Monday, 17 December 2012

اجتہاد کی معنی، شرعی حکم اور شرائط


لغوی معنی

اجتہاد کے لغوی معنی ہیں: کسی کام کی انجام دہی میں تکلیف و مشقت اٹھاتے ہوئے اپنی پوری کوشش صرف کرنا۔ (أبوحبيب، القاموس الفقهی : 71)

گویا اجتہاد اس کوشش کو کہتے ہیں جو کسی کام کی تکمیل میں مشقت برداشت کرتے ہوئے کی جائے، اگر بغیر دقت اور تکلیف کے کوشش ہو گی تو اسے اجتہاد نہیں کہیں گے۔ مثلاً عرب یوں تو کہتے ہیں: فلاں نے بھاری پتھر اٹھانے کی کوشش کی لیکن یہ نہیں کہتے کہ ’’اجتہد فلان فی حمل خردلۃ‘‘ فلاں نے رائی کا دانہ اٹھانے کی کوشش کی۔

اصطلاحی معنی

:علامہ زبیدی رح فرماتے ہیں
"الإجتهاد بذل الوسع في طلب الأمر والمراد به رد القضية من طريق القياس الى الكتاب و السنة"
ترجمہ : اجتہاد کہتے ہیں کسی چیز کی تلاش میں اپنی پوری طاقت خرچ کرنا اور اس سے مراد ہے کسی قضیہ (مسئلہ) کو قیاس کے طریقے سے کتاب و سنّت کی طرف لوٹانا. [تاج العروس : 2/330]

بذل الطائفة من الفقيه في تحصيل حكم شرعي ظني
کسی فقیہ کا کسی حکمِ شرعی ظنی کو حاصل (استنباط) کرنے کے لئے اپنی (پوری) طاقت خرچ کرنا. [المسلم الثبوت : 2/362]

اجتہاد کا شرعی حکم

جمہور علماءِ مسلمین اجتہاد کی حجیت کے قائل ہیں، اجتہاد کی حجیت کتاب و سنت سے ثابت ہے، ارشادِ باری تعالٰیٰ ہے:

يٰأَيُّهَا الَّذينَ ءامَنوا أَطيعُوا اللَّهَ وَأَطيعُوا الرَّسولَ وَأُولِى الأَمرِ مِنكُم ۖ فَإِن تَنٰزَعتُم فى شَيءٍ فَرُدّوهُ إِلَى اللَّهِ وَالرَّسولِ إِن كُنتُم تُؤمِنونَ بِاللَّهِ وَاليَومِ الءاخِرِ ۚ ذٰلِكَ خَيرٌ وَأَحسَنُ تَأويلًا {4:59}؛

اے ایمان والو! حکم مانو اللہ (تعالٰیٰ) کا اور حکم مانو رسول (صلی اللہ علیہ وسلم) کا اور اولولاَمر کا جو تم میں سے ہوں، پھر اگر جھگڑ پڑو کسی چیز میں تو اسے لوٹاؤ اللہ (تعالٰیٰ) اور رسول (صلی اللہ علیہ وسلم) کی طرف، اگر تم ایمان (ویقین) رکھتے ہو اللہ پر، اور قیامت کے دن پر، یہ بات اچھی ہے اور بہت بہتر ہے اس کا انجام. (النساء: ٥٩)

اس آیت میں ادلہ اربعہ (چاروں دلیلوں) کی طرف اشارہ ہے: اَطِيْعُوا اللّٰهَ سے مراد "قرآن" ہے، اَطِيْعُوا الرَّسُوْلَ سے مراد "سنّت" ہے، اور اُولِي الْاَمْرِ سے مراد "علماء و فقہاء" ہیں، ان میں اگر اختلاف و تنازع نہ ہو بلکہ اتفاق ہوجاتے تو اسے "اجماعِ فقہاء" کہتے ہیں.(یعنی اجماعِ فقہاء کو بھی مانو). اور اگر ان اُولِي الْاَمْرِ(علماء و فقہاء) میں اختلاف ہو تو ہر ایک مجتہد عالم کا اپنی راۓ سے اجتہاد کرتے اس نئے غیر واضح اختلافی مسئلے کا قرآن و سنّت کی طرف لوٹانا اور استنباط کرنا "اجتہادِ شرعی" یا "قیاسِ مجتہد" کہتے ہیں.


قرآن و سنّت کی طرف لوٹانے کا اہل کون؟
مفسر امام ابو بکر جصاص رح اس آیت کی تفسیر کرتے ہیں کہ: "اولو الامر" کی اطاعت کا حکم دینے کے فورا بعد الله تعالیٰ کا یہ فرمانا کہ "پھر اگر جھگڑ پڑو کسی چیز میں تو اس کو لوٹاؤ اللہ اور رسول کی طرف" یہ اس بات کی دلیل ہے کہ اولو الامر سے مراد "علماء و فقہاء" ہیں، کیونکہ الله تعالیٰ نے لوگوں کو ان کی اطاعت کا حکم دیا (یعنی جس بات پر ان کا اتفاق و اجماع ہو، وہ بھی قرآن و سنّت کی بعد قطعی دلیل و حکم ہے)، "پھر اگر جھگڑ پڑو کسی چیز میں" فرماکر اولو الامر کو حکم دیا کہ جس معاملہ میں ان کے درمیاں اختلاف ہو اسے الله کی کتاب اور نبی کی سنّت کی طرف لوٹادو، یہ حکم "علماء و فقہاء" ہی کو ہوسکتا ہے، کیونکہ عوام الناس اور غیر عالم کا یہ مقام نہیں ہے، اس لئے کہ وہ اس بات س واقف نہیں ہوتے کہ کتاب الله و سنّت کی طرف کسی معاملہ کو لوٹانے کا کیا طریقہ ہے اور نہ انھیں نت نئے مسائل (کا حل قرآن و سنّت سے اجتہاد کرتے) مستنبط کرنے کے دلائل کے طریقوں کا علم ہوتا ہے، لہذا ثابت ہوگیا کہ یہ خطاب علماء و فقہاء کو ہے. [ احکام القرآن : 2/257]


مشہور حدیث ہے کہ رسول اللہ (صلی الله علیہ وسلم) نے حضرت معاذ ابنِ جبل رضی اللہ عنہ کو یمن کا معلم (تعلیم دینے والا) اور حاکم بناکر بھیجا؛ تاکہ وہ لوگوں کو دین کے مسائل بتائیں اور فیصلہ کریں؛
"عَنْ مُعَاذٍ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بَعَثَ مُعَاذًا إِلَى الْيَمَنِ فَقَالَ كَيْفَ تَقْضِي فَقَالَ أَقْضِي بِمَا فِي كِتَابِ اللَّهِ قَالَ فَإِنْ لَمْ يَكُنْ فِي كِتَابِ اللَّهِ قَالَ فَبِسُنَّةِ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ فَإِنْ لَمْ يَكُنْ فِي سُنَّةِ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ فَإِنْ لَمْ يَكُنْ فِي سُنَّةِ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ أَجْتَهِدُ رَأْيِي وَلَا آلُو ، فَضَرَبَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ صَدْرَهُ ، وَقَالَ : الْحَمْدُ لِلَّهِ الَّذِي وَفَّقَ رَسُولَ رَسُولِ اللَّهِ لِمَا يُرْضِي رَسُولَ اللَّهِ "[سنن أبي داود » كِتَاب الْأَقْضِيَةِ » بَاب اجْتِهَادِ الرَّأْيِ فِي الْقَضَاءِ؛ رقم الحديث: 3121]

ترجمہ: جب حضور اکرم نے حضرت معاذ کو یمن کا حاکم بنا کر بھیجنے کا ارادہ کیا فرمایا تم کس طرح فیصلہ کرو گے جب تمہارے پاس کوئی مقدمہ پیش ہو جائے انہوں نے فرمایا کہ اللہ کی کتاب سے فیصلہ کروں گا آپ نے فرمایا اگر تم اللہ کی کتاب میں وہ مسئلہ نہ پاؤ تو فرمایا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی سنت کے مطابق فیصلہ کروں گا حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا کہ اگر سنت رسول میں بھی نہ پاؤ تو اور کتاب اللہ میں بھی نہ پاؤ تو انہوں نے کہا کہ اپنی رائے سے اجتہاد کروں گا اور اس میں کوئی کمی کوتاہی نہیں کروں گا، رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ان کے سینہ کو تھپتھپایا اور فرمایا کہ اللہ ہی کیلئے تمام تعریفیں ہیں جس نے اللہ کے رسول کے رسول (معاذ) کو اس چیز کی توفیق دی جس سے رسول اللہ راضی ہیں۔

الشواهد

 م طرف الحديثالصحابياسم الكتابأفقالعزوالمصنفسنة الوفاة
1كيف تقضي فقال أقضي بما في كتاب الله قال فإن لم يكن في كتاب الله قال فبسنة رسول الله قال فإن لم يكن في سنة رسول الله قال أجتهد رأيي قال الحمد لله الذي وفق رسول رسول اللهمعاذ بن جبلجامع الترمذي12451327محمد بن عيسى الترمذي256
2كيف تقضي إذا عرض لك قضاء قال أقضي بكتاب الله قال فإن لم تجد في كتاب الله قال فبسنة رسول الله قال فإن لم تجد في سنة رسول الله ولا في كتاب الله قال أجتهد رأيي ولا آلو فضرب رسول الله صدرهسنن أبي داود31213592أبو داود السجستاني275
3كيف تقضي قال أقضي بكتاب الله قال فإن لم يكن في كتاب الله قال فبسنة رسول الله قال فإن لم يكن في سنة رسول الله قال أجتهد رأيي ولا آلو قال فضرب صدره ثم قال الحمد لله الذي وفق رسول رسول الله لما يرضي رسول امعاذ بن جبلسنن الدارمي168168عبد الله بن عبد الرحمن الدارمي255
4كيف تصنع إن عرض لك قضاء قال أقضي بما في كتاب الله قال فإن لم يكن في كتاب الله قال فبسنة رسول الله قال فإن لم يكن في سنة رسول الله قال أجتهد رأيي لا آلو قال فضرب رسول الله صدريمعاذ بن جبلمسند أحمد بن حنبل2144321501أحمد بن حنبل241
5كيف تقضي قال أقضي بكتاب الله قال فإن لم يكن في كتاب الله قال فبسنة رسول الله قال فإن لم يكن في سنة رسول الله قال أجتهد رأيي قال فقال رسول الله الحمد لله الذي وفق رسول رسول الله صلى اللهمعاذ بن جبلمسند أحمد بن حنبل2149221555أحمد بن حنبل241
6كيف تقضي إن عرض لك قضاء قال أقضي بكتاب الله قال فإن لم يكن في كتاب الله قال فسنة رسول الله قال فإن لم يكن في سنة رسول الله قال أجتهد رأيي ولا آلو قال فضرب صدري فقال الحمد لله الذي وفق رسول رسول الله صلى اللهمعاذ بن جبلمسند أحمد بن حنبل2152721594أحمد بن حنبل241
7كيف تقضي إذا عرض لك قضاء قال أقضي بكتاب الله قال فإن لم تجد في كتاب الله قال أقضي بسنة رسول الله قال فإن لم تجد في سنة رسول الله قال أجتهد رأيي ولا آلو قال فضرب رسول الله بيده صدري قال الحمد لله الذي وفق رسول رسول اللمعاذ بن جبلالسنن الصغير للبيهقي18394505البيهقي458
8كيف تقضي إذا عرض لك قضاء قال أقضي بكتاب الله قال فإن لم تجده في كتاب الله قال أقضي بسنة رسول الله قال فإن لم تجده في سنة رسول الله قال أجتهد برأي لا آلو قال فضرب بيده في صدري وقال الحمد لله الذي وفق رسول رسول الله لمامعاذ بن جبلالسنن الكبرى للبيهقي1871610 : 113البيهقي458
9كيف تقضي إن عرض لك قضاء قال أقضي بكتاب الله قال فإن لم تجد في كتاب الله قال أقضي فيه بسنة رسول الله قال فإن لم تجده في سنة رسول الله قال أجتهد رأيي ولا آلو قال فقال رسول الله وضرب بيده في صدري الحمد لله الذي وفق رسول رسول الله لما يرضي رسول اللهاسم مبهمالمدخل إلى السنن الكبرى للبيهقي192256البيهقي458
10كيف تقضي إن عرض قضاء قال قلت أقضي بما في كتاب الله قال فإن لم يكن في كتاب الله قال قلت أقضي بما قضى به رسول الله قال فإن لم يكن قضى به الرسول قال قلت أجتهد رأيي ولا آلو قال فضرب صدري وقال الحمد لله الذيمعاذ بن جبلمعرفة السنن والآثار للبيهقي5860البيهقي458
11كيف تقضي إن عرض لك قضاء قال أقضي بكتاب الله قال فإن لم تجده في كتاب الله قال أقضي بسنة رسول الله قال فإن لم تجده في سنة رسول الله قال أجتهد رأيي لا آلو قال فضرب بيده في صدري وقال الحمد لله الذي وفق رسول الله صلى الله عليهمعاذ بن جبلمسند أبي داود الطيالسي555560أبو داود الطياليسي204
12كيف تقضي إذا عرض عليك قضاء قال أقضي بما في كتاب الله قال فإن لم يكن في كتاب الله قال بسنة رسول الله قال فإن لم يكن في سنة رسول الله قال أجتهد رأيي لا آلو قال فضرب رسول الله صدره وقال الحمد لله الذي وفق رسولمعاذ بن جبلمسند عبد بن حميد125124عبد بن حميد249
13كيف تقضي قال أقضي بما في كتاب الله قال فإن جاءك أمر ليس في كتاب الله قال أقضي بسنة رسول الله قال فإن لم تكن سنة من رسول الله قال أجتهد رأيي قال الحمد لله الذي وفق رسول رسول اللهمعاذ بن جبلمصنف ابن أبي شيبة2238523323ابن ابي شيبة235
14بم تقضي قال أقضي بكتاب الله قال فإن جاءك أمر ليس في كتاب الله ولم يقض فيه نبيه ولم يقض فيه الصالحون قال أؤم الحق جهدي قال فقال رسول الله الحمد لله الذي جعل رسول رسول الله يقضي بما يرضى به رسول اللهموضع إرسالمصنف ابن أبي شيبة2238623324ابن ابي شيبة235
15كيف تقضي قال أقضي بكتاب الله قال فإن لم يكن كتاب قال أقضي بسنة رسول الله قال فإن لم تكن سنة من رسول الله قال أجتهد برأيي قال فقال النبي الحمد لله الذي وفق رسول رسول اللهمعاذ بن جبلمصنف ابن أبي شيبة2853029588ابن ابي شيبة235
16كيف تقضي إن عرض لك قضاء قال أقضي بكتاب الله قال فإن لم يكن في كتاب الله قال فبسنة رسول الله قال فإن لم يكن في سنة رسول الله قال أجتهد رأيي ولا آلو قال فضرب رسول الله صدره وقال الحمد للهمعاذ بن جبلالمعجم الكبير للطبراني16805362سليمان بن أحمد الطبراني360
17كيف تقضي إذا عرض لك قضاء قال أقضي بما في كتاب الله قال فإن لم يكن في كتاب الله قلت بسنة رسول الله قال فإن لم يكن في سنة رسول الله قال أجتهد رأيي ولا آلو قال فضرب صدري بيده وقال الحمد لله الذي وفق رسول رسول اللهمعاذ بن جبلمشكل الآثار للطحاوي30663582الطحاوي321
18بم تقضي إن عرض قضاء قال قلت أقضي بما في كتاب الله قال فإن لم يكن في كتاب الله قال قلت أقضي بما قضى به الرسول قال فإن لم يكن فيما قضى به الرسول قال قلت أجتهد رأيي ولا آلو قال فضرب صدري وقال الحمد لله الذي وفق رسول رسول الله لما يرضي رسول اللهمعاذ بن جبلالطبقات الكبرى لابن سعد24482 : 425محمد بن سعد الزهري230
19بم تقضي إن عرض لك قضاء قال قلت أقضي بما في كتاب الله قال فإن لم يكن في كتاب الله قلت أقضي بما قضى به الرسول قال فإن لم يكن فيما قضى به الرسول قال قلت أجتهد رأيي ولا آلو قال فضرب صدري وقال الحمد لله الذي وفق رسول رسول اللهمعاذ بن جبلالطبقات الكبرى لابن سعد44363 : 296محمد بن سعد الزهري230
20كيف تقضي إن عرض قضاء قال قلت أقضي بما في كتاب الله قال فإن لم يكن في كتاب الله قال قلت أقضي بما قضى به رسول الله قال فإن لم يكن قضى به الرسول قال قلت أجتهد رأيي ولا آلو قال فضرب صدري وقال الحمد لله الذيمعاذ بن جبلتاريخ دمشق لابن عساكر6327858 : 411ابن عساكر الدمشقي571
21بم تقضي قال أقضي بكتاب الله قال فإن لم يكن في كتاب الله قال أقضي بسنة رسول الله قال فإن لم يكن في سنة رسول الله قال أجتهد رأيي فقال رسول الله الحمد لله الذي وفق رسول رسول اللهمعاذ بن جبلتهذيب الكمال للمزي361---يوسف المزي742
22كيف تقضي إذا عرض لك قضاء قال أقضي بكتاب الله قال فإن لم يكن في كتاب الله قال فبسنة رسول الله قال فإن لم يكن في سنة رسول الله قال أجتهد رأيي ولا آلو قال فضرب النبي صدره وقال الحمد لله الذي وفق رسول رسول الله لما يرضي رسول اللهموضع إرسالالانتقاء في فضائل الائمة الثلاثة الفقهاء9---ابن عبد البر463
23لما بعثني رسول الله إلى اليمن قال كيف تقضيمعاذ بن جبلجامع بيان العلم وفضله لابن عبد البر9901592ابن عبد البر القرطبي463
24كيف تقضي ثم اتفقا إذا عرض لك قضاء قال أقضي بكتاب الله قال فإن لم يكن في كتاب الله قال فبسنة رسول الله قال فإن لم يكن في سنة رسول الله قال أجتهد رأيي ولا آلو قال فضرب رسول الله صدره وقالمعاذ بن جبلجامع بيان العلم وفضله لابن عبد البر9911593ابن عبد البر القرطبي463
25كيف تصنع إن عرض لك قضاء قال أقضي بما في كتاب الله قال فإن لم يكن في كتاب الله قال فبسنة رسول الله قال فإن لم يكن في سنة رسول الله قال أجتهد رأيي لا آلو قال فضرب بيده في صدري وقال الحمد لله الذي وفق رسول رسول الله لما يرضاهمعاذ بن جبلجامع بيان العلم وفضله لابن عبد البر9921594ابن عبد البر القرطبي463
26كيف تقضي إن عرض لك قضاء قال أقضي بما في كتاب الله قال فإن لم يكن في كتاب الله قال فبسنة رسول الله قال فإن لم يكن في سنة رسول الله قال أجتهد رأيي ولا آلوا قال فضرب صدره وقال الحمد لله الذي وفق رسول رسول الله لما يرضي رسول اللمعاذ بن جبلالفقيه والمتفقه للخطيب2621 : 154الخطيب البغدادي463
27كيف تقضي إن عرض لك قضاء قال اقضي بكتاب الله قال فإن لم تجد في كتاب الله قال اقضي بسنة رسول الله قال فإن لم تجد في سنة رسول الله قال أجتهد رأيي ولا آلو قال فضرب بيده في صدري وقال الحمد لله الذي وفق رسول رسول الله لما يرضي رسول اللهمعاذ بن جبلالفقيه والمتفقه للخطيب3241 : 188الخطيب البغدادي463
28كيف تقضي إن عرض لك قضاء قال أقضي بما في كتاب الله قال فإن لم يكن في كتاب الله قال ففي سنة رسول الله قال فإن لم يكن في سنة رسول الله قال أجتهد رأيي لا آلو قال فضرب يعني صدره وقال الحمد لله الذي وفق رسول رسول الله لما يرضي رسول اللهمعاذ بن جبلالفقيه والمتفقه للخطيب3251 : 188الخطيب البغدادي463
29كيف تقضي قلت أقضي بكتاب الله قال فإن لم يكن في كتاب الله قال فبسنة رسول الله قال فإن لم يكن في سنة رسول الله قال أجتهد رأيي لا آلو قال فضرب صدره وقال الحمد لله الذي وفق رسول رسول الله لما يرضي رسول اللهمعاذ بن جبلالفقيه والمتفقه للخطيب3261 : 189الخطيب البغدادي463
30كيف تصنع إن عرض لك قضاء قال أقضي بما في كتاب الله قال فإن لم يكن في كتاب الله قال فبسنة رسول الله قال فإن لم يكن في سنة رسول الله قال أجتهد رأيي لا آلو قال فضرب رسول الله صدري ثم قال الحمد لله الذي وفق رسول رسول اللهمعاذ بن جبلالفقيه والمتفقه للخطيب3271 : 189الخطيب البغدادي463


فقہی نکتے:


١) قرآن میں سب مسائل کا "واضح و مفصل" حل نہیں
٢) سنّت میں بھی "نئے پیش آمدہ" مسائل کا "واضح و مفصل" حل نہیں 
٣) اجتہاد تب کیا جائیگا جب اس نۓ مسلے/واقعہ کا واضح جواب قرآن-و-سنّت میں نہ ہو
٤) اجتہاد کا کرنے کا "اہل" ہر عامی(عام شخص) نہیں، بلکہ کوئی معتبر علمی شخصیت اپنے کسی صحبت یافتہ شاگرد کی دینی علم و سمجھ میں گہرائی اور مہارت پرکھ لینے کے بعد اجازت دے. چناچہ اس سے مراد وہ حاکم ہے جو عالم ہو حکم دینے کے لائق ہو اور جاہل کا حکم دینا درست نہیں، اگر وہ حکم کرے گا تو گناہگار ہوگا
٥) شرعی فیصلہ/فتویٰ دینے کا طریقہ یہ ہے کہ سب سے پہلے قرآن سے فیصلہ کیا جائیگا (نہ کے سنّت یا قیاس سے). قرآن کے بعد سنّت سے پھر قیاس سے
٦) جب یمن کے عربی عوام کو بلا واسطہ معلم (تعلیم دینے والے) اور قاضی (فیصلہ کرنے والے) کے بذات خود قرآن و حدیث پڑھ سمجھکر عمل کرنے اور ہر ایک کا معلم (تعلیم دینے والا) اور قاضی (فیصلہ کرنے والا) بننے کی بجاۓ وہاں کے لئے ایک رہبر (امام) معلم و قاضی بناکر بھیجنے کی احتیاج (ضرورت) تھی ، تو کسی عالم (جو علومِ انبیاء کے وارث ہوتے ہیں) کی امامت (راہبری) کی احتیاج تو مزید بڑھ جاتی ہے ان عجمی عوام کیلئے جو عربی قرآن کے صحیح ترجمہ و تفسیر اور سنّتِ قائمہ (غیر منسوخہ) معلوم کرنے کو عربی احادیث میں ثابت مختلف احکام و سنّتوں میں ناسخ و منسوخ آیات اور افضل و غیر افضل احکام نہیں جانتے، اور بعد کے جھوٹے لوگوں کی ملاوتوں سے صحیح و ثابت اور ضعیف و بناوٹی روایات کے پرکھنے کے اصول التفسیر القرآن اور اصول الحدیث ، جن کا ذکر قرآن و حدیث میں صراحتاً مذکور نہیں، یہ ائمۂِ مسلمین کی دینی فقہ (القرآن : ٩/١٢٢) کے اجتہاد سے ماخوذ ہیں؛


اعتراض : یہ حدیث ضعیف ہے .
حدیث کی سند کا حکم : 
١) صحاح ستہ [چھ (٦) صحیح ترین احادیث کی کتابوں] میں سے ترمذی اور ابوداود میں موجود اس حدیث کی سند کو بلادلیل ضعیف کہنے والے، اس حدیث کی حسن (مقبول) سند بھی ملاحظہ کریں جسے امام بخاری رح کے شیخ امام ابن ابی شیبہ رح اپنی حدیث کی کتاب "المصنف ابن ابی شیبہ" میں لاۓ ہیں :
حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرٍ ، قَالَ : حَدَّثَنَا وَكِيعٌ ، عَنْ شُعْبَةَ ، عَنْ أَبِي عَوْنٍ ، عَنِ الْحَارِثِ بْنِ عَمْرٍو الْهُذَلِيِّ ، عَنْ رَجُلٍ مِنْ أَهْلِ حِمْصَ مِنْ أَصْحَابِ مُعَاذٍ ، عَنْ مُعَاذٍ ، أَنّ النَّبِيَّ ، صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، لَمَّا بَعَثَهُ قَالَ : " كَيْفَ تَقْضِي ؟ " , قَالَ : أَقْضِي بِكِتَابِ اللَّهِ , قَالَ : " فَإِنْ لَمْ يَكُنْ فِي كِتَابِ اللَّهِ ؟ " ، قَالَ : أَقْضِي بِسُنَّةِ رَسُولِ اللَّهِ ، قَالَ : " فَإِنْ لَمْ تَكُنْ سُنَّةٌ مِنْ رَسُولِ اللَّهِ ؟ " ، قَالَ : أَجْتَهِدُ رَأْيِي , قَالَ : فَقَالَ النَّبِيُّ ، صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، : " الْحَمْدُ لِلَّهِ الَّذِي وَفَّقَ رَسُولَ رَسُولِ اللَّهِ " .

حکم :

  |  
  |    |  
  |    |    |  
  |    |    |    |  
  |    |    |    |    |  
  |    |    |    |    |    |  
  |    |    |    |    |    |    |  (8) الكتاب: مصنف ابن أبي شيبة [الحكم: إسناده حسن في المتابعات والشواهد رجاله ثقات عدا الحارث بن عمرو الهذلي وهو مقبول]

٢) اس حدیث پر سب سے پہلے اعتراض علامہ زرقانی رح نے کیا اور وجہ اعتراض یہ ہے کہ اس کی سند میں اصحاب معاذ مجہول [یعنی غیر معروف] ہیں اور انہی کی تقلید میں کچھ علماء نے اس کو ضعیف سند مانا۔ لیکن ان علماء کے اعتراض کا جواب علامہ ابن تیمیہ رح کے شاگرد رشید جناب محترم ابن القیم رح نے اعلام الموقعین جلد 1 صفحہ 175 اور 176 پر دے دیا ہے۔ انہوں نے لکھا ہےکہ اصحاب معاذ میں سے جن سے یہ حدیث مروی ہے ان میں سےکوئی بھی مہتم کذاب اور مجروح نہیں ہے اور انہوں نے تاریخ خطیب سے اسی حدیث کا دوسرا طریق عبادۃ بن نسی عن عبدالرحمن بن غنم عن معاذ بھی ذکر کیا۔ اور لکھا هذا اسناد متصل ورجاله معروفون بالثقه اور ساتھ میں کہا یہ حدیث امت میں تلقی بالقبول کا درجہ رکھتی ہے اسی لئے صحیح ہے۔
اس کے علاوہ اس حدیث کے دوسری راوی حارث بن عمرو پر مجہول ہونے کا الزام ہونے کی وجہ سے بعض علماء نے اس کو ضعیف قرار دیا لیکن شعبۃ رح بن حجاج نے فرمایا کہ” یہ مجہول نہیں ہیں بلکہ یہ مغیرہ بن شعبہ ضللہعنہ کے بھتیجے ہیں اور کبار تابعین میں سے ہیں“ ان سے اصحاب معاذ نے روایت کی ہے اور اصحاب معاذ میں سے کوئی بھی مجہول نہیں [جیسا کہ ابن القیم رح کا بھی دعوی ہے] کیونکہ یہ ممکن ہے کہ کوئی خبر ایک جماعت سے اس میں موجود اشخاص کے ناموں کے بغیر پہنچے لہذا اس سے اس جماعت کے لوگوں کا مجہول ہونا لازم نہیں آتااور اصحاب معاذ کا علم، دین اور سچ بولنے کی شہرت کسی سے مخفی نہیں۔ اگر فریق ثانی کے نزدیک کسی جماعت سے یا اس کے فرد سے حدیث اس شخص کا نام بیان کئے بغیر ضعیف ہوجاتی ہے اور وہ شخص مجہول ہوجاتا ہے تو پھر ان حدیثوں کے بارے میں کیا خیال ہے؟
۱۔ جو کوئی جنازہ دیکھے اور اس کی نماز ادا کرے تو اسے ایک قیراط اجر ملتا ہے [ مسلم 52 اور 945] اس کی سند یہ ہے عن ابن شھاب حدثنی رجال عن ابی ہریرہ، یہاں رجال کا نام نہیں بتایا تو کیا یہ مجہول نہیں ہوگا؟ اور کیا یہ حدیث ضعیف نہیں ہوگی؟
دوسری طرف اس حدیث کی سند میں کلام کرنے والے علماء کی تعداد کم اور اس حدیث کو صحیح کہنے والے علماء کی تعداد زیادہ ہے۔ اس حدیث کو مندرجہ ذیل علماء نے صحیح کہا۔

۱۔ علامہ بزدودی رح نے اپنے اصول میں اس حدیث کو صحیح کہا۔

۲۔ علامہ جوینی رح نے اپنی کتاب البرہان میں اس کو صحیح کہا۔

۳۔ ابوبکر بن عربی رح نے اپنی ترمذی کی شرح عارضۃ الاحوذی میں اس کو صحیح کہا۔

۴۔ خطیب بغدادی رح نے الفقیہ المتفقہ میں اس کو صحیح کہا۔
۵۔ ابن تیمیہ رح نے مجموع الفتاوی جلد 13 صفحہ 364 پر اس کو صحیح کہا۔
۶۔ ابن کثیر رح نے اپنی تفسیر کے مقدمے میں اس کو صحیح کہا جو آپ مولوی جونا گڑھی کے کئے ہوئے اردو ترجمے میں بھی ملاحظہ کرسکتے ہو۔
7۔ ابن القیم رح نے بھی اس کو صحیح کہا جیسا کہ اوپر بیان ہوا۔

۸۔ علامہ شوکانی غیر مقلد رح نے بھی اس کو فتح القدیر میں نقل کیا۔

۹۔ حافظ ابن حجرعسقلانی شافعی رح نے تلخیص الحبیر جلد 4 صفحہ 182 پر نقل کیا ۔ اور ابی عباس بن قاص رح فقیہ شافعی کے حوالے سے اسکی تصحیح کی۔




نبی اکرمﷺ اور اجتہاد

احکام شرعیہ کا اصل مآخذ تو قرآن و حدیث ہی ہے، فرق یہ ہے کہ قرآن مجید میں الفاظ و معانی دونوں اللہ تعالٰیٰ کی طرف سے نازل کی گئی ہیں اور حدیث میں صرف الفاظ اور تعبیر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی بیان کردہ ہے؛ پس قرآن و حدیث کا سرچشمہ ذات خداوندی ہے اور واسطہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا ہے۔ اس لئے آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی ہر بات وحی پر مبنی اور منشأ ربانی کی ترجمان ہوتی تھی، ارشاد باری تعالٰیٰ ہے: وَمَایَنْطِقُ عَنِ الْہَوٰی
o اِنْ ہُوَ اِلَّا وَحْیٌ یُّوْحٰی (النجم:۳،۴)
"اور نہ آپ اپنی خواہشِ نفسانی سے باتیں بناتے ہیں، ان کا ارشاد نری وحی ہے جو ان پر بھیجی جاتی ہے"۔
نیز ارشاد خداوندی ہے: "اِنْ اَتَّبِعُ اِلَّا مَایُوْحٰی اِلَیَّ" (یونس:۱۵)
بس میں تو اسی کی اتباع کروں گا جو میرے پاس وحی کے ذریعہ سے پہنچا ہے۔


اس لئے یہ بات تو ظاہر ہے کہ بنیادی طور پر آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے فتاوی وحی کی بنیاد پر پورا کرتے تھے، لیکن کیا آپ صلی اللہ علیہ وسلم اجتھاد سے بھی فتویٰ دیتے تھے، اس سلسلہ میں اہلِ علم کے درمیان اختلاف ہے۔

امام مالک رح ، امام شافعی رح ، امام احمد بن حنبل رح ، امام ابو یوسف رح اور اکثر اصولیین اس بات کے قائل ہیں کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم احکام شرعیہ میں بھی اجتھاد پر مامور تھے (کشف الاسرار: ۳/۳۸۶) یہی رائے امام رازی اور قاضی بیضاوی کی بھی ہے (منہاج الوصول: ۲/۹) امام غزالی رحمۃ اللہ علیہ کے نزدیک بھی یہی راحج ہے (المستصفی: ۲/۳۵۵) امام سرخسی رحمۃ اللہ علیہ نے امام ابوحنیفہ رحمۃ اللہ علیہ کے نقطۂ نظر کی اس طرح صراحت کی ہے کہ حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم اس بات پر مامور تھے کہ کسی بھی واقعہ میں وحی کا انتظار کریں؛ اگر انتظار کے باوجود وحی کا نزول نہیں ہوتا تو یہ آپﷺ کے لیے رائے اور اجتھاد پر عمل کرنے کی منجانب اللہ اجازت ہوتی؛ البتہ اگر آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے اجتھاد میں چوک ہوتی تو منجانب اللہ متوجہ فرمادیا جاتا، لہٰذا اگر آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے کسی امر کی بابت اجتھاد فرمایا ہو اور اللہ تعالٰیٰ کی جانب سے اس پر کوئی تردید نازل نہ ہوئی ہو تو یہ اس اجتھاد کے قطعی ہونے کی علامت ہے۔(اصول السرخسی: ۲/۲۰۸۔ کشف الاسرار: ۳/۳۸۶)


علامہ ابن قیم رحمۃ اللہ علیہ نے بجا لکھا ہے: "اول من قام بھذا المنصب الشریف سیدالمرسلین"۔ (اعلام الموقعین: ۱/۱۱)

اس امت کے سب سے پہلے مفتی جناب محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم تھے۔
قرآنی شواہد:
آپ صلی اللہ علیہ وسلم شرعی امورمیں اجتھاد سے کام لیتے تھے اس پر قرآن وحدیث سے دلائل موجود ہیں: مثلاً ارشاد خداوندی ہے:
۱۔ "وَشَاوِرْھُمْ فِیْ الْاَمْرِ"۔ (آل عمران:۱۵۹)
اور ان سے خاص خاص باتوں میں مشورہ لیتے رہاکیجئے۔


آیت بالا میں آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو مشورہ کا حکم دیا گیا ہے، اس سے درحقیقت آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو اجتھاد کا حکم دینا ہے، کیونکہ جب آپ صلی اللہ علیہ وسلم صحابہ کرام سے مشورہ لیں گے اور وہ اپنی آراء کا اظہار آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے سامنے کریں گے تو پھر آپ ان میں سے کسی ایک رائے کو آپﷺ اپنے اجتھاد سے قبول کریں گے جو موقع اور مصلحت کے مناسب ہو اور یہی تو اجتھاد ہے۔



۲۔ "یَاَیُّہَاالَّذِیْنَ آمَنُوْا اَطِیْعُوا اللّٰہَ وَاَطِیْعُوا الرَّسُوْلَ وَاُولِی الْاَمْرُ مِنْکُمْ فَاِنْ تَنَازَعْتُمْ فِیْ شَیْیٍٔ فَرُدُّوْہُ اِلَی اللّٰہِ وَالرَّسُوْلِ اِنْ کُنْتُمْ تُؤْمِنُوْنَ بِاللّٰہِ وَالْیَوْمِ الْآٰخِرْ ذٰلِکَ خَیْرٌوَّاَحْسَنُ تَأْوِیْلاً" (النساء:۵۹)

اے ایمان والو! تم اللہ کا کہنا مانو اور رسول کا کہنا مانو اور تم میں جو لوگ اہل حکومت ہیں ان کا بھی، پھر اگر کسی امر میں تم باہم اختلاف کرنے لگو تو اس امر کو اللہ اور اس کے رسول کے حوالے کردیا کرو، اگر تم اللہ پر اور یوم آخرت پر ایمان رکھتے ہو، یہ امور سب بہترہیں اور ان کا انجام خوشتر ہے۔


آیت بالا میں اللہ تعالٰیٰ نے اپنی اور رسول کی اطاعت کا حکم دیا ہے اور اطاعت خداوندی تو ان امور سے ہوگی جو نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم پر بطور وحی نازل کی گئی، اور رسول کی اطاعت کرنا اس وقت ہوگا جبکہ ان کے ہر اس حکم کی اتباع کی جائے جو وہ وحی کے ذریعہ سے، یا اجتھاد کے ذریعہ سے دیں، اگر اللہ اور رسول کی اطاعت سے صرف وحی کی اطاعت و اتباع مراد لی جائے تو محض تکرار ہوگا، اور اطاعت رسول کا حکم جو مستقل طور پر دیا گیا ہے اس کا بظاہر کوئی فائدہ نہیں رہے گا۔

نیز باہمی اختلاف کی صورت میں فریقین کو یہ حکم ہے کہ وہ اللہ اور اس کے رسول کی طرف رجوع کریں، اللہ کی طرف رجوع کرنے کا مطلب تو یہ ہوگا کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم پر نازل کی گئی وحی {خواہ وحی متلو (قرآن) ہو یا وحی غیرمتلو (حدیث)} کی طرف رجوع کریں، اور ان سے جو رہنمائی ملے اس پر کاربند ہوں اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی طرف رجوع کرنے کا مطلب یہ ہوگا کہ وہ اپنے اجتھاد سے جو حکم دیں یا فیصلہ کریں ان پر عمل پیرا ہوں، اور اپنے نفس کو دخل نہ دیں، اگر دونوں جگہ وحی ہی مراد لی جائے تو تکرار محض ہوگا، جو بہتر نہیں ہے، لہٰذا "وَأَطِیعُوالرَّسُوْلَ" سے آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے اجتھادی احکام مراد ہوں گے؛ یہی وجہ ہے کہ ایک دوسری آیت میں "رسول" اور "اولی الامر"کے درمیان استنباط حکم میں برابری کا ذکر ہے۔ (النساء:۸۳)
اگر آپ صلی اللہ علیہ وسلم کیلئے اجتھاد جائز نہ ہوتا اور اس کی اطاعت ضروری نہ ہوتی تو باہمی نزاع کے تصفیہ کیلئے آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی طرف رجوع کرنے کا کوئی فائدہ نہ ہوگا۔


۳۔ "فَاِنْ جَآءُوْکَ فَاحْکُمْ بَیْنَہُمْ اَوْ اَعْرِضْ عَنْہُمْ وَاِنْ تُعْرِضْ عَنْہُمْ فَلَنْ یَّضُرُّوْکَ شَـیْـاً وَاِنْ حَکَمْتَ فَاحْکُمْ بَیْنَہُمْ بِالْقِسْطِ اِنَّ اللہَ یُحِبُّ الْمُقْسِطِیْنَ"۔ (المائدہ:۴۲)

تواگر یہ لوگ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس آویں، تو (آپ صلی اللہ علیہ وسلم مختار ہیں) خواہ آپ ان میں فیصلہ کردیجئے، یا ان کو ٹال دیجیئے، اور اگر آپ ان کو ٹال دیں تو ان کی مجال نہیں کہ وہ آپ کو ذرابھی ضرر پہنچاسکیں، اور اگر آپ فیصلہ کریں تو ان میں عدل کے موافق فیصلہ کیجئے، بیشک حق تعالٰیٰ عدل کرنے والوں سے محبت کرتے ہیں۔


آیت بالامیں فیصلہ کرنے اور نہ کرنے کا اختیار آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو دیا گیا ہے کہ اگر آپ صلی اللہ علیہ وسلم اپنے اجتھاد سے یہ محسوس کریں کہ ہمارے فیصلہ کرنے میں مصلحت ہے، اور فریقین فیصلہ کے قبول کرنے پر آمادہ ہیں تو آپ فیصلہ کردیں، ورنہ ٹال دیں، ظاہر ہے کہ فیصلہ میں مصلحت وغیرہ پر نظر رکھنا تو اجتھاد ہی کے ذریعہ ہوا کرتا ہے، نیز فیصلہ کرتے وقت آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو انصاف کا دامن تھامے رکھنے کی ہدایت کی گئی ہے، اور حتی الوسع حق تک پہنچنے کا مکلف بنایا گیا ہے، جس سے صاف معلوم ہوتا ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو اجتھاد کی اجازت ہے؛ ورنہ اگر آپﷺ وحی کے ذریعہ ہی فیصلہ کرنے کے پابند ہوتے تو وحی کے سارے احکام تو حق و انصاف پرمبنی ہوا کرتے ہیں، پھر "بالقسط" (انصاف کے ساتھ) کی قید کا کوئی فائدہ نہیں رہ جائے گا۔



ان کے علاوہ اوربھی آیات ہیں جن سے آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے اجتھاد کے جواز پر استدلال کیا گیا ہے، مثلاً سورۂ نساء کی آیت نمبر:۶۵، ۱۰۵، سورۂ نور کی آیت نمبر:۶۲، سورۂ التحریم کی ابتدائی آیات، اور سورۂ انفال کی آیت نمبر:۶۹ اور اس طرح کی دیگر اور آیات ہیں ان آیاتِ قرآنیہ سے صاف پتہ چلتا ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو امورِشرعیہ میں اجتھاد کی اجازت تھی۔



حدیث و اٰثار سے دلائل

قرآن پاک کے بعد ہم احادیث پر نگاہ ڈالتے ہیں کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے اجتھاد کے بارے میں ان سے ہمیں کیا رہنمائی ملتی ہے؛
١) حضرت اُم سلمہ رضی اللہ عنہا فرماتی ہیں کہ میراث کے ایک معاملے میں دو حضرات کا اختلاف ہوا، دونوں حضور صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت میں حاضر ہوئے، لیکن دونوں میں سے کسی کے پاس گواہ نہیں تھے، صرف دعوی ہی دعوی تھا، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے دونوں کے دعوے سننے کے بعد فرمایا کہ میں بھی انسان ہوں، اور تم لوگ میرے پاس مقدمہ لیکر آئے ہو، ممکن ہے کہ ایک فریق اپنی چرب زبانی سے دوسرے فریق پر غالب آجائے، اور اس کے بیان پر میں اس کے حق میں فیصلہ کردوں، اگر واقع میں حق اس کو ملنا نہیں تھا بلکہ اس کے مدمقابل کا حق تھا تو میرے فیصلہ کے باوجود اس کو لینا درست نہیں ہے، اور اسے یہ سمجھنا چاہئے کہ میں اسے جہنم کی آگ دے رہاہوں۔ یہ سن کر دونوں حضرات رونے لگے اور ہرایک دوسرے کے حق میں دستبرداری اختیار کرلی، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے دونوں سے کہا کہ جب ہر ایک نے دستبرداری اختیار کرلی تو اسے آپس میں تقسیم کرلو، پھر آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا؛
"إِنما أقضِی بَیْنَکُمْ بِرَأْیِی فِیْمَا لَمْ یُنْزَلْ عَلَیَّ فِیہِ" (ابوداؤد، حدیث نمبر:۳۱۱۲)؛
جس امرکے بارے میں کوئی وحی نازل نہیں ہوتی ہے تو میں اپنی رائے سے تمہارے درمیان فیصلہ کیا کرتا ہوں۔


اسی طرح ایک مرتبہ حضرت عمرفاروق رضی اللہ عنہ نے منبرپر خطبہ دیتے ہوئے ارشاد فرمایا: "یَاأِیَّہَاالنَّاسُ اِنَّ الرَّأیَ إِنَّمَاکَانَ مِنْ رَسُوْلِ اللّٰہِﷺ مُصِیْبًالِأِنَّ اللّٰہَ کَانَ یُرِیْہِ وَإِنَّمَاہُوَمِنَّاالظَّنَّ وَالتَّکَلَّفُ" (ابوداؤد، حدیث نمبر:۳۱۱۳)؛

اے لوگو! صحیح رائے تو درحقیقت حضوراکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی ہوتی تھی، کیونکہ اللہ تعالٰیٰ کی جانب سے ان کو رہنمائی ملتی تھی اور ہم لوگوں کی رائے تو ظن و تخمین اور تکلف پر مبنی ہوا کرتی ہے۔


آپ صلی اللہ علیہ وسلم کا ارشاد اور حضرت عمرفاروق رضی اللہ عنہ کی اس وضاحت سے صاف معلوم ہوتا ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم اجتھاد سے کام لیا کرتے تھے۔


آپﷺ کے اجتہاد کی چند مثالیں

آپ صلی اللہ علیہ وسلم کا اجتھاد صرف دنیوی امور تک ہی محدود نہیں تھا، بلکہ دینی معاملات میں بھی آپ صلی اللہ علیہ وسلم اجتھاد فرمایا کرتے تھے (الاحکام للآمدی: ۱/۴۱۶) اور اس کی کئی مثالیں احادیث میں ملتی ہیں، مثلاً:


۱۔ ایک خاتون نے آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے اپنی مرحومہ والدہ کے بارے میں پوچھا کہ وہ حج نہیں کر پائی ہیں، کیا میں ان کی طرف سے حج کرسکتی ہوں، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ان سے دریافت فرمایا: اگر تمہاری والدہ پر قرض ہوتا اور تم اسے ادا کرتی تو کیا یہ کافی نہ ہوتا؟ انہوں نے کہا ہاں، تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: "فَاللّٰہُ أحَقَّ بِالْوَفَاءِ " (بخاری، حدیث نمبر:۱۷۲۰)

اللہ کا دین زیادہ قابل ادائیگی ہے۔


۲۔ حضرت عمرفاروق رضی اللہ عنہ کا بیان ہے کہ ایک مرتبہ روزہ کی حالت میں میں خود پر قابو نہ پاسکا، اور اپنی بیوی کا بوسہ لے لیا، پھر میں حضور صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت میں حاضر ہوا اور عرض کیا کہ مجھ سے ایک بڑی غلطی ہوگئی ہے اور اپنا واقعہ سنایا تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے مجھ سے دریافت فرمایا: "أَرَأَيْتَ لَوْ تَمَضْمَضْتَ بِمَاءٍ وَأَنْتَ صَائِمٌ قُلْتُ لَا بَأْسَ بِذَلِكَ فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَفِيمَ"۔ (مسنداحمد: ۱/۵۲۔ حدیث نمبر:۳۷۲)

تمہاری کیا رائے ہے کہ اگر تم روزہ کی حالت میں پانی سے کلی کرو؟ تو میں نے عرض کیا کہ اس سے تو روزہ نہیں ٹوٹتا تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: بوسہ سے بھی روزہ نہیں ٹوٹتا۔
گویا آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے پینے کی تمہید، منہ میں پانی ڈالنے کے عمل پر جماع کی تمہید بوسہ کو قیاس فرمایا۔ (شرح الزقانی علی الموطا: ۲/۲۲۱)


۳۔ ایک خاتون آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت میں آئیں اور عرض کیا کہ میری والدہ کا انتقال ہوگیا ہے، ان کے ذمہ نذر کے روزے باقی تھے، کیا میں ان کی طرف سے روزے رکھ لوں؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: اگر تمہاری ماں پر کسی کا قرض باقی ہوتا تو کیا اسے ادا کرتیں؟ انہوں نے عرض کیا: ہاں، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا:

"فَدَيْنُ اللَّهِ أَحَقُّ أَنْ يُقْضَى" (بخاری، حدیث نمبر:۱۸۱۷)
اللہ کا دین زیادہ قابل ادائیگی ہے۔
دیکھئے یہاں بھی حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے اجتھاد سے کام لیا ہے اور بندے کے دین پر خدا کے دین کو قیاس کیا ہے۔

نبی اور علماء کے اجتہاد میں فرق

قرآن و حدیث سے تو یہ بات ثابت ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو اجتھاد کرنے کا اختیار تھا، اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اجتھاد کیا بھی ہے، اسی طرح علماء امت بھی پیش آمدہ مسائل میں جب کتاب و سنت سے رہنمائی نہیں ملتی ہے تو اجتھاد کرتے ہیں، مگر نبی اور امتی کے اجتھاد میں بنیادی فرق یہ ہے کہ نبی کا اجتھاد احتمال خطا سے پاک ہوتا ہے؛ اگر نبی کا اجتھاد واقعہ کے مطابق نہ ہوتا تو فوراً تنبیہ آجاتی اور صحیح امر کی جانب رہنمائی کردی جاتی، جس کی تفصیل بعد میں آرہی ہے، لیکن علماء امت کے اجتھاد میں یہ بات نہیں پائی جاتی، اس میں خطاء کا احتمال بہرحال باقی رہتا ہے؛ یہی وجہ ہے کہ علماء امت کا اجتھاد ظنی ہوتا ہے جبکہ حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کا اجتھاد قطعی ہوتا ہے، ابتداءً اگرچہ ظنی ہوتا ہے؛ لیکن مآلاً قطعی ہوجاتا ہے اور نص کے حکم میں ہوا کرتا ہے اسی لئے امام غزالی رحمۃ اللہ علیہ لکھتے ہیں: "دل الدلیل من الاجماع علی تحریم مخالفۃ اجتھادہ" (المستصفی، ۳۹۳)
اجماع سے یہ بات ثابت ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے اجتھادی احکام کی مخالفت حرام ہے۔


نیز آپ صلی اللہ علیہ وسلم کیلئے تمام نصوص واضح ہوتے تھے اور نص کا ہر پہلو آپ کیلئے نمایاں ہوتا تھا۔ وسائل کے واسطے سے نتیجہ تک پہنچنے کی ضرورت نہیں ہوتی تھی، جبکہ علماء امت کو نصوص میں غور و فکر کرنی پڑتی ہے، نتیجہ تک پہنچنے کے جو وسائل ہیں ان سے مدد لینی پڑتی ہے؛ پھر وہ نتیجہ تک پہنچتے ہیں، علماء نے صراحت کی ہے کہ جہاں کہیں حدیث میں یہ نظر آتا ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے کسی امر پر کسی چیز کو قیاس کیا ہے تو یہ ضرورت خود آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو نہیں تھی؛ بلکہ مسئلہ کو فہم سائل کے قریب کرنا پیش نظر تھا یا طریق اجتھاد کی تعلیم مقصود تھی اس لئے آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے وسائل کو اختیار کیا تھا۔ (دیکھئے : رد شبھات حول عصمۃ النبیﷺ  : ۱/۵۷۶)



آپ ﷺ کے اجتہاد کی تصویب

بہرحال اگر آپ صلی اللہ علیہ وسلم کا اجتھاد واقع کے مطابق ہوتا تھا تو کبھی اس کی تصویب بھی کردی جاتی تھی، اور اسے برقرار رکھا جاتا تھا، جیسا کہ:

۱۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم غزوۂ احد میں پچاس تیراندازوں کو ایک پہاڑ پر متعین کیا تھا اور انہیں ہدایت دی تھی: "أحموا ظهورنا فإن رأيتمونا نقتل فلا تنصرونا وان رأيتمونا نغنم فلا تشركونا" (البدایہ: ۴/۲۷)
پیچھے سے حملہ کرنے والوں سے ہماری حفاظت کرنا، اگر ہماری شکست ہو پھربھی تم لوگ ہماری مدد کو نہ آنا، اور اگر ہمیں کامیابی ملے توبھی مالِ غنیمت جمع کرنے میں ہمارے ساتھ شریک نہ ہونا۔


اس تاکیدی ارشاد کے باوجود جب ان تیراندازوں نے یہ دیکھا کہ کفار مکہ میدان چھوڑکر بھاگ رہے ہیں اور صحابہ مالِ غنیمت کے جمع کرنے میں مصروف ہیں تو ان حضرات نے اپنے مقام کو چھوڑدیا اور نیچے اترآئے، اگرچہ ان کے امیر نے اس سے روکا مگر بارہ افراد کے علاوہ سارے نیچے اترآئے، ادھر جب خالد بن ولید (جوکافروں کی طرف سے آئے تھے، اور اس وقت تک حلقہ بگوش اسلام نہیں ہوئے تھے) نے پہاڑکے اس حصہ کو خالی پایا، اور گنتی کے چند افراد کو وہاں پر دیکھا تو اپنے گھوڑ سوار دستہ کے ساتھ اس راستہ سے صحابہ پر پشت کی جانب سے حملہ کیا اور ابتدائی فتح شکست سے بدل گئی، ستر صحابہ شہید ہوئے، آپﷺ بھی زخمی ہوئے، صحابہ پر یہ حالات بظاہر ان تیر اندازوں کے غلط فہمی کی بناء پر آئی، اس واقعہ میں غورکیا جائے تو آپﷺ نے تیراندازوں کو جو حکم دیا تھا وہ محض اپنے اجتھاد کی بناء پر دیا تھا اور آپﷺ کا یہ اجتھاد منشأ خداوندی کے مطابق تھا؛ یہی وجہ ہے کہ غلط فہمی کی بناء پر تیراندازوں نے جو آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے حکم کو نظرانداز کردیا تھا تو ان پر عتاب نازل ہوا، ارشادباری تعالٰیٰ ہے:

"اِنَّ الَّذِیْنَ تَوَلَّوْا مِنْکُمْ یَوْمَ الْتَقَى الْجَمْعٰنِۙ اِنَّمَا اسْتَزَلَّھُمُ الشَّـیْطٰنُ بِبَعْضِ مَا کَسَبُوْا وَلَقَدْ عَفَا اللہُ عَنْھُمْ اِنَّ اللہَ غَفُوْرٌ حَلِیْمٌo" (آل عمران:۱۵۵)
یقینا تم میں سے جن لوگوں نے پشت پھیردی تھی جس روزکہ دونوں جماعتیں باہم مقابل ہوئیں، اس کے سوا اور کوئی بات نہیں ہوئی کہ ان کو شیطان نے لغزش دے دی، ان کے بعض اعمال کے سبب اور یقین سمجھو کہ اللہ تعالٰیٰ نے ان کو معاف فرمادیا، واقعی اللہ تعالٰیٰ بڑے مغفرت کرنے والے ہیں بڑے حلم والے ہیں۔
اتنا ہی نہیں بلکہ اس فعل کو عصیان سے تعبیر کیا ہے، (آل عمران:۱۵۲) حالانکہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے یہ حکم کسی قرآنی آیت کی روشنی میں نہیں دیا تھا؛ بلکہ صرف اجتھاد کی روشنی میں دیا تھا اور جس کا ماننا صحابہ پر لازم تھا، نہ ماننے کی وجہ سے اس کو عصیان سے تعبیر کیا گیا اور اس پر عتاب بھی ہوا، اس سے صاف پتہ چلتا ہے کہ قرآن نے آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے اجتھاد کی تصویب کی اور اُسے برقرار رکھا۔


۲۔ غزوۂ بنونضیر میں نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنے اجتھاد سے یہ حکم دیا تھا کہ ان کے کھجور کے درختوں کو کاٹو، تاکہ یہ دیکھ کر وہ قلعہ سے باہر آئیں اور دوبدو جنگ ہوسکے، چنانچہ جب صحابہ کرام رضوان اللہ علیہم اجمعین نے آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے حکم سے درختوں کو کاٹنا شروع کیا تو بنونضیرنے آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے اس حکم اور صحابہ کے فعل پر اعتراض کرتے ہوئے کہا.



"انک تنھی عن الفساد فما بالک تامر بقطع الأشجار"۔ (تفسیرابن کثیر: ۸/۶۱)

آپﷺ تو خود فساد برپا کرنے سے روکتے ہیں، تو پھر آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے کھجور کا درخت کاٹنے کا حکم اپنے صحابہ کو کیوں دیا؟۔


اس اعتراض کی وجہ سے بعض صحابہ کو بھی خلجان ہوا اور کچھ پریشانی لاحق ہوئی تو بنونظیر کے اس اعتراض اور بعض صحابہ کے شبہ کا جواب قرآن پاک کی اس آیت میں دیا گیا:

"مَاقَطَعْتُمْ مِّنْ لِّیْنَۃٍ أَوْتَرَکْتُمُوْہَا قَائِمَۃً عَلٰی أُصُوْلِہَا فَبِإِذْنِ اللَّہِ وَلِیُخْزِیَ الْفَاسِقِیْنَ" (الحشر:۵)؛
جو کھجوروں کے درخت کے تنے تم نے کاٹ ڈالے یا ان کو ان کی جڑوں پر کھڑا رہنے دیا سو (دونوں باتیں) خدا کے حکم (رضا) کے موافق ہیں، تاکہ کافروں کو ذلیل کرے۔


گویا اس آیت میں یہ کہا گیا کہ کھجور کے جن درختوں کو تم لوگوں نے کاٹ دیا، یا جسے کاٹ نہیں سکے اور وہ اپنے تنوں پر کھڑے ہیں وہ اللہ کی مشیت، ان کی رضامندی اور ان کی اجازت سے ہوئی اور اس کاٹنے میں اصل مقصد دشمنوں کو مرعوب کرنا ہے اور اس میں ان کی ذلت و رسوائی ہے، اس آیت میں غور کیا جائے کہ حضور اکرم ﷺ نے محض اپنے اجتھاد سے بنونضیر کے باغات کاٹنے کا حکم دیا تھا اسے وحی متلو (قرآن) میں عین منشأ خداوندی قراردیا گیا اور اس کی تصویب کی گئی۔



۳۔ تاجران مکہ کے ایک مختصر قافلے کی ملکِ شام سے واپسی کی اطلاع آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو ملی اور یہ بھی معلوم ہوا کہ ان کے ساتھ مال و اسباب بہت زیادہ ہیں، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے صحابہ کرام کو اس کی اطلاع دی، صحابہ کرام کو قلت افراد اور کثرت مال کا حال معلوم ہونے پر مال غنیمت کا خیال ہوا اور اسی ارادہ سے مدینہ سے روانہ ہوئے؛ لیکن ابوسفیان جو اس قافلہ کے سردار تھے اور اس وقت تک حلقہ بگوش اسلام نہیں ہوئے تھے انہوں نے اپنے قافلہ کو عام شاہراہ سے ہٹاکر ساحل سمندر سے ہوتے ہوئے گذارا اور ساتھ ہی مکہ مکرمہ کے سرداروں کو اس بات کی اطلاع دے دی کہ مسلمان تم لوگوں کے تجارتی قافلہ کو لوٹنے کے درپے ہیں، یہ سنتے ہی ابوجہل اور دیگر سرداروں نے آناً فاناً ایک لشکر ترتیب دی جو سامان حرب و ضرب سے لیس تھا اور ایک ہزار سے زائد افراد پر مشتمل تھا اسے ساتھ لیکر وہ لوگ اپنے تجارتی قافلہ کی حفاظت کےلیے نکلے، ادھر ابوسفیان اپنے قافلہ کو براہ سمندر خطرہ کے مقام سے آگے نکل چکے تھے اور اس کی اطلاع ابوجہل اور دیگر سرداروں کوبھی دے دی، لیکن یہ لوگ نہ مانے اور مقام بدرتک جنگ کی غرض سے پہنچ گئے، ادھر صحابہ کرام جو تعداد میں تین سوسے کچھ زائد تھے اور جنگ کے واسطے ضروری سامان حرب و ضرب بھی ان کے ساتھ نہیں تھا، ان کا مقابلہ اتنے بڑے لشکر سے ہونے کا وقت آگیا، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اس نازک موقع سے ارشاد فرمایا:

"اشیرواعلی ایہاالناس" (البدایہ: ۳/۳۲۰)
اے لوگو! مجھے مشورہ دو۔


مشورہ اس بات کا کہ اس لشکرسے جنگ کی جائے یا نہیں؟ اس مشورہ کی ضرورت اس لئے پڑی کہ جس قافلہ کیلئے نکلے تھے وہ تو صحیح سالم نکل گیا اور ہزار کی تعداد میں ہتھیاروں سے لیس یہ لشکر سامنے آموجود ہوا اور اس کیلئے مناسب تیاری کیے بغیر مدینہ سے نکلنا ہوا تھا؛ اسی بناء پر بعض صحابہ کی رائے تھی کہ لڑائی کئے بغیر واپس مدینہ چلے جائیں، مگر حضرت ابوبکر، حضرت عمر، سعد بن معاذ اور سعد بن عبادہ رضی اللہ عنہم نے بروقت اقدام کی رائے دی اور بڑی جرأتمندی کا مظاہرہ کرتے ہوئے فرمایا:

"وَالَّذِي نَفْسِي بِيَدِهِ لَوْ أَمَرْتَنَا أَنْ نُخِيضَهَا الْبَحْرَ لَأَخَضْنَاهَا وَلَوْ أَمَرْتَنَا أَنْ نَضْرِبَ أَكْبَادَهَا إِلَى بَرْكِ الْغِمَادِ لَفَعَلْنَا" (مسلم، حدیث نمبر:۳۳۳۰)
اس ذات کی قسم جس کے قبضہ میں میری جان ہے اگر آپ صلی اللہ علیہ وسلم سمندر میں گھسنے کا حکم دیں گے تو ہم اس کیلئے بھی تیار ہیں اور اگر برک غماد (ایک مقام کا نام) تک جانے کا حکم دیں تو اس کیلئے بھی ہم تیار ہیں، (ہم آپ کے حکم کی خلاف ورزی نہیں کریں گے)۔


اس رائے سے آپ صلی اللہ علیہ وسلم بڑے خوش ہوئے اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فیصلہ کیا کہ اگرچہ ہم تجارتی قافلہ کے واسطے نکلے تھے، لیکن اب جبکہ ہمارا مقابلہ ابوجہل کے لشکرسے ہوگیا ہے تو اس سے جنگ کریں گے، جنگ کی قطعیت آپ نے اپنے اجتھاد سے دی، اور فرمایا:

"سیرواوا بشروافان اللہ تعالٰیٰ قدوعدنی احدی الطائفتین واللہ لکانی الآن انظرالی مصارع القوم "۔ (سیرت لابن ہشام: ۱/۲۱۵)
ابوجہل کے لشکر کے مقابلہ کیلئے چلو اور تمہیں خوشخبری ہو کہ اللہ تعالٰیٰ نے مجھ سے دو جماعتوں میں سے ایک کا وعدہ کیا ہے اور بخدا میں کافرقوم کے جائے قتل کو اپنی آنکھوں سے دیکھ رہاہوں۔


گویا آپﷺ کے فیصلہ کو جوں کا توں برقرار رکھتے ہوئے آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی فتح اور کفار مکہ کے شکست کی خوشخبری دی گئی۔



اصلاح وترمیم:

البتہ اگر آپ صلی اللہ علیہ وسلم کا اجتھاد واقعہ کے مطابق نہ ہوتا تو کبھی اس پر نکیر کی جاتی اور فیصلہ کو بدل دیا جاتا تھا جیسا کہ:


۱۔ حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا سے منقول ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کا معمولِ مبارک تھاکہ بعدعصر کھڑے کھڑے ازواج مطہرات کے پاس تشریف لاتے اور حضرت زینب رضی اللہ عنہا کے پاس معمول سے زیادہ ٹھہرتے اور شہد پیتے تو مجھ کو ایک دن رشک آیا، میں نے حضرت حفصہ رضی اللہ عنہا سے مشورہ کیا کہ ہم میں سے جس کے پاس آپ صلی اللہ علیہ وسلم تشریف لائیں وہ یوں کہے کہ مغافیر (یہ ایک قسم کی گوند ہے جس میں اچھی بو نہیں ہوتی ہے) نوش فرمایا ہے؟ چنانچہ ایسا ہی ہوا، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ میں نے تو شہد پیا ہے، ان ازواج مطہرات نے عرض کیا: شاید کوئی مکھی اس کے درخت پر بیٹھ گئی ہوگی اور اس کے رس کو چوس لیا ہوگا، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے قسم کھاکر فرمایا کہ میں پھر شہد نہیں پیئوں گا اور اس خیال سے کہ حضرت زینب رضی اللہ عنہا کا دل نہ دکھے اس کے اخفاء کی تاکید فرمائی۔ (بخاری، حدیث نمبر:۴۵۳۱)

آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے شہد کو جو اپنے اوپر حرام کرلیا تھا یہ واقعہ کے مطابق نہیں تھا، کیونکہ کسی حلال چیزکو خود پر حرام کرنا شرعاً درست نہیں ہے۔ اس لئے سورۂ تحریم کی ابتدائی آیات نازل ہوئیں اور آپﷺ کے اجتھاد میں اصلاح و ترمیم کرتے ہوئے یہ ہدایت دی گئی کہ آپ قسم کا کفارہ ادا کیجئے اور شہد جو اللہ کی طرف سے جائز ہے اسے حرام نہ سمجھئے؛ چنانچہ اس آیت کے اترنے کے بعد آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے کفارہ ادا کیا۔ (تفسیرقرطبی: ۱۸/۱۸۵)


۲۔ ایک مرتبہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم بعض رؤساء مشرکین کو دین کی دعوت دے رہے تھے، کہ اتنے میں حضرت عبداللہ ابن ام مکتوم نابینا صحابی رضی اللہ عنہ حاضرخدمت ہوئے اور کچھ پوچھنا شروع کیا، یہ قطع کلام آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو ناگوار ہوا اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ان کی طرف التفات نہ فرمایا اور ناگواری کی وجہ سے آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے چہرۂ مبارک پر اس کے آثار بھی ظاہر ہوئے (تفسیردرمنثور: ۱۰/۱۹۶)

اس واقعہ میں آپ صلی اللہ علیہ وسلم کا اجتھاد یہ تھا کہ عبداللہ بن ام مکتوم تو اپنے آدمی ہیں، اسلام میں داخل ہیں، فروعی مسائل کی ان کو ضرورت ہے، جبکہ ان مشرکین کو اصول اسلام اور ایمان کی دعوت دی جارہی ہے، ظاہر ہے کہ یہ اہم ہے اور عبداللہ بن ام مکتوم کو بعد میں بھی جواب دیا جاسکتا ہے، جس طرح کسی ڈاکٹر کے پاس دو مریض آئے، ان میں سے ایک کو زکام ہو اور دوسرے کو ہیضہ ہوگیا ہو، تو صاحب ہیضہ کا علاج مقدم ہوگا، اسی لیے آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے مشرکین پر توجہ دی اور فی الحال عبداللہ بن ام مکتومؓ کو نظرانداز کردیا؛ لیکن آپﷺ کے اس اجتھاد پر نکیر کی گئی اور سورۂ عبس کی ابتدائی آیات نازل ہوئیں، جس کا حاصل یہ ہے کہ مرض میں شدت اس وقت اہمیت کا سبب ہوتا ہے جب مریض علاج کا مخالف نہ ہو؛ ورنہ طالبِ علاج ہونا موجب اقدمیت واہمیت ہوگا، گو مرض خفیف ہو؛ الغرض اس خاص واقعہ میں آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے اجتہاد کو تسلیم نہیں کیا گیا اور سورۂ عبس کی ابتدائی آیات کے ذریعہ اس پر تنبیہ کی گئی، یہی وجہ ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم بعد میں حضرت عبداللہ ابن ام مکتومؓ کی بڑی خاطر فرمایا کرتے تھے اور کہتے تھے:
"انت الذی عاتبنی فیک ربی" (تفسیردرمنثور: ۲/۳۱۰)
 آپؓ ہی کی وجہ سے میرے رب نے مجھ پر عتاب کیا ہے۔


خلافِ اولی ہونے پر تنبیہ:

بعض مرتبہ ایسا بھی ہوتا تھا کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اجتھاد کیا، لیکن اسے وحی متلو نے نافذ تو کردیا، لیکن خلافِ اولیٰ ہونے پر تنبیہ کردی گئی، جیسا کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے صحابہ کرام سے غزوۂ بدر کے قیدیوں کے تعلق سے مشورہ کیا، دو طرح کی رائیں سامنے آئیں، یہ رائے بھی آئی کہ سارے قیدیوں کو قتل کردیا جائے اور دوسری رائے یہ بھی آئی کہ ان سب سے فدیہ لیکر چھوڑدیا جائے، تاکہ مسلمانوں کو مالی وسعت بھی ہوجائیگی اور یہ حضرات جو قید ہوکر ہمارے یہاں آئے ہیں ان کو اپنے بارے میں نظرثانی کا موقع بھی مل جائیگا، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنے اجتھاد سے اس آخری رائے کو ترجیح دی اور فدیہ کا فیصلہ فرمادیا، مگر اس فیصلہ پر نقد کرتے ہوئے اللہ تعالٰیٰ نے فرمایا:
"مَا کَانَ لِنَبِیٍّ اَنْ یَّکُوْنَ لَہٗٓ اَسْرٰی حَتّٰی یُثْخِنَ فِی الْاَرْضِ" (الانفال:۶۷)
نبی کی شان کے لائق نہیں کہ ان کے قیدی باقی رہیں، بلکہ قتل کردیئے جائیں، جب تک وہ زمین میں اچھی طرح کفارکی خونریزی نہ کرلیں۔


مگر اس اجتھاد کو بدلا نہیں گیا اور فدیہ کے طور پر جو مال لیا گیا تھا اسے مال غنیمت اور حلال کہا گیا، چنانچہ ارشادباری تعالٰیٰ ہے:

"فَکُلُوْا مِمَّا غَنِمْتُمْ حَلٰلًا طَیِّبًا" (الانفال:۶۹)
سوجوکچھ تم نے لیا ہے اس کو حلال اور پاک سمجھ کر کھاؤ۔


شرط کا اضافہ:

کبھی ایسا بھی ہوا کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنے اجتھاد سے مطلق ایک چیز کا حکم دیا، لیکن خدائے تعالٰیٰ کی طرف سے اس میں شرط کا اضافہ کیا گیا، جیسا کہ حضرت ابوقتادہ رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ ایک صاحب آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت میں حاضر ہوئے اور عرض کیا کہ اگر میں میدانِ جہاد میں قتل کردیا جاؤں تو میرے سارے گناہ معاف ہوجائیں گے یا نہیں؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ تم اللہ کے راستہ میں اس حال میں شہید ہوئے کہ تم میدان میں جمے رہے اور اللہ تعالٰیٰ سے ثواب کی امید وابستہ کئے ہوئے رہے، پشت پھیرکر بھاگنے والے نہ ہوئے تو ضرور اللہ تعالٰیٰ تمہارے سارے گناہوں کو معاف فرمادے گا، پھر جب وہ صاحب اپنا جواب سن کر کچھ دور چلے گئے تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ان کو آواز دیکر بلایا اور سوال دوبارہ ذکر کرنے کو کہا؛ انہوں نے اپنا سوال دہرایا، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنا وہی جواب سنایا، لیکن آخرمیں فرمایا کہ سارے گناہ معاف تو ہوجائیں گے لیکن قرض لیکر اس کو واپس نہ کرنے کا گناہ معاف نہیں ہوگا، ابھی ابھی حضرت جبرئیل علیہ السلام نے مجھے یہ بات بتائی ہے۔ (جامع الاصول، حدیث نمبر:۷۲۱۸)
اس حدیث میں آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے جتنا جواب اپنے اجتھاد سے دیا تھا، اس میں مزید ایک شرط (دین) کا اضافہ بذریعہ وحی کی گئی۔ کیونکہ حضرت جبرئیل علیہ السلام تو اللہ تعالٰیٰ کے پیغام کو ہی آپ صلی اللہ علیہ وسلم تک پہنچایا کرتے تھے۔


ایک اجتہاد سے دوسرے اجتہاد کی طرف:

کبھی ایسا بھی ہوا کہ ایک حکم آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنے اجتھاد سے دیا، بعد میں آپ صلی اللہ علیہ وسلم کا اجتھاد کسی اہم بات کی طرف ذہن کے منتقل ہونے کی وجہ سے بدل گیا تو دوسرا حکم آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے دیا ہے، جیسا کہ حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ایک دستہ ترتیب دیا، جس میں ہم بھی تھے اور یہ فرمایا کہ قریش کے فلاں فلاں نامی آدمی کو جہاں پاؤ اُن کو آگ میں جلاڈالو، پھر جب ہم لوگ تیار ہوکر مہم کیلئے نکلنے لگے تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ ہم نے تم لوگوں کو فلاں اور فلاں کے جلا ڈالنے کا حکم دیا تھا، لیکن جلانا اور آگ کا عذاب دینا اللہ تعالٰیٰ کے شایانِ شان ہے، اس لئے ان کو نہیں جلانا، بلکہ ان کو قتل کردینا۔ (مسنداحمد: ۲/۴۵۳۔ حدیث نمبر:۹۸۴۳)؛


دوسرے کے اجتہاد پر عمل:

کبھی ایسا بھی ہوتا تھا کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنے اجتھاد سے ایک حکم دیا، صحابہ نے اس پر عمل کیا، لیکن کسی صحابی نے اپنے اجتھاد سے کوئی دوسری رائے دی اور اس میں خیر کا پہلو نظر آیا تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم اپنے اجتھاد کو چھوڑکر ان کے اجتھاد پر عمل فرماتے تھے، جیساکہ غزوۂ بدر میں آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنے اجتھاد سے ایک جگہ کا انتخاب فرمایا اور اس جگہ پڑاؤ ڈالا، تمام صحابہ کرام رضوان اللہ علیہم اجمعین اسی مقام پر ٹھہرگئے؛ لیکن حباب بن منذر رضی اللہ عنہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت میں حاضر ہوئے اور با ادب عرض کیا کہ حضور صلی اللہ علیہ وسلم! آپ کا قیام یہاں پر بذریعہ وحی ہوا ہے یا بطور اجتھاد؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ اجتھاد سے میں نے اس جگہ کا انتخاب کیا ہے، یہ سن کر حضرت حباب بن منذر رضی اللہ عنہ نے عرض کیا کہ اس جگہ کے بجائے اگر فلاں مقام پر قیام کیا جائے تو زیادہ بہتر ہوگا، اس لئے کہ اس صورت میں پانی ہمارے قبضے میں رہے گا اور کفارمکہ کو پانی نہ مل سکے گا، ان کی رائے سن کر آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: "لقداشرت بالرأی" (سیرت ابن ھشام: ۱/۶۲۰)
واقعی تمہاری رائے بہت اچھی ہے۔
اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم نےاس جگہ پر پڑاؤ ڈالا جس کے متعلق حضرت حباب بن منذر رضی اللہ عنہ نے رائے دی تھی اور اپنی رائے اور اجتھاد سے رجوع فرمالیا (حوالہ سابق) اور اس کی تائید بذریعہ وحی بھی ہوئی، چنانچہ ایک فرشتہ آیا اور اس نے عرض کیا کہ اے حضور صلی اللہ علیہ وسلم آپ کے رب نے آپ کو سلام بھیجا ہے اور یہ پیغام بھیجا ہے: "ان الرای مااشاربہ الحباب بن المنذر" (تفسیر ابن کثیر: ۴/۲۴)
حباب بن منذر کی رائے بڑی اچھی رائے ہے۔


آپﷺ کے اجتہاد کے فائدے:

یہاں ایک سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ جب نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے اجتھاد میں کبھی کبھی غلطی بھی ہوجاتی تھی، اگرچہ اس پر برقرار نہیں رکھا جاتا تھا مگر اس کی اصلاح کی ضرورت ہوتی، کبھی خلافِ اولیٰ کام پر تنبیہ کی جاتی اور کبھی اس کی تبدیلی کی نوبت آتی تو پھر آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو اجتھاد کرنے سے ہی منع کیوں نہ کردیا گیا، تاکہ جو بات بھی امت کے سامنے آتی وہ بذریعہ وحی آتی اور اس طرح کے طول عمل کی ضرورت پیش نہ آتی، کیونکہ سلسلۂ وحی کے قائم ہونے کی وجہ سے یہ بات کچھ مشکل نہ تھی، واقعہ یہ ہے کہ اگرچہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے اجتھاد میں غلطی ہوئی ہے؛ لیکن پھر بھی آپ صلی اللہ علیہ کو اجتھاد کا مکلف کیا گیا اس میں بڑے اہم فوائد مضمر ہیں، مثلاً:
١) امتِ مسلمہ کو اجتھاد کی ترغیب و تشویق دلانا مقصد تھا، کہ جس طرح نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے پیش آمدہ امور میں اجتھاد سے کام لیا اور فیصلے فرمائے، اسی طرح فقہاء امت بھی پیش آمدہ مسائل کے سلسلہ میں حکم شرعی معلوم کرنے کی جدوجہد کریں؛ اگرچہ یہ مقصد قولی احادیث سے بھی پورا ہوسکتا تھا لیکن فعل سے مزید طمانینت حاصل ہوتی ہے، طرز استدلال اور نوعیتِ قیاس نکھرکر سامنے آتا ہے، اس سے بعد کے مجتہدین کو بڑی رہنمائی ملتی ہے اور یہ واقعہ ہے کہ پیش آمدہ تمام مسائل کا حل نصوص میں صراحتاً نہیں مل سکتا؛ کیونکہ نصوص محدود ہیں اور پیش آنے والے واقعات و حوادث بے شمار ہیں، جن کا حل علماء امت نصوص سے ثابت شدہ اصول و ضوابط اور مقاصد شرعیہ کو سامنے رکھ کر ہی کرسکتے ہیں، اسی طرف علماء کے ذہن کو متوجہ کرنے کیلئے آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے عملاً اجتھاد کیا اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو اجتھاد کا مکلف کیا گیا۔


٢) امت کے ذہن میں اس بات کو راسخ کرنا تھا کہ حضوراکرم صلی اللہ علیہ وسلم باوجود ہزار فضائل و کمالات کے بہرحال انسان ہیں اور بشری لوازمات سے آپ مستثنیٰ نہیں ہیں، جس طرح عام انسانوں سے خطا و صواب دونوں کا صدور ہوتا رہتا ہے اسی طرح آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے بھی کبھی صواب اور کبھی خطا ہوتا ہے، البتہ عام انسانوں سے آپ صلی اللہ علیہ وسلم کا امتیاز یہ ہے کہ خطا پر آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو برقرار نہیں رکھا جاتا، جیسا کہ گذشتہ سطور میں اس کی تفصیل آچکی ہے، بسا اوقات آپ صلی اللہ علیہ وسلم اصولِ شرعیہ کی روشنی میں صحیح فیصلہ نافذ کرنے میں حق بجانب ہوتے، مگر ایک فریق ناحق پر ہوتا تو اللہ تعالٰیٰ کو یہ گوارہ نہ ہوتا کہ نبی کے یہاں کوئی خلاف واقعہ فیصلہ ہوجائے، چنانچہ ایک مرتبہ ایک صاحب نے ایک شخص پر اپنے حق کا دعویٰ کیا، شخص مذکور نے جب انکار کیا تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے مدعی سے بینہ کا مطالبہ کیا، مدعی کے پاس بینہ نہیں تھا تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے حسب اصولِ شرعیہ "البینۃ علی المدعی والیمین علی من انکر" شخص مذکور کو قسم کھانے کا مکلف کیا، وہ شخص قسم کھانے پر آمادہ ہوگیا اور قسم کھا بھی لی کہ میرے پاس اس کا کوئی حق نہیں ہے، آپ صلی اللہ علیہ وسلم اس مقدمہ کو خارج کرنے ہی والے تھے کہ حضرت جبرئیل علیہ السلام تشریف لائے اور عرض کیا کہ قسم کھانے والا شخص جھوٹا ہے، اور اس پر مدعی کا حق ہے، چنانچہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے حق کی ادائیگی کا حکم دیا اور قسم کا کفارہ بھی ادا کرنے کی تاکید کی۔ (مسنداحمد: ۱/۲۹۶۔ حدیث نمبر:۲۶۹۵)

یہ واقعہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے نہ صرف یہ کہ اجتھاد کے حق بجانب ہونے کو بتاتا ہے بلکہ اس بات کو بھی واضح طور پرسے ثابت کرتا ہے کہ آپ کے زبان حق ترجمان سے واقع کے خلاف بھی فیصلہ کبھی نہیں ہوا، اگر ایسا ہوتا ہوا نظر آیا تو فوراً وحی کے ذریعہ اس پر متنبہ کردیا گیا.


٣) آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو اجتھاد کرنے کا حکم دینے اور پھر اجتہاد میں غلطی ہوجانے کی صورت میں اس پر تنبیہ کرنے میں یہ بھی حکمت ہے کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم پیغام خداوندی کے پہنچانے میں امین ہیں، انہوں نے احکام خداوندی کو بلاکم و کاست امت تک پہنچایا اور کسی حکم یا آیت کو نہیں چھپایا؛ اگر وہ کسی آیت کو چھپاتے تو ان آیات کو چھپا سکتے تھے جو خلافِ اولیٰ امور کے صادر ہوجانے پر اللہ تعالٰیٰ نے مشفقانہ عتاب نازل کیا تھا؛ مگر ان کوبھی آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے نہیں چھپایا تو دیگر کسی حکم کو آپ کیسے چھپا سکتے تھے، چنانچہ حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے منقول ہے کہ اگر آپ صلی اللہ علیہ وسلم کسی آیت کو چھپاتے تو حضرت زینب بنت حجش اور حضرت زید بن حارثہ رضی اللہ عنہم کے متعلق جو آیات نازل ہوئی تھیں ان کو چھپالیتے۔ (بخاری، حدیث نمبر:۶۸۷۰)



ان تفصیلات سے یہ بات بخوبی واضح ہوگئی کہ جن امورمیں وحی نازل نہیں ہوتی تھی آپ صلی اللہ علیہ وسلم ان میں اجتھاد فرمایا کرتے تھے اور ان میں بہت سی حکمتیں پوشیدہ ہیں، چنانچہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے فتاویٰ اور اجتھادی مسائل کو علامہ ابن قیم رحمۃ اللہ علیہ نے اعلام الموقعین کی آخری جلد میں جمع کرنے کا اہتمام کیا ہے جس میں فقہی ترتیب کے لحاظ سے تقریباً ہر باب کے تحت آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے کئے جانے والے سوالات اور ان کے جوابات کو درج کیا ہے، جو مجموعی لحاظ سے ۷۰۲ سوالات اور ان کے جواب پر مشتمل ہے، مولانا عبدالرحمن صاحب حیدرآبادی مظاہری دامت برکاتہم و متعنا اللہ بطری حیاتہم نے "فتاوی الرسول" کے نام سے انہی روایات کی مختصر تشریح کی ہے، جس کا اردو ترجمہ "فرامین رسول صلی اللہ علیہ وسلم" کے نام سے شائع ہوچکا ہے؛البتہ اس میں احادیث کی تخریج نہیں کی گئی ہے؛ بلکہ علامہ ابن قیمؒ کے اجمالی حوالوں پر اکتفا کیا گیا ہے۔

 واللہ الموفق وھوالمعین۔


حیاتِ نبویؐ میں صحابہؓ کا اجتھاد

قرآن و حدیث میں جب پیش آمدہ مسائل کا حکم صراحتاً نہ ملتا تو صحابہ کرام اپنے اپنے اجتھاد و رائے سے فتوی دیا کرتے تھے۔ ظاہر ہے کہ ان کا یہ عمل آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی اجازت پر ہی مبنی ہوگا، اور یقینا اس سے ان کی تربیت بھی مقصود ہوگی۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی موجودگی میں بھی صحابہ کرام رضوان اللہ علیہم اجمعین نے اجتھاد کیا ہے۔ اس کی واضح مثال آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی موجودگی میں غزوۂ بنوقریظہ کے موقع سے بنوقریظہ کے معاملہ میں حضرت سعد بن معاذ رضی اللہ عنہ کا فیصلہ کرنا ہے کہ آپ رضی اللہ عنہ فیصلہ فرمایا: "تقتل مقاتلتہم وتسبی ذراریہم" (اسدالغابہ: ۱/۴۴۲)
ان کے جوانوں کو قتل کردیا جائے اور عورتوں اور بچوں کو غلام باندی بنالیا جائے۔


حضرت سعدؓ کے اجتھاد کی تصویب کرتے ہوئے آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ خدا کا بھی یہی فیصلہ ہے۔ (حوالہ سابق)



اسی طرح امام احمد رحمۃ اللہ علیہ نے حضرت عبداللہ بن عمرو بن العاص رضی اللہ عنہ سے نقل کیا ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت میں ایک مقدمہ آیا، آپﷺ نے حضرت عمرو بن العاص رضی اللہ عنہ کو اس کا فیصلہ کرنے کا حکم دیا، انہوں نے معذرت کرنی چاہی، لیکن آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے حکم دیا اور فرمایا کہ اگر صحیح فیصلہ کروگے تو دس نیکیاں ملیں گی اور اگر کوشش کے بعد غلطی ہوجائے تب بھی ایک نیکی تو ضرور ملے گی۔ (مسنداحمد: ۴/۲۰۵۔ حدیث نمر:۱۷۸۵۸)



اسی طرح آپﷺ کی حیات میں لیکن ٓپ کی عدم موجودگی میں بھی صحابہ رضی اللہ عنہم نے اجتھاد کیا ہے؛ کیونکہ خود آپﷺ نے حضرت معاذبن جبل رضی اللہ عنہ کو یمن جاتے ہوئے اجازت دی تھی کہ اگر قرآن و حدیث میں حکم نہ ملے تو اجتھاد سے کام لو۔ (ترمذی، ماجاء فی القاضی کیف یقضی، حدیث نمبر:۱۲۴۹)



صحابہ نے آپﷺ کے ارشاد پر عمل کیا، مثلاً حضرت علی رضی اللہ عنہ کے پاس یمن میں ایک لڑکے کے سلسلہ میں تین دعویدار پہنچے، حضرت علی رضی اللہ عنہ نے تو پہلے یہ کوشش کی کہ وہ دوسرے کے حق میں دستبردار ہوجائیں، لیکن جب کوئی اس پر آمادہ نہیں ہوا تو قرعہ اندازی کرکے جس کے حق میں قرعہ نکلا اس کو لڑکا حوالہ کردیا اور باقی دونوں کے بارے میں کہا کہ وہ دونوں کو ایک ایک تہائی دیت ادا کرے، اس فیصلے کی اطلاع جب نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم تک پہنچی تو اس پر بڑے خوش ہوئے؛ حتی کہ لوگوں کو ہنسی کی وجہ سے آپﷺ کے نواجذ بھی نظر آنے لگے۔ (الفقیہ والمتفقہ: ۲/۷۹۔ حدیث نمبر:۵۱۸)



حضرت قاسم بن محمد بن ابی بکر سے مروی ہے کہ حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ، حضرت عمر رضی اللہ عنہ، حضرت عثمان رضی اللہ عنہ اور حضرت علی رضی اللہ عنہ عہد نبوی میں فتوی دیا کرتے تھے (طبقات ابن سعد: ۳/۳۳۵) حضرت سہیل ابن ابی خیثمہ راوی ہیں کہ عہد نبوی میں تین مہاجر صحابہ: حضرت عمر رضی اللہ عنہ، حضرت عثمان رضی اللہ عنہ اور حضرت علی رضی اللہ عنہ اور تین انصاری صحابہ: حضرت ابی بن کعب رضی اللہ عنہ، حضرت معاذبن جبل رضی اللہ عنہ اور حضرت زیدبن ثابت رضی اللہ عنہ فتوی دیا کرتے تھے۔ (سیراعلام النبلاء: ۱/۴۵۱، ۴۵۲)



اسی طرح حضرت عبدالرحمن بن عوف رضی اللہ عنہ بھی ان لوگوں میں شامل تھے جو حضورﷺ کے زمانہ میں فتوی دیا کرتے تھے۔ (سیراعلام النبلاس: ۱/۸۶)



غرضیکہ حضور صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانہ میں بھی صحابہ اجتھاد سے کام لیتے تھے، اور اس کی بنیاد پر فتاوی دیتے تھے؛ خواہ وہ منصب قضاء پر فائز ہوں یا نہ ہوں؛ اسی کو ملا محب اللہ بہاری اور علامہ آمدی وغیرہ نے ترجیح دی ہے (فواتح الرحموت مع مسلم الثبوت: ۲/۳۷۵۔ الاحکام للآمدی: ۱/۴۳۲)



حضرت ابو بکرؓ اور اجتہاد

لہٰذا صحابہ کرام رضی اللہ عنہم اجمعین میں مجتہدین صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کی ایک بڑی جماعت تھی جنہوں نے انقطاع وحی کے بعد جدید مسائل میں ملت اسلامیہ کی اجتہاد ہی سے رہنمائی کی؛ انہی میں ایک حضرت ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ ہیں جن کی اجتہادی صلاحیت اوراستنباط کی استعداد اسی وقت آشکار ہوئی جب آپ نے مانعینِ زکوۃ سے قتال کا حکم صادر فرمایا؛ جبکہ دیگر صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کا موقف اس کے برخلاف تھا، صحابہ نے عرض کیا کہ کلمہ گو سے کیسے مقاتلہ کیا جائیگا جب کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ان کے خون کو معصوم اور ان کے اموال کو محفوظ شمار کیا ہے، اس پر آپ رضی اللہ عنہ نے فرمایا: کلمہ کے حقوق میں سے ایک حق جس طرح نماز ہے اسی طرح زکوۃ بھی ہے، جس نے نماز اور زکوۃ میں فرق کیا یقینا میں اس سے مقاتلہ کروںگا، پھر حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ کے استدلال پر دیگر صحابہ کرام رضی اللہ عنہ کو بھی شرح صدر ہوا اور اسی کو راجح قرار دیتے ہوئے اس پر عمل کیا۔ (الفصول فی الاصول:۲/۳۸۷)
ابواسحاق رحمہ اللہ نے لکھا ہے کہ مانعین زکوۃ کے تئیں آپ رضی اللہ عنہ کا موقف اور صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کا اس رائے کی جانب رجوع کر لینا صحتِ استدلال و اصابتِ رائے کی دلیل ہے۔ (تاریخ الخلفاء:۱/۱۵)
آپ کے صحتِ اجتہاد اور اصابتِ رائے کی تصدیق آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے بھی فرمائی ہے، جب حضرت معاذ بن جبل رضی اللہ عنہ کو یمن روانہ کیا جا رہا تھا تو کئی صحابہ کرام رضی اللہ عنہ سے آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے یہ مشورہ کیا کہ کن کو یمن روانہ کیا جائے؟ ان صحابہ رضی اللہ عنہم میں ابوبکر رضی اللہ عنہ، عمر رضی اللہ عنہ، عثمان رضی اللہ عنہ، علی رضی اللہ عنہ اور طلحہ رضی اللہ عنہ اور زبیر رضی اللہ عنہ موجود تھے؛ ہرایک نے اپنی اپنی رائے پیش کی، اس کے بعد آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے حضرت معاذ بن جبل رضی اللہ عنہ سے دریافت کیا کہ تمہاری کیا رائے ہے، حضرت معاذ رضی اللہ عنہ نے جواباً کہا کہ مجھے حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ کی رائے زیادہ پسند ہے، اس موقعہ پر آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے وہ تاریخی جملہ ارشاد فرمایا کہ اللہ تعالٰی آسمان پر اس بات کو ناپسند کرتے ہیں کہ ابوبکر رضی اللہ عنہ غلطی کرجائیں۔ (تاریخ الخلفاء: ۱/۱۷)
آپ کی فقہی بصیرت کا اندازہ ابن عمر رضی اللہ عنہ کے اس قول سے بخوبی لگایا جاسکتا ہے:
"مَنْ کَانَ یُفْتِی النَّاسَ فِی زَمَانِ رَسُوْ لِ اللہِ صَلَّی اللہُ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ؟ فَقَالَ: أَبُوْبَکَرٍ وَعُمَرَ مَاأَعْلَمُ غَیْرَھُمَا"۔ (اسدالغابہ فی معرفۃ الصحابہ: ۲/۱۴۶۔ تاریخ الخلفاء: ۱/۱۵)
آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانے میں کون فتوی دیاکرتے تھے ؟ ابن عمر رضی اللہ عنہما نے فرمایا حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ اور حضرت عمر رضی اللہ عنہ ان دونوں کے علاوہ میں نہیں جانتا.
نیز علامہ ابن قیم جوزی متوفی ۷۵۱ھ نے آپ کے فتاوی کے سلسلہ میں لکھا ہے: حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ اور امّ سلمہ رضی اللہ عنہا سے بھی فتاوی کی ایک معتد بہ مقدار مروی ہے؛ اگر ان میں سے ہر ایک کے فتاوی جمع کئے جائیں تو فتاوی کا ایک اچھا خاصہ مجموعہ ہوجائیگا۔ (اعلام الموقعین: ۱/۱۲)
نیز علی حیدر آفندی متوفی ۱۳۵۳ھ رقم طراز ہیں "کَانَ یَصْدُرُ بَعْضُ الْأَحْکَامِ بِنَاءً عَلیٰ اِجْتِہَادِہِ"۔ (دررالاحکام فی شرح مجلۃ الاحکام: ۱/۳۵)
آپ بعض احکام اپنے اجتہاد کی روشنی میں بھی صادر فرماتے تھے ایک دفعہ آپ نے کلالہ کے سلسلہ میں اجتہاد کرتے ہوئے یوں بیان فرمایا: "فَإِنْ یَکُ صَوَاباً فَمِنَ اللہِ وَرَسُوْلِہِ وَإِنْ یَکُ خَطَأً فَمِنِّی وَمِنَ الشَّیْطَانِ أَرَی الْکَلَالَۃَ مَاخَلَاالوَلَدِ وَالْوَالِدِ"۔ ( مبسوط سرخسی: ۳۲/۲۹۴)
"اگر اس اجتہاد سے میں درست بات کہوں تو یہ درستگی اللہ اور اس کے رسول کی جانب سے ہوگی اور اگر غلطی ہوجائے تو یہ غلطی کی نسبت میرے اور شیطان کی جانب رہے گی"۔


آپؓ کے قیاسی مسائل میں سے ایک مشہور مسئلہ دادا کی وراثت کا مسئلہ ہے، جس سے ان کی اجتہادی قوت کا اندازہ ہوتا ہے، اصل مسئلہ یہ ہے کہ اگر کوئی میت ورثہ میں صرف دادا اور بہن بھائی چھوڑے یعنی اصول میں باپ اور فروع میں کوئی نسبی اولاد نہ ہو تو وراثت کا مستحق کون ہوگا، دادا یابھائی بہن؟ حضرت ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ اور ان کے ساتھ تقریباً چودہ صحابہ کرام رضی اللہ عنہم جن میں حضرت عبد اللہ بن عباس رضی اللہ عنہ اور ابو موسی اشعری رضی اللہ عنہ وغیرہ شامل ہیں، دادا کو باپ کے مرتبہ میں قرار دیکر بھائی بہن کو وراثت کا غیر مستحق قرار دیتے ہیں۔ "بَاب مِيرَاثِ الْجَدِّ مَعَ الْأَبِ وَالْإِخْوَةِ وَقَالَ أَبُو بَكْرٍ وَابْنُ عَبَّاسٍ وَابْنُ الزُّبَيْرِ الْجَدُّ أَبٌ"۔ (بخاری شریف: ۲۰/۴۶۳)

لیکن صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کی ایک بڑی جماعت اس سے اختلاف رکھتی ہے اور بھائی بہن کو اصل وارث قرار دیتی ہے، یہ اختلاف در حقیقت لفظ کلالہ کی تشریح پر مبنی ہے؛ کیونکہ قرآن شریف میں آیا ہے: "یَسْتَفْتُونَکَ قُلِ اللہُ یُفْتِیْکُمْ فِیْ الْکَلاَلَۃِ إِنِ امْرُؤٌ ہَلَکَ لَیْسَ لَہُ وَلَدٌ وَلَہُ أُخْتٌ فَلَہَا نِصْفُ مَا تَرَکَ"۔ (النساء:۱۷۶)
اس آیت کریمہ میں گویا باپ کی کوئی تصریح نہ ہونے میں اس حد تک سب کا اتفاق ہے کہ کلالہ کی صورت میں باپ کا نہ ہونا ضروری ہے؛ لیکن حضرت ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ دادا کا نہ ہونا بھی ضروری قرار دیتے ہیں اور اس آیت کریمہ سے استدلال کرتے ہیں: "وَإِن کَانَ رَجُلٌ یُورَثُ کَلاَلَۃً أَوامْرَأَۃٌ وَلَہُ أَخٌ أَوْأُخْتٌ" (النساء:۱۲)
اس آیت میں علاتی بھائی بہنوں کی وراثت کا تذکرہ ہے اور یہاں بالاتفاق "کلالہ" کے یہ معنی ہیں کہ میت کے اصول (باپ، دادا) و فروع (اولاد، اولاد کی اولاد) میں کوئی نہ ہو، یعنی اگر میت کا دادا موجود ہوگا تو وہ کلالہ نہ ہوگا اور علاتی بھائی محروم ہونگے۔
اس بناء پر کوئی وجہ نہیں کہ کلالہ کی یہی تشریح زیر بحث مسئلہ میں قائم رہے اور بلاوجہ اسکے معنی میں تفریق کی جائے۔(سیرالصحابہ:۱/۸)
آپ کا مسائل میں فیصلہ کا انداز یہ تھا کہ آپ پہلے کتاب اللہ میں غور و فکر کرتے کوئی حکم مل جاتا تو اس کے مطابق فیصلہ کرتے ورنہ سنت رسول میں غوطہ زنی کرتے اس میں حکم مل جاتا تو اس کے مطابق فیصلہ کردیتے؛ ورنہ لوگوں سے دریافت کرتے کہ کیا آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اس طرح کسی معاملہ میں فیصلہ کیا ہے؟ کوئی گواہی دیتا تو اس طرح فیصلہ کردیتے؛ اگر سنت میں بھی حکم نہ ملے تو ایسی صورت میں اکابر صحابہ رضی اللہ عنہم کو جمع کرتے اور ان سے مشورہ کرتے؛ اگر کسی پر رائے قائم ہوجاتی تو اسی کے مطابق فیصلہ کردیتے۔ ( اعلام الموقعین: ۱/۶۲۔ الفقہ الاسلامی وادلتہ: ۸/۲۶۸)
آپ کا اختیار کردہ طریقہ کار بعینہ وہی ہے جس کو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے غزوۂ بدر کے موقعہ پر اختیار کیا تھا اسی لیے علماء نے لکھا ہے کہ مشاورت بھی ایک قسم کا اجتہاد ہی ہے کیوں کہ اگر کوئی بات منصوص ہوتی تو یہ جمع ہونا بیکار ہوتا۔


حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ اور دیگر صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کے ما بین اختلافی مسائل کی ایک معتد بہ مقدار ہے، ایسے اختلافی مسائل حضراتِ شیخین کے درمیان بھی ہیں؛ نیزحضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ کے اجتہادی اقوال اور ان کے مختلف فیہ مسائل؛ نیزان کے فقہی اقوال کو ڈاکٹر رواس قلعہ جی نے فقہ ابی بکر رضی اللہ عنہ کے نام سے مرتب کیا ہے، ذیل میں آپ کے کچھ اقوال فقہیہ کا تذکرہ مناسب رہے گا، جس سے ان کے فقہی مقام اور اجتہادی بصیرت تک رسائی میں سہولت رہے گی۔

(۱)ناقص زائیدہ بچہ پر نماز جنازہ پڑھی جائیگی یا نہیں؟ حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ کا کہنا ہے کہ اس پر نمازِ جنازہ پڑھی جائیگی؛ جب وہ چار ماہ کا ہوجائے تو اسے غسل دیا جائیگا اور نماز پڑھی جائیگی، اس لیے کہ حدیث میں آیا ہے "السَّقْطُ یُصَلَّی عَلَیْہِ" (مصنف ابن ابی شیبہ:۳/۳۱۷) اس لیے کہ یہ بھی ایک جان ہے، اس میں روح پھونکی گئی ہے اور چار ماہ میں روح پھونک دی جاتی ہے اس لیے اس پر نماز پڑھنا چاہئے اور یہی بات سعید بن المسیب، ابن سیرین، اسحاق رحمہم اللہ نے اختیار کی ہے؛ نیز ابن عمر رضی اللہ عنہ نے بھی یہی قول اختیار کرتے ہوئے اپنے مردہ بیٹے کی نماز جنازہ پڑھی تھی۔(المغنی لابن قدامہ:۴/۴۹۷)
حالانکہ حضرت علی رضی اللہ عنہ سے اس کے خلاف روایت منقول ہے۔ (الاستذکار الجامع لمذاہب الفقہاء: ۲/۳۲)
(۲)حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ تکبیراتِ انتقالیہ کو سنت قرار دیتے ہیں، اسی کو فقہاء کرام نے لیا ہے؛ لیکن دیگر صحابہ کرام کے اقوال کے پیش نظر دیگر ائمہ کرام نے تکبیراتِ انتقالیہ کو واجب تک قرار دیا ہے، حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ کے قول کی دلیل وہ حدیث ہے جس میں آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اعرابی کو نماز سکھائی ہے، اس کو فرائض و واجبات نماز کی تعلیم دی اس میں تکبیر تحریمہ کا تو ذکر ہے؛ لیکن تکبیرات انتقالیہ کا کوئی ذکر نہیں ہے؛ حالانکہ یہ موقع بیان کرنے کا ہے؛ یہاں پر خاموشی عدم وجوب پر دلالت کر رہی ہے لہٰذا وہ احادیث جن میں ہر اٹھنے و جھکنے کے وقت تکبیر کی بات آئی ہے وہ استحباب پر محمول ہے۔ (موسوعہ فقہیہ کویتیہ:۱۳/۲۰۷)
(۳)حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ عمامہ پر مسح درست سمجھتے تھے ایک تو اُن کے سامنے وہ حدیث تھی جس میں یہ ذکر ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے پیشانی کے بقدر مسح کیا اور عمامہ پر مسح کیا اور خفین پر مسح کیا اور قیاس کا بھی تقاضہ یہ ہے کہ سر اور پیر دونوں ایسے اعضاء ہیں جو تیمم میں ساقط ہوتے ہیں، جب دونوں کا تیمم میں ایک حکم ہے تو ایسے ہی مسح کے سلسلہ میں بھی ایک ہی حکم ہوگا کہ جس طرح خف پہنے ہوئے ہونے کی صورت میں مسح درست ہے اسی طرح عمامہ باندھے ہوئے ہونے کی صورت میں بھی اس پر مسح درست ہوگا۔ (موسوعہ فقہیہ کویتیہ: ۳/۳۰۵۔ موسوعۃ فقھیۃ:۳۷/۲۵۷)
(۴)حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ نے اُمّ ولد کی بیع جائز قرار دی ہے؛ اس کی ایک دلیل تو یہ تھی کہ آپﷺ کے زمانے میں اُمّ ولد کو بیچا جاتا تھے، عقلی دلیل یہ ہے کہ اُمّ ولد بچہ پیدا ہونے سے قبل بہرحال باندی ہے لہٰذا اس کو بیچنا درست ہے تو بچہ پیدا ہونے کے بعد بھی اس کی بیع درست ہونی چاہیے؛ مگر یہ کہ کوئی دلیل اس کی بیع کے ناجائز ہونے پر وارد ہو؛ لہٰذا استصحاب حال سے اس کی بیع درست ہی ہونی چاہیے۔ (بدایۃ المجتہد: ۲/۳۲۱)
(۵) مالدار پر قربانی کو حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ نے سنت قرار دیا ہے؛ دلیل آپ صلی اللہ علیہ وسلم کا ارشاد ہے: جب ذی الحجہ کے دس ایام آجائیں تو تم میں کا کوئی شخص قربانی کرنا چاہے تو اپنے بال اور ناخن نہ کاٹے حدیث میں قربانی کو ارادہ پر موقوف رکھا گیا ہے؛ لہٰذا یہ وجوب کی دلیل نہیں ہوسکتی۔ (مجموع شرح مھذب: ۸/۳۸۵)


حضرت عمرؓ اور اجتہاد

حضرت عمرؓ نے لوگوں کو بعض اختلافی مسائل میں ایک رائے پر جمع کرنے کی خاص طور پر کوشش فرمائی؛ چنانچہ بعض مسائل پر اتفاق رائے ہوگیا اور جن میں اتفاق نہیں ہوسکا، ان میں بھی کم سے کم جمہور ایک نقطہ نظر پرآگئے، ان میں سے چند مسائل یہ ہیں: اس وقت تک شراب نوشی کی کوئی سزا متعین نہیں تھی، حضرت عمرؓ نے اس سلسلہ میں اکابر صحابہؓ سے مشورہ کیا، حضرت علیؓ نے فرمایا کہ جب کوئی شخص شراب پیتا ہے تو نشہ میں مبتلا ہوتا ہے؛ پھر نشہ کی حالت میں ہذیان گوئی شروع کرتا ہے اور اسمیں لوگوں پر بہتان تراشی بھی کر گزرتا ہے؛ اس لیے جو سزا تہمت اندازی (قذف) کی ہے، یعنی اسی (۸۰) کوڑے، وہی سزا شراب نوشی پر بھی دے دی جانی چاہئے؛ چنانچہ اسی پر فیصلہ ہوا (مؤطا امام مالک، حدیث نمبر:۷۰۹) بعض روایات سے معلوم ہوتا ہے کہ حضرت عبدالرحمن بن عوفؓ نے بھی اسی (۸۰) کوڑے کا مشورہ دیا تھا۔ اگر کوئی شخص لفظ بتہ کے ذریعہ طلاق دے، تو اس میں ایک طلاق کا معنی بھی ہوسکتا ہے اور تین طلاق کا بھی؛ چنانچہ ہوتا یہ تھا کہ طلاق دینے والے کی نیت کے مطابق فیصلہ کیا جاتا تھا، حضرت عمرؓ کا احساس یہ تھا کہ بعض لوگ اس گنجائش سے غلط فائدہ اُٹھاتے ہیں اور غلط بیانی سے کام لیتے ہوئے کہہ دیتے ہیں کہ میری نیت ایک طلاق کی تھی، اس لیے انھوں نے اس کے تین طلاق ہونے کا فیصلہ فرمایا۔ رسول اللہﷺ سے نمازِ تراویح کی رکعات کی تعداد صحیح طور پرثابت نہیں ہے؛ کیونکہ آپ نے اس نماز کے واجب ہوجانے کے اندیشے سے دو تین شب کے علاوہ صحابہؓ کے سامنے یہ نماز ادا نہیں فرمائی، مختلف لوگ تنہا تنہا پڑھ لیتے تھے، حضرت عمرؓ نے ایک جماعت بنادی، ان پر حضرت ابی بن کعبؓ کو امام مقرر کیا اور تراویح کی بیس رکعتیں مقرر فرمادیں، جو آج تک متوارثاً چلا آرہا ہے۔ (۵)صحابہ اور خاص کر حضرت عمرؓ نے بعض فیصلے شریعت کی مصلحت اور اس کے عمومی مقاصد کو سامنے رکھ کر بھی کئے ہیں، جیسے: حضرت عمرؓ نے اپنے عہد میں "مولفۃ القلوب" جو زکوٰۃ کی ایک اہم مد ہے، کو روک دیا تھا؛ کیونکہ مسلمانوں کی تعداد بڑھ گئی تھی اور اسلام کی شوکت قائم ہوگئی تھی؛ لہٰذا ان کے خیال میں اب اس مد کی ضرورت باقی نہیں تھی۔ حضرت عمرؓ کے دور میں ایک شدید قحط پڑا کہ لوگ اضطرار کی کیفیت میں مبتلا ہوگئے، اس زمانہ میں حضرت عمرؓ نے چوری کی سزا موقوف فرمادی؛ اسی طرح حضرت حاطب بن بلتعہ کے غلاموں نے قبیلہ مزینہ کے ایک شخص کی اُونٹنی چوری کرلی، آپؓ نے ان غلاموں کے ہاتھ نہیں کاٹے، حضرت عمرؓ کا نقطہ نظر یہ تھا کہ اس وقت لوگ حالتِ اضطرار میں ہیں اور اضطراری حالت میں چوری کرنے سے حد جاری نہیں ہوگی؛ کیونکہ انسان اختیاری افعال کے بارے میں جواب دہ ہے، نہ کہ اضطراری افعال کے بارے میں۔ حضورﷺ نے بھٹکی ہوئی اُونٹنی کو پکڑنے سے منع فرمایا؛ کیونکہ وہ خود اپنی حفاظت کرسکتی ہے؛ یہاں تک کہ اُس کا مالک اُس کو پالے، حضرت ابوبکر و عمرؓ کے دور میں اسی پر عمل رہا؛ لیکن حضرت عثمان غنیؓ نے اپنے زمانہ میں ایسی اُونٹنی کو پکڑلینے اور بیچ کراس کی قیمت کو محفوظ رکھنے کا حکم دیا تآنکہ اس کا مالک آجائے (شرح الزرقانی علی المؤطا لمالک:۳/۱۲۹) کیونکہ اخلاقی انحطاط کی وجہ سے اس بات کا اندیشہ پیدا ہوگیا تھا کہ بدقماش لوگ ایسی اونٹنی کو پکڑلیں؛ گویا منشا اونٹنی کی حفاظت تھا، طریقہ کار، زمانہ کے حالات کے لحاظ سے بدل گیا۔ اسی طرح اگر کوئی شخصی مرضِ وفات میں اپنی بیوی کو طلاق بائن دے دے، تو شریعت کے عمومی اُصول کا تقاضا تو یہی تھا کہ مطلقہ کو اس مرد سے میراث نہ ملے؛ لیکن چونکہ اس کو بعض غیر منصف مزاج لوگ بیوی کو میراث سے محروم کرنے کا ذریعہ بناسکتے تھے، اس لیے صحابہ نے ظلم کے سد باب کی غرض سے ایسی مطلقہ کو بھی مستحق میراث قرار دیا، حضرت عثمان غنیؓ کا خیال تو یہ تھا کہ اگر عدت ختم ہونے کے بعد شوہر کی موت ہو، تب بھی عورت وارث ہوگی اور حضرت عمر رضی اللہ عنہ کی رائے تھی کہ عدت کے اندر شوہر کی وفات کی صورت میں عورت کو میراث ملے گی۔ اسی طرح امن و امان اور حفاظتِ جان کی مصلحت کے پیشِ نظر حضرت علیؓ کے مشورہ پر حضرت عمرؓ نے فرمایا کہ اگر ایک شخص کے قتل میں ایک جماعت شریک ہو تو تمام شرکاء قتل کئے جائیں گے۔ (۶)صحابہ فروعی مسائل میں اختلاف رائے کو برا نہیں سمجھتے تھے اور ایک دوسرے کا احترام کرتے تھے، ایک دوسرے کی اقتداء میں نماز ادا کرتے تھے؛ اگرکوئی شخص سوال کرنے آئے تو ایک دوسرے کے پاس تحقیق مسئلہ کے لیے بھیجتے تھے اور اپنی رائے پر شدت نہ اختیار کرتے تھے، حضرت عمرؓ سے ایک صاحب ملے اور حضرت علیؓ اور زید بن ثابتؓ کا فیصلہ انھیں سنایا، حضرت عمرؓ نے سن کر کہا: کہ اگر میں فیصلہ کرتا تو اس کے برخلاف اس طرح کرتا، ان صاحب نے کہا کہ آپ کو تو اس کا حق اور اختیار حاصل ہے؛ پھر آپ اپنی رائے کے مطابق فیصلہ فرمادیں، حضرت عمرؓ نے فرمایا کہ اگر میرے پاس اللہ، رسول کا حکم ہوتا تو میں اس کو نافذ کردیتا؛ لیکن میری بھی رائے ہے اور رائے میں سب شریک ہیں؛ چنانچہ انھوں نے حضرت علیؓ اور حضرت زیدؓ کے فیصلہ کو برقرار رکھا: "والرأی مشترک فلم ینقص ماقال علی وزید"۔ (اعلام الموقعین:۱/۵۴)؛


حضرت عثمانؓ اور اجتہاد

حضرت عثمان غنی رضی اللہ عنہ انہی فقہائے صحابہ میں شمار کئے جاتے ہیں جن کی فقہی آراء کو ہر زمانہ میں بڑی وقعت واہمیت حاصل رہی ہے۔ ذیل میں بطور نمونہ کچھ مسائل پیش کئے جارہے ہیں جو آپ رضی اللہ عنہ نے اپنے اجتہاد وقیاس سے بیان فرمائے ہیں یا آپ رضی اللہ عنہ کاعمل تھا:
(۱)ایک مرتبہ آپ رضی اللہ عنہ کے زمانۂ خلافت میں دن کے وقت شوال کا چاند نظر آگیا لوگ رمضان سمجھ کر تیسواں روزہ رکھ چکے تھے، جب چاند نظر آیا تو کچھ لوگوں نے روزہ افطارکرلیاحضرت عثمان رضی اللہ عنہ مسجد میں آئے اور لوگوں سے کہا کہ میں تو رات ہی میں افطار کرونگا۔ (مصنف ابن ابی شیبہ:۶ /۲۵۰، حدیث نمبر۹۵۴۵، مطبوعہ: ادارۃ القرآن دارالعلوم الاسلامیہ، کراچی، پاکستان)؛
حضورﷺ کے دورِ مبارک میں کبھی اس طرح کا واقعہ رونما نہیں ہوا تھا آپ رضی اللہ عنہ نے اپنے اجتہاد سے اس پر عمل فرمایا؛ شاید آپ رضی اللہ عنہ نے قرآن کریم کی اس آیت "وَلَاتُبْطِلُوْا أَعْمَالَکُمْ" (محمد:۳۳) کے پیش نظر یہ فیصلہ فرمایا۔ (۲)حضرت عثمان غنی رضی اللہ عنہ اپنے زمانۂ خلافت کے آخری سالوں میں حج کیلئے عرفات و منیٰ جاتے تو وہاں دو کے بجائے چاررکعت ادا فرماتے تھے جبکہ دیگر صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کا مسلک یہ تھا کہ وہاں قصر کیاجائیگا۔ (بخاری:۱ /۱۴۷، مطبوعہ: اشرفی بک ڈپو، دیوبند)؛
ایک روایت کے مطابق خود حضرت عثمان غنی رضی اللہ عنہ نے اپنے اس عملِ اتمام کی وجہ یہ بتائی کہ میں نے مکہ کی ایک خاتون سے نکاح کرلیا ہے؛ لہٰذا مکہ میرا وطن عزیز ہوگیا اور وطن میں اتمام فرض ہے نہ کہ قصر۔ (۳)نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ وعمر رضی اللہ عنہ اور عثمان رضی اللہ عنہ اپنی خلافت کی ابتدا ء میں مسلمانوں سے زکوۃ کی وصولی سرکاری طور پر وصول کرتے اور حکومت کے نمائندہ کو بھیج کر زکوۃ کا مال جمع کیا کرتے تھے لیکن خلافت عثمانی کے دوران جب لوگوں کے پاس مال ودولت کی کثرت ہوگئی تو عثمان غنی رضی اللہ عنہ کو اندازہ ہوا کہ حکومت کی طرف سے زکوۃ کی وصولی کا اہتمام عوام کیلئے دشواری کا باعث بن رہاہے تو آپ رضی اللہ عنہ نے زکوۃ کی ادائیگی کی ذمہ داری خود اصحاب مال پرڈالدی اور انہی کو ادائیگی زکوۃ کا ذمہ دار بنادیا۔ (بدائع الصنائع:۲ /۱۳۶، مطبوعہ: مکتبہ زکریا، دیوبند)؛
(۴)حضرت عثمان رضی اللہ عنہ حمل یعنی پیٹ کے بچہ کی طرف سے بھی صدقۂ فطر ادا کیا کرتے تھے۔ (ابن ابی شیبہ: ۷/۶۲)؛
(۵)حج کی تین قسمیں ہیں (۱)افراد (۲)تمتع (۳)قران، حضرت علی رضی اللہ عنہ اور دیگر صحابہ رضی اللہ عنہ حج تمتع اور قران کی اجازت دیتے تھے؛ لیکن حضرت عثمان رضی اللہ عنہ لوگوں کو حج تمتع سے منع فرمایا کرتے تھے۔ (بخاری:۱ /۲۱۲، مطبوعہ اشرفی بک ڈپو، دیوبند)؛
(۶)اگرکوئی محرم حالت احرام میں شکار کرلے تو محرم پر اس جیسا جانور بطور کفارہ حرم میں قربان کرنا ضروری ہے (المائدہ:۹۵) اس آیت کی روشنی میں حضرت عثمان رضی اللہ عنہ نے اپنے اجتہاد سے کچھ جانوروں کی تعیین فرمائی ہے مثلا: آپ رضی اللہ عنہ نے گرگٹ کے شکار میں بکری کا ایک سالہ بچہ بطور دم دینے کا فیصلہ دیا (سنن بیہقی ومصنف عبدالرزاق، بحوالہ: فقہ حضرت عثمانؓ:۳۰) شُترمرغ کے شکار پر ایک فربہ اونٹ بطور دم قربان کرنے کا فتویٰ دیا (مصنف ابن ابی شیبہ:۸ /۴۵۰) بٹیر کے شکار میں ایک بکری دینے کا حکم فرمایا (مصنف عبدالرزاق، بحوالہ: فقہ حضرت عثمان رضی عنہ: ۳۰) کبوتر کے بارے میں بھی آپ رضی اللہ عنہ کا فیصلہ یہ ہے کہ ایک بکری بطور دم دی جائیگی (ابن ابی شیبہ: ۸/۱۵۱) اسی طرح آپ رضی اللہ عنہ نے حالت احرام میں ٹڈی کو مارنے پر بھی فدیہ ادا کرنے کا حکم دیا، لیکن اس کی مقدار متعین نہیں فرمائی، غالباً ٹڈی کا فدیہ مٹھی بھر غلہ ہے۔ (فقہ حضرت عثمان رضی عنہ: ۳۱)؛
(۷)اگر کوئی شخص حرم کے کسی جانور کی ہلاکت کا بلاارادہ سبب بنے تو حضرت عثمان رضی اللہ عنہ کے نزدیک اس پر بھی ایک دم دینا ضروری ہوگا، جیسا کہ ایک مشہور واقعہ میں حضرت صالح بن مہری رضی اللہ عنہ اپنے والد سے نقل کرتے ہیں کہ انہوں نے بیان فرمایا: میں حضرت عثمان رضی اللہ عنہ کے ساتھ حج میں شریک ہوا، جب ہم لوگ مکہ مکرمہ پہنچے تو میں نے ان کے لیے ایک مکان میں بستر بچھادیا، آپ رضی اللہ عنہ سوگئے اسی دوران ایک کبوتر آکر کمرے کی کھڑکی میں بیٹھ گیا اور اپنے پنجوں سے مٹی کریدنے لگا، مجھے ڈر ہواکہ کہیں آپ رضی اللہ عنہ کے بستر پر کچھ مٹی نہ گرجائے جس سے آپ کی نیند میں خلل آئے، یہ سوچ کر میں نے اسے وہاں سے اڑادیا، وہ کبوتر وہاں سے اڑکر دوسری کھڑکی میں جابیٹھا، اسی وقت وہاں ایک سانپ نکلا اور اسنے کبوتر کو ڈس لیا جس سے کبوتر کی موت واقع ہوگئی، جب حضرت عثمان رضی اللہ عنہ نیند سے بیدار ہوئے تو میں نے آپ رضی اللہ عنہ کو پورا واقعہ سنایا، واقعہ سن کر آپ رضی اللہ عنہ نے فرمایا: اس کبوتر کے بدلہ میں ایک بکری بطورِ دم دو، مہری رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ میں نے کہا، امیر المؤمنین میں نے اس کبوتر کو اس لئے اڑایاتاکہ آپ کی نیند میں خلل نہ آئے، یہ سن کر حضرت عثمان رضی اللہ عنہ نے فرمایا: تب ایک بکری میری طرف سے بھی بطور دم دیدو (مصنف ابن ابی شیبہ: ۸/۱۵۱) تقریباً اسی طرح کا ایک واقعہ حضرت عمر رضی اللہ عنہ کے ساتھ بھی آپ رضی اللہ عنہ کے دورِ خلافت میں پیش آیا، حضرت عثمان رضی اللہ عنہ کے سامنے یہ مسئلہ پیش ہوا تو آپ رضی اللہ عنہ نے اس وقت بھی دم دینے کا فتویٰ دیا؛ کیونکہ وہ اس کبوتر کو ایک محفوظ مقام سے غیرمحفوظ مقام میں پہنچانے کا باعث ہوئے تھے۔ (مسند شافعی، بحوالہ: سیرالصحابہ: ۱/۲۳۶)
اس مسئلہ میں آپ رضی اللہ عنہ کا مستدل شاید نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کا یہ فرمان ہے جو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے صحابہ کے حالت احرام میں نیز محرِم کے کئے ہوئے شکار کو کھانے کے متعلق دریافت کرنے پر فرمایا: "کیا تم نے اشارہ کیا یاکسی طرح کی مدد کی یاشکار کیا"۔ (مسلم، باب تحریم الصید الماکول البری: ۱/۳۸۱)؛
اس حدیث میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے شکار کی طرف اشارہ کو بھی جنایات احرام میں شمار فرمایا، جوکہ شکار کا ادنیٰ سبب ہے (مزید تفصیل کے لیے ملاحظہ ہو، اعلاء السنن: ۶/۳۶۲)؛
(۸)حضرت عثمان رضی اللہ عنہ اپنی خلافت کے ابتدائی برسوں میں محرم کیلئے ایسے شکار کا کھانا ناجائز سمجھتے تھے، جو غیر محرم نے کیا ہو، قطع نظر اس بات کے کہ وہ محرم کیلئے شکار کیاگیا ہو یا کسی اور کیلئے،لیکن بعد میں ان کی رائے تبدیل ہوگئی اور ان کا نقطہ نظر یہ بن گیا کہ اگر محرم کو پیش کرنے کی نیت سے شکار کیاگیا ہو تو محرم کیلئے اس کا کھانا جائز نہیں ہے؛ البتہ محرم کو پیش کرنے کی نیت سے شکار نہ کیا گیا ہو تو محرم کے لئے اس کے کھانے میں کوئی حرج نہیں ہے، چنانچہ اس سلسلے میں امام ابن حزم نے المحلی میں یسربن سعید رضی اللہ عنہ کی ایک روایت بھی بیان کی ہے جس میں وہ کہتے ہیں کہ اپنی خلافت کے ابتدائی دو سالوں میں حضرت عثمان رضی اللہ عنہ کا معمول یہ تھا کہ جب وہ حج یاعمرہ کی نیت سے احرام باندھ لیتے تھے تو راستہ میں جن منازل میں وہ قیام کرتے، وہاں ان کے لیے جنگلی جانوروں کاشکار کیا جاتا اور وہ ان کا گوشت کھالیا کرتے تھے، بعد میں حضرت زبیر رضی اللہ عنہ نے ان سے اس موضوع پر بات کی اور کہاکہ یہ جو شکارمحض ہمارے لئے کیاجاتاہے میری سمجھ میں نہیں آرہا کہ یہ کیسے جائز ہوسکتاہے، کیاہی اچھا ہوتا اگر ہم اس سلسلے کو ترک کردیتے، اس پر حضرت عثمان رضی اللہ عنہ نے اس کو ترک کردیا۔ (انسائیکلوپیڈیا: ۳۔ فقہِ حضرتِ عثمان رضی اللہ عنہ:۳۲، مصنف ڈاکٹر محمد رواس قلعہ جی، اردو ترجمہ الیف الدین ترابی، مطبوعہ ادارہ معارف اسلامی، منصورہ لاہور پاکستان۔ مؤطامالک:۱۳۷، مطبوعہ اشرفی بک ڈپو، دیوبند)؛
ممکن ہے کہ آپ رضی اللہ عنہ کا رحجان اس حدیث کی وجہ سے تبدیل ہوگیا ہو جس میں بیان کیا گیا ہے کہ حضرت صعب بن جثامہ لیثی رضی اللہ عنہ نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے سامنے شکار کا گوشت پیش کیا تو آپ رضی اللہ عنہ نے اس کو قبول نہیں فرمایا اور ارشاد فرمایا: "حالت احرام میں ہونے کی بناء پر ہم اس کو قبول نہیں کررہے ہیں" (مسلم، باب تحریم الصید الماکول البری:۱ /۳۷۹)؛
(۹)حضرت عثمان رضی اللہ عنہ کے نزدیک آقا کے لئے ایسی دو باندیوں سے جو آپس میں سگی بہنیں ہوں ہمبستری کرنا درست نہیں ہے؛ جیسا کہ قبیصہ بن ذؤیب سے روایت ہے کہ ایک شخص نے حضرت عثمان بن عفان رضی اللہ عنہ سے ایسی دوبہنوں کے بارے میں سوال کیا جو کسی کی باندی ہوں کہ کیا ان کا آقا ان دونوں سے صحبت کرسکتاہے؟ حضرت عثمان رضی اللہ عنہ نے فرمایا کہ قرآن مجید کی ایک آیت تو ان کو حلال کرتی ہے اور ایک آیت ان کو حرام کرتی ہے، حلال کرنے والی آیت ہے "فَإِنْ خِفْتُمْ أَلاَّتَعْدِلُواْ فَوَاحِدَۃً أَوْمَامَلَکَتْ أیْمَانُکُمْ" (النساء:۳) اور حرام کرنے والی آیت ہے "وَاَنْ تَجْمَعُوْا بَیْنَ الْاُخْتَیْنِ" (النساء: ۲۳) پھرحضرت عثمان رضی اللہ عنہ نے فرمایا "میرا مسلک یہ ہے کہ مجھے ایسا کرنا ہرگز پسند نہیں"۔ (مؤطامالک مع أوجزالمسالک: ۰ا/۴۷۴، مطبوعہ: مرکزالشیخ ابی الحسن الندوی للبحوث، مظفر پور اعظم گڑھ، یوپی)
شاید آپ رضی اللہ عنہ کے پیش نظر یہ حدیث مبارک تھی کہ "ہربادشاہ کی ایک چراگاہ ہوتی ہے اور اللہ تعالٰیٰ کی چراگا اس کے احکام ہیں جو شخص سرحد کے قریب جاتا ہے قریب ہے کہ وہ اس میں جاپڑے"۔ (بخاری، باب فضل من استبرأ لدینہ، حدیث نمبر:۵۰)؛
(۱۰)اگر کوئی شخص اپنی بیوی کو حق طلاق تفویض کردے یعنی اپنے آپ کو طلاق دینے کا اختیار دیدے تو اس صورت میں حضرت عثمان رضی اللہ عنہ کے نزدیک وہ حق طلاق کی مالک ہوجائیگی یعنی اگر وہ طلاق کو اختیار کرے تو طلاق پڑجائیگی۔ (مصنف ابن ابی شیبہ: ۹/۵۸۱)؛
(۱۱)اگر کوئی عورت اپنے خاوند سے خلع حاصل کرلے تو حضرت عثمان رضی اللہ عنہ کے نزدیک اس عورت پر ایک طلاق بائن واقع ہو جائیگی لیکن اگر مرد نے ایک سے زائد طلاقوں کی صراحت کی تو پھر جتنی طلاقوں کی صراحت کی اتنی ہی واقع ہوجائینگی۔ (مصنف ابن ابی شیبہ: ۱۰/۳۷)؛
آپ رضی اللہ عنہ کے فیصلہ کا مبدا شاید حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہ سے مرفوعاً اور سعید بن مسیب سے موقوفاً مروی یہ روایت ہے: "اللہ کے نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے خلع کو ایک طلاق بائن قرار دیا"۔ (اعلاء السنن: ۲۲۱۱)؛
(۱۲)حضرت عثمان رضی اللہ عنہ اذان اور اس نوعیت کی دینی خدمات پر معاوضہ لینے کو جائز سمجھتے تھے؛ چنانچہ امام شافعی رحمہ اللہ فرماتے ہیں حضرت عثمان رضی اللہ عنہ مؤذنین کو باقاعدہ تنخواہ دیا کرتے تھے۔ (سنن بیہقی: ۱/۴۲۹، بحوالہ: انسائکلو پیڈیا:۳۔ فقہ حضرت عثمان رضی اللہ عنہ:۲۴)؛
آپ رضی اللہ عنہ کا استدلال شاید ابن عباس رضی اللہ عنہ کی اس حدیث سے ہے کہ ایک صحابی رضی اللہ عنہ نے ڈسے ہوئے شخص پر سورۂ فاتحہ پڑھ کر دم کیا، جس سے وہ شخص اچھا ہوگیا، اس شخص نے اِن صحابی کوبطورِ اجرت چند بکریاں دیدیں، نبیٔ رحمت صلی اللہ علیہ وسلم سے اس کے متعلق دریافت کیا گیا تو آپ رضی اللہ عنہ نے اس اجرت کو جائز قرار دیا۔ (بخاری، باب مایعطی فی الرقیۃ علی أحیاء العرب بفاتحۃ الکتاب :۱ /۳۰۴)؛
(۱۳)حضرت عثمان رضی اللہ عنہ وضو کے ارکان میں ترتیب کو واجب سمجھتے تھے۔ (المجموع: ا/۴۸۲، بحوالہ: انسائیکلوپیڈیا: ۳۔ فقہ حضرت عثمان رضی اللہ عنہ: ۴۰۶)؛
اس مسئلہ میں حضرت عثمان رضی اللہ عنہ کا استدلال شاید اس حدیث سے ہے جو خود آپ رضی اللہ عنہ ہی سے مروی ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ایک مرتبہ ترتیب سے وضو کرکے فرمایا: "جو شخص میرے اس وضو جیسا وضو کرے؛ پھرخشوع وخضوع کے ساتھ دورکعت پڑھے تو اس کے پچھلے گناہ معاف ہوجاتے ہیں"۔ (بخاری: ۱/۲۷)؛
(۱۴)اگرکوئی شخص اپنی بیوی کو طلاق دے پھر عدت کے بعد خاوندکا انتقال ہوجائے تو بیوی مرد کی وارث ہوگی یا نہیں اس بارے میں حضرت عثمان رضی اللہ عنہ یہ فیصلہ فرمایا کرتے تھے کہ اگر مرد نے حالت صحت میں بیوی کو طلاق دی اور پھر عدت کے بعد مرد کا انتقال ہوا تو بیوی وارث نہیں ہوگی لیکن اگر اس نے حالتِ مرض میں طلاق دی اور عدت کے بعد مرد کا انتقال ہوا تو اس صورت میں آپ رضی اللہ عنہ عورت کو مرد کے مال میں سے حصہ دیتے تھے۔ (مصنف ابن ابی شیبہ: ۱۰/۱۵۳)؛
(۱۵)حضرت عثمان رضی اللہ عنہ کے نزدیک دادی یا نانی میں سے اگر کوئی میراث کی حقدار ہورہی ہوتو اس کو ترکہ میں سے چھٹا حصہ دیا جا ئیگا، چاہے میراث کی مستحق ایک ہو یا زیادہ، زیادہ ہونے کی صورت میں چھٹا حصہ ان کے درمیان برابر تقسیم ہوگا؛ لیکن آپ رضی اللہ عنہ کے نزدیک ددی اور نانی کو وراثت میں حصہ ملنے کی شرط یہ ہے کہ جس واسطے سے یہ دونوں میت کی دادی یا نانی بن رہی ہیں وہ واسطہ زندہ نہ ہو اگر وہ واسطہ یعنی میت کا باپ یا ماں وغیرہ زندہ ہوگا تو وہ ان کو میراث سے محروم کردیگا؛ کیونکہ وہ خود رشتے میں ان دادی اور نانی کے مقابلے میں میت سے زیادہ قریب ہے، اس وجہ سے حضرت عثمان رضی اللہ عنہ میت کے باپ یعنی دادی کے بیٹے کی موجودگی کی صورت میں یا میت کی ماں یعنی نانی کی بیٹی کی موجودگی کی صورت میں مال وراثت میں دادی کو حصہ نہیں دیا کرتے تھے۔ (سنن دارمی: ۲/۲۷۹، مطبع دارالکتب العلمیہ، بیروت)؛
(۱۶)اگرکوئی شخص ایسی غیر منقولہ شیٔ کو جس کا ناپنا تو لناممکن نہ ہو باقاعدہ قبضہ میں لینے سے پہلے ہی کسی دوسرے شخص کو فروخت کردے تو حضرت عثمان رضی اللہ عنہ اس کو جائز قرار دیتے تھے۔ (انسائیکلوپیڈیا:۲۔ فقہ حضرت عثمان رضی اللہ عنہ:۱۰۹)؛
ایک حدیث میں نبی کریمﷺ نے ناپ کر یاتول کر بیچی جانے والی کھانے کی چیز کو قبضہ سے پہلے بیچنے سے منع فرمایا۔ (ابوداؤد، باب فی بیع الطعام قبل ان یستوفی: ۴۹۴۔ نسائی، باب النہی فی بیع مااشتری من الطعام بکیل حتی یستوفی: ۲/۱۹۵)؛
ممکن ہے کہ حضرت ذوالنورین رضی اللہ عنہ نے کَیل اور وزن کی قید کو علت نہی قرار دیا اور غیرمنقولہ اشیاء کو علت نہ پائے جانے کی بنیاد پر قبضہ سے پہلے بیچنے کو جائز قرار دیا ہو۔ استخراجِ مسائل کی ایک قسم،تقلیدمجتہد استخراج واستنباط مسائل کی ایک صورت یہ بھی ہے کہ مجتہد کسی دوسرے مجتہد کے قول پر فتویٰ دے جیسا کہ علامہ ابن قیم رحمہ اللہ نے اس کی طرف اشارہ کرتے ہوئے فرمایا، ہم کسی ایسے امام کو نہیں پاتے ہیں جس نے بعض احکام میں اپنے سے زیادہ علم والے کی تقلید نہ کی ہو، حضرت عثمان رضی اللہ عنہ نے اپنی کوفہ والی زمین کے بدلہ میں حضرت طلحہ رضی اللہ عنہ سے ان کی مدینہ منورہ کی زمین یہ کہہ کر خرید فرمائی کہ میں وہ زمین بغیر دیکھے تم کو بیچ رہا ہوں، حضرت طلحہؓ نے فرمایا: میے لیے مہلت ہوگی کیونکہ میں بغیر دیکھی ہوئی چیز خرید رہا ہوں اور آپ دیکھی ہوئی خرید رہے ہیں، ان دونوں نے حضرت جبیر بن مطعم رضی اللہ عنہ کے سامنے اپنا مسئلہ پیش کیا تو حضرت جبیر رضی اللہ عنہ نے حضرت عثمان رضی اللہ کے خلاف فیصلہ کرتے ہوئے بیع کو جائز قرار دیا اور حضرت طلحہ رضی اللہ عنہ کو بغیر دیکھی ہوئی چیز خرید نے کی بناء پر مہلت دی۔ (اعلام:۴/۱۶۲)؛
ممکن ہے کہ اس مسئلہ حضرت عثمان رضی اللہ عنہ نے حضرت جبیر بن مطعم رضی اللہ عنہ کے قول کو قبول کیا ہو جو ایسے ہی ایک مسئلہ میں انہوں نے فرمایا تھا۔ (اعلاء السنن: ۹/۲۳۸)؛
(۱۷)اسی طرح اگر خریدار خریدی ہوئی چیز کے عیب کو نہیں جانتا ہے اور لاعلمی میں استعمال کرتارہتاہے تو اس سے اس کا اس چیز کو واپس کرنے کاحق ساقط نہیں ہوجاتا ہے اور اگر استعمال سے فروخت کردہ چیز میں کوئی نقص واقع ہوجاتاہے تو واپسی کی صورت میں اداکردہ قیمت میں سے نقصان کے مطابق کمی کردی جائے گی؛ چنانچہ حضرت عثمان رضی اللہ عنہ نے ایک ایسے کپڑے کو استعمال کے بعد بھی واپس کرنے کاحکم صادر فرمایا جس میں خریدار کو استعمال کے بعد نقص کا پتہ چلاتھا۔ (حوالہ سابق:۱۱۰)؛
حضرت عثمان رضی اللہ عنہ نے حضرت عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہا کی اس روایت پر قیاس کیا ہوگا جس میں یہ واقعہ ذکر کیا گیا ہے کہ ایک شخص نے غلام خرید کر اس سے مزدوری کروائی پھر اس غلام کے اندر عیب کا پتہ چلا تو انہوں نے وہ غلام واپس کردیا، غلام کے پہلے مولیٰ (بائع) نے اس کی کمائی کو واپس کرنے کا مطالبہ کیا تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے کمائی کو جرمانہ کا بدلہ قرار دیدیا۔ (ابوداؤد، باب فی من اشتری عبدا فاستعملہ ثم وجد بہ عیباً: ۴۹۵۔ ابن ماجہ، باب بیع الطعام قبل مالم یقبضہ: ۱/۱۶۱)؛
(۱۸)اگر کسی نابینا شخص کے ہاتھوں اپنے رہبر یاکسی ایسے شخص کو جواس کے ساتھ بیٹھا ہو غلطی سے کوئی نقصان پہنچ جاتاہے تو اس سے قصاص یادیت نہیں لی جائیگی؛ چنانچہ حضرت عثمانؓ فرمایا کرتے تھے کہ اگر کوئی شخص کسی نابینا شخص کے پاس بیٹھا ہے اور اسے اس نابینا شخص کے ہاتھ سے کو ئی گزند پہنچتاہے تو اس سے قصاص یادیت نہیں لیں گے۔ (۱۹)بیعتِ خلاف کے بعد حضرت عثمان رضی اللہ عنہ کے سامنے ہر مزان کے قتل کا مقدمہ پیش ہوا حضرت عبید اللہ بن عمر رضی اللہ عنہ مدعا علیہ تھے، اس مقدمہ میں جو فیصلہ ہوا وہ بھی درحقیقت ایک اجتہاد پر مبنی ہے یعنی مقتول کا اگر کوئی وارث نہ ہو تو حاکمِ وقت اس کا ولی ہوتا ہے؛ چونکہ ہرمزان کا کوئی وارث نہ تھا اس لیے حضرت عثمان رضی اللہ عنہ نے بحیثیتِ ولی کے قصاص کے بجائے دیت لینا قبول کیا اوروہ رقم بھی اپنے ذاتی مال سے دے کر بیت المال میں داخل کردی، حضرت عثمان رضی اللہ عنہ نے اپنے بعض اجتہاد سے بعض معاملات میں سہولت پیدا کردی، مثلاً دیت میں اونٹ دینے کا رواج تھا، حضرت عثمان رضی اللہ عنہ نے اس کی قیمت بھی دینی جائز قراردی۔ (کتاب الخراج:۹۲، بحوالہ: سیرالصحابہ: ۱/۲۳۶)؛
حضرت عثمانؓ کی دریائے فقہ و اجتھاد کے یہ چند قطرے ہیں جو اوپر بطورِ نمونہ پیش کئے گئے جن کو دیکھنے والا آسانی سے یہ اندازہ لگاسکتا ہے کہ قرآن و حدیث میں بیان کئے گئے اصول و جزئیات اور دقائق و نکات کی روشنی میں نئے پیش آنے والے مسائل کا حل تلاش کرنا شریعت میں دخل اندازی والا جرم نہیں جیسا کہ فقہ کی حقیقت سے ناواقف لو گ خیال کررہے ہیں بلکہ صحابہ کرام ث کی سنت ہے اور جدید مسائل کے حل کا واحد راستہ ہے۔


حضرت علیؓ اور اجتہاد

(۱)حضرت علیؓ سے پوچھا گیاکہ ایک بچے نے کنویں میں پیشاب کردیا ہے اب اس کا کیا کیا جائے؟آپؓ نے فرمایا:کنویں سے پانی نکالا جائے یہاں تک کہ اس کا پانی نکالنے والوں پر غالب آجائے،یعنی سارا پانی نکل نہ سکے توپھر باقی پانی کو نظرانداز کرد یاجائے۔ (مصنف عبدالرزاق: ۸/۱۸۲،مسند زید:۴/۲۰،بحوالہ ،فقہ علیؓ:۶۸۹)؛
شاید آپؓ نے اس موقع پر ارشاد خداوندی "لاَيُكَلّفُ الله نَفْسًا إِلاَّوُسْعَهَا"(البقرۃ:۲۸۶)اللہ تعالے ہر نفس کواس کی طاقت کے بقدرہی احکام کاپابندبناتے ہیں"اور "فَاتَّقُوا اللَّهَ مَااسْتَطَعْتُمْ" (التغابن:۱۶)اللہ سے ڈروجتنی تم کوطاقت ہے ، جیسی نصوص سے استدلال فرمایاہوگا۔ (۲)اگر کنویں میں کوئی جانور چوہا وغیرہ گرکر مرجائے اور پھٹ جائے تو حضرت علیؓ کے نزدیک سات ڈول پانی نکالا جائے گا اور اگر وہ جانور سڑگیا ہوتو اس قدر پانی نکالا جائے گا جس سے بدبو دور ہوجائے(عبدالرزاق:۱/۸۲۔بیہقی:۱/۲۶۸۔ کنزالاعمال،حدیث نمبر:۲۷۵۰۰)ممکن ہے کہ آپؓ کے پیش نظر یہ حدیث رسول ؐ تھی " خلق الماء طھوراً لاینجسہ شئی الاما غیر طعمہ أوریحہ"۔ (مصابیح السنۃ:۱/۲۲۵، بحوالہ مشکوٰۃ المصابیح مع مرقاۃ المفا تیح:۲/۱۶۶)؛
(۳)حضرت علیؓ اس بات کے قائل تھے کہ وضو کے صحیح ہونے کیلئے نیت شرط ہے؛لہٰذا بغیر نیت کے وضو درست نہیں ہوگا ہو سکتا ہے کہ آپؓ نے "انما الأعمال بالنیات" (صحیح بخاری:۱/۱)کے عموم سے استدلال کیا ہو۔ (۴)حضرت علیؓ کے نزدیک امامت کیلئے یہ ضروری تھا کہ امام کی حالت مقتدیوں کی حالت سے کم تر نہ ہو،اسی لئے آپؓ نے تیمم کرنے والے کے پیچھے وضو کرنے والے کی نماز کو جائز قرار نہیں دیا. (مصنف عبدالرزاق:۲/۳۵۲۔کنزالاعمال ، حدیث نمبر:۲۲۹۱۴)؛
آپ ؓ نے اس حدیث سے استدلال فرمایا ہوگا: انما جعل الامام لیو تم بہ،فلا تختلفو اعلیہ۔ (صحیح مسلم:۱/،الامام ضامن۔ابودائود ،حدیث نمبر:۵۱۷۔ترمذی،حدیث نمبر:۲۰۷۔مسنداحمد،حدیث نمبر:۲/۴۶۱)؛
(۵)حضرت علی صجب سجدہ میں جاتے توپہلے اپنی پگڑی کو پیچھے ہٹادیتے پھر سجدہ فرماتے (المجموع:۳/۴۲۶)؛
آپؓ کا یہ عمل اس حدیثِ رسول سے مستنبط معلوم ہوتا ہے "امرت أن اسجد علی سبعۃ اعظم،علی الجبھۃ ، والیدین، والرکبتین، وأطراف القدمین" ترجمہ:امام الانبیاء ا کا ارشاد گرامی ہے :مجھے یہ حکم دیاگیا ہے کہ میں سات اعضاء پر سجدہ کروں (۱)پیشانی پر(۲/۳)دونوں ہاتھوں پر(۴/۵)دونوں گھٹنوںپر(۶/۷)دونوں قدموں کی انگلیوںپر۔ (بخاری شریف، حدیث نمبر:۸۱۲۔مسلم شریف،حدیث نمبر:۲۳۰،۴۹۰)؛
(۶)حلال جانوروں مثلاً:بھیڑبکری اور اونٹ وغیرہ کے پیشاب کے متعلق حضرت علیؓ زیادہ تشدد نہیں فرماتے اور لوگوں کوگنجائش دیتے تھے۔ (الروض النضیر:۱/۲۹۲)؛
(۷)اسی طرح بلی کے جھوٹے پانی کو پینے اور اس سے وضو کرنے میں بھی آپؓ کوئی حرج نہیں سمجھتے تھے۔ (الاستذکار:۱/۲۰۸ ۔ کنزا لعما ل :حدیث نمبر ۲۷۵۲۷۔الروض النضیر:۱/۲۵۳)؛
ان دونوں مسئلوں میں آپؓ کی نظر ان نصوص نبویہ پر معلوم ہوتی ہے،اشربوابوالھاوالبانھا(ترجمہ)اونٹوں کادودھ نوش کرو اور ان کا پیشاب استعمال کرو(ترمذی:۱/)انما ھی من الطوافین علیکم اوالطوافات(ترجمہ)بیشک وہ (بلی)تمہارے اردگرد چکر لگانے والے جانوروں میں سے ہے۔ (ابوداؤد:۱/۱۰۔نسائی:۱/۶۳۔ابن ماجہ:۳۱)؛
(۷)حضرت علیؓ سوئے ہوئے آدمی کے تصرفات قولی کا کوئی اعتبار نہیں فرماتے تھے،اس حالت میں دی ہوئی طلاق،ارتداد اور کئے ہوئے معاملات کو درست نہیں مانتے تھے،آپؓ کا ارشاد ہے کہ نیند میں مدہوش انسان مرفوع القلم ہوتا ہے جب تک بیدار نہ ہوجائے۔ (مصنف ابن ابی شیبہ:۱/۲۵۸)؛
اس مسئلہ کی بنیاد یہ حدیث معلوم ہوتی ہے :آپؐ کا ارشاد مبارک ہے " انہ لا تفریط فی النوم ،انما التفریط فی البقطۃ"۔(ابوداؤد:۶۳)؛
(۸)حضرت علیؓ نابالغ لڑکے کیلئے بالغوں کی امامت کو درست نہیں سمجھتے تھے،حضرت عبداللہ بن عباسؓ فرماتے ہیں کہ ہمیں امیر المؤمنین حضرت علیؓ نے منع فرمایا تھا کہ ہماری امامت سوائے بالغ کے اور کوئی کرے۔ (المغنی:۱/۵۷۵)؛
اس مسئلہ میں آپؓ کا حکم اس حدیث سے مستنبط معلوم ہوتا ہے۔ (۹)اگر چلتی کشتی میں دورا نِ سر کا خوف ہوتو آپؓ کے نزدیک بیٹھ کر نماز ادا کرنا درست ہے،آپؓ کا ارشاد ہے:"اگر تم کشتی میںہو اور کشتی چل رہی ہوتو بیٹھ کر نماز ادا کرلو،اگر کشتی کھڑی ہوتو کھڑے ہوکرنماز پڑھو"۔ (الروض النضیر:۲/۳۷۳)؛
حضرت علیؓ کا یہ استنباط حضور اکرمؐ کے درج ذیل ارشاد گرامی سے ہوسکتا ہے: "صل قائماً فان لم تستطع فقاعدًا فان لم تستطع فعلی جنب فان لم تستطیع فمستلقیاًلا یکلف اللہ نفسا الا وسعھا" (ترجمہ)آپؐ نے ایک صحابی ؓ سے فرمایا:کھڑے ہوکر نماز پڑھو اگر اس کی طاقت نہ ہوتو بیٹھ کرپڑھو اگر اس کی بھی قوت نہ ہوتو پہلو پر پڑھو اگر اس کی بھی ہمت نہ ہوتو چت لیٹ کر پڑھو،اللہ تعالٰیٰ ہر شخص کو اس کی طاقت کے بقدر ہی تکلیف دیتے ہیں۔ (بخاری:۱/۸۳،باب اذالم یطق قاعداً)؛
(۱۰)اگر رمضان یا عید کا چاند دن کی ابتداء میں نظر آئے تو اس کی وجہ سے روزہ رکھنا یا افطار کرنا درست ہوگا اور اگر دن کے آخر میں نظر آئے تو روزہ رکھنا یا افطار کرنا درست نہ ہوگا اور اس چاند کا اعتبار نہ کیا جائیگا،حضرت علیؓ کا یہی مسلک ہے ، چنانچہ آپ ؓ کا قول ہے کہ جب تم ابتدائے نہار(دن)میں چاند دیکھو تو روزہ چھوڑدو،لیکن اگر انتہائے نہار میں چاند نظر آئے تو روزہ نہ چھوڑو،اس لئے کہ سورج اس سے ہٹ جا تا ہے (مصنف عبدالرزاق:۴/۱۶۳۔مصنف ابن ابی شیبہ:۱/۱۲۷۔کنزالاعمال ۲۴۳۰۴۔مسند زید:۳/۸۵)حضور اکرمؐ کی یہ حدیث حضرت علیؓ کی دلیل ہوسکتی ہے: " صومو الرئویتہ وأفطروالرئویتہٖ" (ترجمہ)چاند دیکھ کر روزہ رکھو اور چاند دیکھ کر افطار کرو۔ (۱۱)اگر کوئی مسلمان مقتول پایا جائے اور قاتل کا پتہ نہ چلے تو حضرت علیؓ کے نزدیک اس مقتول کی دیت بیت المال سے ادا کی جائیگی؛ اسی طرح اگر کوئی شخص بھیڑبھاڑ میں دب کر مرجائے تو بھی آپؓ یہی فیصلہ فرما تے تھے؛چنانچہ ایک شخص میدان عرفات کی بھیڑ بھاڑ میں ہلاک ہوگیا اس کے خاندان والے حضرت عمرؓ کی خدمت میں حاضر ہوئے،حضرت عمر ص نے ان سے پوچھا:تمہارے پاس اس کا ثبوت ہے کہ اسے کس نے ہلاک کیا ہے؟حضرت علی رضی اللہ عنہ نے یہ سن کر فرما یا : امیرالمؤمنین ایک مسلمان کاخون اس طرح رائیگاں نہیں جانا چاہیے،اگر آپ کو اس کا قاتل معلوم ہے تو ٹھیک ہے ورنہ اس کی دیت بیت المال سے ادا کیجئے (المغنی:۸/۶۹)حضرت علیؓ کے دورِخلافت میں بھی ا یک مرتبہ کوفہ کی جامع مسجد میں لوگوں کا ازدحام ہوگیا جب بھیڑ ذار چھٹ گئی تو پتہ چلا کہ ایک آدمی ہلاک ہوگیا ہے،حضرت علی ؓ نے اس کی دیت مسلمانو ں کے بیت المال سے ادا کردی۔ (مصنف عبدالرزاق:۱۰/۵۱۔المحلٰی:۱۰/۴۶۸)؛
حضرت علیؓ کے ان فیصلوں کا دارومدار خا تم الانبیاء تاجدارِ مدینہ حضرت محمد مصطفی ﷺ کی اس حدیث شریف پر معلوم ہوتا ہے "لا ضرر ولا ضرار،من ضارّ ضارّہ اللہ" (ترجمہ)نہ ابتداء نقصان پہنچائو نہ بدلہ میں، جو کسی دوسرے کو نقصان پہنچائیگا اللہ اس کا نقصان کریں گے۔ (مستدرک حاکم:۲/۵۷،عن ابی سعید الخدری)؛
حضرت علی ص کی دریائے فقہ و اجتھاد کے یہ چند قطرے ہیں جو اوپر بطورِ نمونہ پیش کئے گئے جن کو دیکھنے والا آسانی سے یہ اندازہ لگاسکتا ہے کہ قرآن و حدیث میں بیان کئے گئے اصول و جزئیات اور دقائق و نکات کی روشنی میں نئے پیش آنے والے مسائل کا حل تلاش کرنا شریعت میں دخل اندازی والا جرم نہیں جیسا کہ فقہ کی حقیقت سے ناواقف لو گ خیال کررہے ہیں بلکہ صحابہ کرام ث کی سنت ہے اور جدید مسائل کے حل کا واحد راستہ ہے۔

[ترمیم]
ائمہ اربعہ میں اختلاف کیوں؟

ہم نے اس مقام پر معدودے چند مسائل کا ذکر کیا ہے، دراصل اس امر کی جانب نشاندھی مقصود ہے کہ ائمہ کرام کے درمیان پایا جانے والا اختلاف یہ صحابہ کرام سے ہی چلا ہے؛ نیز اجتہاد یہ کوئی ایسا عمل نہیں جسے ائمہ کرام نے ایجاد کیا ہو؛ بلکہ اجتہاد کا عمل قرنِ اوّل ہی سے جاری ہے، پیش آمدہ مسائل میں صحابہ کرام رضی اللہ عنہم نے اجتہاد کا سہارا لیا ہے اور آراء کے اختلاف کے موقعہ پر ہر ایک نے وسعت کی راہ اپناتے ہوئے اپنی اپنی رائے پر عمل کیا کسی نے دوسرے پر طعن و تشنیع نہیں کی، ہر ایک نے اپنے مخالف کا احترام کیا؛ انہوں نے اختلاف کو صرف علمی حلقوں تک ہی محدود رکھا، اس علمی رائے کے اختلاف کو آپسی چپقلش ذاتی عناد خلاف کا ذریعہ نہ بنایا، جس کا لازمی نتیجہ تھا کہ ان میں مخالف رائے سامنے آنے کے باوجود تحمل دشوار نہ تھا اور کوئی اپنی ہی رائے کو ضد و ہٹ دھرمی کے بناء پر حق اور دوسری رائے کو باطل نہیں قرار دیتا، یہ علمی اختلاف کی وسعت کا ہی اثر تھا انہوں نے زیادہ سے زیادہ اپنی رائے کو "صَوَابٌ یَحْتَمِلُ الْخَطَاءَ" (کہ رائے درست ہے اور غلطی کا بھی احتمال ہے) اور دوسرے کی رائے کو "خَطَأٌ یَحْتَمِلُ الصَّوَابَ" (یعنی غلطی و چوک ہے مگر درستگی کا احتمال ہے) کا درجہ دیا، صحابہ کرام رضی اللہ عنہم اجمعین کے درمیان اختلاف کے باوجود انہوں نے اختلافی مسائل کی تبلیغ و فروعی مسائل کی تشہیر کے بجائے متفق علیہ عقائد کی تبلیغ مناسب سمجھی اور انہیں اختلافی مسائل کی تبلیغ سے رونما ہونے والے خطرات کا بھی بخوبی احساس تھا، صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کے مابین فروعی مسائل میں اختلاف ہونے کے باوجود کبھی انہوں نے اسے ایمان و کفر کا معیار یا گمراہی و ضلالت نہیں قرار دیا، آج ایسی کتابیں دستیاب ہیں جس میں صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کے بھی فقہی مسائل مذکور ہیں جنھیں دیکھ کر ان کے فقہی اختلاف کی نوعیت مکمل طور پر آشکارا ہوسکتی ہے؛ اگر ہم ان سے صرفِ نظر کرکے صرف ائمہ کرام کو موردِ طعن قرار دیں تو یہ ہماری کوتاہی ہوگی اور علمی قابلیت کی کمی اور استعداد کی قلت پر دلالت ہوگی۔


اجتہاد کے شرائط

یہ اتنی اہم اور نازک ذمہ داری ہرکس وناکس کو نہیں سونپی جاسکتی، اس کے لیے اخلاص وللہیت ،تقوی،خداترسی شرط ہے اور حزم واحتیاط کا وصف بھی مطلوب ہے،اس کے ساتھ عمیق علم،ذکاوت وفراست،وسیع نظر نیز زمانہ سے بھرپور آگہی کی بھی ضرورت ہے،چنانچہ اہل علم نے اس طرف خصوصی توجہ دی ہے اور یہ متعین کرنے کی کوشش کی ہے کہ مجتہد کو کن اوصاف کا حامل ہونا چاہیے، امام غزالی رحمہ اللہ نے لکھا ہے کہ وہ عملی اعتبار سے احکام شریعت کے مراجع:قرآن،حدیث، اجماع،اورقیاس کااحاطہ رکھتا ہو (المستصفی، فصل فی ارکان الاجتہاد:۲/۳۸۳) اور امام بغویؒ نے ان چار کے علاوہ عربی زبان کا بھی ذکرکیا ہے(عقدالجید، باب بیان حقیقۃ الاجتہاد: ۱/۴) مناسب ہوگا کہ ان میں سے ہر ایک کا علیحدہ ذکر کیا جائے اور ان سے متعلق ضروری وضاحت کی جائے۔

  • قرآن کا علم
قرآن کی ان آیات سے واقفیت ضروری ہے جو احکام سے متعلق ہوں، عام طورپر علماء نے لکھا ہے کہ ایسی آیات کی تعداد پانچ سو ہے(المستصفی، فصل فی ارکان الاجتہاد:۲/۳۸۳) مگر محققین کا خیال ہے کہ یہ تحدید صحیح نہیں ہے،کیونکہ قرآن میں احکام صرف اوامرونواہی میں منحضر نہیں ہیں،قصص وواقعات اورمواعظ میں بھی فقہی احکام نکل آتے ہیں (البحر المحیط، باب الثانی المجتھد الفقیہ:۴/۴۹۰) علامہ شعر انی رحمہ اللہ فرماتے ہیں کہ اگر فہم صحیح میسر ہو،اورتدبیر سے کام لیاجائے تو اس سے کئی اور احکام نکل آئیں گے اورمحض قصص وامثال کے مضامین بھی احکام سے خالی نہ ہوں گے (ارشاد الفحول، الشروط الواجب توفرھا فی المجتھد: ۲/۲۰۶)چونکہ قرآن مجید کے بعض احکام منسوخ ہیں،اس لیے ناسخ ومنسوخ کے علم سے بھی واقف ہونا ضروری ہے تاکہ متروک احکام کو قابل عمل نہ ٹھہرایاجائے (الابہاج: ۴/۱۷) مگر اس کے لیے تمام منسوخ اورناسخ آیات وروایات کااحاطہ ضروری نہیں ہے،اتنی سی بات کافی ہے کہ جس آیت یا حدیث سے وہ استدلال کررہا ہے وہ منسوخ نہ ہو (شرح الکوکب المنیر، باب فی بیان احکام المستقل ومایتعلق بہ: ۴/۴۶۱) اسی طرح مجتہد کے لیے یہ بھی ضروری نہیں ہے کہ وہ حافظ قرآن ہو،یاان آیات کا حافظ ہو جن سے احکام متعلق نہیں ہیں۔ (الابہاج: ۴/۱۶)؛

  • احادیث کا علم
مجتہد کے لیے ان احادیث سے واقف ہونا ضروری ہے جن سے فقہی احکام مستنبط ہوتے ہیں،مواعظ اور آخرت وغیرہ سے متعلق روایات پر عبورضروری نہیں،ایسی احادیث گو ہزاروں کی تعداد میں ہیں لیکن بقول علامہ رازی وغزالی وہ غیر محدود بھی نہیں ہیں(المستصفی:۲/۳۸۴۔ المحصول:۶/۲۳)بعض حضرات کی رائے یہ ہے کہ ایسی احادیث کی تعداد تین ہزار(ارشاد الفحول: ۲/۲۰۷) اوربعض کی رائے بارہ سو ہے لیکن اس تحدید سے اتفاق مشکل ہے۔ حدیث سے واقفیت کا مطلب یہ ہے کہ حدیث کے صحیح ومعتبر ہونے سے واقف ہو،خواہ یہ واقفیت براہ راست اپنی تحقیق پر مبنی ہو یا کسی ایسے مجموعہ احادیث سے روایت نقل کی گئی ہو جس کی روایت کو ائمہ فن نے قبول کیاہو(ارشاد الفحول: ۲/۲۰۷۔ المستصفی:۲/۳۸۴) یہ بھی معلوم ہو کہ حدیث متواتر ہے یامشہور یاخبرواحد، نیز راوی کے احوال سے بھی آگہی ہو (تیسیرالتحریر:۴/۹۰) اب چونکہ روایات میں وسائط بہت بڑھ گئے ہیں، راویوں پر طویل مدت بھی گذرچکی ہے اور ان کے بارے میں تحقیق دشوار ہے اس لیے بخاری ومسلم جیسے ائمہ فن نے جن راویوں کی توثیق کی ہے ان پر ہی اکتفاء کیا جائے گا(المستصفیٰ: ۲/۳۸۷) اس طرح جن روایات کو بعض اہل علم نے قبول نہیں کیا ہے ان کے راویوں کی تو تحقیق کی جائے گی لیکن جن احادیث کو امت میں مقبولیت مل چکی ہے ان کی اسناد پر غور وفکر کرنے کی ضرورت نہیں۔ (المستصفی:۲/۳۸۷)؛
البتہ مجتہد کے لیے یہ ضروری نہیں ہے کہ وہ تمام احادیث احکام کا حافظ ہو ،اگر اس کے پاس احکام سے متعلق احادیث کا کوئی مجموعہ ہو اور اس سے استفادہ کرے تو یہ بھی کافی ہے اہل علم نے خاص طور پر اس سلسلہ میں سنن ابی داؤد کا ذکر کیا ہے۔ (المستصفی:۲/۳۸۳۔ ارشاد الفحول:۲/۲۰۷)؛

  • اجماعی مسائل کا علم
جن مسائل پر امت کے مجتہدین کا اتفاق ہوجائے تو اس سے اختلاف درست نہیں ہے،اس لیے مجتہد کے لیے یہ ضروری ہے کہ اجماعی مسائل سے بھی واقف ہو،البتہ تمام اجماعی اوراختلافی مسائل کا احاطہ ضروری نہیں ہے(المستصفی:۲/۳۸۴)بلکہ جس مسئلہ میں اپنی رائے دے رہا ہو اس کے بارے میں اسے واقف ہونا چاہئے (کشف الاسرار:۴/۲۲) یہ جاننا بھی اس کے لیے ضروری نہیں ہے کہ اس پر اجماع کیوں ہے؟ بلکہ اس قدر معلوم ہوکہ اس مسئلہ میں اتفاق ہے یا نہیں؟ (کشف الاسرار:۴/۲۲) یا غالب گمان ہوکہ یہ مسئلہ اس دور کا پیدا شدہ ہے(کشف الاسرار: ۴/۲۲) کیونکہ اجماع انہی مسائل میں ممکن ہے جو پہلے واقع ہوچکے ہیں۔

  • قیاس کے اصول وشرائط کا علم
چونکہ احکام شریعت کا بہت بڑا حصہ قیاس پر مبنی ہے اور مجتہد کی صلاحیتِ اجتہاد کا بھی اصل مظہر یہی ہے، بلکہ حدیث میں اجتہادہی کا لفظ آیا ہے(ابوداؤد، حدیث نمبر:۳۱۱۹) جس سے فقہاء نے قیاس پر استدلال کیا ہے،اس لیے قیاس کے اصول وقواعد اورشرائط وطریق کار سے واقفیت بھی ضروری ہے، اس لیے کہ قیاس اجتہاد کے لیے نہایت اہم اورضروری شرط ہے(المستصفی: ۲/۲۶۶)امام غزالی رحمہ اللہ نے قیاس کے بجائے عقل کا لفظ استعمال کیا ہے جس میں مزید عموم ہے اور قیاس بھی اس میں داخل ہے۔ (المحصول :۶/۲۳)؛

  • عربی زبان کا علم
احکام شریعت کے دواہم مصادر قرآن اورحدیث کی زبان عربی ہے اس لیے ظاہر ہے کہ عربی زبان سے واقفیت نہایت ضروری ہے اور کاراجتہاد کے لیے بنیادواساس کا درجہ رکھتی ہے، عربی زبان کے لیے عربی لغت اور قواعد سے واقف ہونا چاہئے،اتنی واقفیت ہوکہ محلِ استعمال کے اعتبار سے معنی متعین کرسکے،صریح اور مبہم میں فرق کرسکے، حقیقی اورمجازی استعمال کو سمجھ سکے،فن لغت اورنحووصرف میں کمال ضروری نہیں ہے،اس سے اسقدر واقفیت ہونی چاہئے کہ قرآن وحدیث کے متعلقات کو سمجھنے میں دشواری نہ ہو(المستصفی:۲//۳۸۶) اوربقول امام رازی اس کا لغت میں اصمعی اورنحو میں سیبویہ وخلیل ہونا مطلوب نہیں ہے۔ (الاحکام: ۱/۴۱۶)؛

  • مقاصد شریعت سے آگہی
اجتہاد کے لیے ایک اہم اورضروری شرط مقاصدِ شریعت سے واقفیت ہے اور یہ واقفیت بدرجہ کمال وتمام مطلوب ہے،عام طورپر اہل علم نے اس کا مستقل طورپر ذکر نہیں کیاہے؛ لیکن امام ابواسحاق شاطبی نے اس کی طرف خصوصی توجہ دی ہے وہ اجتہاد کے لیے دوبنیادی وصف کو ضروری قراردیتے ہیں،مقاصد شریعت سے مکمل آگہی اوراستنباط کی صلاحیت(الموافقات: ۳/۳۳۵) اوریہ واقعہ ہے کہ مقاصد شریعت سے پوری پوری آگہی نہایت اہم شرط ہے،کیونکہ فقہاء کو احکام شریعت کےعمومی مقاصد سے ہم آہنگ رکھا جائے، اورمجتہد کا اصل کام یہی ہے کہ وہ مقاصد شریعت کو ہمیشہ سامنے رکھے اور ان کو پورا کرنے والے وسائل وذرائع کو اس نقطۂ نظر سے دیکھے کہ وہ موجودہ حالات میں شریعت کے بنیادی مقاصد ومصالح کو پورا کرتے ہیں یا نہیں؟۔

  • زمانہ آگہی
اجتہاد کے لیے ایک نہایت اہم اورضروری شرط جس کا عام طورپر صراحۃً ذکر نہیں کیاگیا ہے وہ یہ ہے کہ مجتہد اپنے زمانہ کے حالات سے بخوبی واقف ہو،عرف وعادت ،معاملات کی مروجہ صورتوں اورلوگوں کی اخلاقی کیفیات سے آگاہ ہوکہ اس کے بغیر اس کے لیے احکام شریعت کا انطباق ممکن نہیں،اس لیے محققین نے لکھا ہے کہ جو شخص اپنے زمانہ اورعہد کے لوگوں سے یعنی ان کے رواجات معمولات اورطورطریق سے باخبر نہ ہو وہ جاہل کے درجہ میں ہے۔ (رسم المفتی:۱۸۱، زکریا بکڈپو)؛


مجتہد کے لیے زمانہ آگہی کی ضرورت کیوں؟

مجتہد کے لیے زمانہ آگہی دووجوہ سے ضروری ہے، اول ان مسائل کی تحقیق کے لیے جو پہلے نہیں تھے اب پیدا ہوئے ہیں؛کیونکہ کسی نوایجاد شئی یا نو مروج طریقہ پر محض اس کی ظاہری صورت کو دیکھ کر کوئی حکم لگادینا صحیح نہیں ہوگا، جب تک اس کی ایجاد اوررواج کا پس منظر معلوم نہ ہو، وہ مقاصد معلوم نہ ہوں جو اس کا اصل محرک ہیں،معاشرہ پر اس کے اثرات ونتائج کا علم نہ ہو اوریہ معلوم نہ ہو کہ سماج کس حد تک ان کا ضرورت مندہے؟ اس سب امور کے جانے بغیر کوئی بھی مجتہد اپنی رائے میں صحیح نتیجہ تک نہیں پہونچ سکتا۔ دوسرے بعض ایسے مسائل میں بھی جوگواپنی نوعیت کے اعتبارسے نوپید نہیں ہیں؛ لیکن بدلے ہوئے نظام وحالات میں ان کے نتائج میں فرق واقع ہوگیا ہے،دوبارہ غوروفکر کی ضرورت ہوتی ہے،یہ ایک نہایت اہم پہلو ہے جو فقہ اسلامی کو زمانہ اوراس کے تقاضوں سے ہم آہنگ رکھتا ہے؛اکثر اہل علم نے اس نکتہ پر روشنی ڈالی ہے۔ علامہ قرافیؒ نے لکھا ہے کہ منقولات پر جمود دین میں گمراہی اورعلماء سلف صالحین کے مقصد سے ناواقفیت ہے (کتاب الفروق:۲/۲۲۹) حافظ ابن قیمؒ نے اپنی مایہ ناز تالیف اعلام الموقعین میں اس موضوع پر مستقل باب باندھا ہے (اعلام الموقعین:۳/۷۸)علامہ شامیؒ نے عرف وعادت میں تغیر پر ایک مستقل رسالہ تالیف کیاہے، اس رسالہ سے علامہ موصوف رحمہ اللہ کی ایک چشم کشا عبارت نقل کی جاتی ہے: " بہت سے احکام ہیں جو زمانہ کی تبدیلی کے ساتھ بدل جاتے ہیں؛اس لیے کہ اہل زمانہ کا عرف بدل جاتا ہے،نئی ضرورتیں پیدا ہوجاتی ہیں،اہل زمانہ میں فساد(اخلاق) پیدا ہوجاتا ہے،اب اگر شرعی حکم پہلے کی طرح باقی رکھا جائے تو یہ مشقت اور لوگوں کے لیے ضرر کا باعث ہوجائےگا اوران شرعی اصول وقواعد کے خلاف ہوجائے گا جو سہولت وآسانی پیدا کرنے اورنظام کائنات کو بہتر اورعمدہ طریقہ پررکھنے کے لیے ضرروفساد کے ازالہ پر مبنی ہے۔ (نشر العرف)؛

  • ایمان وعدل
اجتہاد کےلیے ایک نہایت اہم شرط شریعت اسلامی پر پختہ ایمان وایقان اوراپنی عملی زندگی میں فسق وفجور سے گریز واجتناب ہے،علامہ آمدی رحمہ اللہ نے اس کو شرط اولین قراردیا ہے کہ وہ خدا کے وجود،اس کی ذات وصفات اورکمالات پر ایمان رکھتاہو، رسول کی تصدیق کرتاہو، شریعت میں جو بھی احکام آئےہیں ان کی تصدیق کرتا ہو۔ (الاحکام للآمدی، الباب الاول فی المجتہدین: ۱/۴۱۵)؛
موجودہ زمانہ میں تجددپسند اوربزعم خود روشن خیالوں کو اجتہاد کا شوق جس طرح بے چین ومضطرب کئے ہوا ہے،علاوہ علم میں ناپختگی کے ان کی سب سے بڑی کمزوری ذہنی مرعوبیت،فکری استقامت سے محرومی اورمغربی عقیدہ وثقافت کی کورانہ تقلید کا مرض ہے،ان کے یہاں اجتہاد کا منشاء زندگی کی اسلامی بنیادوں پر تشکیل نہیں ہے؛بلکہ اسلام کو خواہشات اورمغرب کی عرضیات کے سانچہ میں ڈھالنا ہے یہ اسلام پر حقیقی ایمان اور تصدیق سے محرومی کا نتیجہ ہے،ظاہر ہے جو لوگ اس شریعت پر دل سے ایمان نہیں رکھتےہوں،جن کا ایمان ان لوگوں کے فلسفہ وتہذیب پر ہوجو خدا کے باغی اور اس دین وشریعت کے معاندہوں ان سے اس دین کے بارے میں اخلاص اورصحیح رہبری کی توقع رکھنا راہزنوں سے جان ومال کی حفاظت کی امید رکھنے کے مترادف ہے۔ ایمان کی تخم سے جو برگ وبار وجود میں آتا ہے وہ عمل صالح ہے،اس لیے مجتہد کو گناہوں سے مجتنب اورشریعت کے اوامر کا متبع ہوناچاہئے،اس کیفیت کا نام اصطلاح میں عدالت ہے،کیونکہ اس کیفیت کےپیداہوئے بغیر کسی شخص کی رائے پر اعتماد اوراعتبار نہیں کیا جاسکتا (المستصفی، فی ارکان الاجتہاد: ۲/۳۸۲) اوریہ بات قرین قیاس بھی ہے؛کیونکہ حدیث کے قبول کئے جانے کے لیے ضروری ہے کہ اس کے راوی دینی اعتبار سے قابل اعتبار ہوں، شریعت کے احکام پر عمل پیرا ہوں،ممنوعات سے بچتے ہوں،راوی دین کے احکام پہونچانے کا کام کرتے ہیں، اورمجتہدین ان روایات کے معتبر اورنامعتبر ہونے کو پرکھتے اوران سے احکام کا اخذ واستنباط کرتے ہیں،خداناترس راویوں کو روایات میں تحریف کے لیے جو موقع حاصل ہے، خشیت سے عاری مجتہدین کے لیے تحریف معنوی کے اس سے زیادہ مواقع ہیں،اس لیے ظاہر ہے کہ مجتہدین کے لیے عدل واعتبار کاحامل ہونا زیادہ ضروری ہے۔


مجتہد کو نتیجہ تک پہنچنے کے لیے درکار وسائل

مجتہد کو کسی نتیجہ تک پہونچنے کے لیے جن مراحل سے گذرنا پڑتا ہے ان کو فقہاء نے تحقیق مناط،تخریج مناط اورتنقیح مناط سے تعبیر کیاہے،مناط اس چیز کو کہتے ہیں جس سے کوئی چیزلٹکائی جائے۔ "ذات انواط"زمانۂ جاہلیت میں ایسے درخت کو کہاجاتا تھا جس سے اسلحہ لٹکائے جائیں،رسی کو ستون سے باندھنےکو کہاجاتا تھا "نطت الحبل بالوتد"اسی لیےمناط علت کو کہتے ہیں؛ کیونکہ علت ہی سے احکام متعلق ہوتے ہیں(شرح الکوکب المنیر: ۴/۲۰۰)علت کے سلسلہ میں مجتہدکو دوبنیادی کام کرنے پڑتے ہیں،ایک اس بات کی تحقیق کہ شریعت کے کسی حکم کی کیا علت ہے،دوسرے یہ کہ یہ علت کہاں اورکن صورتوں میں پائی جاتی ہے،ان دونوں کاموں کے لیے جو طریق کار اختیار کیاجاتا ہے اس کو تنقیح،تخریج،اورتحقیق سے تعبیر کیاجاتا ہے۔

  • تنقیح مناط
شریعت میں ایک حکم دیا گیا ہو، اور یہ حکم کس صورت میں ہوگا اس کو بھی بیان کردیا گیا ہو؛ لیکن جو صورت ذکر کی گئی ہو اس میں مختلف اوصاف پائے جاتے ہوں، شارع نے اس خاص وصف کی صراحت نہ کی ہو جو اس صورت میں مذکورہ حکم کی وجہ بنائے،اس کو تنقیح مناط کہتے ہیں،اس کو علامہ شاطبی ؒ نے لکھا ہے کہ تنقیح مناط میں وصف معتبر کو وصف نامعتبر سے ممتاز کیاجاتا ہے۔ (الموافقات: ۳/۲۲۹)؛
عام طور پر اس سلسلے میں یہ مثال ذکر کی جاتی ہے کہ ایک دیہاتی شخص جس نے رمضان کے روزہ میں اپنی بیوی سے صحبت کرلی تھی،آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اس کو کفارہ اداکرنے کاحکم فرمایا،اب اس واقعہ میں کئی باتیں جمع ہیں، اس شخص کادیہاتی ہونا، بیوی سے صحبت کرنا،خاص اس سال کے رمضان میں اس واقعہ کا پیش آنا، یہ سب ایسی باتیں نہیں ہیں جو کفارہ کا سبب بن سکتی ہیں ؛بلکہ رمضان المبارک میں قصدًا روزہ توڑنا ہی ایسا وصف ہے جو اس حکم کی اساس بن سکتا ہے،یہی تنقیح مناط ہے۔
اسی طرح قرآن مجید نے"خمر" کوحرام قراردیا ہے،خمر انگوری شراب کو کہتے ہیں،اس میں مختلف خصوصیات موجود ہیں، اس کا انگوری ہونا،میٹھا ہونا،کسی خاص رنگ کا ہونا اور نشہ آور ہونا،مجتہد ین ان تمام اوصاف میں نشہ آور ہونے کی کیفیت کو خمر کے حرام ہونے کی علت قرار دیتے ہیں اور باقی دوسرے اوصاف کو اس کے لیے موثر نہیں مانتے؛غرض مختلف اوصاف میں سے اس خاص وصف کے ڈھونڈ نکالنے کو تنقیح مناط کہتے ہیں ،جو نص میں مذکورہ حکم کےلیے اساس وبنیاد بن سکتے ہیں۔

  • تخریج مناط
نص نے ایک حکم دیا ہو اور اس کی کوئی علت بیان نہ کی ہو،اب مجتہد علت دریافت کرتا ہے کہ اس حکم کی علت کیا ہے؟ اس عمل کا نام تخریج مناط ہے(مذکرۃ اصول الفقہ: ۱/۵۳) مثلاً ارشادخداوندی ہے کہ دوبہنوں کو نکاح میں جمع نہ کیا جائے(النساء:۲۲) حدیث میں بعض اوررشتہ دار عورتوں کو ایک نکاح میں جمع کرنے کی ممانعت وارد ہوئی ہے(مسلم، باب تحریم الجمع الخ، حدیث نمبر:۲۵۱۴)مگر کوئی علت مقرر نہیں کی گئی ہے کہ دونوں بہنوں کو کیوں جمع نہ کیا جائے ،فقہاء نے تلاش و تتبع سے کام لیااوراس نتیجہ پر پہونچے کہ اس کی وجہ سے دومحرم عورتوں کو بیک نکاح میں جمع کرنا ہے؛ لہٰذا کسی بھی دو محرم رشتہ دار عورتوں کو بیک وقت نکاح میں جمع کرنا حرام قرار دیا ؛یہی تخریج مناط ہے۔

تنقیح وتخریج میں فرق
تخریج مناط اورتنقیح مناط میں کوئی جوہری فرق نہیں ہے دونوں کامنشاء نصوص میں مذکور حکم کی علت دریافت کرنا ہے ،دونوں میں فرق صرف اس قدر ہے کہ تنقیح مناط میں مختلف ممکنہ علتوں میں سے ایک کی تعیین ہوتی ہے،جیسے روزہ کے کفارہ میں علت روزہ کی حالت میں جماع بھی ہوسکتاہے اور قصدًا روزہ توڑنا بھی ہوسکتا ہے،شوافع نے جماع کو علت مانا ہے جبکہ احناف نے قصدًا روزہ توڑنے کو علت قراردیا ہے؛ مگرتخریج مناط میں ایسے وصف کو علت بنایاجاتا ہے جس کا اس حکم کے لیے موثر ہونا بالکل بے غبار ہو اور اس میں تنقیح وتہذیب کی ضرورت پیش نہ آئے۔

  • تحقیق مناط
تحقیق مناط کی دوصورتیں ہیں،ایک یہ کہ کوئی متفق علیہ یا نص سے صراحتہ ثابت شدہ قاعدہ شرعی موجود ہو،مجتہد کسی خاص واقعہ میں دیکھتا ہے کہ اس میں یہ قاعدہ موجود ہے یا نہیں ؟ مثلاً محرم کے لیے قرآن مجید نے یہ قاعدہ مقرر کردیا ہے کہ اگر وہ شکار کرے تواسی کے مثل بطور جزاء اداکرے(المائدہ:۹۵) اب مجتہد متعین کرتاہے کہ گائے کا مثل کونسا جانور ہے، جنگلی گدھے کا مماثل کس پالتو جانور کو سمجھا جائے،یہ تحقیق مناط کی پہلی صورت ہے،دوسری صورت یہ ہے کہ نص میں کوئی حکم علت کی صراحت کے ساتھ ذکر کیا گیا ہو، یااس حکم کے لیے کسی خاص بات کے علت ہونے پراجماع ہے،مجتہد کسی غیر منصوص صورت یا اس صورت میں جس کے متعلق صراحۃ فقہاء کا اجماع موجود نہیں ہے، وہ یہ دیکھتا ہے کہ یہ علت یہاں پر پائی جاتی ہے یا نہیں؟ جیسے آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے بلی کے جھوٹے کو فرمایا کہ ناپاک نہیں ہے، اس لیے کہ یہ بلی ان مخلوقات میں سے ہے جن کی تم پر بہت زیادہ آمد ورفت ہوتی رہتی ہے۔ (ابوداؤد، باب سؤر الھرۃ، حدیث نمبر: ۶۸)
اب مجتہد غورکرتا ہے کہ کیا چوہے وغیرہ میں بھی یہی علت پائی جاتی ہے؟ اورکیا کتے بھی اس زمرہ میں آتے ہیں؟ عام فقہاء چوہے اوراس قسم کے بلوں میں رہنے والی مخلوق کو تو اس حکم میں رکھتے ہیں، کتوں کو اس حکم میں داخل نہیں مانتے، مالکیہ کا خیال ہے کہ یہ علت کتوں میں بھی ہے،اس لیے اس کا جھوٹا بھی پاک ہے، اوراس کے جھوٹے برتنوں کو دھونے کا حکم قیاس کے خلاف امر تعبدی (بندگی کے طور پر حکم بجا لانا) ہے،چوری کی سزاہاتھ کا کاٹاجانا ہے؛لیکن کیا جیب کترا اورکفن چور پر بھی چورکا اطلاق ہوسکتا ہے؟گواہ کے لیے عادل ہونا ضروری ہے؛لیکن فلاں اورفلاں شخص عادل کے زمرہ میں آتا ہے یا نہیں؟ نشہ حرام ہے،لیکن فلاں فلاں مشروبات کیا نشہ آور اشیاء کے زمرہ میں داخل ہیں یانہیں،یہ سب تفصیلات "تحقیق وانطباق تحقیق مناط" سے متعلق ہیں۔ (اصول الفقہ لابی زھرہ)


مجتہد کا دائرہ کار

احکام کی علتوں کو دریافت کرنا اور ان کو پیش آمدہ مسائل پر منطبق کرنا اگرچہ مجتہد کا بنیادی کام ہے،لیکن اس سے یہ سمجھنا غلط ہے کہ اس کو صرف اتنا ہی کرنا ہے؛ بلکہ اس کا کام مجمل نصوص کی مراد کو پہونچنا اورمشترک المعنی الفاظ کے مصداق کی تعیین کرنا بھی ہے،عربوں کے استعمال اورمحاورات کے مطابق شارع کی تعبیرات سے معنی اخذ کرنا بھی اس کا فریضہ ہے،حدیثوں کے معتبر یا نامعتبر ہونے کی تحقیق بھی اس کی ذمہ داری ہے، متعارض دلیلوں میں ترجیح و تطبیق سے بھی اس کو عہدہ برآہونا ہے،اس کےعلاوہ اخذواستنباط اوربحث وتحقیق کے نہ جانے کتنے دشوار گذار مراحل سے مجتہد کو گذرناپڑتاہے۔


شرائط اجتہاد کا خلاصہ

شرائط اجتہاد کے سلسلہ میں اب تک جتنی معروضات پیش کی گئیں ان کاخلاصہ یہ ہے کہ اجتہاد کے مقام پر فائز ہونے والے کے لیے یہ ضروری ہے کہ وہ عملی اعتبار سے شریعت پر کامل یقین رکھتا ہو،اورکردار کے اعتبار سے فاسق و فاجر نہ ہو عملی اعتبار سے ایک طرف اصول فقہ میں عبور ومہارت رکھتا ہو، اوردوسری طرف عربی زبان ولغت اوراسلوب بیان سے پوری طرح آگاہ ہو،زمانہ شناسی عرف وعادت اورمروجہ معاملات ونظام کی واقفیت میں بھی مجتہد کا پایہ بلندہو۔ اسلام کی عملی تاریخ میں جن علماء نے اجتہاد کا فریضہ انجام دیا ہے اورامت میں جن کے اجتہادات کوقبول عام حاصل ہوا ہے یہ سب وہ تھے جو اپنے زہد وتقویٰ میں بھی اوراپنی ذہانت ،دقت نظر ،عمیق فکر اور علم وآگہی میں بھی تاریخ کی ایسی ہی نابغۂ روزگار ہستیاں تھیں، رحمہم اللہ رحمۃ واسعۃ ۔

[ترمیم]
تجزی اجتہاد

اجتہاد کے بارے میں جن نکات اور موضوعات پربحث وتحقیق ہوتی ہے ان میں ایک اہم ترین بحث تجزی اجتہاد، یعنی کسی خاص شعبۂ دین میں اجتہاد کی ہے، اس مسئلہ کی اہمیت اس لیےبھی ہے کہ فی زمانہ ایک طرف عربیت، علومِ قرآن، معارفِ حدیث، اصولِ تشریع، فقہی فروعات اور احکام ومسائل کی جامع ہستی "مجتہدِ مطلق" کا وجود نایاب اور محال ہے، تودوسری طرف احوال ناس کے تغیر اور عرف وعادات کی تبدیلی خاص کردورِ حاضر کی حیرت انگیز ایجادات واکتشافات اور دنیا کے معاشی اور سیاسی انقلابات نے ایسے مسائل پیدا کردئیے ہیں جوعہدِ سلف میں پیش نہیں آئے تھے، ایسی صورت میں جب کہ تمام فقہی ابواب میں اجتہادِ کامل کی صلاحیت رکھنے والی ہستی نہ ہو، آیا یہ بات درست ہوگی کہ کسی شخص کودین کے خاص شعبہ میں علمی براعت اور کمالِ تحقیق کی وجہ سے مجتہد تسلیم کرلیا جائے اور دوسرے شعبوں میں نہیں؟ زمانۂ قدیم اور آج کے عہد میں بھی علماء کے درمیان اس باب میں اتفاقِ رائے نہ ہوسکا، امام ابوحنیفہؒ اور دوسرے فقہاء اسے ناجائز کہتے ہیں: "واختار طائفۃ فقیہ مطلقاً"۔ بعض فقہاء اسے علم فرائض کی حد تک جائز تسلیم کرتے ہیں؛ مگردوسرے شعبائے دین میں اس کی اجازت نہیں دیتے، بعض لوگوں کی رائے یہ ہے کہ کسی بھی مکمل فقہی باب میں توتجزی درست ہے؛ لیکن یہ درست نہیں کہ ایک باب کے کسی خاص مسئلہ میں کوئی مجتہد ہو اور اسی باب کے دوسرے مسئلہ میں نہ ہو: "واختار طائفۃ نفیہ مطلقا وقیل لایتجر اوقیل یتجزا فی باب لافی مسئلۃ وقیل فی الفرائض لافی غیرھا"(مختصر التحریر:۳۹۸، بحوالہ اسلامی عدالت)؛
لیکن جمہور کارحجان اس کے جواز کی طرف ہے: "وَقَدْ حُكِيَتْ هَذِهِ الْمَسْأَلَةُ فِي أُصُولِ ابْنِ الْحَاجِبِ وَغَيْرِهَا وَذُكِرَ فِيهَا جَوَازُهُ، وَهُوَقَوْلُ بَعْضِ أَصْحَابِنَا عَلَى مَاذَكَرَهُ الْبُسْتِيُّ مِنْ مَشَايِخِنَا وَمُخْتَارُ الْغَزَالِيِّ وَنَسَبَهُ السُّبْكِيُّ وَغَيْرُهُ إلَى الْأَكْثَرِ وَقَالَ: إنَّهُ الصَّحِيحُ وَقَالَ ابْنُ دَقِيقِ الْعِيدِ: وَهُوَالْمُخْتَارُ"۔ (التقریر والتحریر:۲/۲۹۳، یہ حوالہ اسلامی عدالت)؛
لیکن اس میں بھی دواحتیاطیں ملحوظ رکھنی ضروری ہیں، پہلی یہ کہ جوشخص کسی خاص شعبۂ دین میں اجتہاد کی صلاحیت رکھتا ہو، اس کے اندر اپنے موضوع میں کمال تحقیق کے علاوہ وہ عمومی شرطیں اور صلاحیتیں بھی ہوں، جن کا تعلق مطلق اجتہاد سے ہے، مثلاً مسائل کی کنہ تک پہونچنا، مفہوم کی تہ کوسمجھنا، دلائل میں امتیاز اور قوتِ استنباط وغیرہ پس جس شخص میں اجتہاد کی یہ عمومی شرطیں اور صلاحیتیں ہوں، اسے کسی خاص شعبہ دین میں علمی براعت اور کمال تحقیق کی وجہ سے یہ اجازت ہوگی کہ اپنے خاص موضوع سے متعلق باب میں اجتہاد کرے اور تقلید سے احتراز کرے، دوسری بات یہ کہ آج کے ماحول میں جب کہ احکام شرع کا بوجھ سرسے اتارنے کارحجان بڑھا ہوا ہے، دینی کیفیتیں اور اخلاقی قدریں روبہ زوال ہیں، کسی کوبھی محض کمال تحقیق کی بناپراجتہاد کا حق دینا فتنہ سے خالی نہیں، اس لیے مناسب ہے کہ کتاب وسنت کے ساتھ فقہاء کے اجماعی اور مختلف فیہ مسائل پرنگاہ رکھنے والے اصحاب بصیرت اور جدید علوم وفنون کے زمانہ شناس ماہرین ومتخصصین پرمشتمل ایک مجلس کی تشکیل عمل میں لائی جائے، جہاں یہ حضرات جمع ہوکر اجتماعی تبادلۂ خیال، غوروفکر اور بحث وتحقیق کے ذریعہ مسائل حل کریں، اس طرح کے اجتماعی غوروفکر اور اجتہاد واستنباط کی مثالیں عہدسلف میں بھی ملتی ہیں، حضرت عمرؓ کے عہد میں فقہاء صحابہؓ کا اجتماع مدینہ کے فقہاء سبعہ کی مجلس فقہ، امام اعظمؒ اور ان کے رفقا کی مجالس اجتہاد اس طرف بہ صراحت رہنمائی کرتی ہےـــــ موجودہ دور میں مجامع اور اکیڈمیوں کے ذریعہ اجتماعی غوروفکر اور تبادلۂ خیال کی جوطرح پڑی ہے، وہ اسی صفت کی تجدید اور اس میں توسیع ہے، علماء ہند نے بھی اس سلسلہ کی مساعی میں کبھی کوتاہ ہمتی کا ثبوت نہیں دیا، مولانا تھانویؒ کا نام اس فہرست میں پیش پیش ہے، اللہ کے شکر ہے کہ اسلامک فقہ اکیڈمی نے ہندوستان میں اس کام کووسیع اور اعلیٰ سطح پرانجام دینا شروع کیا ہے اور حضرت مولانا مجاہد الاسلام صاحب قاسمی کی سرپرستی میں اس کے کام اور اقدام کی جورفتار ہے وہ نہایت اطمینان بخش اور امید افزا ہے دعاہے کہ اللہ تعالیٰ اس چراغ کوہمیشہ روشن رکھے اور اس کے افادہ واستفادہ کے دائرہ کو وسیع سے وسیع ترفرمائے، آمین۔
وما ذالک علی اللہ بعزیز۔


نبوی فکری اوراجتہادی بصیرت کے چند جلوے
اسلام کا دائمی معجزہ اورہمیشگی کی حجة اللہ البالغہ ”قرآن“ کے بعد اگر کوئی چیز ہے تو وہ صاحب قرآن کی ”سیرت“ ہے۔ دراصل ”قرآن“ اور ”حیات نبوی صلى الله عليه وسلم “ معاً ایک ہی ہیں، قرآن متن ہے تو سیرت اس کی شرح۔ قرآن علم ہے تو سیرت اس کا عمل، قرآن مابین الدفتین ہے تو یہ ایک مجسم و ممثل قرآن تھا جو مدینہ کی سرزمین پر چلتا پھرتا نظر آتا تھا، کان خلقہ القرآن.


سیرت نبوی کا اعجاز ہے کہ اس کے اندر ہزاروں روشن پہلو ہیں۔ دنیا کو جس پہلو یا گوشے سے روشنی اور گرمی مطلوب ہو، اس کو سیرت نبوی صلى الله عليه وسلم کے بے مثال خزانہ میں وہ اسوہ اور نمونہ مل جاتا ہے جس سے اپنے ہمہ نوعیتی مسائل و مشکلات کا کامیاب ترین حل نکال لے۔ آپ صلى الله عليه وسلم کی زندگی کا کوئی گوشہ تاریکی میں نہیں۔ آپ صلى الله عليه وسلم کی حیات طیبہ کے تمام ہی پہلو سورج سے زیادہ ظاہر وعیاں ہوکر دنیا کے سامنے موجود ہیں، آپ جس پیغام الٰہی کو لے کر دنیا میں تشریف لائے، وہ ساری انسانیت کیلئے ایک ہمہ گیر، مستحکم ومضبوط اور ”عائمی نظام حیات“ ہے اور اس نے اپنی اس امتیازی شان، ہمہ گیری اور دوامی حیثیت کی بقاء کی خاطر اپنے اندر ایسی لچک اور گنجائش رکھی ہے کہ ہر دور میں اور ہر جگہ انسانی ضروریات کا ساتھ دے سکے اور کسی منزل پر اپنے پیروں کی رہبری سے عاجز وقاصر نہ رہے۔



لوگوں کو جس قسم کے مسائل و حالات پیش آسکتے ہیں، ان کی بنیادی طور پر دو قسمیں ہیں:



(۱) وہ مسائل جن میں حالات و زمانے کے اختلاف سے کوئی تغیر پیدا نہ ہو۔ ایسے مسائل کیلئے شروع ہی سے شریعت میں تفصیلی احکام و قواعد ثابت و موجود ہیں۔ جیسے نکاح، طلاق، محرمات اور میراث وغیرہ کے احکام۔



(۲) وہ مسائل جو حالات و زمانے کے بدلنے سے متغیر ہوسکتے ہوں ایسے مسائل کے بارے میں شریعت نے کوئی تفصیلی احکام نہیں چھوڑے ہیں؛ بلکہ اس سلسلے میں عام قواعد اور بنیادی اصول ومبادی وضع کردی ہے اور امت کے بالغ نظر اور بلند پایہ فقہاء کیلئے یہ گنجائش چھوڑ دی ہے کہ شریعت کے مقاصد، اس کے مزاج ومذاق، احکام شرع کے مدارج اور دین کی بنیادی اصول و قواعد کو سامنے رکھ کر ان مسائل کے احکام تلاش کریں؛ لیکن اس مقصد کیلئے یہ ضروری ہے کہ علمائے امت کے سامنے سیرت نبوی کا فکری اور اجتہادی پہلو ہو جس کی رہنمائی میں ہر زمانہ کے علماء وفقہاء غیرمنصوص اور نئے پیش آمدہ مسائل میں شرعی غور و فکر کے ذریعہ کوئی شرعی حکم نکال سکیں۔ سیرت نبوی کا اعجاز دیکھئے کہ اس میں وہ قیاس واجتہاد کے ایک دو نہیں متعدد علمی نمونے موجود ہیں جن کے دیکھنے سے معلوم ہوتا ہے کہ آپ صلى الله عليه وسلم نے خود اپنے قول وسیرت سے یہ راہ کھلی رکھی ہے تاکہ کتاب وسنت کے اصولی ہدایات کی تطبیق پیش آنے والی جزئیات یہ قیامت تک جاری رہ سکے۔ ذیل کی سطروں میں ہم انتہائی اختصار کے ساتھ آپ صلى الله عليه وسلم کے اسی گوشہ کو اجاگر کرنے کی کوشش کریں گے۔



نبی صلى الله عليه وسلم کا استنباط واجتہاد



علماء اصول کا اس بارے میں اختلاف ہے کہ غیرمنصوص مسائل میں آپ صلى الله عليه وسلم کیلئے اجتہاد جائز تھا یا نہیں؟ جمہور علماء اصول کے یہاں جائز ہے۔ معتزلہ اور ابن حزم ظاہری کے یہاں جائز نہیں ہے۔(الاحکام للآمدی: ۴/۱۶۵، مسلم الثبوت: ۲/۳۶۱، تیسیرالتحریر: ۴/۱۸۳)



پھر جولوگ اجتہاد نبی صلى الله عليه وسلم کو جائز قرار دیتے ہیں ان کے مابین دو باتوں میں اختلاف ہے:



(الف) کس قسم کے مسائل میں آپ صلى الله عليه وسلم نے اجتہاد کیا ہے؟



(ب) آپ صلى الله عليه وسلم کب اجتہاد فرمایا کرتے تھے؟



علامہ قرافی رحمه الله ، علامہ عبدالعزیز بخاری رحمه الله اور علامہ شوکانی رحمه الله نے اس پر جمہور علمائے امت کا اتفاق نقل کیا ہے کہ آپ صلى الله عليه وسلم نے جنگی امور اور دنیوی معاملات کے سلسلے میں اجتہاد فرمایا ہے۔



بخاری کے الفاظ یہ ہیں: کلہم قد اتفقوا علیٰ أن العمل یجوز لہ بالرأی فی الحروب وامور الدنیا۔(کشف الاسرار شرح اصول البزدوی: ۳/۹۲۶، شرح الاسنوی علی المنہاج: ۳/۱۹۴)



علامہ قرافی بھی یہی فرماتے ہیں: محمل الخلاف فی الفتاویٰ. امّا الأقضیة فیجوز الأجتہاد بالاجماع“ (شرح الاسنوی علی المنہاج: ۳/۱۹۴)



لیکن کیا آپ صلى الله عليه وسلم نے شرعی امور میں بھی اجتہاد کیا ہے یا نہیں؟ اس بارے میں اصولیین کا قول مختلف ہے۔ دلائل کی روشنی میں جو قول نکھر کر سامنے آتا ہے وہ یہ ہے کہ آپ صلى الله عليه وسلم نے شرعی امور میں بھی اخذ واستنباط سے کام لیا ہے۔(ارشاد الفحول: ۲۵۵) جس کی سب سے بڑی اور واضح دلیل یہ ہے کہ آپ صلى الله عليه وسلم نے کیفیت اذان کے سلسلے میں اپنے صحابہ کے ساتھ اجماعی غور وتدبیر کے بعد اپنے اجتہاد و قیاس سے حضرت عمر رضی اللہ عنہ کے مشورہ پر ایک فیصلہ فرمایا اور پھر حضرت بلال رضی اللہ عنہ کو اذان دینے کا حکم فرمایا۔ غور کیا جاسکتا ہے کہ ”اذان“ کوئی دنیوی یا جنگی معاملہ نہیں؛ بلکہ خالص اللہ کا حق ہے اور شعائر دین ومذہب ہے؛ لیکن اس میں بھی آپ کا اجتہاد وقیاس ثابت ہے۔ اس سلسلے میں مزید دلائل کی طرف بعد میں اشارہ کیا جائے گا۔



اجتہاد نبوی کی کیفیت کے سلسلے میں جمہور محدثین اور ائمہ ثلاثہ کا رجحان یہ ہے کہ آپ صلى الله عليه وسلم کسی بھی واقعہ کے پیش آتے ہی اجتہاد کرلیا کرتے تھے اس سلسلے میں آپ وحی کا انتظار نہیں فرماتے تھے؛ لیکن اس بارے میں احناف کا راجح نقطئہ نظر یہ ہے کہ آپ صلى الله عليه وسلم پیش آمدہ مسائل میں پہلے ”وحی“ کا انتظار کرتے اگر ”مدت انتظار“ میں وحی نازل ہوجاتی تو فبہا ورنہ آپ صلى الله عليه وسلم اجتہاد وقیاس کے ذریعہ ان کا حل بتادیتے۔



علامہ سرخسی رحمه الله تحریر فرماتے ہیں: وأصح الاأقاویل عندنا أنہ علیہ الصلوة فیما کان یبتلی بہ من الحوادث التی لیس فیہا وحی منزل، کان ینتظر الوحی الی أن تمضَی مدة الانتظار ثم کان یعمل بالرأی والاجتہاد(اصول السرخسی: ۲/۹۱)



آپ صلى الله عليه وسلم فکرواجتہاد کے مامور تھے



(۱) بنونظیر جب مدینہ طیبہ سے شام جلاوطن کردئیے گئے تو اللہ تعالیٰ نے اہل بصیرت کو ان کی بدعہدی اور شرارت پے عبرت دلاتے ہوئے فرمایا: ”فاعتبروا یا أولی الابصار“ ”اعتبار، کہتے ہیں کسی چیز کی حقیقت ودلائل میں غور وفکر کرکے اسی جنس کی دوسری چیز کو جان لینا“



آیت میں ارباب بصیرت، صاحب نظروفکر لوگوں کو غور وتدبر کا بالعموم حکم دیاگیا ہے۔ اور نبی کریم صلى الله عليه وسلم سے بڑھ کر کون بالغ نظر ہوسکتا ہے؟ لہٰذا آیت پاک میں جس غور وفکر کا حکم دیا جارہا ہے آپ صلى الله عليه وسلم بھی اس کے عموم میں داخل ہیں اور اجتہاد وقیاس کے مکلف آپ صلى الله عليه وسلم بھی ہوئے۔(الاحکام للآمدی: ۴/۱۶۵)



(۲) واذا جاء ہم امر من الأمن اوالخوف أذاعوبہ ولوردوہ الی الرسول والی أولی الامر منہم لعلم الذین لیستنبطونہ منہم. امام رازی رحمة اللہ علیہ فرماتے ہیں کہ آیت پاک میں استنباط و تحقیق کے اندر اللہ تعالیٰ نے نبی پاک صلى الله عليه وسلم اور اولی الامر اور حاکموں کو یکساں قرار دیا ہے، جس سے یہ پتہ چلتا ہے کہ آپ صلى الله عليه وسلم اخذ و استنباط کے مکلف تھے، فعلم من ذلک أن الرسول علیہ الصلاة والسلام مکلف بالاستنباط (التفسیر الکبیر للرازی: ۱۰/۲۰۰-۲۰۱)



آیت پاک میں ”أمر من الامن اوالخوف“ سے اس نظریہ کو بھی تقویت ملتی ہے کہ آپ صلى الله عليه وسلم شرعی مسائل میں بھی اجتہاد کرتے تھے، اس لئے کہ لفظ ”اَمرٌ“ مطلق آیا ہے، اور جس طرح سے جنگ وجدال میں امن وخوف کی حالت ہوتی ہے اسی طرح امور دینیہ میں بھی امن وخوف کی حالت کا تحقق ممکن ہے، لہٰذا یہ ماننا پڑے گا کہ جس طرح آپ صلى الله عليه وسلم جنگی امور میں اجتہاد فرمایا کرتے تھے اسی طرح شرعی امور میں بھی آپ صلى الله عليه وسلم اجتہاد وقیاس کے مامور ومجاز تھے۔(اجتہاد الرسول: ۵۳)



(۳) لولا کتاب من اللّٰہ سبق لمسکم فیما أخذتم عذاب عظیم.(الانفال: ۶۸)



بدر کی لڑائی میں ستر کافر مسلمانوں کے ہاتھوں میں قید ہوکر آئے، آپ صلى الله عليه وسلم نے ان قیدیوں کے سلسلہ میں مشورہ طلب کیا۔ حضرات صحابہ نے اجتماعی غور وتدبر کے بعد ان قیدیوں کے سلسلے میں مشورہ دیا۔ حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ کے رائی یہ تھی کہ فدیہ لے کر ان تمام قیدیوں کو چھوڑ دیا جائے، جبکہ حضرت عمر رضی اللہ عنہ کی رائے یہ تھی کہ تمام قیدیوں کو قتل کردیا جائے، حضرت سعد بن معاذ رضي الله عنه کی بھی یہی رائے تھی۔ کافی بحث و تمحیص کے بعد نبی کریم صلى الله عليه وسلم نے اپنی طبعی رافت ورحمت کی بناء پر حضرت ابوبکر رضي الله عنه کے مشورہ پر عمل کیا۔ اور تمام قیدیوں کو فدیہ لے کر رہا کردیا گیا۔ لیکن آپ کے اس فیصلہ کو خدا تعالیٰ کی جانب سے اجتہادی غلطی قرار دی گئی اور پھر آیت مذکورہ میں جو سخت عتاب آمیز لہجہ اختیار کیاگیا وہ آپ دیکھ رہے ہیں۔ آیت پاک سے دو مسئلے ثابت ہوتے ہیں: اوّل: یہ کہ کسی پیش آمدہ مسائل میں کتاب و سنت میں کوئی حکم نہیں ملتا تو آپ صلى الله عليه وسلم کیلئے اجتہاد کرنا جائز تھا۔ دوم: یہ ہے کہ جس طرح آپ صلى الله عليه وسلم کیلئے جنگی امور میں اجتہاد کرنا جائز تھا۔ اسی طرح شرعی امور میں بھی آپ اجتہاد کے مکلف تھے۔ جنگ بدر کا معاملہ صرف ایک جنگی حد تک محدود نہ تھا بلکہ یہ جنگ ایمان وکفر، حق وباطل کی فیصلہ کن لڑائی ہونے کی وجہ سے مذہبی و شرعی معاملہ کی حیثیت اختیار کرگئی تھی۔



امام رازی رحمه الله فرماتے ہیں: فالآیة صریحة فی بیان أن الرسول علیہ الصلاة والسلام کان یحکم بمقتضی الاجتہاد فی الوقائع التی لم ینزل بہا نص او وحی.(التفسیر الکبیر: ۱۶/۷۴)



(۴) فتح مکہ کے دن مکہ المکرمہ کی حرمت وعظمت کو بیان کرتے ہوئے آپ صلى الله عليه وسلم نے ارشاد فرمایا: فہو حرام بحرمة اللّٰہ تعالیٰ الٰی یوم القیامة، لا یُعضد شوکة ولا ینفر صیدہ ولا تلتقط لقطة الاّ من عرّفہا ولا یختل خلاہا.



حضرت عباس رضی اللہ عنہ نے فرمایا: یارسول اللہ! آپ صلى الله عليه وسلم تمام گھانسوں کو ممنوع فرمارہے ہیں، حالانکہ ”اذخر“ کی ضرورت ہم لوگوں کو گھر کی چھتوں میں پڑتی رہتی ہے؟ نبی کریم صلى الله عليه وسلم نے فرمایا: ”الا الاذخر“ حافظ ابن حجر فرماتے ہیں کہ آپ صلى الله عليه وسلم کا پھر ”اذخر“ کا استثناء کردینا اس بات کی دلیل ہے کہ گھاس وغیرہ کی حرمت کے سلسلہ میں آپ صلى الله عليه وسلم نے اجتہاد کیا تھا۔ وہذا مبنی علی ان الرسول کان لہ ان یجتہد فی الاحکام(فتح الباری: ۴/۴۹)



(۵) قریش نے اپنے دور میں خانہ کعبہ جو تعمیر کی تھی۔ وہ حضرت ابراہیم علیہ السلام کی تعمیر کے خلاف تھی۔ حضرت عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہا نے سوال کیا: ألا تردہا علی قواعد ابراہیم؟ آپ صلى الله عليه وسلم نے فرمایا: لولا حدثان قومک بالکفر لفعلت(فتح الباری: ۳/۴۳۹)



آپ کا یہ ارشاد بھی اس بات کی دلیل ہے کہ آپ صلى الله عليه وسلم نے قریش کی تعمیر کردہ بنیاد کو جو باقی رکھا وہ آپ صلى الله عليه وسلم کا اجتہاد تھا۔ اس لئے کہ اگر آپ صلى الله عليه وسلم عمارت منہدم کرنے کا مامور ہوتے تو خوف فتنہ اس سے قطعا مانع نہیں ہوتا۔



مذکورہ بالا دلائل سے یہ بات واضح ہوگئی کہ آپ صلى الله عليه وسلم اجتہاد و قیاس کے مامور ومکلف تھے، آپ صلى الله عليه وسلم نے دینی ودنیوی تمام ہی امور میں اجتہاد کیا ہے۔ ذیل میں قدرے تفصیل بیان کی جاتی ہے کہ کن کن معاملات میں آپ صلى الله عليه وسلم نے اجتہاد سے کام لیا ہے۔



دنیوی امور میں آپ صلى الله عليه وسلم کے اجتہادات



(۱) ام المومنین حضرت زینب بنت جحش رضی اللہ عنہا کے یہاں آپ صلى الله عليه وسلم نے شہد نوش فرمایا، حضرت عائشہ اور حضرت حفصہ رضی اللہ عنہما کو اس کا علم ہوا تو دونوں نے اس بات پر اتفاق کرلیا کہ ہم میں سے جس کے پاس حضور تشریف لائیں، ہر کوئی یہ کہے کہ حضور آپ کے منہ سے مغافیر کی بو آرہی ہے! ایسا ہی ہوا، آپ حضرت عائشہ اور حفصہ رضي الله عنها میں سے جن کے پاس تشریف لے گئے آپ سے یہی سوال ہوا، آپ صلى الله عليه وسلم نے فرمایا نہیں، میں نے زینب کے پاس شہد پیا ہے۔ اگر تم لوگوں کو اس شہد کی وجہ سے ناراضگی ہوئی تو دیا رکھو! آج سے میں شہد ہی نہیں پیونگا۔ اس پر یہ آیت نازل ہوئی: لم یحرم ما احل اللّٰہ لک. (اجتہاد الرسول: ۸۷) آپ صلى الله عليه وسلم نے بعض ازواج کی دلجوئی کے واسطے اپنے اوپر شہد کو حرام کیاگیا، یہ محض آپ کا قیاس تھا۔



(۲) آپ مدینہ طیبہ تشریف لائے تو دیکھا کہ انصار مدینہ ترکھجور کا پیوند مادہ کھجور کو لگاتے ہیں تو کھجور زیادہ ہوتی ہے، آپ صلى الله عليه وسلم نے انصار کو اس طرز عمل سے منع کردیا۔ اتفاق سے اس سال مدینہ میں کھجور کی پیداوار بالکل گھٹ گئی تو آپ صلى الله عليه وسلم نے پھر اجازت دے دی(شرح النووی لصحیح مسلم ۱۰/۱۹۰) پہلے تابیر نخلہ کی ممانعت آپ صلى الله عليه وسلم کا اجتہاد تھا۔



(۳) آپ صلى الله عليه وسلم اکابر قریش کو اسلام کی دعوت و تبلیغ میں مشغول تھے، اسی دوران حضرت عبداللہ بن ام مکتوم حاضر مجلس ہوئے، آپ صلى الله عليه وسلم نے کفار ومشرکین کے قبول اسلام کی امید پر نابینا صحابی سے منھ پھیر لیا، جس پر آیت: عبس و تولّٰی الخ نازل ہوئی آپ صلى الله عليه وسلم کا یہ اعراض محض اجتہاد تھا۔(اجتہاد الرسول: ۸۸ سورة عبس)



جنگی امور میں آپ صلى الله عليه وسلم کے اجتہادات



(۱) بدر کی لڑائی کے سلسلے میں آپ صلى الله عليه وسلم نے اپنی رائے سے ایک جگہ متعین کی تھی، بعد میں حضرت حباب بن المنذر کی رائے سے وہ جگہ بدل دی- پہلی جگہ کے سلسلے میں آپ صلى الله عليه وسلم نے اجتہاد کیا تھا۔(سیرت ابن ہشام: ۲/۲۷۲)



(۲) اساری بدر کے سلسلے میں آپ صلى الله عليه وسلم نے جو کچھ فیصلہ فرمایا تھا وہ آپ کا اجتہاد تھا۔



(۳) غزوئہ احد کے سلسلے میں مدینہ سے باہر نکلنے یا نہ نکلنے میں آپ صلى الله عليه وسلم نے اجتہاد کیا تھا کہ مدینہ ہی میں رہ کر دشمنوں کا مقابلہ کیاجائے- بعد میں اس تعلق سے آپ صلى الله عليه وسلم پر وحی آئی۔(سیرت ابن ہشام: ۳/۶۴-۶۷)



(۴) ”خندق “ غزوئہ احزاب میں حضرت سلمان فارسی کی رائے پر آپ نے عمل کیا۔ یہ آپ کا اجتہاد تھا۔ اس سلسلہ میں آپ صلى الله عليه وسلم پر کوئی وحی نازل نہیں ہوئی تھی۔(اجتہاد الرسول: ۹۴)



(۵) غزوئہ خندق میں قبیلہ غطفان کے دوسردار عیینہ بن الحصن اور ”الحارث بن عوف المروی“ سے مدینہ کی ثلث کجھور پر مصالحت کی پیشکش کی تھی۔ یہ صرف آپ صلى الله عليه وسلم کا اجتہاد تھا۔(سیرت ابن ہشام: ۴/۱۰۴)



(۶) غزوئہ تبوک میں بعض منافقوں کے اعذار کی وجہ سے آپ صلى الله عليه وسلم نے انہیں جنگ میں شریک نہ ہونے کی اجازت و رخصت دیدی تھی ۔ یہ آپ صلى الله عليه وسلم کا اجتہاد تھا۔(اجتہاد الرسول: ۹۶)



معاملات و قضایا میں آپ صلى الله عليه وسلم کے اجتہادات



(۱) حضرت عبداللہ ابن عمر رضی اللہ عنہما کو آپ صلى الله عليه وسلم نے اپنی اس بیوی سے رجوع کا حکم دیا تھا جس کو انھوں نے حالت حیض میں طلاق دی تھی۔(الاحکام لابن دقیق العید: ۲/۲۰۱) یہ آپ صلى الله عليه وسلم کا اجتہاد تھا۔



(۲) حضرت ابوسفیان رضي الله عنه کی بیوی ”ہند بنت عتبہ“ نے جب حضرت ابوسفیان رضي الله عنه کی بخالت کی شکایت کی توآپ صلى الله عليه وسلم نے فرمایا: ”خذی من مالہ بالمعروف ما یکفیک ویکفی بینک.(صحیح مسلم: کتاب الاقضیہ) عورت کی ضرورت و کفایت کے بقدر شوہر پر نفقہ کا واجب کرنا آپ صلى الله عليه وسلم کا اجتہاد تھا۔



عبادات میں آپ صلى الله عليه وسلم کے اجتہادات



(۱) کیفیت اذان کے سلسلے میں حضرات صحابہ سے مشورہ کے بعد آپ صلى الله عليه وسلم نے جو کچھ فیصلہ فرمایا وہ آپ صلى الله عليه وسلم کا اجتہاد تھا۔ اس سلسلہ میں کوئی وحی وغیرہ نازل نہیں ہوئی تھی۔(فتح الباری: ۲/۷۷-۸۲)



(۲) ابتداء میں بیت المقدس آپ صلى الله عليه وسلم کا قبلہ تھا اور ۱۶ یا ۱۷ مہینہ ادھرہی رخ کرکے آپ صلى الله عليه وسلم نے نماز ادا کی، لیکن آپ صلى الله عليه وسلم کی خواہش تھی کہ آپ کا قبلہ مسجد حرام ہوجائے، چنانچہ آیت نازل ہوئی: قد نریٰ تقلب وجہک فی السماء آپ صلى الله عليه وسلم نے مسجد حرام کے قبلہ ہونے میں اجتہاد و قیاس کیا تھا۔(سیرت ابن ہشام: ۲/۲۵۷)



(۳) منبر سازی کے سلسلہ میں آپ صلى الله عليه وسلم نے اپنے ساتھیوں کی درخواست قبول فرمائی۔ یہ آپ کا اجتہاد تھا۔(فتح الباری: ۱/۴۸۶)



(۴) جماعت کی نماز چھوڑنے والے کے سلسلے میں آپ صلى الله عليه وسلم کا اجتہاد تھا کہ لکڑیاں جمع کرکے انہیں جلادیا جائے، لیکن پھر آپ صلى الله عليه وسلم نے اس ارادہ سے رجوع کرلیا۔(مسلم، کتاب المساجد) اگر تارک الجماعة کو جلانے کا حکم منجانب اللہ ہوتا تو آپ صلى الله عليه وسلم اس سے رجوع نہ فرماتے۔



(۵) رئیس المنافقین عبداللہ بن ابی ابن سلول کیلئے آپ صلى الله عليه وسلم نے استغفار کیا تھا۔ یہ آپ صلى الله عليه وسلم کا اجتہاد تھا۔(تفسیر الرازی: ۱۶/۱۴۶)



(۶) حضرت ابوطالب سے آپ صلى الله عليه وسلم نے فرمایا تھا لاستغفرن لک مالم اُمن(فتح الباری ۸/۳۳۷-۳۳۹)



فأنزل اللّٰہ تعالیٰ: ما کان للنبی والذین آمنو ان یستغفروا للمشرکین آپ صلى الله عليه وسلم کا اپنے چچا کیلئے استغفار کا ارادہ محض آپ صلى الله عليه وسلم کا اجتہاد تھا۔



مذکورہ دلائل سے یہ بات واضح ہوگئی کہ آپ صلى الله عليه وسلم نے تمام ہی قسم کے معاملات میں اجتہاد و استنباط سے فیصلے کئے ہیں۔ البتہ آپ صلى الله عليه وسلم کے اجتہاد اور امت کے مجتہدین کے اجتہادات میں آسمان وزمین کافرق ہے۔ آپ کے اجتہاد میں ”ہدی ہی ہدی“ ہے۔



اگر آپ صلى الله عليه وسلم کا اجتہاد مشیت الٰہی کے مطابق نہیں ہوتا تو ہر وقت وحی کے ذریعہ آپ صلى الله عليه وسلم کو صحیح واقعہ کی رہنمائی کردی جاتی تھی؛ لیکن اتنا مسلّم ہے کہ آپ صلى الله عليه وسلم نے حالات وواقعات میں اپنے اجتہاد و استنباط سے کام لیا ہے۔



آپ صلى الله عليه وسلم کے اجتہادات کا حکم



آپ صلى الله عليه وسلم نے جن مسائل میں اخذ واستنباط سے کام لیا ہے، تو کیا آپ صلى الله عليه وسلم اپنے تمام اجتہاد میں درستگی ہی پر تھے یا آپ صلى الله عليه وسلم سے خطاء و چوک بھی واقع ہواہے؟ جمہور محدثین کی یہی رائے ہے کہ آپ صلى الله عليه وسلم اپنے اجتہادات میں معصوم عن الخطاء تھے، جبکہ احناف کا اس سلسلے میں نقطئہ نظر یہ ہے کہ آپ صلى الله عليه وسلم کے اجتہادات میں خطاء بھی واقع ہوئی ہے۔ البتہ وحی کے ذریعہ اس کو منسوخ کرکے صحیح واقعہ کی رہنمائی فی الفور کردی جاتی تھی۔ دلائل کی روشنی میں احناف کا قول زیادہ راجح معلوم ہوتا ہے۔ اس لئے کہ آپ صلى الله عليه وسلم کی جس اجتہادی غلطی پر خدا کی جانب سے تنبیہ کی گئی ہے، اس میں ”عفا اللّٰہ عنک“ کا لفظ استعمال ہوا ہے، لفظ ”عفو“ اسی وقت استعمال ہوسکتا ہے جبکہ اس سے پہلے ”خطا“ کو موجود مانا جائے۔



(۲) ”لم اذنت لہم“ میں استفہام انکاری ہے، جس سے پتہ چلتا ہے کہ منافقوں کو غزوئہ تبوک میں عدم شرکت کی اجازت دینا آپ صلى الله عليه وسلم کی چوک تھی۔



(۳) حضرت قتادہ اور عمروبن میمون فرماتے ہیں ”اثنان فعلہما الرسول لم یوٴمر بشیء منہما اذنہ للمنافقین، واخذہ الفداء فی الأسٰریٰ، فعاتبہ اللّٰہ کما تسمعون“(تفسیر رازی: ۱۶/۷۳، الاحکام: ۴/۲۱۶)



بہرحال آپ صلى الله عليه وسلم کے اجتہادات میں خطاء کا واقع ہوجانا ممکن ہے، لیکن وحی کے ذریعہ اس کو منسوخ کردیا جاتا۔ آپ صلى الله عليه وسلم کے خطاء اجتہادی کو برقرار نہیں رکھا جاتا تھا۔(التحریر: ۵۲۷)



دورنبوی میں حضرات صحابہ کا اجتہاد



اجتہاد نبی صلى الله عليه وسلم کی طرح یہ مسئلہ بھی انتہائی اہم ہے کہ آپ صلى الله عليه وسلم کے رہتے ہوئے حضرات صحابہ کا کسی پیش آمدہ مسئلہ میں اجتہاد کرنا جائز تھا یا نہیں؟ اس بارے میں جمہور علماء اور احناف کی رائے یہ ہے کہ جس طرح آپ صلى الله عليه وسلم کو نئے اور غیر منصوص مسائل میں اجتہاد کی اجازت تھی، اسی طرح حضرات صحابہ کیلئے بھی یہ جائز تھا کہ وہ اپنے اجتہاد و قیاس کے ذریعہ نوازل وواقعات کا حل تلاش کریں۔ ذیل میں ہم اس کی بھی چند مثالیں پیش کرتے ہیں:



(۱) حضرت سعد بن معاذ رضي الله عنه نے حضور صلى الله عليه وسلم کے اشارہ سے یہود بنوقریظہ کے سلسلہ میں جو فیصلہ دیا تھاکہ ”انی أحکم فیہم ان یقتل الرجال وتقسم الاموال وتسبی الذرایا والنساء.



آپ صلى الله عليه وسلم کا یہ فیصلہ آپ صلى الله عليه وسلم کا اجتہاد تھا۔ آپ صلى الله عليه وسلم نے آپ کے اس اجتہادی فیصلہ کی پرزورالفاظ میں تحسین فرمائی: لقد حکمت فیہم بحکم اللّٰہ من فوق سبع ارفعة (سماوات)



(۲) غزوئہ احزاب سے واپسی کے موقع پر آپ صلى الله عليه وسلم نے صحابہ سے فرمایا تھا ”لایصلین احدکم العصر، الا فی بنی قریظة“ بعض صحابہ نے اس ارشاد کو حقیقی معنی پر معمول کرتے ہوئے بنی قریظہ میں عصر کی نماز ادا کرلی اور وقت کی تاخیر کی کوئی پروا نہیں کی۔ جبکہ دیگر صحابہ نے اجتہاد کیا اوراس ارشاد نبوی کو محض غایت سرعت پر محمول کیا اور یہ خیال کیا کہ بنوقریظہ ہی میں عصر پڑھنا مقصود نہیں ہے؛ بلکہ مقصود جلدی پہنچنا ہے۔ چنانچہ ان لوگوں نے راستہ ہی میں وقت پر عصر کی نماز پڑھ لی، آپ صلى الله عليه وسلم کو جب واقعہ کا علم ہوا تو آپ صلى الله عليه وسلم نے کسی فریق کو بھی برابھلا نہیں کہا۔ گویا آپ صلى الله عليه وسلم نے ان کے اجتہاد کو بھی معتبر مانا اور عمل بالظاہر کو بھی صحیح قرار دیا۔



(۳) مقام بدر میں مسلمانوں کی چھاؤنی بنانے کے سلسلہ میں، غزوئہ احزاب میں مدینہ کے اردگرد خندق کھودنے کے سلسلہ میں اور غزوئہ احد میں مدینہ کے اندر یا باہر رہ کر مقابلہ کرنے کے سلسلہ میں حضرات صحابہ نے جو کچھ بھی مشورہ دیا تھا۔ یہ ان کا اجتہاد تھا، آپ صلى الله عليه وسلم نے ان کے اجتہاد کو معتبر مانا۔



یہ تو حضرات صحابہ کے وہ اجتہادات تھے جو آپ صلى الله عليه وسلم کی موجودگی میں انجام پائے تھے۔ ان حضرات کے بعض ایسے اجتہادات بھی ہیں جو انھوں نے آپ صلى الله عليه وسلم کی غیبوبت میں انجام دیں لیکن جب آپ کو اس کا علم ہوا تو آپ صلى الله عليه وسلم نے اس کو صحیح قرار دیا، مثلاً:



(۱) کسی سفر میں حضرت عمر اور حضرت عمار بن یاسر رضی اللہ عنہما کو غسل جنابت کی حاجت ہوئی پانی دستیاب نہیں تھا جس سے غسل کرسکتے۔ تیمم کی نوبت آئی، دونوں حضرات نے تیمم غسل کی کیفیت کے سلسلہ میں اجتہاد سے کام لیا۔ حضرت عمار رضي الله عنه نے مٹی کے استعمال کو پانی پر قیاس کرتے ہوئے پورے جسم پر مٹی مل لی اور نماز ادا کی۔ حضرت عمر رضی اللہ عنہ کا اجتہاد یہ تھا کہ مٹی جنابت دور کیسے کرسکتی ہے؟ انھوں نے نماز ہی نہیں پڑھی ۔ ان دونوں کے واقعہ کا آپ صلى الله عليه وسلم کو علم ہوا، تو آپ صلى الله عليه وسلم نے کوئی ایسی بات ارشاد نہیں فرمائی جس سے ان حضرات کے اجتہاد کی تردید وممانعت ثابت ہوتی ہو؛ بلکہ آپ صلى الله عليه وسلم نے صرف اس قدر فرمایا کہ تیمم غسل اور تیمم وضوء میں کوئی فرق نہیں ہے پورے جسم پر مٹی لیپنے کی ضرورت نہیں تھی۔



(۲) حضرت عمروبن العاص کو غزوئہ ذات السلاسل میں غسل کی حاجت ہوئی، سردی اتنی سخت تھی کہ پانی سے غسل کرنا ممکن نہیں تھا آپ نے تیمم کیا اور اپنے تمام ساتھیوں کو نماز پڑھائی۔ آپ صلى الله عليه وسلم کو جب معلوم ہوا تو آپ صلى الله عليه وسلم نے پوچھا کہ تم نے ناپاکی کی حالت میں ساتھیوں کو نماز پڑھا دی، حضرت عمر بن العاص نے فرمایا: میں نے اللہ کا یہ ارشاد سنا ہے ولا تقتلوا انفسکم ان اللّٰہ کان بکم رحیماً، آپ صلى الله عليه وسلم یہ جواب سن کر ہنس پڑے۔(ابوداؤد ۱/۱۴۱) اور ان کے اس اجتہاد و استنباط پر کوئی نکیر نہیں فرمائی۔



(۳) حضرت معاذ بن جبل کو یمن کا قاضی بناکر بھیجنے کا وہ مشہور واقعہ بھی ہے جس میں انھوں نے آخر میں کہا تھا ”اجتہد برایٴ“ آپ صلى الله عليه وسلم نے ان کے اس اجتہاد و قیاس کو نہ صرف معتبر مانا بلکہ ان کو شاباشی دی کہ ”الحمد للّٰہ الذی وفق رسول رسول اللّٰہ بما رضی لہ رسول اللّٰہ (ابوداؤد ۲/۵۰۵) اگر آپ صلى الله عليه وسلم کے رہتے ہوئے حضرات صحابہ کا اجتہاد از رائے شرع ناجائز ہوتا تو آپ صلى الله عليه وسلم حضرت معاذ بن جبل رضی اللہ عنہ کے اس جملہ کی فوراً تردید فرماتے؛ لیکن آپ صلى الله عليه وسلم نے مذکورہ تمام واقعات میں حضرات صحابہ رضی اللہ عنہم کے اجتہادات کو معتبر مانا۔



یہ چند واقعات ہیں، جن کے مطالعہ سے معلوم ہوتا ہے کہ اسلامی قانون وشریعت جامد ومعطل نہیں ہے؛ بلکہ اس میں ایسی لچک موجود ہے کہ نوپیش آمدہ مسائل کو کتاب وسنت کے حدود میں رہتے ہوئے کتاب وسنت کے اصولی ہدایات پر منطبق کیا جاسکے۔ یعنی سیرت نبوی کا اجتہادی پہلو قیامت تک کیلئے یہ دروازہ کھلا رکھتا ہے کہ ہر زمانہ میں پیدا ہونے والے جدید مسائل پر اسلامی قوانین واصول کو چسپاں کیا جائے اور لوگوں کے مصالح اور ضروریات کو سامنے رکھتے ہوئے ان مسائل کا ایسا حل تلاش کیا جائے جو شریعت کے مزاج اور زمانہ کے تقاضوں سے ہم آہنگ ہو۔



اخذ واستنباط کی یہ کوشش ممنوع نہیں بلکہ مطلوب ہے اور دراصل یہ ہے کہ اجتہاد نہیں بلکہ بدلتے ہوئے حالات میں ائمہ مجتہدین کے آراء کی تطبیق ہے جسے فقہ کی زبان میں ”تحقیق مناط“ کہا جاتا ہے۔ امام ابواسحاق شاطبی نے لکھا ہے کہ اجتہاد کی یہ وہ قسم ہے جو قیامت تک باقی رہے گی۔(الموافقات ۳/۹۷)



خلاصہ یہ ہے کہ دنیا کے بدلتے ہوئے نظام پراسلامی قانون کا انطباق ان مسائل ہی میں سے ہے جس کی ضرورت واہمیت سیرت نبوی صلى الله عليه وسلم سے ثابت ہوتی ہے؛ بلکہ یہ کہنا زیادہ بہتر ہوگا کہ شریعت اسلامی کو زندہ و حاضر اور عصری ثابت کرنے کی سب سے بہتر اور واحد صورت یہی ہے کہ ہم اسلامی قانون کو دنیا کے سامنے اس طرح پیش کریں کہ وہ جدید مسائل وواقعات کا توازن اورمناسب حل پیش کرتا ہو۔

No comments:

Post a Comment