكم قبورا وصلوا علي حيثما كنتم فإن صلاتكم تبلغنيموضع إرسالمصنف عبد الرزاق65556726عبد الرزاق الصنعاني211
14لا تتخذوا قبري عيدا ولا بيوتكم قبورا وصلوا علي فإن صلاتكم تبلغني حيثما كنتمعلي بن أبي طالبمصنف ابن أبي شيبة73727616ابن ابي شيبة235
15لا تتخذوا قبري عيدا ولا بيوتكم قبورا وصلوا علي حيثما كنتم فإن صلاتكم تبلغنيموضع إرسالمصنف ابن أبي شيبة73737617ابن ابي شيبة235
16لا تتخذوا قبري عيدا ولا بيوتكم قبورا وصلوا علي حيثما كنتم فإن صلاتكم تبلغنيموضع إرسالمصنف ابن أبي شيبة1157911929ابن ابي شيبة235
17لا تتخذوا قبري عيدا ولا بيوتكم قبورا وسلموا علي حيثما كنتم فإن صلاتكم وتسليمكم يبلغنيعلي بن أبي طالبالثامن عشر من المشيخة البغدادية لأبي طاهر السلفي1---أبو طاهر السلفي576
18لا تجعلوا بيوتكم قبورا ولا تجعلوا قبري عيدا وصلوا علي فإن صلاتكم تبلغني حيثما كنتمعبد الرحمن بن صخرجزء ابن فيل109---الحسن بن أحمد بن إبراهيم بن فيل البالسي309
19لا تجعلوا قبري عيدا ولا تجعلوا بيوتكم قبورا وصلوا علي وسلموا حيثما كنتم فسيبلغني سلامكم وصلاتكمعلي بن أبي طالبفضل الصلاة على النبي صلى الله عليه وسلم لإسماعيل بن إسحاق1920إسماعيل بن إسحاق القاضي282
20لا تتخذوا قبري عيدا لعن الله قوما اتخذوا قبور أنبيائهم مساجد يصلون إليها وصلوا في بيوتكم ولا تتخذوها قبوراعبد الرحمن بن صخرحلية الأولياء لأبي نعيم88548861أبو نعيم الأصبهاني430
21لا تتخذوا قبري عيداعلي بن أبي طالبالتاريخ الكبير للبخاري5392140محمد بن إسماعيل البخاري256
22لا تتخذوا قبري عيدا ولا تتخذوا بيتكم قبورا وصلوا حيث ما كنتم فإن صلاتكم يبلغني تسليمكم يبلغنيعلي بن أبي طالبالتدوين في أخبار قزوين للرافعي1522---عبد الكريم الرافعي623

تشریح:  حدیث کے پہلے جزء کے تین مطلب ہو سکتے ہیں اول یہ کہ اپنے گھروں کو قبروں کی طرح نہ سمجھ لو کہ جس طرح مردے اپنی قبر میں پڑے رہتے ہیں تم بھی اپنے گھروں میں مردوں کی طرح پڑے رہو ان میں نہ عبادت کرو اور نہ کچھ نمازیں پڑھو بلکہ اسی طرح گھروں میں بھی عبادت کرو اور کچھ نمازیں پڑھو تا کہ اس کے انوار و برکات گھر اور گھر والوں کو پہنچیں اور اس کی شکل یہ ہونی چاہئے کہ فرض نمازیں تو مساجد میں ادا کرو اور سنن و نوافل اپنے گھر آکر پڑھو کیونکہ نوافل مساجد کی بہ نسبت گھر میں ادا کرنا زیادہ افضل ہے۔
دوسرا مطلب یہ ہو سکتا ہے کہ ۔ اپنے گھروں میں مردے دفن نہ کرو۔ اس موقعہ پر یہ اشکال پیدا نہ کیجئے کہ خود رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم تو اپنے گھر ہی زیر زمین آرام فرما ہیں۔ کیونکہ یہ صرف رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ مختص ہے کسی دوسرے کو ایسا نہ کرنا چاہئے۔
تیسرا مطلب یہ ہو سکتا ہے کہ قبروں کو سکونت کی جگہ قرار نہ دو جیسا کہ آجکل اولیاء اللہ کے مزارات اور قبرستانوں پر ان کے خدام مجاوروں نے سکونت اختیار کر رکھی ہے، تاکہ دل کی نرمی اور طبیعت و مزاج کی شفقت و رحمت ختم نہ ہو جائے بلکہ ایسا کرنا چاہئے کہ قبروں کی زیارت کر کے اور ان پر فاتحہ وغیرہ پڑھ کر اپنے گھروں کو واپس آجاؤ۔
حدیث کے دوسرے جزء" میری قبر کو عید (کی طرح) قرار نہ دو " کا مطلب یہ ہے کہ میری قبر کو عید گاہ کی طرح نہ سمجھو کہ وہاں جمع ہو کر زیب و زینت اور لہو و لعب کے ساتھ خوشیاں مناؤ اور اس سے لطف و سرور حاصل کرو۔ جیسا کہ یہود و نصاری اپنے انبیاء کی قروں پر اس قسم کی حرکتیں کرتے ہیں۔
حدیث کے اس جزء سے آج کل کے ان نام نہاد ملاؤں اور بدھ پرستوں کو یہ سبق حاصل کرنا چاہئے جنہوں نے اولیا اللہ کے مزارات کو اپنی نفسانی خواہشات اور دنیاوی اغراض کا منبع و مرجع بنا رکھا ہے اور ان مقدس بزرگوں کے مزارات پر عرس کے نام سے دنیا کی وہ خرافات اور ہنگامہ آرائیاں کرتے ہیں جن پر کفر و شرک بھی خندہ زن ہیں۔ مگر افسوس یہ ہے کہ ان کے حوالے مانڈوں نذر و نیاز اور لذت پیٹ و دہن نے ان کی عقل پر نفس پرستی اور ہوس کاریوں کے وہ موٹے پردے چڑھا دیئے ہیں جن کی موجودگی میں نہ انہیں نعوذ باللہ قرآنی احکام کی ضرورت ہے اور نہ انہیں کسی حدیث کی حاجت۔ اللہ ان لوگوں کو ہدایت دے۔ آمین
بعض علماء نے اس جزء کی تشریح یہ کی ہے عید کی طرح سال میں صرف ایک دو مرتبہ ہی میری قبر کی زیارت کے لئے نہ آیا کرو بلکہ اکثر و بیشتر حاضر ہوا کرو۔ اس صورت میں آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنی قبر کی زیادہ سے زیادہ زیارت اور اس محیط علم و عرفان اور منبع امن و سکون پر اکثر و بیشتر حاضری پر امت کے لوگوں کو ترغیب دلائی ہے۔
حدیث کے آخری جزء کا مطلب یہ ہے کہ مجھ پر زیادہ سے زیادہ درود بھیجو، اگر کوئی آدمی میرے روضے سے دور ہے اور بعد مسافت اختیار کئے ہوئے ہے تو اس کو اس کا خیال نہ کرنا چاہئے بلکہ اسے چاہئے کہ وہ اپنی جگہ بیٹھا ہوا ہی مجھ پر درود بھیجتا رہے کیونکہ جہاں سے بھی درود بھیجا جائے گا میرے پاس پہنچ جائے گا۔ اس طرح آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ان مشتاقان زیارت کی جنہیں روضہ اقدس پر حاضری کی سعادت حاصل نہیں ہو سکی۔ تسلی فرمائی ہے کہ اگرچہ مجبوریوں کی بنا پر تم مجھ سے دور ہو لیکن تمہیں چاہئے کہ توجہ اور حضور قلب سے غافل نہ رہو کہ
قرب جانے چوں بود بعد کانے سہل ست

حَدَّثَنَا عَمْرُو بْنُ عَوْنٍ ، أَخْبَرَنَا إِسْحَاقُ بْنُ يُوسُفَ ، عَنْ شَرِيكٍ ، عَنْ حُصَيْنٍ ، عَنْ الشَّعْبِيِّ ، عَنْ قَيْسِ بْنِ سَعْدٍ ، قَالَ : أَتَيْتُ الْحِيرَةَ فَرَأَيْتُهُمْ يَسْجُدُونَ لِمَرْزُبَانٍ لَهُمْ ، فَقُلْتُ : رَسُولُ اللَّهِ أَحَقُّ أَنْ يُسْجَدَ لَهُ ، قَالَ : فَأَتَيْتُ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، فَقُلْتُ : إِنِّي أَتَيْتُ الْحِيرَةَ فَرَأَيْتُهُمْ يَسْجُدُونَ لِمَرْزُبَانٍ لَهُمْ ، فَأَنْتَ يَا رَسُولَ اللَّهِ أَحَقُّ أَنْ نَسْجُدَ لَكَ ، قَالَ : " أَرَأَيْتَ لَوْ مَرَرْتَ بِقَبْرِي أَكُنْتَ تَسْجُدُ لَهُ ؟ " قَالَ : قُلْتُ : لَا ، قَالَ : " فَلَا تَفْعَلُوا ،لَوْ كُنْتُ آمِرًا أَحَدًا أَنْ يَسْجُدَ لِأَحَدٍ لَأَمَرْتُ النِّسَاءَ أَنْ يَسْجُدْنَ لِأَزْوَاجِهِنَّ ، لِمَا جَعَلَ اللَّهُ لَهُمْ عَلَيْهِنَّ مِنَ الْحَقِّ " .
حضرت قیس بن سعد رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ میں حیرہ میں آیا (حیرہ کوفہ کے قریب ایک جگہ کا نام ہے) تو میں نے دیکھا کہ یہاں کے لوگ اپنے سردار کو (تعظیم کے طور پر) سجدہ کرتے ہیں میں نے اپنے دل میں کہا کہ ان کے مقابلہ میں تو رسول صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم اس بات کے زیادہ حقدار ہیں کہ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو (تعظیماً) سجدہ کیا جائے۔ پھر جب میں رسول صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے پاس آیا تو میں نے کہا۔ میں حیرہ گیا تھا اور میں نے وہاں کے لوگوں کو دیکھا کہ وہ اپنے سردار کو سجدہ کرتے ہیں اور آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ان کے مقابلہ میں اس بات کے زیادہ حقدار ہیں کہ ہم آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو سجدہ کریں آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے پوچھا بھلا کیا تو جب میری قبر پر آئے گا تو سجدہ کرے گا؟ میں نے کہا نہیں۔ تو آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا۔ (تو پھر زندگی میں بھی کسی کو سجدہ نہ کرو) (آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے مزید فرمایا) اگر میں کسی کے لئے سجدہ کا حکم دیتا تو عورتوں کو حکم دیتا کہ وہ اپنے شوہروں کو سجدہ کیا کریں۔ اس حق کی بنا پر جو اللہ تعالیٰ نے ان پر مقرر کیا ہے۔
[سنن ابوداؤد:جلد دوم:حدیث نمبر 376 (16994) - نکاح کا بیان : عورت پر شوہر کا حق کیا ہے]


مومن کی عظمت
عَنْ عَبْدِ اﷲِ بْنِ عُمَرَ قَالَ: رَأَيْتُ رَسُولَ اﷲِ صلی الله عليه وآله وسلم يَطُوفُ بِالْکَعْبَةِ، وَيَقُولُ: مَا أَطْيَبَکِ وَأَطْيَبَ رِيحَکِ، مَا أَعْظَمَکِ وَأَعْظَمَ حُرْمَتَکِ، وَالَّذِي نَفْسُ مُحَمَّدٍ بِيَدِهِ، لَحُرْمَةُ الْمُوْمِنِ أَعْظَمُ عِنْدَ اﷲِ حُرْمَةً مِنْکِ مَالِهِ وَدَمِهِ، وَأَنْ نَظُنَّ بِهِ إِلَّا خَيْرًا.
’’حضرت عبد اللہ بن عمر رضی اﷲ عنھما سے مروی ہے کہ انہوں نے حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو خانہ کعبہ کا طواف کرتے دیکھا اور یہ فرماتے سنا: (اے کعبہ!) تو کتنا عمدہ ہے اور تیری خوشبو کتنی پیاری ہے، تو کتنا عظیم المرتبت ہے اور تیری حرمت کتنی زیادہ ہے، قسم ہے اس ذات کی جس کے ہاتھ میں محمد کی جان ہے! مومن کے جان و مال کی حرمت اﷲ کے نزدیک تیری حرمت سے زیادہ ہے اور ہمیں مومن کے بارے میں نیک گمان ہی رکھنا چاہئے۔‘‘
  1. طبراني، مسند الشاميين، 2: 396، رقم: 1568
  2. منذري، الترغيب والترهيب، 3: 201، رقم: 3679



No comments:

Post a Comment