Friday, 5 October 2012

داڑھی رکھنے ، سنوارنے کا حکم اور مسنون مقدار

داڑھی رکھنے ، سنوارنے کا حکم اور مسنون مقدار

الله تعالیٰ نے یہ شیطان کی بات قرآن پاک میں نقل فرمائی کہ:
... میں لوگوں کو حکم دونگا تو وہ الله کی خلق(یعنی بنائی-ہوئی-صورت) کو بگاڑا کرینگے ... [النساء:119]
خلاصہ: اس میں داڑھی منڈھانا بھی داخل ہے.

حضرت ہارونؑ کے بارے میں تو قرآن میں ہے کہ انہوں نے اپنے بھائی حضرت موسیٰؑ سے فرمایا کہ: اے میری ماں کے بیٹے! میرا سر اور داڑھی نہ پکڑ...[سوره طہٰ :94]
خلاصہ: اس سے معلوم ہوا سر اور داڑھی کے بال اتنے بڑے تھے کہ حضرت موسیٰ (علیہ السلام) نے ان کو ہاتھ سے پکڑلیا تھا.
یعنی انبیاء کا طریقہ داڑھی منڈھانا یا ایک مشت(مٹھی) سے کم پر کترنا/کترانا نہیں تھا.
http://www.scribd.com/doc/76889285/Darhi-Ka-Wjub-or-Os-Ki-Msnun-Miqdar

========================================================
عَنِ ابْنِ عُمَرَ ، عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ : " خَالِفُوا الْمُشْرِكِينَ ، وَفِّرُوا اللِّحَى وَأَحْفُوا الشَّوَارِبَ " ، وَكَانَ ابْنُ عُمَرَ إِذَا حَجَّ أَوِ اعْتَمَرَ قَبَضَ عَلَى لِحْيَتِهِ فَمَا فَضَلَ أَخَذَهُ .
حضرت ابن عمرؓ کہتے ہیں کہ نبی ﷺ نے فرمایا کہ مشرکین کی مخالفت کرو، داڑھی بڑھاؤ، مونچھیں کترواؤ، اور حضرت ابنِ عمرؓ جب کبھی حج یا عمرہ کرتے تو اپنی داڑھی مٹھی سے پکڑتے اور جتنی زیادہ ہوتی اس کو کاٹ دیتے۔
[بخاری(5892)، شعب الإيمان للبيهقي(6015)، شرح السنة للبغوی(3194)]

نبی ﷺ نے صیغۂِ امر(حکمیہ انداز)میں یہ دونوں حکم فرماتے اور امر(حکم) حقیقتاً وجوب(لازم کرنے)کے لئے ہوتا ہے. بس معلوم ہوا کہ یہ دونوں حکم(داڑھی کٹوانا اور مونچھیں بڑھوانا)واجب ہیں اور واجب کا ترک کرنا حرام ہے.
[صحیح بخاری:جلد سوم:حدیث نمبر ,843 لباس کا بیان : ناخن کٹوانے کا بیان, حدیث مرفوع مکررات 2]

نبي أكرم ﷺ کی احادیث کو سب سے زیادہ سمجھنے والے صحابہؓ تھے, ان مہاجر وانصار (صحابہ) کی اتباع سے خدا کی رضا، جنت اور عظیم کامیابی ملتی ہے[قرآن، سورۃ التوبہ:100]
اور حضرت ابنِ عمرؓ جیسے صحابی کا جب کبھی حج یا عمرہ کے بھرے اجتماع میں مٹھی سے زیادہ داڑھی کو کاٹنا یہ ثابت کرتا ہے کہ سب کو تعلیم دی جاتے کہ لازم(واجب) مقدار ایک مٹھی ہے اور اس سے زیادہ کو کاٹنا جائز ہے.

حافظ ابنِ حجرؒ فرماتے ہیں کہ ظاہر یہ ہے کہ حضرت ابنِ عمرؓ حج وعمرہ کے ساتھ کم کرنے کو خاص نہیں سمجھتے تھے بلکہ وہ اعفاء(یعنی بڑھنے کے لئے چھوڑنا) كا مطلب یہ سمھجتے تھے کہ داڑھی بڑھائی جاتے لیکن اتنی نہیں کہ داڑھی کہ بڑھنے سے آدمی کی صورت بری معلوم ہونے لگے. پھر حافظؒ نے طبریؒ کا کلام نقل کیا جس میں حضرت ابنِ عمرؓ کا(کتاب الآثار: باب الشعر من الوجه في آخر الكتاب قبل سنة أبواب)، حضرت ابوہریرہؓ کا(المصنف لابن أبي شيبه:2/109، حديث#٧ میں) اور حضرت عمرؓ کا فعل مذکور ہے۔[فتح-الباری:10/350]

حافظ ابن عبد البر مالکیؒ  لکھتے ہیں:
حضرت ابنِ عمرؓ کا داڑھی کے اگلے حصہ بال لینا دلیل ہے غیر حج میں بھی بال لینے کی، کیونکہ (یہ کام) باقی زمانہ میں ناجائز ہوتا تو حج میں بھی ناجائز ہوتا. کیونکہ محرمین  (حج/عمرہ کا احرام بھندنے والوں) کو یہ حکم ہے کہ جب وہ احرام کھولنے لگیں تو وہ کام کریں جس سے ان کو منع کیا گیا تھا یعنی حلق یا قصر  پھر حضرت ابنِ عمرؓ نے نبی ﷺ سے داڑھی بڑھنے کی حدیث روایت کی اور وہ اس کی معنیٰ کو زیادہ جانتے ہیں اور حضرت ابنِ عمرؓ  اور جمہور علماءؒ کے نزدیک معنیٰ یہ ہیں کہ جو بال داڑھی کو قبیح اور بھدا کردیں ان کا لینا جائز ہے.
[الاستذکار : 4/317، بیروت]
===============================================
احادیث_رسول ﷺ:

عَنِ الْهَيْثَمِ ، عَنْ رَجُلٍ : أَنَّ أَبَا قُحَافَةَ أَتَى النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، لِحْيَتُهُ قَدِ انْتَشَرَتْ ، قَالَ : فَقَالَ : " لَوْ أَخَذْتُمْ ، وَأَشَارَ بِيَدِهِ إِلَى نَوَاحِي لِحْيَتِهِ " .

ابو حنیفہؒ (اپنے استاد) ہیثمؒ  سے، وہ ایک آدمی(صحابیؓ) سے  روایت کرتے ہیں کہ ابو قحافہؓ نبی  ﷺ کے پاس آۓ تو ان کی داڑھی کے بال بکھرے ہوۓ تھے، آپ نے اس کی داڑھی کے اطراف کی طرف اشارہ کرتے ہوۓ فرمایا:  کاش! .تم کچھ بال لے (کاٹ) لیتے
 م طرف الحديثالصحابياسم الكتابأفقالعزوالمصنفسنة الوفاة
1لو أخذتم وأشار بيده إلى نواحي لحيتهعثمان بن عامرالآثار لأبي يوسف10111038يعقوب بن إبراهيم182
2لو يعني أخذتم وأشار بيده إلى نواحي لحيتهعثمان بن عامرمسند أبي حنيفة لابن يعقوب634---عبد الله بن محمد بن يعقوب بن البخاري340
3لو أخذتم وأشار بيده إلى نواحي لحيتهموضع إرسالمسند أبي حنيفة رواية الحصكفي4277أبو حنيفة150

=================================================
 وَحَدَّثَنِي ، عَنْ مَالِك ، عَنْ زَيْدِ بْنِ أَسْلَمَ ، أَنَّ عَطَاءَ بْنَ يَسَارٍ أَخْبَرَهُ ، قَالَ : كَانَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فِي الْمَسْجِدِ ، فَدَخَلَ رَجُلٌ ثَائِرَ الرَّأْسِ وَاللِّحْيَةِ ، فَأَشَارَ إِلَيْهِ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بِيَدِهِ أَنِ اخْرُجْ كَأَنَّهُ يَعْنِي إِصْلَاحَ شَعَرِ رَأْسِهِ وَلِحْيَتِهِ ، فَفَعَلَ الرَّجُلُ ثُمَّ رَجَعَ ، فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ : " أَلَيْسَ هَذَا خَيْرًا مِنْ أَنْ يَأْتِيَ أَحَدُكُمْ ثَائِرَ الرَّأْسِ كَأَنَّهُ شَيْطَانٌ " .

عطاء بن يسارؒ روایت کرتے ہیں کہ ایک آدمیؓ نبی ﷺ کے پاس پراگندہ سر اور داڑھی کی حالت میں آیا رسول الله ﷺ نے اس کو اشارہ کیا گویا آپ نے اس کو سر اور داڑھی کے بال درست کرنے کا حکم دیا سو وہ بال درست کرا کے واپس آیا تو رسول الله ﷺ نے فرمایا: کیا یہ بہتر نہیں اس سے کہ تم میں سے کوئی پراگندہ بالوں  کے ساتھ ایسے آۓ گویا کہ وہ شیطان ہے.(فقہ السنة للسيد: ١/٣٨)
[الآداب للبيهقي:561، شعب الإيمان للبيهقي:6043]

م طرف الحديثالصحابياسم الكتابأفقالعزوالمصنفسنة الوفاة
1دخل رجل ثائر الرأس واللحية فأشار إليه رسول الله صلى الله عليه وسلم بيده أن اخرج كانه يعني إصلاح شعر رأسه ولحيته ففعل الرجل ثم رجع فقال رسول الله صلى الله عليه وسلم أليس هذا خيرا من أن يأتي أحدكم ثائر الرأس كأنه شيطانموضع إرسالموطأ مالك رواية يحيى الليثي17091770مالك بن أنس179
2دخل رجل ثائر الرأس واللحية فأشار إليه رسول الله صلى الله عليه وسلم كأنه أمره إصلاح شعر رأسه ولحيته ففعل الرجل ثم رجع فقال رسول الله صلى الله عليه وسلم هذا خيرا من أن يأتي أحدكم ثائر الرأس كأنه شيطانموضع إرسالموطأ مالك برواية أبي مصعب الزهري10971995مالك بن أنس179
3دخل رجل ثائر الرأس واللحية فأشار إليه رسول الله صلى الله عليه وسلم أن اخرج فأصلح رأسك ولحيتك ففعل ثم رجع فقال رسول الله صلى الله عليه وسلم أليس هذا خيرا من أن يأتي أحدكم ثائر الرأس كأنه شيطانموضع إرسالالآداب للبيهقي554835البيهقي458
4دخل رجل ثائر الرأس واللحية فأشار إليه رسول الله صلى الله عليه وسلم أن اخرج فأصلح رأسك ولحيتك ففعل ثم رجع فقال رسول الله صلى الله عليه وسلم أليس هذا خيرا من أن يلقى أحدكم ثائر الرأس كأنه شيطانموضع إرسالشعب الإيمان للبيهقي5962---البيهقي458

=================================================
 حَدَّثَنَا هَنَّادٌ ، حَدَّثَنَا عُمَرُ بْنُ هَارُونَ ، عَنْ أُسَامَةَ بْنِ زَيْدٍ ، عَنْ عَمْرِو بْنِ شُعَيْبٍ ، عَنْ أَبِيهِ ، عَنْ جَدِّهِ ، " أَنَّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ كَانَ يَأْخُذُ مِنْ لِحْيَتِهِ مِنْ عَرْضِهَا وَطُولِهَا ".[جامع الترمذي » كِتَاب الْأَدَبِ » بَاب مَا جَاءَ فِي إِعْفَاءِ اللِّحْيَةِ ... رقم الحديث: 2706]
رسول اللہ ﷺ اپنی داڑھی مبارک لمبائی اور چوڑائی دونوں جانب سے(پکڑ کر مشت سے زیادہ) تراشا کرتے تھے۔
[ترمذی:2762،بغوی:12/108،الاستذكار:8/429، فتح الباري شرح صحيح البخاري:10/350،نشرح الزرقاني على موطأ الإمام مالك:4/530]




حَدَّثَنَا عَمْرُو بْنُ عُثْمَانَ ، حَدَّثَنَا مَرْوَانُ يَعْنِي ابْنَ مُعَاوِيَةَ ، عَنْ عُثْمَانَ بْنِ الأَسْوَدِ ، سَمِعَ مُجَاهِدًا ، يَقُولُ : رَأَى النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ رَجُلا طَوِيلَ اللِّحْيَةِ ، فَقَالَ : " لِمَ يُشَوِّهُ أَحَدُكُمْ نَفْسَهُ ؟ " .
مجاہدؒ سے روایت ہے کہ  نبی ﷺ نے ایک لمبی داڑھی والے آدمی کو دیکھ کر فرمایا کہ تم میں سے ایک اپنے آپ کو کیوں قبیح (بدنما) بنا دیتا ہے.
[مراسيل أبي داود:448، المعجم الأوسط للطبراني:8290، المعجم الصغير للطبراني:1079]

 م طرف الحديثالصحابياسم الكتابأفقالعزوالمصنفسنة الوفاة
1دخل رجل ثائر الرأس واللحية فأشار إليه رسول الله صلى الله عليه وسلم بيده أن اخرج كانه يعني إصلاح شعر رأسه ولحيته ففعل الرجل ثم رجع فقال رسول الله صلى الله عليه وسلم أليس هذا خيرا من أن يأتي أحدكم ثائر الرأس كأنه شيطانموضع إرسالموطأ مالك رواية يحيى الليثي17091770مالك بن أنس179
2دخل رجل ثائر الرأس واللحية فأشار إليه رسول الله صلى الله عليه وسلم كأنه أمره إصلاح شعر رأسه ولحيته ففعل الرجل ثم رجع فقال رسول الله صلى الله عليه وسلم هذا خيرا من أن يأتي أحدكم ثائر الرأس كأنه شيطانموضع إرسالموطأ مالك برواية أبي مصعب الزهري10971995مالك بن أنس179
3أبصر رجلا ثائر الرأس فقال لم يشوه أحدكم نفسه وأشار بيده أي خذ منهجابر بن عبد اللهالمعجم الأوسط للطبراني85108290سليمان بن أحمد الطبراني360
4أبصر رجلا ثائر الرأس فقال لم يشوه أحدكم نفسه وأشار بيده أي يأخذ منهجابر بن عبد اللهالمعجم الصغير للطبراني1076111سليمان بن أحمد الطبراني360
5دخل رجل ثائر الرأس واللحية فأشار إليه رسول الله صلى الله عليه وسلم أن اخرج فأصلح رأسك ولحيتك ففعل ثم رجع فقال رسول الله صلى الله عليه وسلم أليس هذا خيرا من أن يأتي أحدكم ثائر الرأس كأنه شيطانموضع إرسالالآداب للبيهقي554835البيهقي458
6دخل رجل ثائر الرأس واللحية فأشار إليه رسول الله صلى الله عليه وسلم أن اخرج فأصلح رأسك ولحيتك ففعل ثم رجع فقال رسول الله صلى الله عليه وسلم أليس هذا خيرا من أن يلقى أحدكم ثائر الرأس كأنه شيطانموضع إرسالشعب الإيمان للبيهقي5962---البيهقي458
7نظر إلى رجل مجفل الشعر فقال ما بال أحدكم يشوه نفسهجابر بن عبد اللهالجامع لأخلاق الراوي وآداب السامع للخطيب880874الخطيب البغدادي463
=======================
شیخ محقق شاہ عبد الحق محدث دھلوی (۱۰۵۲ھ) لکھتے ہیں:
گذاشتن آں بقدر قبضہ واجب است و آنکہ آنرا سنت گیند بمعنی طریقہ مسلو ک دین است یا بجہت آنکہ ثبوت آں بسنت است ، چنانکہ نماز عید را سنت گفتہ اند (اشعۃ اللمعات،کتاب الطہارۃ ، باب السواک ،۱/۲۱۲،فتاوی رضویہ،۲۲/۵۸۱،مطبوعہ جدید)
’’داڑھی بمقدار ایک مشت رکھنا واجب ہے اور جو اسے سنت قرار دیتے ہیں وہ اس معنی میں ہے کہ یہ دین میں آنحضرت ﷺ کا جاری کردہ طریقہ ہے یا اس وجہ سے کہ اس کا ثبوت سنتِ نبوی سے ہے جیسا کہ نماز عید کو سنت کہا جاتا ہے ‘‘۔


=======================
”عن رویفع بن ثابت قال: قَالَ لِي رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ : " يَا رُوَيْفِعُ ، لَعَلَّ الْحَيَاةَ سَتَطُولُ بِكَ بَعْدِي ، فَأَخْبِرِ النَّاسَ أَنَّهُ مَنْ عَقَدَ لِحْيَتَهُ أَوْ تَقَلَّدَ وَتَرًا أَوِ اسْتَنْجَى بِرَجِعِ دَابَّةٍ أَوْ عَظْمٍ ، فَإِنَّ مُحَمَّدًا صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ مِنْهُ بَرِيءٌ "۔
[سنن ابی داود» كِتَاب الطَّهَارَةِ » ؛ بَاب مَا يُنْهَى عَنْهُ أَنْ يُسْتَنْجَى بِهِرقم الحديث: 33(٣٦)]
ترجمہ:․․․”حضرت رویفع بن ثابت  سے مروی ہے کہ حضور علیہ السلام نے مجھے فرمایا کہ: میرے بعد قریب ہے کہ تیری زندگی دراز ہو‘ لوگوں کو خبر دینا کہ جو شخص اپنی داڑھی میں گرہ لگائے یا داڑھی چڑھائے یا تانت کا قلادہ ڈالے یا گوبر اور ہڈی سے استنجاء کرے تو محمد ا اس سے بری ہیں“۔

حضرت مولانا عبد الرحیم لاجپوری صاحب اس حدیث کے تحت لکھتے ہیں کہ: 
”جب داڑھی لٹکانے کے بجائے چڑھانے پر یہ وعید ہے تو منڈانے اور شرعی مقدار (قبضہ) سے کم کرنے پر کیا وعید ہوگی“۔(فتاویٰ رحیمیہ ج:۱۰‘ ص:۱۰۷)
الاختیار شرح المختار میں ہے:
”اعفاء اللحی قال: محمد  : عن ابی حنفیة ترکہا حتی تکث وتکثر والتقصیر فیہا سنة‘ وہو ان یقبض رجل لحیتہ فما زاد علی قبضہ قطعہ‘ لان اللحیة زینة وکثرتہا من کمال الزینة وطولہا الفاحش خلاف السنة“۔
ترجمہ:․․․”اعفاء اللحی یعنی داڑھی بڑھانا امام محمد  کی روایت ہے کہ امام ابوحنیفہ نے فرمایا داڑھی کو چھوڑے رکھنا چاہئے‘ یہاں تک کہ گھنی ہوجائے اور بڑھ جائے اور داڑھی میں قصر سنت ہے اور قصر یہ ہے کہ داڑھی کو مٹھی سے پکڑے جو مٹھی سے بڑھ جائے اس کو کاٹ دیں۔ داڑھی سنت ہے اور اس کا بھر پور ہونا (گھنی ہونا) کمال زینت ہے اور داڑھی کی غیر معمولی درازی خلاف سنت ہے“۔ (الاختیار شرح المختار ج:۴‘ ص:۲۳۵)

بہرحال یہ بات روز روشن کی طرح ظاہر ہے کہ داڑھی ایک مشت رکھنا ہی واجب ہے اورداڑھی منڈانا یا ایک مٹھی سے پہلے کتروانا حرام ہے اور اس پر ائمہ اربعہ کا اتفاق ہے۔ جیساکہ حضرت امام اعظم امام ابوحنیفہ کی کتاب الآثار میں ہے:
”محمد قال اخبرنا ابوحنیفة رحمہ اللہ عن الہیثم عن ابن عمر  انہ کان یقبض علی اللحیة ثم یقص ما تحت القبضة قال محمد: وبہ ناخذ وہو قول ابی حنیفة رحمہ اللہ“۔
ترجمہ:․․․”امام محمد امام اعظم ابوحنیفہ سے وہ حضرت ہیثم  سے روایت کرتے ہیں کہ حضرت عبد اللہ بن عمر  داڑھی کو مٹھی میں پکڑ کرمٹھی سے زائد حصہ کو کاٹ دیا کرتے تھے‘ امام محمد فرماتے ہیں کہ: ہمارا عمل اسی حدیث پر ہے اور حضرت امام اعظم نے بھی یہی فرمایا ہے“۔
فقہ مالکی کے مشہور فقیہہ علامہ محمد بن محمد غیثنی مالکی ”المنح الوفیہ شرح مقدمہ العزیة“ میں فرماتے ہیں:
”ان ترک الاخذ من اللحیة من الفطرة‘ وامر فی الارسال بان تعفی ای تترک ولاحرج علی من طالت لحیتہ بان یأخذ منہا اذا زادت علی القبضة“۔
ترجمہ:․․․”داڑھی رکھنا فطرت میں سے ہے اور چھوڑنے کا حکم دیا گیا ہے کہ بڑھائی جائے‘ لیکن جس شخص کی داڑھی ایک قبضہ سے لمبی ہوجائے تو ایسے شخص کو قبضہ سے زائد حصہ کو کتروا ڈالنے میں کوئی حرج نہیں“۔
مشہور شافعی فقیہ اور محدث امام نووی ”حدیث خصال فطرت“ کی شرح میں تحریر فرماتے ہیں:
”المختار ترکہا علی حالہا وان لایتعرض لہا بتقصیر ولاغیرہ“
ترجمہ:․․․”مذہب مختاریہ ہے کہ داڑھی کو بالکل چھوڑدیا جائے اور اس کے ساتھ کترنے اور منڈوانے کا تعرض بالکل نہ کیا جائے“۔
فقہ حنبلی کی مشہور کتاب ”کشاف القناع شرح متن الاقناع“ ج:۱‘ ص:۶۰ میں ہے:
”واعفاء اللحیة ) بان لایاخذ منہا شیأ مالم یستہجن طولہا ویحرم حلقہا ولایکرہ اخذ ما زاد علی القبضة“
”اور حضور اکی سنت داڑھی کو چھوڑدیناہے اس طرح کہ اس میں سے کچھ بھی نہ تراشے جب تک کہ وہ لمبی ہوکر بڑی نہ لگنے لگے اور اس کا منڈانا تو بالکل حرام ہے‘ البتہ قبضہ سے زیادہ حصہ کا تراشنا مکروہ نہیں“۔


امام نووی رحمہ اللہ لکھتے ہیں:
”وکان من عادة الفرس: قص اللحیة، فنھی الشرع عن ذلک“․(شرح مسلم،ص:129)
ترجمہ: … ”فارسیوں (مجوسیوں) کی عادت تھی کہ وہ داڑھی کے بال کاٹ کر کم کر دیا کرتے تھے، لہٰذا شریعت نے اس سے منع کیا“۔ 

ان میں کچھ لوگ اپنی داڑھیاں منڈوانے بھی لگے تھے، جیسا کہ علامہ عینی رحمہ اللہ نے لکھا ہے: ”لأنھم کانوا یقصرون لحاھم، ومنھم من کان یحلقھا“․
ترجمہ:”اس لیے وہ لوگ اپنی داڑھیاں چھوٹی کراتے تھے اور ان میں کچھ لوگ مونڈ ڈالتے تھے“۔

اس تفصیل سے معلوم ہوا کہ اس حدیث نے اعفائے لحیہ کے حکم کی علت کے ساتھ یہ واضح اشارہ بھی دیا ہے کہ داڑھی کی مقدار کتنی چھوٹی ہونی چاہیے اور اعفائے لحیہ کے حکم کا منشا کب پورا ہو گا؟ مجوسی جب اپنی داڑھیاں چھوٹی کراتے تھے اور مسلمانوں کو ان کی مخالفت کا حکم دیا گیا تو اتنی بات تو معلوم ہو گئی کہ ان کی داڑھیاں مجوسیوں کی داڑھیوں سے لمبی ہونی چاہییں، لیکن بات پھر بھی مجمل ہے، اس اجمال کی تبیین نبی صلی الله علیہ وسلم اور صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کے عمل سے ہوئی ۔(اختلاف امت اور صراط مستقیم، ضمیمہ:3، داڑھی کی مقدار کا مسئلہ:1/238تا 240، مکتبہ لدھیانوی، کراچی)

داڑھی منڈوانے میں یہود ونصاریٰ کی مشابہت ہے
حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ رسول اللہ صلی الله علیہ وسلم کا یہ ارشاد نقل کرتے ہیں کہ داڑھی بڑھاوٴ اور مونچھیں کٹواوٴ اوراپنے سفید بالوں کو (سیاہ رنگ کے سوا)کسی رنگ سے رنگ لو، اس میں یہود ونصاریٰ کی مشابہت اختیار نہ کرو۔

عن أبي ھریرة رضي اللہ عنہ قال: ”أعفوا اللِحیٰ، وخذوا الشوارب، وغیِّروا شَیْْبَکم، ولا تشبَّھوا بالیھود والنصاریٰ“․ (مسند الإمام أحمد بن حنبل، مسند أبي ھریرة، 8672، 14/ 306، موٴسسة الرسالة)

داڑھی منڈوانے میں عورتوں کے ساتھ مشابہت
علامہ قرطبی رحمہ اللہ فرماتے ہیں کہ :”أکرم الرجال باللحیٰ، والنساء بالذوائب“․کہ مردوں کو داڑھیوں کے ذریعے شرف بخشا گیا اور عورتوں کو مینڈھیوں کے ذریعے سے۔ (الجامع لأحکام القرآن، سورة الإسراء، رقم الآیة:70، 13/126، موٴسسة الرسالة )

اللہ کی جانب سے ہی عورتوں کی داڑھی نہیں ہوتی اور مردوں کی ہوتی ہے، اسی طرح اللہ کی جانب سے ہی عورتوں کو مینڈھیاں عطا کی گئیں اور مردوں کو یہ چیز عطا نہیں کی گئی۔داڑھی کو اللہ تعالیٰ نے مردوں اور عورتوں کے درمیان امتیازی شرف کی چیز بنایا ہے۔ 

عورتوں کی مشابہت اختیار کرنے والے پر اللہ کی لعنت ہوتی ہے
چناں چہ ! اللہ رب العزت کی طرف سے ملنے والی صورت کو ہی برقرار رکھنا ضروری ہے، شکل وصورت میں ایک دوسرے کی مشابہت اختیار کرنا شرعاً ممنوع ہے،یعنی: اگر مرد اپنی داڑھی منڈواتے ہیں تو یہ عورتوں کے ساتھ مشابہت اختیار کرنا ہے ۔ ایسے افراد پر نبی اکرم صلی الله علیہ وسلم کی زبان سے لعنت کی گئی ہے، ملاحظہ ہو: 

عن ابن عباس رضي اللہ عنھما قال: ”لعن رسول اللہ صلی الله علیہ وسلم المتشبھین من الرجال بالنساء، والمتشبھات من النساء بالرجال“․ (صحیح البخاري، کتاب الباس، باب المتشبہون بالنساء والمتشبہات بالرجال، رقم الحدیث:5885، 7/159، دار طوق النجاة)

عورتوں کی مشابہت اختیار کرنے والا نبی ﷺ کے طریقے پر نہیں
مردوں میں سے جو شخص عورتوں کی مشابہت اختیار کرنے والا ہے ، یا عورتوں میں سے جو عورت مردوں کی مشابہت اختیار کرنے والی ہے، اس کے بارے میں حدیثِ مبارکہ میں بہت سخت وعید وارد ہوئی ہے، نبی اکرم صلی الله علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا کہ ”وہ ہم میں سے نہیں“۔ غور کر لیا جائے کہ جب وہ نبی اکرم صلی الله علیہ وسلم کی ملت میں سے نہیں یا نبی اکرم صلی الله علیہ وسلم کے طریقے پر نہیں ، تو وہ کن میں سے ہو گا؟؟!! ملاحظہ ہو:

عن عطاء، عن رجل من ھذیل، قال: رأیت عبد اللہ بن عمرو بن العاص، ومنزلہ في الحِلِّ، ومسجدہ في الحَرَم، قال: فبینا أنا عندہ، رأیٰ أُمَّ سعید ابنة أبي جھل متقلدة قوساً، وھي تمشي مِشیَةَ الرجل، فقال عبداللہ: من ھٰذہ؟ قال الھُذَلي: فقلت: ھٰذہ أم سعید بنت أبي جھل، فقال: سمعت رسول اللہ صلی الله علیہ وسلم یقول: ”لیس منَّا مَن تشبَّہ بالرجال مِن النساء، ولا مَن تشبَّہ بالنساء مِن الرجال“․(مسندُ الإمام أحمد بن حنبل، مسند عبد اللہ بن عمرو بن العاص رضي اللہ عنہ، رقم الحدیث:6575، 11/461، 462، موٴسسة الرسالة)

داڑھی منڈوانے میں ہیجڑوں کے ساتھ مشابہت 
علامہ ابن عابدین رحمہ اللہ کی عبارت سے یہ بات معلوم ہوتا ہے کہ داڑھی منڈوانا مخنثین (ہیجڑوں )کا فعل ہے، ملاحظہ ہو:
”قال العلائي في کتاب الصوم قبیل فصل العوارض:”إن الأخذ من اللحیة وھي دون القبضة کما یفعلہ بعضُ المغارِبة ومُخَنَّثةِ الرجالِ، لَم یُبِحْہ أحدٌ، وأَخْذُ کلِّہا فعلُ یھودَ والہُنودِ ومَجوسِ الأعاجِم․اھ“،…إلخ“․(تنقیح الفتاویٰ الحامدیة، کتاب الشھادة: 4/238، مکتبة رشیدیة، کوئٹة) 

علامہ شامی رحمہ اللہ فرماتے ہیں: ”بے شک ایک مشت سے کم داڑھی کروانے کو، جیسا کہ بعض مغربی اور مخنث لوگ کرتے ہیں ، کسی نے بھی جائز قرار نہیں دیا اور ساری داڑھی کو مونڈ لینا یہودیوں ، ہند کے رہنے والوں اور عجم کے رہنے والے مجوسیوں کا فعل ہے“۔ 

اور ایسے افراد پر جو مخنثوں کی مشابہت اختیار کرتے ہیں ، نبی اکرم صلی الله علیہ وسلم نے لعنت فرمائی ہے، ملاحظہ ہو:
عن ابن عباس رضي اللہ عنھما لعن النبيصلی الله علیہ وسلم المخنثین من الرجال، والمترجلات من النساء، وقال: أخرجوھم من بیوتکم“․ (صحیح البخاري، کتاب الباس، باب إخراج المتشبہین بالنساء من البیوت، رقم الحدیث:5886، 7/159، دار طوق النجاة)

ایک اور روایت میں ہے:
عن ابن عباس رضي اللہ عنھما، قال: لعن رسول اللہ صلی الله علیہ وسلم المخنثین من الرجال، والمترجلات من النساء، قال: فقلت: ما المترجلات من النساء؟ قال: ”المتشبھات من النساء بالرجال“․ (مسندُ الإمام أحمد بن حنبل، مسند عبد اللہ بن عباس رضي اللہ عنھما، رقم الحدیث: 2291، 4/ 431، موٴسسة الرسالة) 

حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہما سے روایت ہے کہ نبی اکرم صلی الله علیہ وسلم نے لعنت فرمائی ہے مخنث (ہیجڑہ)بننے والے مردوں پر اور مرد بننے والی عورتوں پر ۔راوی کہتے ہیں کہ میں نے دریافت کیا کہ مرد بننے والی عورتیں کون ہیں؟ آپ صلی الله علیہ وسلم نے جواب میں ارشاد فرمایا: وہ عورتیں جو مردوں کی مشابہت اختیار کرتی ہیں۔

اب احناف میں سے اکابر علمائے دیوبند رحمہم اللہ کے کچھ فتاویٰ بھی ملاحظہ فرما لیں:
کفایت المفتی میں ہے:
”داڑھی کٹوانا یا منڈوانا حرام ہے، کتروانے سے یہ مراد ہے کہ اتنی کتروائے کہ ایک مشت سے کم رہ جائے، ایک مشت کی مقدار حدیث سے ثابت ہے“۔ (کفایت المفتی، کتاب الحظروالا باحة، داڑھی منڈانا اور یکمشت سے کم کرنا گناہ ہے: 9/ 175، دار الاشاعت)

”فقہائے کرام نے ایک مشت داڑھی رکھنے کو واجب قرار دیا ہے اور اس سے کم رکھنے والے کو تارک الواجب ہونے کی بنا پر فاسق کہا ہے“۔ (کفایت المفتی، کتاب الحظر والاباحہ، یکمشت داڑھی رکھنا واجب ہے: 9/176، دار الاشاعت،کراچی)

امداد الفتاویٰ میں ہے:
” داڑھی رکھنا واجب اور قبضہ سے زائد کٹانا حرام ہے۔“ (امداد الفتاویٰ، بالوں کے حلق وقصر وخضاب اور ختنہ وغیرہ کے احکام، داڑھی کا حکم اور مقدار: 4/223، مکتبہ دارالعلوم کراچی)

حضرت مولانا محمد یوسف لدھیانوی شہید رحمہ اللہ حضرت مولانا اشرف علی تھانوی صاحب رحمہ اللہ کے اس فتوے میں مذکور ” قبضہ سے زائد کٹانا حرام ہے“ کی یہ تشریح کرتے ہیں: 
” یہاں قبضے سے زائد کٹانے سے مراد یہ ہے کہ جس کی داڑھی قبضے سے زائد ہو اس کو قبضے سے زائد حصے کا کٹانا تو جائز ہے اور (کاٹتے کاٹتے)اتنا کاٹنا کہ جس کی وجہ سے داڑھی قبضے سے کم رہ جائے، یہ حرام ہے“۔ (داڑھی کی شرعی حیثیت، ص:35، مکتبہ رشیدیہ، کراچی)

جواہر الفقہ میں ہے:
”باجماع امت داڑھی منڈانا حرام ہے، اسی طرح ایک قبضہ (مٹھی) سے کم ہونے کی صورت میں کتروانا بھی حرام ہے، ائمہ اربعہ حنفیہ، مالکیہ، شافعیہ، حنابلہ کا اس پر اتفاق ہے“۔ (جواہر الفقہ، احکام الخطاب في بعض أحکام اللحیٰ والخضاب، 7/159،160، مکتبہ دارالعلوم، کراچی)

فتاویٰ رحیمیہ میں ہے:
”مردوں کے لیے داڑھی رکھنا واجب ہے اور اس کی مقدار شرعی ایک قبضہ یعنی ایک مشت ہے…لہٰذا داڑھی رکھنا واجب اور ضروری ہے، منڈانا حرام اور گناہ ِ کبیرہ ہے“۔ (فتاویٰ رحیمیہ، کتاب الحظر والاباحہ، داڑھی کا وجوب اور ملازمت کی وجہ سے اس کا منڈانا: 10/106، دار الاشاعت، کراچی)

فتاویٰ محمودیہ میں ہے:
”داڑھی رکھنا واجب ہے اور اس کا منڈانا حرام ہے، ایک مشت تک پہنچنے سے پہلے پہلے کٹوانا بالاتفاق ناجائز ہے“۔ (فتاویٰ محمودیہ، باب خصال الفطرة ، الفصل الأول فی اللحیہ والشوارب: 19/ 392، ادارہ الفاروق کراچی)

احسن الفتاویٰ میں ہے:
”داڑھی قبضہ سے کم کرنا حرام ہے، بلکہ یہ دوسرے کبیرہ گناہوں سے بھی بد تر ہے، اس لیے کہ اس کے اعلانیہ ہونے کی وجہ سے اس میں دینِ اسلام کی کھلی توہین ہے اور اللہ ورسول اللہ صلی الله علیہ وسلم سے بغاوت کا اظہار واعلان ہے، اسی لیے فقہاء رحمہم اللہ تعالیٰ نے فیصلہ تحریر فرمایا ہے کہ جو شخص رمضان میں اعلانیہ کھائے پیے، وہ واجب القتل ہے، کیوں کہ وہ کھلے طور پر شریعت کی مخالفت کر رہا ہے، حضور اکرم صلی الله علیہ وسلم کا ارشاد ہے: ”کل أمتي معافی إلا المجاھرین“․ میری پوری امت لائق ِ عفو ہے، مگر اعلانیہ گناہ کرنے والے معافی کے لائق نہیں۔

دوسرا فرق یہ ہے کہ دوسرے گناہ کسی خاص وقت میں ہوتے ہیں، مگر داڑھی کٹانے کا گناہ ہر وقت ساتھ لگا ہوا ہے، سو رہا ہو تو بھی گناہ ساتھ ہے، حتیٰ کہ نماز وغیرہ عبادت میں مشغول ہونے کی حالت میں بھی اس گناہ میں مبتلیٰ ہے، قومِ لوط کے اسباب ِ عذاب میں داڑھی کٹانا بھی ہے، غرضیکہ داڑھی کٹانے یا منڈانے والا فاسق ہے…إلخ“۔ (احسن الفتاویٰ، کتاب الصلاة، باب الامامة والجماعة، داڑھی کٹانے والے کی امامت: 3/260، ایچ ایم سعید) 

”ایک مشت داڑھی رکھنا فرض ہے، اس سے کم کرنا منڈانا بالاجماع حرام ہے اور اس کی علامت ہے کہ ایسے شخص کے دل میں رسول اللہ صلی الله علیہ وسلم کی صورتِ مبارکہ سے نفرت ہے“۔ (تتمہ احسن الفتاویٰ، کتاب الایمان والعقائد، داڑھی کی توہین موجبِ کفر ہے، سوال مثلِ بالا:10/19، مکتبہ الحجاز، کراچی)

فتاویٰ مفتی محمود میں ہے:
”داڑھی رکھنا شرعاً واجب ہے، نہ رکھنے والا فاسق مردود الشہادة ہے“۔( فتاویٰ مفتی محمود، باب الامامة، داڑھی کی شرعی حیثیت: 2/175، جمعیة پبلیکیشنز)

” درمختار میں ہے کہ چار انگشت سے کم داڑھی کا قطع کرنا حرام ہے:”وأما الأخذ منھا وھي دون ذٰلک، فلم یبحہ أحد“․ اور نیز درمختار میں ہے:”والسنة فیھا القبضة…إلخ، وکذا قال یحرم علیٰ الرجل قطع لحیتہ“․لہٰذا جو شخص داڑھی منڈوائے یا ایک مشت سے کم کتروائے وہ فاسق ہے…إلخ۔ ( فتاویٰ مفتی محمود، باب الامامة، داڑھی کترانے والے کی امامت میں ادا کی گئی نمازوں کا حکم:2/184، جمعیة پبلیکیشنز)

ایک مشت داڑھی سے زائد بڑھانے کے بارے میں ایک غلو والا نظریہٴ
مذکورہ بحث سے یہ بات بھی واضح ہوجاتی ہے کہ کچھ علماء (جن میں جماعت اہل حدیث کے ساتھ تعلق رکھنے والے حضرات بھی شامل ہیں)اس معاملے میں غلو کا شکا ر ہیں، ان کے نزدیک داڑھی کو بڑھانا ہی بڑھانا ہے، کٹوانا جائز نہیں ہے، چاہے ایک مشت کے بعد ہو یا پہلے۔

ان حضرات کی اتنی بات تو درست ہے کہ ایک مشت سے پہلے کٹوانا جائز نہیں ہے، لیکن ایک مشت کے بعد بھی نہ کٹوانا، یہ تسلیم نہیں ہے، یہ غلو ہے، اس لیے کہ صحیح روایات کے مطابق حضرات صحابہ کرام رضوان اللہ علیہم اجمعین سے ایک مشت کے بعد داڑھی کٹوانا ثابت ہے اور اسی پر قرنِ اول سے لے کر اب تک امت کا عمل چلا آرہا ہے، عمل کی حد تک ایسا ہو (یعنی داڑھی ایک مشت کے بعد نہ کٹوائی جائے)تو کوئی حرج نہیں ، اہل سنت والجماعت کے نزدیک بھی ایک مشت کے بعد داڑھی کٹوانا واجب نہیں ہے، جائز ہے۔ لیکن نظریةً اس بات (کہ ایک مشت کے بعد داڑھی کٹوانا جائز نہیں ہے)کا کوئی ثبوت نہیں ہے ۔

اس بارے میں سب سے پہلے اہل سنت والجماعت کے ائمہ اربعہ کا مذہب لکھا جائے گا ، پھر اہل حدیث علماء کے اقوال :
ایک مشت سے زائد کٹوانے میں اہل سنت والجماعت کا مذہب
اس بارے میں نہایت جامع خلاصہ”الموسوعة الفقہیة الکویتیة“سے نقل کیا جاتا ہے:
”بعض فقہاء ،جن میں امام نووی رحمہ اللہ بھی شامل ہیں ، اس بات کی طرف گئے ہیں کہ داڑھی کے درپے نہ ہوا جائے، نہ اس کی لمبائی کی طرف سے کچھ کاٹا جائے گا اور اس کی چوڑائی کی طرف سے کچھ کاٹا جائے گا، اس لیے کہ اس بارے میں جو حدیث ہے اس کا ظاہر یہی تقاضا کرتا ہے۔امام نووی رحمہ اللہ فرماتے ہیں: ”داڑھی کٹوانے کے بارے میں مختار مذہب داڑھی کو اپنی حالت پر چھوڑ دینا ہے، اس طور پر کہ کاٹنے کے ساتھ یا اس کے علاوہ کسی اور طریقے کے ساتھ داڑھی کے درپے نہ ہوا جائے“۔

اور دوسرے فقہاء، جن میں حنفیہ اور حنابلہ ہیں، اس بات کی طرف گئے ہیں کہ جب داڑھی ایک مشت سے زائد ہو جائے تو اس کا کاٹنا جائز ہے، بوجہ اس کے حضرت عبد اللہ بن عمر رضی اللہ عنہما سے یہ بات ثابت ہے کہ جب حج یا عمرے کے موقع پر جب سر منڈواتے تھے تو ساتھ ہی داڑھی کے زائد بال اور مونچھیں بھی کتروا لیتے تھے۔ اور ایک دوسری روایت میں ہے کہ حضرت عبد اللہ بن عمر رضی اللہ عنہما جب حج یا عمرہ کرتے تھے تو اپنی داڑھی کو اپنی مٹھی میں پکڑتے تھے اور مٹھی سے زائد بالوں کو کاٹ دیتے تھے۔

حافظ ابن حجر رحمہ اللہ فرماتے ہیں کہ ظاہر یہ ہے کہ:”حضرت عبد اللہ بن عمر رضی اللہ عنہما ایسا صرف حج کے موقع پر ہی نہیں کرتے تھے، بلکہ حدیث کے حکم ”إعفاء اللحیہ“ کو اس حالت کے علاوہ پر محمول کرتے تھے ، جس میں داڑھی اپنے طول وعرض میں بہت زیادہ بڑھنے کے ساتھ چہرہ کو بدنما بنا دیتی ہے“۔ یعنی حج کے علاوہ بھی اپنی داڑھی کوایک مشت کے بعد کاٹ دیتے تھے۔

احناف کا مذہب اس بارے میں یہ ہے کہ ایک مشت کے بعد داڑھی کوکاٹ دینا مسنون ہے، جیسا کہ فتاویٰ ہندیہ میں مذکور ہے کہ:” داڑھی کو کاٹنا سنت ہے، وہ اس طرح کہ مرد اپنی داڑھی کو اپنی مٹھی میں لے ، پھر اگر کچھ بال داڑھی سے زائدہوں تو ان کو کاٹ دے، امام محمد رحمہ اللہ نے امام اعظم ابو حنیفہ رحمہ االلہ سے اسی طرح نقل کیا ہے اور ہم اسی قول کو لیتے ہیں“۔

حنفیہ کا ایک قول وجوب کا بھی ہے (لیکن یہ صرف قول ہی ہے، فتویٰ اس پر نہیں ہے)اور وہ قول امام حصفکی رحمہ اللہ کے قول :” الإثم بترکہ“․ سے مستفاد ہوتا ہے کہ ایک مشت سے زائد بالوں کو کاٹ دینا واجب ہے۔

حنابلہ کا قول ہے کہ ایک مشت سے زائد داڑھی کے بالوں کو کاٹنا مکروہ نہیں ہے، فقہاء نے امام احمد بن حنبل رحمہ اللہ سے نقل کیا ہے کہ انہوں نے اپنی داڑھی کے بڑھے ہوئے بالوں کا کاٹا۔

فقہاء کی ایک جماعت اس بات کی طرف گئی ہے کہ داڑھی کے بالوں کو بالکل نہیں کاٹا جائے گا، إلا یہ کہ جب داڑھی کے بڑھے ہوئے بال چہرے کو بدنما بنا دیں۔امام طبری رحمہ الله نے حضرت حسن بصری اور حضرت عطاء بن رباح رحمہما اللہ کا یہی مذہب نقل کیا ہے، حافظ ابن حجر رحمہ اللہ نے اسی قول کو اختیار کیا ہے اور حضرت عبد اللہ بن عمر رضی اللہ عنہما کے فعل کو اسی پر محمول کیا ہے اور فرمایا ہے : اگر کوئی شخص اپنی داڑھی کو چھوڑ دے، اس کی اصلاح بالکل نہ کرے، یہاں تک کہ اس کی داڑھی لمبائی اور چوڑائی میں بہت ہی زیادہ بڑھ جائے (کہ چہرے کو بدنما لگنے لگے)تو وہ اپنے آپ کو مسخرہ کرنے والوں کے سپرد کر دے۔

قاضی عیاض رحمہ اللہ نے فرمایا: داڑھی بہت زیادہ بڑھ جائے تو کچھ کاٹ دینا اچھا ہے اور اس کو بڑھانے میں بہت زیادہ مبالغہ کرنا مکروہ ہے، جیسا کہ ایک مشت سے کم کر دینا مکروہ ہے۔اور اس جماعت کے مذکورہ قول کی دلیل وہ حدیث (ضعیف)ہے جس میں ہے کہ نبی اکرم صلی الله علیہ وسلم اپنی داڑھی کی لمبائی اور چوڑائی میں سے (ایک مشت سے زائد بڑھ جانے کی صورت میں )کاٹ دیا کرتے تھے۔(الموسوعة الفقہیة الکویتیة، حرف اللام، اللحیة، أخذ اللحیة، 35/224، 225، وزارة الأوقاف والشئون الإسلامیة، الکویت)

یہ (اہل حدیث )حضرات ویسے تو اس بات کا دعویٰ کرتے ہیں کہ وہ کسی کی تقلید نہیں کرتے، لیکن عملی طور پر حقیقت بالکل اس کے برعکس ہے، اپنے مطلب کا قول جہاں اور جس سے مل جائے ، یہ حضرات اسی کی تقلید کرتے ہیں ، لیکن ظاہر اپنے آپ کو یہی کرتے ہیں کہ ہم تقلید نہیں کر رہے، بلکہ اپنی خداداد اجتہادانہ صلاحیت کو بروئے کار لاتے ہوئے عمل کر رہے ہیں۔ اور عام طور پر موجودہ دور کے یہ حضرات اصحاب ِ ظواہر، علامہ ابن تیمیہ ، علامہ شوکانی اور شیخ محمد ناصر الدین البانی رحمہم اللہ کے اقوال کو بہت زیادہ اعتماد کے ساتھ لیتے ہیں، ذیل میں علامہ شیخ محمد ناصر الدین البانی رحمہ اللہ کا اس سلسلہ میں موٴقف ذکر کیا جاتا ہے، جو خود ان کے قلم سے مولانا حفظ الرحمن اعظمی ندوی رحمہ اللہ کے نام لکھا گیا:

”وإنما أذھب إلی ما اشرتم إلیہ من الأخذ ما زاد علی القبضة، وذالک لأمرین: 
(۱)تتابع الأخبار عن السلف صحابة وتابعین وائمة مجتھدین، وبخاصة إمام السنة أحمد علی الأخذ، وفي الصحابة ابن عمر وأبوھریرة، وھما من رواة الأمر بإعفاء اللحیة، فلو کان الحدیث علیٰ إطلاقہ ما خالفوا إطلاقہ، کما یزعم بعض المتأخرین․ 
(۲) عدم ورود ما ینافيذالک عن النبي صلی الله علیہ وسلم وأصحابہ فعلاً وقولاً․ وما یقول بعضھم أن النبي صلی الله علیہ وسلم کان لا یأخذ من لحیتہ، إن یظنون إلا ظنا، وما ھم بمستیقنین، وبعبارة أخریٰ لاأصل لہ لذالک روایة“․

میرا مسلک وہی ہے جس کی طرف آپ نے اشارہ فرمایا کہ داڑھی میں زائد از قبضہ حصہ لے لیا جائے اور اس مسلک کی دو دلیلیں ہیں: (۱) سلف صالحین ، حضرات صحابہ وتابعین، ائمہ مجتہدین اور خاص طور سے امام اہل سنت احمد بن حنبل رحمہ اللہ اور صحابہ میں سے حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہما اور حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے جو حدیث اعفاء اللحیہ (داڑھی بڑھانے) کے راوی ہیں، زائد از قبضہ کے لینے کی متواتر روایات اگر حدیث اعفاء اللحیہ اپنے اطلاق پر ہوتی ، جیسا کہ بعض متأخرین کا خیال ہے ، تو یہ حضرات اس کے اطلاق کی مخالفت نہ کرتے۔

(۲) نبی اکرم صلی الله علیہ وسلم اور آپ صلی الله علیہ وسلم کے صحابہ سے فعلاً بلکہ قولاً بھی اس کے منافی کسی ہدایت کا منقول نہ ہونا اور بعض لوگوں کا یہ کہنا کہ نبی صلی الله علیہ وسلم اپنی داڑھی کے بال نہ لیتے تھے، محض ان کا گمان ہے، جس کا خود ان کو بھی یقین نہیں۔ دوسرے لفظوں میں روایت کی رو سے اس کی کوئی اصل نہیں“۔(إعلام الفتیة بأحکام اللحیة، ص: 63، بحوالہ ”اسلام میں داڑھی کا مقام“، ص:44، کتاب گھر،کراچی)

اسی طرح موجودہ دور کے اہل حدیث حضرات کے اکابرعلمائے کرام کے فتاویٰ میں بھی ایک مشت کے بعد داڑھی کٹوانے کی صراحت مذکور ہے۔ ملاحظہ ہو:

فتاویٰ نذیریہ میں شیخ الکل فی الکل حضرت مولانا محمد نذیر حسین صاحب دہلوی لکھتے ہیں:
”داڑھی کا دراز کرنا بقدر ایک مشت کے واجب ہے، بدلیل حدیثِ رسول صلی الله علیہ وسلم کے،کما سنتلوا علیکاور داڑھی کا منڈوانا، ایک مشت سے کم رکھنا یا خشخشی بنانا حرام ہے اورموجبِ وعید ہے۔“ (آگے احادیث تحریر ہیں اور آخر میں چار علماء کے دستخط ہیں)۔ (فتاویٰ نذیریہ، کتاب اللباس والزینة:3/359،اہل حدیث اکادمی، لاہور، طبع دوم:1971ء)

فتاویٰ ثنائیہ میں حضرت مولانا ثناء اللہ امرتسری صاحب  لکھتے ہیں:
سوال: داڑھی مسلمان کو کس قدر لمبی رکھنے کا حکم ہے؟
جواب: حدیث میں آیا ہے کہ ”داڑھی بڑھاوٴ“ جس قدر خود بڑھے، ہاتھ کے ایک قبضے کے برابر رکھ کر زائد کٹوا دینا جائز ہے، آنحضرت صلی الله علیہ وسلم کی داڑھی مبارک قدرتی گول تھی، تاہم اطراف وجوانب طول وعرض سے کسی قدر کانٹ چھانٹ کر دیتے تھے۔(2/ذی قعدہ 31ھ )
(فتاویٰ ثنائیہ، باب ہفتم:مسائل متفرقہ، داڑھی کس قدر لمبی رکھنی ضروری ہے؟ :2/123،ادارہ ترجمان السنة، لاہور،طبع:1972ء)

اسی کتاب میں کچھ آگے تو ایک مشت کے بعد کٹوانے کو واجب لکھا ہے، ملاحظہ ہو:
”حاصل یہ کہ سلف صالحین، جمہور صحابہ وتابعین وائمہ محدثین کے نزدیک ایک مشت تک داڑھی کو بڑھنے دینا، حلق وقصر وغیرہ سے تعرض نہ کرنا واجب ہے کہ اس میں اتباعِ سنت اور مشرکوں کی مخالفت ہے اور ایک مشت سے زائد کی اصلاح جائز ہے اور بافراط شعر لحیہ وتشوّہ وجہ وصورت وتشبہ بہ بعض اقوام مشرکین ہندو، سادھو وسکھ وغیرہ، جن کا شعار باوجود افراطِ شعر لحیہ عدمِ اخذ ہے، قبضہ سے زائد کی اصلاح واجب ہے، ورنہ مشرکوں کی موافقت سے خلافِ سنت، بلکہ بدعت ثابت ہو گی، جس کا سلف صالحین میں سے کوئی بھی قائل نہیں“۔(فتاویٰ ثنائیہ، باب ہفتم:مسائل متفرقہ، داڑھی کا رکھنا کہاں تک ثابت ہے؟ :2/138،ادارہ ترجمان السنة، لاہور،طبع:1972ء)

شیخ محمد ناصر الدین البانی رحمہ اللہ اور انہی کے اکابر کے فتاویٰ نقل کرنے سے مقصود یہ ہے کہ شاید اپنے بڑوں کی تحقیق اور فتاویٰ دیکھ کر یہ حضرات اپنے نظریہ پر نظر ثانی کرتے ہوئے اصلاح فرمالیں۔اور اس مسئلہ میں غلواور تشدد سے بچ سکیں۔ (جاری)











1 comment:

  1. ماشاء اللہ،تحقیق کا حق ادا کر دیا.
    جزاک اللہ خیرا

    ReplyDelete