Wednesday, 9 May 2012

Our Behavior With Quran (Quran_Paak se Hamara Sulook)

شفاعت_رسول یا شکایت_رسول (صلی الله علیہ وسلم):

وَقَالَ الرَّسُوْلُ يٰرَبِّ اِنَّ قَوْمِي اتَّخَذُوْا ھٰذَا الْقُرْاٰنَ مَهْجُوْرًا [٢٥:٣٠]

ترجمه : اور پیغمبر (روز_قيامت) کہیں گے کہ اے پروردگار! میری قوم نے اس قرآن کو چھوڑ رکھا تھا.


توضیح : اصل میں لفظ مھجور استعمال ہوا ہے جس کے کئی معنی ہیں ۔ اگر اسے ھَجْر سے مشتق مانا جائے تو معنی ہوں گے متروک ، یعنی ان لوگوں نے قرآن کو قابل التفات ہی نہ سمجھا، نہ اسے قبول کیا اور نہ اس سے کوئی اثر لیا ۔ اور اگر ھُجْر سے مشتق مانا جائے تو اس کے دو معنی ہو سکتے ہیں ۔ ایک یہ کہ انہوں نے اسے ہذیان اور بکواس سمجھا۔ دوسرے یہ کہ انہوں نے اسے اپنے ہذیان اور اپنی بکواس کا ہدف بنا لیا اور اس پر طرح طرح کی باتیں چھانٹتے رہے ۔
And the Messenger, Muhammad (s), says, ‘O my Lord, lo! my people, the [tribe of] Quraysh, consider this  Qur’ān as something to be shunned’, to be disregarded.{25/30}

TAFSEER_IBN_ABBAAS: (And the messenger) Muhammad (pbuh) (saith: O my Lord! Lo! mine own folk make this Qur'an of no account) they speak ill of it, they do not believe in it and do not act upon its teachings.

TAFSEER_JALAALAIN: And the Messenger, Muhammad (s), says, ‘O my Lord, lo! my people, the [tribe of] Quraysh, consider this Qur’ān as something to be shunned’, to be disregarded.

-------------------------------

حضرت عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے فرمایا کہ تمہارے نبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا کہ اللہ تعالیٰ اسی کتاب کے ذریعہ لوگوں کو بلند کرتا ہے اور اسی کتاب کے ذریعہ لوگوں کو پست و ذلیل کرتا ہے۔[صحیح مسلم:جلد اول:حدیث نمبر 1891 فضائل قرآن کا بیان :قرآن مجید پر عمل کرنے والوں اور اسکے سکھانے والوں کی فضلیت کے بیان میں]


-------------------------------

قرآن پاک کے حقوق؛

١) اس پر ایمان لانا

٢) تجوید و ترتیل سے پڑھنا سیکھنا

٣) (اس میں) تدبر و تفکر کرنا

٤) اس پر عمل کرے

٥) تبلیغ کرے (اس کے پیغام کو عام کرے) ؛







قرآن کی فریاد

طاقوں میں سجایا جاتا ہوں ، آنکھوں سے لگایا جاتا ہوں
تعویذ بنایا جاتا ہوں ، دھودھو کے پلایا جاتا ہوں

جزدان حریر وریشم کے ، اور پھول ستارے چاندی کے
پھر عطر کی بارش ہوتی ہے ، خوشبو میں بسایا جاتا ہوں

جس طرح سے طوطے مینا کو ، کچھ بول سکھاے جاتے ہیں
اس طرح پڑھایا جاتا ہوں ، اس طرح سکھایا جاتا ہوں

جب قول وقسم لینے کے لیے ، تکرار کی نوبت آتی ہے
پھر میری ضرورت پڑتی ہے ، ہاتھوں پہ اُٹھایا جاتا ہوں

دل سوز سے خالی رہتے ہیں ، آنکھیں ہیں کہ نم ہوتی ہی نہیں
کہے کو میں اک اک جلسہ میں ، پڑھ پڑھ کے سنایا جاتا ہوں

نیکی پہ بدی کا غلبہ ہے ، سچائی سے بڑھ کر دھوکا ہے
اک بار ہنسایا جاتا ہوں ، سو بار رولا یا جاتا ہوں

یہ مجھ سے عقیدت کے دعوے ، قانون پہ راضی غیروں کے
یوں بھی مھجے رسوا کرتے ہیں ، ایسے بھی ستایا جاتا ہوں

کس بزم میں مجھ کو بار نہیں ، کس عُرس میں میری دُھوم نہیں
پھر بھی میں اکیلا رہتا ہوں ، مجھ سا بھی کوئی مظلوم نہیں 

No comments:

Post a Comment