Monday, 5 September 2016

خاتم الانبیاء ﷺ کا طریقہ نماز

خاتم الانبیاءﷺکا طریقہ نماز
اس کتاب میں صحیح احادیث کی روشنی میں ىہ بات ثابت کی گئی ہے کہ
اہل سنت والجماعت احناف کا طریقہ نماز خاتم الانبیاءﷺ والا ہے
وضو کی فضیلت
حدیث: عَنْ عُثْمَانَ بْنِ عَفَّانَ، قَالَ: قَالَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ: «مَنْ تَوَضَّأَ فَأَحْسَنَ الْوُضُوءَ خَرَجَتْ خَطَايَاهُ مِنْ جَسَدِهِ، حَتَّى تَخْرُجَ مِنْ تَحْتِ أَظْفَارِهِ»
[صحيح مسلم - كِتَابِ الطَّهَارَةِ - بَابُ خُرُوجِ الْخَطَايَا مَعَ مَاءِ الْوُضُوءِ - رقم الحديث:245]
ترجمہ :حضرت عثمانؓ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا کہ جس نے اچھی طرح وضوءکیا (سنن و آداب کا خوب خیال رکھا) تو گناہ اس کے جسم سے نکل جاتے ہیں یہاں تک کہ اس کے ناخنوں کے نیچے سے بھی نکل جاتے ہیں ۔

وضو سے پہلے کی دعا
حدیث: عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ قَالَ: قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ: " يَا أَبَا هُرَيْرَةَ , إِذَا تَوَضَّأْتَ فَقُلْ: بِسْمِ اللَّهِ , وَالْحَمْدُ لِلَّهِ؛ فَإِنَّ حَفَظَتَكَ لَا تَسْتَرِيحُ تَكْتُبُ لَكَ الْحَسَنَاتِ حَتَّى تُحْدِثَ مِنْ ذَلِكَ الْوُضُوءِ "
[المعجم الصغير للطبراني: (196) جلد 1، ص 73، مکتبہ دارا الکتب العلمیہ  ، قال الهيثمى (1/220) : إسناده حسن.]
ترجمہ :حضرت ابو ہریرہؓ فرماتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا اے ابو ہریرہ جب تو وضو کرنے لگے تو کہہ بسم اللہ والحمدللہ بلا شبہ تیرے محافظ فرشتے تیرے لئے مسلسل نیکیاں لکھتے رہیں گے حتی کہ تو اس وضو ءسے بے وضوءہو جائے۔

وضو کا سنت طریقہ
حدیث: عن حُمْرَانَ مَوْلَى عُثْمَانَ أَخْبَرَهُ أَنَّهُ، رَأَى عُثْمَانَ بْنَ عَفَّانَ دَعَا بِإِنَاءٍ، فَأَفْرَغَ عَلَى كَفَّيْهِ ثَلاَثَ مِرَارٍ، فَغَسَلَهُمَا، ثُمَّ أَدْخَلَ يَمِينَهُ فِي الإِنَاءِ، فَمَضْمَضَ، وَاسْتَنْشَقَ، ثُمَّ غَسَلَ وَجْهَهُ ثَلاَثًا، وَيَدَيْهِ إِلَى المِرْفَقَيْنِ ثَلاَثَ مِرَارٍ، ثُمَّ مَسَحَ بِرَأْسِهِ، ثُمَّ غَسَلَ رِجْلَيْهِ ثَلاَثَ مِرَارٍ إِلَى الكَعْبَيْنِ، ثُمَّ قَالَ: قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ «مَنْ تَوَضَّأَ نَحْوَ وُضُوئِي هَذَا الخ۔ 
[صحيح البخاري - كِتَابُ الوُضُوءِ - بَابُ: الوُضُوءُ ثَلاَثًا ثَلاَثًا - رقم الحدیث:159]
ترجمہ: حضرت حمران ؓ (سیدنا عثمان ؓ کے غلام) فرماتے ہیں کہ میں نے حضرت عثمانؓ کو دیکھا انہوں نے وضو کے لئے پانی منگوایاپھر اپنے ہاتھوں پر پانی ڈالا اس کو تین مرتبہ دھویا پھر کلی کی اور ناک میں پانی ڈالا تین مرتبہ پھر تین مرتبہ چہرہ دھویا پھر اپنے ہاتھوں کو کہنیوں تک تین مرتبہ دھویا پھر سر کا مسح کیا پھر دونوں پاؤں کو تین تین مرتبہ دھویا پھر حضرت عثمانؓ نے فرمایا ! میں نے نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو دیکھا کہ آپ علیہ السلام نے اسی طرح وضو کیا۔


انگلیوں کا خلال کرنا
حدیث: عَنْ عَاصِمِ بْنِ لَقِيطِ بْنِ صَبِرَةَ، عَنْ أَبِيهِ، قَالَ: قَالَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ: «إِذَا تَوَضَّأْتَ فَخَلِّلِ الْأَصَابِعَ»
[سنن الترمذي - أَبْوَابُ الطَّهَارَةِ - بَابٌ فِي تَخْلِيلِ الْأَصَابِعِ -  رقم الحدیث:38، حسن صحیح (ج 1ص16، مکتبہ الحسن) مستدرک حاکم ج1 ص 253مکتبہ دارالفکر حدیث صحیح نمبر 534 واللفظ للترمذی۔]
ترجمہ :حضرت لقیط بن صبرہ ؓ اپنے والد سے روایت کرتے ہیں کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا جب تم وضو کرو تو اپنی انگلیوں کا خلال کرو۔
[أخرجه الترمذى (1/56، رقم 38) وقال: حسن صحيح. والحاكم (1/291، رقم 647) . وأخرجه أيضًا: أحمد
(رقم 16381) .]




پورے سر کا مسح کرنا
حدیث : عبد اللہ بن زید ؓ فرماتے ہیں فَمَسَحَ بِرَأْسِهِ، فَأَقْبَلَ بِيَدَيْهِ وَأَدْبَرَ بِهِمَا ۔
[صحيح البخاري  - كِتَابُ الوُضُوءِ - بَابُ مَسْحِ الرَّأْسِ مَرَّةً -  رقم الحدیث:192] ۔
ترجمہ : نبی علیہ السلام نے اپنے سر کا مسح کیا آگے سے بھی اور پیچھے سے بھی ۔



کانوں کا مسح کرنا
حدیث: عن ابن عباس ؓ قال تَوَضَّأَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ۔۔۔ ثُمَّ مَسَحَ بِرَأْسِهِ وَأُذُنَيْهِ بَاطِنِهِمَا بِالسَّبَّاحَتَيْنِ وَظَاهِرِهِمَا بَإِبْهَامَيْهِ ۔ 
[سنن نسائی - كِتَابُ الطَّهَارَةِ - بَابُ مَسْحِ الْأُذُنَيْنِ مَعَ الرَّأْسِ ۔۔۔ رقم الحدیث:102]
ترجمہ : حضرت ابن عباس ؓ سے روایت ہے کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے سر کا مسح کیا اور دونوں کانوں کا مسح کیا اندرونی حصہ کا مسح شہادت کی انگلی سے اور ظاہری حصہ کا دونوں انگوٹھوں سے ۔

گردن کا مسح کرنا
حدیث : عَنْ ابْنِ عُمَرَ أَنَّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ: "مَنْ تَوَضَّأَ وَمَسَحَ بِيَدَيْهِ عَلَى عُنُقِهِ وُقِيَ الْغُلَّ يَوْمَ الْقِيَامَةِ"۔ [تلخیص الحبیر: ج1 ص 288، دار الكتب العلمية]
ترجمہ : حضرت ابن عمرؓ سے مروی ہے کہ رسول اللہ نے فرمایا جس شخص نے وضوءکیا اور ہاتھوں کے ساتھ گردن کا مسح کیا تو قیامت کے دن گردن میں طوق کے پہنائے جانے سے اس کی حفاظت کی جائے گی ۔
نوٹ : علامہ ابن حجر ؒ فرماتے ہیں کہ یہ حدیث صحیح ہے تلخیص الحبیر ج1 ص 288 ۔ علامہ شوقانی نے بھی اس کی تصحیح کی ہے ۔ نیل الاوطار ج1 ص 123 مکتبہ دارالمعرفہ لبنان۔


حدیث: عَنْ طَلْحَةَ، عَنْ أَبِيهِ، عَنْ جَدِّهِ، أَنَّهُ " رَأَى رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يَمْسَحُ رَأْسَهُ حَتَّى بَلَغَ الْقَذَالَ، وَمَا يَلِيهِ مِنْ مُقَدَّمِ الْعُنُقِ بِمَرَّةً " قَالَ الْقَذَالُ: السَّالِفَةُ الْعُنقُ۔ [مسند احمد:15951، شرح معاني الآثار:129، المعجم الكبير للطبراني:407، السنن الكبرى للبيهقي:278، سنن أبي داود:132]
ترجمہ : حضرت طلحہ بروایت اپنے والد ، اپنے دادا سے روایت کرتے ہیں کہ انہوں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو دیکھا کہ اپنے سر پر مسح کر رہے ہیں یہاں تک کہ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم (اپنے ہاتھ) سر کے آخری حصے اور اس سے متصل گردن کے اوپر کے حصے تک ایک بار لے گئے ۔ اس کے ہم معنی روایت السنن الکبری للبیھقی ج 1 صفحہ 60 مکتبہ ادارہ تالیفات اشرفیہ میں بھی موجود ہے ۔



حدیث : عن وائل بن حجرؓ (فی حدیث طویل) ثم مسح رقبتہ ، الخ۔ [المعجم الكبير للطبراني:118]
ترجمہ : حضرت وائل بن حجرؓ سے روایت ہے کہ ۔۔۔۔۔۔پھر نبی علیہ السلام نے گردن کا مسح کیا۔

حدیث : عَنْ مُجَاهِدٍ، عَنِ ابْنِ عُمَرَ " أَنَّهُ كَانَ إِذَا مَسَحَ رَأْسَهُ مَسَحَ قَفَاهُ مَعَ رَأْسِهِ ".[السنن الكبرى للبيهقي:279]
ترجمہ : مجاہد ؒ فرماتے ہیں کہ حضرت ابن عمر ؓ جب سر کا مسح کرتے تو گردن کا مسح بھی کرتے۔
فائدہمذکورہ بالا احاد یث سے یہ بات روز روشن کی طرح واضح ہے کہ گردن پر مسح کرنا نبی علیہ السلام کی سنت ہے مگر ان احادیث کے باوجود غیر مقلدین نام نہاد اہل حدیث حضرات کا موقف یہ ہے کہ گردن پر مسح کر نا بدعت ہے چنانچہ غیر مقلدین کے مشہور و معروف عالم خالد حسین گرجاکھی لکھتے ہیں۔وضو میں گردن کا مسح کرنا ثابت نہیں بلکہ بدعت ہے ۔(صلاة النبی ص70)
نیز غیر مقلدین کے مایہ ناز مفتی عبد الستار صاحب لکھتے ہیں گردن کا مروجہ مسح کسی حدیث میں نہیں بلکہ احداث فی الدین (بدعت) ہے ۔ فتاویٰ ستاریہ ج3ص 53
اور مبشر ربانی لکھتے ہیں : گردن کے مسح کے بارے میں کوئی حدیث ثابت نہیں۔ (صلوة المسلم ص 14)
جرابوں پر مسح کرنا
وضو میں موزوں پر مسح کرنا احادیث متواترہ سے ثابت ہے وضو کے دوران جرابوں پر مسح کرنا جائز نہیں کیونکہ ایسا کرنا کسی صحیح حدیث سے ثابت نہیں اور غیر مقلدین علماءنے اس حقیقت کا اعتراف کیا ہے چنانچہ غیر مقلدین کی ریڑھ کی ہڈی مولانا نذیر حسین دہلوی لکھتے ہیں کہ ،مذکورہ (اونی، سوتی) جرابوں پر مسح جائز نہیں ہے کیونکہ اس کی کوئی صحیح دلیل نہیں ہے ۔ فتاویٰ نذیریہ ج1 ص 327
غیر مقلدین کے مشہور و معروف عالم مولانا ابو سعید شرف الدین فرماتے ہیں ”یہ مسئلہ (جرابوں پر مسح کرنا) نہ قرآن سے ثابت ہے نہ مرفوع صحیح حدیث سے نہ اجماع سے نہ قیاس صحیح سے ۔۔۔۔۔ لہذا خف چرمی (موزوں) کے سوا جرابوں پر مسح ثابت نہیں ہوا۔ “فتاویٰ ثنائیہ ج1ص 442نیز اہل حدیث کے محقق عالم علامہ عبد الرحمن مبارکپوری تحفہ الاحواذی ج1 ص 120 میں اور مولانا عبد اللہ روپڑی صاحب نے فتاوی اہل حدیث ج 1 ص 351 میں اور مولانا یونس دہلوی صاحب نے دستور المتقی ص78میں اس بات کو تسلیم کیا ہے کہ جرابوں پر مسح کرنے کی احادیث ضعیف ہیں۔



اذان کے مسنون کلمات
اللہ اکبر اللہ اکبر
اللہ اکبر اللہ اکبر
اشھد ان لا الہ الا اللہ اشھد ان لا الہ الا اللہ
اشھد ان محمدا رسول اللہ اشھد ان محمدا رسول اللہ
حی علی الصلوہ حی علی الصلوہ
حی علی الفلاح حی علی الفلاح
اللہ اکبر اللہ اکبر
لا الہ الا اللہ
[سنن أبي داود:499، سنن ابن ماجه:706، مصنف ابن ابي شيبة:2119، مسند أحمد:16478، سنن الدارمي:1224، خلق أفعال العباد للبخاري:ص54، صحيح ابن خزيمة:370، صحيح ابن حبان:1679+1681، المعجم الأوسط للطبراني:1106، السنن الكبرى للبيهقي:1835+1965]
نوٹ: فجر کی اذان میں ” الصلوة خیر من النوم“ بھی کہے ۔[ابو داؤد:501، مصنف عبد الرزاق ج1 ص 186حدیث نمبر 1889مکتبہ دارہ الاحیاءالتراث

(1) حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّحْمَنِ، حَدَّثَنَا سُفْيَانُ، عَنْ أَبِي جَعْفَرٍ - قَالَ عَبْدُ الرَّحْمَنِ: لَيْسَ هُوَ الْفَرَّاءَ - عَنْ أَبِي سَلْمَانَ ، عَنْ أَبِي مَحْذُورَةَ، قَالَ: " كُنْتُ أُؤَذِّنُ فِي زَمَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فِي صَلَاةِ الصُّبْحِ، فَإِذَا قُلْتُ: حَيَّ عَلَى الْفَلَاحِ، قُلْتُ: الصَّلَاةُ خَيْرٌ مِنَ النَّوْمِ، الصَّلَاةُ خَيْرٌ مِنَ النَّوْمِ الْأَذَانُ الْأَوَّلُ۔
حضرت ابومحذورہؓ سے مروی ہے کہ نبی ﷺ کے زمانہ میں فجر کی اذان دیا کرتا تھا جب حی الفلاح کہہ چکتا تو دو مرتبہ اذان میں الصلوۃ خیرمن النوم کہتا تھا۔ 
[مسند احمد:15378، حديث صحيح بطرقه، وهذا إسناد ضعيف. أبو سَلْمان: هو المؤذن، قيل: اسمه همام، لم يذكروا في الرواة عنه غير العلاء بن صالح الكوفي، وأبو جعفر الفراء، وبقية رجاله ثقات. أبو جعفر: هو الفراء خلافاً لما قال عبد الرحمن، فقد تعقبه المزي بقوله: "الصحيح أنه الفراء، نسبه إسماعيل بن عمرو البجلي، عن سفيان في هذا الحديث، وذكر مسلم وغير واحد أن أبا جعفر الذي يروي عن أبي سلمان، ويروي عنه سفيان هو الفراء". عبد الرحمن: هو ابن مهدي. وسفيان: هو الثوري.
وأخرجه النسائي في "المجتبى" 2/14، وفي "الكبرى" (1612) من طريق عبد الرحمن بن مهدي، بهذا الإسناد.
وأخرجه عبد الرزاق في "المصنف" (1821) ، والنسائي في "المجتبى" 2/13، 14، وفي "الكبرى" (1611) و (1612) , والطبراني في "الكبير" (6738) ، والبيهقي في "السنن" 1/422 من طرق عن سفيان الثوري، به.
وأخرجه الطحاوي في "شرح معاني الآثار" 1/137 عن الهيثم بن خالد بن يزيد- وهو ورّاق أبي نعيم-، والطبراني في "الكبير" (6739) من طريق يحيى الحماني، كلاهما عن أبي بكر بن عياش، عن عبد العزيز بن رُفَيعْ- وهو الأَسدي- عن أبي محذورة، به. وهذا حديث صحيح، يحيى الحماني وإن كان ضعيفاً قد توبع.
وأخرجه الدارقطني في "السنن" 1/238 من طريق الحارث بن منصور، عن عمر بن قيس المكي، عن عبد الملك بن أبي محذورة، عن أبيه، عن النبي صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قال: يا أبا محذورة، ثَنِّ الأولى من الأذان من كل صلاة، وقل في الأولى من صلاة الغداة: "الصلاة خير من النوم ". وعمر بن قيس متروك.
وانظر ما سلف برقم (15376) .
قال السندي: قوله: الصلاة خير من النوم، إلى قوله: الأذان الأول: الظاهر أنه بالرفع، أي: هكذا الأذان الأول من الفجر.]
http://raahedaleel.blogspot.com/2016/09/blog-post_72.html

(2) حَدَّثَنَا مُسَدَّدٌ حَدَّثَنَا الْحَارِثُ بْنُ عُبَيْدٍ عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ عَبْدِ الْمَلِکِ بْنِ أَبِي مَحْذُورَةَ عَنْ أَبِيهِ عَنْ جَدِّهِ قَالَ قُلْتُ يَا رَسُولَ اللَّهِ عَلِّمْنِي سُنَّةَ الْأَذَانِ قَالَ فَمَسَحَ مُقَدَّمَ رَأْسِي وَقَالَ تَقُولُ اللَّهُ أَکْبَرُ اللَّهُ أَکْبَرُ اللَّهُ أَکْبَرُ اللَّهُ أَکْبَرُ تَرْفَعُ بِهَا صَوْتَکَ ثُمَّ تَقُولُ أَشْهَدُ أَنْ لَا إِلَهَ إِلَّا اللَّهُ أَشْهَدُ أَنْ لَا إِلَهَ إِلَّا اللَّهُ أَشْهَدُ أَنَّ مُحَمَّدًا رَسُولُ اللَّهِ أَشْهَدُ أَنَّ مُحَمَّدًا رَسُولُ اللَّهِ تَخْفِضُ بِهَا صَوْتَکَ ثُمَّ تَرْفَعُ صَوْتَکَ بِالشَّهَادَةِ أَشْهَدُ أَنْ لَا إِلَهَ إِلَّا اللَّهُ أَشْهَدُ أَنْ لَا إِلَهَ إِلَّا اللَّهُ أَشْهَدُ أَنَّ مُحَمَّدًا رَسُولُ اللَّهِ أَشْهَدُ أَنَّ مُحَمَّدًا رَسُولُ اللَّهِ حَيَّ عَلَی الصَّلَاةِ حَيَّ عَلَی الصَّلَاةِ حَيَّ عَلَی الْفَلَاحِ حَيَّ عَلَی الْفَلَاحِ فَإِنْ کَانَ صَلَاةُ الصُّبْحِ قُلْتَ الصَّلَاةُ خَيْرٌ مِنْ النَّوْمِ الصَّلَاةُ خَيْرٌ مِنْ النَّوْمِ اللَّهُ أَکْبَرُ اللَّهُ أَکْبَرُ لَا إِلَهَ إِلَّا اللَّهُ
[سنن أبي داود » كِتَاب الصَّلَاةِ » بَاب كَيْفَ الْأَذَانُ ۔۔۔ رقم الحديث: 500]
حضرت ابومحذورہؓ سے روایت ہے کہ میں نے رسول اللہ ﷺ سے عرض کیا کہ مجھے اذان کا طریقہ سکھا دیجئے آپ ﷺ نے میرے سر پر آگے کی جانب ہاتھ پھیرا اور فرمایا پہلے بآواز بلند اَللہ اَکبَر اَللہ اَکبَر اَللہ اَکبَر اَللہ اَکبَر پھر آہستہ سے دو مرتبہ اَشھَدُ اَن لَا اِلٰہَ اِلَّا اللہ اور دو مرتبہ اَشھَدُ اَنَّ مُحَمَّدًا رَسُولُ اللہ اور پھر بلند آواز سے دونوں کلمے دہراؤ اور حَیَّ عَلَی الصَلوٰہ دو مرتبہ حَیَّ عَلَی الفَلَاحِ دو مرتبہ کہو اور اگر صبح کی اذان ہو تو دو مرتبہ الصَّلوٰةُ خَیرُ مِّنَ النَّوم کہو پھر اَللہ اَکبَر اَللہ اَکبَر لَا اِلٰہَ اِلَّا اللہ۔ 
[أخرجه ابن حبان (4/578، رقم 1682) . وأخرجه أيضًا: أحمد (3/408، رقم 15416) ، وأبو داود (1/136، رقم 00 5) ، والبيهقى (1/421، رقم 1831) .]

(3) حَدَّثَنَا عَمْرُو بْنُ رَافِعٍ حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ الْمُبَارَکِ عَنْ مَعْمَرٍ عَنْ الزُّهْرِيِّ عَنْ سَعِيدِ بْنِ الْمُسَيَّبِ عَنْ بِلَالٍ أَنَّهُ أَتَی النَّبِيَّ صَلَّی اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يُؤْذِنُهُ بِصَلَاةِ الْفَجْرِ فَقِيلَ هُوَ نَائِمٌ فَقَالَ الصَّلَاةُ خَيْرٌ مِنْ النَّوْمِ الصَّلَاةُ خَيْرٌ مِنْ النَّوْمِ فَأُقِرَّتْ فِي تَأْذِينِ الْفَجْرِ فَثَبَتَ الْأَمْرُ عَلَی ذَلِکَ
حضرت بلال سے روایت ہے کہ وہ نبی (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کے پاس نماز فجر کی اطلاع دینے کے لئے آئے (کہ جماعت تیار ہے) گھر والوں نے کہا آپ سو رہے ہیں، بلال نے کہا (نماز نیند سے بہتر ہے) پھر فجر کی اذان میں یہ کلمہ مقرر ہوا اور یہی حکم جاری رہا۔ 
[المحدث : الألباني | المصدر : صحيح ابن ماجه: 592]


(4) حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ خَالِدِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ الْوَاسِطِيُّ حَدَّثَنَا أَبِي عَنْ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ إِسْحَقَ عَنْ الزُّهْرِيِّ عَنْ سَالِمٍ عَنْ أَبِيهِ أَنَّ النَّبِيَّ صَلَّی اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ اسْتَشَارَ النَّاسَ لِمَا يُهِمُّهُمْ إِلَی الصَّلَاةِ فَذَکَرُوا الْبُوقَ فَکَرِهَهُ مِنْ أَجْلِ الْيَهُودِ ثُمَّ ذَکَرُوا النَّاقُوسَ فَکَرِهَهُ مِنْ أَجْلِ النَّصَارَی فَأُرِيَ النِّدَائَ تِلْکَ اللَّيْلَةَ رَجُلٌ مِنْ الْأَنْصَارِ يُقَالُ لَهُ عَبْدُ اللَّهِ بْنُ زَيْدٍ وَعُمَرُ بْنُ الْخَطَّابِ فَطَرَقَ الْأَنْصَارِيُّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّی اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ لَيْلًا فَأَمَرَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّی اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بِلَالًا بِهِ فَأَذَّنَ قَالَ الزُّهْرِيُّ وَزَادَ بِلَالٌ فِي نِدَائِ صَلَاةِ الْغَدَاةِ الصَّلَاةُ خَيْرٌ مِنْ النَّوْمِ فَأَقَرَّهَا رَسُولُ اللَّهِ صَلَّی اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ عُمَرُ يَا رَسُولَ اللَّهِ قَدْ رَأَيْتُ مِثْلَ الَّذِي رَأَی وَلَکِنَّهُ سَبَقَنِي
حضرت عبداللہ بن عمر (رض) سے روایت ہے کہ نبی (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے لوگوں سے مشورہ طلب کیا اس چیز کے متعلق جو لوگوں کو نماز کی طرف متوجہ کرے لوگوں نے بوق (نرسنگا) کا تذکرہ کیا آپ نے یہود کی (مشابہت کی) وجہ سے اسے ناپسند کیا، پھر ناقوس کا ذکر کیا آپ نے انصاری (کی مشابہت) کی وجہ سے اسے ناپسند کیا، پھر اسی رات ایک انصاری مرد جن کا نام عبداللہ بن زید ہے اور حضرت عمر کو اذان دکھائی گئی تو انصاری رات ہی میں رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کی خدمت میں حاضر ہوئے، رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے بلال کو اذان دینے کا حکم دیا، انہوں نے اذان دی۔ زہری فرماتے ہیں بلال نے اذان فجر میں (الصَّلَاةُ خَيْرٌ مِنْ النَّوْمِ) کا اضافہ فرمایا تو نبی (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے اس اضافے کو برقرار رکھا، عمر نے عرض کیا اے اللہ کے رسول (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) ! میں نے ایسا ہی خواب دیکھا جیسا اس نے دیکھا لیکن یہ مجھ سے سبقت لے گیا۔ 
[سنن ابن ماجه » كِتَاب الْأَذَانِ وَالسُّنَّةِ فِيهِ » بَاب بَدْءِ الْأَذَانِ ۔۔۔ رقم الحديث: 707
http://library.islamweb.net/hadith/display_hbook.php?bk_no=173&pid=109415&hid=699
مسند أبي يعلى الموصلي » مُسْنَدُ عَبْدِ اللهِ بْنِ عُمَرَ ۔۔۔ رقم الحديث: 5504
http://library.islamweb.net/hadith/display_hbook.php?bk_no=327&hid=5448&pid=155513
ناسخ الحديث ومنسوخه لابن شاهين » كِتَابُ الصَّلاةِ » بَابُ بَدْءِ الأَذَانِ ۔۔۔ رقم الحديث: 174
http://library.islamweb.net/hadith/display_hbook.php?bk_no=557&hid=177&pid=306963
الطبقات الكبرى لابن سعد » ذِكْرُ الأَذَانِ ۔۔۔ رقم الحديث: 575(1 : 120)
http://library.islamweb.net/hadith/display_hbook.php?bk_no=82&hid=575&pid=35137



(5) قَالَ حَدَّثَنَا يَعْقُوبُ قَالَ أَخْبَرَنَا أَبِي عَنِ ابْنِ إِسْحَاقَ قَالَ وَذَكَرَ مُحَمَّدُ بْنُ مُسْلِمٍ الزُّهْرِيُّ عَنْ سَعِيدِ بْنِ الْمُسَيَّبِ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ زَيْدِ بْنِ عَبْدِ رَبِّهِ قَالَ لَمَّا أَجْمَعَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَنْ يَضْرِبَ بِالنَّاقُوسِ يَجْمَعُ لِلصَّلَاةِ النَّاسَ وَهُوَ لَهُ كَارِهٌ لِمُوَافَقَتِهِ النَّصَارَى طَافَ بِي مِنْ اللَّيْلِ طَائِفٌ وَأَنَا نَائِمٌ رَجُلٌ عَلَيْهِ ثَوْبَانِ أَخْضَرَانِ وَفِي يَدِهِ نَاقُوسٌ يَحْمِلُهُ قَالَ فَقُلْتُ لَهُ يَا عَبْدَ اللَّهِ أَتَبِيعُ النَّاقُوسَ قَالَ وَمَا تَصْنَعُ بِهِ قُلْتُ نَدْعُو بِهِ إِلَى الصَّلَاةِ قَالَ أَفَلَا أَدُلُّكَ عَلَى خَيْرٍ مِنْ ذَلِكَ قَالَ فَقُلْتُ بَلَى قَالَ تَقُولُ اللَّهُ أَكْبَرُ اللَّهُ أَكْبَرُ اللَّهُ أَكْبَرُ اللَّهُ أَكْبَرُ أَشْهَدُ أَنْ لَا إِلَهَ إِلَّا اللَّهُ أَشْهَدُ أَنْ لَا إِلَهَ إِلَّا اللَّهُ أَشْهَدُ أَنَّ مُحَمَّدًا رَسُولُ اللَّهِ أَشْهَدُ أَنَّ مُحَمَّدًا رَسُولُ اللَّهِ حَيَّ عَلَى الصَّلَاةِ حَيَّ عَلَى الصَّلَاةِ حَيَّ عَلَى الْفَلَاحِ حَيَّ عَلَى الْفَلَاحِ اللَّهُ أَكْبَرُ اللَّهُ أَكْبَرُ لَا إِلَهَ إِلَّا اللَّهُ قَالَ ثُمَّ اسْتَأْخَرْتُ غَيْرَ بَعِيدٍ قَالَ ثُمَّ تَقُولُ إِذَا أَقَمْتَ الصَّلَاةَ اللَّهُ أَكْبَرُ اللَّهُ أَكْبَرُ أَشْهَدُ أَنْ لَا إِلَهَ إِلَّا اللَّهُ أَشْهَدُ أَنَّ مُحَمَّدًا رَسُولُ اللَّهِ حَيَّ عَلَى الصَّلَاةِ حَيَّ عَلَى الْفَلَاحِ قَدْ قَامَتْ الصَّلَاةُ قَدْ قَامَتْ الصَّلَاةُ اللَّهُ أَكْبَرُ اللَّهُ أَكْبَرُ لَا إِلَهَ إِلَّا اللَّهُ قَالَ فَلَمَّا أَصْبَحْتُ أَتَيْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَأَخْبَرْتُهُ بِمَا رَأَيْتُ قَالَ فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ إِنَّ هَذِهِ لَرُؤْيَا حَقٌّ إِنْ شَاءَ اللَّهُ ثُمَّ أَمَرَ بِالتَّأْذِينِ فَكَانَ بِلَالٌ مَوْلَى أَبِي بَكْرٍ يُؤَذِّنُ بِذَلِكَ وَيَدْعُو رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ إِلَى الصَّلَاةِ قَالَ فَجَاءَهُ فَدَعَاهُ ذَاتَ غَدَاةٍ إِلَى الْفَجْرِ فَقِيلَ لَهُ إِنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ نَائِمٌ قَالَ فَصَرَخَ بِلَالٌ بِأَعْلَى صَوْتِهِ الصَّلَاةُ خَيْرٌ مِنْ النَّوْمِ قَالَ سَعِيدُ بْنُ الْمُسَيَّبِ فَأُدْخِلَتْ هَذِهِ الْكَلِمَةُ فِي التَّأْذِينِ إِلَى صَلَاةِ الْفَجْرِ
حضرت عبداللہ بن زید بن عبدربہ (رض) سے مروی ہے کہ جب نبی (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے لوگوں کو نماز کے لئے جمع کرنے کے طریقہ کار میں ناقوس بجانے پر اتفاق رائے کر لیاگو کہ نصاری کے ساتھ مشابہت کی وجہ سے نبی (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کی اس سے کراہت بھی ظاہر تھی تو رات کو خواب میں میرے پاس ایک آدمی آیا اس نے دو سبز کپڑے پہن رکھے تھے اور اس کے ہاتھ میں ایک ناقوس تھا جو اس نے اٹھا رکھا تھا، میں نے اس سے کہا اے بندہ خدا! یہ ناقوس بیچوگے؟ اس نے پوچھا کہ تم اس کا کیا کرو گے؟ میں نے کہ ہم اسے بجا کر لوگوں کو نماز کی دعوت دیا کریں گے، اس نے کہا کہ کیا میں تمہیں اس سے بہتر طریقہ نہ بتادوں ؟ میں نے کہا کیوں نہیں۔ اس نے کہا تم یوں کہا کرو۔ اللہ اکبر اللہ اکبر، اللہ اکبر اللہ اکبر، اشہد ان لا الہ الا اللہ، اشہد ان لا الہ الا اللہ، اشہد ان محمد الرسول اللہ، اشہد ان محمد الرسول اللہ، حی علی الصلاۃ حی علی الصلاۃ، حی علی الفلاح حی علی الفلاح، اللہ اکبر اللہ اکبر، لا الہ الا اللہ۔ پھر کچھ ہی دیر بعد اس نے کہا کہ جب نماز کھڑی ہونے لگے تو تم یوں کہا کرو اور آگے وہی کلمات ایک ایک مرتبہ بتائے اور حی علی الفلاح کے بعد دو مرتبہ قد قامت الصلاۃ کا اضافہ کردیا، جب صبح ہوئی تو میں نبی (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کی خدمت میں حاضر ہوا اور اپنا خواب بیان کیا، نبی (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے فرمایا انشاء اللہ یہ خواب سچا ہوگا، پھر نبی (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے اذان کا حکم دیا تو حضرت ابوبکر صدیق کے آزاد کردہ غلام حضرت بلال اذان دینے لگے اور نماز کی طرف بلانے لگے، ایک دن وہ نبی (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کے پاس آئے اور فجر کے لئے اذان دی، کسی نے انہیں بتایا کہ نبی (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) سو رہے ہیں، تو انہوں نے بلند آواز سے پکار کر کہا الصلاۃ خیر من النوم، سعید بن مسیب کہتے ہیں کہ اس وقت سے فجر کی اذان میں یہ کلمہ بھی شامل کرلیا گیا۔ 
[مسند أحمد بن حنبل » مُسْنَدُ الْعَشَرَةِ الْمُبَشَّرِينَ بِالْجَنَّةِ ... » مُسْنَدِ الْمَدَنِيِّينَ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُمْ أَجْمَعِينَ ... » حَدِيثُ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ زَيْدِ بْنِ عَبْدِ رَبِّهِ ... رقم الحديث: 16041
http://library.islamweb.net/hadith/display_hbook.php?bk_no=121&hid=16133&pid=60869
التمهيد لابن عبد البر » باب الياء » أول مراسيل يَحْيَى عَنْ نفسه ... رقم الحديث: 4402(24 : 22)
http://library.islamweb.net/hadith/display_hbook.php?bk_no=692&hid=4402&pid=348683
التحقيق في مسائل الخلاف لابن الجوزي » كِتَابُ الصَّلَاةِ » مَسَائِلُ الْأَذَانِ ... رقم الحديث: 396
http://library.islamweb.net/hadith/display_hbook.php?bk_no=833&hid=372&pid=400593
المنتظم في تاريخ الأمم لابن الجوزي » أبواب ذكر المخلوقات » باب ذكر ما جرى في سني الهجرة ... رقم الحديث: 235
http://library.islamweb.net/hadith/display_hbook.php?bk_no=837&hid=235&pid=405723
تاريخ ابن أبي خيثمة » قدوم النَّبِيّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ الْمَدِينَة ... رقم الحديث: 1398

http://library.islamweb.net/hadith/display_hbook.php?bk_no=1083&hid=293&pid=536519




اقامت کے مسنون کلمات
اللہ اکبر (4مرتبہ )
اشھدان لا الہ اللہ (2مرتبہ)
اشھد ان محمدا رسول اللہ (2مرتبہ)
حی علی الصلوہ (2مرتبہ)
حی علی الفلاح (2مرتبہ)
قد قامت الصلوہ (2مرتبہ)
اللہ اکبر (2مرتبہ)
لا الہ الا اللہ ۔ (1مرتبہ)
نوٹ: مذکورہ بالا اذان و اقامت کو دوہری اذان و اقامت کہتے ہیں اس کے لئے کہ احادیث میں شفع اور مثنی کے الفاظ وارد ہوئے ہیں۔ چنانچہ روایت میں آتا ہے أَنَّ بِلَالًا كَانَ «يُثَنِّي الْأَذَانَ، وَيُثَنِّي الْإِقَامَةَ
[مصنف ابن ابي شيبة:2143 ، مصنف عبد الرزاق:1790، مسند أبي يعلى الموصلي:2804، شرح معاني الآثار:826، سنن الدارقطني:940، السنن الكبرى للبيهقي:1951+1972،  وصححه الألباني في الثمر المستطاب (ج 1 / ص 128)]

حضرت بلال ؓ اذان و اقامت دوہری دوہری کہتے تھے
حدیث :كَانَ عَبْدُ اللَّهِ بْنُ زَيْدٍ الْأَنْصَارِيُّ، مُؤَذِّنُ النَّبِيِّ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يَشْفَعُ الْأَذَانَ وَالْإِقَامَةَ ۔ 
[مصنف ابن ابي شيبة:2139، المسند للشاشي:3/33]
ترجمہ : حضرت عبد اللہ بن زید ؓ انصاری نبی ﷺ کے موذن اذان اور اقامت دوہری دوہری کہتے تھے ۔
فائدہ: یہی وہ اقامت ہے جو نبی علیہ السلام نے اپنے صحابی ابو محذورہ ؓ کو سکھلائی تھی (مصنف ابن ابی شیبہ ج1 ص 231 مکتبہ امدادیہ ملتان) اور یہی اقامت حضرات صحابہ کرام علیہم الرضوان اور تابعین و تبع تابعین سے ثابت ہے حوالہ جات کے لئے یہ کتب ملاحظہ فرمائیں ۔ (مصنف ابن ابی شیبہ ، مصنف عبد الرزاق، طحاوی ، نصب الرایہ اعلاءالسنن ، آثار السنن)
ان احادیث و آثار کے باوجود غیر مقلدین (نام نہاد اہل حدیث) کی مساجد میں کہری اقامت کہی جاتی ہے جو کہ ان احادیث و آثار کی مخالف ہے کیا اللہ کے نبی ﷺ نے فرمایا تھا کہ اتنی احادیث اور آثار کی مخالفت کرکے اپنے آپ کو اہل حدیث کہلانا اور جو ان احادیث پر عمل کرے اس کو بدعتی کہنا؟
نماز کا طریقہ
جب آدمی نبی ﷺ کے مسنون طریقہ سے وضو کرلے تو پھر مسنون طریقہ سے نماز ادا کر لے کیونکہ نبی ﷺ نے فرمایا ”صَلُّوا كما رَأَيْتُمُونِى أصلى“[بخاری:631] نماز اس طرح پڑھو جس طرح مجھ کو نماز پڑھتے دیکھتے ہو۔
حدیث : عَنْ أَنَسٍ، قَالَ: «رَأَيْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ كَبَّرَ فَحَاذَى بِإِبْهَامَيْهِ أُذُنَيْهِ الخ۔
[مستدرک حاکم: ج 1 ص 356 مکتبہ دارا لفکر حدیث نمبر 931(822) نیز اس حدیث کو امام حاکم اور علامہ ذہبیؒ نے صحیح کہا ہے، السنن الكبرى للبيهقي:2632]
ترجمہ : حضرت انس ؓ فرماتے ہیں میں نے رسول اللہ ﷺ کو دیکھا کہ آپ نے تکبر کہی تو اپنے دونوں انگوٹھے کانوں کے برابر لے گئے۔


حدیث : عن مالک بن حویرث ؓ أَنَّهُ رَأَى نَبِيَّ اللهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَقَالَ: حَتَّى يُحَاذِيَ بِهِمَا فُرُوعَ أُذُنَيْهِ
[مسلم:391، بيهقي:2306]
ترجمہ : حضرت مالک بن حویرثؓ نے نبی ﷺ کو نماز پڑھتے دیکھا کہ آپ ﷺ نے اپنے ہاتھوں کو کانوں کی لو تک اٹھایا۔

حدیث : عَنْ عَلْقَمَةَ بْنِ وَائِلِ بْنِ حُجْرٍ، عَنْ أَبِيهِ قَالَ: «رَأَيْتُ النَّبِيَّ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَضَعَ يَمِينَهُ عَلَى شِمَالِهِ فِي الصَّلَاةِ تَحْتَ السُّرَّةِ»۔ 
[مصنف ابن ابي شيبة - كِتَابُ الصَّلَوات - وَضْعُ الْيَمِينِ عَلَى الشِّمَالِ - رقم الحدیث:3959، بتحقیق الشیخ عوامہ، مکتبہ ادارة القرآن و العلوم الاسلامیہ]
ترجمہ: حضرت وائل بن حجر ؓ فرماتے ہیں کہ میں نے نبی ﷺ کو دیکھا کہ آپ نے نماز میں اپنا دایاں ہاتھ بائیں ہاتھ پر رکھ کر ناف کے نیچے رکھا۔


حدیث : عَنْ عَلِيٍّ قَالَ: «مِنْ سُنَّةِ الصَّلَاةِ وَضْعُ الْأَيْدِي عَلَى الْأَيْدِي تَحْتَ السُّرَرِ»۔
[مصنف ابن ابي شيبة - كِتَابُ الصَّلَوات - وَضْعُ الْيَمِينِ عَلَى الشِّمَالِ - رقم الحدیث:3945]
ترجمہ : حضرت علی ؓ فرماتے ہیں کہ نماز میں سنت طریقہ یہ ہے کہ دائیں ہاتھ کو بائیں ہاتھ پر رکھ کر ناف کے نیچے رکھا جائے ۔
فائدہ : نماز میں سینہ پر ہاتھ باندھنا نبی ﷺ تمام صحابہ کرامؓ و تابعین و تبع تابعینؒ میں سے کسی ایک سے بھی بسند صحیح ثابت نہیں۔
نوٹ: ائمہ اربعہ (امام ابو حنیفہؒ، امام مالکؒ، امام شافعیؒ اور امام احمد بن حنبلؒ) میں سے سینہ پر ہاتھ باندھنے کا کوئی بھی قائل نہیں، تفصیل کے لئے ملاحظہ ہو شرح مسلم للنووی ؒ مع مسلم ج1 ص 173 مکتبہ قدیمی کتب۔



حدیث عَنْ عَائِشَةَ، قَالَتْ: كَانَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ إِذَا اسْتَفْتَحَ الصَّلَاةَ، قَالَ: «سُبْحَانَكَ اللَّهُمَّ وَبِحَمْدِكَ، وَتَبَارَكَ اسْمُكَ وَتَعَالَى جَدُّكَ، وَلَا إِلَهَ غَيْرَكَ» ۔
[سنن أبي داود - كِتَاب الصَّلَاةِ - بَابُ مَنْ رَأَى الِاسْتِفْتَاحَ بِسُبْحَانَكَ اللَّهُمَّ وَبِحَمْدِكَ - بَابُ مَنْ رَأَى الِاسْتِفْتَاحَ بِسُبْحَانَكَ اللَّهُمَّ وَبِحَمْدِكَ - رقم الحدیث:776
سنن الترمذي - أَبْوَابُ الصَّلَاةِ - بَابُ مَا يَقُولُ عِنْدَ افْتِتَاحِ الصَّلَاةِ - رقم الحدیث:243]
ترجمہ :حضرت عائشہ ؓ فرماتی ہیں جب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نماز شروع فرماتے تو کہتے سُبْحَانَكَ اللَّهُمَّ وَبِحَمْدِكَ، وَتَبَارَكَ اسْمُكَ وَتَعَالَى جَدُّكَ، وَلَا إِلَهَ غَيْرَكَ“۔
امام حاکمؒ وعلامہ ذہبیؒ فرماتے ہیں یہ حدیث صحیح ہے ۔
[المستدرك على الصحيحين للحاكم - كِتَابُ الطَّهَارَةِ - أَمَّا حَدِيثُ أَنَسٍ - رقم الحدیث:859]
خلاصة حكم المحدث (ابن حجر العسقلاني) : حسن كما قال في المقدمة [تخريج مشكاة المصابيح: 1/377]




حدیث نمبر 2 : عَنِ الْأَسْوَدِ، عَنْ عُمَرَ، أَنَّهُ كَانَ إِذَا افْتَتَحَ الصَّلَاةَ، قَالَ: «سُبْحَانَكَ اللَّهُمَّ وَبِحَمْدِكَ، وَتَبَارَكَ اسْمُكَ، وَتَعَالَى جَدُّكَ، وَلَا إِلَهَ غَيْرُكَ» .۔ 
[المستدرك على الصحيحين للحاكم - كِتَابُ الطَّهَارَةِ - أَمَّا حَدِيثُ أَنَسٍ - رقم الحدیث:860]
ترجمہ :اسود ؒ فرماتے ہیں کہ حضرت عمرؓ جب نماز شروع کرتے تو سُبْحَانَكَ اللَّهُمَّ وَبِحَمْدِكَ، وَتَبَارَكَ اسْمُكَ، وَتَعَالَى جَدُّكَ، وَلَا إِلَهَ غَيْرُكَ پڑھتے ۔(امام حاکم ؒو علامہ ذہبی ؒ نے اس کو بھی صحیح کہا ہے۔)
[أخرجه أيضًا: ابن أبى شيبة (1/210، رقم 2404) ، والبيهقى (2/34، رقم 2180) . خلاصة حكم المحدث : موقوف وهو أصح ما روي فيه، سنن الدارقطني(1/628) خلاصة حكم المحدث : هذا صحيح عن عمر قوله، 
المحدث : ابن كثير، خلاصة حكم المحدث : إسناده صحيح (الأحكام الكبير(2/406مسند الفاروق(1/167)
الراوي : عائشة وأبوسعيد وعمر |خلاصة حكم المحدث (ابن باز) : ثابت [فتاوى نور على الدرب لابن باز: 8/187]




بسم اللہ آہستہ پڑھنا
حدیث نمبر 1 : عَنْ أَنَسٍ، قَالَ: " صَلَّيْتُ مَعَ رَسُولِ اللهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَأَبِي بَكْرٍ، وَعُمَرَ، وَعُثْمَانَ، فَلَمْ أَسْمَعْ أَحَدًا مِنْهُمْ يَقْرَأُ {بِسْمِ اللهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ}۔ 
[صحیح مسلم - كِتَابُ الصَّلَاةِ - بَابُ حُجَّةِ مَنْ قَالَ لَا يُجْهَرُ بِالْبَسْمَلَةِ - رقم الحدیث:399]
ترجمہ :حضرت انس ؓ فرماتے ہیں کہ میں نے نبی علیہ السلام کے ساتھ نماز پڑھی حضرت ابو بکر ؓ حضرت عمرؓ اور حضرت عثمان ؓ کے ساتھ نماز پڑھی لیکن ان میں سے کسی کو بھی بسم اللہ پڑھتے ہوئے نہیں سنا۔
[مسلم:399، ترمذی:244، شافعی:226، احمد:12810، وأبو يعلى:3005 ، وابن خزيمة:494]

حدیث نمبر 2 : عَنْ أَنَسٍ قَالَ: «صَلَّيْتُ خَلْفَ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَأَبِي بَكْرٍ وَعُمَرَ وَعُثْمَانَ رَضِيَ اللَّهِ عَنْهُمْ، فَلَمْ أَسْمَعْ أَحَدًا مِنْهُمْ يَجْهَرُ {بِبِسْمِ اللَّهُ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ}»۔ 
[السنن الصغرى للنسائي - كِتَابُ الِافْتِتَاحِ - تَرْكُ الْجَهْرِ بِبِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ - رقم الحدیث:907]
ترجمہ : حضرت انس ؓ فرماتے ہیں کہ میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے پیچھے نماز پڑھی حضرت ابو بکر و حضرت عمر و حضرت عثمان رضی اللہ عنھم کے پیچھے نماز پڑھی ان میں سے کسی کو بھی بسم اللہ الرحمن الرحیم اونچی آواز سے پڑھتے نہیں سنا۔
[سنن نسائی:907، مسند ابن الجعد:922، شرح معاني الآثار:1198،سنن الدارقطني:1199]


نماز میں قرات کا بیان
نمازی تین طرح کے ہوتے ہیں ۔
-1 منفرد (اکیلا نماز پڑھنے والا)
-2 امام
-3 مقتدی
منفرد اور امام کے لئے قرات کا حکم :
اکیلے نمازی اورامام کے لئے نماز میں سورة فاتحہ پڑھنا ضروری ہے حدیث پاک میں آتا ہے ۔
حدیث: عَنْ عُبَادَةَ بْنِ الصَّامِتِ: أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ: «لاَ صَلاَةَ لِمَنْ لَمْ يَقْرَأْ بِفَاتِحَةِ الكِتَابِ»۔ 
[صحيح البخاري - كِتَابُ الأَذَانِ - بَابُ وُجُوبِ القِرَاءَةِ ۔۔۔ رقم الحدیث:756]
ترجمہ : رسول اللہ ﷺ نے فرمایا نہیں نماز اس شخص (امام و منفرد) کی جو سورة فاتحہ کی قرات نہ کرے ۔
[أخرجه الشافعى (1/36) ، وأحمد (5/314، رقم 22729) ، وابن أبى شيبة (1/316، رقم 3618) ، والدارمى (1/312، رقم 1242) ، والبخارى (1/263، رقم 723) ، ومسلم (1/295، رقم 394) ، والترمذى (2/25، رقم 247) وقال: حسن صحيح. والنسائى (2/137، رقم 910) ، وابن ماجه(1/273، رقم 837) ، وابن خزيمة (3/36، رقم 1581) ، وابن حبان (5/86، رقم 1785) ، والدارقطنى (1/321) .]


حدیث : مَالِكٌ، عَنْ نَافِعٍ؛ أَنَّ عَبْدَ اللهِ بْنَ عُمَرَ كَانَ إِذَا سُئِلَ هَلْ يَقْرَأُ أَحَدٌ خَلْفَ الْإِمَامِ؟ قَالَ: إِذَا صَلَّى أَحَدُكُمْ خَلْفَ الْإِمَامَ فَحَسْبُهُ قِرَاءَةُ الْإِمَامِ. وَإِذَا صَلَّى وَحْدَهُ فَلْيَقْرَأْ. ۔
[الموطأ امام مالك: 1/86، في الصلاة: باب ترك القراءة خلف الإمام۔ شرح معاني الآثار:(1/220)1317]
ترجمہ : نافع ؒ فرماتے ہیں کہ جب حضرت ابن عمر ؓ سے پوچھا جاتا کہ امام کے پیچھے مقتدی بھی پڑھے ؟ تو آپ جواب دیتے کہ مقتدی کے لئے امام کی قرات کافی ہے البتہ جب وہ اکیلا نماز پڑھے تو قرات کرے ۔ خود حضرت عبد اللہ بن عمر ؓ امام کے پیچھے قرات نہیں کرتے تھے ۔
مذکورہ بالا دلائل سے معلوم ہوا کہ جب آدمی امام ہو یا اکیلا نماز پڑھ رہا ہو تو اس کے لئے قرات ضروری ہے لیکن اگر مقتدی ہوتو پھر قرات نہ کرے ۔


مقتدی کو امام کے پیچھے قرات کرنا منع ہے ۔ چنانچہ حکم خدا وندی ہے: وَإِذَا قُرِئَ الْقُرْءَانُ فَاسْتَمِعُوا لَهُ وَأَنْصِتُوا لَعَلَّكُمْ تُرْحَمُونَ o[سورہ اعراف آیت نمبر 204] ۔
ارشاد ربانی ہے کہ جب قرآن پڑھا جائے تو اس کو غور سے سنو اور خاموش رہو تاکہ تم پر رحم کیا جائے۔


حدیث: عَنْ بَشِير بْن جَابِر , قَالَ : صَلَّى اِبْن مَسْعُود , فَسَمِعَ نَاسًا يَقْرَءُونَ مَعَ الإِمَام , فَلَمَّا اِنْصَرَفَ , قَالَ : أَمَا آنَ لَكُمْ أَنْ تَفْقَهُوا ؟ أَمَا آنَ لَكُمْ أَنْ تَعْقِلُوا ؟ وَإِذَا قُرِئَ الْقُرْآن فَاسْتَمِعُوا لَہ وَأَنْصِتُوا كَمَا أَمَرَكُمْ اللَّہ.
[تفسیر ابن جریر طبری : سورۃ اعراف /آیت 204، جلد 13 / صفحہ 346]
حضرت عبدا للہ بن مسعود ؓ نے (ایک مرتبہ) نماز پڑھائی اور چند آدمیوں کو انہوں نے امام کے ساتھ قراة کرتے سنا جب نماز سے فارغ ہوئے تو فرمایا کیا ابھی وقت نہیں آیا کہ تم سمجھ اور عقل سے کام لو جب قرآن کریم کی تلاوت ہو رہی ہوتو اس کی طرف کان لگاو اور خاموش رہو جیسا اللہ تعالیٰ نے تمہیں اس کا حکم دیا ۔
[تفسیری طبری: ج9 ص 110 بحوالہ تفسیر ابن کثیر ج2 ص 245،مکتبہ داراحیاء]

مفسر صحابی حضرت ابن مسعودؓ کی علمِ قرآن میں فضیلت:
حدیث: عن عبد اللہ قال والذی لا الہ الا غیرہ ما من کتاب اللہ سورة الا انا اعلم حیث نزلت وما من آیت الا انا اعلم فی ما انزلت ولو اعلم احدا ھوا علم بکتاب اللہ منی تبلغہ الا بل لرکبت الیہ ۔
[صحیح مسلم - كتاب فَضَائِلِ الصَّحَابَةِ - بَابُ مِنْ فَضَائِلِ عَبْدِ اللهِ بْنِ مَسْعُودٍ، رقم الحدیث:2463]
ترجمہ : حضرت عبد اللہ بن مسعود ؓ فرماتے ہیں کہ قسم ہے اس ذات کی جس کے علاوہ کوئی الہ نہیں قرآن کریم کی کوئی سورت کو آیت ایسی نہیں جس کا شان نزول مجھے معلوم نہ ہو کہ کس موقعہ پر اتری اور کس حالت میں نازل ہوئی ہے اور میں اپنے سے بڑا کتاب اللہ کا عالم کسی کو نہیں پاتا اگر (اس وقت یعنی دور صحابہؓ میں ) مجھ سے بڑا کوئی عالم ہوتا جس تک پہنچنا ممکن ہوتا تو میں اس کی طرف رجوع کرتا۔
یہی عبد اللہ بن مسعود ؓ اس آیت کے متعلق کیا فرماتے ہیں ۔ ملاحظہ فرمائیں ۔
حضرت عبد اللہ بن مسعودؓ نے (ایک دفعہ) نماز پڑھی اور چند آدمیوں کو انہوں نے امام کے ساتھ قرات کرتے سنا جب نماز سے فارغ ہوئے تو فرمایا کہ کیا ابھی وقت نہیں آیا کہ تم سمجھ بوجھ سے کام لو جب قرآن کی تلاوت ہو رہی ہو تو تم اس کی طرف کان لگا اور خاموش رہو جیسا کہ اللہ نے تمہیں اس کا حکم دیا ہے ۔


آیت مذکورہ کی تفسیر رئیس المفسرین و حبر الامہ حضرت ابن عباس ؓ سے ۔
یوں تو سب صحابہ ؓ آسمان ہدایت کے روشن ستارے ہیں مگر عبد اللہ بن عباسؓ وہ صحابی رسول ہیں کہ آپ ﷺ نے فرمایا: 
«اللَّهُمَّ فَقِّهْهُ فِي الدِّينِ وَعَلِّمْهُ التَّأْوِيلَ» ۔
[مسند إسحاق بن راهويه:2038،مسند أحمد:2397،مسند البزار:5057،صحيح ابن حبان:7055] ۔ 
یعنی اے اللہ ان کو (حضرت ابن عباسؓ ) کو دین کی سمجھ اور قرآن کی تاویل و تفسیر میں مہارت عطا فرما۔ 

حضرت عبد اللہ بن عباسؓ فرماتے ہیں: (وإذا قرئ القرآن فاستمعوا له وأنصتوايعني : في الصلاة المفروضة.  ۔
[ابن کثیر:3/537، قرطبی:1/86، طبری:15604(13/349)، فتح القدير للشوكاني:2/321، الدر المنثور للسيوطي:3/634]
ترجمہ : حضرت ابن عباسؓ فرماتے ہیں کہ (وإذا قرئ القرآن) کا شان نزول فرض نماز ہے ۔ 

ان کے علاوہ حضرت ابو ہریرہ ؓ ، حضرت مقداد بن اسودؓ ، حضرت عبد اللہ مغفل ؓ سے بھی مروی ہے کہ اس آیت کا تعلق نماز سے ہے حوالہ جات کے لئے ملاحظہ فرمائیں. تفسیر ابن کثیر تفسیری مظہری ، تفسیر روح المعانی و کتاب القراة للبیھقی و غیرہ ۔ تابعین میں بھی مندرجہ ذیل حضرات بھی ہی فرماتے ہیں کہ اس آیت کا تعلق نماز سے ہے ۔

-1 حضرت مجاہد ؒ -2 حضرت سعید بن مسیب ؒ -3 حضرت سعید بن جبیر ؒ
-4 حضرت حسن بصری ؒ -5 حضرت عبید بن عمیر ؒ -6 حضرت عطاءبن ابی رباح ؒ
-7 حضرت ضحاکؒ -8 حضرت ابراہیم نخعیؒ -9 قتادہ ؒ
-10 حضرت شعبیؒ -11 امام السدیؒ -12 حضرت عبد الرحمن بن زیدؒ
حوالہ جات کے لئے ملاحظہ فرمائیں ۔ تفسیر ابن کثیر ، تفسیر ابن جریر، تفسیر روح المعانی، کتاب القراة للبیھقی ۔
امام احمد بن حنبلؒ : امام احمد بن حنبل ؒ نے اس بات پر اجماع نقل کیا ہے کہ یہ آیت (واذا قرای القرآن ) نماز کے بارہ میں نازل ہوئی ۔ فتاوی ابن تیمیہ ج 2 ص 128۔



مقتدی کے لئے قرات خلف الامام نہ کرنے کا حکم
احادیث رسولﷺکی روشنی میں ۔
حدیث نمبر 1 : عن ابی موسی ؓ الا شعری قال (فی حدیث) قال رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم فاذاکبر الامام فکبر وا واذا قرافانصتوا۔ مسلم ج1 ص 174 ۔
ترجمہ : حضرت ابو موسیٰ اشعری ؓ فرماتے ہیں کہ نبی علیہ الصلوة والسلام نے فرمایا جب امام تکبیر کہے تم بھی تکبر کہو جب امام قرات کرے تم خاموش رہو۔
حدیث نمبر 2 : عن ابی موسیٰ الاشعریؓ قال قال رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم اذا قرا الامام فانصتوا واذا قال غیر المغضوب علیہم ولا الضالین فقولوا آمین ۔ مسند ابی عوانہ ج 2 ص 133 مکہ المکرمہ ۔
ترجمہ : حضرت ابو موسی اشعریؓ فرماتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا کہ جب امام قرات کرے تو تم خاموش رہو اور جب امام غیر المغضوب علیہم ولا الضالین کہے تو تم آمین کہو۔
حدیث نمبر 3 : عن ابی ہریرہؓ قال قال رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم انما جعل الامام لیو تم بہ فاذا اکبر فکبر وا واذا قراءفانصتوا الخ۔ نسائی ج1 ص146 قدیمی کتب خانہ ۔
ترجمہ : حضرت ابو ہریرہ ؓ فرماتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا امام اس لئے مقرر کیا جاتا ہے کہ اس کی اقتداءکی جائے سو جب امام تکبیر کہے تو تم بھی تکبیر کہو جب امام قرات کرے تو تم خاموش رہو۔
حضرت شیخ عبد القادر جیلانی ؒ کا قول
وکذلک ان کان مامو ما ینصت الی قراة الامام ویفھمھا۔ غنیہ الطالبین مترجم ص 592
ترجمہ : ایسے ہی اگر نماز پڑھنے والا مقتدی ہے تو اس کو امام کی قرات کے لئے خاموش رہنا چاہئے اور قرات کو سمجھنے کی کوشش کرے ان کے علاوہ اور بہت سی احادیث و آثار موجود ہیں لیکن اختصار کی وجہ سے ہم ذکر نہیں کررہے۔
مسئلہ آمین
تمام نمازوں کی ہر رکعت میں سورة الفاتحہ کے بعد آمین آہستہ کہنا سنت ہے ۔
قرآن پاک میں حضرت موسیٰ علیہ السلام اور حضرت ہارون علیہ السلام کے متعلق اللہ تعالی کا فرمان ہے ۔ قد اجیبت دعوتکما سورہ یونس آیت نمبر 89 میں نے تم دونوں کی دعا قبول کر لی حالانکہ حضرت ابو ہریرہ، حضرت عبد اللہ بن عباس حضرت عکرمہ ، حضرت ابوصالح ، حضرت ابو العالیہ،حضرت ربیع ، حضرت زید بن اسلم رضی اللہ عنہھم وغیرہ حضرات فرماتے ہیں کہ موسیٰ علیہ السلام نے دعا فرمائی تھی اور ہارون علیہ السلام نے آمین کہی تھی ۔ (تفسیر ابن کثیر ، تفسیر الدر المنثور )
حضرت عطاءرحمہ اللہ فرماتے ہیں : آمین دعا ہے صحیح بخاری ج ؟ ص 107۔
نیز آمین کا لغوی معنی بھی دعائیہ ہے چنانچہ المنجد میں ہے آمین اسم فعل بمعنی (اے اللہ)قبول کر ، ایسا ہی ہو صفحہ 64 مکتبہ دارالاشاعت مذکورہ بالا دلائل سے معلوم ہوا کہ آمین دعا ہے اور دعا کے متعلق حکم باری تعالی ہے ادعوا ربکم تضرعا و خفیہ ۔ (سورہ اعراف آیت نمبر 55 )
ترجمہ : دعا کرو اپنے رب سے عاجزی سے اور خفیہ (آہستہ) تو معلوم ہوا کہ آمین آہستہ کہنی چاہئے ۔
حدیث نمبر 1 : علقمہ بن وائل عن ابیہ انہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم فلما بلغ (غیر المغضوب علیہم ولا الضالین ) قال آمین و اخفی بھا صوتہ (مسند احمد ، ابو داد الطیالسی ابو یعلی، الدار قطنی، والحاکم وقال صحیح الاسناد و لم یخرجاہ بحوالہ نصب الرایہ ج 1 ص 446مکتبہ حقانیہ)
ترجمہ : حضرت علقمہ ؒ اپنے باپ حضرت وائل بن حجر ؓ سے روایت کرتے ہیں کہ انہوں نے آنحضرت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ساتھ نماز پڑھی پس جب آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ولا الضالین پڑھا تو آمین کے وقت اپنی آواز کو پوشیدہ کیا۔ یہ حدیث صحیح ہے ۔
حدیث : عن ابی وائل قال کان عمرؓ و علیؓ لا یجھران ببسم اللہ الرحمن الرحیم ولا بالتعوذ ولا بالتامین۔ شرح المعانی الاثار للطحاوی ج 1 ص 140 ۔
ترجمہ : ابو وائل ؒ کہتے ہیں کہ حضرت عمر اور حضرت علی رضی اللہ عنہما نہ تو بسم اللہ اور اعوذ باللہ اونچی آواز سے پڑھتے تھے اور نہ ہی آمین اونچی آواز سے کہتے تھے ۔
تکبیر تحریمہ کے علاوہ رکوع و سجود میں رفع یدین نہ کرنا
حدیث : عن علقمہ عن عبد اللہ انہ قال الا اصلی بکم صلوة رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم فصلی فلم یرفع یدیہ الامرہ واحدة ۔ سنن نسائی ص 161 قدیمی
ترجمہ : حضرت عبد اللہ بن مسعود ؓ فرماتے ہیں کیا میں تم لوگوں کو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی نماز پڑھ کر نہ دکھاں پر انہوں نے نماز پڑھی اور صرف (شروع نماز میں ) ایک مرتبہ رفع یدین کیا۔ علامہ ابن حزم نے محلی میں اس حدیث کو صحیح کہا ہے ۔ المحلیٰ ص 364 اور علامہ ناصر الدین البانی غیر مقلد عالم نے بھی اس کو صحیح کہا ہے سنن نسائی بتحقیق البانی ص 183 ، 168 ۔
حدیث : عن سالم عن ابیہ قال رایت رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم اذا افتتح الصلوة رفع یدیہ حتی یحاذی بھما و قال بعضھم حذو منکبیہ واذا ارادان یرکع و بعد ما یرفع راسہ من الرکوع لا یرفعھما وقال بعضھم ولا یرفع بین السجدتین ۔ مسند ابی عوانہ ج 2 ص 90 دارالباز مکة المکرمہ ۔
ترجمہ : حضرت عبد اللہ بن عمر ؓ فرماتے ہیں کہ میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو دیکھا جب آپ علیہ السلام نے نماز شروع کی تو رفع یدین کیا یہاں تک کہ بعضوں نے کہا کہ ہاتھوں کو کندھوں کے برابر لے گئے اور جب رکوع کا ارادہ کیا اور رکوع سے سر اٹھایا تو رفع یدین نہ کیا اور بعضوں نے کہا کہ آپ علیہ السلام نے سجدوں میں بھی رفع یدین نہ کیا ۔
حدیث : عن البراءبن عاذب ؓ قال رایت رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم رفع یدیہ حین افتتح الصلوة ثم لم یرفعھما حتی انصرف۔ سنن ابی داد ج 1 ص 116 مکتبہ امدادیہ ملتان
ترجمہ : حضرت براءبن عاذب ؓ فرماتے ہیں کہ میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو دیکھا آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے رفع یدین کیا جب نماز شروع کی پھر نماز سے فارغ ہونے تک رفع یدین نہیں کیا۔
حدیث : عن عبد اللہ قال صلیت مع النبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم و مع ابی بکر و مع عمر فلم یرفعوا یدیھم الا عند التکبیرة الاولی فی افتتاح الصلوة - سنن دار قطنی ج 1 ص 592
ترجمہ : حضرت عبد اللہ بن مسعود ؓ فرماتے ہیں کہ میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ساتھ نماز پڑھی اور ابو بکر و عمر رضی اللہ رنھما کے ساتھ نماز پڑھی پس انہوں نے رفع یدین نہیں کیا مگر صرف شروع نماز میں ۔
رکوع
بغیر ہاتھ اٹھائے تکبیر کہہ کر رکوع کرے کیونکہ حدیث شریف میں ہے ۔
حدیث : عن ابی ہریرہ ؓ انہ کان یصلی بہم فیکبر کلما خفض و رفع فاذا انصرف قال انی لا شبھکم صلاة برسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ۔ بخاری شریف ص 62حدیث نمبر 785مکتبہ دار السلام ۔
ترجمہ : حضرت ابو ہریرہؓ نماز ادا کرتے تو جب بھی (رکن کی ادائیگی کے لئے ) اوپر نیچے ہوتو (صرف) تکبیر کہتے جب نماز سے فارغ ہوئے تو فرمایا میری نماز رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی نماز کے مشابہ ہے ۔
رکوع میں کمر کا سیدھا کرنا
حدیث : عن ابی مسعود الانصاری ؓ قال : قال رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم لا تجزی صلوة لا یقیم فیھا الرجل یعنی صلبہ فی الرکوع والسجود ۔ سنن ترمذی بتحقیق البانی ص 75 حدیث نمبر 265
ترجمہ : رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ارشاد فرماتے ہیں وہ نماز کافی نہیں جس میں نمازی رکوع و سجود میں کمر کو سیدھا نہ کرے ۔ یہ حدیث صحیح ہے۔
رکوع کا مسنون طریقہ
رکوع میں کمر اور سر برابر ہوں ہاتھ گھٹنوں پر کہنیوں کو جسم سے نہ ملائے اطمینان سے رکوع کرے ۔
حدیث : عن سالم البراد قال اتینا عقبة بن عامر الانصاری ابا مسعود ؓ فقلنا لہ حدثنا عن صلوہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم فقام بین ایدینا فی المسجد فکبر فلیما رکع و ضع یدیہ علی رکبتیہ و جعل اصابعہ اسفل من ذالک و جافی بین مرفقیہ حتی استقر کل شی منہ الخ۔ سنن ابی داد بتحقیق البانی ص 138 حدیث نمبر 863 یہ حدیث صحیح ہے۔
ترجمہ : سالم براد ؒ فرماتے ہیں کہ ہم حضرت ابو مسعود انصاری ؓ کی خدمت میں حاضر ہوئے اور عرض کیا کہ ہمیں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی نماز کی کیفیت بیان فرمائیں حضرت ابو مسعودؓ مسجد میں ہمارے سامنے کھڑے ہوگئے اور تکبیر کہی جب رکوع کیا تو ہاتھوں کو گھٹنوں پر اس طرح رکھا کہ انگلیاں گھٹنوں سے نیچے اور کہنیاں کوکھ سے فاصلے پر تھیں یہاں تک کہ ہر عضو میں ٹھہرا پیدا ہوگیا۔
رکوع کی تسبیحات
حدیث : عن حذیفة ؓ انہ صلی مع النبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم فکان یقول فی رکوعہ سبحان ربی العظیم وفی سجودہ سبحان ربی الاعلی ۔ سنن ابی داد بتحقیق البانی ص 139 حدیث نمبر 871یہ حدیث صحیح ہے ۔
ترجمہ : حضرت حذیفہ ؓ نے آپ علیہ السلام کے ساتھ نماز پڑھی پس آپ علیہ السلام رکو ع میں سبحان ربی العظیم پڑھتے اور سجدہ میں سبحان ربی الاعلی پڑھتے۔
رکوع سے سر اٹھانا
جب رکوع سے سر اٹھاتے تو سمع اللہ لمن حمدہ پڑھتے پھر ربنا لک الحمد
حدیث : عن ابی ہریرہؓ ثم یقول سمع اللہ لمن حمدہ حین یرفع صلبہ من الرکوع ثم یقول و ھو قائم ربنا لک الحمد ۔۔۔ الخ۔ بخاری ص 62حدیث نمبر 789 مکتبہ دارالسلام ۔
ترجمہ : حضرت ابو ہریرؓہ سے روایت ہے آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم رکوع سے اٹھتے ہوئے سمع اللہ لمن حمدہ کہتے اور کھڑے ہوکر ربنا لک الحمد پڑھتے۔
نوٹ : اگر نماز باجماعت ہے تو امام صرف سمع اللہ لمن حمدہ کہے گا اور مقتدی صرف ربنا لک الحمد ۔
حدیث : عن انس بن مالک ؓ قال (قال رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ) واذا قال سمع اللہ لمن حمدہ فقولوا ربنا لک الحمد ۔ بخاری ص 88 حدیث نمبر 733 مکبتہ دارالسلام ۔
ترجمہ : حضرت انس بن مالک ؓ سے مروی ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا جب امام سمع اللہ لمن حمدہ کہے تو تم ربنا لک الحمد کہو ۔
سجدہ : پھر تکبیر کہہ کر سجدہ میں چلا جائے لیکن پہلے گھٹنوں کو زمین پر رکھے پھر ہاتھ کو پھر چہرہ کو۔
حدیث : عن وائل بن حجر قال رایت رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم اذا سجد وضع رکبتیہ قبل یدیہ واذا نھض رفع یدیہ قبل رکبتیہ ۔ سنن نسائی بتحقیق البانی ص 177 حدیث نمبر 1089 یہ حدیث امام نسائی ؒ کے نزدیک صحیح ہے ۔
ترجمہ : حضرت وائل بن حجر ؓ فرماتے ہیں میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو دیکھا آپ علیہ السلام جب سجدہ کرتے تو پہلے گھٹنے نیچے رکھتے پھر ہاتھ اور جب اٹھتے تو پہلے ہاتھ اٹھاتے پھر گھٹنے۔
سجدہ کی تسبیحات
سجدہ میں سبحان ربی الاعلی پڑھے ۔
حدیث : عن حذیفہؓ انہ صلی مع النبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم فکان یقول فی رکوعہ سبحان ربی العظیم وفی سجودہ سبحان ربی الاعلی ۔ سنن ابی داؤد بتحقیق البانی ص 139 حدیث نمبر 871یہ حدیث صحیح ہے ۔
ترجمہ : حضرت حذیفہ ؓ فرماتے ہیں کہ آپ علیہ السلام رکوع میں سبحان ربی العظیم اور سجدہ میں سبحان ربی الاعلی پڑھتے تھے ۔
سجدہ کی مسنون کیفیت
سجدہ اعتدال سے کرے کہنیوں کو زمین پر نہ بچھائے ۔
حدیث : عن انس قال قال رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم اعتدلوا فی السجود ولا یسبط احدکم ذراعیہ انبساط الکلب۔مسلم ص 755حدیث نمبر 1102 مکتبہ دارالسلام ۔
ترجمہ : حضرت انس ؓ نبی علیہ السلام کا فرمان نقل کرتے ہیں کہ سجدہ میں اعتدال کرو اور تم میں سے کوئی بھی سجدہ میں کہنیوں کو کتے کی طرح نہ بچھائے ۔
اعضائے سجدہ
سجدہ سات اعضاءپر کرے ۔
حدیث : عن ابن عباس ؓ قال قال النبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم امرت ان اسجد علی سبعة اعظم علی الجبھة واشار بیدہ علی انفہ والیدین والرکبتین و اطراف القدمین ولا نکفت الثیاب و الشعر۔بخاری ص 64 حدیث نمبر 812مکتبہ دارالسلام ۔
ترجمہ : حضرت ابن عباس ؓ سے مروی ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا مجھے حکم دیا گیا ہے کہ میں ساتھ ہڈیوں پر سجدہ کروں پیشانی پر اور آپ علیہ السلام نے ناک کی طرف اشارہ کیا اور دونوں ہاتھوں پر دونوں گھٹنوں پر دونوں پاں کی انگلیوں پراور ہمیں یہ بھی حکم دیا ہم نماز میں کپڑے اور بالوں کو نہ سمیٹیں۔
سجدہ میں انگلیوں کو جوڑنا
حدیث : عن علقمہ بن وائل بن ابیہ ان النبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کان اذا سجد ضم اصابعہ۔مستدرک حاکم ج 1 ص 357 حدیث نمبر 936 دارالفکر۔یہ حدیث صحیح ہے
ترجمہ: حضرت وائل بن حجر ؓ فرماتے ہیں کہ آپ علیہ السلام جب سجدہ کرتے تو اپنے انگلیوںکو ملا لیتے ۔ سجدہ میں بازو پہلو سے جدا ہوں اور ہتھیلیاں کندھوں کے برابر ہوں ۔
حدیث : عن ابی حمید الساعدی ان النبی علیہ السلام کان اذا سجد امکن انفہ و جبھہ من الارض نحی یدیہ عن جنبیہ ووضع کفیہ حذو منکبیہ ۔ سنن ترمذی بتحقیق البانی ص 77 حدیث نمبر 270 ۔یہ حدیث صحیح ہے ۔
ترجمہ : آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم جب سجدہ کرتے تو ناک اور پیشانی کو خوب ٹکا کر زمین پر رکھتے اور بازو پہلو سے جدا کرتے اور ہتھیلیاں کندھوں کے برابر کرتے ۔
پھر دونوں سجدوں سے فارغ ہوکر سیدھا کھڑا ہو جائے بیٹھے مت
حدیث : عن ابی ہریرہؓ (مرفوعا فی حدیث طویل) ثم اسجد حتی تطمئن ساجد اثم ارفع حتی تستوی قائما۔ بخاری ج2 ص 986 قدیمی کتب خانہ۔
ترجمہ : حضور اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا ارشاد ہے پھر تو (دوسرا) سجدہ اطمینان سے کر پھر (دوسرے) سجدہ سے سر اٹھا یہاں تک کہ (دوسری رکعت کے لئے ) سیدھا کھڑا ہو جا(درمیان میں بیٹھ مت) ۔
قعدہ میں بیٹھنے کا مسنون طریقہ
حدیث : عن عبداللہ بن عبد اللہ انہ اخبرہ ۔۔۔ عبد اللہ بن عمرؓ قال انما سنة الصلاة ان تنصب رجلک الیمنی و تثنی الیسری الخ۔ بخاری ص 65 حدیث نمبر 827 مکتبہ دارالسلام۔
ترجمہ : حضرت عبد اللہ بن عمر ؓ فرماتے ہیں کہ نما ز کی سنت یہ ہے قعدہ میں تم دائیں پاں کو کھڑا کرو اور بائیں کو موڑ کر نیچے بچھا لو۔
التحیات کے مسنون الفاظ
حدیث : التحیات للہ والصلوات والطیبات السلام علیک ایھا النبی ورحمة اللہ و برکاتہ ، السلام علینا و علی عباد اللہ الصالحین اشھد ان لا الہ الا اللہ واشھد ان محمد عبدہ و رسولہ ۔ بخاری ص 66 حدیث نمبر 731 مکتبہ دار السلام ۔
ترجمہ : سب زبانی عبادتیں ، سب بدنی عبادتیں اور سب مالی عبادتیں صرف اللہ کے لئے ہیں اے نبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم آپ پر سلام ہو اللہ کی رحمت اور برکتیں ہوں کہ بندگی کے لائق صرف اللہ تعالی ہے اس کی بھی گواہی دیتا ہوں کہ محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم اللہ کے بندے اور رسول ہیں ۔
نوٹ: جب اشھد ان لا الہ الا اللہ پر پہنچے تو شہادت کی انگلی سے اشارہ کرے اور بڑی انگلی اور انگوٹھے کا حلقہ بنائے ۔
حدیث : عن عبد اللہ بن الزبیر ؓ قال کان رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم اذا قعد یدعو وضع یدہ ال یمنی علی فخذہ الیمنی ویدة الیسری علی فخذہ الیسری واشارباصبعہ السابہ ووضع ابھامہ علی اصبعہ الوسطی و یلقم کفہ ال یسری رکبتہ ۔ مسلم ج1 ص 216 قدیمی کتب خانہ ملتان ۔
ترجمہ : حضرت عبد اللہ بن زبیر ؓ فرماتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم جب دعا کے لئے بیٹھتے تو دائیں ہاتھ کو دائیں ران پر اور بائیں ہاتھ کو بائیں ران پر رکھتے اور اپنی شہادت کی انگلی سے اشارہ کرتے اور انگوٹھے کو درمیانی انگلی سے ملا لیتے ۔ اس کے بعد درودِ ابراہیمی پڑھتے ۔ اللھم صل علی محمد و علی ال محمد کما صلیت علی ابراہیم و علی ال ابراہیم انک حمید مجید اللھم بارک علی محمد وعلی ال محمد کما بارکت علی ابراہیم وعلی ال ابراہیم انک حمید مجید۔ بخاری ج 1 ص 477 مکتبہ قدیمی کتب خانہ ۔ پھر اس کے بعد جو چاہے دعا مانگے ۔ ارشاد نبوی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ہے ثم یتخیر من المسئلة ماشائ۔
ترجمہ : مسلم ص 742 حدیث 897 دارالسلام پھر جو دعا چاہے مانگے ۔ پھر اس کے بعد دائیں اور بائیں سلام پھیرے اور السلام علیکم ورحمة اللہ کہے ۔ مسلم ج 1 ص 216 ترمذی ج 1 ص 69 حدیث نمبر 295 ۔ پھر اگر امام ہے تو مقتدیوں کی طرف منہ کرے ۔ بخاری ص 67 حدیث 845 دارالسلام۔اس کے بعد ہاتھ اٹھا کر دعا مانگے ۔
حدیث : عن ابی بکرہ ؓ ان رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم قال سلو اللہ ببطون اکفکم ولا تسلوہ بظھورھا۔ مجمع الزوائد ج 10 ص 194 دارالکتب العلمیہ رجالہ رجا الصحیح غیر عمار وھو ثقة۔
ترجمہ : رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا جب تم اللہ سے سوال کرو تو ہاتھوں کی ہتھیلیوں کو سامنے رکھ کر سوال کرو ہاتھوں کی پشت کو سامنے نہ رکھو ۔
نیز آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم بھی ہاتھ اٹھا کر نماز کے بعد دعا مانگتے تھے ۔ مجمع الزوائد ج 10 ص 194 ۔
وتر : تین رکعت وتر ایک سلام کے ساتھ پڑھنا واجب ہے ۔
وترواجب ہے : مستدرک حاکم ج 1 ص 416دارالفکر ترمذی ص 121 بتحقیق البانی ۔
وتر تین رکعات ہیں : مسلم ص 254ترمذی ص 122 ۔
وتر ایک سلام کے ساتھ جیسا کہ اہل سنت والجماعت احناف کا عمل ہے ۔ مستدرک حاکم ج 1 ص 414 دارالفکر حدیث 1168 ۔
تراویح
اہل سنت والجماعت کے نزدیک تراویح رمضان المبارک کی مخصوص نماز ہے جو کہ گیارہ ماہ نہیں پڑھی جاتی بلکہ صرف رمضان المبارک میں عشاءکی نماز کے بعد با جماعت مسجد میں ادا کی جاتی ہے اور اس میں ایک قرآن پاک ختم کیا جاتا ہے جبکہ شیعہ حضرات کے ہاں تراویح کوئی عبادت نہیں وہ تراویح کے منکر ہیں لیکن غیر مقلدین حضرات بھی تراویح کو رمضان المبارک کا تحفہ نہیں مانتے بلکہ کہتے ہیں کہ یہ سارا سال والی نماز ہی ہے فرق یہ ہے غیر رمضان میں ہو تو تہجد کہلاتی ہے اور رمضان میں ہوتو تراویح کہلاتی ہے گویا کہ یہ بھی تراویح کے منکر ہیں۔
تعدادِ تراویح
بیس رکعت تراویح پڑھنا آپ علیہ السلام سے اور خلفاءالراشدین سے لے کر آج تک شرقاً و غرباً مکہ و مدینہ میں پڑھنا ثابت ہے ۔
حدیث : عن ابن عباس ؓ ان رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کان یصلی فی رمضان عشرین رکعة والوتر ۔ مصنف ابن ابی شیبہ ج 2 ص 286۔
ترجمہ : حضرت ابن عباسؓ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے رمضان المبارک میں بیس رکعت (تراویح) اور وتر پڑھے ۔
حدیث: عن جابر بن عبد اللہ قال خرج النبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ذات لیلة فی رمضان فصلی الناس اربعة و عشرین رکعة واوتر بثلاثة -تاریخ حرجان لابی قاسم ص 285 عالم الکتب۔
ترجمہ : حضرت جابر ؓ فرماتے ہیں کہ نبی پاک علیہ السلام رمضان المبارک کی ایک رات مسجد میں تشریف لائے پس آپ علیہ السلام نے صحابہ کو چوبیس رکعات (4 فرض 20 تراویح) اور تین وتر پڑھائے ۔ اس کے علاوہ حضرت عمر و علی و عبد اللہ بن مسعود و دیگر صحابہ کرام علیہم الرضوان سے بیس تراویح کا ثبوت ملتا ہے جبکہ آٹھ رکعت تراویح کی ابتداءکرنے والا غیر مقلد عالم محمد حسین بٹالوی ہے ملاحظہ فرمائیں غیر مقلدین کے گھر کی گواہی ”سیرة ثنائی“ ص 452نعمانی کتب خانہ لاہور مولف مولانا عبد المجید سوہدروی غیر مقلد ۔
نماز عیدین
طلوع آفتاب سے کچھ بعد اور زوال سے پہلے بغیر اذان و اقامت کے چھ زائد تکبیروں کے ساتھ دو رکعات نماز با جماعت پڑھی جاتی ہے پہلی رکعت میں ثناءکے بعد تین تکبیریں زائد کہی جاتی ہیں اور ہر تکبیر میں رفع الیدین کیا جاتا ہے اورتیسری تکبیر کے بعد ہاتھ باندھ لئے جاتے ہیں اور امام اونچی آواز سے قرات کرتا ہے پھر رکوع و سجود کے بعد دوسری رکعت کا آغاز قرات سے ہوگا قرات کے بعد رکوع سے پہلے تین زائد تکبیریں کہی جاتی ہیں ہر تکبیر میں ہاتھ کانوں تک اٹھاتے ہیں پھر چوتھی تکبیر کے بعد رکوع اور باقی نماز مکمل کی جاتی ہے ۔
گویا کہ پہلی رکعت میں تکبیر افتتاح اور تین تکبیرات زائد ملا کر چار تکبیرات ہوئیں اور دوسری رکعت میں تکبیرات زائد و رکوع کی تکبیر ملا کر چار تکبیرات ہوئیں۔
چار تکبیرات کہنا سنت نبوی علیہ السلام ہے
حدیث : ان سعید بن العاص سال ابا موسی الاشعری ؓ و حذیفہ بن الیمان کیف کان رسول اللہ علیہ السلام یکبیر فی الاضحی والفطر فقال ابو موسی کا ن یکبرا ربعاً تکبیرہ علی الجنائز ۔ ابو داد بتحقیق النسائی ص 179 ۔ یہ حدیث حسن صحیح ہے ۔
ترجمہ : حضرت سعید بن العاص نے حضرت ابو موسی اشعری ؓ اور حضرت حذیفہ بن یمان ؓ سے پوچھا آپ علیہ السلام عیدین میں کتنی تکبیریں کہتے تھے حضرت ابو موسیؓ نے بتایا کہ آپ علیہ السلام چار تکبیریں کہتے تھے ۔
نوٹ: اگر عید جمعہ کے دن ہوتو جمعہ ساقط نہیں ہوتا بلکہ فرض ہی رہتا ہے لہذا اس دن جمعہ و عید دونوں پڑھی جائیں گی ۔
نماز جنازہ
نماز جنازہ کا مسنون طریقہ یہ ہے کہ چار تکبیرات کہی جائیں پہلی تکبیر کے بعد ثناءدوسری تکبیر کے بعد درود شریف اور تیسری تکبیر کے بعد دعا چوتھی تکبیر کے بعد سلام پھیر دیا جائے ۔
چار تکبیرات
حدیث : عن ابی ہریرہ ؓ قال نصی النبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم الی اصحابہ النجاشی ثم تقدم فصفوا خلفہ فکبر اربعاً ۔ بخاری ج1 ص 176 قدیمی کتب خانہ ۔
ترجمہ : حضرت ابو ہریرہ ؓ فرماتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے صحابہ کو نجاشی کی وفات کی خبر دی پھر آپ علیہ السلام آگے ہوئے حضرات صحابہ نے آپ کے پیچھے صف بندی کی آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے چار تکبیریں کہیں۔
ثناءو درود و دعائ: عن سعید بن ابی سعید المقبری عن ابیہ انہ سال ابا ہریرہ ؓ کیف تصلی عن الجنازہ فقال ابو ہریرہؓ انا لعمرک اخبرک اتبعھا من اھلھا فاذا وضعت کبرت و حمدت اللہ وصلیت علی نبیہ ثم اقول اللھم عبدک ۔ الخ۔ موطا امام مالک ص 209۔
ترجمہ : حضرت سعید ؒ کے والد نے حضرت ابو ہریرہؓ سے پوچھا آپ جنازہ کیسے پڑھتے ہیں تو آپ ؓ نے فرمایا بخدا میں تم کو بتاتا ہوں میں میت کے گھر سے اس کے ساتھ چلوںگا جب جنازہ رکھ دیا جائے تو میں ثناءاور درود شریف نبی علیہ السلام پر اور یہ دعا پڑھونگا اللھم الخ۔ تو معلوم ہوا کہ پہلی تکبیر کے بعد ثناءدوسری تکبیر کے بعد درود اور تیسری تکبیر کے بعد دعا پڑھنی چاہئے ۔
مسنون دعا
اللھم اغفر لحینا و میتنا و شاھدنا و غائبنا وصغیرنا و کبیرنا و ذکرنا و انثانا اللھم من احییتہ منا فاحیہ علی الاسلام ومن توفیتہ منا فتوفہ علی الایمان۔ترمذی ص 243 بتحقیق البانی حدیث 1024 یہ حدیث صحیح ہے ۔
نماز جنازہ میں رفع الیدین نہ کرنا
حدیث : عن ابن عباسؓ ان رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کان یرفع یدیہ علی الجنازہ فی اول تکبیرة ثم لایعود۔ سنن دار قطنی ج 2 ص 75 احیاءالتراث بیروت۔
ترجمہ : حضرت ابن عباس ؓ سے مروی ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نماز جنازہ کی پہلی تکبیر کے ساتھ ہاتھ اٹھاتے دوبارہ ہاتھ نہ اٹھاتے ۔
تنبیہ: آج کل بعض لوگ جو شہید کا غائبانہ نماز جنازہ پڑھتے ہیں اس کی کوئی صریح دلیل موجود نہیں باقی نجاشی والی حدیث سے استدلال درست نہیں جیسا کہ ابن تیمیہ ؒ نے فرمایا ہے۔
زادالمعیاد ج1 ص 520نیز غیر مقلد عالم اس حقیقت کا یوں اعتراف کرتا ہے ”غائبانہ نماز جنازہ پڑھنے پر نجاشی کے قصہ سے دلیل لی جاتی ہے یہ قصہ صحیح بخاری (1333,1327,1320,1318,1245)اور صحیح مسلم (901)میں موجود ہے مگر اس سے غائبانہ نماز جنازہ پر استدلال کرنا صحیح نہیں ہے “نماز نبوی از ڈاکٹر شفیق الرحمان ص 296 مکتبہ دارالسلام۔
خاتمة الکتاب: اللہ تعالی کا لاکھ لاکھ شکر ہے کہ اللہ رب العزت نے اس کتاب کو لکھنے کی توفیق عطا فرمائی اب اللہ سے دعا ہے کہ اللہ تعالی اس کتاب کو شرف قبولیت عطاءفرمائے اور میرے لئے اور والدین اور گھر والوں اور تمام دوست احباب خصوصاً پیر طریقت رہبر شریعت مولانا قاری علیم الدین شاکر دامت برکاتہم العالیہ خلیفہ مجاز حضرت سید نفیس الحسینی شاہ صاحب نور اللہ مرقدہ و محمد ہارون حنفی و راشد حنفی و عزیز دوستمولانا فرقان صاحب اور جملہ احباب و قارئین و مسلمین کے لئے ذریعہ نجات و ہدایت کا سامان بنائے ۔ آمین ۔
وآخر دعوانا ان الحمد للہ رب العالمین و الصلوة والسلام علی النبی الکریم و خاتم المرسلین والہ وصحبہ اجمعین۔

No comments:

Post a Comment