Sunday, 12 October 2014

متعہ کی حقیقت


متعہ – یا مؤقت شادی – یہ ہے کہ کوئي شخص کسی عورت سے کچھ معین وقت کے لیے کچھ مال کے عوض شادی کرے ۔

صحیح مسلم۔ جلد:۲/ دوسرا پارہ/ حدیث نمبر:۳۴۱۰/ حدیث مرفوع
۳۴۱۰۔ حَدَّثَنَا أَبُو کَامِلٍ فُضَيْلُ بْنُ حُسَيْنٍ الْجَحْدَرِيُّ حَدَّثَنَا بِشْرٌ يَعْنِي ابْنَ مُفَضَّلٍ حَدَّثَنَا عُمَارَةُ بْنُ غَزِيَّةَ عَنِ الرَّبِيعِ بْنِ سَبْرَةَ أَنَّ أَبَاهُ غَزَا مَعَ رَسُولِ اللہِ صَلَّی اللہُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَتْحَ مَکَّةَ قَالَ فَأَقَمْنَا بِهَا خَمْسَ عَشْرَةَ ثَلَاثِينَ بَيْنَ لَيْلَةٍ وَيَوْمٍ فَأَذِنَ لَنَا رَسُولُ اللہِ صَلَّی اللہُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فِي مُتْعَةِ النِّسَاءِ فَخَرَجْتُ أَنَا وَرَجُلٌ مِنْ قَوْمِي وَلِي عَلَيْهِ فَضْلٌ فِي الْجَمَالِ وَهُوَ قَرِيبٌ مِنْ الدَّمَامَةِ مَعَ کُلِّ وَاحِدٍ مِنَّا بُرْدٌ فَبُرْدِي خَلَقٌ وَأَمَّا بُرْدُ ابْنِ عَمِّي فَبُرْدٌ جَدِيدٌ غَضٌّ حَتّٰی إِذَا کُنَّا بِأَسْفَلِ مَکَّةَ أَوْ بِأَعْلَاهَا فَتَلَقَّتْنَا فَتَاةٌ مِثْلُ الْبَکْرَةِ الْعَنَطْنَطَةِ فَقُلْنَا هَلْ لَکِ أَنْ يَسْتَمْتِعَ مِنْکِ أَحَدُنَا قَالَتْ وَمَاذَا تَبْذُلَانِ فَنَشَرَ کُلُّ وَاحِدٍ مِنَّا بُرْدَهٗ فَجَعَلَتْ تَنْظُرُ إِلَی الرَّجُلَيْنِ وَيَرَاهَا صَاحِبِي تَنْظُرُ إِلٰی عِطْفِهَا فَقَالَ إِنَّ بُرْدَ هٰذَا خَلَقٌ وَبُرْدِي جَدِيدٌ غَضٌّ فَتَقُولُ بُرْدُ هٰذَا لَا بَأْسَ بِهٖ ثَلَاثَ مِرَارٍ أَوْ مَرَّتَيْنِ ثُمَّ اسْتَمْتَعْتُ مِنْهَا فَلَمْ أَخْرُجْ حَتّٰی حَرَّمَهَا رَسُولُ اللہِ صَلَّی اللہُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ۔
۳۴۱۰۔ ابوکامل، فضیل ابن حسین جحدری، بشرابن مفضل، عمارہ بن غزیة، حضرت ربیع بن سبرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ ان کے والد نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ساتھ غزوہ فتح مکہ میں شرکت کی، انہوں نے کہا پس ہم نے مکہ میں پندرہ دن یعنی مکمل تیس دن رات  قیام کیا، تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ہمیں نکاح متعہ کی اجازت دی، پس میں اور میری قوم میں سے ایک آدمی نکلے اور میں خوبصورتی میں اس پر فضیلت کا حامل تھا اور وہ بدصورتی کے قریب تھا اور ہم میں سے ہر ایک کے پاس ایک ایک چادر نئی اور عمدہ تھی، جب ہم مکہ کے نیچے یا اونچے علاقے میں آئے تو ہمیں ایک عورت ملی جو کہ باکرہ، نوجوان اور لمبی گردن والی تھی، ہم نے اس سے کہا کیا تو ہم میں سے کسی ایک سے نکاح متعہ کر سکتی ہے؟ اس نے کہا: تم دونوں کیا بدل دو گے؟ ہر ایک نے چادر پھیلائی، پس اس نے دونوں آدمیوں کی طرف دیکھنا شروع کردیا اور میرا ساتھی اسے دیکھتا تھا، اس کے میلان طبع کے جانچنے کے لئے، اس نے کہا یہ چادر پرانی ہے اور میری چادر نئی اور عمدہ ہے، اس عورت نے دو یا تین مرتبہ کہا کہ اس چادر میں کوئی حرج نہیں، پھر میں نے اس سے نکاح متعہ کیا اور میں اس کے پاس سے اس وقت تک نہ آیا جب تک رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے اسے میرے لئے حرام نہ کردیا۔



شادی میں اصل تویہ ہے کہ اس میں استمرار اورہمیشگی ہو ، اورمؤقت شادی - یعنی متعہ – شروع اسلام میں مباح تھی لیکن بعد میں اسے حرام کردیا گیا اورقیامت تک یہ حرام ہی رہے گی ۔


اہل سنت و الجماعت کے نزدیک متعہ ناجائز اور حرام ہے۔(ہدایہ:۲/۲۹۲)

جبکہ شیعہ کے نزدیک متعہ صرف جائز ہی نہیں بلکہ باعث اجر و ثواب ہے.

شیعہ کے نزدیک متعہ (زنا) کی اہمیت:
متعہ کرنا جائز ہی نہیں بلکہ باعث اجر و ثواب ہے، جس نے ایک مرتبہ بھی متعہ (زنا) کرلیا وہ جنت میں داخل ہوگا۔
(تحفۃ العوام: لمفتی سید احمد علی صاحب قبلہ دام علیہ)

نیز متعہ کا اجر و ثواب اتنا ہے کہ جتنا نماز، روزہ ، زکوٰۃ، حج و خیرات میں بھی نہیں ہے۔(عمالۃ حسنۃ، ترجمہ رسالہ متعہ:۱۵، باقر مجلسی)

نیز متعہ کرنے والوں کے لئے فرشتوں کی دعاء اور متعہ نہ کرنے والوں کے لئے قیامت تک فرشتوں کی لعنت ہوتی رہتی ہے۔(برھان المتعہ:۵۱۔الحاج ابو القاسم)

نیز یہ کہ ایمان کامل نہیں جب تک متعہ نہ کرے۔(برھان المتعہ:۴۵)

جو چار مرتبہ متعہ (زنا) کرے وہ (معاذ اللہ) آپﷺ کے درجہ کو پہنچ جاتا ہے۔
(مطالبِ متعہ:۵۲) 

لیکن

اہل سنت و الجماعت قرآن و حدیث، اجماع اور قیاس سب سے اس کے ناجائز ہونے کو بیان کرتے ہیں، مثلاً:


اللہ سبحانہ وتعالی نے تو شادی کو اپنی نشانی قرار دیا ہے(سورة الروم:21) جو غوروفکر اور تدبر کی دعوت دیتی ہے، اور اللہ تعالی نے خاوند اور بیوی کے مابین مودت ومحبت اور رحمت پیدا کی ہے اور خاوند کے لیے بیوی کو سکون والی بنایا اور اولاد پیدا کرنے کی رغبت پیدا کی ہے، اور اسی طرح عورت کے لیے عدت اور وراثت بھی مقرر فرمائي ہے ، لیکن یہ سب کچھ اس حرام متعہ میں نہیں پایا جاتا ۔



رافضیوں کے ہاں – یہ شیعہ ہی ہیں جو متعہ کے جواز کے قائل ہیں – متعہ کی جانے والی عورت نہ تو بیوی ہے اورنہ ہی لونڈی ، اور جہاں تک حضور ﷺ سے اجازت متعہ کا تعلق ہے تو بے شک آغاز اسلام میں یہ بالکل جائز تھا اور اسے زیر عمل بھی لایا گیا۔ لیکن جن کتابوں سے اسکے جواز کا علم ہوا، وہی کتابیں بھی صراحت سے بتاتی ہیں کہ جنگ خیبر کے دوران حضور ﷺ نے ممانعت فرمادی تھی۔ جنگ خیبر غالباً ہجرت کے ساتویں سال ہوئی تھی۔اس موقع پر ممانعت کی حدیث بھی سیدنا علی کرم اللہ وجہہ سے مروی ہے اور بخاری، مسلم، ترمذی میں موجود ہے۔ اسکے بعد جب مکہ فتح ہوا تھا تو حضور ﷺ نے صرف تین دن کے لئے متعہ کی اجازت فرمائی تھی اور پھر ممانعت فرمادی تھی۔ ترمذی میں حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہ کی یہ روایت موجود ہے کہ جب قرآن کی مندرجہ آیت اتری متعہ قطعا ممنوع ٹہرا:


متعہ کی حرمت قرآن میں
قرآن میں ارشادِ باری تعالیٰ ہے:
وَالَّذِينَ هُمْ لِفُرُوجِهِمْ حَافِظُونَ o إِلَّا عَلَى أَزْوَاجِهِمْ أَوْ مَا مَلَكَتْ أَيْمَانُهُمْ فَإِنَّهُمْ غَيْرُ مَلُومِينَo (سورۂ مؤمنون:۵۔۶)

ترجمہ:   اور جو اپنی شرمگاہوں کی حفاظت کرتے ہیں، مگر اپنی بیوی یا جو ہاتھ کی ملکیت ہے تو ان پر کوئی ملامت نہیں۔


قرآن میں شہوت کو پورا کرنے کے لئے دو جگہ متعین ہے:

إِلَّا عَلَى أَزْوَاجِهِمْ أَوْ مَا مَلَكَتْ أَيْمَانُهُمْ۔
ترجمہ:   بیوی اور باندی


فَمَنِ ابْتَغٰى وَرَآءَ ذٰلِکَ فَأُوْلٰئِکَ هُمُ الْعَادُوْنَ(۔سورۃ المؤمنون ۷)
ترجمہ:  پس جو ان کے سوا چاہے تو وہی ہیں حد سے بڑھنے والے۔


یہی ایک فقرہ حرمت متعہ کے لئے ناقابل تردید سند ہے

تشریح: یعنی اپنی منکوحہ عورت یا باندی کے سواء کوئی اور راستہ قضائے شہوت کا ڈھونڈے، وہ حلال کی حد سے آگے نکل جانے والا ہے۔ اس میں زنا، لواطت اور استمناء بالید وغیرہ سب صورتیں آگئیں، بلک بعض مفسرین نے حرمت متعہ پر بھی اس سے استدلال کیا ہے وفیہ کلام طویل لایسعہ المقام۔ راجع روح المعانی تحت ہذہ الایۃ الکریمہ۔

یہ آیت قرآنیہ صریح طور پر یہ ثابت کرتی ہے کہ اہک مدت متعنیہ کے لئے کسی عورت کا بطور بیوی رکھ لینا جائز نہیں، کیونکہ تھوڑی سی مقررہ مدت کے لئے رکھی جانے والی عورت داشتہ ہوتی ہے ، بیوی نہیں۔ خود ام المونین ، افقہ الفقہاء سیدہ عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہا کا اس آیت سے متعہ کے خلاف تمسک حدیث میں ضروری ہے۔


ممتوعہ (متعہ والی عورت ) نہ تو بیوی کے حکم میں داخل ہے اور نہ لونڈی کے حکم میں .

لونڈی تو ظاہر ہے کہ نہیں . اور بیوی اس لئے نہیں کہ زوجیت کے لئے جتنے قرانی اور قانونی احکام ہیں ان میں سے کسی کا بھی ان پر اطلاق نہیں ہوتا ، نہ وہ مرد کی وارث ہوتی ہیں ، نہ مرد اس کا وارث ہوتا ہے ، نہ اس کے لئے عدّت ہے، نہ طلاق ، نہ نفقہ ، نہ آیلاو ، نہ ظہار ، بلکہ مقررہ چار بیویوں کی مقدار سے بھی وہ مستشنیٰ ہے پس جو بیوی اور لونڈی دونوں کی تعریف میں نہیں آتی وہ ان کے علاوہ کچھ اورمیں شمار ہوتی ہیں جس کے طالب کو قران حد سے گزرنے والا قرار دیتا ہے .

جہاں کہیں الله پاک نے زوجہ یا ازواج کا لفظ قران پاک میں استعمال کیا ہے اس کے معنی منکوحہ یا منکوحات کے علاوہ کچھ نہیں .

اے آدم تم اور تمہاری بیوی جنت میں رہو –(اعراف /١٩)

اے نبی صلی صلم اپنی عورتوں سے که دو (احزاب/٢٨ )

اے نبی صلم ہم نے اس عورت کو تیری زوجہ بنا دیا (احزاب/٣٧)

کہ اپنی ازواج میں سے تبدیل کرو ( احزاب/٥٢)

حضرت زکریا کے لئے ہم نے اس کی بیوی کو درست کیا ( الانبیاء /٩٠)

ان سب مثالوں سے صاف ظاہر ہوتا کہ زوجہ جس کا ذکر قران کریم میں آیا ہے اس کا اطلاق صرف منکوحہ پر ہی ہو سکتا ہے اور بس بیچاری ممتوعہ کسی طرح بھی ازواج کے زمرہ میں نہیں آتی

قران مجید نے چند لوازمات زوجیت کے لئے مقرّر کیے ہیں کہ جن میں بھی یہ لوازمات پاے جایئں گے وہ ( زوجہ ، بیوی یا منکوحہ ) میں شامل ہے اور جن میں نہیں پاے جاتے وہ غیر میں شامل ہے .

میراث

اور تمھارے لئے جو تمہاری بیویاں چھوڑیں اس کا نصف ہے ( نساء/١٢)

طلاق

ان کو اچھے طریقے سے روک لو ( بقرہ /٢٣١)

عدت

اور مدت عدت طلاق کی صورت میں تین حیض ہے ( بقرہ/٢٣٨)

نفقہ

نکاح کے بعد شوہر اپنی زوجہ کو خرچہ دینے کا ذمدار (نساء/٣٤)

گواہ

دو نیک عادل گواہ ضروری ہیں (طلاق/٢)

ایلا :

یعنی عورت کے پاس نہ جانے کی قسم کھا لینا اور کفارہ ادا کرنا

ظہار :

یعنی اپنی عورت کو ماں ، بہن کہ دینا اور نکاح میں کفارہ ادا کرنا

احصان:

مرد کا شادی شدہ ہوتے ہویے زنا وغیرہ کرنا اور سنگساری اور دوسری سزائیں ملنا .

نتیجہ یہ نکلا

کہ ازرویے اسلام زوجہ وہی ہے جس کے مذکورہ بالا احکام مراتب ہو سکیں جبمذکورہ بالا احکام کا ترتب صرف نکاح صحیح میں ہوتا ہے متعہ میں نہیں لهذه قاعدہ مشہور ہے جب کوئی شے ثابت ہوتی ہے تو وہ اپنے لوازم سے ہی ہوتی ہے اپنے لوازم مذکورہ سے نکاح تو ثابت ہو گیا لیکن متعہ میں تو نہ لوازم ہیں اور نہ ہی اسے نکاح حلال کہا جا سکتا ہے اس سے ثابت ہوا متعہ نکاح نہیں بلکہ زنا محض ہے

شیعہ روایات ملاحظه ہوں

اور امام جعفر ر.ح کا قول بھی ہے کہ ممتوعہ عورت زوجیت میں داخل نہیں

اعتقادات ابن با یویہ

امام جعفر سے روایت ہے متعہ کے متعلق فرمایا ممتوعہ عورت چار عورتوں میں سے نہیں یعنی زوجہ منکوحہ سے نہیں اور نہ وارث ہوگی اور سواے اس کے نہیں کہ مستاجرہ ہے . (فروع کافی )

دوم روایت امام باقر سے جس کے آخری الفاظ یہ ہیں : امام باقر نے فرمایا یہ ممتوعہ عورت زوجہ منکوحہ نہیں بلکہ یہ اجرت پر خریدی گئی ہے کہ اس سے جماع کیا جائے (فروع کافی )

فائدہ – امام جعفر اور امام باقر دونوں ممتوعہ کو زوجہ سے خارج فرما گئے ہیں جب آئمہ معصومین زوجہ منکوحہ سے ممتوعہ زن کو خارج فرمایئں تو علما کی کیا ہستی کہ وہ اسے زوجہ میں داخل کریں .

علاوہ ازیں امام رازی ر.ح ، حضرت نواب صدیق حسن ر.ح ، امام قرطبی ر.ح اسی آیت کی روشنی میں متعہ کی حرمت کو ثابت کرنا بتاتے ہیں .

ام المومنین حضرت عائشہ رضی الله عنہما اسی آیت کی بنا پر متعہ کو حرام قرار دیتی تھیں

نوٹ : زنا (متعہ ) کا جب دروازہ کھل گیا تو کوئی مستقل قاعدہ و قانون نہ رہا تو پھر کسی خاص مرد کو کسی خاص عورت سے کوئی خاص لگاو باقی نہ رہے گا جس کو جہاں موقع مل گیا اور جو کچھ کر گزرنا ہو ، کر گزرتا ہے ، اور یہی حال حیوانات کا ہے .

اوپر دی گئی قرانی آیت کو سامنے رکھتے ہویے اب تیری پیش کردہ آیت پر غور و فکر کرتے ہیں

الله پاک قران پاک میں فرماتے ہیں

وَالْمُحْصَنَاتُ مِنَ النِّسَاءِ إِلَّا مَا مَلَكَتْ أَيْمَانُكُمْ ۖ كِتَابَ اللَّهِ عَلَيْكُمْ ۚ وَأُحِلَّ لَكُمْ مَا وَرَاءَ ذَٰلِكُمْ أَنْ تَبْتَغُوا بِأَمْوَالِكُمْ مُحْصِنِينَ غَيْرَ مُسَافِحِينَ ۚ فَمَا اسْتَمْتَعْتُمْ بِهِ مِنْهُنَّ فَآتُوهُنَّ أُجُورَهُنَّ فَرِيضَةً ۚ وَلَا جُنَاحَ عَلَيْكُمْ فِيمَا تَرَاضَيْتُمْ بِهِ مِنْ بَعْدِ الْفَرِيضَةِ ۚ إِنَّ اللَّهَ كَانَ عَلِيمًا حَكِيمًا

اور شوہر والی عورتیں بھی (تم پر حرام ہیں) مگر وہ جو (اسیر ہو کر لونڈیوں کے طور پر) تمہارے قبضے میں آجائیں (یہ حکم) خدا نے تم کو لکھ دیا ہے اور ان (محرمات) کے سوا اور عورتیں تم کو حلال ہیں اس طرح سے کہ مال(مہر) خرچ کر کے ان سے نکاح کرلو بشرطیکہ (نکاح سے) مقصود عفت قائم رکھنا ہو نہ شہوت رانی تو جن عورتوں سے تم فائدہ حاصل کرو ان کا مہر جو مقرر کیا ہو ادا کردو اور اگر مقرر کرنے کے بعد آپس کی رضامندی سے مہر میں کمی بیشی کرلو تو تم پر کچھ گناہ نہیں بےشک خدا سب کچھ جاننے والا (اور) حکمت والا ہے

اس آیت پاک میں اس امر کی طرف توجہ دلائی جا رہی ہے کہ جن عورتوں سے نکاح حلال ہے(یعنی بیوی اور لونڈی کیونکہ نکاح جن سے ہوتا ہے قران پاک اس بارے میں فیصلہ دے چکا ہے) انھیں چند شرطوں کے بعد اپنے نکاح میں لا سکتے ہیں یعنی ان کے ساتھ شادی جائز ہے ان شرائط میں سے خاص طور پر

مُحْصِنِينَ غَيْرَ مُسَافِحِينَ

کے الفاظ متعہ کی حرمت کو بہت وضاحت کے ساتھ بیان کرتے ہیں

مُحْصِنِينَ.

یعنی جن عورتوں سے تم نکاح کرو تو اس کا مقصد محض وقتی اور عارضی نہ ہو بلکہ دائمی ہو ایسا نہ ہو کہ چند دن کی عیش کی نیت سے اس کے ساتھ شادی رچاؤ اور پھر چھوڑ دو یہ طریقہ غلط ہے جب تم نے اس کے ساتھ نکاح کیا تو شرط یہ ہے کہ اسے ہمیشہ بیوی بنا کر رکھو یہ الگ بات ہے کہ کسی وجہ سے آپس میں نااتفاقی ہو جائے اور طلاق کی نوبت آ جائے لیکن تم پہلے سے ایسی نیت نہ کرو

غَيْرَ مُسَافِحِينَ

تمہارا اس نکاح سے مقصد صرف مستی نکالنا نہ ہو یعنی محض شہوت اور خواہش پوری کرنے کی نیت نہ ہو جیسا کے زنا میں ہوتا ہے .

اس کے بعد فَمَا اسْتَمْتَعْتُمْفرمایا جس کا مطلب یہ ہے کہ جن عورتوں ( یعنی بیوی اور لونڈی ) سے تم نے ان شرطوں کے ساتھ نکاح کر کے فائدہ اٹھا لیا (یعنی جماع اور صحبت کر لی ) تو ان عورتوں کا مہر جو بھی مقرر ہوا ہو وہ ان کو پورا دے دو یعنی مہر ادا کرنا ہوگا اگر صحبت سے پہلے طلاق کی نوبت آ جائے تو مرد کے ذمہ نصف مہر اور خلوت (رات گزارنے کے بعد ) طلاق کی نوبت آ جائے تو پورا مہر ادا کرنا ہوگا اس میں ٹال مٹول کی کوشش مت کرو اور اس باب میں تم پر کوئی مؤاخذہ نہ ہوگا کہ مقررہ مہر کے بعد تم آپس میں مہر کی رقم گھٹاؤ یا بڑھاؤ یعنی عورت اپنی مرضی سے مہر نہ لے یا کم لے یا مرد اپنی خوشی سے زیادہ دے تو اس پر کوئی گناہ نہیں .

اور دوسسری جگہ فرمایا

وَإِنْ طَلَّقْتُمُوهُنَّ مِنْ قَبْلِ أَنْ تَمَسُّوهُنَّ وَقَدْ فَرَضْتُمْ لَهُنَّ فَرِيضَةً فَنِصْفُ مَا فَرَضْتُمْ

اور اگر تمہیں انہیں طلاق دو اس سے پہلےکہ انہیں ہاتھ لگاؤ حالانکہ تم ان کے لیے مہر مقرر کر چکے ہو تو نصف اس کا جو تم نے مقرر کیا تھا : ( بقرہ / ٢٣٧)

اور اس آیت میں فرمایا کہ جن عورتوں ( یعنی بیوی یا لونڈی ) سے نکاح کرنے بعد فائدہ نہیں اٹھایا

(یعنی یعنی جماع اور صحبت نہیں کی ) تو آدھا مہر مہر دینا پڑے گا

نتیجہ : ایک جگہ پر آدھا مہر ذکر کیا گیا اور اور دوسری جگہ پر پورا مہر ذکر کیا گیا سو معلوم ہوا قران پاک یہاں نکاح صحیحہ کا ہی ذکر کر رہا ہے نہ کہ متعہ کا .

قران پاک کی اس آیت میں متعہ کا بیان سرے سے ہے ہی نہیں لیکن شیعہ نے م. ت. ی کو دیکھ کر اس سے متعہ کے جائز ہونے اور اپنے اصطلاحی متعہ کے ثبوت کا فتویٰ دے دیا حالانکہ جس کی قران کریم کے سیاق و سباق پر نظر ہوگی وہ ہرگز اس آیت سے متعہ کے جواز کی دلیل نہ لے گا .

قران پاک نے یہاں تک فرمایا کہ

اور اگر صبر سے کام لو اور لونڈیوں سے نکاح بھی نہ کرو تو وہ تمہارے لئے بہتر ہے . سورہ نساء

تو کیا ایسی صورت حال میں متعہ کا سوال پیدا ہو سکتا ہے ؟

آنحضرت صلی الله علیہ وسلم کا فرمان ہے

اے نوجوانوں تم میں سے جو شادی پر قدرت رکھتا ہے اس کو چاہیے کہ شادی کر لے کہ یہ شادی نگاہ کو نیچا کر دیتی ہے اور اس کے ذریعے سے شرمگاہ کی حفاظت ہوتی ہے اور جو شخص شادی پر قدرت نہیں رکھتا اس کو لازم ہے کہ روزہ رکھے کہ روزہ شہوت جو توڑتا ہے .

صحیح بخاری . جلد٥٨

نبی پاک نے متعہ کی کہیں تو گنجائش رکھی ہوتی ؟



متعہ کی حرمت احادیث میں:
اس سلسلہ میں احادیث "متواترہ" ہیں جس کی وجہ سے ان کا انکار کرنا جائز نہیں ہے، مثلاً:

صحیح مسلم » نکاح کا بیان (کتاب النکاح) » باب: اس بات کا بیان کہ نکاحِ متعہ جائز کیا گیا، پھر منسوخ کیا گیا، پھر جائز کیا گیا، پھر منسوخ کیا گیا اور پھر قیامت تک کے لئے اس کی حرمت باقی رکھی گئی

بَاب نِكَاحِ الْمُتْعَةِ وَبَيَانِ أَنَّهٗ أُبِيحَ ثُمَّ نُسِخَ ثُمَّ أُبِيحَ ثُمَّ نُسِخَ وَاسْتَقَرَّ تَحْرِيمُهٗ إِلٰى يَوْمِ الْقِيَامَةِ


1- حَدَّثَنَا يَحْيَی بْنُ يَحْيٰی قَالَ قَرَأْتُ عَلٰی مَالِکٍ عَنْ ابْنِ شِهَابٍ عَنْ عَبْدِ اللہِ وَالْحَسَنِ ابْنَيْ مُحَمَّدِ بْنِ عَلِيٍّ عَنْ أَبِيهِمَا عَنْ عَلِيِّ بْنِ أَبِي طَالِبٍ أَنَّ رَسُولَ اللہِ صَلَّی اللہُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ نَهٰی عَنْ مُتْعَةِ النِّسَاءِ يَوْمَ خَيْبَرَ وَعَنْ أَکْلِ لُحُومِ الْحُمُرِ الْإِنْسِيَّةِ۔
حضرت علی رضی اللہ عنہ بن ابوطالب سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے غزوہ خیبر کے دن عورتوں سے نکاح متعہ کرنے  اور گھریلو گدھوں کا گوشت کھانے سے منع فرمایا۔
تخريج الحديث
 م طرف الحديثالصحابياسم الكتابأفقالعزوالمصنفسنة الوفاة
1نهى عن متعة النساء يوم خيبر وعن أكل لحوم الحمر الإنسيةعلي بن أبي طالبصحيح البخاري39194216محمد بن إسماعيل البخاري256
2نهى عن المتعة وعن لحوم الحمر الأهلية زمن خيبرعلي بن أبي طالبصحيح البخاري47485115محمد بن إسماعيل البخاري256
3نهى رسول الله عن المتعة عام خيبر عن لحوم حمر الإنسيةعلي بن أبي طالبصحيح البخاري51245523محمد بن إسماعيل البخاري256
4نهى عن متعة النساء يوم خيبر وعن أكل لحوم الحمر الإنسيةعلي بن أبي طالبصحيح مسلم25181407مسلم بن الحجاج261
5نهى عن نكاح المتعة يوم خيبر وعن لحوم الحمر الأهليةعلي بن أبي طالبصحيح مسلم25191408مسلم بن الحجاج261
6نهى رسول الله عن متعة النساء يوم خيبر عن أكل لحوم الحمر الإنسيةعلي بن أبي طالبصحيح مسلم25211408مسلم بن الحجاج261
7نهى عن متعة النساء يوم خيبر وعن لحوم الحمر الإنسيةعلي بن أبي طالبصحيح مسلم3588561مسلم بن الحجاج261
8نهى عن متعة النساء عن لحوم الحمر الأهلية زمن خيبرعلي بن أبي طالبجامع الترمذي10361121محمد بن عيسى الترمذي256
9نهى عن متعة النساء زمن خيبر عن لحوم الحمر الأهليةعلي بن أبي طالبجامع الترمذي17111794محمد بن عيسى الترمذي256
10نهى عن متعة النساء يوم خيبر وعن لحوم الحمر الإنسيةعلي بن أبي طالبسنن النسائى الصغرى33313366النسائي303
11نهى عن متعة النساءعلي بن أبي طالبسنن النسائى الصغرى33323367النسائي303
12نهى عن نكاح المتعة وعن لحوم الحمر الأهلية يوم خيبرعلي بن أبي طالبسنن النسائى الصغرى42844334النسائي303
13نهى عن متعة النساء يوم خيبر وعن لحوم الحمر الإنسيةعلي بن أبي طالبسنن النسائى الصغرى42854335النسائي303
14نهى عن متعة النساء يوم خيبر وعن لحوم الحمر الإنسيةعلي بن أبي طالبسنن ابن ماجه19511961ابن ماجة القزويني275
15نهى عن متعة النساء يوم خيبر وعن لحوم الحمر الإنسيةعلي بن أبي طالبسنن الدارمي19321990عبد الله بن عبد الرحمن الدارمي255
16نهى عن المتعة متعة النساء عن لحوم الحمر الأهلية عام خيبرعلي بن أبي طالبسنن الدارمي21292197عبد الله بن عبد الرحمن الدارمي255
17نهى عن متعة النساء يوم خيبر وعن أكل لحوم الحمر الإنسيةعلي بن أبي طالبموطأ مالك رواية يحيى الليثي11091151مالك بن أنس179
18نهى عن نكاح المتعة وعن لحوم الحمر الأهلية زمان خيبرعلي بن أبي طالبمسند أحمد بن حنبل578593أحمد بن حنبل241
19نهى يوم خيبر عن المتعة وعن لحوم الحمرعلي بن أبي طالبمسند أحمد بن حنبل791814أحمد بن حنبل241
20نهى رسول الله عن متعة النساءعلي بن أبي طالبصحيح ابن حبان42294140أبو حاتم بن حبان354
21نهى عن متعة النساء يوم خيبر وعن أكل لحوم الحمر الإنسيةعلي بن أبي طالبصحيح ابن حبان42324143أبو حاتم بن حبان354
22نهى عن متعة النساء يوم خيبر وعن أكل لحوم الحمر الأهليةعلي بن أبي طالبصحيح ابن حبان42344145أبو حاتم بن حبان354
23نهى عن نكاح المتعة وعن لحوم الحمر الأهليةعلي بن أبي طالبمستخرج أبي عوانة32444070أبو عوانة الإسفرائيني316
24نهى عن متعة النساء يوم خيبر وعن أكل لحوم الحمر الأهليةعلي بن أبي طالبمستخرج أبي عوانة32454071أبو عوانة الإسفرائيني316
25نهى يوم خيبر عن متعة النساء وعن أكل لحوم الحمر الأهليةعلي بن أبي طالبمستخرج أبي عوانة32474073أبو عوانة الإسفرائيني316
26نهى يوم خيبر عن متعة النساءعلي بن أبي طالبمستخرج أبي عوانة32504076أبو عوانة الإسفرائيني316
27نهى عن متعة النساء يوم خيبر وعن لحوم الحمر الأهليةعلي بن أبي طالبمستخرج أبي عوانة32524078أبو عوانة الإسفرائيني316
28نهى عن المتعة وعن لحوم الحمر الأهليةعلي بن أبي طالبمستخرج أبي عوانة32544081أبو عوانة الإسفرائيني316
29نهى رسول الله عن نكاح المتعةعلي بن أبي طالبمستخرج أبي عوانة32554082أبو عوانة الإسفرائيني316
30نهى عن متعة النساء عام خيبر عن أكل لحوم الحمر الإنسيةعلي بن أبي طالبمستخرج أبي عوانة32564083أبو عوانة الإسفرائيني316
31نهى عن متعة النساء يوم خيبر وعن أكل لحوم الحمر الإنسيةعلي بن أبي طالبمستخرج أبي عوانة60367645أبو عوانة الإسفرائيني316
32نهى عن متعة النساء يوم خيبر وعن لحوم الحمر الأهليةعلي بن أبي طالبمستخرج أبي عوانة60407649أبو عوانة الإسفرائيني316
33نهى عن متعة النساء يوم خيبر وعن أكل لحوم الحمر الأهليةعلي بن أبي طالبمستخرج أبي عوانة60417650أبو عوانة الإسفرائيني316
34نهى عن المتعة عام خيبر وعن لحوم الحمر الأهليةعلي بن أبي طالبمستخرج أبي عوانة60437653أبو عوانة الإسفرائيني316
35نهى عن متعة النساء يوم خيبر وعن أكل لحوم الحمر الأهليةعلي بن أبي طالبمستخرج أبي عوانة60447654أبو عوانة الإسفرائيني316
36نهى عن متعة النساء عن أكل لحوم الحمر الإنسيةعلي بن أبي طالبالمسند المستخرج على صحيح مسلم لأبي نعيم30143263أبو نعيم الأصبهاني430
37نهى عن نكاح المتعة وعن لحوم الحمر الأهلية زمن خيبرعلي بن أبي طالبالمسند المستخرج على صحيح مسلم لأبي نعيم30153264أبو نعيم الأصبهاني430
38نهى عن متعة النساء يوم خيبر وعن أكل لحوم الحمر الإنسيةعلي بن أبي طالبالمسند المستخرج على صحيح مسلم لأبي نعيم30173266أبو نعيم الأصبهاني430
39نهى عن نكاح المتعة وعن لحوم الحمر الأهلية زمن خيبرعلي بن أبي طالبمختصر الأحكام المستخرج على جامع الترمذي9281014الطوسي312
40نهى عن نكاح المتعة وعن لحوم الحمر الأهلية يوم خيبرعلي بن أبي طالبالسنن الكبرى للنسائي47134825النسائي303
41نهى عن متعة النساء يوم خيبر وعن لحوم الحمر الإنسيةعلي بن أبي طالبالسنن الكبرى للنسائي53575523النسائي303
42نهى رسول الله وسلم يوم خيبر عن متعة النساءعلي بن أبي طالبالسنن الكبرى للنسائي53585524النسائي303
43نهى عن المتعة وعن لحوم الحمر الأهليةعلي بن أبي طالبالسنن الصغير للبيهقي11262607البيهقي458
44نهى عن متعة النساء يوم خيبر وعن أكل لحوم الحمر الإنسيةعلي بن أبي طالبالسنن الكبرى للبيهقي130967 : 200البيهقي458
45نهى عن المتعة وعن لحوم الحمر الأهليةعلي بن أبي طالبالسنن الكبرى للبيهقي130987 : 200البيهقي458
46نهى عن نكاح المتعة وعن لحوم الحمر الأهلية زمن خيبرعلي بن أبي طالبالسنن الكبرى للبيهقي130997 : 200البيهقي458
47نهى عن متعة النساء يوم خيبر وعن لحوم الحمر الأهليةعلي بن أبي طالبالسنن الكبرى للبيهقي178949 : 327البيهقي458
48نهى عن نكاح المتعة وعن لحوم الحمر الأهليةعلي بن أبي طالبمعرفة السنن والآثار للبيهقي37124232البيهقي458
49نهى عن متعة النساء يوم خيبر وعن أكل لحوم الحمر الإنسيةعلي بن أبي طالبمعرفة السنن والآثار للبيهقي37134233البيهقي458
50نهى عام خبير عن نكاح المتعة عن لحوم الحمر الأهليةعلي بن أبي طالبمعرفة السنن والآثار للبيهقي49785736البيهقي458
51نهى عن متعة النساء يوم خيبر وعن أكل لحوم الحمر الإنسيةعلي بن أبي طالبموطأ مالك برواية محمد بن الحسن الشيباني533583مالك بن أنس179
52نهى عن متعة النساء يوم خيبر وعن أكل لحوم الحمر الإنسيةعلي بن أبي طالبموطأ مالك برواية أبي مصعب الزهري8421542مالك بن أنس179
53نهى يوم خيبر عن متعة النساء وعن لحوم الحمر الأهليةعلي بن أبي طالبموطأ عبد الله بن وهب229250عبد الله بن وهب بن مسلم197
54نهى عن نكاح المتعة وعن أكل لحوم الحمر الأهليةعلي بن أبي طالبمسند أبي داود الطيالسي112113أبو داود الطياليسي204
55نهى عن نكاح المتعة وعن لحوم الحمر الأهلية زمن خيبرعلي بن أبي طالبمسند الحميدي3937عبد الله بن الزبير الحميدي219
56نهى عن نكاح المتعة وعن لحوم الحمر الأهليةعلي بن أبي طالبمسند الشافعي732784الشافعي204
57نهى عن متعة النساء يوم خيبر وعن أكل لحوم الحمر الإنسيةعلي بن أبي طالبمسند الشافعي11571239الشافعي204
58نهى عام خيبر عن نكاح المتعة عن لحوم الحمر الأهليةعلي بن أبي طالبمسند الشافعي16201734الشافعي204
59نهى عن المتعة وعن لحوم الحمر الأهلية يوم خيبرعلي بن أبي طالبالبحر الزخار بمسند البزار601641أبو بكر البزار292
60نهى عن متعة النساءعلي بن أبي طالبالبحر الزخار بمسند البزار602642أبو بكر البزار292
61المتعة حرامعلي بن أبي طالبالبحر الزخار بمسند البزار615658أبو بكر البزار292
62نهى عن نكاح المتعة يوم خيبر وعن لحوم الحمر الأهليةعلي بن أبي طالبمسند أبي يعلى الموصلي570576أبو يعلى الموصلي307
63نهى عن متعة النساء يوم خيبر وعن أكل لحوم الحمر الإنسيةعلي بن أبي طالبمسند الموطأ للجوهري114211الحسن بن علي الجوهري381
64نهى عن نكاح المتعة عام خيبرعلي بن أبي طالبمسند زيد4301 : 271زيد بن علي بن الحسين122
65نهى رسول الله عن متعة النساء يوم خيبر عن أكل لحوم الحمر الإنسيةعلي بن أبي طالبمسند الربيع بن حبيب381388الربيع بن حبيب103
66نهى رسول الله عن متعة النساء يوم خيبرعلي بن أبي طالبمسند الربيع بن حبيب501518الربيع بن حبيب103
67نهى عن نكاح المتعة وعن لحوم الحمر الأهليةعلي بن أبي طالبمسند الإمام الشافعي ( ترتيب سنجر)728---الأمير سنجر745
68نهى عن متعة النساء يوم خيبر وعن أكل لحوم الحمر الإنسيةعلي بن أبي طالبمسند الإمام الشافعي ( ترتيب سنجر)729---الأمير سنجر745
69نهى عام خيبر عن نكاح المتعة عن لحوم الحمر الأهليةعلي بن أبي طالبمسند الإمام الشافعي ( ترتيب سنجر)731---الأمير سنجر745
70نهى عن المتعة وعن لحوم الحمر الأهليةعلي بن أبي طالبمصنف ابن أبي شيبة1294017232ابن ابي شيبة235
71نهى عن المتعة وعن لحوم الحمر الأهليةعلي بن أبي طالبمصنف ابن أبي شيبة237295 : 541ابن ابي شيبة235
72نهى عن متعة النساءعلي بن أبي طالبالمعجم الصغير للطبراني369133سليمان بن أحمد الطبراني360
73نهى عن متعة النساء يوم خيبر وعن أكل لحوم الحمر الإنسيةعلي بن أبي طالبالمعجم الأوسط للطبراني23012244سليمان بن أحمد الطبراني360
74نهى عن متعة النساء يوم خيبرعلي بن أبي طالبالمعجم الأوسط للطبراني35623447سليمان بن أحمد الطبراني360
75نهى يوم خيبر عن متعة النساء وعن لحوم الحمر الأهليةعلي بن أبي طالبمعجم ابن الأعرابي156151ابن الأعرابي340
76نهى عن المتعةعلي بن أبي طالبمعجم ابن الأعرابي13231343ابن الأعرابي340
77نهى عن متعة النساء يوم خيبر وعن لحوم الحمر الأهليةعلي بن أبي طالبمعجم ابن الأعرابي23502387ابن الأعرابي340
78نهى عن نكاح المتعة وعن لحوم الحمر الأهلية زمان خيبرعلي بن أبي طالبمشيخة ابن جماعة1111 : 344ابن جماعة739
79نهى عن متعة النساء يوم خيبر وعن أكل لحوم الحمر الإنسيةعلي بن أبي طالبمشيخة ابن جماعة1121 : 345ابن جماعة739
80نهى عن متعة النساء يوم خيبر وعن أكل لحوم الحمر الإنسيةعلي بن أبي طالبمشيخة ابن البخاري547---أحمد بن محمد الظاهري الحنفي696
81نهى عن نكاح المتعة وعن لحوم الحمر الأهلية بخيبرعلي بن أبي طالبمشيخة ابن البخاري548---أحمد بن محمد الظاهري الحنفي696
82نهى عن نكاح المتعة وعن لحوم الحمر الأهلية زمان خيبرعلي بن أبي طالبمشيخة ابن البخاري549---أحمد بن محمد الظاهري الحنفي696
83نهى عن نكاح المتعة وعن لحوم الحمر الأهلية زمان خيبرعلي بن أبي طالبمعجم الشيوخ لتاج الدين السبكي229---السبكي771
84نهى عن متعة النساء يوم خيبر وعن أكل لحوم الحمر الإنسيةعلي بن أبي طالبمعجم الشيوخ لتاج الدين السبكي230---السبكي771
85نهى عن متعة النساء يوم خيبرعلي بن أبي طالبما رواه الأكابر عن مالك لمحمد بن مخلد56محمد بن مخلد الدوري331
86نهى عن متعة النساء يوم خيبر وعن أكل لحوم الحمر الإنسيةعلي بن أبي طالبجزء فيه ما انتقى ابن مردويه على أبي القاسم الطبراني لابن مردويه146150أحمد بن موسى ابن مردويه410
87نهى عن متعة النساء يوم خيبر وعن أكل لحوم الحمر الإنسيةعلي بن أبي طالبعوالي مالك بن أنس رواية ابن الحاجب39470عمر بن الحاجب الأميني630
88نهى عن متعة النساء يوم خيبرعلي بن أبي طالبحديث ابن السماك والخلدي2929ابن مخلد البزاز419
89نهى عن المتعة وعن لحوم الحمر الأهلية بخيبرعلي بن أبي طالبحديث بشر بن مطر35---بشر بن مطر الدقاق262
90نهى عن متعة النساء يوم خيبر وعن أكل لحوم الحمر الإنسيةعلي بن أبي طالبمصافحات الإمام مسلم والنسائي111 : 278عبد المؤمن بْن خلف الدمياطي705
91نهى رسول الله عن متعة النساء يوم خيبر نهى عن لحوم الحمر الإنسيةعلي بن أبي طالبجزء أبي القاسم الطبراني148---سليمان بن أحمد الطبراني360
92نهى عن نكاح المتعة يوم خيبر وعن لحوم الحمر الأهليةعلي بن أبي طالبالأربعون حديثا من المساواة101---ابن عساكر571
93نهى عن نكاح المتعة وعن لحوم الحمر الأهلية زمان خيبرعلي بن أبي طالبالأربعون حديثا من المساواة102---ابن عساكر571
94نهى عن المتعة وعن لحوم الحمر الأهليةعلي بن أبي طالبالأربعون حديثا من المساواة103---ابن عساكر571
95نهى عن متعة النساء عن لحوم الحمر الأهليةعلي بن أبي طالبالرابع من الثقفيات30---القاسم بن الفضل بن أحمد الثقفي489
96نهى عن متعة النساء يوم خيبر وعن أكل لحوم الحمر الإنسيةعلي بن أبي طالبجزء ابن فيل149---الحسن بن أحمد بن إبراهيم بن فيل البالسي309
97نهى عن متعة النساء يوم خيبر وعن لحوم الحمر الأهليةعلي بن أبي طالبحديث أبي الفوارس الصابوني29---محمد بن الفضل بن نظيف431
98نهى عن متعة النساء يوم خيبر وعن أكل لحوم الحمر الإنسيةعلي بن أبي طالبأحاديث عوالي للدمياطي17---عبد المؤمن بن خلف الدمياطي705
99نهى عن متعة النساء يوم خيبر وعن أكل لحوم الحمر الإنسيةعلي بن أبي طالبالموافقيات التساعيات للدمياطي17---عبد المؤمن بن خلف الدمياطي705
100نهى عن متعة النساء يوم خيبر وعن أكل لحوم الحمر الإنسيةعلي بن أبي طالببغية الملتمس87---العلائي761


صحیح مسلم۔ جلد:۲/ دوسرا پارہ/ حدیث نمبر:۳۴۲۲/ حدیث مرفوع
۳۴۲۲۔ و حَدَّثَنَاهُ عَبْدُ اللہِ بْنُ مُحَمَّدِ بْنِ أَسْمَاءَ الضُّبَعِيُّ حَدَّثَنَا جُوَيْرِيَةُ عَنْ مَالِکٍ بِهٰذَا الْإِسْنَادِ وَقَالَ سَمِعَ عَلِيَّ بْنَ أَبِي طَالِبٍ يَقُولُ لِفُلَانٍ إِنَّکَ رَجُلٌ تَائِهٌ نَهَانَا رَسُولُ اللہِ صَلَّی اللہُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بِمِثْلِ حَدِيثِ يَحْيٰی بْنِ يَحْيٰی عَنْ مَالِکٍ۔
۳۴۲۲۔ عبد اللہ بن محمد بن اسماء ضبعی، جویریہ، حضرت مالک رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ میں نے حضرت علی بن ابی طالب رضی اللہ عنہ کو ایک آدمی سے یہ فرماتے ہوئے سنا کہ وہ اسے کہہ رہے تھے کہ تو ایک بھٹکا ہوا آدمی ہے، رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے متعہ سے منع فرمایا، باقی حدیث یحیی بن یحیی، مالک کی حدیث کی طرح ہے۔



صحیح مسلم۔ جلد:۲/ دوسرا پارہ/ حدیث نمبر:۳۴۲۳/ حدیث مرفوع
۳۴۲۳۔ حَدَّثَنَا أَبُو بَکْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ وَابْنُ نُمَيْرٍ وَزُهَيْرُ بْنُ حَرْبٍ جَمِيعًا عَنْ ابْنِ عُيَيْنَةَ قَالَ زُهَيْرٌ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ بْنُ عُيَيْنَةَ عَنِ الزُّهْرِيِّ عَنْ الْحَسَنِ وَعَبْدِ اللہِ ابْنَيْ مُحَمَّدِ بْنِ عَلِيٍّ عَنْ أَبِيهِمَا عَنْ عَلِيٍّ أَنَّ النَّبِيَّ صَلَّی اللہُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ نَهٰی عَنْ نِکَاحِ الْمُتْعَةِ يَوْمَ خَيْبَرَ وَعَنْ لُحُومِ الْحُمُرِ الْأَهْلِيَّةِ۔
۳۴۲۳۔ ابوبکر بن ابی شیبہ، ابن نمیر، زہیر بن حرب، ابن عیینہ، زہیر، سفیان ابن عیینہ، زہری، حسن و عبد اللہ ابنا محمد بن علی، حضرت علی رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ بنی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے غزوہ خیبر کے دن نکاح متعہ اور گھریلوں گدھوں کا گوشت کھانے سے منع فرمایا۔



صحیح مسلم۔ جلد:۲/ دوسرا پارہ/ حدیث نمبر:۳۴۲۴/ حدیث مرفوع
۳۴۲۴۔ و حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ عَبْدِ اللہِ بْنِ نُمَيْرٍ حَدَّثَنَا أَبِي حَدَّثَنَا عُبَيْدُ اللہِ عَنْ ابْنِ شِهَابٍ عَنْ الْحَسَنِ وَعَبْدِ اللہِ ابْنَيْ مُحَمَّدِ بْنِ عَلِيٍّ عَنْ أَبِيهِمَا عَنْ عَلِيٍّ أَنَّهٗ سَمِعَ ابْنَ عَبَّاسٍ يُلَيِّنُ فِي مُتْعَةِ النِّسَاءِ فَقَالَ مَهْلًا يَا ابْنَ عَبَّاسٍ فَإِنَّ رَسُولَ اللہِ صَلَّی اللہُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ نَهٰی عَنْهَا يَوْمَ خَيْبَرَ وَعَنْ لُحُومِ الْحُمُرِ الْإِنْسِيَّةِ۔
۳۴۲۴۔ محمد بن عبد اللہ بن نمیر، عبید اللہ، ابن شہاب، حسن، عبد اللہ ابنا محمد بن علی، حضرت علی رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ انہوں نے ابن عباس رضی اللہ عنہ کو عورتوں کے متعہ میں نرمی کرتے ہوئے سنا تو فرمایا ٹھہر جاؤ اے ابن عباسؓ! کیونکہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے اس سے غزوہ خیبر کے دن منع فرمایا اور پالتو گدھوں کے گوشت سے بھی۔



 و حَدَّثَنِي أَبُو الطَّاهِرِ وَحَرْمَلَةُ بْنُ يَحْيٰی قَالَا أَخْبَرَنَا ابْنُ وَهْبٍ أَخْبَرَنِي يُونُسُ عَنْ ابْنِ شِهَابٍ عَنْ الْحَسَنِ وَعَبْدِ اللہِ ابْنَيْ مُحَمَّدِ بْنِ عَلِيِّ بْنِ أَبِي طَالِبٍ عَنْ أَبِيهِمَا أَنَّهٗ سَمِعَ عَلِيَّ بْنَ أَبِي طَالِبٍ يَقُولُ لِابْنِ عَبَّاسٍ نَهٰی رَسُولُ اللہِ صَلَّی اللہُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنْ مُتْعَةِ النِّسَاءِ يَوْمَ خَيْبَرَ وَعَنْ أَکْلِ لُحُومِ الْحُمُرِ الْإِنْسِيَّةِ۔
ابوطاہر، حرملہ بن یحیی، ابن وہب، یونس، ابن شہاب، حسن، عبد اللہ ابنا حضرت محمد بن علی بن ابوطالب رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ انہوں نے حضرت علی رضی اللہ عنہ بن ابی طالب کو ابن عباس رضی اللہ عنہ سے فرماتے ہوئے سنا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے غزوہ خیبر کے دن عورتوں سے نکاح متعہ کرنے اور گھریلو پالتوں گدھوں کا گوشت کھانے سے منع فرمایا۔


امامیہ شیعہ کی معتبر کتب استبصار ، فروع کافی ، اور تہذیب الا احکام میں بھی یہ روایت حضرت علی رضی الله عنہ سے منقول ہے پھر لطف کی بات یہ ہے یہ روایت ان کتب میں انہی الفاظ سے منقول ہے جن الفاظ سے یہ روایت کتب اہل سنت میں پائی جاتی ہے چنانچہ ملاحظه ہو

شیخ التایفہ علامہ طوسی(ھ ٤٦٠ ) اپنی کتاب تہذیب و استبصار میں ہر دو کتب کے باب تفصیل ال نکاح میں نقل کرتا ہے

ترجمہ : حضرت علی رضی الله عنہ کہتے ہیں کہ رسول الله صلی الله علیہ وسلم نے پالتو گدھوں کے گوشت اور نکاح متعہ کو حرام قرار دے دیا .

استبصار ج ٣ ، ص ١٤٢

تہذیب الا حکام ج ٢ ، ص ١٨٦

فروع کافی ص ١٩٢، ج ٢






ایک اور شیعی محقق شیخ محمد بن حسن نے اپنی اپنی کتاب وسائل الشیعہ میں اس روایت کو درج کیا ہے

یہ حدیث کتب ستہ اہل سنن میں بھی مرقوم ہے اور چونکہ یہ بہترین اسناد سے مروی ہے اس لئے کل محدثین نے بلا اتفاق اس پر حصر کر کے متعہ کو حرام قرار دیا

کیسی صاف روایت ہے روایت بھی ایسی کہ جناب علی رضی الله عنہ اپنے فہم سے فتویٰ نہیں دیتے بلکہ پیغمبر علیہ اسلام کی حدیث بیان کرتے ہیں اور روایت حدیث کے متعلق علماۓ اسلام (شیعہ ہو یا سنی ) اتفاق ہے کہ پیغمبر اسلام کے نام سے جھوٹی حدیث بیان کرنا جہنم میں داخل ہونے کا موجب ہے .

نبی پاک صلی الله علیہ وسلم کی حدیث ہے یعنی جو مجھ (پیغمبر ) پر جھوٹی بات لگاہے جو میں نے نہیں کہی وہ اپنا ٹھکانا جہنم میں بنا لے .

نوٹ: یہ خیبر کے دن کے اعلان کا ذکر ہے یہ نہیں کے اس کی حرمت بھی اسی دن نازل ہوئی تھی حکم کو نافذ کرنے کے لئے مناسب وقت اختیار کیا جاتا ہے

متعہ کی حرمت پر ایک اور حدیث شیعہ اثنا عشریہ کی کتاب سے ملاحظه ہو .

مفصل نے کہا کہ میں نے امام جعفر رضی الله عنہ سے سنا کہ متعہ کے بارے میں فرماتے تھے کہ اس کو بلکل چھوڑ دو ، کیا تمہیں حیاء نہیں آتی کہ بیگانہ عورت کی فرج دیکھ کر اپنے بھائیوں اور دوستوں کے آگے اس کا حال بیان کرو .

کافی صفحہ ٢٤ جلد ٦میں یہ روایت ہے

اس روایت میں نہ صرف متعہ کو حرام کیا گیا بلکہ اس بےحیائی کا نہایت ہی مختصر مگرمعنی خیز الفاظ میں میں مرقع کھینچا گیا ہے جو متعہ کا لازمی نتیجہ ہے .

ایک اور روایت کتاب فقہ الرضا کے باب النکاح میں ہے

راوی کہتا ہے اے برادر پوچھا میں نے امام رضا سے کہ اے حضرت روح میری آپ پر قربان ہو یہ فرمائے متعہ کی نسبت آپکا کیا حکم ہے کہ روایت کیا ہے کہ آپ کے دادا امیر المومنین نے کہا کہ رسول الله صلی الله علیہ وسلم نے حلال کیا فتح مکہ کے روز اور حرام کیا تھا خیبر کے روز اور ساتھ منع کیا تھا . امیر نے فرمایا .. جناب امیر (علی ) نےسچ فرمایا تھا : خدا کی قسم متعہ حرام ہے البتہ اجازت دی گئی تھی قبل میں . پھر امام نے فرمایا حضرت محمّد صلی الله علیہ وسلم نے متعہ حلال نہیں فرمایا تھا مگر جوانان عرب کے واسطے جو مسافرت میں آپ کے ساتھ تھے اور شکایت اپنی تکلیف کی کرتے تھے پس آپ نے اجازت متعہ کی نہ دی مگر ایسے لوگوں کے واسطے تا کہ حرام سے بچیں لیکن جس نے متعہ کیا اس حالت میں کہ قادر ہے نکاح پر یا لونڈی کے خریدنے پر یا اپنے مکان پر یا کسی شہر میں مقیم ہے پس اس نے مباح کیا اپنے نفس پر ، اس چیز کو جس کو حرام کیا الله پاک نے اس کے واسطے اور خدا عزوجل نے فرمایا : جس شخص نے تجاوز کیا ، الله کی حدوں سے داخل ہوگا وہ ظالمین میں .

میرے بیٹے .. نہیں تھا جواز متعہ کا مگر وقت اضطرار اور ضرورت کے جیسا کہ جائز ہے وقت ضرورت کے گوشت خنزیر کا ، مردار اور خون لیکن حد ضرورت سے نہ گزرے تو الله معاف کرنے والا ہے .

ذرا آنکھے کھول کر اس روایت کو پڑھ کہ روایت سے صحیح اور معقول روایت کبھی ان آنکھوں نے دیکھی ہے)


===========================
حَدَّثنا سُفْيَانُ ، قَالَ : حَدَّثنا هِشَامُ بْنُ حُجَيْرٍ ، عَنْ طَاوُسٍ ، قَالَ : سَمِعْتُ ابْنَ عَبَّاسٍ ، يَقُولُ : " هَذِهِ حُجَّةٌ عَلَى مُعَاوِيَةَ ، قَوْلُهُ : قَصَّرْتُ عَنْ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بِمِشْقَصِ أَعْرَابِيٍّ عِنْدَ الْمَرْوَةِ , يَقُولُ ابْنُ عَبَّاسٍ : حِينَ نَهَى عَنِ الْمُتْعَةِ " .
[مسند الحميدي » أَحَادِيثُ رِجَالِ الأَنْصَارِ » أَحَادِيثُ مُعَاوِيَةَ بْنِ أَبِي سُفْيَانَ رَضِيَ ... رقم الحديث: 587]

حَدَّثَنَا أَبُو عَلِيِّ بْنُ الصَّوَّافِ ، ثنا بِشْرُ بْنُ مُوسَى ، ثنا الْحُمَيْدِيُّ ، ثنا سُفْيَانُ ، ثنا هِشَامُ بْنُ حُجَيْرٍ ، عَنْ طَاوُسٍ ، سَمِعْتُ ابْنَ عَبَّاسٍ يَقُولُ : هَذِهِ حَجَّةٌ عَلَى مُعَاوِيَةَ ، قَوْلُهُ : قَصَّرْتُ عَلَى رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بِمِشْقَصِ أَعْرَابِيٍّ عِنْدَ الْمَرْوَةِ ، يَقُولُ ابْنُ عَبَّاسٍ : حِينَ " نَهَاهُ عَنِ الْمُتْعَةِ " ، رَوَاهُ مُسْلِمٌ ، عَنْ عَمْرٍو النَّاقِدِ ، عَنْ سُفْيَانَ .[المسند المستخرج على صحيح مسلم لأبي نعيم » كِتَابُ الْحَجِّ » بَابُ : مَنْ يُحْرِمُ مِنْ مَكَّةَ مِنْ أَيْنَ يُحْرِمُ ... رقم الحديث: 2648]
===========================
حَدَّثَنَا أَبِي رَحِمَهُ اللَّهُ ، قَالَ : حَدَّثَنَا الْعَبَّاسُ بْنُ مُحَمَّدِ بْنِ حَاتِمٍ ، قَالَ : حَدَّثَنَا خُنَيْسُ بْنُ بَكْرِ بْنِ خُنَيْسٍ ، قَالَ : حَدَّثَنَا مَالِكُ بْنُ مِغْوَلٍ ، عَنْ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ الأَسْوَدِ ، عَنْ أَبِي ذَرٍّ ، قَالَ : " إِنَّمَا أُحِلَّتْ لَنَا أَصْحَابَ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ مُتْعَةُ النِّسَاءِ ثَلاثَةَ أَيَّامٍ ، ثُمَّ نَهَى عَنْهَا رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ " .[ناسخ الحديث ومنسوخه لابن شاهين » كِتَابٌ جَامِعٌ » بَابُ أَوَّلِ الْمُتْعَةِ وَالأَمْرِ بِهَا قَبْلَ ... رقم الحديث: 429]


تخريج الحديث
 م طرف الحديثالصحابياسم الكتابأفقالعزوالمصنفسنة الوفاة
1إنما كانت المتعة رخصة لنا لا لكمجندب بن عبد اللهمستخرج أبي عوانة26643343أبو عوانة الإسفرائيني316
2أحلت لنا أصحاب رسول الله متعة النساء ثلاثة أيام ثم نهى عنها رسول اللهجندب بن عبد اللهالسنن الكبرى للبيهقي131287 : 206البيهقي458
3أحلت لنا أصحاب رسول الله متعة النساء ثلاثة أيام ثم نهى عنها رسول اللهجندب بن عبد اللهجزء من حديث أبي العباس الأصم67---محمد بن يعقوب الأصم346
4أحلت لنا أصحاب رسول الله متعة النساء ثلاثة أيام ثم نهى عنها رسول اللهجندب بن عبد اللهناسخ الحديث ومنسوخه لابن شاهين429418ابن شاهين385
5كيف تمتع رسول الله وأنتم معه قال وما أنتم وذاك إنما ذلك شيء رخص لنا يعني المتعةجندب بن عبد اللهحجة الوداع لابن حزم398409ابن حزم الظاهري456





حضرت جابر رضی الله عنہ والی احادیث کا جواب :
سیرت ابن ہشام میں ہے کہ جابر بن عبدللہ انصاری خیبر کے موقع پر رسول خدا صلی الله علیہ وسلم کے ساتھ موجود نہ تھےسیرت ٣٣١ جلد-٢)
اس واسطے خیبر کے دن کی حرمت متعہ کا ان کو علم نہ تھا.جبتکہ سیدنا حضرت عمر رضی الله عنہ نے اس کی وضاحت نہ فرمائی .
حضرت جابر ر.ض سے ایک لمبی حدیث مروی ہے جس میں انہوں نے متعہ کی حرمت بیان فرمائی:
کہ رسول الله صلی الله علیہ وسلم نے متعہ سے منع فرما دیا تو اس دن عورتوں کو چھوڑ دیا اور پھر ایسا نہ کیا اور نہ کریں گے .
علامہ خازمی نے جابر بن عبدللہ ر.ض سے روایت کی ہے کہ وہ فرماتے ہیں کہ ہمہمراہ رسول الله صلی الله علیہ وسلم کے غزوہ تبوک پر گئے شامی سرحد پر کچھ عورتیں ملیں ہم نے ان سے متعہ کیا اور وہ ہمارے سامان میں پھر رہی تھیں رسول خدا تشریف لاے اور عورتوں کا پوچھا تو ہم نے جواب دیا کہ ہمنے ان سے متعہ ( نکاح موقت ) کیا ہے پس آپ غضبناک ہویے چہرہ مبارک لال سرخ ہوگیا اورکھڑے ہو کر خدا کی حمد و ثنا کے بعد تقریر فرمائی اور پھر متعہ سے منع فرمایا پس ہم نے ان عورتوں کو وہاں جدا کیا اور پھر اس کے بعد متعہ کی طرف نہ لوٹے اور نہ کریں گے .
(فتح الملھم ص ٤٤٤ جلد -٣ )


حضرت جابر رضی الله عنہ والی روایات سے ظاہر ہوتا ہے کہ انہوں نے حضرت عمر رضی الله عنہ کے قران اور نبی پاک کے استدلال پر مبنی فیصلے سے اتفاق کیا اور ان کے منع کرنے کے بعد پھر کبھی متعہ کے قریب نہ گئے حتی کہ عمر رضی الله عنہ کے وصال کو مدتیں گزر گیں اور حضرت علی رضی الله عنہ کا دور خلافت بھی گزر گیا امیر معاویہ رضی الله عنہ کا دور بھی گزر گیا حتی کے یزید کا دور بھی گزرنے کے بعد حضرت عبدللہ بن زبیر رضی الله عنہ کا دور آیا مگر جابر رضی الله عنہ ہیں کہ اس متعہ کی ممنوعیت پر قائم ہیں اور حضرت عمر رضی الله عنہ سے متحد اور متفق تو اس کو سند جواز قرار دینے کا کیا جواز ؟
===========================


صحیح مسلم۔ جلد:۲/ دوسرا پارہ/ حدیث نمبر:۳۴۰۸/ حدیث مرفوع
حدثنا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ ، حدثنا يُونُسُ بْنُ مُحَمَّدٍ ، حدثنا عَبْدُ الْوَاحِدِ بْنُ زِيَادٍ ، حدثنا أَبُو عُمَيْسٍ ، عَنْ إِيَاسِ بْنِ سَلَمَةَ ، عَنْأَبِيهِ ، قَالَ : " رَخَّصَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَامَ أَوْطَاسٍ فِي الْمُتْعَةِ ثَلَاثًا ، ثُمَّ نَهَى عَنْهَا " .

۳۴۰۸۔ ابوبکر بن ابی شیبہ، یونس بن محمد، عبدالواحد بن زیاد، ابوعمیس، حضرت ایاس بن سلمہ رضی اللہ عنہ اپنے والد سے روایت کرتے ہیں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے غزوہ اوطاس فتح مکہ کے سال تین دن تک متعہ کرنے کی اجازت دی پھر منع فرمادیا۔
تخريج الحديث
 م طرف الحديثالصحابياسم الكتابأفقالعزوالمصنفسنة الوفاة
1رخص رسول الله عام أوطاس في المتعة ثلاثا ثم نهى عنهاسلمة بن عمروصحيح مسلم25071406مسلم بن الحجاج261
2رخص رسول الله في متعة النساء عام أوطاس ثلاثة أيام ثم نهى عنهاسلمة بن عمرومسند أحمد بن حنبل1620816117أحمد بن حنبل241
3رخص رسول الله عام أوطاس في المتعة ثلاثا ثم نهانا عنهاسلمة بن عمروصحيح ابن حبان42404151أبو حاتم بن حبان354
4رخص رسول الله في المتعة عام أوطاس ثلاثا ثم نهى عنهسلمة بن عمرومستخرج أبي عوانة32434069أبو عوانة الإسفرائيني316
5رخص رسول الله عام أوطاس في المتعة ثلاثا ثم نهى عنهاسلمة بن عمروالمسند المستخرج على صحيح مسلم لأبي نعيم30023251أبو نعيم الأصبهاني430
6رخص في متعة النساء عام أوطاس ثلاثة أيام ثم نهى عنهاسلمة بن عمروسنن الدارقطني31913600الدارقطني385
7رخص رسول الله في متعة النساء عام أوطاس ثلاثة أيام ثم نهى عنها بعدسلمة بن عمروالسنن الكبرى للبيهقي131127 : 203البيهقي458
8رخص رسول الله في متعة النساء عام أوطاس ثلاثة أيام ثم نهى عنها بعدسلمة بن عمرومعرفة السنن والآثار للبيهقي37164236البيهقي458
9رخص لنا رسول الله عام أوطاس في متعة النساء ثلاثا ثم نهانا عنهسلمة بن عمرومسند الروياني11651168محمد بن هارون الروياني307
10رخص رسول الله عام أوطاس في المتعة ثلاثة أيام ثم نهى عنهاسلمة بن عمروإتحاف الخيرة المهرة بزوائد المسانيد العشرة24674374البوصيري840
11المتعة ثلاثا عام أوطاس ثم نهى عنهاسلمة بن عمروإتحاف المهرة5779---ابن حجر العسقلاني852
12رخص رسول الله عام أوطاس في المتعة ثلاثا ثم نهى عنهاسلمة بن عمرومصنف ابن أبي شيبة1294317235ابن ابي شيبة235
13من شاء فليستمتع من هذه النساءسلمة بن عمروالمعجم الكبير للطبراني61026232سليمان بن أحمد الطبراني360
14علام أوقدتم هذه النيران قالوا لحوم الحمر الإنسية قال أهرقوا ما فيها واكسروا قدورها فقام رجل من القوم فقال نهريق ما فيها ونغسلها فقال النبي أو ذاكسلمة بن عمروثبت عمر بن أحمد بن علي الشماع62---عمر بن أحمد بن علي الشماع936
15رخص في متعة النساء عام أوطاس ثلاثة أيام ثم نهى عنهاسلمة بن عمروالاعتبار في الناسخ والمنسوخ من الآثار للحازمي327---محمد بن موسى الحازمي584
16متعة النساء ثم نهى عنهاسلمة بن عمروشرح معاني الآثار للطحاوي27742775الطحاوي321
17رخص في متعة النساء عام أوطاس ثلاثة أيام ثم نهى عنهاسلمة بن عمروتحريم نكاح المتعة4748أبو الفتح المقدسي490
18رخص لنا رسول الله عام أوطاس في متعة النساء ثلاثا ثم نهى عنهاسلمة بن عمرودلائل النبوة للبيهقي1870---البيهقي458
19أذن في متعة النساء عام أوطاس ثلاثة أيام ثم نهى عنها بعدسلمة بن عمروطبقات الشافعية الكبرى410---السبكي771


ابن اکوع نے کہا کہ فتح مکہ کے سال تین دن کے لئے رسول کریم صلی الله علیہ وسلم نے ہمیں متعہ کی اجازت دی تھی پھر اس کے بعد منع فرما دیا .
اس قسم کی ایک اور حدیث سلمہ بن اکوع کے بیٹے نے اپنے باپ سے روایت کی ہے
سلمہ بن اکوع نے کہا کہ رسول الله صلی الله علیہ وسلم نے عورتوں سے متعہ کی پہلے اجازت دی تھی پھر منع فرما دیا تھا. سو معلوم ہوا کہ حضرت سلمہ بن اکوع نے حرمت متعہ سے رجوع کر لیا تھا


 حدثنا مُحَمَّدُ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ نُمَيْرٍ ، حدثنا أَبِي ، حدثنا عَبْدُ الْعَزِيزِ بْنُ عُمَرَ ، حَدَّثَنِي الرَّبِيعُ بْنُ سَبْرَةَ الْجُهَنِيُّ : أَنَّ أَبَاهُ ، حَدَّثَهُ : أَنَّهُ كَانَ مَعَ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، فقَالَ : " يَا أَيُّهَا النَّاسُ ، إِنِّي قَدْ كُنْتُ أَذِنْتُ لَكُمْ فِي الِاسْتِمْتَاعِ مِنَ النِّسَاءِ ، وَإِنَّ اللَّهَ قَدْ حَرَّمَ ذَلِكَ إِلَى يَوْمِ الْقِيَامَةِ ، فَمَنْ كَانَ عَنْدَهُ مِنْهُنَّ شَيْءٌ فَلْيُخَلِّ سَبِيلَه ، وَلَا تَأْخُذُوا مِمَّا آتَيْتُمُوهُنَّ شَيْئًا " 

حضرت ربیع بن سبرہ جہنی رضی اللہ عنہ اپنے والد سے روایت کرتے ہیں کہ وہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ساتھ تھے، آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا: اے لوگو! میں نے تمہیں عورتوں سے نکاح متعہ کی اجازت دی تھے اور تحقیق اللہ نے اسے قیامت تک کے لئے حرام کردیا ہے، پس جس کے پاس ان میں سے کوئی عورت ہو تو اسے آزاد کر دے اور  جو کچھ تم نے انہیں دیا ہے ان سےنہ لے۔
تخريج الحديث
 م طرف الحديثالصحابياسم الكتابأفقالعزوالمصنفسنة الوفاة
1أذن لنا رسول الله بالمتعة فانطلقت أنا ورجل إلى امرأة من بني عامر كأنها بكرة عيطاء فعرضنا عليها أنفسنا فقالت ما تعطي فقلت ردائي وقال صاحبي ردائي وكان رداء صاحبي أجود من ردائي وكنت أشب منه فإذا نظرت إلى رداء صاحبي أعجبها وإذا نظرت إلي أعجسبرة بن معبدصحيح مسلم25081406مسلم بن الحجاج261
2كنت أذنت لكم في الاستمتاع من النساء وإن الله قد حرم ذلك إلى يوم القيامة فمن كان عنده منهن شيء فليخل سبيله ولا تأخذوا مما آتيتموهن شيئاسبرة بن معبدصحيح مسلم25101406مسلم بن الحجاج261
3أمرنا رسول الله بالمتعة عام الفتح حين دخلنا مكة ثم لم نخرج منها حتى نهانا عنهاسبرة بن معبدصحيح مسلم25111406مسلم بن الحجاج261
4أمر أصحابه بالتمتع من النساء قال فخرجت أنا وصاحب لي من بني سليم حتى وجدنا جارية من بني عامر كأنها بكرة عيطاء فخطبناها إلى نفسها وعرضنا عليها بردينا فجعلت تنظر فتراني أجمل من صاحبي وترى برد صاحبي أحسن من بردي فآمرت نفسها ساعة ثم اختارتني على صاحبي فكن معناسبرة بن معبدصحيح مسلم25121406مسلم بن الحجاج261
5نهى عن نكاح المتعةسبرة بن معبدصحيح مسلم25131406مسلم بن الحجاج261
6نهى يوم الفتح عن متعة النساءسبرة بن معبدصحيح مسلم25141406مسلم بن الحجاج261
7نهى عن المتعة زمان الفتحسبرة بن معبدصحيح مسلم25151407مسلم بن الحجاج261
8نهى عن المتعة وقال ألا إنها حرام من يومكم هذا إلى يوم القيامة ومن كان أعطى شيئا فلا يأخذهسبرة بن معبدصحيح مسلم25171407مسلم بن الحجاج261
9حرم متعة النساءسبرة بن معبدسنن أبي داود17782073أبو داود السجستاني275
10أذن رسول الله بالمتعة فانطلقت أنا ورجل إلى امرأة من بني عامر فعرضنا عليها أنفسنا فقالت ما تعطيني فقلت ردائي وقال صاحبي ردائي وكان رداء صاحبي أجود من ردائي وكنت أشب منه فإذا نظرت إلى رداء صاحبي أعجبها وإذا نظرت إلي أعجبتها ثم قالت أنت ورسبرة بن معبدسنن النسائى الصغرى33333368النسائي303
11كنت أذنت لكم في الاستمتاع ألا وإن الله قد حرمها إلى يوم القيامة فمن كان عنده منهن شيء فليخل سبيلها ولا تأخذوا مما آتيتموهن شيئاسبرة بن معبدسنن ابن ماجه19521962ابن ماجة القزويني275
12كنت أذنت لكم في الاستمتاع من النساء ألا وإن الله قد حرمه إلى يوم القيامة فمن كان عنده منهن شيء فليخل سبيلها ولا تأخذوا مما آتيتموهن شيئاسبرة بن معبدسنن الدارمي21272195عبد الله بن عبد الرحمن الدارمي255
13نكاح المتعة عام الفتحسبرة بن معبدسنن الدارمي21282196عبد الله بن عبد الرحمن الدارمي255
14نهى عن متعة النساء يوم الفتحسبرة بن معبدمسند أحمد بن حنبل1503714913أحمد بن حنبل241
15ينهى عن نكاح المتعةسبرة بن معبدمسند أحمد بن حنبل1503814914أحمد بن حنبل241
16حرم متعة النساءسبرة بن معبدمسند أحمد بن حنبل1504427525أحمد بن حنبل241
17العمرة قد دخلت في الحج فقال له سراقة بن مالك أي رسول الله علمنا تعليم قوم كأنما ولدوا اليوم عمرتنا هذه لعامنا هذا أم لأبد قال بل لأبد فلما قدمنا مكة طفنا بالبيت وبين الصفا والمروة أمرنا بمتعة النساء فرجعنا إليه فقلنا يا رسول الله إنهن قد أبين إلا إلى أجلسبرة بن معبدمسند أحمد بن حنبل1504514920أحمد بن حنبل241
18خرجنا مع رسول الله عام الفتح فأقمنا خمس عشرة من بين ليلة ويوم قال قال فأذن رسول الله في المتعة قال وخرجت أنا وابن عم لي في أسفل مكة أو قال في أعلى مكة فلقينا فتاة من بني عامر بن صعصعة كأنها البكرة العنطنطة قال وأنا قريب من الدمامة وعلي برد جديد غض وعلى ابسبرة بن معبدمسند أحمد بن حنبل1504614921أحمد بن حنبل241
19أمرهم بالمتعة قال فخطبت أنا ورجل امرأة قال فلقيت النبي بعد ثلاث فإذا هو يحرمها أشد التحريم ويقول فيها أشد القول وينهى عنها أشد النهيسبرة بن معبدمسند أحمد بن حنبل1504714922أحمد بن حنبل241
20أذن لنا رسول الله في المتعة قال فانطلقت أنا ورجل هو أكبر مني سنا من أصحاب النبي فلقينا فتاة من بني عامر كأنها بكرة عيطاء فعرضنا عليها أنفسنا فقالت ما تبذلان قال كل واحد منا ردائي قال وكان رداء صاحبي أجود من ردائي وكنتسبرة بن معبدمسند أحمد بن حنبل1504914924أحمد بن حنبل241
21نهى رسول الله عن نكاح المتعةسبرة بن معبدمسند أحمد بن حنبل1505014925أحمد بن حنبل241
22كنت أذنت لكم في الاستمتاع من هذه النساء ألا وإن الله قد حرم ذلك إلى يوم القيامة فمن كان عنده منهن شيء فليخل سبيلها ولا تأخذوا مما آتيتموهن شيئاسبرة بن معبدمسند أحمد بن حنبل1505114926أحمد بن حنبل241
23رخص في متعة النساء فأتيته بعد ثلاث فإذا هو يحرمها أشد التحريم ويقول فيها أشد القولسبرة بن معبدصحيح ابن حبان42334144أبو حاتم بن حبان354
24أذن لنا رسول الله في المتعة عام الفتح فانطلقت أنا ورجل آخر إلى امرأة شابة كأنها بكرة عيطاء لنستمتع بها فجلسنا بين يديها وعليه برد وعلي برد فكلمناها ومهرناها بردينا وكنت أشب منه وكان برده أجود من بردي فجعلت تنظر إلي مرة وإلى برده مرة ثم اختارتني نكحتها فأقسبرة بن معبدصحيح ابن حبان42354146أبو حاتم بن حبان354
25أذنت لكم في الاستمتاع في هذه النساء ألا وإن الله قد حرم ذلك إلى يوم القيامة فمن كان عنده منهن شيئا فليخل سبيله ولا تأخذوا مما آتيتموهن شيئاسبرة بن معبدصحيح ابن حبان42364147أبو حاتم بن حبان354
26غزا مع رسول الله قال فخرجت أنا ورجل من قومي لي عليه فضل في الجمال وهو قريب من الدمامة مع كل واحد منا برد أما بردي فبرد خلق وأما برد ابن عمي فبرد جديد غض حتى إذا كنا أسفل مكة أو بأعلاها فلقينا فتاة مثل البكرة فقلنا لها هل نستمتع منك قالت وماذا تبذلان فنشرسبرة بن معبدصحيح ابن حبان42374148أبو حاتم بن حبان354
27نهى عن المتعة وقال إنها حرام من يومكم هذا إلى يوم القيامة ومن كان أعطى شيئا فلا يأخذهسبرة بن معبدصحيح ابن حبان42394150أبو حاتم بن حبان354
28أذن لنا رسول الله في المتعة فانطلقت أنا وابن عم لي قبل أعلى مكة أو أسفل مكة فتلقتنا امرأة من بني عامر بن صعصعة كأنها بكرة عنطنطة وعلي برد لي وعلى ابن عمي برد وهو قريب من الدمامة قال فقلت هل لك أن يستمتع منك أحدنا ويعطيك برده قالت وهل يصسبرة بن معبدمستخرج أبي عوانة32284055أبو عوانة الإسفرائيني316
29نهانا رسول الله عن المتعةسبرة بن معبدمستخرج أبي عوانة32324057أبو عوانة الإسفرائيني316
30إنها حرام من حرام الله إلى يوم القيامةسبرة بن معبدمستخرج أبي عوانة32334058أبو عوانة الإسفرائيني316
31بالتمتع من النساء عام الفتح بمكة فخرجت أنا وصاحب لي من بني سليم حتى وجدنا جارية من بني عامر كأنها بكرة عيطاء فخطبناها إلى نفسها وعرضنا عليها بردينا فجعلت تنظر فتراني أشب وأجمل من صاحبي وترى برد صاحبي أحسن وأجود من بردي فآمرت نفسها ساعة ثم اختارتني على صاحسبرة بن معبدمستخرج أبي عوانة32344059أبو عوانة الإسفرائيني316
32أذن رسول الله في المتعة فانطلقت ورجل إلى امرأة من بني عامر كأنها بكرة عيطاء فعرضنا أنفسنا عليها فقالت ما تعطيني فقلت ردائي وقالت وقال صاحبي ردائي وكان رداء صاحبي أجود من ردائي وكنت أشب منه فإذا نظرت إلى رداء صاحبي أعجبها وإذا نظرت إلي أسبرة بن معبدمستخرج أبي عوانة32354060أبو عوانة الإسفرائيني316
33نهى عن متعة النساء عام الفتحسبرة بن معبدمستخرج أبي عوانة32364061أبو عوانة الإسفرائيني316
34نهى عن نكاح المتعةسبرة بن معبدمستخرج أبي عوانة32374062أبو عوانة الإسفرائيني316
35نهى عن نكاح المتعة عام الفتحسبرة بن معبدمستخرج أبي عوانة32384063أبو عوانة الإسفرائيني316
36حرم متعة النساءسبرة بن معبدمستخرج أبي عوانة32394064أبو عوانة الإسفرائيني316
37استمتعوا من هذه النساء والاستمتاع عندنا التزويج فعرضنا ذلك على النساء فأبين إلا أن يضربن بيننا وبينهن أجلا فذكرنا ذلك للنبي فقال افعلوا فخرجت أنا وابن عم لي معي برد ومعه برد أجود من بردي وأنا أشب منه فأتينا امرأة فأعجبها برده وأعجبها شسبرة بن معبدمستخرج أبي عوانة32604086أبو عوانة الإسفرائيني316
38كنت أمرتكم بهذه المتعة وإن الله قد حرمها إلى يوم القيامة فمن كان استمتع من امرأة فلا يرجع إليها وإن كان بقي من أجله شيء فلا يأخذ منها مما أعطاها شيئاسبرة بن معبدمستخرج أبي عوانة32614087أبو عوانة الإسفرائيني316
39أحللنا هذه المتعة فمن كان عنده من هذه النسوان شيء فليخل سبيلهن ولا تأخذوا مما آتيتموهن شيئا فإن الله قد حرمها إلى يوم القيامةسبرة بن معبدمستخرج أبي عوانة32624090أبو عوانة الإسفرائيني316
40إنها حرام من يومكم هذا إلى يوم القيامة ومن كان أعطى شيئا فلا يأخذهسبرة بن معبدمستخرج أبي عوانة32634091أبو عوانة الإسفرائيني316
41إنها حرام من يومكم هذا إلى يوم القيامة ومن كان أعطى شيئا فلا يأخذهسبرة بن معبدمستخرج أبي عوانة32644092أبو عوانة الإسفرائيني316
42من كان عنده شيء من هذه النساء اللاتي يتمتع بهن فليخل سبيلهاسبرة بن معبدالمسند المستخرج على صحيح مسلم لأبي نعيم30033252أبو نعيم الأصبهاني430
43حرم متعة النساء عام الفتحسبرة بن معبدالمسند المستخرج على صحيح مسلم لأبي نعيم30053254أبو نعيم الأصبهاني430
44كنت أمرتكم الاستمتاع ألا وإني والله قد حرمتهاسبرة بن معبدالمسند المستخرج على صحيح مسلم لأبي نعيم30063255أبو نعيم الأصبهاني430
45نستمتع من النساء بالمتعة ثم نهانا عنه وقال هي حرام من حرام الله إلى يوم القيامةسبرة بن معبدالمسند المستخرج على صحيح مسلم لأبي نعيم30073256أبو نعيم الأصبهاني430
46أمر أصحابه بالتمتع من النساء قال فخرجت أنا وصاحب لي من بني سليم حتى وجدنا جارية من بني عامر كأنها بكرة عيطا فخطبناها إلى نفسها وعرضنا عليها بردينا فجعلت تنظر فتراني أجل من صاحبي وترى برد صاحبي أحسن من بردي فآمرت نفسها ساعة ثم اختارتني على صاحبي فكن معنا ثسبرة بن معبدالمسند المستخرج على صحيح مسلم لأبي نعيم30083257أبو نعيم الأصبهاني430
47عن نكاح المتعة عام الفتحسبرة بن معبدالمسند المستخرج على صحيح مسلم لأبي نعيم30093258أبو نعيم الأصبهاني430
48نهى عن متعة النساءسبرة بن معبدالمسند المستخرج على صحيح مسلم لأبي نعيم30103259أبو نعيم الأصبهاني430
49نهى عن المتعة زمن الفتح متعة النساءسبرة بن معبدالمسند المستخرج على صحيح مسلم لأبي نعيم30113260أبو نعيم الأصبهاني430
50حرم متعة النساء قال إنها حرام يومكم هذا إلى يوم القيامة ومن كان أعطى شيئا فلا يأخذهسبرة بن معبدالمسند المستخرج على صحيح مسلم لأبي نعيم30133262أبو نعيم الأصبهاني430
51رخص في المتعة فكلم رجل امرأة فلما كان بعد سمعته ينهى عنها أشد النهي ويقول فيها أشد القولسبرة بن معبدالسنن الكبرى للنسائي53515517النسائي303
52أمرهم بالمتعة فخطبت أنا ورجل امرأة فأتيت النبي بعد ثلاث فإذا هو يحرمها أشد التحريم وينهى عنها أشد النهيسبرة بن معبدالسنن الكبرى للنسائي53525518النسائي303
53نهى عن المتعة وقال ألا إنها حرام من يومكم هذا إلى يوم القيامة ومن كان أعطى شيئا فلا يأخذهسبرة بن معبدالسنن الكبرى للنسائي53535519النسائي303
54نهى عن المتعة يوم الفتحسبرة بن معبدالسنن الكبرى للنسائي53545520النسائي303
55نهى عام الفتح عن متعة النساءسبرة بن معبدالسنن الكبرى للنسائي53555521النسائي303
56من كان عنده من هذه النساء اللاتي يتمتع فليخل سبيلهاسبرة بن معبدالسنن الكبرى للنسائي53595525النسائي303
57في المتعة عام الفتح فانطلقت أنا ورجل إلى امرأة شابة كأنها بكرة عيطاء نتمتع فجلسنا بين يديها وعلي برد وعليه بردة فكلمناها ومهرناها بردتنا وكنت أشب منه وكان برده أجود من بردي فجعلت تنظر إلى برده مرة وإلى بردي مرة ثم قبلتني فنكحتها فلبثت معها ثلاثا ثم إن رسوسبرة بن معبدسنن سعيد بن منصور816846سعيد بن منصور220
58نهى عن نكاح المتعة عام الفتحسبرة بن معبدسنن سعيد بن منصور817847سعيد بن منصور220
59نهى عن نكاح المتعةسبرة بن معبدالمنتقى من السنن المسندة689680ابن الجارود النيسابوري307
60كنت أذنت لكم في الاستمتاع من هذه النساء ألا فإن الله حرم ذلك إلى يوم القيامة فمن كان عنده منهن شيئا فليخل سبيلها ولا تأخذوا مما آتيتموهن شيئاسبرة بن معبدالمنتقى من السنن المسندة690681ابن الجارود النيسابوري307
61أذنت لكم في الاستمتاع من هذه النساء ألا وإني قد حرمت ذلك إلى يوم القيامة فمن بقي عنده منهن شيء فليخل سبيلها ولا تأخذوا مما آتيتموهن شيئاسبرة بن معبدالسنن الصغير للبيهقي11272609البيهقي458
62أذن رسول الله بالمتعة فانطلقت أنا ورجل إلى امرأة من بني عامر كأنها بكرة عيطاء فعرضنا عليها أنفسنا فقالت ما تعطيني فقلت ردائي وقال صاحبي ردائي وكان رداء صاحبي أجود من ردائي وكنت أشب منه فإذا نظرت إلى رداء صاحبي أعجبها وإذا نظرت إلي أعجبتسبرة بن معبدالسنن الكبرى للبيهقي131017 : 201البيهقي458
63أذن لنا رسول الله في متعة النساء فخرجت أنا ورجل من قومي ولي عليه فضل في الجمال وهو قريب من الدمامة مع كل واحد منا برد أما بردي فخلق وأما برد ابن عمي فبرد جديد غض حتى إذا كنا بأسفل مكة أو بأعلاها فتلقتنا فتاة مثل البكرة العنطنطة فقلنا هلسبرة بن معبدالسنن الكبرى للبيهقي131027 : 201البيهقي458
64أمرنا رسول الله بالمتعة عام الفتح حين دخلنا مكة ثم لم نخرج منها حتى نهى عنهسبرة بن معبدالسنن الكبرى للبيهقي131037 : 201البيهقي458
65بالتمتع من النساء فخرجت أنا وصاحب لي من بني سليم حتى وجدنا جارية من بني عامر كأنها بكرة عيطاء فخطبناها إلى نفسها وعرضنا عليها بردينا فجعلت تنظر فتراني أجمل من صاحبي وترى برد صاحبي أحسن من بردي فآمرت نفسها ساعة ثم اختارتني على صاحبي فكن معا ثلاثا ثم أمرناسبرة بن معبدالسنن الكبرى للبيهقي131047 : 201البيهقي458
66نهى عن المتعة قال إنها حرام من يومكم هذا إلى يوم القيامة ومن كان أعطى شيئا فلا يأخذهسبرة بن معبدالسنن الكبرى للبيهقي131057 : 201البيهقي458
67كنت أذنت لكم في الاستمتاع ألا وإن الله حرمها إلى يوم القيامة فمن كان عنده منهن شيء فليخل سبيلها ولا تأخذوا مما آتيتموهن شيئاسبرة بن معبدالسنن الكبرى للبيهقي131067 : 202البيهقي458
68كنت أذنت لكم في الاستمتاع من هذه النساء ألا وإني حرمت ذلك إلى يوم القيامة فمن بقي عنده منهن شيء فليخل سبيلها ولا تأخذوا مما آتيتموهن شيئاسبرة بن معبدالسنن الكبرى للبيهقي131077 : 202البيهقي458
69نهى يوم الفتح عن متعة النساءسبرة بن معبدالسنن الكبرى للبيهقي131087 : 202البيهقي458
70نهى عن نكاح المتعةسبرة بن معبدالسنن الكبرى للبيهقي131097 : 202البيهقي458
71عن نكاح المتعة عام الفتحسبرة بن معبدالسنن الكبرى للبيهقي131107 : 202البيهقي458
72نهانا رسول الله عن المتعةسبرة بن معبدالسنن الكبرى للبيهقي131177 : 204البيهقي458
73نهى عن نكاح المتعةسبرة بن معبدمعرفة السنن والآثار للبيهقي37144234البيهقي458
74أذنت لكم في الاستمتاع من هذه النساء ألا وإن الله قد حرم ذلك إلى يوم القيامة فمن كان عنده منهن شيء فليخل سبيلها ولا تأخذوا مما آتيتموهن شيئاسبرة بن معبدمعرفة السنن والآثار للبيهقي37154235البيهقي458
75نكاح المتعة عام الفتحسبرة بن معبدمسند الحميدي818869عبد الله بن الزبير الحميدي219
76آذنا لكم في هذه المتعة فمن كان عنده من هذه النسوان شيء فليرسله فإن الله قد حرمها إلى يوم القيامة ولا تأخذوا مما آتيتموهن شيئاسبرة بن معبدمسند الحميدي8192 : 97عبد الله بن الزبير الحميدي219
77أمرهم بالمتعة قال فخطبت أنا ورجل امرأة قال فأتيت النبي بعد ثلاث وإذا هو يحرمها أشد التحريم ويقول فيها أشد القول وينهى أشد النهيسبرة بن معبدمسند ابن الجعد13621582علي بن الجعد الجوهري230
78نهى عن نكاح المتعةسبرة بن معبدمسند الشافعي11581241الشافعي204
79عن نكاح المتعةسبرة بن معبدمسند الشافعي16441757الشافعي204
80نهى عن نكاح المتعةسبرة بن معبدمسند أبي يعلى الموصلي923938أبو يعلى الموصلي307
81استمتعوا من هذه النساء قال والاستمتاع عندنا التزويج قال فعرضنا ذلك على النساء فأبين إلا أن يضربن بيننا وبينهن أجلا فذكرنا ذلك لرسول الله فقال افعلوا فخرجت أنا وابن عم لي مع كل واحد منا بردة قال فمررنا بامرأة فأعجبها شبابيسبرة بن معبدمسند أبي يعلى الموصلي924939أبو يعلى الموصلي307
82نهى عن المتعة وقال ألا إنها حرام من يومكم هذا إلى يوم القيامة ومن كان أعطى شيئا فلا يأخذهسبرة بن معبدمسند عمر بن عبد العزيز للباغندي7189محمد بن سليمان الباغندي الكبير312
83نهى عن المتعة يوم الفتحسبرة بن معبدمسند عمر بن عبد العزيز للباغندي7290محمد بن سليمان الباغندي الكبير312
84نهانا رسول الله عن المتعةسبرة بن معبدمسند عمر بن عبد العزيز للباغندي7391محمد بن سليمان الباغندي الكبير312
85نهى عن المتعةسبرة بن معبدمسند الشاميين للطبراني3133سليمان بن أحمد الطبراني360
86نهى عن متعة النساء يوم فتح مكةسبرة بن معبدمسند أبي حنيفة رواية الحصكفي27218أبو حنيفة150
87نهى عن متعة النساءسبرة بن معبدمسند أبي حنيفة رواية أبي نعيم26---أبو حنيفة150
88حرم متعة النساءسبرة بن معبدمسند أبي حنيفة رواية أبي نعيم27---أبو حنيفة150
89نهى عن المتعةسبرة بن معبدمسند أبي حنيفة رواية أبي نعيم28---أبو حنيفة150
90نهى يوم فتح مكة عن متعة النساءسبرة بن معبدمسند أبي حنيفة رواية أبي نعيم30---أبو حنيفة150
91نهى عن متعة النساء يوم فتح مكةسبرة بن معبدمسند أبي حنيفة رواية أبي نعيم362---أبو حنيفة150
92نهى عن نكاح المتعةسبرة بن معبدمسند الإمام الشافعي ( ترتيب سنجر)730---الأمير سنجر745
93نهى رسول الله عن نكاح المتعةسبرة بن معبدمسند الإمام الشافعي ( ترتيب سنجر)732---الأمير سنجر745
94نهى عن متعة النساء يوم فتح مكةسبرة بن معبدمسند أبي حنيفة لابن يعقوب110---عبد الله بن محمد بن يعقوب بن البخاري340
95نهى عن متعة النساء عام الفتحسبرة بن معبدمسند أبي حنيفة لابن يعقوب111---عبد الله بن محمد بن يعقوب بن البخاري340
96نهى عن متعة النساء عام فتح مكةسبرة بن معبدمسند أبي حنيفة لابن يعقوب112---عبد الله بن محمد بن يعقوب بن البخاري340
97نهى عن متعة النساء يوم فتح مكةسبرة بن معبدمسند أبي حنيفة لابن يعقوب113---عبد الله بن محمد بن يعقوب بن البخاري340
98نهى عن متعة النساءسبرة بن معبدمسند أبي حنيفة لابن يعقوب114---عبد الله بن محمد بن يعقوب بن البخاري340
99نهى عن متعة النساء يوم فتح مكةسبرة بن معبدمسند أبي حنيفة لابن يعقوب864---عبد الله بن محمد بن يعقوب بن البخاري340
100نهى عن المتعةسبرة بن معبدمسند أبي حنيفة لابن يعقوب865---عبد الله بن محمد بن يعقوب بن البخاري340


صحیح مسلم۔ جلد:۲/ دوسرا پارہ/ حدیث نمبر:۳۴۱۳/ حدیث مرفوع
۳۴۱۳۔ و حَدَّثَنَاهُ أَبُو بَکْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ حَدَّثَنَا عَبْدَةُ بْنُ سُلَيْمَانَ عَنْ عَبْدِ الْعَزِيزِ بْنِ عُمَرَ بِهٰذَا الْإِسْنَادِ قَالَ رَأَيْتُ رَسُولَ اللہِ صَلَّی اللہُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَائِمًا بَيْنَ الرُّکْنِ وَالْبَابِ وَهُوَ يَقُولُ بِمِثْلِ حَدِيثِ ابْنِ نُمَيْرٍ۔
۳۴۱۳۔ ابوبکر بن ابی شیبہ، عبدة بن سلیمان، عبدالعزیز بن عمر اس سند سے بھی یہ حدیث اسی طرح مروی ہے اس میں یہ ہے راوی کہتے ہیں میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو رکن اور باب کعبہ کے درمیان کھڑے ہوئے یہ ارشاد فرماتے دیکھا ابن نمیر کی حدیث کی طرح۔


صحیح مسلم۔ جلد:۲/ دوسرا پارہ/ حدیث نمبر:۳۴۱۴/ حدیث مرفوع
حدثنا إِسْحَاقَ بْنُ إِبْرَاهِيمَ ، أَخْبَرَنا يَحْيَى بْنُ آدَمَ ، حدثنا إِبْرَاهِيمُ بْنُ سَعْدٍ ، عَنْ عَبْدِ الْمَلِكِ بْنِ الرَّبِيعِ بْنِ سَبْرَةَ الْجُهَنِيِّ ، عَنْ أَبِيهِ ، عَنْ جَدِّهِ ، قَالَ : " أَمَرَنَا رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بِالْمُتْعَةِ عَامَ الْفَتْحِ حِينَ دَخَلْنَا مَكَّةَ ، ثُمَّ لَمْ نَخْرُجْ مِنْهَا حَتَّى نَهَانَا عَنْهَا " .
[صحيح مسلم » كِتَاب النِّكَاحِ » بَاب نِكَاحِ الْمُتْعَةِ وَبَيَانِ أَنَّهُ أُبِيحَ ... رقم الحديث: 2511]
۳۴۱۴۔ اسحاق بن ابراہیم، یحیی بن آدم، ابراہیم بن سعد، حضرت عبدالملک بن ربیع بن سبرہ الجہنی اپنے والد سے اور وہ اپنے دادا سے روایت کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ہمیں فتح مکہ کے سال مکہ میں داخلہ کے وقت نکاح متعہ کی اجازت دی، پھر ہم مکہ سے نکلے ہی نہ تھے کہ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ہمیں اس سے منع فرما دیا۔




صحیح مسلم۔ جلد:۲/ دوسرا پارہ/ حدیث نمبر:۳۴۱۶/ حدیث مرفوع
۳۴۱۶۔ عمرو ناقد، ابن نمیر، سفیان بن عیینہ، زہری، حضرت ربیع بن سبرہ اپنے والد سے روایت کرتے ہیں کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے نکاح متعہ سے منع فرمایا۔



صحیح مسلم۔ جلد:۲/ دوسرا پارہ/ حدیث نمبر:۳۴۱۷/ حدیث مرفوع
وحدثنا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ ، حدثنا ابْنُ عُلَيَّةَ ، عَنْ مَعْمَرٍ ، عَنِ الزُّهْرِيِّ ، عَنِ الرَّبِيعِ بْنِ سَبْرَةَ ، عَنْ أَبِيهِ : أَنّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ نَهَى يَوْمَ الْفَتْح عَنْ مُتْعَةِ النِّسَاءِ " .
[صحيح مسلم » كِتَاب النِّكَاحِ » بَاب نِكَاحِ الْمُتْعَةِ وَبَيَانِ أَنَّهُ أُبِيحَ ... رقم الحديث: 2514]
۳۴۱۷۔ ابوبکر بن ابی شیبہ، ابن علیہ، معمر، زہری، حضرت ربیع بن سبرہ اپنے والد سے روایت کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فتح مکہ کے دن عورتوں کے ساتھ نکاح متعہ سے منع فرمایا۔


فتح مکہ والی روایت ضعیف ہے: شمس الدین پیرزادہ صاحب

متعہ کی رخصت کے سلسلہ میں ایک حدیث صحیح مسلم میں عبدالملک بن الربیع بن سَبرہ سے مروی ہے مگر مشہور محدث یحے یٰ بن معین نے اسے ضعیف کہا ہے اور ابوالحسن بن القطان کہتے ہیں ان کا عادل ہونا ثابت نہیں ہے ۔ اگرچہ مسلم نے ان کی حدیث بیان کی ہے لیکن وہ قابل حجت نہیں ہے ( تہذیب التہذیب لابن حجر عسقلانی ج ۶ ص ۳۹۳

شیعہ یہ بات اس وقت کریں جب وہ کہیں کہ حضرت علی کے مقابلے میں دوسرے صحابہ کا قول تسلیم کیا جاسکتا ہے، جب اہل تشیع ایسا خود تسلیم نہیں کرتے تو اعتراض کرنے کی ضرورت اس کے سوا کوئی نہیں دکھائی دیتی کہ متعہ کا جواز پیدا کیا جاسکے۔ اور صحیح مسلم میں عبد الملک ابن ربیع بن سبرہ کے علاوہ ایک دوسرے طرق سے بھی فتح مکہ کے دن متعہ کی تحریم کی روایت موجود ہے۔ابوبکر بن ابی شیبہ ، یونس بن محمد ، عبدالواحد بن زیاد ، ابوعمیس ، حضرت ایاس بن سلمہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ اپنے والد سے روایت کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے غزوہ اوطاس فتح مکہ کے سال تین دن تک متعہ کرنے کی اجازت دی پھر منع فرما دیا۔


صحیح مسلم۔ جلد:۲/ دوسرا پارہ/ حدیث نمبر:۳۴۱۹/ حدیث مرفوع
۳۴۱۹۔ و حَدَّثَنِي حَرْمَلَةُ بْنُ يَحْيٰی أَخْبَرَنَا ابْنُ وَهْبٍ أَخْبَرَنِي يُونُسُ قَالَ ابْنُ شِهَابٍ أَخْبَرَنِي عُرْوَةُ بْنُ الزُّبَيْرِ أَنَّ عَبْدَ اللہِ بْنَ الزُّبَيْرِ قَامَ بِمَکَّةَ فَقَالَ إِنَّ نَاسًا أَعْمَی اللہُ قُلُوبَهُمْ کَمَا أَعْمٰی أَبْصَارَهُمْ يُفْتُونَ بِالْمُتْعَةِ يُعَرِّضُ بِرَجُلٍ فَنَادَاهُ فَقَالَ إِنَّکَ لَجِلْفٌ جَافٍ فَلَعَمْرِي لَقَدْ کَانَتِ الْمُتْعَةُ تُفْعَلُ عَلٰی عَهْدِ إِمَامِ الْمُتَّقِينَ يُرِيدُ رَسُولَ اللہِ صَلَّی اللہُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَقَالَ لَهُ ابْنُ الزُّبَيْرِ فَجَرِّبْ بِنَفْسِکَ فَوَاللہِ لَئِنْ فَعَلْتَهَا لَأَرْجُمَنَّکَ بِأَحْجَارِکَ قَالَ ابْنُ شِهَابٍ فَأَخْبَرَنِي خَالِدُ بْنُ الْمُهَاجِرِ بْنِ سَيْفِ اللہِ أَنَّهٗ بَيْنَا هُوَ جَالِسٌ عِنْدَ رَجُلٍ جَاءَهٗ رَجُلٌ فَاسْتَفْتَاهُ فِي الْمُتْعَةِ فَأَمَرَهٗ بِهَا فَقَالَ لَهُ ابْنُ أَبِي عَمْرَةَ الْأَنْصَارِيُّ مَهْلًا قَالَ مَا هِيَ وَاللہِ لَقَدْ فُعِلَتْ فِي عَهْدِ إِمَامِ الْمُتَّقِينَ قَالَ ابْنُ أَبِي عَمْرَةَ إِنَّهَا کَانَتْ رُخْصَةً فِي أَوَّلِ الْإِسْلَامِ لِمَنْ اضْطُرَّ إِلَيْهَا کَالْمَيْتَةِ وَالدَّمِ وَلَحْمِ الْخِنْزِيرِ ثُمَّ أَحْکَمَ اللہُ الدِّينَ وَنَهٰی عَنْهَا قَالَ ابْنُ شِهَابٍ وَأَخْبَرَنِي رَبِيعُ بْنُ سَبْرَةَ الْجُهَنِيُّ أَنَّ أَبَاهُ قَالَ قَدْ کُنْتُ اسْتَمْتَعْتُ فِي عَهْدِ رَسُولِ اللہِ صَلَّی اللہُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ امْرَأَةً مِنْ بَنِي عَامِرٍ بِبُرْدَيْنِ أَحْمَرَيْنِ ثُمَّ نَهَانَا رَسُولُ اللہِ صَلَّی اللہُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنِ الْمُتْعَةِ قَالَ ابْنُ شِهَابٍ وَسَمِعْتُ رَبِيعَ بْنَ سَبْرَةَ يُحَدِّثُ ذٰلِکَ عُمَرَ بْنَ عَبْدِ الْعَزِيزِ وَأَنَا جَالِسٌ۔
۳۴۱۹۔ حرملہ بن یحیی، ابن وہب، یونس، ابن شہاب، حضرت عروہ بن زبیر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ عبد اللہ بن زبیر رضی اللہ عنہ نے مکہ میں قیام کیا تو فرمایا کہ لوگوں کے دلوں کو اللہ نے اندھا کردیا ہے جیسا کہ وہ بینائی سے نابینا ہیں کہ وہ متعہ کا فتویٰ دیتے ہیں، اتنے میں ایک آدمی نے انہیں پکارا اور کہا کہ تم کم علم اور نادان ہو، میری عمر کی قسم! امام المتقین یعنی رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے زمانہ میں متعہ کیا جاتا تھا تو ان سے ابن زبیر رضی اللہ عنہ نے کہا تم اپنے آپ پر تجربہ کرلو، اللہ کی قسم! اگر تم نے ایسا عمل کیا تو میں تمہیں پتھروں سے سنگسار کر دوں گا، ابن شہاب نے کہا مجھے خالد بن مہاجر بن سیف اللہ نے خبر دی کہ وہ ایک آدمی کے پاس بیٹھا ہوئے تھے کہ ایک آدمی نے ان سے آکر متعہ کے بارے میں فتوی طلب کیا، تو انہوں نے انہیں اس کی اجازت دے دی تو ان سے ابن ابی عمرہ انصاری نے کہا ٹھہر جاؤ! انہوں نے کہا کیا بات ہے حالانکہ امام المتقین کے زمانہ میں ایسا کیا گیا؟ ابن ابی عمرہ نے فرمایا کہ یہ رخصت ابتدائے اسلام میں مضطر آدمی کے لئے تھی مردار اور خون اور خنزیر کے گوشت کی طرح، پھر اللہ نے دین کو مضبوط کردیا اور متعہ سے منع کردیا، ابن شہاب نے کہا مجھے ربیع بن سبرہ الجہنی رضی اللہ عنہ نے خبر دی ہے، ان کے والد نے کہا میں نے نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے زمانہ میں متعہ کیا تھا، پھر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ہمیں متعہ سے منع فرما دیا، ابن شہاب نے کہا کہ میں نے ربیع بن سبرہؓ کی یہ حدیث عمر بن عبدالعزیزؒ سے بیان کرتے سنا اس حال میں کہ میں وہاں بیٹھا ہوا تھا۔



اب اگر ہم عقلی طور پر بھی اس معاملے پر غور کریں کہ اگر اسلام متعہ کو جائز کہتا تو اسلام کا وہ معاشرہ جس میں حفاظت نسب، انضباط خاندان، شرم و حیا، پاکیزگی اخلاق اور جنسی اعتدال و احتیاط کا حددرجہ خیال رکھا جاتا ہیاور کسی پر بغیر چار گواہان کے زنا کا الزام لگانے والا مستوجب سزا ہے۔ کتنا بے اعتدال، افراتفری اور گندگی کی آماجگاہ بن جاتا ہے۔ متعہ اگر جائز ہوتا تو ہر صاحب دولت ہر مہینے اور ہر دن نئے نکاح کرکے دین ہی کی آڑ میں عیاشی اور فحاشی کا کھیل کھیل سکتے ہیں۔ صاحب دولت کے علاوہ ہر عاشق و معشوق متعہ کے ہی سہارے زنا کرسکتے ہیں۔ نکاح کا اصلی تعلق جو عقلااور نقلا سمجھ میں آتا ہے کہ اللہ کی دنیا کو پاکیزگی طریقہ سے رکھا جائے۔ اور میاں بیوی زندگی بھر ایک دوسرے کی رفاقت اور غمخواری میں کوشاں ہیں، متعہ کی شکل میں قطعا فوت ہوجاتا ہے۔ خالص جنسی تلذذ اور عیاشی منزل مقصود تباہ ہوجاتی ہے اور وہ معاشرہ پھر جہنم کا نمونہ ہوگا، جس میں نکاحون کا مقصد شرکت حیات ٹہرے بلکہ لذت ہنگامی اور عشرت جنسی ہوگا۔ 



صحیح مسلم۔ جلد:۲/ دوسرا پارہ/ حدیث نمبر:۳۴۲۰/ حدیث مرفوع
وحَدَّثَنِي سَلَمَةُ بْنُ شَبِيبٍ ، حدثنا الْحَسَنُ بْنُ أَعْيَنَ ، حدثنا مَعْقِلٌ ، عَنِ ابْنِ أَبِي عَبْلَةَ ، عَنْ عُمَرَ بْنِ عَبْدِ الْعَزِيزِ ، قَالَ : حدثناالرَّبِيعُ بْنُ سَبْرَةَ الْجُهَنِيُّ ، عَنْ أَبِيهِ : أَنّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ : " نَهَى عَنِ الْمُتْعَةِ ، وَقَالَ : أَلَا إِنَّهَا حَرَامٌ مِنْ يَوْمِكُمْ هَذَا إِلَى يَوْمِ الْقِيَامَةِ ، وَمَنْ كَانَ أَعْطَى شَيْئًا ، فَلَا يَأْخُذْهُ " .
[صحيح مسلم » كِتَاب النِّكَاحِ » بَاب نِكَاحِ الْمُتْعَةِ وَبَيَانِ أَنَّهُ أُبِيحَ ... رقم الحديث: 2517]
۳۴۲۰۔ سلمہ بن شبیب، حسن بن اعین، معقل، ابن ابی عبلة، عمر بن عبدالعزیز، حضرت ربیع بن سبرہ جہنی رضی اللہ عنہ اپنے والد سے روایت کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے نکاح متعہ سے ممانعت فرمائی اور فرمایا: آگاہ رہو! یہ آج کے دن سے قیامت کے دن تک حرام ہے اور جس نے کوئی چیز دی ہو تو اسے واپس نہ لے۔




حضرت عمر رضی الله عنہ پر اپنی راۓ سے متعہ کو حرام کرنے کے الزام کا جواب.
اب غور طلب بات یہ ہے کہ سیدنا حضرت عمر رضی الله عنہ نے اپنے اجتہاد سے اسے ممنوع قرار دیا یا آنحضرت صلی الله الیہ وسلم کا ارشاد مبارک سنا کر اس ممنوعیت کو واضح کیا روایات شاہد ہیں کہ سیدنا عمر رضی الله عنہ نے اپنے بیان میں آنحضرت صلی الله علیہ وسلم کی حدیث مبارک پیش کی تھی.ملاحظه ہو
حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ خَلَفٍ الْعَسْقَلَانِيُّ ، حَدَّثَنَا الْفِرْيَابِيُّ ، عَنْ أَبَانَ بْنِ أَبِي حَازِمٍ ، عَنْ أَبِي بَكْرِ بْنِ حَفْصٍ ، عَنْ ابْنِ عُمَرَ ، قَالَ : لَمَّا وَلِيَ عُمَرُ بْنُ الْخَطَّابِ خَطَبَ النَّاسَ ، فَقَالَ : " إِنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَذِنَ لَنَا فِي الْمُتْعَةِ ثَلَاثًا ، ثُمَّ حَرَّمَهَا ، وَاللَّهِ لَا أَعْلَمُ أَحَدًا تَمَتَّعَ وَهُوَ مُحْصَنٌ إِلَّا رَجَمْتُهُ بِالْحِجَارَةِ ، إِلَّا أَنْ يَأْتِيَنِي بِأَرْبَعَةٍ يَشْهَدُونَ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ أَحَلَّهَا بَعْدَ إِذْ حَرَّمَهَا " .[ابن ماجه: 1953]


حضرت عبدللہ بن عمر رضی الله عنہ سے مروی ہے کہ جب عمر بن خطاب رضی الله عنہ خلیفہ بنے تو آپ نے لوگوں کو خطاب کرتے ہوے کہا کہ بیشک رسول الله صلی الله علیہ وسلم نے ہمیں تین دن کے لئے متعہ کی اجازت دی تھی پھر اس کو حرام قرار دیا بخدا میں کسی کے متعلق اگر معلوم کر لوں کہ اس نے متعہ کیا اور وہ شادی شدہ بھی ہے تو اس کو سنگسار کر دوں گا مگر یہ کہ وہ چار گواہ پیش کرے جو اس امر کی گواہی دیں کہ رسول الله صلی الله علیہ وسلم نے اس کو حرام ٹھہرانے کے بعد پھر اس کو حلال قرار دیا ہو .
تخريج الحديث
 م طرف الحديثالصحابياسم الكتابأفقالعزوالمصنفسنة الوفاة
1أذن لنا في المتعة ثلاثا ثم حرمها والله لا أعلم أحدا تمتع وهو محصن إلا رجمته بالحجارة إلا أن يأتيني بأربعة يشهدون أن رسول الله أحلها بعد إذ حرمهاعبد الله بن عمرسنن ابن ماجه19531963ابن ماجة القزويني275
2نهى عن متعة النساء يوم خيبر هي حرام وما كنا مسافحينعبد الله بن عمرمستخرج أبي عوانة32584084أبو عوانة الإسفرائيني316
3متعة النساء فقال حرام أما إن عمر بن الخطاب لو أخذ فيها أحدا لرجمه بالحجارةعبد الله بن عمرموطأ عبد الله بن وهب2301 : 86عبد الله بن وهب بن مسلم197
4نهى عن متعة النساءعبد الله بن عمرمسند أبي حنيفة رواية الحصكفي27016أبو حنيفة150
5نهى عن متعة النساء يوم خيبرعبد الله بن عمرمسند أبي حنيفة رواية أبي نعيم314---أبو حنيفة150
6نهى عن نكاح المتعةعبد الله بن عمرمسند أبي حنيفة لابن يعقوب88---عبد الله بن محمد بن يعقوب بن البخاري340
7نهى يوم خيبر عن متعة النساءعبد الله بن عمرمسند أبي حنيفة لابن يعقوب198---عبد الله بن محمد بن يعقوب بن البخاري340
8نهانا عنها رسول الله وما كنا مسافحينعبد الله بن عمرالمعجم الأوسط للطبراني95289295سليمان بن أحمد الطبراني360
9عن المتعة نهى عنها يوم حنين وما كنا مسافحينعبد الله بن عمرالمعجم الكبير للطبراني1297413145سليمان بن أحمد الطبراني360
10عن متعة النساء يوم خيبرعبد الله بن عمرمشيخة ابن البخاري371---أحمد بن محمد الظاهري الحنفي696
11نهى رسول الله يوم خيبر عن متعة النساءعبد الله بن عمرمن حديث خيثمة بن سليمان4---خيثمة بن سليمان الأطرابلسي343
12نهى عن متعة النساء عام خيبر وما كنا مسافحينعبد الله بن عمرجزء ابن الغطريف2121ابن الغطريف الجرجاني377
13نهى رسول الله عنهما وما كنا مسافحينعبد الله بن عمرالسابع من فوائد أبي عثمان البحيري134---البحيري330
14نهى رسول الله يوم خيبر عن متعة النساءعبد الله بن عمرمنتخب من الأول من فوائد خيثمة الأطرابلسي4---خيثمة بن سليمان الأطرابلسي343
15نهى عن متعة النساء يوم الفتحعبد الله بن عمرناسخ الحديث ومنسوخه لابن شاهين449438ابن شاهين385
16نهى عن متعة النساء عن لحوم الحمر الإنسيةعبد الله بن عمرناسخ الحديث ومنسوخه لابن شاهين450439ابن شاهين385
17نهى رسول الله يوم خيبر عن متعة النساءعبد الله بن عمرتحريم نكاح المتعة2525أبو الفتح المقدسي490
18المتعة فقال حرامعبد الله بن عمرالزيادات على كتاب المزني416502ابن زياد النيسابوري324
19يوم خيبر عن متعة النساء وما كنا مسافحينعبد الله بن عمرأحكام القرآن للجصاص322325الجصاص الحنفي370
20نهى النبي عن متعة النساء يوم خيبرعبد الله بن عمرالتاريخ الكبير للبخاري103212604محمد بن إسماعيل البخاري256
21نهى عن متعة النساءعبد الله بن عمرمناقب الإمام أبي حنيفة وصاحبيه121---الذهبي748


مگر آپ کے اس اعلان کے باوجود چار تو کجا دو گواہ بھی دستیاب نہ ہویے بلکہسبھی نے حضرت عمر رضی الله عنہ کی اس روایت کردہ حدیث پر آپ کے ساتھ موافقت فرمائی اور تسلیم کیا اور متعہ کی حرمت پر اجماع صحابہ منعقد ہوا .
حضرت عمر رضی الله عنہ نے دوران خطبہ نبی اکرم صلی الله علیہ وسلم کے منع فرمانے کی تصریح فرمائی ملاحظه ہو :
حضرت عمر رضی الله عنہ نے خطبہ دیتے ہویے فرمایا ان لوگوں کا کیا حال ہے؟ جو یہ متعہ کرتے تھے حالانکہ نبی پاک صلی الله علیہ وسلم نے اسے ترک فرمایامیرے پاس جو شخص بھی ایسا لایا گیا جس نے متعہ کیا ہو میں اسے سنگسار کر دوں گا .
در منشور ج ٢ ص ١٤١
امام بیقہی ر.ح نے ایک روایت نقل کی ہے
حضرت عمر رضی الله عنہ منبر پر تشریف لاۓ اور آپ نے خدا کی حمد و ثنا کے بعد فرمایا کہ ان کو کیا ہو گیا ہے جو نکاح متعہ ( موقت ) کرتے ہیں حالانکہ رسول الله صلی الله علیہ وسلم نے اس سے منع فرمایا ہے .
فتح الباری جلد ١٩ ص ٤٠٧
حافظ ان حجر ر.ح لکھتے ہیں
سیدنا عمر رضی الله عنہ نے اسے صرف اپنے اجتہاد سے نہ روکا تھا بلکہ آپ نے اپنی دلیل میں رسول الله صلی الله علیہ وسلم کے ارشاد کو نقل کیا تھا جس میں آپ نے متعہ کی حرمت بیان کی تھی .
حضرت علی رضی الله عنہ کی طرف سے منسوب کہ عمر ر.ض متعہ سے نہ روکتے تو کوئی بدبخت ہی زنا کرتا. ... بھلا یہ بھی ہو سکتا ہے کہ جب خود حضرت علی ر.ض سے حرمت متعہ کی صحیح اور مستند حدیث موجود ہےتو پھر اباحت متعہ کی روایت، کیا عقل باور کر سکتا ہے ؟ جس متعہ کو خود حضرت علی رضی الله عنہ حرام فرمایئں تو پھر اگر حضرت عمر رضی الله عنہ اگر حرام بتائیں تو ان پر تعن کیا ، ہرگز ہرگز نہیں غلط ہے .
دوم بالفرض حضرت علی رضی الله عنہ سے دونوں روایتیں حرمت متعہ والی اور اباحت متعہ والی صحیح مان بھی لی جایئں تو پھر حرمت اور حلّت جب جمع ہو جائیں تو عمل حرمت پر ہی ہوگا اور حلّت مردود ہوگی .
قبل ازیں آیات کلام مجید اور احادیث رسول الله صلی الله علیہ وسلم سے متعہ کی ممنوعیت واضح ہو چکی ہے اور کتب شیعہ سے بھی ممنوعیت کی روایات حضرت علی ر.ض اور امام جعفر ر.ض اور دیگر اکابر اہل بیت کے حوالے سے نقل کی گیں اور ابن ماجہ کی روایت میں ملاحظه فرما لیا کہ حضرت عمر رضی الله انہ نے اپنی طرف سے نہیں بلکہ رسول الله صلی الله علیہ وسلم کی طرف سے متعہ کی ممنوعیت فرمائی اور ساتھ مطالبہ کیا کہ اس کیممنوعیت کے بعد کسی کو اس کے حلال ٹھہرایا جانا معلوم ہو تو چار گواہ پیش کرے مگر مرکز اسلام مکّہ اور مدینہ میں ہزاروں صحابہ کی موجودگی میں چار گواہ دستیاب نہ ہویے حتی کہ فاتح خیبر علی رضی الله عنہ نے بھی شہادت نہ دی بلکہ اپنے دور خلافت میں بھی رسول الله صلی الله علیہ وسلم کی طرف سے اس کا حکم تحریم نقل فرماتے رہے جس سے اجماع صحابہ بمعہ حضرت علی مرتضیٰ رضی الله عنہ واضح ہو گیا
نوٹ : میری ایسی اوقات کہاں کے میں کہوں کہ فلاں کون ہوتا ہے متعہ کو حرام کرنے والا ، استغفراللہ


اور اگر بالفرض مان بھی لیا جائے کہ اصحاب نے متعہ کو حرام قرار دینے کی نسبت حضرت عمر رضی الله عنہ کی طرف کی ہے تو یہ بات خلیفہ وقت کی ذمداری ہے کہ وہ نبی پاک کے فرمان اور سنّت کا اہتمام کرے


متعہ کی حرمت میں اجماعِ امت کی نظر میں
اجماع بھی اس کی حرمت پر ہے،صحابہؓ سے لے کر آج تک سوائے روافض کے سب ہی نے اس کو حرام کہا ہے۔

متعہ کی حقیقت قیاس میں
قیاس: قیاس کا تقاضہ بھی یہی ہے کہ یہ حرام ہو، کیونکہ اس سے نسب خلط ملط ہوگا اور نسب کے بارے میں شریعت محمدؐیہ میں بہت اہتمام کیا گیا ہے۔


انسان فطرتا آزاد واقع ہوا ہے تو جس صورت میں ازروے مذھب ہی اس کو ایک طرف تو شہوت رانی لای سنس مل جائے
یعنی ہزار عورتوں سے متعہ کرو کہ وہ ٹھیکہ کی چیز ہیں تو انسان کو کیا غرض پری ہے کہ خواہ مخواہ منکوحات کے چکر میں پڑ کر عورت کے نان نفقہ کی زمہ داری لے اور کہیں بال و بچوں کی تعلیم و پرورش کا بھار اپنے کندھوں پر ڈالے جبکہ اسے کھلے موقع میسر ہیں
دوم جب اس امر سے کسی کو انکار نہیں کہ ہر نی چیز کشش رکھتی ہے تو مرد کمبخت کو کیا ضرورت پڑی ہے کہ وہ خواہ مخواہ ایک پرانی بوسیدہ ڈفلی بجاتا رہے ہر شب نئے مزے نہ لوٹے ، سوساءٹی میں میری اور تیری کی قید اٹھ جائے گی ہر تلوار کا حق ہوگا کہ وہ جس نیام میں چاہے گھسے
اگر ایک بار مرد نے اپنا ذہن متعہ (شہوت زنی ) کی طرف کر لیا تو عورتوں کا سر پھرا ہے جو خواہ مخواہ حمل کی تکلیف برداشت کریں ، بچوں کی پرورش کی زحمت ، خانہ داری کی درد سری محض مردوں کی خاطر برداشت کرے . عورتوں کا جی نہیں چاہے گا کہ بوڑھے کھوسٹ خاوند کی جگہ ہر شب نئے کے پہلو میں مزے اڑائیں
ولد متعہ اپنی حیثیت قائم کرنے سے ایسے عاری ہے کہ اگر ہندو پاک میں کروڑوں شیعہ آبادی ہوں تو اس میں ایک بھی اپنے آپ کو متاعی کہنے کے لئے تیار نہیں ، گویا لاکھوں متاعی مومنوں کی اولاد ہوں گے اور ہونے چاہیئں پھر جس عورت سے متعہ کیا گیا ہو چونکہ وہ پوشیدہ ہوتا ہے اس کا اعلان نہیں ہوتا اظہار نہیں ہوتا تو اب خدا معلوم ایک ہی عورت سے کون کون متعہ کرتا ہو گا اور جو اولاد ہوتی ہوگی اس میں لڑکیوں کا کیا حشر ہوتا ہوگا .
اور اس کی اتنی کباہتیں ہیں کہ مضمون لمبا ہو گیا ہے باتیں ختم نہیں ہو سکتیں .

لمحہ فکریہکیا ہے کوئی کوئی اپنی بہن اور بیٹی کی عزت کا پاسبان جو اس قسم کے گھناونے اور گندے کام کو جائز رکھے اورالٹا اسے کار ثواب دے بلکہ این ایمان سمجھے .


سوال: متعہ کب حرام ہوا؟ اس کے بارے میں مختلف روایات ہیں، بعض سے معلوم ہوتا ہے خیبر کے موقع پر متعہ حرام ہوا اور بعض سے معلوم ہوتا ہے کہ یہ اعلان فتح مکہ کے موقع پر ہوا ہے، دونوں روایات سے معلوم ہوتا ہے کہ غزوۂ اوطاس کے موقع پر حرام ہوا ہے، نیز بعض روایات میں غزوۂ تبوک بھی آیا ہے۔

جواب:(۱):   متعہ کی حرمت کا اعلان بار بار آیا ہے، جس نے جس غزوہ کے موقع پر سنا اس نے اسی غزوہ کی طرف اس کو منسوب کردیا۔
(شرح مسلم للنووی:۱/۴۵۰)

جواب:(۲):  ابتدائے خیبر کے موقع پر متعہ حرام کیا گیا تھا، پھر فتح کے موقع پر محدود وقت کے لئے اجازت دیدی گئی اور پھر قیامت تک کے لئے حرام کردیا گیا۔
(حاشیہ ترمذی۔ متعہ کی مزید تحقیق کے لئے دیکھئے:فتح الملہم:۳/۴۴۴۔ تعلیق الصبیح:۴/۲۲۔ عمدۃ القاری:۴۰۴۔ بذل المجہود:۳/۱۶۔ رسالۃ تحقیق متعہ: مولانا مفتی احمد پسروری۔ حرمت متعہ: قاضی ثناء اللہ پانی پتیؒ)

متعہ کی حرمت کے بارے میں اختلاف نہیں، اختلاف اس میں ہے کہ متعہ کب حرام قرار پایا۔ تو یہ ایک ایسی چیز ہے جس میں اختلاف کا ہونا کوئی ایسی چیز نہیں کہ متعہ کی حرمت کے بارے میں ہی شکوک پیدا کئے جائیں۔ حضرت فاطمہ کے مہر میں کافی اختلاف ہے کہ ان کا مہر کتنا تھا، احقر العباد کے سامنے اس وقت ایک معتبر شیعہ کتاب جلاء العیون موجود ہے، جس میں حضرت فاطمہ کے بیان مہر کا تذکرہ موجود ہے۔ جس سے معلوم ہوتا ہے کہ حضرت فاطمہ کے بیان مہر میں حضرت ام کلثوم بنت علی کے نکاح مہر سے کئی گنا زیادہ اختلاف ہے۔ ملاحظہ کیجئے
روایت نمبر اول : حضرت فاطمہ کا مہر دنیا و بہشت و دوزخ مقرر تھا
بسنت معتبر جناب صادق سے روایت ہے کہ حق تعالٰی نے حصہ چہارم دنیا و بہشت و دوزخ مہر جناب فاطمہ کا مقرر ہوا، کہ اپنے دشمنوں کو داخل جہنم اور دوستوں کو داخل بہشت کرینگی۔
روایت نمبر دوم : حضرت فاطمہ کا مہر ایک قیمتی زرہ تیس درہم کی تھی
قرب الاسناد میں بسند موثق جناب صادق سے روایت کی ہے کہ مہر جناب فاطمہ کا ایک قیمتی زرہ تیس درہم کی تھی۔
روایت نمبر دوم : مہر پانچ سو درہم تھا
مولف فرماتے ہیں، اشہر یہ ہے کہ مہر جناب فاطمہ پانسو درہم تھا۔
روایت نمبر سوم : سیدہ فاطمہ کا مہر زمین کا پانچواں حصہ اور چار سو اسی درہم تھا
بروایت دیگر حضرت رسول ﷺ نے کہا : یا علی ، میں نے فاطمہ کو تم سے حصہ پنجم زمین اور چار سو اسی درہم پر بحکم حق تعالٰی تزویج کیا
روایت نمبر چہارم : سیدہ فاطمہ کا مہر زمین تھا
حضرت رسول اللہ ﷺ نے علی ابن ابی طالب سے فرمایا : اے علی ، حق تعالٰی نے فاطمہ کو تم سے تزویج کیا، اور زمین اس کے مہر میں عطا کی۔ پس جو کوئی زمین پر راہ چلے، اور تمہارا دشمن ہو، وہ زمین پر حرام راہ چلا ہے۔
روایت نمبر پنجم : فاطمہ کا مہر زمین کا پانچواں حصہ ہے
بسند معتبر روایت کی ہے کہ ایک دن حضرت رسول ﷺ جناب فاطمہ کے پاس تشریف لائے ، دیکھا جناب سیدہ رو رہی ہیں۔ حضرت نے فرمایا : اے فاطمہ کیوں روتی ہو۔ تم یقین جانو اگر میرے اہل بیت میں کوئی علی سے بہتر ہوتا ، تو میں اس سے تجھے تزویج کر دیتا۔ اور میں نے تجھے اس سے تزویج نہیں کیا، بلکہ خدا نے تجھے اس سے تزویج کیا۔ اور جب تک آسمان و زمین باقی ہیں، پانچواں حصہ دنیا کا تیرے مہر میں دیا۔ 

تو آپ فرمائیے، کیا ہم کہیں کہ کیا حضرت علی کا نکاح حضرت فاطمہ سے ہوا ہی نہیں تھا؟ کسی زیلعی مسئلے میں کوئی اختلاف ہونے پر آپ واقعے کا انکار کس طرح کرتے ہیں؟ اور ابھی تو ہم نے فدک کے متعلق اہل تشیع کی بنیادی باتوں میں اختلاف کو پیش ہی نہیں کیا۔ اور امامت کے متعلق اختلافی باتیں تو پوری کتاب کی محتاج ہیں۔ اس لئے آپ ہمیں یہ نہ بتائیں کہ بعض علماء نے اختلاف کیا کہ متعہ خیبر کے دن حرام قرار پایا۔ نہ صرف اہل سنت بلکہ اہل تشیع کے اکثر فرقے جیسے زیدیہ وغیرہ بھی متعہ کو حرام کہتے ہیں اور انہوں نے اپنے ائمہ سے بھی اس متعلق روایات نقل کی ہیں۔ 

یہ اعتراض کوئی اور کرتا تو شاید اتنا عجیب نہ لگتا ، لیکن یہ اعتراض امامیہ اثنا عشریہ کی جانب سے آرہا ہے، جو کہ انتہائی تعجب کا مقام ہے۔ کیا امامیہ نہیں جانتے کہ حدیث غدیر میں ایسا ہی اختلاف ہے، اکثر روایات میں ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا
من کنت مولاہ فھذا علی مولاہ
جبکہ دوسری روایات کے مطابق اس کے بعد یہ الفاظ بھی اس روایت کا حصہ ہیں
اللّٰھم وال من والاہ وعاد من عادہ
تو بتائیے کہ یہ دوسرے الفاظ جھوٹ ہیں؟ اگر جھوٹ نہیں تو آپ کا اعترض بھی بکواس ہے۔

اعتراضات میں سب سے بھونڈا اعتراض:

نوٹ: علت میں صحابہ کے مابین آراء یہ تھیں کہ:
1۔ پالتو گدھا نجس چیزیں کھاتا ہے اس لیے حرام قرار دیا گیا۔
2۔ پھر رائے تھی اگر واقعی گدھا نجس چیزیں کھاتا ہے تو جنگلی گدھا بھی حرام قرار دیا جاتا۔
3۔ چنانچہ وجہ تھی کہ خیبر والے دن اُسی وقت گدھوں کو ایسی حالت میں پکایا جانے لگا کہ انکا "خمس" نہیں نکالا گیا تھا اور اسی وجہ سے وہ ابھی تک حرام تھے (خمس کا حکم قرآن میں ہے اور وہ کبھی منسوخ نہیں ہوا ہے)
4۔ کچھ نے کہا وجہ یہ تھی رسول اللہ ص کو پسند نہ آیا کہ سامان ڈھونے والے جانور کو یوں ذبح کر کے ضائع کر دیا جائے۔

چنانچہ خیبر میں ہوئے اس واقعہ کا تو ہر ہر شخص کو اچھی اچھی طرح علم ہے اور اختلاف صرف اس ممانعت کی "علت" میں ہے۔ مگر اسی خیبر میں متعہ کی ممانعت کے واقعہ تک کا لوگوں کو دور دور تک نصف صدی گذر جانے کے بعد بھی کوئی علم نہیں ہے۔
"واقعہ" اور اسکی "علت " میں فرق کو ملحوظ خاطر رکھئے۔

پالتو گدھے کے واقعہ کو 15 سے زائد صحابہ نے مستقل نقل کیا ہے، مگر ان میں سے کوئی بھی ایک لفظ عقد المتعہ کےخیبر میں پیش آنے والے کسی واقعے کے متعلق نہیں نکالتا۔
اسکے مقابلے میں ایک ایک قول علی ابن ابی طالب سے منسوب کیا گیا ہے جس میں دونوں گدھے اور متعہ کی حرمت بیان کی گئی ہے (مگر متعہ کے کسی واقعہ کی ایک بھی تفصیل بیان نہیں ہوئی ہے

یہ تو اب تک کے اعتراضات میں سب سے بھونڈا اعتراض ہے۔ علت کے بارے میں اختلاف رائے تو متفق علیہ روایتوں میں بھی ہوتا ہے، اس کیلئے اہل تشیع کی کتاب علل الشرائع ہی دیکھ لیں تو بات سمجھ میں آ جائے گی۔ اور پھر یہ اعتراض کہ باقی صحابہ نے متعہ کی حرمت کی بات نہیں کی، صرف حضرت علی نے کی ہے، یہ اعتراض کوئی ناصبی کرتا تو بات سمجھ میں آتی ، اہل تشیع کی طرف سے یہ اعتراض آرہا ہے، جو کہ مقام تعجب ہے۔



جھوٹ بولنے کے لیے بھی عقل کی ضرورت ہوتی ہے۔ جس احمق نے غزوہ خیبر پر متعہ کو حرام قرار دینے والی روایت گھڑی ہے، اُس کے جھوٹ کا پول کھول دینے کا پورا انتظام اللہ تعالی نے کر رکھا ہے اور وہ یہ کہ سن 7 ہجری میں غزوہ خیبر تک اہل کتاب کے ساتھ نکاح یا کسی بھی قسم کے عقد کی اجازت ہی نہ تھی۔
علامہ ابن قیم اپنی کتاب زاد المعاد ، جلد 3، صفحہ 183 میں اس جھوٹ کا پول کھولتے ہوئے تحریر فر ماتے ہیں:
وأيضا : فإن خيبر لم يكن فيها مسلمات وإنما كن يهوديات وإباحة نساء أهل الكتاب لم تكن ثبتت بعد إنما أبحن بعد ذلك في سورة المائدة بقوله ۔۔۔
ترجمہ:
"غزوہ خیبر میں صحابہ کرام کے ساتھ کوئی مسلمان عورت نہیں گئی تھی، اور خیبر میں صرف یہودی عورتیں تھیں اور اُس وقت تک اہل کتاب کی عورتوں سے عقد کرنے کی اجازت نازل ہی نہ ہوئی تھی۔ اور اہل کتاب کی عورتوں سے عقد کی اجازت غزوہ خیبر کے بعد سورۃ المائدہ میں نازل ہوئی۔"
یہ اعتراض بھی شیعہ کے لئے کوئی فائدہ مند نہیں۔ کیونکہ نکاح دائمی اگر اہل کتاب کی عورتوں کے ساتھ جائز نہیں تھا، تو اس سے متعہ جو کہ نکاح غیر دائمی ہوتا ہے، اس کے جائز یا ناجائز ہونے پر کوئی فرق نہیں پڑتا۔ اور اہل تشیع کے مطابق اہل کتاب کی عورتوں سے متعہ کرنا اب بھی جائز ہے۔



سوال: حلالہ اور متعہ میں کیا فرق ہے، اگر دونوں میں کچھ وقت کے لیے رشتہ ازدواج مقصود ہو اور اس رشتہ کے بعد میاں اوربیوی ایک دوسرے سے علیحدہ ہو جائیں؟ از راہ مہربانی جواب دے کر مشکور فرمائیں۔

جواب: متعہ خاص مدت کے لیے تمتع حاصل کرنے کا معاملہ کیا جائے جو کہ ناجائز وحرام ہے اور حلالہ میں نکاح کے وقت کی تعیین نہیں ہوتی بلکہ نکاح کی دوامی خصوصیت موجود رہتی ہے، کوئیجملہ اس کے منافی نہیں صادر کیا جاتا ہے جب کہ متعہ میں نکاح کی دوامی کیفیت کے خلاف مدت کی تعیین کی جاتی ہے کہ ہم مثلاً ایک ہفتہ ایک ماہ کے لیے تم سے نکاح کردیتے ہیں۔

حدیث سے متعہ کی تنسیخ کے حکم کا ثبوت :
ابتدائے اسلام میں حلال اور حرام کے بہت سے احکام رفتہ رفتہ نازل ہوئے، شراب اور سود کی حرمت کا حکم نبوت اور بعثت کے تقریباً 15-20 سال کے بعد نازل ہوا۔ اسی طرح متعہ کے بارے میں حکم خداوندی نازل ہونے سے پہلے جاہلیت کے رسم ورواج کے مطابق لوگ متعہ کیا کرتے تھے، اب تک اس بارے میں کوئی صریح اور واضح حکم نازل نہ ہوا تھا۔ سب سے پہلے خیبر کی لڑائی میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے اس کی حرمت کا اعلان فرمایا۔ جیسا کہ بخاری ومسلم بخاری ومسلم میں حضرت علی رضی اللہ عنہ سے صحیح سند کے ساتھ مروی ہے۔ پھر آپ نے مکہ مکرمہ میں خانہ کعبہ کے دونوں بازو پکڑ کر فرمایا متعہ قیامت تک کے لیے ہمیشہ کے واسطے حرام کیا گیا۔ پھر غزوہٴ تبوک میں اس کا اعادہ فرمایا۔ پھر حجة الوداع میں حرمت متعہ کا اعلان عام فرمایا تاکہ خواص اور عوام سب ہی کو اس کی حرمت کا علم ہوجائے۔ تفصیل کے لیے احکام القرآن للجصاص: ج۲ ص:۱۴۷، اور تفسیر مظہری کا مطالعہ کریں، نیز علامہ امام حازمی کی کتاب الاعتبار ص:۱۸۷ کی طرف مراجعت کریں۔

رافضی شیعہ نے متعہ کی اباحت پر ایسے دلائل سے استدلال کیا ہے جن میں سے کوئي دلیل بھی صحیح نہیں :
ا - اللہ سبحانہ وتعالی کافرمان ہے :
{ اس لیے جن سے تم فائدہ اٹھاؤ ان کا مقرر کیاہوا مہر دے دو } النساء ( 24 ) ۔
ان کا کہنا ہے کہ :
اس آیت میں متعہ کے مباح ہونے کی دلیل ہے ، اوراللہ تعالی کے فرمان { ان کے مہر } کو اللہ تعالی کے فرمان { استمتعتم } سے متعہ مراد لینے کا قرینہ بنایا ہے کہ یہاں سے مراد متعہ ہے ۔
رافضيوں پر رد :
اس کا رد یہ ہے کہ : اللہ تعالی نے اس سے قبل آيت میں یہ ذکرکیا ہے کہ مرد پر کونسی عورتوں سے نکاح کرنا حرام ہے اور اس آیت میں مرد کے نکاح کے لیے حلال عورتوں کا ذکر کیا اورشادی شدہ عورت کواس کا مہر دینے کا حکم دیا ہے ۔
اوراللہ تعالی نے شادی کی لذت کویہاں پر استمتاع سے تعبیر کیا ہے ، اور حدیث شریف میں بھی اسی طرح وارد ہے :
ابو ھریرہ رضي اللہ تعالی عنہ بیان کرتے ہيں کہ رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا :
( عورت پسلی کی مانند ہے اگر اسے سیدھا کرنے کی کوشش کرو گے تو توڑ بیٹھوگے ، اوراگر اس سے فائد لینے کی کوشش کرو گے تو فائدہ اٹھاؤ گے ، اوراس میں کچھ ٹیڑھا پن ہے ) صحیح بخاری حدیث نمبر ( 4889 ) صحیح مسلم حدیث نمبر ( 1468 ) ۔
اوپر والی آیت میں اللہ تعالی نے مہر کو اجرت سے تعبیر کیا ہے یہاں سے وہ مال مراد نہيں جومتعہ کرنے والا متعہ کی جانے والی عورت کوعقد متعہ میں دیتا ہے ، کتاب اللہ میں ایک اورجگہ پر بھی مہر کو اجرت کہا گيا ہے :
اللہ سبحانہ وتعالی کا فرمان ہے :
{ اے نبی ( صلی اللہ علیہ وسلم ) ہم نے تیرے لیے تیری وہ بیویاں حلال کردی ہیں جنہیں تو ان کے مہر دے چکا ہے } الاحزاب ( 50 ) ۔
تویہاں پر اللہ تعالی نے { آتیت اجورھن } کے الفاظ بولے ہیں جس سے یہ ثابت ہوا کہ شیعہ جس آیت سے متعہ کا استدلال کررہے ہیں اس میں متعہ کی اباحت کی نہ توکوئي دلیل ہی ہے اورنہ ہی کوئي قرینہ ہی پایا جاتا ہے ۔
اوراگر بالفرض ہم یہ کہیں کہ آیت اباحت متعہ پردلالت کرتی ہے توہم یہ کہيں گےکہ یہ آیت منسوخ ہے جس کا ثبوت سنت صحیحہ میں موجود ہے کہ قیامت تک کے لیے متعہ حرام کردیا گيا ہے ۔
ب – ان کی دوسری دلیل یہ ہے کہ بعض صحابہ کرام سے اس کے جائز ہونے کی روایت ملتی ہے اورخاص کر ابن عباس رضی اللہ تعالی عنہما سے ۔
اس کا رد یہ ہے کہ : رافضی و شیعہ اپنی خواہشات پر چلتے ہیں اوران میں اتباع ھواء ہے ، وہ تو سب صحابہ کرام کو ( نعوذ باللہ ) کافر قرار دیتے ہیں ، اورپھر آپ دیکھیں کہ ان کے افعال سے استدلال بھی کرتے ہیں جیسا کہ یہاں اوراس کے علاوہ بھی کئي ایک مواقع پر کیا ہے ۔
اورجن سے متعہ کے جواز کا قول ملتاہے انہیں تحریم متعہ کی نص نہیں پہنچی اس لیے انہوں نے جواز کا قول کہا ، ابن عباس رضي اللہ تعالی عنہما کے اباحت معتہ کے قول پر صحابہ کرام نے تو رد بھی کیا ہے ( جن میں علی بن ابی طالب ، اورعبداللہ بن زبیر رضي اللہ تعالی عنہم ) شامل ہیں ۔
علی رضي اللہ تعالی عنہ سے روایت ہے کہ انہوں نے ابن عباس رضي اللہ تعالی عنہما کے بارہ میں سنا کہ وہ عورتوں سے متعہ کے بارہ میں نرمی کا مظاہرہ کرتے ہیں توعلی رضي اللہ تعالی عنہ کہنے لگے :

اے ابن عباس ذرا ٹھرو بلاشبہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے خیبر کے دن اس سے اور گھریلو گدھوں سے روک دیا تھا ۔ صحیح مسلم حدیث نمبر ( 1407 ) ۔



حلّتِ متعہ پر امامیہ کے استدلال کا جوابحضرات امامیہ نے جوازِ متعہ پر قرآن کی حسب ذیل آیت سے استدلال کیا ہے۔ 
جن بیویوں سے تم نے عمل زوجیت کرلیا ہے انہیں ان کا پورا مہر ادا کرو۔
امامیہ حضرات کہتے ہیں: اس آیت کا مطلب یہ ہے کہ جن عورتوں سے تم نے متعہ کر لیا ہے ان کو اس کی اجرت ادا کرو اور یہ استدلال متعدد وجوہ سے باطل ہے۔ اوّلاً اس لیے کہ متعہ کی حقیقت یہ ہے کہ اس میں مدت متعین ہو اور اس آیت میں تعین مدت کا اصلاً ذکر نہیں ہے۔لٰہذا"استمتعتم" کا معنٰی متعہ کرنا صحیح نہیں ہے۔اصل میں یہ لفظ"استمتاع" سے ماخوذ ہے جس کا معنٰی ہے نفع حاصل کرنا اور فائدہ اٹھانا اور آیت کا صاف اور صریح مطلب یہی ہے کہ جن بیویوں سے تم عمل زوجیت کرکے جسمانی نفع حاصل کرلیا ہے، انہیں ان کا پورا مہر ادا کرو،ثانیاً اس آیت میں سے پہلے اور بعد کی آیات میں نکاح کا بیان اور اس کے احکام ذکر کیے گئے ہیں۔ اب درمیان میں اس آیت کو متعہ پر محمول کرنے سے نظم قرآن کا اختلال اور آیات کا غیر مربوط ہونا لازم آئے گا۔ثالثاً اس آیت سے متصل پہلی آیت میں فرمایا:"وَأُحِلَّ لَكُم مَّا وَرَاءَ ذَلِكُمْ أَن تَبْتَغُواْ بِأَمْوَالِكُم مُّحْصِنِينَ غَيْرَ مُسَافِحِينَ "(النساء 24) یعنی محرمات کے سوا باقی عورتیں تمھارے نکاح کے لیے حلال کردی گئی ہیں،تم مہر دے کر اس سے فائدہ اٹھاؤ بشرطیکہ تم انہیں حصن بناؤ اور سفاح نہ کرو۔ حصن کا معنٰی ہے:قلعہ، یعنی عورت سے نفع اندوزی تب حلال ہے جب وہ تمہارے نطفہ کی حفاظت کے لیے قلعہ بن جائے اور متعہ سے عورت قلعہ نہیں بنتی، ہر ہفتہ دوسرے کے پہلو میں ہوتی ہے،اسی وجہ سے متعہ سے نسب محفوظ نہیں رہتا،اب اگر"فما استمتعتم" کا معنٰی متعہ کرلیا جائے تو قرآن کریم کی دو متصل آیتوں میں کھلا تصادم لازم آئے گا کہ پہلی آیت سے متعہ حرام ہوا اور دوسری آیت سے حلال اور قرآن کریم اس تضاد کا متحمل نہیں ہے۔ رابعاًسفاح کا معنٰی ہے: محض قضاء شہوت اور نطفہ گرادینا اور مطلب یہ ہے کہ عورت سے نفع اندوزی حلال ہے، بشرطیکہ تمہارا مقصد محض قضاء شہوت اور جنسی تسکین نہ ہو بلکہ اولاد کو طلب کرنا مقصود ہو اور ظاہر ہے کہ متعہ سوائے قضاء شہوت اور جنسی تسکین کے اور کچھ مقصود نہیں ہوتا۔ پس متعہ جائز نہ رہا اور جب اس آیت سے متعہ حرام ہوا تو اس سے اگلی آیت میں حلّت متعہ کا معنی کرنا باطل ہوگا۔
امامیہ حضرات کہتے ہیں کہ بعض روایات میں مذکور ہے کہ بعض قرأت میں "فما استمتعتم بہ منھن" کے بعد" الی اجل مسمی" بھی پڑھا گیا ہے، اب معنٰی یوں ہوگا: جن عورتوں سے تم نے مدت معینہ تک فائدہ اٹھایا ان کو اجرت دے دو یہ بعینہ متعہ ہے کیونکہ اب آیت میں مدت اور اجرت دونوں کاذکر آگیا اور یہی متعہ کے ارکان ہیں،یہ ٹھیک ہے کہ یہ روایت خبر واحد ہے اور اس روایت سے یہ الفاظ قرآن کا جزو نہیں بن سکتا۔ لیکن متعہ ثابت کرنے کے لیے اس قدر کافی ہے کہ بعض قرأت میں "الی اجل مسمی" کے الفاظ موجود ہیں۔
اس استدلال کے جواب میں اوّلاً معروض ہے کہ "الی اجل مسمی" سے استدلال تب ہوگا جب اسے "فما استمتعتم بہ" کے ساتھ لاحق کرکے قرآن کا جُزو مانا جائے اور شیعہ حضرات کو بھی یہ تسلیم ہے کہ بغیر تواتر کے محض خبر واحد سے کوئی لفظ قرآن کا جزو نہیں بن سکتا۔لٰہذا اس قرأت سے جوازِ متعہ پر استدلال صحیح نہ رہا۔
ثانیاً تفاسیر میں جہاں اس روایت کو ذکر کیا ہے وہیں تصریح کردی ہے کہ یہ روایت معتمد نہیں ہے اور قرآن کریم میں اس کی تلاوت کرنا اور اس سے کوئی حکم ثابت کرنا جائز نہیں ہے،چنانچہ ابوبکر رازی الجصاص المتوفی 370ھ فرماتے ہیں۔
فانہ لا یجوز اثبات الاجل فی تلاوتہ عند احد من المسلمین فالا جل اذا غیر ثابت فی القران۔(احکام القرآن ج2 ص 14
"تلاوت میں اجل پڑھنا کسی مسلمان کے نزدیک جائز نہیں ہے اور یہ لفظ قرآن میں ثابت نہیں ہے۔"
اور ابن جریر طبری المتوفی 310ھ فرماتے ہیں:
واما ماروی عن ابی بن کعب وابن عباس من قرأتھما فما استمتعتم بہ منھن الی اجل مسمی فقرا بخلاف ما جاء ت بہ صحائف وغیر جائز لاحد ان یلحق فی کتاب اللہ تعالی شیئا لم یات بہ الخیر القاطع (تفسیر طبری جز 3 ص 13)
"ابی بن کعب اور ابن عباس کی ایک قرأت میں جز "الی اجل مسمی" کے الفاظ مروی ہیں وہ تمام مصاحف المسلمین کے خلاف ہیں اور کسی کے لیے جائز نہیں کہ وہ کتاب اللہ میں بغیر خبر متواتر کے کسی چیز کا اضافہ کرے۔"
ثالثاً صرف کسی روایت کا موجود ہونا اس کی ثقاہت کے لیے کافی نہیں۔روایات تو صحیح سے لے کر موضوع تک ہر قسم کی موجود ہیں۔ کیونکہ رافضی،قدری،جہمی ہر طرح کے بد عقیدہ لوگوں نے اپنے اپنے مذہب کے موافق روایات وضع کرکے شائع کردی تھیں۔ یہ محدثین کرام کا ملت اسلامیہ پر احسان عظیم ہے کہ انہوں نے علم اسماء رجال ایجاد کرکے ہر حدیث کی صحت اور وضع پرکھنے کا ذریعہ مہیا کردیا۔
جس روایت کے سہارے امامیہ حضراے نے"الی اجل مسمی" کی قرأت کو تسلیم کیا ہے، ہم آپ کے سامنے اس روایت کے طرق اور اسانید کا حال بیان کردیتے ہیں،جس سے روایت کی حقیقت سامنے آجائے گی۔
ابن جریر طبری اس روایت کی سند بیان کرتے ہیں:

حدثنا محمد بن الحسین قال حدثنا احمد بن المفضل قال ثنا اسباط عن السدی فما استمتعتم بہ منھم الی اجل مسمی فاتو ھن اجورھن۔(تفسیر طبری ج5ص12)
اس سند کا ایک راوی احمد بن مفضل ہے،ازدی نے کہا:یہ منکرالحدیث ہے اور ابو حاتم نے بیان کیا کہ یہ رؤسا شیعہ میں سے تھا۔(تہذیب التہذیب ج6ص96) اس سند کا تیسرا آدمی اسباط ہے،امام نسائی نے کہا:یہ قوی نہ تھا۔ ابن معین نے کہا۔" لیس بشیء"یہ کچھ بھی نہیں۔ابو نعیم نے کہا:بہت ضعیف تھا۔(تہذیب التہذیب ج1ص81) اس سند کا چوتھا راوی اسماعیل بن عبدالرحمٰن السدی ہے،جو زجانی نے کہا:یہ کذاب تھا،صحابہ کرام کو سب و شتم کرتا تھا۔ حسین واقد نے کہا:میں سماع حدیث کے لیے اس کے پاس آیا،جب دیکھا کہ یہ حضرت ابو بکر و عمر کو برا بھلا کہتا ہے تو میں چلا آیا اور پھر کبھی اس کے پاس نہیں گیا۔ ان ابی سلین نے کہا کہ یہ شیخین کی شان میں بدگوئی کرتا تھا۔طبری نے کہا: اس کی روایات لائق استدلال نہیں ہیں۔(تہذیب التہذیب ج1ص317)
اس روایت کی دوسری سند ملاحظہ ہو۔حدثنا ابو کریب قال حدثنا یحیی بن عیسی قال حدثنا نصیر بن ابی الاشعث قال حدثنی حبیب بن ابی ثابت قال اعطانی ابن عباس مصحفا فقال ھذا علی قراۃ ابی قال ابو بکر قال یحیی فرایت المصحف عند نصیر فیہ فما استمتعتم بہ منھن الی اجل مسمی۔ (تفسیر طبری ج5ص263)
اس سند میں ایک راوی ہے یحییٰ بن عیسٰی،نسائی نے کہا: یہ قوی نہ تھا۔(میزان الاعتدال ج4ص401-402) سلمہ نے کہا:اس میں ضعف تھا۔ابن معین نے کہا:"لیس بشیء" یہ کچھ نہ تھا۔عجلی نے کہا:اس میں تشیع تھا۔(تہذیب التہذیب ج11ص263)

ان دونوں سندوں میں رافضی منکرالحدیث اور کذاب راوی موجود ہیں۔ پس ایسے لوگوں کی بنیاد پر کوئی روایت کس طرح قابل قبول ہوسکتی ہے، ان دونوں سندوں کے بعد ایک اور سند پیش خدمت ہے:
حدثنا ابن المثنی قال ثنی عبدالاعلی قال ثنی داؤد عن ابی نضر ۃ قال سالت ابن عباس عن المتعہ فذکر نحوہ۔ (طبری جز5ص12)
اس سند میں ایک راوی ہے عبدالاعلٰی،ابن سعد نے کہا:یہ قوی نہ تھا۔ابن حبان اور امام محمد نے کہا:یہ قدریہ عقائد کا حامل تھا۔(تہذیب التہذیب ج6ص96) اس سند کا ایک راوی ہے داؤد ابن ابی ہند،اس کے بارے میں تصریح ہے کہ اس کی روایات میں اضطراب تھا اور یہ کثیر الخلاف تھا۔( تہذیب التہذیب ج3ص205) ان حوالوں سے ظاہر ہوگیا کہ اس روایت کے طرق میں بکثرت رافضی قدری جیسے بدعقیدہ اور کذاب،منکرالحدیث،کثیرالخلا ف اور ضعیف راوی موجود ہیں۔ لٰہذا یہ روایت قطعاً باطل اور جعلی ہے۔

رابعاً ابن عباس اس آیت کو کس طرح پڑھتے تھے اور استمتاع سے ان کی مراد متعہ تھی یا نکاح، اس بارے میں ابن جریر نے جو روایت صحیح سند کے ساتھ ذکر کی ہے وہ یہ ہے:
حدثنی المثنی قال ثنا عبد اللہ بن صالح قال ثنی معاویۃ بن صالح بن ابی طلحۃ عن ابن عباس قولہ فما استمتعتم بہ منھن فاتوھن اجورھن فریضۃ یقول اذا تزوج الرجل المرأۃ ثم نکحھا مرۃ واحدۃ وجب صداقھا کلہ والا ستمتاع ھو النکاح۔( تفسیر طبری جز5ص11)
حضرت ابن عباس سے روایت ہے کہ انہوں نے"فما استمتعم بہ منھن فاتوھن اجورھن"پڑھا(بغیر"الی اجل مسمی"کے) اور اس کی تفسیر میں فرمایا: جب شادی کے بعد کوئی شخص ایک بار بھی عمل زوجیت کرے تو اس پر پورا مہر واجب ہوجاتا ہے اور فرمایا:اسمتاع سے مراد نکاح ہے۔

اگر "فما استمتعتم"کے بعد"الی اجل مسمی" پڑھا جائے تو استمتاع سے مراد نکاح کسی صورت میں نہیں ہوسکتا۔ متعہ ہی مراد لینا پڑے گا اور جب ابن عباس نے فرمایا: استمتاع سے مراد نکاح ہے اور بغیر "الی اجل مسمی" اس آیت کو پڑھا تو معلوم ہوا کہ "الی اجل مسمی" پڑھنے کی نسبت اس کی طرف کرنا سراسر افتراء ہے اور یہ روایت صحیح السند ہے اور مصاحف مسلمین کے مطابق ہے۔ اسے چھوڑ کر رافضیوں اور قدریوں کی روایت کو لینا جو مصاحف مسلمین کے مخالف اور نظم قرآن سے متصادم ہے، صریح ہٹ دھرمی کے سوا اور کیا ہے۔
امامیہ حضرات کہتے ہیں کہ ابن عباس جواز متعہ کا فتویٰ دیتے تھے اور چونکہ اہل سنت کے نزدیک حضرت ابن عباس کی شخصیت واجب التسلیم ہے اس لیے اس پر لازم ہے کہ ان کے فتویٰ کا احترام کریں۔ہماری گزارش یہ ہے کہ ابن عباس رضی اللہ تعالی عنہما نے مطلقاً جواز کا فتویٰ نہیں دیا، وہ متعہ کو مردار اور خنزیر کی طرح حرام سمجھتے تھے اور جس حالت اضطرار میں مردار اور خنزیر کھانا جائز ہے اسی طرح ان کے نزدیک حالت اضطرار میں متعہ کرنا بھی جائز تھا۔ چنانچہ علامہ نیشا پوری المتوفی 728ھ فرماتے ہیں:
ان الناس لما ذکروا الاشعار فی فتیا ابن عباس فی المتعۃ قال قاتلھم اللہ الی ما افتیت با باحتھا علی الاطلاق لکنی قلت انھا تحل للمضطر کما تحل المیتۃ والدم ولحم الخنزیر۔
"جب لوگوں نے ابن عباس کے فتویٰ کی وجہ سے ان کی ہجو میں اشعار کہے تو انہوں نے کہا: خدا ان کو ہلاک کرے،میں نے علی الاطلاق متعہ کی اباحت کا فتوی نہیں دیا، بلکہ میں نے کہا تھا کہ متعہ مضطر کے لیے حلال ہے جیسے مُردار،خنزیر اور خون کا حکم ہے۔
اس روایت کو ابو بکر رازی الجصاص نے "احکام القرآن"ج2ص147 پر اور ابن ہمام المتوفی 861ھ نے "فتح القدیر" ج2ص386 اور علامی آلوسی المتوفی 1270ھ نے "روح المعانی" جز5ص6پر ذکر کیا ہے۔

حضرت ابن عباس کا مضطر کے لیے اباحت متعہ کا فتویٰ دینا بھی ان کی اجتہادی خطاء پر مبنی تھا اور جب ان پر حق واضح ہوگیا تو انہوں نے اس فتویٰ سے رجوع کرلیا اور اللہ تعالی سے توبہ کی، چنانچہ علامہ نیشاپوری لکھتے ہیں:
انہ رجع عن ذالک عند موتہ وقال انی اتوب الیک فی الصرف والمتعۃ (غرآئب القرآن جز5ص16)
"ابن عباس نے اپنے مرنے سے پہلے اپنے فتویٰ سے رجوع کیا اور کہا:میں صرف اور متعہ سے رجوع کرتا ہوں۔
"فالصحح حکایت من حکی عنہ الرجوع عنھا" "صحیح روایت یہ ہے کہ حضرت ابن عباس نے جواز متعہ سے رجوع کرلیا تھا"۔
نیز فرماتے ہیں:
"نزل عن قولہ فی الصرف و قولہ فی المتعۃ"(احکام القرآن ج6ص147-179)"ابن عباس سے صرف اور متعہ سے رجوع کرلیا تھا""۔
علامہ بدر الدین عینی المتوفی 855ھ نے “عمدۃ القاری“ جز 17 ص 246 پر اور علامہ ابن حجر عسقلانی المتوفی 852ھ نے “فتح الباری“ ج11 ص77 پر حضرت ابن عباس کا متعہ سے رجوع بیان فرمایا ہے اور اہلسنت کے تمام محقیقین نے اسی پر اعتماد کا اظہار فرمایا ہے، پھر کس قدر حیرت اور افسوس کی بات ہے کہ جس بات سے حضرت ابن عباس رجوع فرماچکے ہیں اسے ان کا مسلک قراردے کر اس کی بنیاد پر اپنے مسلک کی دیوار استوار کی جائے۔
حضرت علامہ ابو عمرو یوسف بن عبدالبر مالکی لکھتے ہیں۔ اصحاب ابن عباس من اھل مکۃ والیمن علیٰ اباحتھاتم اتفق فقھاء الامصار علیٰ تحریمھا۔ مکہ اور یمن میں مقیم اصحاب ابن عباس پہلے اباحت متعہ کے قائل تھے پھر جب ان کو صریح حدیث مل گئی اور ابن عباس کا رجوع بھی معلوم ہوا تو تمام فقہاء کرام متعہ کی حرمت پر متفق ہو گئے۔ فتح الباری جلد ۹ ص ۲

حافظ ابن حجر عسقلانی لکھتے ہیں۔ وقہ نقل ابو عوانہ فی صحیحہ عن ابن جریج انہ رجع عنھا۔ حضرام امام ابو عوانہ نے اپنی صحیح میں اس بات کو نقل کیا ہے کہ حضرت ابن جریج نے (اپنے اباحت والے قول سے ) رجوع کر لیا تھا۔

رقہ اعترف ابن حزم مع ذٰلک بتحریمھا لثبرت قولہ علیہ السلام انھا حرام الیٰ یوم القیامۃ۔
علامہ ابن حزم نے اس بات کا اقرار کیا ہے کہ متعہ حرام ہے کیونکہ حضرت صلی اللہ علیہ وسلم سے ثابت ہے کہ متعہ اب قیامت تک حرام ہے۔ فتح الباری جلد ۹ ۲۰۹
علامہ ابن جریر طبری مختلف اقوال درج کرنے کے بعد لکھتے ہیں۔
واولی التاویلین فی ذٰلک بالصواب تاویل من تاولہ فما نکحتموا منھن فجا معتموھن فاتوھن اجورھن لقیام الحجۃ بتحریم اللہ تعالیٰ متعۃ النساء علیٰ غیر زوجہ النکاح الصحیح او الملک علیٰ لسان رسولہ صلی اللہ علیہ وسلم۔دونوں تفسیروں میں سے اولیٰ اور بہتر تفسیر یہ ہے کہ جن عورتوں سے تم نکاح کرو پھر ان سے مجامعت کرو تو ان کو ان کے مہر ادا کر دو کیونکہ نکاح صحیح اور مملوکہ باندی کے سوا متعۃ النساء کا حرام ہونا آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی زبان مبارکہ سے ثابت ہو چکا ہے اور اس پر حجت قائم ہو چکی۔
 


عن زید بن علی عن آبائہ علیھم السلام قال رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم لحوم الحمر الاھلیۃ و نکاح المتعۃ۔ (الا ستبصارجلد نمبر۳ ص ۲۰۱)
حضرت علی رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے پالتو گدھوں کو اور متعہ کو حرام فرمادیا ہے۔
حضرت علی رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے پالتو گدھوں کو اور متعہ کو حرام فرمادیا ہے۔
"استبصار" کے علاوہ امامیہ کی دوسری کتب صحاح میں بھی حرمت متعہ کی روایات موجود ہیں۔ شیعہ حضرات ان کے جواب میں بے دھڑک کہہ دیتے ہیں کہ حضرت علی نے ایسی روایت تقیۃً بیان فرمائی ہیں اور جان کے خوف سے تقیۃً بیان فرمائی ہیں اور جان کے خوف سے تقیۃً جھوٹ بولنا عین دین ہے۔ کیونکہ "کافی کلینی" میں ہے:"من لا تقیۃ لہ لا دین لہ" جو ضرورت کے وقت تقیہ نہ کرے وہ بے دین ہے۔سوال یہ ہے کہ حضرت امام حسین رضی اللہ عنہ نے جب یزید کے خلاف آوازہ حق بلند کیا اور ہزار ہا مخالفوں کے سامنے تلواروں کے جھنکار اور تیر و تفنگ کی بوچھاڑ میں بیعت یزید سے انکار کیا تو کیا اس وقت امام حسین تعک تقیہ کی وجہ سے (معاذ اللہ) بے دین ہوگئے تھے؟ اور اگر ایسے شدید ابتلاء میں بھی تقیہ نہ کرنا ہی حق و صواب تھا تو حضرت علی کا بغیر کسی ابتلاء کے بے حساب روایات تقیۃً بیان کرنا کس طح حق و ثواب ہوگا؟ کاش! امامیہ حضرات میں سے کوئی شخص اس نکتہ کو حل کرکے لاکھوں انسانوں کی ذہنی خلش کو دور کرسکے

تہذیب الاحکام جلد ۲ ص ۱۸۲ مطبوعہ ایران۔۔۔ ۔۔۔ ۔۔۔ ۔۔۔ ۔۔۔ ۔ میں روایت کو مانا گیا ہے اور تقیہ کہا گیا۔ 

ان هذا الرواية وردت موردة التقية ۔۔۔ ۔۔۔ ۔۔۔ ۔۔۔ ۔۔۔ ۔۔ یہ روایت یقینا تقیہ کے طور پر وارد ہوئی ہے۔

وسائل الشیعہ جلد ۵۔ص۔ ۴۳۸ میں* درج ہے۔

اباحۃ المتعۃ من ضروریات مذہب الامامیۃ۔ شیخ محمد بن حسن۔

شیخ الطائفہ بھی لکھتے ہیں*کہ یہ روایت تقیہ ہے۔

فالوجہ فی ہذا الروایۃ ان علی التقیۃ لانہا موافقۃ لذاھب العامۃ و الاخبار الادلۃ موافقۃ لظاھر الکتاب و اجماع الفرقۃ علی موجھا فیحب ان یکون العمل بھادون ھذہ الروایۃ الشاذۃ۔

شیخ محمد بن حسن الحر العاملی کہتا ہے۔ اقول حملہ الشیخ وغیرہ علي التقية يعني في الرواية لان اباحة المتعة من ضروريات مذهب الامامية ۔ یعنی جن روایات میں حضرت علی سے متعہ کی ممانعت آتی ہے اس کو ہم تقیہ پر محمول کرتے رہیں گے۔ کیونکہ شیعہ امامیہ کی دوسری مستند روایات سے متعہ کا حلال ہونا واضح ہے اور متعہ کی اباحت مذہب امامیہ کی ضروریات دین میں سے ہے۔ اس لیے ممنوع والی روایتوں سے استدلال کرنا صحیح نہیں بلکہ عمل اسی پر ہوگا جن پر شیعوں کا اجماع ہے۔ وسائل الشیعہ جلد ۷ ۴۴۱ مطبوعہ تہران

حضرت علامہ ابو جعفر احمد بن محمد نحوی مصری لکھتے ہیں ۔ ان ابن عباس لما خاطبه علي بهذا لم يحاجه فصار تحريم المتعۃ اجماھا لان الذین یحلونھا اعتمادھم علی ابن عباس ۔ حضرت علی کرم اللہ وجہہ نے حضرت ابن عباسؓ سے بات چیت کی تو حضرت ابن عباسؓ نے حضرت علی کرم اللہ وجہہ سے کوئی حجت نہ کی پس اس کے ذریعہ متعہ کی حرمت پر اجماع ہو گیا اس لیے کہ جو لوگ متعہ کی اباحت کے قائل تھے ان کا سارا دارومدار ابن عباس کے قول پر تھا ۔ تفسیر نحاس ص ۱۰۶

قاضی عبدالجبار متعزلی لکھتے ہیں وانکر ذالک علی رضی اللہ عنہ لما بلغہ اباحۃ ابن عباس انکار ظاہر اوقد عنہ رضی اللہ عنہ الرجوع عن ذالک فصار اجماعا من کل صحابۃ۔
جب حضرت علی رضی اللہ عنہ کو حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہ کے متعہ کے مباح ہونے کے قول کی خبر پہنچی تو آپ نے حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہ پر سخت انکار کیا اور مروی ہے کہ ابن عباس رضی اللہ عنہ نے اپنے قول سے رجوع کر لیا تھا۔پس حرمت متعہ پر تمام صحابہ کا اجماع ہو گیا۔ (تفسیر تنزیہ القرآن ص ۸۴)

اور اب ایک شعیہ عالم کی رائے

شیعی عالم ڈاکٹر موسی الموسوی لکھتےہیں ۔ حضرت علی رضی اللہ عنہ نے اپنی خلافت کے زمانے میں اس حرمت کو برقرار رکھا اور جواز متعہ کا حکم صادر نہیں فرمایا۔ شیعی عرف اور ہمارے فقہاء شیعہ کی رائے کے مطابق امام کا عمل حجت ہوتا ہے خصوصاً جب کہ امام با اختیار ہو۔ اظہار رائے کی آزادی رکھتا ہو اور احکام الٰہی کے اوامر و نواہی بیان کر سکتا ہو اس صورت میں امام علی رضی اللہ عنہ کی حرمت متعہ کو برقرار رکھنے کا مطلب یہ ہوا کہ وہ عہد نبوی میں حرام تھا۔ اگر ایسا نہ ہوتا تو ضروری تھا کہ وہ اس حکم تحریم کی مخالفت کرتے اور اس کے متعلق صحیح حکم الٰہی بیان کرتے اور عمل امام شیعہ پر حجت ہے میں نہیں سمجھ پایا کہ ہمارے فقہاء شیعہ کو یہ جرات کیسے ہوئی کہ وہ اس کو دیوار پر مار دیتے ہیں۔ اصلاح شیعہ ۱۱۲

ایک روایت استبصار سے اس میں نہ فتح* مکہ کا خبیر کا ذکربھی نہیں مگر حرمت متعہ کا ذکر واضح ہے۔

حضرت علی رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں ۔ حرم رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم لحرم الحمر الاھلیۃ ونکاح المتعۃ ۔ الاستبصار جلد ۳ ص ۱۴۲

علی بن یقطین سے روایت ہے کہ میں موسیَ کاظم علیہ اسلام سے(متعہ) کے بارے میں دریافت کیا تو انہوں نے جواب دیا، تم کو متعہ سے کیا سروکار ہے۔ اللہ تعالیَ نےتو تم کو اس سے بے نیاز فرمایا ہے۔

( حرم رسول الله صلى الله عليه وآله يوم خيبر لحوم الحمر الأهلية ونكاح المتعة) انظر (التهذيب 2/186)، (الاستبصار 2/142) ، (وسائل الشيعة 14/441).

امیری المومنین علیہ السلام نے فرمایا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے خیبر کے روز گدھے کے گوشت اور متعہ النساء کی ممانعت کر دی تھی۔

عن عبد الله بن سنان قال سألت أبا عبد الله عليه السلام عن المتعة فقال: (لا تدنس نفسك بـها) (بحار الأنوار 100/31.
عبداللہ بن سنان بیان کرتے ہیں کہ میں نے ابو عبداللہ سے متعہ کے بارے میں پوشھا تو انہوں نے کہا مت گندہ کرو اپنے نفس کو اس سے۔ 
 Attached Images    

عَنْ أَسْمَائَ بِنْتِ أَبِي بَکْرٍ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُمَا قَالَتْ نَحَرْنَا عَلَی عَهْدِ النَّبِيِّ صَلَّی اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَرَسًا فَأَکَلْنَاهُ۔

عَنْ أَسْمَائَ قَالَتْ ذَبَحْنَا عَلَی عَهْدِ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّی اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَرَسًا وَنَحْنُ بِالْمَدِينَةِ فَأَکَلْنَاهُ۔
(صحیح بخاری 5086،5087)

شیخ الاسلام حافظ بن حضر عسقلانی رحمہ نے شرح بخاری میں "ذبحنا" والی روایت بھی نقل فرمائی ہے۔
(فتح الباری جلد ۳ ص۵۳)

حضرت اسماء رضی اللہ سے روایت ہے ہم نے حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے دور میں گھوڑا ذبح کیا اور ہم اسے کھا گئے۔

تو کیا اس سے یہ مراد لی جائے کہ پورا گھوڑا حضرت اسماء رضی اللہ عنہ نے ذبح بھی کیا اور کھا بھی گئیں۔مذکورہ بالا روایت میں نحرنا (ہم نے نحر کیا ) اور ذبحنا (ہم نے ذبح کیا) کےالفاظ سامنے رکھیے۔ عورتوں کا اونٹ کو نحر کرنا اور جانوروں کو ذبح کرنا اس دور میں نہ تو معروف تھا اور نہ ایسا ہوتا تھا۔ مرد ہی جانوروں کو نحر اور ذبح کیا کرتے تھے۔ حضرت اسماء رضی اللہ عنہ اس حدیث میں ایک واقعہ کی حکایت نقل کرتی ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانے میں گھوڑوں کو نحر اور ذبح کیا جاتا تھا۔ آپ کا یہ مطلب نہیں کہ میں جانوروں کو نحر اور ذبح کیا کرتی تھی۔

اس اسلوب بیان سے یہ بات کھل جاتی ہے کہ فعلناھا سےحضرت اسماء رضی اللہ عنہ کی مراد یہ ہے کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانہ میں ایک وقت تک نکاح موقت ہوتا رہا ہے اور یہ ممنوع نہ تھا اور لوگ کیا کرتے تھے۔

اگر پھر بھی اعتراض قائم ہے تو مندرجہ ذیل روایت کہ وضاحت کیجئے۔

لقد کنا مع رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم تقتل اٰباءنا وبنائنا و اخواننا اوعمامنا (نہج البلاغہ جلد ا ص ۱۲۰)

بے شک ہم حضور صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ اپنے باپوں بیٹیوں بھائیوں اور چچاؤں کو قتل کرتے تھے۔
(تقتل کا معنی ہے ہم قتل کرتے تھے)۔


اسماء بن ابوبکر صدیق ر.ض اور متعہ کا االزام
تاریخ مسعودی اہل تشیع کی کتاب ہے اور بغض صحابہ سے بھری پری ہے .اس لئے یہ ہمارے لئے حجت نہیں . مگر پھر بھی اگر مذکورہ روایت کو دیکھا جائے تو پتا چلے گا کہ شیعہ مجتہدین نے اس روایت میں خیانت کا ارتکاب کیا ہے یہ قصہ متعہ الحج کا نہ کہ متعہ النساء کاجس جگہ مذکورہ عبارت درج ہے اس کے بلکل ساتھ یہ الفاظ موجود ہیں
یرید متعہ الحج : یعنی اس سے مراد متعہ الحج ہے
اور تو اپنے سکین کی تیسری لائن میں دیکھ لے متعہ الحج لکھا ہوا ہے
شیعہ مجتہد کا کہنا کہ حضرت عبدللہ بن زبیر رضی الله عنہ متعہ کی پیداوار تھے (ھٰذہ بہتان العظیم ) انتہائی غلط بیانی ہے زبیر ر.ض اور اسماء ر.ض کا نکاح ایک ایسی کھلی حقیقت ہے کہ تقریبا تمام مورخوں اور تذکرہ نگاروں نے اسے ذکر کیا ہے خود تیرے مسودی نے بھی اس کا اعتراف کیا ہے کہحضرت زبیر رضی الله عنہ اور حضرت اسماء رضی الله عنھما کی باقاعدہ شادی ہوئی تھی اور اس وقت اسماء ر.ض کنواری تھیں . 

شیعہ عالم المسعودی مروج الذہب جلد ۳ صفحہ ۸۲ پر اپنے ہی لوگوں کا رد کرتے ہوئے لکھتے ہیں۔

لان الزبیر تزوج اسماء بکر ا فی الاسلام وزوجہ ابوبکر معلنا فکیف تکون متعۃ النساء۔ (مروج الذہب جلد ۳ ص ۸۲)

حضرت زبیر رضی اللہ عنہ نے حضرت اسماء رضی اللہ عنہ کے ساتھ باکرہ ہونے کی حالت میں اسلام کی شادی کی تھی اور حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ نے کھلے عام یہ شادی کرائی تھی۔ پس اس سے کیسے متعتۃ النساء ثابت ہو سکتا ہے۔


امام بخاری رحمہ صحیح بخاری میں حضرت زبیر اور اسماء رضی اللہ عنہ کی غیرت کے بارے میں حدیث درج کرتے ہیں۔

محمود، ابواسامہ، ہشام، اسماء بنت ابوبکر رضی اللہ عنہا کہتی ہیں کہ مجھ سے زبیر رضی اللہ عنہ نے جب شادی کی تو نہ انکے پاس مال تھا نہ زمین اور نہ لونڈی غلام تھے بجز پانی کھینچنے والے اونٹ اور گھوڑے کے کچھ نہ تھا، زبیر رضی اللہ عنہ کے گھوڑے کو میں چراتی تھیں، پانی پلاتی تھی، انکا ڈول سیتی تھی اور آٹا پیستی تھی البتہ روٹی پکانا مجھے نہیں آتا تھا میری روٹی انصاری پڑوسنیں پکا دیا کرتی تھیں وہ بڑی نیک عورتیں تھیں، زبیر رضی اللہ عنہ کی اس زمین سے جو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے انہیں دی تھی، میں اپنے سر پر چھوہاروں کی گٹھلیاں اٹھا کرلاتی، وہ مقام دو میل دور تھا ایک دن میں اپنے سر پر گٹھلیاں رکھے آرہی تھی کہ مجھے آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم ملے، آپ کے ہمراہ چند صحابہ رضوان اللہ عنہم بھی تھے، آپ نے مجھے پکارا پھر مجھے اپنے پیچھے بٹھانے کے لئے اونٹ کو اخ اخ کہا، لیکن مجھے مردوں کے ساتھ چلنے سے شرم آئی زبیر رضی اللہ عنہ کی غیرت بھی مجھے یاد آئی کہ وہ بڑے غیرت والے ہیں، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے تاڑ لیا کہ اسماء کو شرم آتی ہے، چناچہ آپ چل پڑے، زبیر سے میں نے آکر کہا کہ مجھے راستہ میں آپ صلی اللہ علیہ وسلم ملے تھے، میرے سر پر گٹھلیوں کا گٹھا تھا اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے ہمراہ صحابہ تھے، آپ نے مجھے بٹھانے کے لئے اونٹ کو ٹھہرایا، تو مجھے اس سے شرم آئی اور تمہاری غیرت کو بھی میں جانتی ہوں، زبیر نے کہا اللہ کی قسم! مجھے تیرے سر پر گٹھلیاں لاتے ہوئے آپ کا دیکھنا آپ کے ساتھ سوار ہوجانے سے زیادہ برا معلوم ہوا اس کے بعدحضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ نے ایک خادم بھیج دیا تاکہ وہ گھوڑے کی نگہبانی میں میرا کام دے گویا انہوں نے مجھے آزاد کردیا۔ (صحیح بخاری 4823)

اور روایت کی تشریح میں چھپی بد دیانتی کا اندازہ اس بات سے لگائیں کہ بقول مدعیان متعہ کے پورے دور نبی صلی اللہ علیہ وسلم میں اور دور ابوبکر و عمر رضی اللہ عنہ میں متعہ ہوتا رہا اور ایک ہی معزز خاتون کا نام سامنے آیا۔وہ بھی حضور صلی اللہ علیہ وسلم کے یار غار صدیق اکبر رضی اللہ عنہ کی بیٹی اور حضور نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی زوجہ اور امت کی ماں حضرت عائشہ رضی اللہ عنہما کی بہن کا ۔ العیاذ باللہ۔



[القرآن 4:24] والمحصنات من النساء الا ما ملكت ايمانكم كتاب الله عليكم واحل لكم ما وراء ذلكم ان تبتغوا باموالكم محصنين غير مسافحين فما استمتعتم به منهن فاتوهن اجورهن فريضة ولا جناح عليكم فيما تراضيتم به من بعد الفريضة ان الله كان عليما حكيما

حَدَّثَنَا عُبَيْدُ اللَّهِ بْنُ عُمَرَ بْنِ مَيْسَرَةَ الْقَوَارِيرِيُّ حَدَّثَنَا يَزِيدُ بْنُ زُرَيْعٍ حَدَّثَنَا سَعِيدُ بْنُ أَبِي عَرُوبَةَ عَنْ قَتَادَةَ عَنْ صَالِحٍ أَبِي الْخَلِيلِ عَنْ أَبِي عَلْقَمَةَ الْهَاشِمِيِّ عَنْ أَبِي سَعِيدٍ الْخُدْرِيِّ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّی اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يَوْمَ حُنَيْنٍ بَعَثَ جَيْشًا إِلَی أَوْطَاسَ فَلَقُوا عَدُوًّا فَقَاتَلُوهُمْ فَظَهَرُوا عَلَيْهِمْ وَأَصَابُوا لَهُمْ سَبَايَا فَکَأَنَّ نَاسًا مِنْ أَصْحَابِ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّی اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ تَحَرَّجُوا مِنْ غِشْيَانِهِنَّ مِنْ أَجْلِ أَزْوَاجِهِنَّ مِنْ الْمُشْرِکِينَ فَأَنْزَلَ اللَّهُ عَزَّ وَجَلَّ فِي ذَلِکَ وَالْمُحْصَنَاتُ مِنْ النِّسَائِ إِلَّا مَا مَلَکَتْ أَيْمَانُکُمْ أَيْ فَهُنَّ لَکُمْ حَلَالٌ إِذَا انْقَضَتْ عِدَّتُهُنَّ

عبید اللہ بن عمر بن میسرہ قواریری، یزید بن زریع، سعید بن ابی عروبہ، قتادہ، صالح، ابی الخلیل، علقمہ ہاشمی، حضرت ابوسعید خدری رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے حنین کے دن ایک لشکر کو اوطاس کی طرف بھیجا ان کی دشمن سے مڈبھیڑ ہوئی اور ان کو قتل کیا اور ان پر صحابہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے غلبہ حاصل کیا اور انہوں نے کافروں کو قیدی بنایا اصحاب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم میں سے بعض لوگوں نے ان سے صحبت کرنے کو اچھا نہ سمجھا اس لئے کہ ان کے مشرک شوہر موجود تھے تو اللہ نے اس بارے میں یہ آیت نازل فرمائی (وَالْمُحْصَنَاتُ مِنْ النِّسَائِ إِلَّا مَا مَلَکَتْ أَيْمَانُکُمْ) اور شوہر والی عورتیں بھی تم پر حرام ہیں مگر وہ جو قید ہو کر لونڈیوں کی طرح تمہارے قبضے میں آئیں۔ یعنی وہ تمہارے لئے حلال ہیں جب ان کی عدت پوری ہو جائے۔

صحیح مسلم 2643

و حَدَّثَنِيهِ يَحْيَی بْنُ حَبِيبٍ الْحَارِثِيُّ حَدَّثَنَا خَالِدُ بْنُ الْحَارِثِ حَدَّثَنَا شُعْبَةُ عَنْ قَتَادَةَ عَنْ أَبِي الْخَلِيلِ عَنْ أَبِي سَعِيدٍ قَالَ أَصَابُوا سَبْيًا يَوْمَ أَوْطَاسَ لَهُنَّ أَزْوَاجٌ فَتَخَوَّفُوا فَأُنْزِلَتْ هَذِهِ الْآيَةُ وَالْمُحْصَنَاتُ مِنْ النِّسَائِ إِلَّا مَا مَلَکَتْ أَيْمَانُکُمْ

یحیی بن حبیب حارثی، خالد بن حارث، شعبہ، قتادہ، ابی الخلیل، حضرت ابوسعید رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ صحابہ کرام رضی اللہ تعالیٰ عنہ کو اوطاس کی قیدی عورتیں ملیں جن کے خاوند تھے یعنی شادی شدہ تھیں صحابہ کرام رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے خوف کیا تو یہ آیت مبارکہ نازل کی گئی (وَالْمُحْصَنَاتُ مِنْ النِّسَائِ إِلَّا مَا مَلَکَتْ أَيْمَانُکُمْ)

صیحیح مسلم۔2644

حَدَّثَنَا عُبَيْدُ اللَّهِ بْنُ عُمَرَ بْنِ مَيْسَرَةَ حَدَّثَنَا يَزِيدُ بْنُ زُرَيْعٍ حَدَّثَنَا سَعِيدٌ عَنْ قَتَادَةَ عَنْ صَالِحٍ أَبِي الْخَلِيلِ عَنْ أَبِي عَلْقَمَةَ الْهَاشِمِيِّ عَنْ أَبِي سَعِيدٍ الْخُدْرِيِّ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّی اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بَعَثَ يَوْمَ حُنَيْنٍ بَعْثًا إِلَی أَوْطَاسَ فَلَقُوا عَدُوَّهُمْ فَقَاتَلُوهُمْ فَظَهَرُوا عَلَيْهِمْ وَأَصَابُوا لَهُمْ سَبَايَا فَکَأَنَّ أُنَاسًا مِنْ أَصْحَابِ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّی اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ تَحَرَّجُوا مِنْ غِشْيَانِهِنَّ مِنْ أَجْلِ أَزْوَاجِهِنَّ مِنْ الْمُشْرِکِينَ فَأَنْزَلَ اللَّهُ تَعَالَی فِي ذَلِکَ وَالْمُحْصَنَاتُ مِنْ النِّسَائِ إِلَّا مَا مَلَکَتْ أَيْمَانُکُمْ أَيْ فَهُنَّ لَهُمْ حَلَالٌ إِذَا انْقَضَتْ عِدَّتُهُنَّ

عبید اللہ بن عمر بن میسرہ، یزید بن زریع، سعید، قتادہ، صالح، ابوخلیل، ابوعلقمہ، حضرت ابوسعید خدری رضی اللہ تعالی عنہا سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے جنگ حنین میں ایک لشکر اوطاس کی طرف روانہ کیا۔ (اوطاس ایک جگہ کا نام ہے) پس وہ اپنے دشمنوں پر جا پہنچے ان سے قتال کیا اور ان کو مغلوب کر لیا اور ان کی عورتیں گرفتار کر لیں۔ پس بعض اصحاب نے ان سے ان سے صحبت کرنا جائز نہ سمجھا کیونکہ ان کے کافر شو ہر موجود تھے تب اللہ تعالی نے یہ آیت نازل فرما ئی۔ (ترجمہ) تم پر شوہر والی عورتیں حرام ہیں لیکن جن کے تم مالک بن جاؤ یعنی وہ تمھارے لیے حلال ہیں

سنن ابو داؤد 1841

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ عَبْدِ الْأَعْلَی قَالَ حَدَّثَنَا يَزِيدُ بْنُ زُرَيْعٍ قَالَ حَدَّثَنَا سَعِيدٌ عَنْ قَتَادَةَ عَنْ أَبِي الْخَلِيلِ عَنْ أَبِي عَلْقَمَةَ الْهَاشِمِيِّ عَنْ أَبِي سَعِيدٍ الْخُدْرِيِّ أَنَّ نَبِيَّ اللَّهِ صَلَّی اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بَعَثَ جَيْشًا إِلَی أَوْطَاسٍ فَلَقُوا عَدُوًّا فَقَاتَلُوهُمْ وَظَهَرُوا عَلَيْهِمْ فَأَصَابُوا لَهُمْ سَبَايَا لَهُنَّ أَزْوَاجٌ فِي الْمُشْرِکِينَ فَکَانَ الْمُسْلِمُونَ تَحَرَّجُوا مِنْ غِشْيَانِهِنَّ فَأَنْزَلَ اللَّهُ عَزَّ وَجَلَّ وَالْمُحْصَنَاتُ مِنْ النِّسَائِ إِلَّا مَا مَلَکَتْ أَيْمَانُکُمْ أَيْ هَذَا لَکُمْ حَلَالٌ إِذَا انْقَضَتْ عِدَّتُهُنَّ

محمد بن عبدالاعلی، یزید بن زریع، سعید، قتادہ، ابوالخلیل، ابوعلقمہ ہاشمی، حضرت ابوسعید خدری رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضرت رسول کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے اوطاس کی جانب لشکر روانہ فرمایا جو کہ طائف میں ایک جگہ کا نام ہے پھر دشمن سے مقابلہ ہوا اور انہوں نے ان کو مار ڈالا اور ہم لوگ مشرکین پر غالب آگئے اور ہم کو باندیاں ہاتھ لگ گئیں اور ان کے شوہر مشرکین میں رہ گئے تھے (یعنی ان کی عورتیں ہاتھ لگ گئیں) اور مسلمانوں نے ان کے ساتھ ہمبستری کرنے سے پرہیز اختیار کیا پھر خداوند قدوس نے آیت کریمہ آخر تک نازل فرمائی یعنی وہ عورتیں تم پر حرام ہیں جو کہ دوسروں کے نکاح میں ہیں لیکن اس وقت حرام نہیں جس وقت تم مالک ہو تم ان کے پاس جاؤ اور اس حدیث میں جو تفسیر مذکور ہے اس سے بھی یہی مطلب نکلتا ہے اور وہ تفسیر یہ ہے یعنی یہ عورتیں تم کو حلال نہیں عدت گزرنے کے بعد اس لیے کہ جس وقت یہ خواتین جہاد میں گرفتار ہوئیں تو وہ باندیاں بن گئیں اگرچہ ان کے شوہر کافر زندہ ہوں لیکن عدت کے بعد مسلمان ان سے ہم بستری کر سکتے ہیں۔

سنن نسائی 3281

حَدَّثَنَا أَحْمَدُ بْنُ مَنِيعٍ حَدَّثَنَا هُشَيْمٌ حَدَّثَنَا عُثْمَانُ الْبَتِّيُّ عَنْ أَبِي الْخَلِيلِ عَنْ أَبِي سَعِيدٍ الْخُدْرِيِّ قَالَ أَصَبْنَا سَبَايَا يَوْمَ أَوْطَاسٍ وَلَهُنَّ أَزْوَاجٌ فِي قَوْمِهِنَّ فَذَکَرُوا ذَلِکَ لِرَسُولِ اللَّهِ صَلَّی اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَنَزَلَتْ وَالْمُحْصَنَاتُ مِنْ النِّسَائِ إِلَّا مَا مَلَکَتْ أَيْمَانُکُمْ قَالَ أَبُو عِيسَی هَذَا حَدِيثٌ حَسَنٌ وَهَکَذَا رَوَاهُ الثَّوْرِيُّ عَنْ عُثْمَانَ الْبَتِّيِّ عَنْ أَبِي الْخَلِيلِ عَنْ أَبِي سَعِيدٍ وَأَبُو الْخَلِيلِ اسْمُهُ صَالِحُ بْنُ أَبِي مَرْيَمَ

احمد بن منیع، ھشیم، عثمان، ابی خلیل، حضرت ابوسعید خدری سے روایت ہے وہ فرماتے ہیں کہ ہم نے جنگ اوطاس کے موقع پر کچھ ایسی عورتیں قید کیں جو شادی شدہ تھیں اور ان کے شوہر بھی اپنی اپنی قوم میں موجود تھے پس نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے اس کا تذکرہ کیا گیا تو یہ آیت نازل ہو (وَالْمُحْصَنَاتُ مِنْ النِّسَائِ إِلَّا مَا مَلَکَتْ أَيْمَانُکُمْ) یہ حدیث حسن ہے۔ ثوری، عثمان بتی بھی ابوخلیل سے اور وہ ابوسعید سے اسی حدیث کی مثل بیان کرتے ہیں ابوخلیل کا نام صالح بن مریم ہے۔

جامع ترمذی 1051 ابواب تفسیر القرآن

حَدَّثَنَا أَحْمَدُ بْنُ مَنِيعٍ حَدَّثَنَا هُشَيْمٌ أَخْبَرَنَا عُثْمَانُ الْبَتِّيُّ عَنْ أَبِي الْخَلِيلِ عَنْ أَبِي سَعِيدٍ الْخُدْرِيِّ قَالَ أَصَبْنَا سَبَايَا يَوْمَ أَوْطَاسٍ لَهُنَّ أَزْوَاجٌ فِي قَوْمِهِنَّ فَذَکَرُوا ذَلِکَ لِرَسُولِ اللَّهِ صَلَّی اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَنَزَلَتْ وَالْمُحْصَنَاتُ مِنْ النِّسَائِ إِلَّا مَا مَلَکَتْ أَيْمَانُکُمْ قَالَ أَبُو عِيسَی هَذَا حَدِيثٌ حَسَنٌ وَهَکَذَا رَوَی الثَّوْرِيُّ عَنْ عُثْمَانَ الْبَتِّيِّ عَنْ أَبِي الْخَلِيلِ عَنْ أَبِي سَعِيدٍ الْخُدْرِيِّ عَنْ النَّبِيِّ صَلَّی اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ نَحْوَهُ وَلَيْسَ فِي هَذَا الْحَدِيثِ عَنْ أَبِي عَلْقَمَةَ وَلَا أَعْلَمُ أَنَّ أَحَدًا ذَکَرَ أَبَا عَلْقَمَةَ فِي هَذَا الْحَدِيثِ إِلَّا مَا ذَکَرَ هَمَّامٌ عَنْ قَتَادَةَ وَأَبُو الْخَلِيلِ اسْمُهُ صَالِحُ بْنُ أَبِي مَرْيَمَ

عبد بن حمید، حبان بن ہلال، ہمام بن یحیی، قتادة، ابوالخلیل، ابوعلقمة ہاشمی، حضرت ابوسعید خدری رضی اللہ تعالی عنہ سے روایت ہے کہ جنگ اوطاس کے موقع پر ہم لوگوں نے مال غنیمت کے طور پر ایسی عورتیں پائیں جن کے شوہر مشرکین میں موجود تھے۔ چنانچہ بعض لوگوں نے ان سے صحبت (جماع) کرنا مکروہ سمجھا تو اللہ تعالی نے یہ آیت نازل کی وَالْمُحْصَنَاتُ مِنْ النِّسَاءِ إِلَّا مَا مَلَکَتْ أَيْمَانُکُمْ۔ (ترجمہ۔ اور حرام ہیں خاوند والی عورتیں مگر یہ کہ وہ تمہاری ملکیت میں آ جائیں۔ اللہ تعالی نے ان احکام کو تم پر فرض کر دیا ہے) یہ حدیث حسن ہے۔

جامع ترمذی 2942

تفسیر ابن کثیر میں حافظ ابن کثیر رحمہ النساء آیت ۲۴ کی تفسیر میں لکھتے ہیں۔

یعنی خاوندوں والی عورتیں بھی حرام ہیں ہاں کفار کی عورتیں جو میدان جنگ میں قید ہو کر تمہارےقبضے میں آئیں تو ایک حیض گزارنے کے بعد وہ تم پر حلال ہیں، مسند احمد میں حضرت ابو سعید خدری رضی اللہ عنہ سے روایت ہےکہ جنگ اوطاس میں قید ہو کر ایسی عورتیں آئیں جو خاوندوں والیاں تھی تو ہم نے نبی صلی اللہ علیہ وسلم سے ان کی بابت سوال کیا تب یہ آیت اتری۔ ہم پر ان سے ملنا حلال کیا گیا۔

ترمذی، ابن ماجہ اور صحیح مسلم وغیرہ میں بھی یہ حدیث ہے ، طبرانی کی روایت میں ہے کہ یہ واقعہ جنگ خیبر کا ہے۔

بعض نے اس آیت سے نکاح متعہ پر استدلال کیا ہے۔ بے شک متعہ ابتدائے اسلام میں مشروع تھا لیکن پھر منسوخ ہو گیا۔

حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہ اور چند دیگر صحابہ سے ضرورت کے وقت اس کی اباحت مروی ہے، حضرت امام احمد حنبل سے بھی ایک روایت ایسی ہی مروی ہے۔

مجاھد رحمہ فرماتے ہیں یہ آیت نکاح متعہ کی بابت نازل ہوئی ہے لیکن جمہور اس کے برخلاف ہیں اور اس کا بہترین فیصلہ بخاری و مسلم کی حضرت علی والی روایت کر دیتی ہے جس میں ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے خیبر والے دن نکاح متعہ سے اور گھریلو گدھوں کے گوشت سے منع فرما دیا۔


شیخ الالسلام علامہ شبیر احمد عثمانی رحمہ تفسیر عثمانی میں لکھتے ہیں۔

:محرمات کا ذکر فرما کر اخیر میں اب ان عورتوں کی حرمت بیان فرمائی جو کسی کے نکاح میں ہوں یعنی جو عورت کسی کے نکاح میں ہے اس کا نکاح اور کسی سے نہیں ہو سکتا تاوقتیکہ وہ بذریعہ طلاق یا وفات زوج نکاح سے جدا نہ ہو جائے اور عدت طلاق یا عدت وفات پوری نہ کر لے اس وقت تک کوئی اس سے نکاح نہیں کر سکتا۔ لیکن اگر کوئی عورت خاوند والی تمہاری مِلک میں آ جائے تو وہ اس حکم حرمت سے مستثنٰی ہے اور وہ تم پر حلال ہے گو اس کا خاوند زندہ ہے اور اس نے طلاق بھی اس کو نہیں دی اور اس کی صورت یہ ہے کہ کافر مرد اور کافر عورت میں باہم نکاح ہو اور مسلمان دارالحرب پر چڑھائی کر کے اس عورت کو قید کر کے دارالاسلام میں لے آئیں تو وہ عورت جس مسلمان کو ملے گی اس کو حلال ہے گو اس کا زوج دارالحرب میں میں زندہ موجود ہے اور اس نے طلاق بھی نہیں دی اب سب محرمات کو بیان فرما کر اٰخیر میں تاکید فرما دی کہ یہ اللہ کا حکم اس کی پابندی تم پر لازم ہے۔ {فائدہ} جو عورت کافرہ دارالحرب سے پکڑی ہوئی آئے اس کے حلال ہونے کے لئے یہ ضروری ہے کہ ایک حیض گذر جائے اور وہ عورت مشرک بت پرست نہ ہو بلکہ اہل کتاب میں سے ہو۔

یعنی جن عورتوں کی حرمت بیان ہو چکی ان کے سوا سب حلال ہیں چار شرطوں کے ساتھ اول یہ کہ طلب کرو یعنی زبان سے ایجاب و قبول دونوں طرف سے ہوجائے۔ دوسری یہ کہ مال یعنی مہر دینا قبول کرو۔ تیسری یہ کہ ان عورتوں کو قید میں لانا اور اپنے قبضہ میں رکھنا مقصود ہو صرف مستی نکالنا اور شہوت رانی مقصود نہ ہو جیسا کہ زنا میں ہوتا ہے یعنی ہمیشہ کے لئے وہ اس کی زوجہ ہو جائے چھوڑے بغیر کبھی نہ چھوٹے مطلب یہ کہ کوئی مدت مقرر نہ ہواس سے متعہ کا حرام ہونا معلوم ہو گیا جس پر اہل حق کا اجماع ہے چوتھی شرط جو دوسری آیتوں میں مذکور ہے یہ ہے کہ مخفی طور پر دوستی نہ ہو یعنی کم سے کم دو مرد یا ایک مرد اور دو عورت اس معاملہ کی گواہ ہوں اگر بدون دو گواہوں کے ایجاب و قبول ہو گا تو وہ نکاح درست نہ ہوگا زنا سمجھا جائے گا۔

مفتی اعظم مولانا شفیع عثمانی رحمہ معارف القرآن میں لکھتے ہیں۔

لفظ استمتاع کا مادہ م۔ت۔ع ہے جس کے معنی کسی فائدہ کے حاصل ہونے کے ہیں۔ کسی شخص سے یا مال سے کوئی فائدہ حاصل کیا تو اس کو استمتاع کہتے ہیں، عربی قواعد کی رو سے کسی کلمہ کے مادہ میں س اور ت کا اضافہ کر دینے سے طلب و حصول کے معنی پیدا ہو جاتے ہیں، اس لغوی تحقیق کی بنیاد پر فمااستمتعتم کا سیدھا مطلب پوری امت کے نزدیک خلفا عن سلف وہی ہے جو ہم نے ابھی اوپر بیان کیا ہے۔ لیکن ایک فرقہ کا کہنا ہےکہ اس سے اصطلاحی متعہ مراد ہے، اور ان لوگوں کے نزدیک یہ آیت متعہ حلال ہونے کی دلیل ہے، حالانکہ متعہ جس کو کہتے ہیں اس کی صاف تردید قرآن کریم کی آیت بالا میں لفظ محصنین غیر مسافحین سے ہو رہی ہے، جس کی تشریح آگے آ رہی ہے۔

قرآن مجید نے محرمات کا ذکر فرما کر یوں فرمایا ہےکہ ان کے علاوہ اپنے اصول کے ذریعہ حلال عوتیں تلاش کرو اس حال میں کہ پانی بہانے والے نہ ہوں یعنی محض شہوت رانی مقصود نہ ہو اور ساتھ ہی محصنین کی قید لگائی ہے یعنی یہ کہ عفت کا دھیان رکھنے والے ہوں۔ متعہ چونکہ مخصوص وقت کے لیے کیا جاتا ہے اور اس لیے جس عورت سے متعہ کیا جاتا ہے اس کو فریق مخالف زوجہ وارثہ بھی قرار نہیں دیتا، اور اس کو ازواج کی معروفہ گنتی میں بھی شمار نہیں کرتا اور چونکہ مقصد محض قضاء شہوت ہے اس لیے مرد و عورت عارضی طور پر نئے نئے جوڑے تلاش کرتے رہتے ہیں، جب یہ صورت ہے تو متعہ عفت و عصمت کا ضامن نہیں بلکہ دشمن ہے۔

مندرجہ بالا حدیثوں اور حوالہ جات سے یہ بات روز روشن کی طرح عیاں ہو رہی ہے کہ سورۃالنساء کی آیت 24 اوطاس کے موقع پر نازل ہوئی۔ اور وجہ نزول اوطاس میں قید ہونے والی مشرکین کی عورتوں کے بارےمیں ہے نہ کہ متعہ کے بارے میں؟؟؟

اور جب فریق مخالف کی قرآنی دلیل نازل ہی 8 ہجری فتح مکہ کے بعد ہو رہی ہے تو پھر ۔۔۔ ۔۔۔ ۔۔۔ ۔۔۔ ۔۔ 8 ہجری تک کوئی اس آیت سے متعہ کی حلت پر استدلال کیسے کر سکتا ہے ؟؟؟


=================
شیعہ مذهب اور مُتعہ

مُتعہ زنا کا دوسرا نام هے ، اور دین اسلام نے ان تمام ذرائع ووسائل کو ممنوع وحرام قرار دیا جو زنا کی طرف لے جانے والے هوں کیونکہ دین اسلام طہارت وعفت کا دین هے لہذا زنا کے قریب جانے کوبهی اسلام نے حرام قرار دیا ، اس کے برخلاف شیعہ مذهب میں مُتعہ ( زنا ) صرف جائز وپسندیده هی نہیں بلکہ ایک عظیم عبادت هے ، لهذا شیعہ کی مستند کتب سے چند حوالے پیش کروں گا عاقل وسمجهدار خود هی فیصلہ کرلے کہ کیا شیعہ مذهب کو کوئ حیوان بهی قبول کرسکتا هے چہ جائیکہ انسان جو اشرف المخلوقات هے اس غلیظ وخبیث مذهب کوقبول کرے ۰ 
1 ۰ خمینی ملعون کہتا هے کہ دودهہ پیتے بچی کے ساتهہ بهی متعہ جائز هے ،
اور عورت سے متعہ پیچهے کی طرف سے بهی جائز هے ۰ ( معاذالله 


2 ۰ شیعہ مذهب میں زانیہ عورت سے بهی مُتعہ جائز هے ، ( معاذالله 

3 ۰ شیعہ مذهب میں متعہ کا ثواب ،
متعہ کرنے والی عورت سے هربات کرنے پر ایک نیکی لکهی جاتی هے اور جب اس کے قریب جاتا هے تو الله اس کے گناه معاف کردیتا هے ، جب غسل کرتا هے توبالوں کی تعداد کے برابر الله اس کی بخشش کردیتے هیں ۰ 
( معاذ الله نقل کفرکفرنباشد 


5 ۰ شیعہ مذهب میں گهروں میں کام کرنے والی خادمہ سے بهی متعہ جائز هے ،
معاذالله 


6 ۰ شیعہ مذهب کے مشہور عالم نعمت الله الجزائری اور مُتعہ و لواطت ،


نیچے اصل کتاب کے عکس میں جوکچهہ لکها هے میں اس کا ترجمہ نہیں لکهہ سکتا ، (

معاذالله



7 ۰ شیعہ مذهب میں شادی شده عورت سے بهى متعہ جائز هے ، 
( معاذالله


8 ۰ شیعہ مذهب اور اجتماعی مُتعہ 
درج ذیل عکس موجوده دور کے ایک شیعہ عالم کا فتوی هے ، جس میں وه اجتماعی متعہ کوجائزقرار دیتا هے اور کہتا هے کہ متعہ همارے مذهب میں حلال ومبارک هے ۰ (معاذ الله 

9 ۰ شیعہ مذهب میں مجوسی عورت کے ساتهہ بهی مُتعہ جائز هے ،

10 ۰ شیعہ مذهب میں عورت کے ساتهہ پیچهے کی طرف سے بهی متعہ جائزهے اگر عورت کا روزه هو تو نہ اس کا روزه ٹوٹتا هے اور نہ اس پرغسل فرض هے ، ( معاذ الله 




بغرض عبرت چند حوالے متعہ کے بارے میں شیعہ کی مستند کتب سے میں نے پیش کیئے هیں ، اور متعہ کے بارے میں شیعہ کتب میں عجیب وغریب مسائل لکهے هیں جس کوپڑهنے کے بعد یہ یقین هوجاتا هے کہ شیعہ مذهب میں زنا ، فحاشی ، عریانی ، بے حیائ ، بے راه روی کی جتنی تعلیم وترغیب دی گئ هے 
مذاهب باطلہ میں سے کسی بهی مذهب میں اتنی نہیں دی گئ ۰

۔ کیا کنواری سے متعہ کے لیے ولی کی شرط ہے یا نہیں( اور بغیر ولی کی اجازت کے کنوری سے نکاح مکروہ ہے، یا بالکل ہی حرام ہے یا ہو جاتا ہے)

۔ایک شخص بیک وقت کتنی عورتوں سے متعہ کر سکتا ہے ۔ 1،2،3،4،5،6، 1000 یا اس کی کوئی حد نہیں ہے۔

۔کیا متعہ کے لیے اعلان ضروری ہے کیا اس کے لیے گواہوں کی ضرورت ہوتی ہے؟

۔ جس عورت سے متعہ کیا جارہا ہے اس کا پاک دامن ہونا شرط ہے یا نہیں؟

۔ کیا کسی قسم کی توثیق ضروری ہے؟

۔جس عورت سے متعہ کیا جائے اس کو مہر دیا جاتا ہے یا اجرت۔اور یہ اجرت یا مہر کم از کم کتنا ہو سکتا ہے؟

۔ کیا رہائش ، نان و نفقہ ضروری ہوتا ہے؟

۔کیا استحقاق مہر یا اجرت کے لیے کوئی خاص مدت/شرط ہے؟؟

۔ کیا کسی زانیہ کے ساتھ متعہ منعقد ہو جاتا ہے؟

۔ کیا کسی زانیہ مشہورہ کے ساتھ متعہ منعقد ہوجاتا ہے؟

کیا متعہ میں عدت وفات ہے؟؟

۔ اگر متعہ نکاح ہی ہے تو کیا اگر ایک شخص اپنی بیوی کو تین طلاق دے دے اور پھر وہ کسی کے ساتھ نکاح متعہ کرے تو کیا وہ اپنے پہلے شوہر کے لیے جائز ہوجائے گی؟؟

۔ کیا متعہ غیر مسلم اورغیر اہل کتاب مثلا مجوسی عورت کے ساتھ کیا جاسکتا ہے؟

۔ متعہ سے پہلے کیا اس امر کی تحقیق کی ضرورت ہے کہ وہ عورت پہلے سے شادی شدہ ہے یا نہیں؟

۔ جس عورت سے متعہ کیا جائے وہ کیا زوجہ یا بیوی کہلاتی ہے یا کچھ اور؟؟

۔کیا متعہ ایک ہاشمی، سید زادی کے ساتھ جائز ہے اگر ہاں تو کیا آپ کے بارہ اماموں میں سے کسی نے بھی متعہ کیا ہے اگر کیا ہے تو اس کی تفصیل اور اس متعہ سے پیدا ہونے والی اولاد کی تفصیل؟؟

۔ متعہ کیا اہل تشیع کے نزدیک ضروریات دین میں سے ہے؟؟

۔ اگر کوئی شخص متعہ کو نا مانے تو اس کا حکم کیا ہے وہ مسلم ہے یا دین سے خارج ہے؟؟

۔ اگر متعہ سے انکاری مسلم ہے تو کیا اس کا ایمان کامل ہے یاناقص؟؟

۔ جو شخص پہلے ہی سے ایک وقت میں چار بیویاں رکھتا ہو وہ متعہ کر سکتا ہے یا نہیں ؟

فی الحال میں ان ہی سوالات پر اکتفا کرتا ہوں۔ ایک بار متعہ کے باب میں آپ کی طرف سے یہ وضاحتیں مل جائیں تو امید ہے کہ اس مسئلہ کو سمجھنے میں آسانی رہے گئی کہ متعہ (زنا ) اور نکاح میں صرف ٹائم کی میعاد کا فرق ہے یا کچھ اور فرق بھی ہے۔

No comments:

Post a Comment