Wednesday, 3 July 2013

حدیث سوادِ اعظم کا صحیح ثبوت اور مفہوم

"السواد الاعظم" عربی زبان میں "سب سے عظیم جماعت" کو کہتے ہیں.[الصحاح للجوهري:١/٤٨٩]

تمہید : علماء حدیث و فقہ نے درج ذیل احادیث کی بنیاد پر اختلافات کے وقت جمہور علماء ((اہل السنّت والجماعت)) کے متفقہ راۓ ((اجماع)) کو راجح قرار دیا ہے، جیسے:
اصول حدیث : ائمہ حدیث نے اِس بات کی تصریح کی ہے کہ اگر کسی راوی کے بارے میں جرح اور تعدیل کے اقوال متعارض ہوں، تو ان میں ترجیح کے لئے علماء نے اوّلاً دو طریقے اختیار کئے ہیں، پہلا طریقہ جو کہ جرح و تعدیل کے دوسرے (فیصلہ کن) اصول کی حیثیت رکھتا ہے، اُسے علامہ خطیب بغدادی نے ’’الکفایۃ فی اصول الحدیث والروایۃ‘‘ میں یہ بیان کیا ہے کہ ’’ ایسے مواقع پر یہ دیکھا جائے گا کہ جارحین کی تعداد زیادہ ہے یا معدلین کی، جس کی طرف تعداد زیادہ ہوگی ، اُسی جانب کو اختیار کیا جائے گا ۔‘‘
اصول فقہ :  اکثر فقہاء کا کسی مسئلہ پر متفق ہونا حجتِ شرعی ہے۔ اسی طرح خلافت کے انعقاد کے لیے بھی پوری امت کا اجماع ضروری نہیں؛ بلکہ اکثر لوگوں کا متفق ہونا کافی ہے۔ اسی لیے فقہاء نے قاعدہ بنایا” لِلْأکْثَرِ حُکْمُ الْکُل “ (الفقہ الاسلامی وادلتہ۸/۲۶۲)

حدیث # 1
أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ عَلِيِّ بْنِ النَّضْرِ [ثقة]، أَخْبَرَنَا الْحُسَيْنُ بْنُ صَفْوَانَ الْبَرْذَعِيُّ [صدوق حسن الحديث] , قَالَ : حَدَّثَنَا جَعْفَرُ بْنُ مُحَمَّدِ بْنِ شَاكِرٍ الصَّائِغُ [ثقة عارف بالحديث] , قَالَ : حَدَّثَنَا خَالِدُ بْنُ يَزِيدَ الْقَرَنِيُّ [صدوق حسن الحديث] , قَالَ : حَدَّثَنَا مُعْتَمِرُ بْنُ سُلَيْمَانَ [ثقة] , عَنْ أَبِيهِ [ثقة] , عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ دِينَارٍ [ثقة] , عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عُمَرَ , قَالَ : قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ :" لا يَجْمَعُ اللَّهُ هَذِهِ الأُمَّةَ عَلَى ضَلالَةٍ أَبَدًا " . قَالَ : " يَدُ اللَّهِ مَعَ الْجَمَاعَةِ , فَاتَّبِعُوا السَوَادَ الأَعْظَمِ , فَإِنَّهُ مَنْ شَذَّ شَذَّ فِي النَّارِ " .
[شرح أصول اعتقاد أهل السنة والجماعة، لللالكائي (سنة الوفاة:418) » سياق ما روى عَنِ النبي صَلَّى الله عَلَيه وَسَلّمَ ...رقم الحديث: 135(154)]
خلاصة حكم المحدث :  سنده حسن (اس حدیث کی سند حسن یعنی اچھی ہے)
[شرح أصول اعتقاد أهل السنة والجماعة، لللالكائي (سنة الوفاة:418) » سياق ما روى عَنِ النبي صَلَّى الله عَلَيه وَسَلّمَ ...رقم الحديث: 154(1/106)، تحقیق: ڈاکٹر احمد سعید حمدان]

ترجمہ : حضرت عبداللہ بن عمرؓ رسول اللهؐ سے مروی ہیں کہ : " نہیں جمع (متفق) کرے گا اس (میری) امت کو کسی گمراہی پر کبھی"، (پھر) فرمایا : "الله کا ہاتھ (سایہ مدد) جماعت پر ہے، تو تم اتباع (پیروی) کرو سوادِ اعظم (سب سے عظیم جماعت) کی، بس جو اس سے علیحدہ ہوا وہ علیحدہ کیا جاۓ گا آگ (جہنم) میں (داخل کرنے کو).



امام حاکمؒ نے بھی اپنی سند سے اپنی کتاب "المستدرک:1 / 115-116" میں حضرت ابن عمرؓ کی یہ روایت دو طرق (طریقوں) سے نقل کی ہے اور دونوں کے بارے میں صحت سند کا رجحان تو ظاہر کیا ہے، فیصلہ نہیں کیا. اور حافظ ذہبیؒ نے سکوت (خاموشی جو نیم رضامندگی ہے) کیا ہے.


الراوي : عبدالله بن عمر | المحدث : ابن حجر العسقلاني | المصدر : موافقة الخبر الخبر
الصفحة أو الرقم: 1/109 | خلاصة حكم المحدث : غريب

 م طرف الحديثالصحابياسم الكتابأفقالعزوالمصنفسنة الوفاة
1لا يجمع الله أمتي على الضلالة يد الله على الجماعة اتبعوا السواد الأعظم من شذ شذ في النارعبد الله بن عمرحديث أبي نصر بن الشاه11---أبو نصر أحمد بن الحسن بن محمد بن الشاه330
2الله لا يجمع أمتي على ضلالة يد الله مع الجماعة ومن شذ شذ إلى النارعبد الله بن عمرالعلل الكبير للترمذي371597محمد بن عيسى الترمذي279
3الله لا يجمع أمة محمد صلى الله عليه وسلم على ضلالة يد الله مع الجماعة من شذ شذ إلى النارعبد الله بن عمرجامع الترمذي20942167محمد بن عيسى الترمذي256
4ما كان الله ليجمع هذه الأمة على الضلالة أبدا يد الله على الجماعة عليكم بسواد الأعظم من شذ شذ في النارعبد الله بن عمرالسنة لابن أبي عاصم6880ابن أبي عاصم287
5الله عز وجل لا يجمع أمتي على ضلالة يد الله على الجماعة من شذ شذ في النارعبد الله بن عمرالكني والأسماء للدولابي22571431أبو بشر الدولابي310
6لن تجتمع أمتي على الضلالة أبدا فعليكم بالجماعة فإن يد الله على الجماعةعبد الله بن عمرالمعجم الكبير للطبراني1346113623سليمان بن أحمد الطبراني360
7لا يجمع الله هذه الأمة على الضلالة أبدا يد الله على الجماعة من شذ شذ في النارعبد الله بن عمرالمستدرك على الصحيحين3581:115الحاكم النيسابوري405
8لا يجمع الله أمتي على الضلالة أبداعبد الله بن عمرالمستدرك على الصحيحين3591:115الحاكم النيسابوري405
9لن يجمع الله أمتي على ضلالة أبدا يد الله على الجماعة من شذ شذ في النارعبد الله بن عمرالمستدرك على الصحيحين3601:115الحاكم النيسابوري405
10لا يجمع الله هذه الأمة على الضلالة أبدا واتبعوا السواد الأعظم من شذ شذ في النارعبد الله بن عمرالمستدرك على الصحيحين3611:115الحاكم النيسابوري405
11لا يجمع الله هذه الأمة على الضلالة أبدا يد الله على الجماعة فاتبعوا السواد الأعظم من شذ شذ في النارعبد الله بن عمرالمستدرك على الصحيحين3571:115الحاكم النيسابوري405
12لا يجمع الله أمتي على ضلالة أبدا يد الله على الجماعة فاتبعوا السواد الأعظم من شذ شذ في النارعبد الله بن عمرالمستدرك على الصحيحين3621:116الحاكم النيسابوري405
13الله لا يجمع أمتي على ضلالة أبدا يد الله على الجماعة من شذ شذ في النارعبد الله بن عمرالمستدرك على الصحيحين3631:116الحاكم النيسابوري405
14لا يجمع الله هذه الأمة على ضلالة أبدا يد الله مع الجماعة فاتبعوا السواد الأعظم من شذ شذ في النارعبد الله بن عمرشرح أصول اعتقاد أهل السنة والجماعة للالكائي135154هبة الله اللالكائي418
15لا يجمع الله تعالى هذه الأمة على ضلالة أبدا يد الله مع الجماعة واتبعوا السواد الأعظم من شذ شذ في النارعبد الله بن عمرحلية الأولياء لأبي نعيم31913193أبو نعيم الأصبهاني430
16لا يجمع الله أمتي على ضلالة أبدا يد الله على الجماعة اتبعوا السواد الأعظم فإن من شذ شذ في النارعبد الله بن عمرالسنن الواردة في الفتن للداني370368عثمان بن سعيد الداني444
17لا يجمع الله هذه الأمة على الضلالة أبدا يد الله على الجماعة من شذ شذ في النارعبد الله بن عمرالأسماء والصفات للبيهقي714701البيهقي458
18لا يجمع الله الأمة على ضلالة أبدا يد الله على الجماعة واتبعوا السواد الأعظم من شذ شذ في النارعبد الله بن عمرالفقيه والمتفقه للخطيب2671:160الخطيب البغدادي463
19لن يجمع الله أمتي على ضلالة يد الله على الجماعة من شذ شذ في النارعبد الله بن عمرالفقيه والمتفقه للخطيب2681:161الخطيب البغدادي463


رسول اور مومنین کی مخالفت کا عذاب:
وَمَن يُشاقِقِ الرَّسولَ مِن بَعدِ ما تَبَيَّنَ لَهُ الهُدىٰ وَيَتَّبِع غَيرَ سَبيلِ المُؤمِنينَ نُوَلِّهِ ما تَوَلّىٰ وَنُصلِهِ جَهَنَّمَ ۖ وَساءَت مَصيرًا {4:115}
اور جو کوئی مخالفت کرے رسول کی جبکہ کھل چکی اس پر سیدھی راہ اور چلے سب مسلمانوں کے رستہ کے خلاف تو ہم حوالہ کریں گے اس کو وہی طرف جو اس نے اختیار کی اور ڈالیں گے ہم اس کو دوزخ میں اور وہ بہت بری جگہ پہنچا [۱۷۲]
And whosoever opposeth the apostle after the truth hath become manifest unto him, and followeth other way than that of the believers, We shall let him follow that to which he hath turned, and shall roast him in Hell - an evil retreat!
یعنی جب کسی کو حق بات واضح ہو چکے پھر اس کے بعد بھی رسول کے حکم کی مخالفت کرے اور سب مسلمانوں کو چھوڑ کر اپنی جُدی راہ اختیار کرے تو اس کا ٹھکانہ جہنم ہے جیسا کہ اس چور نے کیا جس کا ذکر ہو چکا بجائے اس کے کہ قصور کا اعتراف کر کے توبہ کرتا یہ کیا کہ ہاتھ کٹنے کے خوف سے بھاگ گیا اور مشرکین میں مل گیا۔ {فائدہ} اکابر علماء نے اس آیت سے یہ مسئلہ بھی نکالا کہ اجماع امت کا مخالف اور منکر جہنمی ہے یعنی اجماع امت کو ماننا فرض ہے۔ حدیث میں وارد ہے کہ اللہ کا ہاتھ ہے مسلمانوں کی جماعت پر جس نے جُدی راہ اختیار کی وہ دوزخ میں جا پڑا۔


==============================================
إختلاف كا حل :
حدیث # 2
حَدَّثَنَا الْعَبَّاسُ بْنُ عُثْمَانَ الدِّمَشْقِيُّ , حَدَّثَنَا الْوَلِيدُ بْنُ مُسْلِمٍ , حَدَّثَنَا مُعَانُ بْنُ رِفَاعَةَ السَّلَامِيُّ , حَدَّثَنِي أَبُو خَلَفٍ الْأَعْمَى , قَالَ : سَمِعْتُ أَنَسَ بْنَ مَالِكٍ , يَقُولُ : سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ , يَقُولُ : " إِنَّ أُمَّتِي لَنْ تَجْتَمِعُ عَلَى ضَلَالَةٍ , فَإِذَا رَأَيْتُمُ اخْتِلَافًا فَعَلَيْكُمْ بِالسَّوَادِ الْأَعْظَمِ ".
[سنن ابن ماجه (سنة الوفاة:275) : کتاب الفتن، باب السواد الاعظم ... رقم الحديث: 3948(3950)]
حضرت انس بن مالکؓ سے بھی مروی ہے کہ رسول اللهؐ نے فرمایا "میری امت کسی گمراہی پر جمع (متفق) نہیں ہوگی، بس جب تم (لوگوں میں) اختلاف دیکھو تو سوادِ اعظم (سب سے عظیم جماعت) کو لازم پکڑلو (یعنی اس کی اتباع کرو)".

الراوي : أنس بن مالك | المحدث : ابن حجر العسقلاني | المصدر : موافقة الخبر الخبر
الصفحة أو الرقم: 1/113 | خلاصة حكم المحدث : غريب

 م طرف الحديثالصحابياسم الكتابأفقالعزوالمصنفسنة الوفاة
1أمتي لن تجتمع على ضلالة إذا رأيتم الاختلاف فعليكم بالسواد الأعظمأنس بن مالكمسند عبد بن حميد12281220عبد بن حميد249
2أمتي لا تجتمع على ضلالة إذا رأيتم الاختلاف فعليكم بالسواد الأعظمأنس بن مالكالثالث من حديث أبي العباس الأصم5---محمد بن يعقوب الأصم346
3أمتي لن تجتمع على ضلالة إذا رأيتم اختلافا فعليكم بالسواد الأعظمأنس بن مالكسنن ابن ماجه39483950ابن ماجة القزويني275
4إذا رأيتم الاختلاف فعليكم بالسواد الأعظم لا تجتمع أمتي على ضلالةأنس بن مالكالكني والأسماء للدولابي1372937أبو بشر الدولابي310
5أمتي لا يجتمعون على ضلالة إذا رأيتم الاختلاف فعليكم بالسواد الأعظمأنس بن مالكمسند الشاميين للطبراني20552069سليمان بن أحمد الطبراني360
6أمتي لا تجتمع على الضلالةأنس بن مالكالكامل في ضعفاء الرجال40724 : 550أبو أحمد بن عدي الجرجاني365
7ستكون اختلافات إذا رأيتم ذلك فتمسكوا بالسواد الأعظم أمتي لن تجتمع على الضلالةأنس بن مالكالكامل في ضعفاء الرجال12272 : 274أبو أحمد بن عدي الجرجاني365
8أمتي لا تجتمع على ضلالة إذا رأيتم اختلافا فعليكم بالسواد الأعظمأنس بن مالكالإبانة الكبرى لابن بطة8888ابن بطة العكبري387
9أمتي لا تجتمع على الضلالة إذا رأيتم الاختلاف فعليكم بالسواد الأعظمأنس بن مالكشرح أصول اعتقاد أهل السنة والجماعة للالكائي134153هبة الله اللالكائي418
10لا تجتمع أمتي على ضلالة إذا رأيتم الاختلاف فعليكم بالسواد الأعظمأنس بن مالكالفقيه والمتفقه للخطيب2691:161الخطيب البغدادي463
11أمتي لا تجتمع على ضلالة إذا رأيتم الاختلاف فعليكم بالسواد الأعظمأنس بن مالكالفقيه والمتفقه للخطيب2701:161الخطيب البغدادي463
12أمتي لا يجتمعون على ضلالةأنس بن مالكالفقيه والمتفقه للخطيب2711:161الخطيب البغدادي463
13أمتي لن تجتمع على ضلالة إذا رأيتم الاختلاف فعليكم بالسواد الأعظمأنس بن مالكإتحاف الخيرة المهرة بزوائد المسانيد العشرة295399البوصيري840
14لا تجتمع أمتي على ضلالة إذا رأيتم الاختلاف فعليكم بسواد الأعظمأنس بن مالكتاريخ دمشق لابن عساكر2348059 : 7ابن عساكر الدمشقي571



نوٹ : اس حدیث میں یہ جملہ "جب تم (لوگوں میں) اختلاف دیکھو تو سوادِ اعظم (سب سے عظیم جماعت) کو لازم پکڑلو" حضرت انسؓ کی اس حدیث کے علاوہ (پہلی بیان کردہ) حدیث ابن عمرؓ میں اس طرح ہے کہ "تو اتباع (پیروی) کرو سوادِ اعظم (سب سے عظیم جماعت) کی، بس جو اس سے علیحدہ ہوا وہ علیحدہ کیا جاۓ گا آگ (جہنم) میں (داخل کرنے کو)".

شواهد:
حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ حُجْرٍ ، حَدَّثَنَا بَقِيَّةُ بْنُ الْوَلِيدِ ، عَنْ بَحِيرِ بْنِ سَعْدٍ ، عَنْ خَالِدِ بْنِ مَعْدَانَ ، عَنْ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ عَمْرٍو السُّلَمِيِّ ، عَنِالْعِرْبَاضِ بْنِ سَارِيَةَ ، قَالَ : وَعَظَنَا رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يَوْمًا بَعْدَ صَلَاةِ الْغَدَاةِ مَوْعِظَةً بَلِيغَةً ذَرَفَتْ مِنْهَا الْعُيُونُ وَوَجِلَتْ مِنْهَا الْقُلُوبُ ، فَقَالَ رَجُلٌ : إِنَّ هَذِهِ مَوْعِظَةُ مُوَدِّعٍ ، فَمَاذَا تَعْهَدُ إِلَيْنَا يَا رَسُولَ اللَّهِ ؟ قَالَ : " أُوصِيكُمْ بِتَقْوَى اللَّهِ ، وَالسَّمْعِ ، وَالطَّاعَةِ ، وَإِنْ عَبْدٌ حَبَشِيٌّ فَإِنَّهُ مَنْ يَعِشْ مِنْكُمْ يَرَى اخْتِلَافًا كَثِيرًا ، وَإِيَّاكُمْ وَمُحْدَثَاتِ الْأُمُورِ فَإِنَّهَا ضَلَالَةٌ ، فَمَنْ أَدْرَكَ ذَلِكَ مِنْكُمْ فَعَلَيْهِ بِسُنَّتِي وَسُنَّةِ الْخُلَفَاءِ الرَّاشِدِينَ الْمَهْدِيِّينَ ، عَضُّوا عَلَيْهَا بِالنَّوَاجِذِ " , قَالَ أَبُو عِيسَى : هَذَا حَدِيثٌ حَسَنٌ صَحِيحٌ.
[جامع الترمذي » كِتَاب الْعِلْمِ » بَاب مَا جَاءَ فِي الْأَخْذِ بِالسُّنَّةِ وَاجْتِنَابِ ... رقم الحديث: 2619(2676)]
حضرت عرباض بن ساریہ (رضی الله عنہ) نے فرمایا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ایک روز ہمیں نماز پڑھائی پھر ہماری طرف متوجہ ہوئے اور ہمیں ایک بلیغ اور نصیحت بھرا وعظ فرمایا کہ جسے سن کر آنکھیں بہنے لگے اور قلوب اس سے ڈر گئے تو ایک کہنے والے نے کہا یا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم گویا کہ یہ رخصت کرنے والے کی نصیحت ہے۔ تو آپ ہمارے لیے کیا مقرر فرماتے ہیں فرمایا کہ میں تمہیں اللہ سے ڈرنے اور تقوی کی وصیت کرتا ہوں اور سننے کی اور ماننے کی اگرچہ ایک حبشی غلام تمہارا امیر ہو پس جو شخص تم میں سے میرے بعد زندہ رہے گا تو عنقریب وہ بہت زیادہ اختلافات دیکھے گا پس تم پر لازم ہے کہ تم میری سنت اور خلفائے راشدین میں جو ہدایت یافتہ ہیں کی سنت کو پکڑے رہو اور اسے نواجذ (ڈاڑھوں) سے محفوظ پکڑ کر رکھو اور دین میں نئے امور نکالنے سے بچتے رہو کیونکہ ہرنئی چیز بدعت ہے اور ہر بدعت گمراہی ہے۔
[سنن ابوداؤد:جلد سوم:حدیث نمبر ١٢١٩، سنت کا بیان :سنت کو لازم پکڑنے کا بیان]


تنبيه : یہاں پر اختلاف سے مراد خیر القرون (بہترین زمانوں) کے اصحابِؓ رسولؐ سے دین کی فقہ [سوره التوبہ : ١٢٢] جمع کرکے ظاہر کرنے والے ائمہ اربعہؒ (چار فقہ کے اماموں : امام ابوحنیفہؒ، امام مالکؒ، امام شافعیؒ اور امام احمدؒ بن حنبل) کے فقہی اختلاف نہیں، کیونکہ وہ قرآن و سنّت کے دلائل ہی پر مبنی مختلف احادیث کے سبب یا مختلف تفسیری و تشریحی، معانی و مطالب کے سبب یا جدید مسائل میں قرآن و سنّت میں حکم غیر واضح ہونے کے سبب بطور  اجتہادی (علمی) راۓ سے ظاہر کردہ مسائل میں ہر ایک کی اپنی اپنی خداداد دینی سمجھ (فقہ) کے مطابق کسی ایک بات کو راجح و مرجوح یا افضل و مفضول قرار دیے گئے فروعی اختلاف ہیں، وہ تو اتباع کے لائق صحابہ کرام [سورہ التوبہ:١٠٠] میں بھی تھے، جن جیسا ایمان لانے کو الله حکم دے [سورہ البقرہ:١٣+١٣٧]، ایسے لوگوں کے اختلاف کو جو گمراہانہ کہے وہ دراصل الله عزوجل کے علم پر اعتراض کرتا اور اس کے حکم کو رد کرنے کی گمراہی میں مبتلا ہے. مزید اس کی تفصیلات جاننے کیلئے دیکھئے:
لیکن خیر القرون (بہترین زمانوں) کے بعد جن جماعتوں کا دین میں اختلاف، صحابہؓ و ائمہ اربعہؒ کی فقہی تشریحات اور ان کے اختلافات کے سوا نفس پرستی میں غالب نام نہاد مسلمانوں کا اختلاف اب تک کہ جمہور علماء کے خلاف چند نام نہاد اسکالرس / ڈاکٹرس / علماء کی اپنی نئی تشریح ہو تو وہ مردود ہے.  


سابقین اولین کے فضائل:
وَالسّٰبِقونَ الأَوَّلونَ مِنَ المُهٰجِرينَ وَالأَنصارِ وَالَّذينَ اتَّبَعوهُم بِإِحسٰنٍ رَضِىَ اللَّهُ عَنهُم وَرَضوا عَنهُ وَأَعَدَّ لَهُم جَنّٰتٍ تَجرى تَحتَهَا الأَنهٰرُ خٰلِدينَ فيها أَبَدًا ۚ ذٰلِكَ الفَوزُ العَظيمُ {9:100}
اور جو لوگ قدیم ہیں سب سے پہلے ہجرت کرنے والے اور مدد کرنے والے اور جو انکے پیرو ہوئے نیکی کے ساتھ اللہ راضی ہوا ان سے اور وہ راضی ہوئے اس سے اور تیار کر رکھے ہیں واسطے انکے باغ کہ بہتی ہیں نیچے ان کےنہریں رہا کریں انہی میں ہمیشہ یہی ہے بڑی کامیابی [۱۱۲]
And the Muhajirs and Ansar, the leaders and the first ones and those who followed them in well-doing, --well-pleased is Allah with them, and well pleased are they with Him, and He hath gotten ready for them Gardens where under the rivers flow, as abiders therein forever. That is the achievement supreme.
"اعراب مومنین" کے بعد مناسب معلوم ہوا کہ زعماء و اعیان مومنین کا کچھ ذکر کیا جائے۔ یعنی جن مہاجرین نے ہجرت میں سبقت و اولیت کا شرف حاصل کیا اور جن انصار نے نصرت و اعانت میں پہل کی غرض جن لوگوں نے قبول حق اور خدمت اسلام میں جس قدر آگے بڑھ بڑھ کر حصے لئے پھر جو لوگ نیکوکاری اور حسن نیت سے ان پیش روان اسلام کی پیروی کرتے رہے ان سب کو درجہ بدرجہ خدا کی خوشنودی اور حقیقی کامیابی حاصل ہو چکی۔ جیسےانہوں نے پوری خوش دلی اور انشراح قلب کے ساتھ حق تعالیٰ کے احکام تشریعی اور قضاء تکوینی کے سامنے گردنیں جھکا دیں اسی طرح خدا نے ان کو اپنی رضاء و خوشنودی کا پروانہ دے کر غیر محدود انعام و اکرام سے سرفراز فرمایا۔ (تنبیہ) مفسرین سلف کے اقوال { اَلسَّابِقُوْنَ الْاَوَّلُوْنَ } کے تعین میں مختلف ہیں بعض نے کہا ہے کہ وہ مہاجرین و انصار مراد ہیں جو ہجرت سے پہلے مشرف با سلام ہوئے۔ بعض کے نزدیک وہ مراد ہیں جنہوں نے دونوں قبلوں (کعبہ و بیت المقدس) کی طرف نماز پڑھی۔بعض کہتے ہیں کہ جنگ بدر تک کے مسلمان "سابقین اولین" ہیں۔ بعض حدیبیہ تک اسلام لانے والوں کو اس کا مصداق قرار دیتے ہیں اور بعض مفسرین کی رائے ہے کہ تمام مہاجرین و انصار اطراف کے مسلمانوں اور پیچھے آنے والی نسلوں کے اعتبار سے "سابقین اولین" ہیں۔ ہمارے نزدیک ان اقوال میں چنداں تعارض نہیں "سبقت" و "اولیت" اضافی چیزیں ہیں۔ ایک ہی شخص یا جماعت کسی کے اعتبار سے سابق اور دوسرے کی نسبت سے لاحق بن سکتی ہے ۔ جیسا کہ ہم نے "فائدہ" میں اشارہ کیا۔ جو شخص یا جماعت جس درجہ میں سابق و اول ہو گی اسی قدر رضائے الہٰی اور حقیقی کامیابی سے حصہ پائے گی۔ کیونکہ سبقت و اولیت کی طرح رضاء و کامیابی کے بھی مدارج بہت سے ہو سکتے ہیں۔ واللہ اعلم۔

دینی سمجھ کا حصول بعض لوگوں پر فرض کیوں ہے:
وَما كانَ المُؤمِنونَ لِيَنفِروا كافَّةً ۚ فَلَولا نَفَرَ مِن كُلِّ فِرقَةٍ مِنهُم طائِفَةٌ لِيَتَفَقَّهوا فِى الدّينِ وَلِيُنذِروا قَومَهُم إِذا رَجَعوا إِلَيهِم لَعَلَّهُم يَحذَرونَ {9:122}
اور ایسے تو نہیں مسلمان کہ کوچ کریں سارے سو کیوں نہ نکلا ہر فرقہ میں سے ان کا ایک حصہ تاکہ سمجھ پیدا کریں دین میں اور تاکہ خبر پہنچائیں اپنی قوم کو جب کہ لوٹ کر آئیں ان کی طرف تاکہ وہ بچتے رہیں [۱۴۳]
And it is not for the believers to march forth all together. So why should not a band from each party of them march forth so that they may gain understanding in religion and that when they come back unto them, haply they might warn their people when they come back unto them, haply they may beware!
گذشتہ رکوعات میں "جہاد" میں نکلنے کی فضیلت اور نہ نکلنے پر ملامت تھی۔ ممکن تھا کوئی یہ سمجھ بیٹھے کہ ہمیشہ ہر جہاد میں تمام مسلمانوں پر نکلنا فرض عین ہے اس آیت میں فرما دیا کہ نہ ہمیشہ یہ ضروری ہے ، نہ مصلحت ہے کہ سب مسلمان ایک دم جہاد کے لئے نکل کھڑے ہوں مناسب یہ ہے کہ ہر قبیلہ اور قوم میں سے ایک جماعت نکلے ، باقی لوگ دوسری ضروریات میں مشغول ہوں۔اب اگر نبی کریم بنفس نفیس جہاد کے لئے تشریف لے جارہے ہوں تو ہر قوم میں سے جو جماعت آپ کے ہمراہ نکلے گی وہ حضور کی صحبت میں رہ کر اور سینکڑوں حوادث و واقعات میں سے گذر کر دین اور احکام دینیہ کی سمجھ حاصل کرے گی اور واپس آ کر اپنی باقی ماندہ قوم کو مزید علم و تجربہ کی بناء پر بھلے برے سے آگاہ کرے گی اور فرض کیجئے اگر حضور خود مدینہ میں رونق افروز رہے تو باقی ماندہ لوگ جو جہاد میں نہیں گئے حضور کی خدمت سے مستفید ہو کر دین کی باتیں سیکھیں گے۔ اور مجاہدین کی غیبت میں جو وحی و معرفت کی باتیں سنیں گے ان سے واپسی کے بعد مجاہدین کو خبردار کریں گے۔ آیت کےالفاظ میں عربی ترکیب کے اعتبار سے دونوں احتمال ہیں۔ کما "فی روح المعانی" وغیرہ۔ حضرت شاہ صاحبؒ لکھتے ہیں کہ "ہر قوم میں سے چاہئے بعضے لوگ پیغمبر کی صحبت میں رہیں تا علم دین سیکھیں اور پچھلوں کو سکھائیں۔ اب پیغمبر اس دنیا میں موجود نہیں لیکن علم دین اور علماء موجود ہیں۔ طلب علم فرض کفایہ ہے اور جہاد بھی فرض کفایہ ہے۔ البتہ اگر کسی وقت امام کی طرف سے نفیر عام ہو جائے تو "فرض عین" ہو جاتا ہے۔ تبوک میں یہ ہی صورت تھی اس لئے پیچھے رہنے والوں سے بازپرس ہوئی۔ واللہ اعلم۔ ابو حیان کے نزدیک یہ آیت جہاد کے لئے نہیں، طلب علم کے بارہ میں ہے۔ جہاد اور طلب علم کی آیات میں مناسبت یہ ہے کہ دونوں میں خروج فی سبیل اللہ ہے اور دونوں کی غرض احیاء و اعلائے دین ہے۔ ایک میں تلوار سے دوسرے میں زبان وغیرہ سے۔

کیوںکہ نظامِ عالم میں جس کام کی جو اہمیت وفضیلت ہے اسے اتنا ہی وقت وتوجہ درکار ہے، اس لیے ہر کام میں سب کو مہارت پانے کا حکم نہ دینا رحمت کا اظہار ہے۔ اور فقیہ(عالم)کے خبردار کرنے کا مقصد اس کی (دینی)خبر کی پیروی کرانا ہے جس میں پیروکار کیلئے نفس پرستی کا شائبہ نہیں رہتا۔ 
===========================================
حدیث # 3
حَدَّثَنَا الْعَبَّاسُ بْنُ الْفَضْلِ الأَسْفَاطِيُّ ، ثنا سَعِيدُ بْنُ سُلَيْمَانَ النَّشِيطِيُّ ، ثنا سَلْمُ بْنُ زُرَيْرٍ ، عَنْ أَبِي غَالِبٍ ، عَنْ أَبِي أُمَامَةَ ، قَالَ : سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، يَقُولُ : " افْتَرَقَتْ بَنُو إِسْرَائِيلَ عَلَى إِحْدَى وَسَبْعِينَ فِرْقَةً تَزِيدُ عَلَيْهَا أُمَّتِي فِرْقَةً كُلُّهَا فِي النَّارِ إِلا السَّوَادَ الأَعْظَمَ " .
[المعجم الكبير، للطبراني (سنة الوفاة:360) » بَابُ الصَّادِ » مَنِ اسْمُهُ الصَّعْبُ، رقم الحديث: 7975(8054)]


یھاں مسلم امت محمدیہ میں ہونے والے فرقوں میں مسلمانوں کا وہ فرقہ مراد  ہوگا جو الله کے رسولؐ اور ان کے صحابہؓ (ساتھیوں) کے طریقہ پر ہوگا، چناچہ چار صحابہ کرام (١) حضرت ابو درداءؓ (٢) حضرت انسؓ (٣) حضرت واثلہ بن اسقعؓ اور (٤) حضرت ابوامامہؓ سے مروی ہے کہ انہوں نے رسول اللهؐ سے دریافت فرمایا :


" ذَرُوا الْمِرَاءَ ، فَإِنَّ بَنِي إِسْرَائِيلَ افْتَرَقُوا عَلَى إِحْدَى وَسَبْعِينَ فِرْقَةً ، وَالنَّصَارَى عَلَى ثِنْتَيْنِ وَسَبْعِينَ فِرْقَةً كُلُّهُمْ عَلَى الضَّلالَةِ إِلا السَّوَادَ الأَعْظَمَ " ، قَالُوا : يَا رَسُولَ اللَّهِ ، وَمَنِ السَّوَادُ الأَعْظَمُ ؟ قَالَ : " مَنْ كَانَ عَلَى مَا أَنَا عَلَيْهِ ، وَأَصْحَابِي مَنْ لَمْ يُمَارِ فِي دِينِ اللَّهِ ، وَمَنْ لَمْ يُكَفِّرْ أَحَدًا مِنْ أَهْلِ التَّوْحِيدِ بِذَنْبٍ غُفِرَ لَهُ " .
[المعجم الكبير ، للطبراني (سنة الوفاة:360) » بَابُ الصَّادِ » مَنِ اسْمُهُ الصَّعْبُ » صُدَيُّ بْنُ الْعَجْلانِ أَبُو أُمَامَةَ الْبَاهِلِيُّ ...رقم الحديث: 7551 وقال الأرنؤؤط: إسناده حسن.]
بیشک بنی اسرائیل اکہتر (٧١) فرقوں میں بٹ گئے، اور نصاریٰ (عیسائی) بہتر (٧٢) فرقوں میں بٹ گئے سب گمراہی پر ہیں سواۓ سواد اعظم کے، پوچھا گیا: اے الله کے رسولؐ! اور سواد اعظم کیا ہے؟ تو آپ نے فرمایا : "وہ لوگ جو میرے اور میرے صحابہ کے طریقہ پر ہوں".

الراوي : أبو أمامة الباهلي | المحدث : الهيثمي | المصدر : مجمع الزوائد
الصفحة أو الرقم: 6/236 | خلاصة حكم المحدث : رجاله ثقات
[مجمع الزوائد : کتاب العلم ، باب ما جاء في المرء، 704 (1/156)
مجمع الزوائد : كتاب الفتن ، باب افتراق الأمم ، 12096+12099(7/258)]


تخريج الحديث
 م طرف الحديثالصحابياسم الكتابأفقالعزوالمصنفسنة الوفاة
1تفرقت بنو إسرائيل على إحدى وسبعين فرقة كلها في النار إلا السواد الأعظمصدي بن عجلانالمطالب العالية بزوائد المسانيد الثمانية لابن حجر30602974ابن حجر العسقلاني852
2تفرقت بنو إسرائيل على إحدى وسبعين فرقة كلها في النار إلا السواد الأعظمصدي بن عجلانبغية الباحث عن زوائد مسند الحارث704704الهيثمي807
3افترقت بنو إسرائيل على واحدة وسبعين فرقة تزيد هذه الأمة فرقة واحدة كلها في النار إلا السواد الأعظمصدي بن عجلانمصنف ابن أبي شيبة3718938888ابن ابي شيبة235
4تفرقت بنو إسرائيل على إحدى وسبعين فرقة تفرقت النصارى على اثنين وسبعين فرقة أمتي تزيد عليهم فرقة كلها في النار إلا السواد الأعظمصدي بن عجلانالمعجم الأوسط للطبراني73897202سليمان بن أحمد الطبراني360
5بني إسرائيل تفرقت إحدى وسبعين فرقة أو قال اثنتين وسبعين فرقة هذه الأمة ستزيد عليهم فرقة كلها في النار إلا السواد الأعظمصدي بن عجلانالمعجم الكبير للطبراني79588035سليمان بن أحمد الطبراني360
6اختلفت اليهود على إحدى وسبعين فرقة سبعين من النار وواحدة في الجنة اختلفت النصارى على اثنتين وسبعين فرقة إحدى وسبعون فرقة في النار وواحدة في الجنة تختلف هذه الأمة على ثلاث وسبعين فرقة اثنتان وسبعون في النار وواحدة في الجنة فقلنا انعتهم لنا قال السواد الأصدي بن عجلانالمعجم الكبير للطبراني79738051سليمان بن أحمد الطبراني360
7تفرقت بنو إسرائيل على ثنتين وسبعين فرقة ستفترق هذه الأمة على ما تفرقت عليه بنو إسرائيل تزيد فرقة كلها في النار إلا السوادصدي بن عجلانالمعجم الكبير للطبراني79748053سليمان بن أحمد الطبراني360
8افترقت بنو إسرائيل على إحدى وسبعين فرقة تزيد عليها أمتي فرقة كلها في النار إلا السواد الأعظمصدي بن عجلانالمعجم الكبير للطبراني79758054سليمان بن أحمد الطبراني360
9افترقت بنو إسرائيل على إحدى وسبعين فرقة أو قال اثنتين وسبعين فرقة تزيد هذه الأمة فرقة واحدة كلها في النار إلا السواد الأعظمصدي بن عجلانالسنة لابن أبي عاصم5768ابن أبي عاصم287
10اختلف اليهود على إحدى وسبعين فرقة سبعون فرقة في النار وواحدة في الجنة اختلفت النصارى على اثنتين وسبعين فرقة واحدة وسبعون في النار وفرقة واحدة في الجنة تختلف هذه الأمة على ثلاث وسبعين فرقة اثنتان وسبعون في النار وواحدة في الجنةصدي بن عجلانشرح أصول اعتقاد أهل السنة والجماعة للالكائي132151هبة الله اللالكائي418
11تفرقت بنو إسرائيل على إحدى وسبعين أمتي تزيد عليها كلها في النار إلا السواد الأعظمصدي بن عجلانشرح أصول اعتقاد أهل السنة والجماعة للالكائي133152هبة الله اللالكائي418
12تفرقت بنو إسرائيل على سبعين فرقة فواحدة في الجنة وسائرها في النار لتزيدن هذه الأمة عليهم واحدة فواحدة في الجنة وسائرها في النار ما تأمرني فقال عليك بالسواد الأعظم قال فقلت في السواد الأعظم ما قد ترى السمع والطاعة خير من المعصية والفرقةصدي بن عجلانالسنن الواردة في الفتن للداني287285عثمان بن سعيد الداني444
13تفرقت بنو إسرائيل على سبعين فرقة فواحدة في الجنة وسائرها في النار لتزيد هذه الأمة عليهم واحدة فواحدة في الجنة وسائرها في النار ما تأمرنا قال عليك بالسواد الأعظم قال فقلت في السواد الأعظم ما قد ترى السمع والطاعة خير من الفرقة والمعصيةصدي بن عجلانأصول السنة230---محمد بن عبد الله بن أبي زمنين399
14تفرقت بنو إسرائيل على سبعين فرقة واحدة في الجنة وسائرها في النار لتزيدن عليهم هذه الأمة واحدة فواحدة في الجنة وسائرها في النار ما تأمرني قال عليك بالسواد الأعظم قال فقلت في السواد الأعظم ما قد ترى السمع والطاعة خير من الفرقة والمعصيةصدي بن عجلانتفسير القرآن العزيز5858ابن أبي زمنين الأندلسي399
15افترقت بنو إسرائيل على سبعين فرقة واحدة في الجنة وسائرهم في النار لتزيدن هذه الأمة عليهم واحدة تفترق على واحدة وسبعين فرقة واحدة في الجنة وسائرهم في النارصدي بن عجلانتفسير يحيى بن سلام219---يحيى بن سلام240
16تفرقت بنو إسرائيل على سبعين فرقة فرقة واحدة في الجنة وسائرها في النار لتفترقن هذه الأمة على إحدى وسبعين واحدة في الجنة وسائرهم في النارصدي بن عجلانتفسير يحيى بن سلام296---يحيى بن سلام240
17تفرقت بنو إسرائيل على اثنتين وسبعين فرقة ستفترق هذه الأمة على ما تفرقت عليه بنو إسرائيل تزيد فرقة كلها في النار إلا السواد الأعظمصدي بن عجلانأخبار أصبهان لأبي نعيم9661 : 339أبو نعيم الأصبهاني430
18تفترق هذه الأمة على ثنتين أو ثلاث وسبعين فرقة في النار ليست سواد الأعظمصدي بن عجلانتاريخ دمشق لابن عساكر1114712 : 366ابن عساكر الدمشقي571
19افترقت بنو إسرائيل على إحدى وسبعين فرقة أو ثنتين وسبعين فرقة هذه الأمة ستزيد عليهم فرقة كلهم في النار إلا فرقة واحدة غير السواد الأعظمصدي بن عجلانتاريخ دمشق لابن عساكر2348224 : 52ابن عساكر الدمشقي571

نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے اس روایت میں فرقہ ناجیہ کی صفت بیان کی کہ وہ "جماعت" ہے، جسکا مطلب ہے جس بات پر مسلمان علماء کا اجماع ہو، جیسے کہ کچھ روایات میں "سوادِ اعظم"کا وصف آیا ہے، جیسے کہ ابو امامہ کی روایت ابن ابی عاصم کی کتاب " السنَّة " ( 1 / 34 ) اور طبرانی کی " المعجم الكبير " ( 8 / 321 ) میں حسن لغیرہ سند کے ساتھ موجود ہے۔

اس کا یہ مضمون کہ "وہ لوگ جو میرے اور میرے صحابہ کے طریقہ پر ہوں" دوسری قوی (مضبوط) اور صحیح سند کی حدیث سے بطورِ شواہد ثابت ہے، لہذا اس صحیح وثابت شدہ نبویؐ مضمون و تفسیر کو بقیہ ائمہ وعلماء کی تشریحات بالراۓ سے اولیت و افضلیت میں کوئی شبہ نہیں رہنا چاہیے۔
اور اس اصول کو اپنایا جاۓ تو بہت سے مسائل خود بخود حل ہوجائیں اور بہت سے فرقے مٹ جائیں، لیکن عوام تو عوام یہاں تو خواص نے بھی اس اصول کو نظر انداز کردیا اور اپنا یا اپنے فرقہ کا تراشیدہ اصول کو رہنما بنایا، جس سے مسائل سلجھنے کی بجاۓ الجھ گئے اور فساد و بگاڑ  کا ختم نہ ہونے والا سلسلہ شروع ہوا.
========================================
حدیث # 4
حَدَّثَنَا أَبُو النَّضْرِ ، حَدَّثَنَا الْحَشْرَجُ بْنُ نُبَاتَةَ الْعَبْسِيُّ كُوفِيٌّ ، حَدَّثَنِي سَعِيدُ بْنُ جُمْهَانَ ، قَالَ : أَتَيتُ عَبْدَ اللَّهِ بْنَ أَبِي أَوْفَى وَهُوَ مَحْجُوبُ الْبَصَرِ ، فَسَلَّمْتُ عَلَيْهِ ، قَالَ لِي : مَنْ أَنْتَ ؟ فَقُلْتُ : أَنَا سَعِيدُ بْنُ جُمْهَانَ ، قَالَ : فَمَا فَعَلَ وَالِدُكَ ؟ قَالَ : قُلْتُ : قَتَلَتْهُ الْأَزَارِقَةُ ، قَالَ : لَعَنَ اللَّهُ الْأَزَارِقَةَ ، لَعَنَ اللَّهُ الْأَزَارِقَةَ ، حَدَّثَنَا رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَنَّهُمْ كِلَابُ النَّارِ ، قَالَ : قُلْتُ : الْأَزَارِقَةُ وَحْدَهُمْ ، أَمْ الْخَوَارِجُ كُلُّهَا ؟ قَالَ : بَل الْخَوَارِجُ كُلُّهَا ، قَالَ : قُلْتُ : فَإِنَّ السُّلْطَانَ يَظْلِمُ النَّاسَ ، وَيَفْعَلُ بِهِمْ ، قَالَ : فَتَنَاوَلَ يَدِي ، فَغَمَزَهَا بِيَدِهِ غَمْزَةً شَدِيدَةً ، ثُمَّ قَالَ : وَيْحَكَ يَا ابْنَ جُمْهَانَ ، عَلَيْكَ بِالسَّوَادِ الْأَعْظَمِ ، عَلَيْكَ بِالسَّوَادِ الْأَعْظَمِ ، إِنْ كَانَ السُّلْطَانُ يَسْمَعُ مِنْكَ ، فَأْتِهِ فِي بَيْتِهِ ، فَأَخْبِرْهُ بِمَا تَعْلَمُ ، فَإِنْ قَبِلَ مِنْكَ ، وَإِلَّا فَدَعْهُ ، فَإِنَّكَ لَسْتَ بِأَعْلَمَ مِنْهُ .
[مسند أحمد بن حنبل » مُسْنَدُ الْعَشَرَةِ الْمُبَشَّرِينَ بِالْجَنَّةِ ... » تتمة مسند الكوفيين » حَدِيثُ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ أَبِي أَوْفَى رقم الحديث: 18981(18922)]
سعید بن جمہان رحمتہ اللہ علیہ کہتے ہیں کہ ایک مرتبہ میں حضرت ابن ابی اوفیٰ رضی اللہ عنہ کی خدمت میں حاضر ہوا اس وقت تک ان کی بینائی ختم ہوچکی تھی انہوں نے مجھ سے پوچھا کہ تم کون ہو؟ میں نے بتایا کہ میں سعید بن جمہان ہوں ، انہوں نے پوچھا کہ تمہارے والد صاحب کیسے ہیں ؟ میں نے عرض کیا کہ انہیں تو" ازارقہ " نے قتل کردیا ہے انہوں نے دو مرتبہ فرمایا ازارقہ پر لعنت الٰہی نازل ہو، نبی کریم ﷺ نے ہمیں بتایا ہے کہ وہ جہنم کے کتے ہیں ۔ میں نے ان سے پوچھا کہ اس سے صرف " ازارقہ " فرقے کے لوگ مراد ہیں یا تمام خوارج ہیں ؟ انہوں نے فرمایا تمام خوارج " مراد ہیں پھر میں نے عرض کیا بعض اوقات بادشاہ بھی عوام کے ساتھ ظلم اور نا انصافی وغیرہ کرتا ہے انہوں نے میرا ہاتھ زور سے دبایا اور بہت تیز چٹکی کاٹی اور فرمایا اے ابن جمہان ! تم پر افسوس ہے سواد اعظم کی پیروی کرو سواد اعظم کی پیروی کرو اگر بادشاہ تمہاری بات سنتا ہے تو اس کے گھر میں اس کے پاس جاؤ اور اس کے سامنے وہ ذکر کرو جو تم جانتے ہو اگر وہ قبول کرلے توبہت اچھا ورنہ تم اس سے بڑے عالم نہیں ہو۔ 


الراوي : عبد الله بن أبي أوفى | المحدث : الوادعي | المصدر : الفتاوى الحديثية
الصفحة أو الرقم: 1/427 | خلاصة حكم المحدث : حسن

الراوي : عبدالله بن أبي أوفى | المحدث : الوادعي | المصدر : الصحيح المسند
الصفحة أو الرقم: 542 | خلاصة حكم المحدث : حسن

الراوي : عبد الله بن أبي أوفى | المحدث : النخشبي | المصدر : تخريج الحنائيات
الصفحة أو الرقم: 2/1098 | خلاصة حكم المحدث : غريب

الراوي : عبدالله بن أبي أوفى | المحدث : الهيثمي | المصدر : مجمع الزوائد
الصفحة أو الرقم: 5/233 (6/235) | خلاصة حكم المحدث : رجاله ثقات

لہٰذا، اختلافی مسائل میں سوادِ اعظم (یعنی سب سے بڑی جماعت یعنی جمہور علماء) کی پیروی کرنے کو لازم بنایا جائے۔
------------------------------------------------------
حضرت شاہ ولی اللہؒ نے ائمہ اربعہؒ (چار فقہ کے اماموں : امام ابوحنیفہؒ، امام مالکؒ، امام شافعیؒ اور امام احمدؒ بن حنبل) کی اتباع کو سوادِ اعظم کی اتباع قرار دیا ہے: "ولما اندرست المذاهب الحقة إلاهذه الأربعة كان اتباعها اتباعا للسواد الأعظم والخروج عنها خروجا عن السواد الأعظم"(عقدالجید:۳۸)


ترجمہ: جب صرف چار مذاہب (مسالک) کے علاوہ دوسرے تمام مذاہب مٹ گئے تو ان مذاہب اربعہ کی اتباع کرنا سوادِ اعظم کی اتباع ہے اور ان مذاہب سے نکل جانا سوادِ اعظم سے نکل جانا ہے۔



علامہ ابن ہمامؒ : "انعقد الاجماع علی عدم العمل بالمذاهب"۔(عقد الجید:۳۸)

ترجمہ : ائمہ اربعہؒ کے علاوہ دوسرے تمام مخالف مذاہب (مسالک) پرعمل نہ کرنے پر اجماع منعقد ہوچکا ہے۔



حافظ الحدیث علامہ ابن حجرؒ نے لکھا ہے: "امافی زماننا فقال ائمتنا لایجوز تقلید غیرالائمة الاربع الشافعی ومالک وابی حنیفۃ واحمد بن حنبل"۔


ترجمہ: رہی ہمارے زمانے کی بات تو ہمارے ائمہؒ حضرات نے فرمایا کہ ائمہ اربعہؒ کے علاوہ کسی دوسرے کی تقلید کرنا جائز نہیں ہے، (جو) امام شافعیؒ، امام مالکؒ، امام ابوحنیفہؒ اور امام احمد بن حنبلؒ (ہیں)۔
==========================================
حدثنا عَلِيُّ بْنُ عَبْدِ الْعَزِيزِ ، ثنا ابْنُ الأَصْبَهَانِيِّ ، ثنا شَرِيكٌ ، عَنْ قَيْسِ بْنِ يَسِيرَ بْنِ عَمْرٍو ، عَنْ أَبِيهِ ، قَالَ : رَأَيْتُ أَبَا مَسْعُودٍ (عقبة بن عمرو بن ثعلبة) لَمَّا قُتِلَ عَلِيٌّ فَتَبِعْتُهُ ، فَقُلْتُ : أَنْشُدُكَ اللَّهَ مَا سَمِعْتَ مِنَ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فِي الْفِتَنِ ؟ فَقَالَ : "إِنَّا لا نَكْتُمُ شَيْئًا , عَلَيْكَ بِتَقْوَى اللَّهِ وَالْجَمَاعَةِ ، وَإِيَّاكَ وَالْفُرْقَةَ فَإِنَّهَا هِيَ الضَّلالُ وَإِنَّ اللَّهَ عَزَّ وَجَلَّ لَمْ يَكُنْ لِيَجْمَعَ أُمَّةَ مُحَمَّدٍ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَلَى ضَلالَةٍ".
[المعجم الكبير للطبراني » بَابُ التَّاءِ » مَنِ اسْمُهُ عُقَيْلٌ، رقم الحديث: 14106]
ترجمہ : حضرت ابو مسعود (عقبہ بن عمرو) رسول اللهؐ سے مروی ہیں : بیشک ہم نہیں چھپاتے کوئی شئ (اصول یا حکم) ، تو لازم پکڑ الله کی تقویٰ اور جماعت کو، اور فرقوں سے خبردار رہو، پس وہ گمراہی ہے اور بیشک الله عز وجل نہیں ہوگا جمع کرنے کو امت محمد صلی الله علیہ وسلم کو گمراہی پر. 
تخريج الحديث
 م طرف الحديثالصحابياسم الكتابأفقالعزوالمصنفسنة الوفاة
1عليكم باتقاء الله والجماعة الله لا يجمع هذه الأمة على الضلالة وعليكم بالصبر حتى يستريح بر ويستراح من فاجرقدامة بن عبد اللهالمستدرك على الصحيحين86434 : 502الحاكم النيسابوري405
2عليكم بطاعة الله وهذه الجماعة الله لا يجمع أمة محمد على ضلالة أبدا وعليكم بالصبر حتى يستريح بر ويستراح من فاجرقدامة بن عبد اللهالمستدرك على الصحيحين87704 : 549الحاكم النيسابوري405



4 comments:

  1. یعنی سواد اعظم سے مراد سب سے بڑی جماعت ہے
    پحر تو اس وقت دنیا میں سب سے بڑ جماعت عیساءیت ہے۔
    تو آپ کے ٰلما سو کے خود ساختہ فتویِ کے مطابق اس میں شامل ہو جاءیں
    سواد اعظم
    سے مراد
    بڑا شھر ، اکثریت اور غالب ہے۔
    فیروز اللغات
    ص 743
    غلبہ تو احناف کاکھیں بھی نہیں
    تعداد میں
    شافعی احناف سے زیادہ ہیں اور بڑا شہر نیو یارک ہے
    آپ غلبہ کسے سمجھتے ہیں اسی سے بات آگے چلے گی
    ہمارے نزدیک جس کی دلیل پختہ ہو وہی غالب ہے
    ہم دیں گے صرف صحیح حدیث
    اور قرآن
    یقیناً ان سے بڑی دلیل آپ کے پاس نہ ہو گی

    ReplyDelete
    Replies
    1. ١) اپنی غیر عالمانہ سمجھ سے ((عظیم جماعت)) کو آپ نے عیسائیت سمجھا ہے تو کیا اس حدیث پر عامل بنتے آپ خود عیسائی ہوۓ؟ صرف دوسروں کو عیسائی بننے کی دعوت دینا صرف احادیث میں شکوک پیدا کرتے رد کرنے کے سوا آپ کا کوئی مقصد ظاہر نہیں کرتا. یہاں خطاب و حکم مسلمانوں کو، ان کے درمیاں اختلافات پر ہے، یہودیوں و نصاریٰ (عیسائیوں) کے بعد اس امت (مسلمہ) میں فرقہ واریت پر سواد اعظم کی پیروی پر نبی نے یہ واضح تعلیم دی ہے، جس کو سمجھے بغیر یا جان بوجھ کر ناسمجھتے اپنے مسلکی مخالف کی اس دلیل کو مشکوک بنانے رد کرنے کو یہ غیر عالمانہ شیطانی وسوسے بیکار ہیں، کیونکہ ائمہ کا اختلاف، اختلاف صحابہ سے ماخوذ یا ان ہی کی طرح جدید مسائل میں اجتہادی دلائل پر مبنی تھا، اور اجتہادی مسائل میں صحیح فیصلہ پر دو اجر اور خطا پر ایک اجر کی بشارت خود نبی نے دی، اور اجر گناہ کے کام پر نہیں ملتا.

      چند جدید مسائل_اجتہادیہ؛ جن کا واضح حکم نہ قرآن میں ہے نہ حدیث میں:
      ١. ٹیلیفون کے ذریعے نکاح
      ٢. انتقال_خون(خون کا کسی مریض کو منتقل کرنا)
      ٣. اعضاء کی پیوند-کاری
      ٤. حالت_روزہ میں انجیکشن کا مسئلہ
      ٥. لاؤڈ-اسپیکر پر اذان کا مسئلہ
      ٦. ڈیجیٹل تصویر کا مسئلہ وغیرہ
      مزید اجتہادی اختلاف کی تفصیل جاننے کے لئے لنک دوبارہ حاضر ہے:
      http://urdubooklinks.blogspot.com/2012/12/blog-post_17.html

      یہ اختلاف نا اسلام و کفر کے مابین اختلاف کہلاۓ گا، اور نہ ہی سنّت و بدعت کا اختلاف کہلاتا ہے، یہ اختلاف دلائل پر مبنی مختلف سنّتوں یا غیر واضح حکم کو شریعت کے اصول (اجتہاد) سے مجتہد فقہاء و علماء کی علمی دلائل پر مبنی اپنی اپنی فقہی راۓ کا فروعی اختلاف ہے، جس کو علماۓ شافعیہ احناف پر یا علماۓ حنفیہ شافعیہ پر اختیار نہ کرنے پر (انکار اسلام سمجھتے) کافر کہتے ہیں اور نہ ہی (انکار سنت سمجھتے) گمراہ قرار دیتے ہیں.
      https://fbcdn-sphotos-c-a.akamaihd.net/hphotos-ak-ash4/s720x720/307810_290848964358031_1851076642_n.jpg

      ٢) عربی لفظ ((سواد اعظم)) کا ترجمہ عربی لغت کی بجاۓ اردو لغت کی کتاب ((فیروز اللغات)) سے کرنا ہی آپ کی عالمانہ حقیقت ظاہر کردیتی ہے.

      ٣) مسلک احناف کے رد میں پوسٹ کی احادیث کا رد کرنا آپ کی سمجھ اور دل میں احناف کیلئے حسد کو ظاہر کرتا ہے، ورنہ ان کی تعداد دنیا میں شافعیہ سے زیادہ نہ ہونا اظہر من الشمس ہے، اس وقت بھی پاکستان، بھارت، افغانستان، چینی ترکستان، وسطی ایشیا اور ترکی وغیرہ میں مسلمانوں کی غالب اکثریت حنفی فقہ پر کاربند ہے۔
      https://ur.wikipedia.org/wiki/%D8%AD%D9%86%D9%81%DB%8C#.D8.A2.D8.AC_.DA.A9.DB.92_.D8.AF.D9.88.D8.B1_.D9.85.DB.8C.DA.BA
      اور
      امت مسلمہ کی اکثریت مذاہب اربعہ کی مقلد ہوئی اور قبول عام انہی ائمہ اربعہ کے مسائل مستخرج کو حاصل ہوا۔ (اعلام الموقعین، امام ابن قیم :۱/۱۳۵۔۴۰)

      Delete
  2. neez ye k in char masalik main to halal haram ka farq mojud hay, ap k haan khoon beh jaye to wuzu gya, shafi aur hambli k haan aisa nahin, aik k haan tamam aisy janwr jin ki zindagi pani hay wo halal hain jb k dosray k haan jo machli mr kr pani ki satah pr aye wo haram, teesray k haan agr seedhi ho to halal warna haram, aik k haan teen talal chutti, baqi teeno k haan aik nishast ki lataadad talaqain bi aik, aik k haan dahi shoq se khaya jata hay dosroo k haan makroo tehreemi, aik k haan jangli gadha aur ghorra halal to baqio k haan haram, aik k haan nijaste ghaleeza ko zuban se chtna bhi pak krta hay, baqi isay qabeeh feyl kehty hain aur haram khori main shumar krty ain, ap ne latadaad zaeef ahadith apne blog pe laga kr ye tasur diya k barra ilam jhaar liya gya ab to log mutassir hongay, lekin kya aik hadith apko yaad nahin rahi k "jo cheez shuba main dal de usay chorr do". Allah se dariye aur sahih hadith k muqabla main zaeef riwayat pesh na kijiye.

    ReplyDelete

  3. ١) حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے فرمایا : کہ لوگوں سے وہی حدیث (بات) بیان کرو جس کو وہ سمجھ سکیں، کیا تم اس بات کو اچھا سمجھتے ہو کہ اللہ اور اس کے رسول کی تکذیب کی جائے؟[صحیح بخاری:جلد اول:حدیث نمبر 129- علم کا بیان :جس شخص نے ایک قوم کو چھوڑ کر دوسری قوم کو علم (کی تعلیم) کے لئے مخصوص کرلیا، یہ خیال کر کے کہ یہ لوگ بغیر تخصیص کے پورے طور پر نہ سمجھیں گے، تو اس مصلحت سے اس کا یہ فعل مستحسن ہے]اسی لئے علماء ایسی علمی احادیث جو صحیح بھی ہوں، جب کسی میں سمجھنے کی صلاحیت نہیں پاتے تو (بلا تفسیر) بیان نہیں کرتے، لیکن آج بعض حضرات اس حدیث کا مصداق بنتے علماء کا مقابلہ کرنے کی جرات کرتے اس وعید سے بے خوف ہو رہے ہیں:حضرت ابن عمر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے روایت کرتے ہیں جس نے اس لئے علم حاصل کرنا چاہا کہ بے وقوفوں سے تکرار کرے یا علم والوں کے مقابلہ میں اپنی بڑائی ظاہر کرے یا عوام کے قلوب اپنی طرف مائل کرے وہ دوزخ میں جائے گا۔[سنن ابن ماجه » كِتَاب ابْنُ مَاجَهْ » أَبْوَابُ فِي فَضَائِلِ أَصَحَابِ رَسُولِ اللَّهِ ...، رقم الحديث: ٢٥٥]
    https://fbcdn-sphotos-g-a.akamaihd.net/hphotos-ak-prn1/s720x720/66077_309735079136086_510037084_n.jpg

    ٢) اختلاف تو علماۓ حدیث میں بھی ہے بلا دلیل کسی حدیث کو صحیح/ضعیف کہتے کسی بات کو حلال/جائز اور کسی کو حرام/ناجائز کہتے ہیں، وہ بھلا کیوں ؟؟؟ آپ کسی ایک حدیث کا بھی صحیح/ضعیف ہونا کسی امام کے قول کی تقلید کرنے کے سوا صرف الله و رسول سے واضح ثابت نہ کیوں نہیں کرتے پاتے؟؟؟ پھر منافقت ایسی کہ خود اسی تقلید میں ڈوب کر مقلدوں کو جاہل و مشرک کہتے شرم نہیں آتی.http://urdubooklinks.blogspot.com/2012/11/ikhtilafaatahlhadees.html

    ٣) قرآن و حدیث کافی ہونے کے دعوا کے بعد اپنے فتاویٰ کی کتب لکھنے کی کیا ضرورت تھی؟؟؟ جس میں ضعیف حدیث کی قبولیت کا بلا دلیل یہ اصول بتایا :
    علماء نے ان کو اگرچہ ضعیف کہا لیکن اصول_حدیث میں یہ مقرر ہے کہ جب ایسی (یعنی ضعیف) حدیث کے طرق کثیرہ ہوں تو وہ حسن بلکہ صحیح ہوجاتی ہے. (فتاویٰ علماء حدیث : ٧/٧٠ ، كتاب الزكوة)

    امام ابو داود نے کہا : جس حدیث پر کہ میں اپنی کتاب میں سکوت کروں تو وہ احتجاج (حجت و دلیل ہونے) کی صلاحیت رکھتی ہے...(فتاویٰ علماۓ حدیث : ٧/٧٢ ، كتاب الزكوة)نوٹ : معلوم ہوا کہ علماۓ حدیث اپنی کتب میں جن احادیث کو شامل کرتے ہیں، وہ ان کے نزدیک لائق احتجاج ہوتی ہے.

    (وہ ہیں) جو اسناد کی حیثیت سے مردود ، معنا کے لحاظ سے مقبول ہیں (فتاویٰ علماۓ حدیث : ٧/٧٣ ، كتاب الزكوة)

    تلقی بالقبول:
    چونکہ علماء نے اس کو قبول کیا ہے، سو اس حدیث کو اسناد کے لحاظ سے مردود اور معنا کے حثیت سے قبول کیا ہے. (فتاویٰ علماۓ حدیث : ٧/٧٣، كتاب الزكوة)شوکانی نے کہا اہل_حدیث اس زیادت کے ضعف پر اتفاق کر چکے ہیں، لیکن اس کے مضمون میں اجماع واقع ہوچکا ہے. (فتاویٰ علماۓ حدیث : ٧/٧٣، كتاب الزكوة)
    http://3.bp.blogspot.com/-ZEZRjwP1pio/UQr_dtUA4ZI/AAAAAAAAD38/Q8ClvbAL0lg/s1600/Usool_Hadees=Ftawa+Ulamay+Hadees.jpg

    ٤) حنفی مسلک (راۓ) یہ ہے کہ سمندر میں مر جائے اس کا کھانا حلال نہیں جیسے کہ خشکی میں از خود مرے ہوئے جانور کا کھانا حلال نہیں کیونکہ قرآن نے اپنی موت آپ مرے ہوئے جانور کو آیت (حُرِّمَتْ عَلَيْكُمُ الْمَيْتَةُ وَالدَّمُ وَلَحْمُ الْخِنْزِيْرِ وَمَآ اُهِلَّ لِغَيْرِ اللّٰهِ بِهٖ ۔ الخ) 5۔ المائدہ:3) میں حرام کر ذیا ہے اور یہ عام ہے ، اور حضرت جابر سے حدیث ہے کہ جو تم شکار کر لو اور وہ زندہ ہو پھر مر جائے تو اسے کھا لو اور جسے پانی آپ ہی پھینک دے اور وہ مرا ہوا الٹا پڑا ہوا ہو اسے نہ کھاؤ.[عَنْ جَابِرِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ ، قَالَ : قَالَ رَسُولُ اللَّهِ ، صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ : " مَا صِدْتُمُوهُ وَهُوَ حَيٌّ فَمَاتَ فَكُلُوهُ , وَمَا أَلْقَى الْبَحْرُ مَيِّتًا طَافِيًا فَلا تَأْكُلُوهُ " .[أحكام القرآن، للجصاص (سنة الوفاة:370) » ومن سورة /65 البقرة /65 » باب تحريم الميتة، رقم الحديث: 42]

    ReplyDelete